Skip to main content

Full text of "Dars e Nizami Darja Sabeaa Maoqoof Alai 7th year"

See other formats


نارای 


کایت 
بل 
فا لیس اہ راز ری 


مسق امس اسل ما 


888 8۱ 


RAWAL PINO 


اردوز ان شح غب الف رکی یلص شر 
بس میں تام مہاح فکوآ سان انراز شغ لک گیا ے 


النظر 


اردوش 2 


تالىف 


تالی 
مھ کر س 
می ار 
هي 
اتا د چا عانتما سلاو 
ال چا بمو دای ری 


۱ ٤ 
ہے سے سے ہم ماس‎ 
3 مس سے‎ 


اقل ارکیٹ اتال رو ی چک رانک 0333-5141413 


بم لصون بن نا غو ہیں 


ات : .- عرڈانظر اردوٹرں شر خزبۃ گر 
الف : 2 ول کی ( قاش وع چامہ دارالعلو م کاپ ) 
ام فی اي اتال مارکیٹ ءا قبال رو ڈ نی چوک راہ پنڑی 


ای بویت لے کے بے : 
مت لب 
متیر بے 

اعلا یکا ب گم 
کٹ ضاشرشید ہے 
کت یدامشیر 
اسلا یکتب خاش 
تھ رماع 
رشن 
رون العا 
کت افھرمن 
کنل 


کت خانشان‌اسلام 


اسلام آباد 
راولپنڈی 


فر یکت فان 
HES‏ 
کت عرفاروقی 


روالا٤6رارا‎ 


ائ مورا رن پل ...لمآ با 


مہہ مج 


ادامر ید ای یون ۔اسلامآیاد 


مد با کیٹ ...زف ار مف لا مور 

لو سف با کیٹ نز ف امٹریٹ ار وو پا ز ارلا مور 
راحت‌با دکیث»اردوپاز ار سس لار 
تال روز ...نان 


ٹا ون ...کرای 


ر ونر 


هنن 


نہیں پامفزرازالع لوگ اي بالستان 


MUFTI MUHAMMAD 1۸01 USMANI 


Vice President Jamia Darul-Uloom Karachi - Pakistan 


سم ون 
مز رر روم در ازا حرفل مکی وک کر ہیں i‏ 


فاا کک ی کے رما ے سے ها بر ار ں ز ورال فاعرے سے لیر 
ا اور دا کفریںگ ا لیم دارااسل رای س سي 
مال کر اترا دی‌ها مل ری سر - الف تم ہا رس 
ہو سے | 
ری 7 ےر ا 7 د کر بھی 
رک ره که سے م لو رو تن 
7 ۴ و ۳ 
0 و ان سے یم ا ا 
سر ۓج - دل سے دعل ع ک ایل و6 

ِ 7 07 انح نم کت 

مریگ نش 


وت 


انتمایب 


رها اس“ ی کاو 
( عرو ار رر خرس می الک 
کا ےک ۓ ز مات ادلی 


چا مع دارالعلو مک ای 


کی طرف مضو بک ےکی سحادت ها کرد پا سے جس کے 
7 وش م ومحرفت مس بندرے نے اپنی ز مگ یکا ستره بہار سی 
با سکیف وس رور می زار ہیں ۔ا ببھی اس می وال ہو سے 
کک با سے کے می جذ بات »وس ڈیا نے 
ورو رولو رکا روتوم سے 
ید دسا د گی سح بدا رالعلوم ے 


یی از فلا جامعہ 


محمد طفیل اتکی 


عی مال 
الحمد لأهله و الصلاة والسلام لأهلها آما بعد 


آرج سےتقر یپا د سال پل ہک پات کم جب بندہ امھ وار الوم گرایگ شل درج 
موقو ف عل یکا طال بم ء زا وقت بندہ نے نکتاہو ںکی رم کر ن ےکی ال تھی سے 
دما کتک اگ راوتا لی نے قش ما ا ن ت بولک مرو »وه نکتا یں ہے ہیں : 
)..... شر فقو درم و 


۳).... ما شنت شن مکلوو 

ار جامعدداراعلوم میں درس سال اول کے دوران هرق 
تن انا تک کا مکرل ھا چو ہا طا بی بی ما ہوا اور تنل خر اکان ول 
ہوا ہے اک رار میں طل ہیفص سکواسی نے سے پڑھایاجا+اے۔ 

شرع نج الفکر کے خلاصہ اورت اچم وکا ےرگ رمفل لی شرع کی رورت ج 
کبک کر سے اورا صطلا جات اصول جد ی کم ونیم میں مد ومحاون بو مرش 
اسلا ال تا لی نے یکا بھی ' عق خر نام پا ےک ل کک نا دیا ےہ جوآپ 
کے ہاتھوں میں ے۔ 

وج الصاح کی اردوشروعات وققادي یل سب سے مقرم »سب تخل شر سم 
الاشنات ے مو جود اک تقار میلو ۃ اک ے ما خوذ ہیں مگرفق > یب پگ وجرےء 
۱ بولک ےک خی مرب اور نا ش ری نکی عدم اوج ہک وجرے ال سے استفادہ نان ہوگیا ہےء 


عرجالظر اسم ES E CS‏ ا 
ال شر کو جد ده تب ےکی ضرورت ہے ءالحمدللہ هس ال پیک یکا شرور 
کردیا ہے ءال تھا ی سے دعا »و هل وکرم سے ا ےبھی پا یکیل کک کیا اورا مل 
کم کے لے مفیدبنائے ۔آ ین 
میس نے اس شر ”ع و اتر کی ا لیف کے دوران جن نکنابول سے استتقاد کیا ے٠‏ 
رکا ب کا وال اھ اھ در کر دیا ےہ ہا ہیں پٹ طو لی :ت ضروری بات ذکر 
کل لے اص لکنا بک طرف مرا جع کا شور ہ ویاے_ 
ال رتال سے دعا سب کہ دہ می ری اس شر عرو ار کشر ف تو لیت ےلواز ےاور 
اسے بنرے کے کے » بنا سے کے تنم اسا له کے لے بندے کے دالد بین کے لئے ذ رہ 
آخرت بنا +تصوصا استا درم وکر م جنا ب مولا نا شید اشر فک صا حب رماع کے 
لے زره شر تما بت »وگن سے بت ے نے ےکنا ب درس بای ہے اورا بی یکیلو چهارت 
سے یت ها لکنا بکی ور یگر دا لی کے ان موا _ 
اش تھا لی جم س ب کا عا ی دنا مرو 
محمد طفیل اتکی 
ال و تحص پا ترا رالم گر ی 
رل چا مع ر رصا عے لیام یا سلا مآ پاد 
7 شوال ال زم ts‏ 


ر یرو زسو مار 


رالات ما مر 


نام وضب: 

ان کا نام ام سے کتیت الال ہے لہ ا نک لقب شہاب الم بن 0 
طرف بد تکر ے »و2 سقلانی کبلا ے ہیں »جتاب کے وال دکا 2 اور اک قن ` 
نورالد بین ہے۔ .تام سل لضب لول ے: 

احمد بن علی مسا ی ای تفن مصری 

ری و تلقیب 

این ران کا پور لقب ہے اگر چہ ےکی تکیطرع سے اس کی وج ہتلقیب میں تاف 
e‏ 


چگ جوا جرک جرک اقمام مس سے ہیں ال این کر ے روف ہو ے۔ 
۵)... تیچ کالم ےن ر ا ا قول اورا نکی راۓ اپ رانک 
بی کے اتر ےکا تس ل ی e‏ 


ی 
عسقلا نکی رف ۳ید تک ن : 

حافظ ان تر کے نام کے سات سقلا فی اور یک سرت ج لا کک حشرت را 0 ےء 
عسقلان ایک ز ماع می سی نکا بصو رت ش تھا ای خوبصورلی کی ینا برا ے' رون الم" 


عرجرلظر جس ےم ی ی ی RE‏ 
کی کہاجا ا تھا حافظ این تج راس شرقلا نکی طر ف سوب میں - 
مر کب نے جا ےک وجہ: 

مر یاس جا ےکا ہیی ہ ےک یھر یآ پگ باس پد لنٹ ہے اورای میں1 پک 
نٹ خی موی تلع بورکیم ری ان ۶ سآ پ کا تیا م ر پا واورممری 


آپ لا ہہ ۓے۔ 


اصانیف اءن یر 
آپ نے اپنی طو بل “ی زی مکی تاف علوم وو نکب آهنیض ش سگز اری ءامام سطاوی 
نے ا نکی تصان فک تعداد ایک سو یال (۱۵۰) سے جن میں اک کنب علم عد یٹ سے 
ات ہیں علا م ہیی نے ایک سو چیا سی (۱۸۹ )کحب کے نا مت ہیں اوران مھا خی نے 
پبتر(ے ) تسا نیف کے ہیں جن نک یکل تراک تھ رار( ۱۱١‏ ) ہے۔ 
ولا دت دوفات: ۱ 
۳۳ رشان لے ےہ ل٢‏ پ پیا وم ام ولا دت مم رکا ایکا ول نایا چاتا ے 
جک نام تھا یش دال اد رال لماعت دم ہو ے 
کے خودفر ماتے ‏ کہ جب میرے وال دو ت ہو ےل ری رک ء چا رسال کی پر ی یں 
سے تھے اورآ نع وہ کے پل ایک خیا لکی ط ریاد ہیں اتتایاد ہ کا مہو کہا می رےلڑ ے 
)کی اضر 
اک قب نکی را ے کے مطا بی ۲۸ذ ی ا هه« وفات و چ» ای فاط ےآ پک 
گر ۹ے سال ما اور ٥ا‏ دن ٹن ہے پک ن فین ہے ہو رتب رتا ن فر اود ریس 
و اور پک ریک کے سا نے اورامام شاف مل مھ ی کی تبروں کے درمیان ں 
ہے۔ علا م یدگ کھت ہی ںک کے شہاب الد بیت صو ری تایا کہ دہ ماف اب تج ر کے جنا ز ے 
می شرف .از سآ سمان نے پا ران رت برا ی ونت اہول نے شم پر ے: 
لے سن قاضی الققضاة بالمطر 
وانهدم‌السركن‌الذى کان مشیدامسن مجر 
جار جا جا یر 


۲ 
1۷ 


ایتا عبارت ام نتر یں 
ا کی ووم 
امک ی ووم 
فک ن وموم 
علا تق راص ران یکی را کرای 
ج کا ن ووم 
حا f‏ و ۱ 
رشن کے ہاں اصطلا عا تک رعا تگہا تک ے؟ 
لت وو نا دوم ۱ 
ابرلفض لا و 
امن چرس پار ے ٹیل علا سیو کا تم رہ 
ا تچ ر کے نام سے قب ہو ےکی وج جات 
رن خف کا نرازتھیف 
شہا دت نک وکیول زک رک ؟ ۱ 
فان ہک تشر سے اعرا اورا سک وج 


ای رامپرعری ء اک شا پوری اوراصفهانی یکت بکا کر 


ى٦‏ 
> | 5 اک 
۳ 


5 


۳ 


؟م | گج | ر|إڑ 


1> 
ل 


EEE وداج‎ 


5 
تھ 


مجر جا کی کی مال کامیان 
لیب بفداد یک یک بکا کر م 
تا ی عا او رعلا ميا یک یکن کا کرہ 


3 
1 


7 - را 
خُوارواورٹرا رکا کی اورمراد 


۹ 
۷ 8 
سا 


جح 
اہ ۶ئ 


رجاءالا تد رارج کا مطلب 
دک لوآ ریف 

مد شک اصطلا یت ریف 
راو هد یٹ کے درمیا ست 


بت 


o 
۹ 


o وت‎ o o 
3 
2 
گی‎ 
۲ 
وی‎ 
چم‎ 


۳ 
¥ 
٦ 
3 


۵۸ 


جا | . 


کر تتو ا کےا کار ے میاق او ال 


1 
و ہے مد i‏ 
مس سے ہت 
ہے وت تج 
RES TT‏ دہ 
TS‏ جو ہا 
سس مم تہ 
روا توا کا لدان مون اورۃم طن دبواضریریےپائیں؟ | ۵ں ا 
سس SR‏ 
TTT‏ دہ 
E E‏ 
3 
1۸ 
۹ 


راا 
۳0 
وحرت E‏ 
تزاف ۱ 

ا2ستوی 

از پالطبقم 

اتر ل وال ارت 

شور کا بیان 

ر ہو رک اصطلا یآ ریف ۱ 
تر شمو ری مال 

شمہو رخ راصطل ای 

رنیراصطلا یک اقام 

2 راصطلا کالم 


زک ی بیان ۱ 


با ۷ | :۷ | ۷ ۱ 


۹ 


٠ 


3 


۳ 
۰ 


۱ ۱ 
تا 


رز نکی لفو یتم ری 

ٹر زی کی اصطلا یآ ریف 

رع زی نی شال 

رخ یب کال بیان 

رر ی بک وی اورا صطلا یآ ریف 
رر بک اقام ن اش 


31 


0 
1 
کت 


BE 


در 


ا 


۱ 
ا 


۳ 
۳ 
1 
SIN. 


۳ 


یب تمالا سن را 
۳ ۲ 


در 


۳ 
0 


نکی تحرف 

رو ات کم بد بی ے پا نظری ؟ 

من میں شرا مرکا کو ںی ںکیاگیا؟ ۱ 
موا رکا وج فارگ 

مات کے نام گی وجود تب یل 

خبا رآ عادکایان 

نرو رکآ ریف 


در 


< 


N 
€ 


ص 


o 


۲ 


2 


> 
۰ 


ورف راما 
ښ رع کا لغو ی ی 


AY 


> 
ا 


خر زی رکا صططا قآ رف 
ر7 کے ریس 
نارکا وی اور ا سکی تر دید 


> 
5 


عرو ار لت 
2 
با 


وک و 


کیا گنک احاد یش پر ہونے لاط سے اتان ے؟ 
ون 


۹۲ 
۹۲ 

2 
۹٦ 
۹٦ 
۹۸ 


وص رک سی لاھڈ E‏ 
تر ال کٹائے_۔ E‏ 
و 


1 
ٔ۔‫ 


۰ 
٠۰ 


35 


۱ 
حر من لذ اعکابیان ۱۳ 


عد من لذ ا دک لغوی اورا صطا کت یف 


| 
۳ ۃ٥م‎ | 


عد یٹ نلزاعدیمٹال 


تق i‏ 
۰۰70 ل 
اج ۳3 

بد 


ی | 
| سفق Ll‏ 


ریش لک تحرف ِ 


و 


مد یٹ ت لذ اکآ رف فو ار قور 
ا داب ۱ 
یچ سچچھ ‏ ھت 
ای صا ت تن اسنا وک درج بر یگ‌ضرور تکیوں ؟ 
وہ ہو ہو I‏ 
سن اوران اروش اقا ءوعحی رم نکا اخلاف 

2 ۳ 


7 
2 
ت 
3 
ھ 
نگ 
5 
پ4 
٦‏ 
1۳ 
3 


ز حعدی شر و کاڈ ے قاری ۳۵۱ 
| مذاسابت ےلاو سے مخار ییات ۸ 
| م اطا اد شدد کے اغبا سے مقار یک ۳۹ 


ee 
9 
0 
۰ 
۰ 
سه‎ | 
۰ 


ا مات ھی سول پراخترائش اورا یکا جواب 
دوست روا جد ارصن 6 کم 


ناس سن ے تاق امام تر بے یک رل 
ایام نھ یکا خا ی نب مرادہوتا ے؟ 1۵۸ 
اا م ھک کے مرف نتر یکیو ں ی ؟ | 0۹ 


روات می زیاد ‏ یکوقو لکن کابیان ۱۷۰ 


< 
7٦ 


اے٦‎ 


نرک مکی شال 


۲۳ E TTI 
CEE TE 
سوج رجہ ہا‎ 
۔ کت یچچ و‎ E 
جج ۔. جم سح کت‎ 
| ایا مس رٹ جوز‎ 
#۱ اک‎ 
۱ | نس نزم فی الا سلام ره ےکن ین‎ 
ک د‎ 
1099۷07 سی‎ GGT ہے‎ 
تراک مک اقام‎ 
روف فی کت ریف‎ 
تر ۔ ہس رت‎ 
کی یچچ وت‎ 
۲۵ 77 E 
SEE ےر‎ 
SEE سج‎ 
کی ہے ےن‎ 
صل رھ ا‎ || 
00 7 
٠٠ سعم ٹوو‎ 
IEE 
| 
۳ 


۳3 
3 


سے 


۰ 


خرس لک صطلا یآ ریف 


^ 


گے 


ک 
a‏ 
5 
۴ 


یم 


محص لک | صطا یآ ریف 


0 
کک‎ 
EÊ 
i 


کہ 


3 
3 


کی اصطلا یآ ریف 


سیف کے اعقبار ےنم رمردودکی اقا م 
توا کی تحرف ۲۳٢‏ 
یز کا ریف 


=: 
3 


کاک 3 
۳1 ۳۹ ۸ 


| > 
۲ ۱ 


لس الا تاد 
تس الا حادم 


۳۸ 


>1 
> 


۳۱ 


> 
۱ 


گے 
ص 


ماس اور رل تی میں فرق 

یس میس بلا قاترو رک ہے rrr‏ 
قرم یآ یف rrr‏ 
ی لد 
عدم طا قا تک حرف تک طر یقہ 3 rrr‏ 


ز ارایپ قل ر وای کم 


چ۔ 
چ۔ 
چ 


۲۲۵ روج رکےوواسیاب‎ E 
ا ا‎ 
rr ___ لے راو عدالت ےا ااب‎ 


کے ےے۔ ۲۲ 
کز بف الد شک امال تارف 


سس 
کو رت 
الا 


لاف ین......عادت را وک یا عالت راو ۳۳4 


۳۳۸ 


۳ 
۳ 


بضع نب ری صو رس 


rrq 
۳۳۱ 

rer 
۴۴ 


+ هه 


مرل ن ره وولو للم لول میں رںل 


۳۳۵ 
rra 
۲ 


۲ ۱ 


00 
وتم رد لال تک نے هار ان 


وتم راو یکومعلو مکر نے وا مر جن ۳۳۸ 
2 


ردنا نی ۳۵ 


3 
> 


۳۳۹ 
۳۵۰ 


8 


0ٌ 


امرف 


x 


۲۳ 
ra 


,۲ 
ری نل الا سا نی دک ریف 


۲۲ 


۹ 
Ye 


SFE 
۳۳ 
سا ا اج‎ 
٩۱| 


۲۳ 


تفر فک مال ۵ 
. فک اقام 

من حد یٹ می تق رک کلم 
حد ی توت رک ےکا عم 
میک کک م 
روایت با ”نک مطلب 

و ما نظ ان پا راز وکا مطلب ۱ ۳2۱ 
مشکل الفا نا کے لکی صورت ۱ ر7 
مرارویرلول 20 و ک‌صورت می سکیا جا 2؟ rar‏ 


+ 


٦ 


« گج 
کس | کہ 
۱ ۲۰ 


کے 
N‏ 


ص 


38 
۰ 


۳1 


مه 


۲۴۸ 
2۹ 
۸۰۲ 


٣٣ 


۳ 


> 


> 


سے 


> 
چھو۔‎ RR Im 


طاعد لور لکا 27 
محصیۃ ور سوک تم 
خبرموتو فکیتعریف 
رم وو فک اقام 


لقاء ےکیا مراد ے؟ i‏ 
سوا یکان لک نف ےا و ایر ہکا مطلب ۱ 
تر یف می فی کے فو ابر تور ۱ ۳۴ 


ارد اد ےکا بیت اش شم ےب اہن رکا اتر لا ل 


قولہو یو ل گر .تا نالا ول 
rrr‏ 


شاف وک رم لک واب 


تاب یکیتحریف 
| لیک ت ریف ِ0 /] 


اع 1 7 ۳۳۸ 
مقطو رع اور تلع شس فرتی 
ا 
ے۳۰٢۴‏ سے E‏ ۳ 
ا _| فد ۳۳۴۱ 
ا ا شش 2 
|| اتر  ..‏ ۳۸ 
خطیب پفداد کی ذ کر رف مر 
|| الیگ روريم فی 


حصو ل علو مت خر یک شون 
سند نز لک ت کی ایک صورت 
مطلقا از لک 7 ت ور ساس 
افق تک تحرف 


بر لک رف 


٦ 


8 


عرجالنظر تم یں سر ا سس 0[ 


۳۸ 
روا یت الا کا یرگن ال صائ ‏ رک شال ۳۳۸ 
روات الا رن الا صاخ رک اقام ۳۳۸ 
روات الا با الا ناء ۳۳۸ 


۳ 
N SERR ETA [_ ۱ 


روایعت الا نگن الا ج req‏ 


|_| 7 یی ۳۳ 
0 چد ہنی کے مرقع کے اتا لات 
5 
چو 


سا ہش و لات کے و رمان زیادہ ےز باد ہ فا ص لک شال 
بنا م شیوخ کی مشثال 
من م راوی اور مت م وال رک شال 
تمتا م راوی» پمنام والداور من م داد یال 

اور کل ش‌فرق 
ا 


2 


۰ o 


ی رگرده روات 6گ 
نم انا ری صو رت یل علا را تنا ف کا مب 
علا ما حزاف کےا تد لا ل کے من ول وس ےکی وجہ 


۲ ۳۵ 
۳۵۲ 
ے۳۲۵ 
۵۸ 


EE 
ج‎ 


ا گوابی پر ا یکرت درست کل ۳۵۹ 
7 علائی وار یکی جا یر ۳۹۰ 


نے کی لئ کی شال ۱ ۳۹۰ 


A: 
: 


مر سل میس انقاق لفت رک شال 
مریع سل شل اقا ةلل ال 


ےل مین انا قح کی مال تل 


۳ 


صد یٹ سل ما تا ق قول و لک ال 
تلد صفت ے٢‏ صد یل 2 
نکی لکول ادرعد یش کل )لاوت 15 

٦ 


۱۳ 

5 ۱ ۳ 5 

: 9 
مز یٹ مل الاه لیت ر 
ادا 2 مد یش افاظ نے 
Fr: :‏ 


الغا ظا عد یٹ ےآ کر مرا ب 
روات عد یث کے مسل رومرتو کی فصیل ۳۹۵ 
تر یث اوراخبار فزن سا 
ےل ملا اض وت 
صح "ریش جھمتنا “کا مطلب 
الا کامقام ۱ 
اخ )ا راء رآنا ہق رآت عل اور کلک مطلب 
تمه 


۷۸ 
۲۹ 


ات عیبر ۱ 
۳ 


انا لغوی اور صطا یتح ریف سط 
ا 
۱ے ھشوکچٗ کہ دی 
|| جم صس“س ۳ 


38 


۹ 


اجازت کےارکان 
مرکا ترک لخو اورا صطلا تین ریف 


٭- چپ 
۰ 


3 
3 


EE 
حا‎ [| © 


5 
© 


باز ت چو لکاگم 

چاز تمحد ومک صورت 
اهاز تمحر ومک ۳۸۱ 
جاز تک یک صورت 

چازت فک م 

قمام زورک موی م 

از ت مد درکن رشن نے استما لکیا 


2 


0 


Ri 3 
1 


AY 


اعد 


گ2 
5 


۳ 
اجاززت عا مک وکن ی رشن ے استعا لکیا؟ FAY‏ 
۳۸ 
+۳۸ 
FAY‏ 
FAL‏ 
FAR‏ 


nr |‏ 
ےھ یھ ےت 
خن تفر ے تاق تمایف ESI‏ 
LE SA‏ 
و ےی سس“سہستو LS‏ 
و تی س_سپرڑشسشچ LN‏ 
4 ام یور یکی مش یں 
کی مکی دومری‌صور تک ال 
ی۶ ال 


۴۰۴ 
جرح مقدم ے یا تخد بل مقرم ے؟ 
۳۹ 


| مسا إا 


ها 


5ک 
PETE ۰‏ 


fre 
۳۳۰ 
rr! 


- 


چ 
کے 
2 


rrr 


+٦ 


3 3 
2 
3 


rrr 


۳۳۵ 


۳۳ 


و 


تبتون شس ولو ع١‏ تفا واش و اور انی شال 


333 
چ 
3 


۳۳ 
2 0 ی ۵ 
تع اورشا رد کے رکا واب rr‏ 
۹ 4 کےا« 
شاگمردوسا مع تایآ داب ۳۵۰ 


اوہ 


۳ 
۳3 
4 
ہے‎ 
9 
٦ 
5< 
2 
8 


ار عد بی ٹک ی عم ری علماء کے ات ال 


"ar 


مع ا ی 


۳ 
( 


(ır‏ 1 علت 


٦ 


قال السْیخ الامام الم العامل الحافظ وحید دمره واوانه و فَِيْد 
عَصُو وراه شهب الملة وَالدُیْن أبُو الَفَصْلِ مد ان علی 
سای الشهیر باب حجر لاب الله الْحَنة بفضله و کزیه ۔ 
وو ام ام »اف الم یش » ی زان نت اور دی ىا 
چک ابو الق امھ امن لی عستلا فی نے فر مایا جک این مر کے نام سے محروف 
ہیں ءاللتنا ی٠‏ ےل وکرم سے انیس جنت یں ٹھکا دا لت فر ہا سے ۔ 
رال عپا رت اب نت کی یں : 
رارت صا کاپ فل ای رل کن سے یل ان ےی ش گرد نے فاد 
ہے ت کرصا ح تا بک لالت شان او رق تک اظہار ہواو هکت بتک مطالتدکر نے وا ےو 
ا نکمم اور وسح ت کا کک اغرازه ہو ای سے صاح بابک بات او کاب پراخادو 
اسنا رکا فا رہ حا گل »وکا 
اخ امت وفهوم: 
الشیخ : : طلا لغ ا ٹن پ موتا ہے نس کسید کے ا را ہرہو کے ہوں یا 
اٹ پاک الا ےک کباش سال سے تادز ہو کی برض اوتا 
الا ارہ قودات سے ماوراءا ٹف پربھی ہوتا ےکر جس پت وا رام کے 
٦‏ #رفایال ہوں خواو انی مرکم ہو ”کما یقال شیخت الرجل ای وصفته بالشیخ 
للتبحیل “ (الق مو ی :۵۳۰/۱ ءا لصاح :2/۱ )٥۹‏ نگ لیا یی معن مراد ہیں ۔ 


ایام کان وم ہوم : 


الامام :بلقت اء اور چوا کے کن میں سمل ہوتا ہے ءعلا مج جال فر مات + 


”الامام الذی له الریاسة العامة فی الدین و الدنیا جمیها * 
( تر یات 2 مالٰیٰ:۲۸) 


نی امام دمک ےد لن ددتیا کی ریا ست عا مہا ل ہو 
اما مکی تر نفک تے وس علا مہسفکافر مات ہیں : 
الامام من یأتم به الناس من رئيس وغیرہ محقا کان او مبطلا و منه 
إمام الصلاة ۔۔۔والإامامة رياسة المسلمین (وهى على نوعين ) 
الامامة الصغری عند الحنفية ربط صلاء المؤ تم بالامام بشروط 
والإامامة الکبری عند الحنفیة استحقاق تصرف عام على الأنا م 
وریاسةعامة فی الدین والدنیا خلافة عن النبی نّطه _ (القاموس 
الفقهی ٤:‏ ) ۱ 
ہا ں پراس لفظ سے الیماعا لم مراد ےکی اتا مکی ال ہو۔ 
ما فت نی وش ہوم : 
الحافظ ‏ یہاں اس کےلقوگی می راوس ہیں پل ہا کاب حد یٹ کے | صطلا ی الفا دز 
یس سے ہے۔ 
اصطلاع مل حافظہ ال حر ٹکو کے ہیں ں نے مو احادیٹ یں سے ایک لاک 
احاد یٹ تقد کا احاطکرلیا ہواور ا ےسند :تن اور جرح ود بل رکم ل عور حاصل ہو اس 


ےاوپدرچ ”'الحجةٴگاے۔ 


حفظا روایا ست کے معیا روعتق دار ٹل علا رتخاف کی را ۓگمرائی : 

لا مق الم بین کی فر ماتے ہہ لک یس نے حافظ مال الد م ری سے حفظ ردایا تک وه 
هر در یاف تک ینس کی رسک حاف کہا جانا ہے و انہوں نے عحو اب می فر ما کہ ای ک مرف 
گار جو کیا ہا ےگا( تر جب الراوی:۱۰) 

چنا رامق را تاداس کہ می بات درست ےک حفظا روایا تک ےار ومعیار 
ہرز مانے کے ال عرف مسب لہذ ا ہمارے ز مانے یر ث ا سکویں کے جوشیو رخ کی 
اجازت کے سا تج کتک هد یٹ کے مطالعہ ملک بت کے سا تیر مشقول ومصروف ہو اور معالی 


اعا یٹ ےدرایٴ اورروای دالف »وب 

ای طرع ماف اس وان یے ایک بزار یا ال سے زائداحاد یٹ بان یاد ہوں 
اور جب ووک عد ی ٹکو لو ا ےمعلوم ہوچا 90 مد اف کل تانب هن سکاب 

اور جت ارس یلم الد یٹ کے اتد ر کاقول موا صر بین کے سن وکا درج رکتا 
مواوراس کو ل ووی رو کر بو( ص ازقواعرق علوم یر یٹ ) 


چک نی و ہوم : 
الحجة: ال اف اک ا طلاقی اک مت کیا ہا ا ہے جس نے کو اعاد یٹ یل سے تین 
اکا اد یش مت د کا احا طرک رلیا ہو ءال ےکی او پردرچہ ”الحا کم “کا ے۔ 


مکمک ن نف جوم : 
الحاکم: اکا اطلاقی الس حرث پر ہوتا ہک ی موم احاد ی ٹک قناء اسناداء 
ج ھاء نخد یلا اوزجار بنا ہ رپبلا ے اعا طکرلیاہو- 


م دجن کے اں انا صطا عا تک ر عا کہا تک ے؟ 


گرا الفاظط کے اطلاقی حرا ت مشن کے ال نے ع ےک دک کور وعد بندی پل 
پراہونا شکل ے_ 
طت اورد نکاس وف موم : 

شھاب الہ " والدین : ن طت اوردی لوا ی زات کب کے ذر برو نکر نے وال 
»الا کی نے سے علا همان تر کے لق بط رف اشار وا نقصوو_ب _ 

ون او ررح ے تلق مفتی ئ نج سا حر ے ہیں : 

"دینوت ان اصول وا مکیلع بولا جا جا ے جو حر تک دم انیو ےکر انم نیام 
تک سب انیا س مش ترک یں“( مار ف القرآن:٣/٣۳۷)‏ 

سی مو نحل حضرات نے اس ط رم میا ناف مایا ہے : 

”الملة والدین هی الطريقة الالهية السائقة لأولى العقول باحتیارهم 


ایاه الى الخیر من مصالح الدنیا وال حرة * 

تن لت اور و بین ال ای طر یی کو کے ہیں جو ا لک لکو ان کے اغقتیار کے س تم دنا 
وآ غر تک بجلا کی طرف لا -2- 

بان یش تھوڑاسا فرتی کل تکی نبت صرف ال یکی طر فک با جواس 
مر توت بخورش ہو سے ہیں شلا لت ی اور ممیت ابرا کی وغیرہ لز اطم تکی نبت شاد 
( کی( کے علادوا شتا لیامت کے کنر دک رف تچ لت اراد لت ید 
کہنا قلط ے ۔ 

و ین ال طت کے متنا لے میس وسع تا مالل س کہ ای کی ہت الث تھا ی » ی اورفرو 
ام تک طر فکرنادرسصت چاه اد ناهد بتاورو ین نا کک ہے۔ 

(افروا تر اغب ) 

فصل سے معلوم ہو اک و بن اور طت میس عموم وتصو س کا فرت ے ن دین عام سے 
یت ال ہے ؛اورعلا مرا غب کےکلام سے بھی معلوم ہہوتا ‏ ےک مو شر لیر کو کہا 
جا تا ہے شر بجعت کی رک نکی طرف عم تک نس تک نادرست نکیل ے لہ ۱" صلا ة ملة 
اللہ“ کنا نہیں ہے۔ 


ابوا شض ل کان ویو 

ابو الفضل : بہال اب هش دو اال میں »ی وال تال کے ہو ر ومروف 
ن مراد ہیں تو اس صورت یں ہے صاح بکما بک اکنیت موی اور ہے ان شل ای وک 
طرف اضافت ونبدت موی »با ای ےکی کا من "وال .سا حب“ راو ےن شل والاء 
کیوکگہ »بت سار سے مقامات پر لقظ این واب صا حب اور والا ےکن میں ستعمل ہو ے ہیں 
هلا ابو التراب »ابو ذر » ابن السبيل اور ابن الليل و تره- 
ان تر کے بار ے میں اما کار 


احمد ابن على العسقلانی الشهیربابن حجر : لا ام مر سکع ما( رت 
مق د مہ یس ذک کرد ہے گے ہیں ضرورت کے وتک وپال ر جورع فر ما یں ج م علا یه 


"انتهت اليه الر حلةو الرياسة فی الحدیث فی الدنیا بأسرها فلم يكن 
فی عصره حافظ سواہ“ 


حافظ ابن چ رک ولا د تگاے بے شس مو یلا نکی رعلت۲ ۸۵ش مول - 
۱ این تچ رک ےکی وجو بات : 


این ترا نک ہو ر لقب »ار چہ نی من رع سے اس کی تلقیب میں لف 
تق ہا ت کہ کی ہیں : 


.....)٣‏ درک چیہ یہ ےکہانع کے پا للف جوا رکٹ رمقدار میں مو اکر -2 ےا چوک 


2 


زا طرف نید تک وجہ سے این رہ گے - 
چلو HR TK HK FH‏ 
نسم اللالرخدن الرجیم مد لله الَذِی لَم یرل الما قدیرا حي 
یرما سمیما بویرا و اسهد أ لا له إلا الله و خدء لاشریت له 
ره كيرا و هد ال مْحَّاعَبْدہ و وله و صلی الله على 
سينا محمد الَذِیْأَرْسَلَه إلى الناس کافهة بَشِیْرا و َذیرا و على آل 
تر جمه : رو کت »ول اش تا ی کے نام سے جو بہت مبربائن اور بے عد رتم 
والا سے تما تھرٴیں اس اٹ کیل ہیں جوم ء قد رت ما کیہ تھے صف 
ہے ز ده سے ء س بکو تھا گئے وال سے سب یه فش وال ہے اور سب رون 


ع وال سے سے مض شس ہد 2 ER‏ 
والا ہے۔ اور می گاید ہو ای با تک کہ ای تیا ی کے علا ود موی 
وہ یکنا سے ا لول شر یں ے۔ میں ا نکی توب با یا کرت ہوں اور 
انس با تک یگوا ھی د با ہو ںک یج ص٥لی‏ اش علی سلم الد تنا لی کے بت ے اور ای 
سول ہیں اور اللہ پاک مار ےآ ق مھ( صلی اللہ علیہ یلم ) تس ع زل 
فرماۓ میں اہ نے تام انا حی تکیلئے بثارت د یے دالا اورڈ را الا باکر 
بحو فر مایا اور مش نانزل فر ما ےآ ل اورا حاب کہ پرہ اور اللہ ان پر سب 
شا رسلا ی یت ۔ 
شر کا نرا زآفیف : 
بال سے حافظ این رک خطیرش ورد پا سول هنتخ رگ شرع کھت وقت ہے 
طر تا تیار مایا کش ںا ی طر تاشرازگ جا ےکن دشر ع کا بمو عار کی 
سلاست ور واگ او ہوم کے بیان کے لاط سے ای کنا بک رع بن با سب ال پا کا 
مشاب ر ها کاب ںی چ موج .ان یل ایب جک خیم ےکہانہوں نے مو قکیلئے ۶ 
خطہت فر مایاتھااس مس بطر نج اضا کر کےا یکوش رج کا خی متادیا- 


جرد اور سا کےا تو شارت نکوکیوں ڈکرکیا؟ 

ال خی ممل وت ل کو احاد ےپور کی ہناء پر ذک کیا ےگراس کے سا تح شہا دن 
وگ ذکرفر مایا جاک امود اداد رت نمی شر ښک عدف ”کل حطبة لیس فیها تشهد 
فھی کالیدالجزماء“ پل ہوجاے۔ 

کرای پ ایک اشکال ہوتا ےک کر اس کور ہ عد یش لکنا صو رت و منت کے 
خطیہ شک ہا وش نکوذزکرفر ہا سے ۔ ا لک یکیاوجہ ہ کیک جک شہا وج کو کر فر ما اکر دوسری 
کہا گچھوڑ وی ؟ اس اکال کے دوجواب دج گے یں : 


عد بیش یف »ماش دول نے اس حد ی تکوش ج کہا مگ راس صد یٹ ضح ف عم 
ا درس ت گنچ چنا نچ امام ت ند نے ابی کن ت ہی ٹیل ال عد ی شک ک کو بیان 
مات ”حسنٰ غریب“ کہاے۔ ہز ایرجواب درس تگال ے۔ 


عرو ار سج سب میس مس سس ۵ 2۳2 


سکیا ھا ج بن وشح دولو لس لکا ہیں ہو مال اک ہے دوٹوں ای تا بک طرں ہیں 
جاک ساح باب نے خطبہ قرش ا نک صراحت فر ل ہے :لہا اس ال کے 
جواب کے کل فک چندال رورت _ 


الغا ظا خطہہکیتش رع ے اع را او را سک وچ 

اس متا م پر شرگن اور کین ے الفاط خط ہک ن وط تن کان زور ایا سے میرے 
خیال کے مطابقی امک بح کی یہاں ضرور ت کل ہ ےک کہ ان الفا کی ححقیقات ابنر اگ یکت 
ورسخ 20 

ود دی دی Kr...‏ دہ 

* ما بغد:فاک التصَانیت فی اضطلاح أھُلِ الْحَدِیٔث مد کیت للائْمة 
فی القَدِبم و الْحدِبٔث فمن ول مَنْ نف فی ذلك الْقََصِی بر 
محمد الرامَُرْمری کب لَمُحَدْ الْفَاصلْ» لکنه لَم يَسُتَوْعِبْ و 
الحاکم بر عبدالّه الْْسَابُوْری لکنه میهدب و کم یرب و تلا 
یونعم لاضفهآنی فَعَمِل علی کتابه مُستَحرجا و آبقی أَشْبَأءَ 
ت جم :تھ دصلا 3 کے بعد بل بلا ہز بات تد کم و جد یھ کے ائ کر ا یکلم اصول 
حدیث یل بہت تصاغیف ہو بھی ہیں ءا یم ل سب سح تعن یکر نے 
وا ےا ا مق کی الوگ رارع ری ہیں ول نے "المحدت الفاصل“ بات 
ایکا یگ رقمام ا صطلا حا تک اتحاب نکر کے ء دوسرے امام عا الو 
کرای شا رک لگ وہ اپت یکنا بوذ ب اورب انراز لکل لا من 
ا کے تدم بے چاج ہوے ابوٛیم ابا 2-7 »نپول نے ها لاب 
اخز اک کا مکیاج ہم بعدوالو ںکیل وی ببت موز کے _ 


قاضی رام می حا ی بو ری اور علا مراصفها ی یکت بک کر و: 
یہاں سے حافظ این تر یع مکی ابت اتی دو رک تصاخیف اور ا نک یکیفیات عطق بیان 


عر:الظر جا کس تر سی ا سس ی 
فرمار ہے ہیں عافظ امن ہر نے فر ماک یلم اصول عد یٹ میں علا تق من وم خر بن نے پر 
دور کت بآکدں ہیں ج کان بای تخرد ہیں ۔ چنا سب سے پیل اس غن میں تش 
اب را ہرم ری اور ماک خیشا پوس منیا قا ضیابوشھ را ہرمز نے ”المحدث الفاصل 
* فا لافس اس تج رہکرتے بے فرما کہا نکی نک کناب ا کف نکی ممل 

اصطلا ارت عا وی ںی تبون کا فی اصطلا حات موی 

ھا پر ےا کان شس ”علوم الحدیسث* نام سےای ایحا فلگ 
رائے کے مطا لق ا نکی کاب فرب ہو نے کے سا تسارح وز وا کر سے نال یسک 
»اک وجہ سے ال رذب ہو زا عم کا گیا ۔ 

ان دونو ں حضرات کے بعد اکان پرامام اب ٹیم اصفبائ تاودا کم کے مییران 
ل مام خیشا پور ک ےئش تدم پہ لے ۔انہوں نے حا مک کاب پ انا کا کا مکرتے 
ہو سے وی ہوگی صطلا حا کااضا کیا جا ہم انہوں ےکی تش قد م بے ےکا اد اکر تے 
ہو ۓ بعروالوں کیل ةکا نی ا صطلا عات جوز و - 


تفا کی لیصا کا بیان : 

قوله: عمل علی کتابه مستخرجاً: ال سے ی پا بج ش لآ ری هکرابم نے 
گوس کاب لگ یمام کاب بر مت یکی .اس عیارت ٹیس لخظ محر کو 
بین حم فا اور بصیغیہ ام مفعول دوفو ں طر رح پڑھ کے ہیں ان وولو ں صورتوں میں لفٹی 
تیار ےمج کی ترمو کک گر با خقبا رم راداورتقصود کےکو کی فر نیو ںآ ی - 

KK E... KY 

م حَاء یدهم لیب او بكر لد فَصَنّتَ فی وین وی 

کتابا مماه الکماية" و فی آدابها کتابا سمه "الجامع لداب 

' نشخ السام“ وَقل فنْ من فنژن الْحَدِيْثِ الاو قذ صف فيه کناب 

شُفردا و کاد کما ال الحافط او بکر بن لطفة: کل من انصت عَیم 

أ مدب ایب عَیَالَ على که لم اء بطم بض من 


عرجالظر 000 ی SS A‏ و نم 

ابا ويفا ماه "لالما "ور حفص المیانجی جرا ماه 

"مالایسم الْمحَدّث حَهْلَه* و أمْنَالْ ذلك من التصانیف الى 

ترجہ :ان سب ات کے بعدخطیب اب وبکر بخ راو لتق یف 2-۱ انہوں نے 

توا نین روا یت یجن اصول عد یٹ مل“ اللفا “نٹ یکناب فر ال ارآ داب 

روایت شس ابا لا داب اخ و السا مع ' "نا کنارف الوم عد یٹ 

یس سے بر انہوں نے ای کتصیف طرو رک ہے یہالیما ہی ہے جییے علامہ 

این نقلہ نے فر باک جو1 وی کی را تصاف د که ده اس با تک جان ےک اک 

خطیب کے بح رتا معلا ءاصول عر یٹ خطی بک یکتب پرا تا در تے ہیں ۔ را 

کے بعد چند ا خر بین علا ءآ ۓ بو نے الک سے اپنا معتز بر حصہ حاص لکیا 

.ی عیاش نے ” لاسما ع“ ا ی میتی کب رمیفر ماکی اور امام اتف 

ال نے ای کشقررسالہمنام ”مالایسع المحدث هل“ لف ایا 

ال علادہ اتکی بہت سار یکتب ( اسفن شآ یکی ) جنہوں نے 

شرت عا مها لک »اور کتب مہہ صلی ہیں تا کا نکم زیا دہ ہواو رض 

مق ہیں کال کش ں7 جا میں۔ 
خطیب بفداد یک یک بک تذکرو: 

گز شت ین حضرات ( ی »ماک اور وم )کے بعدخطیب ابویک بقدا وآ ے انہوں 

نے اول عد کے مقر ہم پر یتنا بھی ور علوم پل ھک یکی 
کت بی ہیں شل :قوا نیع الروایت ٹل ” الکفاية فی قوانین الروایة“ تفر 
آداب‌رهوایت ٹل ۰٦‏ الجامع لداب الشیخ و السامع“ الوم مد یٹ ٹل 
خطیب بغراو یکی تصا تفلک تک وج ے علا مہا ہن نق نے فر ماک خیب کے بح رآ _ذ 
وا نے علاء اصول عد یٹ ا نک یکت ہوں کے خوش چیس ہیں ہز | خیب کے بح دا نک یکتالوں 
سے استفاد ہک کے بے شپت ضر و ری سل لکیاء ا اء ار جا لک یکپ مل خیب کے پارے 
می سکم کہ ی ےآ خر امقر ین او ر آول ام خر بین ہیں مت ان پر کر نز ین کا سل لم 
ہو جانا سے اوران ےآ کے ما خر بی نکا سل ل شور ہو جا تا سے ۔ 


تاعیاش اورعلا میا کی یکنا بکا ت کر و: 
بعدازاںملم اصول عد یٹ ٹش برطر کی تصا تیف سان ےآ یں جن لس قوب 
برغ شی ل کی تک کش ہاور پر رج ی بی رعا ل ہن ٹک ی کان ے فد تام 
حاصل ہوا وربخ شکب میس اختقمار رفظ ر رکیا گیا اکم بط مہا و یکو ہا فی سے ذ نشین 
کیا جا گے۔ 
انی تصانیف تق ی ع شح ي فكد هناب ”الالم اع إلى معرفة أصول 
الرواية وتقييد السما ع * اورعلا ما یفص ال ی قر رال " مالایسع المحدث 
حھلہ“ گی شال ہیں۔ 
YF‏ بل بل TE Kr...‏ جا یی 

إلى ان جاء الْحَأففظ اه تفی الدَيْن ابو عَمرِو مان بْنْ الصاح 

ار من الشهْرور لربل مشق فُحَمَملَما وی تَذریٔس ابیت 

بالمذرسة الاشرفية کنابه المَشهور هدب فنونه وأملاه شین بَعْدَ 

شى فلهُذا لم بْخصل تريب على الَْض الْمتاسب واعتنی بعصانیف 

الحطیّب المتضرقة قمع شتأت مماصیها وضع إِلَيْهَا من عَيْرِمَا 

نخب فراییها فاجتَمع فی کتابه ما تفر فی یره قلهدا عکت 

اس سر و نی مشش کم رام له و نیز 

وَمسْتَدرلهٍ عَليْه وَمُقْتصِرٍ وَمُعَأَرِضٍ له وَمُنتَصر - 

یال رل الد بن ابوعمروعثان بن الا رح عپرالرگنی 

شور یک با ہآیا چوک یش میس تم و جب ال در اشر فش درل 

عد بیث پر وکیا گیا لو ال وقت انہوں نے اپ ور ز مان ہکتاب ( مقد مہ ابی 

الصلا رح )کون لی کر ور کیا اور ال کم فو نکو مز بکیا اور صب 

ضرور نکھوڑ اتو اکر کے ا سے اما مک رایا ای بر رت سا اون 

طر بیقہ تب مو کا انہوں نے اس میں خطی ب کی کلف تصا یف پر اعتا وکیا 

ءا نکی تصا نشف ےت مقصو ری موا ووی اکر کے اس کے سا تجح اس کے علا و مکی 

مفید مضا نکا اضا کی نو انوں نے اپنے مقد مہ ٹل دوس یکمابو لک فرق 


TT:‏ کے مر ےس سد کا سس ما 
اتو لیکو کی کرو اء ای و ےلاک( الما تب( 
مگ اور اتہوں نے ال ( قد مہ ) - کو اپناکر بی طرز وطر وت 
اتتا رکیا »ی اب شاد سے بالات ےک ال قد کو بصو رت م چ کر نے 
وال کتے ہیں اور بصورت اختار می کر وا کے ہیں اور الک 
روز اشتون کی ہلان کر نے وا ے کے ہیں اور اس پر اعتر ا کر نے وا لے 
کح ہیں اور یھ راس کے جواب د ےۓ وا نے کے ہیں - 
مقر مہا بن صلاخ کا کر ہ: 
خلیب بغر اوی »قاط عیاش اور علا مہ میا فی کے بعد ام علم ا لک یکت ے اسنا دہ 
کرتے رس یہاں ت کک بالگ بن الصلا رح شفروری کاز مان ہآ ی تو انمہوں نے خطیب 
بغراو یکی فرق تصایف پر اعتادکرتے »و -2 ب در اشر نیہ مل پیر دک درل عد یٹ کے بحر 
ای کاب تا لیفک نا شور کی جنس میں ول علوم صد ی کو ببہت کی مبزب انداز مل 
کیا اور وق فو ا ا سک املا ۔کر ال یمر چگ ےکا ب صب‌ضرورت و کے درو کا وم 
یوق ان نی فک یاک وج ےمم عد یٹ سکن برانہوں ےتلم اھا ا ےج 
وز اند سے مرا مہات ہی خزرب انداز ملیف اوقت دی ان کے رتت راق کلم 
ک یکوئی تر تیب یج سک وجہ سے مضا شی نکی تر تیب کی اورمنا سب طر یق رل وگ _ 
جا م انمہوں نے بیجن کیہ تیر خطی کی تلف صا ف میں کر ے ہو مقا صد ہ 
ما کیک کر کے بیان فر مایا ای کے اتی کی بہت بین اورمقیدف ان رکا اضا کی فر مایاء بہرعال 
ےکا ب ت تیب ت تن کے باو جودتصاخی کیٹ رہ کے تفرق فو ا کا جمو یھی بتو امه 
ا ےغمت جانا اورا یکی غرم یگیل اس کےتضورگر کے اور ای کے روط یکو اپا اور 
ای برا ٹداز سے عدم تک ء چتا نا مرز بن الد بین عا او تی نے اس مق کم شل پر و 
دیاءعلامہ ہاگ *علامدای نکر ادرا ما اوو نے اسے اختمام ساتھ کچ ناما نی 
سا ا تق رر سال کا م "الا شاد" کم »را ےکی شق رکیا تو ایکا م ”'التقریب 
والتیسیر فی سنن البشیر و النذیر“ دکھاء اک رسال ہک شر علام یدن نے ر یب 
الراوی کے م ےی سے جک مار »پا داشل درل ے۔ 
علا مت اور علا مہ مخلطا ی سے ا لک ف روز ات ںکو برش ر رک ےکر اس پر مت رک 


را نظم و کممعِيِٰیي۷۷ٰ۷ي۷یئفٰٰ'ٰ' 9 وم سے PANN‏ 
فراش علاء نے ال پر اعتراضات کے ت علاء کے مقر نے ان اعتراضا تک اب 
دج مو سے ال یکسا بک دداورقدم تک او رال کے رموز ومطا لم بکوخو فص کی تیر 
بان فر ایادخ ححضرات نے ا کا لیا خا رک یکیلک جوا متا صداصل رک ام ل 

ہوا۔(شرں القاری:۱۳) 


فاعکت کی افو یز : 
العکف والعکوف: هولقبال الناس على الشیئ ملازما له بحيث 
لایصرف وجهه -(شرح القاری :۱۷) 
207 مطلب مہ جک وگو لک ک چ ےکا ی رر قوج ہکا رکز ینکر مضب وی سے پا 
کاک سے پچ را برا نہ جا کے ۔ 
تخب ی لغوی ن : 
نخب:ھو حمع النخبة على فُعلة بمعنی المفعول ی ما ينتخب و 
يختار »والحاصل خيار ماحصل من الأفكار فى علم ال خبار- 
یی نخد قعل کے وز ن مرق مفعو ل ےب لہ اا یکا ق ہے ہوا تج بک بو اور چ 
مون چ ال الک مطلب ہہ سکم اخبار (علم عد بیث ) فور وخو کر نے سے اذکارو 
ز من میں جو چیرہ چیر ہ قب مضا نآ ے ہیں ون کے ہوم س وال ہیں - 
rE KK‏ ی ی 
فسالیی بعش الوشوان أف احص لهم المهم ین ذلك فص فی 
وق لطبمة سمیتها "نب الفکرفی مُمُطلِح ال لش" على 
ترتیب ابتکرته و سَبيْلٍ لته مَعَ ما ضْمَمُہ یه من شرّارد الْفرَائدِ 
و زَوَابِد راید 
2 ج :یں هیر ییا وله سے اس خوا شک ا نها رکیاکہ س ان 
کی اس( قم این الا رع کےا ہم مض می نک یتفم سکروں + میس نے 
ا نکی بات ما نکر ا یکی چتاطیف صفیات لت شکردی جکا نام شش نے 
وی فک یم ال الا رکھاء( ےش )ای 2 تیب پر ےج کاٹس ہی 


عرجلظر 42 .9" سس تس PT‏ 
مو جد ول اور یت کک وط یقہ پچ کے یس نے ہش کیا ہے ء مس نے اس 
کے سا تح گرا ری مضا نک ا ضا نگ کرد یا ہے جک( دوس رکب سے )بر کے 
4ے ہیں گرمفیر یں - 


تو الک رکی وجرتا لیف : 

اس عبات میں ماف ےا کے نکی دج تالف ذکرفر مکی ےک جب مقد مہ امن صلا 
جا ہونے کے پاوجودمنا سب تر تیب پر تھا تذل رشن الم احباب نے حافت این چ رے 
درخواس تک یک ہآ پ اس کےا ہم مض شی ن کی خی کرد یں اک عد ہے ان صرح کے غر مرب 
بذک ری ہوجاۓے۔ 

عاف نے مایا کان حرا تک درخ اس یکو میں یو لکر ے ا سک خیس ام 
”نخبةالفکر فی مصطلح اهل الائ“ گیودی اوراور یرانک تیب یاک 
تیب اس سے نی یں یی لہ اس هی اس ت تی بکا موجد ہوں کان ماه 
امرف ص تفا نکیا لیکش هک سکیس تم سا تد ا لے کات لطیقہ اور 
ال مکی کر کے ہیں جرک نایاب ے۔ 
شوارواورف رات دک ن اورعراو: 

شوارد الفرائد: ها لعف تک اضافت موصو فک طرف :ای الفرائد الشاردة 
من ایے ال حر اورگت لطیفہ ج کہ ذ بن سے کان هید ہیں اورا بحدکی وجہ سے انیل 
ما کر ت ہت شکل »وتا 

فراکد: یی 3 کب بڑے بڑےموتو افر یر کہا جا اجب 
زوا قاری ری مات : 

زوائد الفو ائد: ال بلک ا پر ای پات پد لا فکرتا کہہے جملہ بل جملہ رم طوف 
بط ف آفی ری ےگ اتی تا رگنب هکره ہل 'شواروالن را سے وتات وموا نی 
اور ماش مراد ہی لک نک تاق دوصرے علا ءکیکتابوں سے ے نی یا نکتب می یں 
بل ءاور دورب چھل از وکا فوا یر ے مراد وه مال ولو ار یں چوک قز مین ے 


عړو لر هم یو مین دا ماو فلع وی یه هی ی و یی ۵۸۵ 
فروگزاشت »و گے ہیں ۔(شرں القاری:۱۳۹) 
ود ہو E FT...‏ 

قرعب إل کیان آضع علنها رحا جل رموزها و ي کنوزها و 

مُوْضِخ مَاحَفِیٗ على اند من ذلك ۔ فاجبته إلى سواه رَعَاءَ 

الانیراج فی لك مسب بَالمت فی شرجها فی اویضاح و 

الَوحيه وت علی عَبَأيَا رَوَايَاهَا لاه صأجب الْبيْبِ آذری با فیه 

نطهر لیگ یره على سره لبط ی و دمجها من تَوضِیْجِھَا 

رف فسکث هنم الطْرِيَقَة له سالك 

ر و پر دوستول نے دوبارہ هس ہے درخوا س تک یکہ ٹس اس مق نکی ایک 

اک شر گکھوں جو اس کے اشارا کوک لک ےء اس کے مز ای سے موہ درک 

کر سے او رای میں سے جو چ ڑ می مدکی ےی دق ہیں انیس بش خوب داش 

کرد سے یں مس نے ال امید پرا نکی درخواست پر ابی کہ اک مرا ا بھی ان 

مسا کر( مین شل مندرن ہوجائۓے »بل الک شرع کے ددرا شش نے 

الغا ی دضاحت اور معان کیم خوب ا عبط یت کی ہے( درخواست کے 

سے )اس 2( کل )ک ھا جنات ی اخددوئن نماضرا مور ےخوب واقت و 

بار ہوا ہےء بیس مر خیال می ہے سور تآ یکہ ا کی شر کو خو فصیل 

کیس تم لکنا تی زیا دہ منا سب ہے اورا یکا سک شر میں بصو رت ناف و 

فی پیک با اتر ہے :و ٹس نے مہ الماراست اخقیا رکیا ےک جس پہ لے وا ےا 

افرادپہ تکم یں - 
شرب زی الف رک وتا لف : 

اک عبارت شں ما فرح بک دجت یف اورا می اپ طر بقع بیان اور یکا ر بیان 
فرمارے ہیں۔ 
عافظ کے ارس سس ھا 

تو کر مت نککھا نو اگم اس سے استفادوکر نے ہگ رض متقامات باستنا و ؛مشکل لگا 
ت مرس دوستوں نے دو ہار مر ےسا نے قوش اب یک ہآ پ اسم نکی شر ںبھی 


عرجرنظر یرگ کرت تسس سرت سس سی کی نٹ 
ککے ری کرای ےا یکن کے رموز او رھش کل مق با لل ہوجایں اور ای کے شه 

معا دمفا تیم فان سے قیاب جٹ جاۓ وی کے سا سے ا کی گنی با خوب 
داش ہوجاتیں۔ 

ماقرا 2 ہی یک میں نے ان دوستو ںکی وا کل وملا رک و لیم رلیا اور ال امید پر 
تررح کی کیت آمادہ ہوگیا کہ میرا نا بھی اکم کے ی کی مق ہیں فرت میں شا 
ہو چا سے ۔ حا فی نے اس درخواست او روا یٹ لک وچ ہے بیان فر ال کہ چوک ن هیا تیا 
ہوا تھا و اس کے رموز وغیرہ سے امد یں خوب واقف تھا اس لے مه ہی ا کی شررت 
کابارڈالاگی کے صا حب نا اثر وز خان معا طا ت ساب ری باخ بوتا ہے مہف امات کی 
ہاب کلکش ا سقو رکا ی مصداقی موی _ 
ا کا طر کار : 

حا فر مات ہی لک جب میں نے شر کک کاعز گر لیا او مر ے ف من میں یہ با تآئ که 
یشرع خو بصب کیت مکی چا ین از اٹ نے ایب یکیااورشرئ گت ہوۓ میں ےن 
رح تی کو بای نجل رگا تن شرع میں نے اش یکر کے اطرز م اکتا ب کوخ کیا 
جک ایگ کناب ہے ورج میں ہوا ورن وشرح رو هم وشارتہہول- 
رجاء الاندراج کا مطلب: 

قولہ:رحاء الاندراج: ال جم کے و بل یں ما لی القار نے اس کے تین مطا لب بیان 
فراع ل: 

۱)...." آی راجيا دحولی فی سلك المصنفین و مقاصد المولفین لتحصيل 
الشناء فی الدنیا والحزاء فی العقبیٰ“ ال امیر( یش نے دوستو لگ درتواستاو 
تو ل کر )کی غین کے سا کل اورم لفن کے متا ص ر میں شال ہو جائوں تو دیاش 
آم یف او رآ ت میں ج اء رے رہ ور موگا_ 

۳).. ای راجيا اندراج الطالبين لذلك الملخص فى معرفة اصطلاحات 
المحدٹین“ کرال‌امید پر( یل نے درخو اس تقو کر ی ) کہم ا رفص میں مندرج 
اورمشخول ہوک مرش نکی ا صطلا ما کی مح ردت عا کر سی ے _ 


عو اتر رات بات سای SESE‏ ۸۳ 


کماینفع بتلك الکتب“ کرای‌امید پر( ٹس نے مطالبہ بور اکیا )کہم رک ےکنا ب کی 
ام گرا م کت کے لک پات ےکی با بی طو رک بل ط رع ا نک کت ے نفع حاص یکی 
جانا ہے ای ط را سکاب ےکی ان سا لکیا جائیگا۔(ش رح اقا ری:۵۰٠)‏ 
دشرا نکی ہے اید پودی #و لک برطا ب م عد یٹ ا کناب سے استفاد کرجا ے » 
ال رتا لی حاف ظ یکناب ک‌طرر] می ری ال شر ”عو نظ رز“ کوبھی ای طرح متو لیت تام 
ع یت رما اورطلی هکم عد بی ٹکو اس سے استفاد ہک ےکی فو فی عتا هت فر ما ئے اور ا سے 
میرے الد »یماسا تو اورمصرے لے ترآ قرت بنا ےا تم لیمیں 
جو بل جار ...ا ا جا یز 

اقول طألبًا من الله لفق فیما مُنَا : ابر عند عُلَمَاءِ هذَالْمنْ 

مُرَاوق لیب و فيل : مَاحَاءَ عن الثبی صَلی الله یه و على آله و 

صَحْبم وَصَلم ء وَالْخَبْر ماجاء عن یره وَمَنْ تم یل لِمَنِ اشَْل 

بالشوارئخ و ما شا گنها الاخباری و لِمَنْ بقل بالسثة له 

من غير عکس ویر لب ریهاشم 

2 جم :اس موا ےے میں اٹ تیا ےلو بق طل بتکر ے ہوۓ مم لکبتا ہو یک 

ار کےعلاء زد یل رحد مث کے متراوف ہے اور( یکی )که گیا سک 

وضور اکر م صلی ایل علیہ ںیلم سےمنقول وک رآ وه عد یٹ ے اور جآ پ صلی 

اشعلی سم علا ووک دوسرے سے قول موو وخر »ای وجہ سے اس1 دی 

کداخپار کہا چات ے ج رع اور ای کے مشا ہا مور یں مشخول بواورا سآ وٹی 

کومحر ٹکہا جا تا ہے جو سذت و یاپ مشغلہ ہنا سے اد رک ہا گیا ےک ان دوفول 

سے ورمیان عموم وضو ملق کی نبت ہے نہیں بر عد یٹ خجرہے من 

رصن فتن رک ہی کا تیا رف مایا ےتک ال ہو 


تر : 


اک عپا رت مل ما ف راد رحد ٹک یت ریف اوران شنب تک بیان فر مار ہے ہیں 


صا ث ینوی آمریف: 

حر مث لفوی ‏ چر یړ( ضر الق رکم ) ل» إعداز ال اے ”مایتحدث بے قلیلا 
کان آو کغیسرا “ کی طف تقو لک رل گیا جی ابق ا نکر م ٹل ارشادے ”فلیاتوا 
بحدیت مثله ان کانوا صادقین*-(امعانلظر:/۱۱) 


مد ی کی اصلا گی تحرف : 
اصطا ل عد بی ٹک تع ریف ہے ے: 
"الحدیث ما آضیف الى النبی مه من قول أو فعل أو تقریر أو صفة“ 
ین جس تول بل تقر ہے اور صف تک یرت حضور اکر ص٥لی‏ اللہ علیہ وم کی طر فک گا ۶و وه 
صدےث سکب 
ٹراورور مث کے دورما با ست : 
مد بی کلف چان لے کے بعد اب عد یٹ اورتیر کے ورمیا ن یں یں کے :ریغ 


اورر کے درمیا تی اختلاف الاقو ا لکل جن ہیں ہیں : 
(۱) رارف (۲) ین (r)‏ کت 


..۔ ےت 
ک ہیں کے جو صلی اللہ علیہ وم سےمنقول ہو اور جر رےممقول ہوا لکوت رین 
گے یج ہی لی اش علیہ یلم تقو پرقول کرد یش کیل کے اے نمی سکع 
ادرغی بی سےمنقول پرقول وت ونر هر یل کے اے عد مش لک »ات ای نکی 
وج ے رث صرف ای ہیں کے جرک سفت سول اٹہ عل کم کوا پا مشفل بنا نے اور 
خا ریا سق کوگہیں کے جوغیر خی کت اور وخ رو ییا نکرتا ہو کان برای نکاقول 
ضیف ہے سی دجن ے عاف دا یذ رٹیل ”قیل“ سے بیالن ابا > ۱ 


۳ رت للتریف: 
جار کی پات آذ رات دی کت ریف نت جا »ای قاری فر مات ہیں : 
"التاریخ هو الاعلام بالوقت التی تضبط به الوفیات و الموالید ویعلم 
به مایلتحق بذلك من الحوادث و الوقائع التی من آفرادها الولایات 
کالخلافة والتملك و نحوها"(شرح القاری::۱۰) 

۳) تس ری نبت ہے بیان فر اس کرالن دوفول کے در میا موم وخصوش سیک نبت 
بے عا بیش ای ہے اورخرعام ےن جو صد یٹ بر اس پر رکا بھی طلا ن »سنا سیگ بر 
خر رحد ی کا الا ن ضرور یل - 

اک وج سے اف نے ا ےکی یف نت رٹیل " قیل “ سے بیان ف ایاے۔ 


اغ کےلوی اوراصطلا ی لر ښ: 
رن کے کلام سل ان رو( حر ےش وٹ ر) کے علاوه آي را افو 1*۰( بھی 
اس مت * بقیة سی نی یف سل زب 


کے اقوا لکو ایا رکر سے e‏ ود 
یل»وهو الاظهر- 


ےت وت 7 کت 0 
فا ,کی اصطلاع لا ”اقوال السسللف “کو کک ہیں جج بو الا ما لقو رای نے اتو ال 
الا کیسا تج ا رونام کیا سے -(اموان اف ر,ص/۱١)‏ 


ملک مطلپ: 
وعبر هنابالخبر لیکون آشمل: : حافظ کا اس عبارت تلود ہے کر ہاں ٹل 


نے تما ماق ال اورقا م بتو لک رمات تے و ئے ٤‏ مز کاب راخ رک ے ای آشمل 
على الأقوال الشلشة »یل کے مطا ین فو بات وا 08 


عرڈانظر BBA NERA ei‏ 
بھی ذکرہواس ملول کی چ 
۱ ووسر ےقو ل( این )کے مطاب بھی خی رکوس لئے ذک کی کہ ج بآ ده زک ہو نے وال 
تو اعرا سخ رم فو طط ہو گے جو خی رخی ےمنقول ہو ہت ود امور اورقو اع دای حد ہے یں بطر لن 
او یھو طط ہوک جو بن یریم سےمنقول ہو 
تیر ےقول کے مطابق یال اس ط رح ےک اس تول میں رامق اور عدہ ہے 
کہ ”کللما ثبت الأعم ثبت الأخص “لب اج بت رک نجیر سے اعم ما بت موا ال ے 
ات جد یش می خابت ہوگا- 
رازن یز رشیدعلا رت رقطلو بنا ا قرب اتاد سے نا خوش ہیں ء چنا چو فر کے 
جک ا س تر ر میں اطا بل کے سا تساه ایک الک بات بان فر ا کی سے کی یں 
جاور وه یرقاعهع:" کلما ثبت الاعم ثبت الاحص“ لبز ایت رل 
اس کے بنیز رشید ند یک ج باتک ہے ویک لک یبال "اشمل على 
القول الاخی "مراد ال سے "آشمل علی الاقوال الثلثة“ رارک سے ہز ١آ‏ زی 
تو لکو لے ے اف خر صرف عرفو کوش ل ہوگا اور پور کے علادہ دہروں کے ردیل 
موقوف و نف م کوش ہی ہوگا_ (ش رح لی القا ری:۰۱۵۷ھ۱۵)۔ 
ود دی دی دج دی دہ 
قو اعبار وُصُوْلہ نا ما ائ کون له طرّق آی اند کیره لان 
طرفا حسم ری وف فی رة مُحْمَمٌ على فُمُلٍ بطمتین و فى 
له غلی أَفُولو و له بلطرّق نید و لاس جكاية طرْي 
لت و امن هُوَغَأيةً ما هی یه شتا ین الکلام۔ . 
تر :یت ر مک کے کے اعقبار سے ( کی اقا م هک )با اس ےکی 
طرق ہو گے تن ا سا نیرک رہ ہو گی اس ےک طرق بر نک ہے اور 
کرت میں جل کے وزن ( ہونے وا نے لفظ ) کی جع ل ے وزن 
پل ے اور ( اک وزن پر ہو نے دا نے لف کی مع )یح قلت یں اقعلع کے 
دزن مآ لاور (یهال ) طرق هآ سامیدمراد ہیں او رن رواهت ے 
عم رب قکو یا نکر یک نام اتاد ہے اور کلام پےاستا وی مون ے ا کون 
کاجاا سح 


تشر : ۰ 
ال TITS‏ اتام پاعتپار الوصول زار یں <( ژکوره عیارت کا 
وضا حت سے پل ر ف یربارت می : وه اقا مجر ا نکر ے ول - 


مر اقام: 

عاف نف ماتے ہی ںک رخ رک ابتراء دو عا یں ہی ںکہ با 2 اس کے ط رک رہ با حر عدد 
ہو کے با حر عر کیا تم ہو کے ہی صو رت میس وون رخ رمتو ا کہلا نی ے٠‏ اکر ووس ری صوررت 
ہو پر تن حالجس ہی ںکہ یا ال کے طرق دو ے زیادہ ہو کے با صرف دوطرتی ہو کے یا 
مرف یک بیع لن ہوگا۔ بی مورت مس نرق رہد بل ہے دوسرکی صورت یش یر 
عمز ہلا ہے اور ری صورت مس بیرغ ی بابلا ہے ۔ ہے چا راتا مر ایی اعقپارے 
یں :ری انس اوه اور اقتا مبھی ہیں ج کے1 ںی ۔ 

رک با تیا رالوصول کور ہ اقسا م ار ہو کے اج ھا کے کے بعد اب ا ن ک اتیل ہیا نکیا 
جانا ے٤‏ اب تلور عپار تک وضا حم تک طرفآتے ہیں۔ 


لففاطر تک وضاحت: 

ال عبارت میں ماف غ قول "طسو ق فی را ہا رکیز کیا تج ےک ے٢‏ ای بر 
انا ےک طرق ۳ طریق کج کیل کے وزن پہ ہے اد قاع ہے ےک 
عو یکی کر رب شش ےون پآ ن ے اورا یگ تلت افملا ےوزن پل 
ہے ای وج سے طر قکیتفیراساخید ےکر کے ہو ۓ ال کے مات ےکر کی عض کی وکر 
زا تاک کثزت پد لالت ہو کے ۔ ال سے معلوم ہواکہطرق سے یہال اسان 
کیره راد پیب - 
سن ری اطا یتح ریف : 


اب دال ہے کرس اورا مات رک ےکے ہیں ؟ 
اف نے فر مایا کت عد یٹ سر کو بیا نکر کا نام سند سالک جع اسا نید 


مقر نکی اصطلا یت ریف: 
من هد هر فک ے ہو نے فرماتے ہی ںکسند.. یٹ کلام مشا پر با کلام سورع 
نتم ہوا سکلا مک ن کیچ سا 
قال آبوداژد حدئنا عبدالله بن مسلمة بن۔۔۔ عن آبی سلمة عن 
المغيرة بن شعبة أن ای کان اذاذهب المذهب آبعد- (ابوداؤد) 
اںحدےث ٹل ”کان اذاذھب۔۔_' ناکامک کا مو سے 
حد شآ مراد ے او کلام مشار سے عد شاک مراد ہے۔ 
YK‏ لہ کر FE...‏ جا FE‏ پر 
نک ا2ی 7۸ ۱ زحدث اکر عقد شین بل 
حول الْعَاَدَه قذ أَحَالَك تَرَاطَهُمْ عَلی الکذب و کذا 0 
تا من عیر قَصْدٍ فلا مَعُلی لتغیین العَذدِ ءَ على الصٌحیٔح۔ 
رھ کو تق ک بت این و جک کی 
رون میں ار کے ارب گرا کر روات کے و ای کل اگذ بکو عادت 
محال قراردے ای رب اقا اور را رارک طور پر ان هو کا ص رو ری 
حال ول اج تول کے مطابی (ا یک کو کسی ناس عرد کے ساتھ 
ماف نکی روز نے 
بلاط کی راما دکیٹ ےکی .ای ر ےکر ت لی 
الوا ےآ ری _ 


کف نو ا رکا مطلب : 

ا یکت طرف اشار هگر ے ہے ی 
جم شرو ط جس سے ایک شرط »ان تما شروک بیان اگل سات ںآ د پا سے اور مک بت 
کشک خمائص عرو کے اند نحص نہیں ی روا کی اتن تعداوقصود ے س کا ھون کے 
ہوا عادخ ال ہواوران سے رقص ی اور اتاق طور کی مور کا صرورشکل وعال ہولیذا 


یع تول ی کات یکرت می ںکوئی نا تراد نگل » نہ ا یک تک کی نای 
۱ عرو یل انار اس کے ملا و وین حف رار سک شا مت یت سے لو ا کیک تک 
ام ام اراد کم رک رن ےک یکیش نک ہت ہم وکو بی نیس ہے ءا نع کرات کے 
اق ال ضف کا کر عاف اکی عبارت میٹ درک بیس 

چو YE r... E‏ جج 
ومهم مَنْ عَنه فی الأرَبَعَة یل فی الْحَمْسَة وَقِْلَ فی السْبْعَد رل 
فی َر سب مہو تو وی 


نا لیم وی تلاز اك رۃ فی عو اعمال یاس ۔ 
2 :ان یس ےش نے تو ات کے عر وکو چا د کے مات ھک اح کیا سے ء او رکه 
کی کہ دہ پا م فحصر ہے او کہا گیا کہ دہ مات می خصر_چ او رکہا گیا 
ہ ےک وہ عرودل ہے اود ایک تو ل ہے س کہ وہ عد د ارہ ہے اور ایک تو ل ہے س کہ 
272 باس ہے اور ایک قول سرک ےان کے ملادہ او رگ یئ اوال یں 7 
کے مال ے (اۓ تیر عرد ده ول کزان ےجس یں وه عدد زور 
ہے وراک عددنے اس متقا م تقد نک فا کر« ہاگ رای سے اس عر دک اس ولیل 
° کا و دوس ری چ شس نک ارو دا رور ی یں ےکیوککہ اس کر 
ساتھ الختا لکا ل مو جور > 
رن 
تو اتر یکت مکو اص تدان ہے پا یں ؟ اس سے حلت ی قول یط بیان ہو 
چکا کرای می سکوگی خاش تح داد ن یں سے پل 2۱ راو یو لک ہوم ا ضروری سب کا کا 
جا ری لپا بو 


کک تو ا کے مار سے معا اق ال : 
کرش رات ا سقو ل وشل مکی ں کر ے کو ای تاک ا یوو یی ا 
تک سے ہیںء اوروواس عدون کی خا وات سے استد لا لک 2 »و2 کے ہی ںیک 


عرچانظر eS‏ شاه ا۔ و۵ 
اس داق یش ال عرو نے لغ نک فدہ دیالیذ ا١7‏ کے باب شک دو عرو لقب ن کا فا نرہ 
e‏ دوس سس 


مر کا ہو ضروری ےءانہوں روز کی تدراو ے ار لا 1 عل چا پا 
ہد تے ہیں اور چونگذ نا کے ہاب هل چا ر کے عرد نے یف نک فا هدیا لہ الو ا7 کے باب مل 
بھی پا رکاع ر دیق نکافا تا ەد ےگا ءا اپار ے هانگ چا رطر یکا ہوناضروریاے۔ 

(r‏ ×× بش ےا ا رک یک تکوعدولعان پرقیا کر تے ہو سے پا کے اتی سکیا ہے 
۳).... .یتو حضرات نے ا سکو سان وز لن اور فد کے ایا مکوج نظ رکھتے ہو ے سانت 
خم کیا ے۔ 

E جک ف ہے‎ (r 


:وبا منھم وی 
"0٦‏ ۰ بط نے اسے چا لیس کے سات کد نکیا ہے اور کے طور پر یرآ یت می لک تے ہیں ۱ 
«یایها النبی حسبك الله ومن اتبعك من المومنین 4 (۱۰:سورةانغال )كاي 
1 ات مس ناماد یس وگ 


آ یت میں سط سا ا فان و :سور)اعراف ) 
۸ ...8ہی نے ا سے کل کے مات صو سکیا ہے او رجا تل یٹس یر مت می کر ے ہیں : 
”ان یکن منکم عشروذ صابرون یغلبوا مأتین"(۱۰:سورانقال ) ۱ 

4( ۳ تخاب بد رک نحا وتن سوتیرہ ےترک ل ےک فش سے اس کور وع رو کے 
یوکرو یا ے۔ 

کر ھا فاب نت فر نے ہی ںکہمکودہ اق ال ےق کی نے ج یس واقہمیش نرکور مرو 
سے اس اپ قو لکومو ی کیا ہے اس عدو نے اس نا داق یش اورا تا مانے میں نے 
یق ن کا فا رود یا ہراس سے مہ لا ز مکی ںآ تا کروه خا ص عرد باب التو ات می۲ بھی شا کا فا ره 
د ےکیوکمہاس عرش اس با تک ال موجود ےک ووا داقر کے سا تفش مولز | ”اذا 


عر ڈانظر S4 A RG SSR Rd‏ 
جاء الا حتمال بطل الاستدلال “ کےےمطا بی ان کا اتد لال بہت ی رکیک ہے بس پچ 
اع وکر کل ے _ 
ود KK YK‏ تی رہ 
َا ورد ابر كذلِك و انضاف إِلَیْه أن پستوی الامر فیه فی الْکفْرِ 
رَو من ایدایه إلى انیَایه وراد بالاسیواء أ لَأیَنّص 
مره امد کور فی بج بعض المَوّاضضع ل أن لا يريد اذ ردنا 
5 ئوہ 
الْمسُمُوع لا ما بت بِقَضِيّة الْعَقُلٍ الصَرف - 
2 جمہ:ج ب خ الط رآ »اور رال ساتھ ےا مھ یھو ظا # کک حر 
زگرہ اس( خر کے طرق ) یس صو رر ے کر وصول ترک مساوی ام 
با رےءاور ۶ ت کے ساوی بو نا مطلب ہے کرو هکت ( سر ےکی 
کی )متا م شک کرک هل سے مرا کیل س کاک یل اضافرگی نہ ہو 
کوک باب التو اتر شس ز ون بطر ال طاو ب ے اور( باتک ف وتر می) 
کہا ط را کی اتتا کی ام ر مشاہ ہے اک ام مور بل تضیہ سے 
جات شد ہام را لک اناءنہہو۔ 


مو ات رک یکشثز کا یراب رین ضرو ری ے: 

رواک پٹ کل رت ہےء ا سک بھی شرط "کت بیان »یگ ہے اب عافظ 
نماد ہے ہی کیرات کے اند رک ستوطرق کے علا دہ دواد باتو لک موچ بھی ضر رک ہے۔ 

ان شش سے ایک بات ا ہے س کہ کور هورق ص ورخ ر ےلیک ہ مکک اسر کے 
کے تک ار رام باق س ےک سند کے کی مرعطہاددرموشع میں ال کثرت کی دا تہ ہو 
یی ایتا مره ھا وراو رانا رخ رتنوں مرا غل و هکثت با رہے۔ 

لہز ام ا ری تم نب سے دوخ رخا موئ یک سخ رکومطلو ےکر ر ےک طر کار 
روابی کیا گیا ھا لان بعد ٹس اس کے روات کی تقداد بڑ ھگئی بیہال ی کک انز کی مطلوے 
ک زت یک کی ن ا سخ رکومت اتر یں خرن سکیا ایکا »کوک مت ات کے ار ول مراعل 
(ابتراء ہشام اور انا ء) شی مطلو ہکثر ت کا بای ر ہنا ضر ورک ے اور ب کور ہر یں پیلے ہی 


و 1 No‏ 1 
مرعل(صدورقر) میں د هکت فقو ر ے _ 


کرت کے برایرر ےک مطلب : 

باب التو ات یش ج ما ہا ےکا ی میں نکر ہک ڑ ‏ تکا ہرم رعلہ یں برا ان ر ہنا 
ضروری ہے 'ا یکا ی مطل تلکسا اک کی خر کے روا جر مر طرش بزار زار تخ راہ 
یں موجود ریک مرط نایک عردم وکیا تقو وخ رمتو انیس ر ےگ » طسب بل ے 
بلک ہرم رع یں بو تخ رارک قباس ابر کہ با سے ای کم ہونے سے مطلو هکت 
سکول فر کل با ءلہ اوور باب الت ا سے خا ع کس موی _ 

حعافڈأفرماتے و ںک م نے ج کہا ےکہ ےکور کر رت ول مراعل میس باب باق ہے 
اکا ہے مطل بنڑیں ہ کت ات کے اند راک بھی مرعلہ یل اس تعداد یں مر یر اضاقہ تہ ہو 
لہ ز !ی مر عل میں اک را گرا سکثزت یل عزبیداضافہ ہو جا زو هبار ےقول متا یں 
کیہ باب الو ات میں ت کرت بی مطلوب ہو کیرک ج ب کر ر کی مو چورو رار 
سے یقن حاصل مور پا ےت ا کت ٹیس اضا فک صورت میں وہ لیقین او ی پاتصو ل٤‏ ری 
پا لوصول اورا تو ی الق ل ہوگا۔ 


سندکی انا کی ا مرول پاممو یرہو: 

دوسرکی یے بات روری ہ ےک اط رب کی انچا با کسی ام مشا ہر وت ده صد بعش 
وشلا :قال رایت رسول اللہ ۔۔۔ الخ ہا ا لک انچ کی اھ سو ی موشن ووقول عرش 
تلاکو می ی فر ما 2کر:سمعت رسول الله الخ لہاج ری اورسن رک ص یٹ 
قوی ان ی د ہو رو یل داائل سے مابت شره ستل بش موتو وہ اس ے خارق 
ہہوگا لکوت کل سند بیا نکر ےکر شل کرد ےکہ ”إن العالم حادث“ وٹیروؤ 
ہے باب الو از ست قاری ہوگا- 

ماف ےڈ ا7 کے متتنداجچا مکوام ر مشاب ر اور ا مور کیا نش فر مایا ا لک وج کیا 
ے؟ تش حفرات نے فر ا کہ چوک اکا نی ووا مور تی مون ےا نا بک اعتبار 
کر ان رونو کو نا ۶ طور پر ذکرفر مایا ورن ال ٹل ہردہ ام رشال سے جو جو اس سم 


طامرهع‌صادر وت 
تح حفرات نے فرمایاکہ چوک متواتر میں بان تول رسول( صلی ال علیہ لم ) سے بش 
مو یف رسول( صلی اللعلیہ وم )سے بث »ول ے اتر یر رول سے بٹ ہو سے 
2 پیل ام( قول) کا خن سوعات ہے اور دوسرے اهر( )اور تم اع( تقر ) کا 
ان مشاہرات و#صرات ہے ان کے علاوہ بقیہا مو رکون ب تیا سکیا ہا سنا اس لے ۱ 
یں ذکرت ںکیا۔ 
, شض حفرات نے فر ما کہ یہاں مشاب رو ب کا متنا لی ینا کر کر فر مایا ے لہ ا مشاہہ 
ور یھو ہر 
اکڑطور پرا خبا رل مسموحعوات سے ہو ے۔ 
لے و پل r...‏ ا جج 
ادا مم هزم الشووط الاربعا و هی ده که جات الما 
ترَاطهم و رقم على الکذب َرَوَوا ذلك عَنْ مهم من الابیداء 
إلى الانیهاء و کان من (نیهایهم الجس و انضاف إلى ذلك ان 
يصحبَ یرهم إِفَادَة یلم سامعه فهذا هُو المتَوَاتر_ 
ترجہ :جب ہہ چا رشان * وجا ہیں اور وه ہے ہی یک طر ات زیاده ہو لک 
عادت ان کے جھوٹ پر جع مو هکوجال بے ہ(ان طر کثره کے )روا 
کت هلاچ جیسوں سے اس خرکوابتاء سے انا نگ رواب تک بل :ا نکی 
اسنا دکا اخقا کسی ا سو پر ماو رمز ید ا کیت یمارگ رو ری س کر ان 
کی خر سام کو یق کان تد و حاصل ہو )کی ت رش ان شرا زی ار بد کے اجا 
کے بعداس پم لگا ما جا ئا کہ خر ا ڑے۔ 
27 ٰ 
عاف ا یگ شت طو بل یھٹکا ال ذکرفمارے نی کر مرکو رہ شرا می ار بو کے وجود کے 
بعد اس خ رکو ہم ن رتوا ایی گے وہ شراک ار ب کی ہیں ؟ ا نکو زرا ت تی بپکیساتھ ملاحظہ 
فرمامیں: 


خرو اتکی چا رشرا کر : 

۹ 4 کی شرط ہے ےکا ا کے اثر را یک ری مطلوب کہ عادت ال کت 
وت پگ کات اردے :ا سکثر تک ےکوقی زا مرن ہے جاک رگ 
یل پاد ری چ 


شعن ال سے ول رات کی جو سے 
»زمر م ں ات کت لباق ر ےجس سے یق کان دہ حاصل ہو جا ۓے۔ 

۳( 2 ترک شط یسپ کان روا کدی نارق نہ پیا ار 
لبون ا لتق حواس طابر مون یتو وہ عد عشآول بو لوق ال رسول الله 
کےالفاظ سے یا نکیا جاناے ا مع ت کج افیا رک چان ے یاوه هدع بو و 
”رات رسول الله * رز بیان جا جا اس مقر یکی دانلج» »بای 
ارک سے ام مسحو رع اور ام نو دوتول هراد لا - 


یقن کا نا ره ھا ل ت موق و وتان کبلا گی ءا کا ییا نآ کے ہآ یگا- 

یہ ےکور ہ چا رشا ہاج خی موجودہو نک دوش رش ر مو1 رکہلا شی می ایک رو نشی 
ہے ےکم اتکی کی موب - 
کرت کے با ر ےکا مطلب: 

دوس رک شرط بی ذکرکیاگیا سک صد ورخ رن ایام ےلیگ وصول لتق انچاءک 
مطلو رکفت با ق ر ہے اس حرط سے دوخ رع ۱9ت ے فار ہوي گی جوصدور اخ ر کن 
ای (ایتزاء ) کے وت اس کے روا طاو ےک رت ےکم خر بعد کے ۔ مانے می ان 
روا ۃ نشکا تآ کی یہا ں ‏ کک دو مو ےکر کوک با ا ین رکومتو ات لاس کے 
کوک مو ات کے انر اول» درمیان اور انتا م لول زمانوں می ںسکشثزت ملوپ ےء اور 
مرکور وخ ری اول ز مانہ می و ومطلو ےکر س مفقو رت ء ان تنل اوقات شس ات یکثزت کے 
بقا ءکیشرط ہو ےکا مطلب بی ےک ا یکرت باق ر ےکس کے نے اف کل ا بکو 


عړوالظر O SSSR‏ 
عادت ال »ال کا ہے مطل بل ےکاخ کو اولا روا کر نے وانے ایک رار 
افراد ےکر چا رک مرل یں ای ےآ د یک وکیا و اس ےم ہونے سے و هرت ال ر ہے 
گی وتک ای ےآ دی کےکم ہو نے سے ا سکثرت میں فرق ہیں با ےگا ء ای کہ باب 
لت ات سکوی اص عروقز مر ہے تیگ بک مرف اک ڑ ت رو ری س ہک جن سے 

یقت نک فا دہ و چا سے » اورو هکت ال ای ےآ دی کےکم ہونے کے اح رک مو جود ے _ 


مش٠‏ لک مرادکی وضا حت : 

0 0 عسن مشلهسم من 
الابتداء السی الانتھاء“ ال عات شل سکیا راد ے؟۔ ا کا سادوسا نہوم او وی 
ہے چم نے دوس ری شرط کے فی میس میا نکیا ہے۔ 

گر حضرات نے فر ای کل سے مراد یہ کرالن کے و اک الک بکوکی ما ورت 
مال قر ارد ے اگر چریلاگ تخ داد ل ان کے برا بر نہ #ول ملا سا تآ وی جوا ما کی عادل 
#ول اور باطنا بھی عادل +ول» یل ہیں ان ول افراد کے ج صرف ظا ہرأعادل ول _ 

ان جیرحافظڈ کے زار کے منا سب ال ےک وک اک میں صف ع رال کا کر و سے 
جب باب التو ا می صفا کا وغل یں ہے چنا حا تر کےقول ” ان المتواتر لا بحث فیه 
عن رحالہ“ ےکی الک دید و ریات - 

کر تن نے فر مایا کے شی جات ہے ےک اعاله عاد ےک دوصورجیں ہیں + 
اوق ر کش رت وصفییت کے خرن ہے او رش اوق یک رت وصفیت کے ساتھ مون ے 
یکره ره سے ٹیس جا تین روا تکر میں نے مرو یم کے تو ات علی از پو عا رت 
ال اردق ےکر میں جا ن کے اف عل اک بکو عا دت مال قر ارو ےکیلئ تیا رین 
اک طرں اک ری مت کو ہیں مفتی یا ہیں بد ری نٹ نکر میں تو اس سے شقن کا فا ره 
ال ہوتا ہےئیکن گر اک مت لکوٹیں طلبہ یا پاش ما یآ ویش کر فے اس سے وہ لقن 
عا کل ہوتاء حاصل ہے ےکہ باب التو ات شم ال مراد احا کف ب اور افا د٤‏ لقن پر 
ہے ا کا یاعد اورع ال پل - 


روا مت ات رکامسلران ہونا اور ھم ون نہ ہونا ضروری سے ال : 

ہی ا مس سی یی 9 ۷ ۳ 7 
ے ای اقا یئ میفر مات ہیں : 

” والأصح أنه لا يشترط فى المتواترالاسلام فی رواية و لاعدم احتواء 
بلد علیهم فیحوز آن یکوتوا کفارا وان بحتویهم بل“ 
( شر القاری:۱۷۷۱) 

کی بات بے س ےکن رتو ا می اسلام تن راو یکا مسلمان ہونا ش ول ہے ءاسی طرح 
اس یش ےکی شر کل ےک ججملہردا یک شر کے نہ ہوں :لیذ اتو ا کے رواة ک کا موتا 
ا نک ایک شی رکا با شندہ وا کول رج کی پات ےکر حضرات نے فر ما اک ہے دوتوں 
نز باب التو ات می ہا ین ہی کوت کنا رکا تو اف تاذ ب عا ل کل »ای طررج 
ایک بی شر رکے با شتو نک نک الک ب کی ال کی بک کنات یں سے ے۔ 


و الو اور ان ںفرق: 
دوسراسوالل ہے کر ای او رق ان می لکیافرق ے؟۔ 
ان دونوں میں رن ےکن الو میں جو انفاقی ہوا سے وہ اتان مشورہ اور با ای بات 
یت کے بعد موتا ےک کوک آدی اس کے غلا فی کر یگا۔ جب 2 افی میس شور هل ہوم 
چنا جرا التقاری فر مات ہیں: 
إن العواطؤ: هو آن یتفق قوم علی احتراع معین بعد المشاورة 
والتقریر بأن لا یقول آحد حلاف صاحبے ۔والتوافق: حصول 
هذالاحتراع من غير مشاورة بینهم ولااتفاق یعنی سواء یکون عن 
سهو و غلط آو عن قصد. ( شرع لاک القادی:۱ع۱) 
چو لہ لہ هد یر 
وَمَا خلت فده الملم عَنهُ كان مهو فقط فكل مات مضه 
من عير عکس وقذ یال الشروط ره إا حضث فی ایب 


الْبْعْضِ 2 وقد بت بهذا یرت تغریف الْمَُوَاتِر و جلافه قد يرد 
بلا حضر آیْضا لکن مَع فقدِ بَعْضٍ الشروط - 
جاور ارس افو وین لف ہوجائۓ دو ورن 
چا ہد اب رت رتوا ت ہو رض رور و کر رو رمتو ا یں موق اور کی 
کہا گیا ےکہ جب کور ہ چا رل شرا زا مو جودہوں نو ضر و ری طور لی نکا نا ره 
حاصل ہوتا ینت اوقا ت ( و جو دشر ئط کے باوج وککی )کی ما کی ہنا ر 
یقت نک فا یس موتا تق رھ ےن رتو ا کت یف .بت وا موی سب اور 
متوات کی ضد( مشہور) ع اوقا ت بلا حص رکےبھی بای جا جا ےکر ای کے اتر 
مض دور ۳2 ری مفقو رمولی 9 
اگم نہ ہو ن ےکی صورت میں متو ات مور بن جات ۓگ : 
عاف ےگ ز شت عیا رت شی شرو متو ات میں افا ومک مکی قی وکر فر ما تی اب یہاں سے 
بات چا سے ہی ںک اگرافادءع مکیشرط تپا جا و دوخ رمو ا نگل ر ےکی بل و وش مشہور 
جن جا ےکی لین اکر کیٹا نع اور عل کی وجہ سے ا یر سے یقن اور کف ره ترامع 
۳ او رنڈ “ن مواور وه ای غیاو تک وجہ ےا ے لقن و مک استفادہ کر کے لو وہ 
متاخ پور ین جا گی امرخ مات پور موی داژن کنو بو رکیلے دو 
سے زز اد طرق مون ضروری ہیں تو توا کے اندر سب شرا کیا تم اس کے طرق کی افون 
الاشٹین ہو تے بی ہیں لہ ا ہرس ات ہو رکہلا ے یمر اس کا تک یں ہوسا کہ ہر پور 
مو از موش جوقجرصصرف دوط رن ےم وک موو و ف شور موی ءا ی طرں رسوا ے 
افا د٤‏ م لت موو وص ر ف شپوری بو مم ا ہیں موی _ 
ی 2 ار لو مو چو ومو ں تو اک ڑطور پاک خر شں ان شرا ر کے 
قق کے ہورم اور قب نک ادها وت جا تا ہے کر یہ بات یاد کل سے 
بکد اک رک سب کیک اف اوتا ت تام کور شرا ا کون کے بور کی کی مانع کی وجہ ےم 
اور یقی نک فا کد ہ عا کل کٹ ہوم نو اڑسی صورت یں ناور وقول صا د ں٦‏ کاک جهال شرائیا 
ار لو رمو چوو مول وا کلم و لق نک فا تر وشرو ری طور پر مال مو ال مور وتر ےر ے 
متو ات ےکآ ریف بہت کی طرں وا موی ے۔ 


ع ړو اتر چو ڈوو O A‏ 

خرمشپور تب رمتو ا ےک طر ںی طرق ہو ے ہیں سن او ی رر سار مرول 
موق ےک رض شرا زیمت ات کے افا ءاورفقدا نکی وجہ ے و متو ات رکی جر می داغ یل بوگق 
رو هک ت طرق کے با وجو شمو ری رک ے مشلاکسی ت ر ےط رن بہت زیا دہ یں گر ان‌طرق 
اوراستادکا کی امرمشا پیش ی کال یااس سے لقن اور کل حاصل ہور پا تو ایی خ رت 
کیہ کے باو جوتو ات کی رل دا یل موی ی و پرستو رت رش ہو ری ر ےکی - 

KE FH Kr... TF و دی‎ 

ومع ضر بِمَاقوٴق ال ی تلائ قَصَاعِدا مَالمَ يَحْتَيم شُرُوْط 

متیر بهما ی بالالین ار بواجي فَقَط فالْمراد بقَوْلِنَا ”أن برد 

بان" ا لایر باق مِنهمَا ق وَرَة باکر فیعض الْمَواضع من 

لسن الاجد اضر اذ الاقل فی هذا الملم یف علی ال كر 

ترجہ :خر عطر نک ااددے او ےکی عرو شش ا خسار ہوگا سن تن بااس ے 

زیاد وم کک متو اتر کی شاقن نہ ہو یا صرف دو یل اتصار ہوگا یا فا ایک 

طر ان یں انار بو مار ےقو لک وہ د وط ر قکیسا تج مر وی مو“ کا مطلب 

بی کردهردوطرق ےم اتر موی شوه بل اگ ای نی سنر -ضش 

راعل میس اگرافراوز یادہ ہو جا یت ال ےکوی تال ہوگاءاس ےک 

اکن میں ال ع رواک پت یی ال »ولج 
E 12‏ 

اف" که او کی تم تاک پا نکر تاب پان ای مکی وی 
مرک اور چگ اقا مکو بیان فر ہار ہے ہی ںک خر کےطرق دو سے زان ہو ںگگرمتو ات رک کثررت 
کی کک نہ کے ہوں نو اسک ن روغ ہو هکت ہیں اوراگ رخ ر کے صرف ووی ط لی بو لاک 
رت ر۶ کچ او را کا صرف ایک بیط ربق وق رک روش خر ی ککچے ہیں۔ 
قولهم آن یرد الاڑنین: عم اصول عد یٹ می ہہ نیرز کت ریف میں زک کیا ہا ج 

.ال سے لقصور ی ہو کرو هت روط س ےک مکیساتحدمردبی نہ ہوہ المع اکر سی و ےکی 
عل یل روا ۃ کی تحداددو ے بڑ ھ چا ےتا س زوف سے و وت رعز پز ہونے نار کس 
دی وه برستورعز یی رہ ےگ یکیوکہ ا ان اصول صد یٹ کی کا نامقل عدد کے 


عرجبلظر سے سای سس گی سر ار یب حم ھی ںہ 
اختبار سے ہوتا ہے اس ےک ای میس اف لکو اک ہے بی مال موی ےدوس ےا لفاظ ٹس 
آپ ی کہ کے ہی نک ا ںان می تی اتل کے جائع ہوا ےت رین و اعد س اگ کالہ 
تراد روا درگ جا نے چوک دوصرے مرا میس دادم سب کم کا لیا کر کے ا کور 
زی یا سر 

الک مکی مک ما تارف موا رب ال کے بعد اف من لکی ات 
O‏ ی 

تم اس یل سے پیل بل مک اقسام ار ب ھک تحر یقات م اور لب دراو اش کر سے 
تد تین 


رساترس بیان 


مو ات رک اصطا مرف : 

برو وت رمتو ا رکبلا فی سل کے اتد رمت رجف یل چا رش می مو چو دہوں : 

۱ .ال کےطر قکرہوں۔ 

۲ .. وا کی تحدادائی زیادہ وک عادت ان کے اجا ر کل اک بکوعحال قر اردے با 
اتا قاان و تک صد و رحا ل ہو ر 

۳ بم لک انتداء سے انا کک مرکود ہک ت باق ر ے۔ 

۳۴ ا یک ست رکا کول ا می بو 
رمتو ت رام 

مت سے ا یع کا فا تہ حاصل موتا س ےک اسان الک تضر لن جازم پبال‌طررج مور 
ہو جا سے ی طرں ٦‏ ول دی داد تشد تک با ہےءاسی دج سے تام شب مات 
مقبول ہیں ان کےاحوال روا کو جا ےک ضرورت نی گیل مون _ 


۱( ا متو راف : 

فش مت ات و وق ر ےک جس کے اقات اور ووتو لا کیا تقو ل بول »1۳ "من 
کذب علی متعمدا فلیتبوا مقعده من النا "ال ردای تلوس ر سے ڑ ادا گرام نے 
روا کیا ے ا سکومتو الا سنادگگکھاچا تا سیب 


معتوی متو ات وور ےک جس کے مر ان یتقو ہوں :الف ظط لل اتر ہو 
یی ےک ”رفع الیدین فی الدعاء“ گی جواعاد بی ہیں ا نکی لخ دا دسو کے یب ہے برعد یٹ 
م فت ذا شارت کے ن مین یبا رک کہ ”أنه راز الدعاء“ءاك 
یش سے برو اتر ہوا یں ےکر ق رر ےرک "رفع الیدین فی الذعاء“ موا ر موی 
ےا سکومت نز راسخر کی کہاجا تا سے ۔ 


9ھ »جاک لو ان ناک 
+ کال کیل سل ےم لکن ے۔ 


E‏ آر امو 
مق س واک مصلوا ت وره _ 
رشبو رک ی بیان 


خرش ہو رکی ا صطلا یآ رف : 
نشور ہراسخ رک لتق لکش ر مرمع شش تن با نع ہے ا چون 
تا ڑ ےکم ہوں۔ 


رش ہو دی مثال : 

ا لک مال مد یٹ ”ان ال لایقبض العلم انتزاعا۔۔_' “سے۔ 

شض حرا ت کے بقول رشہو رکا رورا مت ریش بھی ہے ما ہم ا سقو ل تل مکر نے 
سےا کا رجگ کیا گیا ہے ا لک بش ما فآ کے فر ١‏ یں گے ۔ 
مور خی را صطلا ی : 

رده بالا ورا صطلا کی ہےءاس کے علا وہ ایک نشور یرلاگ کی »ول ے »الک 
آ ریف ی ےک شرو جر کے لخر جور وایعت تام لوگو ںکی زیان پ چاری ونی واه ال 
کی ایی می سند ہو یا ایکون ال ہی تہ ہو۔ 
مہو رفیراصطلا ت یک اقمام: 

مور خی را صطلا یںکیکل پ اقمام ہیں : 


والنسیان و مااستکرهوا عليه“( صححه ابن وهبان و الحا کم) 
۳ تر چ صرف نقہاء کے پال شور ہو مل :ابغض الحلال الى الله الطلاق“_ 


مشهورا صا تیم 
ابا شور پصرف جح او رتیل لگا یا جا سا وان ضبن ہوتی میں 
لح ضع ہوئی ہیں او رش موضورع بھی »ول ہیں »رال “شہو ریک تک لقن موتو وور 


عرڈانظر 90000000000 وی یا تمہ یت دوہی تھے ۳ 
غ یب او رق رز یزپ رارق موی ہے۔ 


رک کل بیان 


زرد فو یآ رف : 

اس افو یں باب ضرب سے کل اور نادد ہونے کے تے ہیں ء چوگ ا مک وجود 
تم اور ہوا ہے ای وجہ سے ال لکوع زی کے نام سے موسو مکی گیا اور باب ر سے ای 
سکس قوت والا موجن »گرا کے دوطر ان و 2 ہیں اور دوس ر طر ات کی ۳ 
سے اس توت پیرا مو ہا »ال ے ا سکوعز ےر کے بل - 
ر یدک اصطلا یتر یف : 

اصطلاع یں خ رز ید اک ت رک کیچ ہی ںک ہہس خر کےصرف دوہی طر لق موں )پا الغا ٹا در 
درل کے بی کے تما م ماگل میں روا کن دادو ےکم شرب 
زی نکی شل: 

الک ال مس بعد ث من لک جا ے ”لایؤمن اأحد کم حتی أكون أحب اليه 
من والده وولده والناس آجمعین “( بغار یوم ) 


ٹرفر یب کیان 
ری بکیلفوی اور اصطلا یآ ریف : 


خر یب افویطور فت مشب ہکا صیغہ ہے ا کا ن ے' ”ماف ائل خان ہے دور - 

اصطلا عمش نر یب ا سخ رک کچ ہیں جن سخ رکا صرف ایک می ط ربق وہ پا دیص 
خر کے ان کے رمع میں صرف ایک نی راوی ہو۔ 

یس رات غر بکوفرد کے نام گاید میں ءا لک نآ کےا ری ے ۔ 


ریبک اقا می اش : 
ا سکیل پار اقام ہیں: 


aT. ۹‏ 
وزغ یب سے جن سکی ال سند میں رابت »وس سند شور اس ا لک ایک ہی 


راوی وء شا : انما الاعمال باالنیات “ 


ورغ یب کرل کے ط ر ان کے وسط شل غ را ہت توق سند کے شرو میں و روامت 
کر نے وا ےکر یروس سند می شآکرصرف ایک کی راوی ر مکی ا: ”ان النبی دحل 
مكة وعلى رأسه المغفر“( بخارى ولم ) 


وب س گر ےنکور و ا کر نے دالا صرف ایک ی راو مور 


۴.... گر جب ست الا شن : 
دنجریب کی ا زی سک لاب سے فرب »وین ار ان سک فلاو وور 
طر ان کے فا ظط حر یب تمو ایی ٹر سے تلق اام نی قرا ے ول :*حدیت غریب 
من هذا الوجه “ر 
KF FY‏ جو دی دو نی 
فالاول: نمترانر. وَهُوَالْمْفِیْدُ لِلعلم یی فا خرخ النظری على 
مایابی تفریره بشرزطم لین تقلمث. والیقین :هو لاغفاد لحارم 
المطابق ء وَهدا مُو امد ال ابر تابر ید الملم الضروّری 
وموَالذٍی بضطر لاساد له بحیک لایمکن ذفعة و قیل اد لا 
ريا ویس بشي لاد الم بالمتواتر حاصل من لیس له هه 
النظر کالاین. إذ النظر : ترییب آمور معلومة از مظتونه ول بها 


ع ړو اتر AER ANSE Se‏ 7 چو و ژژ چ سد ٣ے‏ 


إلى علوم أو نون وَلیْس فی اعابی مه ذبك فَلوْ کان نطریا لما 


تر ج: یں کی رمتو ا ے وم نیک ده دیق ے٢٦‏ نیوا ی ترک مناء ر 
نظر یکوخار کرد یا گیاء ا سک یگ شش رانا و تمه اعقاو ازم وا 
کے مطا ان ہووہ لین ہے اور بر بات مر ےک خ رمتو ا رم ضروری ( ی ) کا 
ده یقح او رگم ضروری ہے س ےکہ انان ال ( کے قول بے )اس طرن 
یور وجا س ےکا ی سے ا پا کر کل ہو ہاور یی یک گیا ےک مو ا تصرف 
مم نظ ر یکا فا تد ہ د بج ےکر بیقول قال الا تکس ہے :اس _ کرش موا 
سےا س7 دب وکا کر و حاصل ہوتا ےجس میں نظ دک کی ملا حی تھی میں 
ول کوک لظ رتو | ہے امور معلو ر یا امو رظنو کور بک رن ےکا نام ےک یجن 
ےم یا کک سا ور عا مآ دی کے اندر اس ت ی بکی امیت یکس ہو : 
بی اگر( خب رمتو ا ے اصل شر وک مکو ) نظرکی قر ارد می نے ان عا مآ دمیو ں کے 
علم ل کل ہونا چا ہے( عا لاک ال کم حاصصل ہے )۔ 


عاذففرماتے ہی کل صو رخ رمتو ا رک ہلا کی ے او رمتو اتر کا م ہے ےک اس سے عم 
می بد مج یکا فا ند و حاصل ہوتا ہے اس میں بد مہ یکی قی دا کے سم ری خا رع ہوگیا۔ 


تسام 

ری دو میں بو ہیں ,(۱) بد ی٤٣‏ )ری ۔ 

۱ م ریم بدیی اک کیچ ہی ںک جس کا حصو ل نظ روسب موتو نہ مو 
خا ری سروی۔ یشال‌قور بر یک اور ” الضفی و الاثبات لايجتمعان 
و لایفترفان“ صد بب بد یک شال ے۔ 

۰۲ نظری من ری اک مک کیچ ہی کر سکاو ل نظ روکسب اور اتد را لے 
مولو ف بنوج سے تورات میں ا سکی مثال تصو رل اورتضورفس وتر ,تم یقات ماش 


ال ”العالم مغر کل متعیر حادث“ ے۔ 


یفن کت رف : 
بقن کت ری فک ے ہو افا ہا سے ہی ںکاس اعقاو جاز کا م لقن ہے جروا 
کے مطاان ہولہ ایک وجہ سے شک او رل رکب وخ رہچھی حدمتو ات ے ار ہو گے - 


مت ات کم ری انظری ؟ 


اس میں ہو رکا تر علیہ خر ہب ہہ ےکر ہوا تم نی بد بجی کا فا ند ود بت سے و نظ ری کا 
فاد هل د تی کیوکک یش رم ات سے ہراس و یکی علم حاصل ہوتا ے جک نظ رو رکی صلا یت 
نہیں رکتاءااس ل ےک نظ را ہے" مورمطومہ یا امو رمشو نہ کے مرت بک ن ےکا نام ےکن 
سے علوم نو کیک رسای ال ہو ال تيب پ ہٹس تاد رتیل ہوتال با اس ےرم انز 
اعم صرف الن رارت کک رو وکر تالا م۲7 سے جو رک ابیت رکھتے ہی گر ہے درس تس 
کی دتمتو ات کے مک اقا دہ عا م ہے جرا وع ممکوحاصل موتا ے _ 

کر اشا رہ میں سے امام ا رن الوا معا الجو اور مفتزلر یس ے ایوا کین بص ری اور 
علا م کی کا خر ہب ہہ س کت ات صرف کلم ری کا فا دہ دب سے ای سے ہدک یکا فار 
OA‏ 

امام غ ڑا فر مات و کت رمتو اتر سے مال ہونے والاعلم کم بدبیچی سب ملظ رکه 
وه ان دوفو ں علوم کے د رمیا نکی چ »او یاو ہا ی میں واس طة بیسن 
الو اسطتین* تنل ہیں _( شر لای القاری:۱۸۱) 

ال ٹل ہو رکا دان اورت ل اتاد .اف نے تہور کے مت ل جرج بو 
"لیس بشیی“ تر ارد یا پل وہ مجر ہے قا ملاو یں ے۔ 

حاف نعل نظ یکوروکر کے ہو ے مثا ل دی فر ایا کر کالعامی “ا ال ماع 
حرا ت خوش ال ہیں ءو٤فر‏ ما تے می سک کف ما یآ وی بہت ذ بین وت تے ہیں یکلم 
بالات د لا لکا کال ہوتا ےک و ولوگ لو شس سے وجوونھار تقد لا لک ہیں ای 
طرح دی ےکی متا م اور اوشچائی پر ہونے سے ده وقتء ٹاک ےا خد ا ل کرت ہیں ء زا 


کش ما یکوشال میں زک رک ناج کل ہے بلک شال اس رع میا نک کی با عم : ”والاظھسر 
أن یقول کالصبی الذی لا اهتداء له الی النظر“ کہ ایا پیج سکونظروغ رو سوج بو چه 
زوا ںکومٹا ل یں ذکرنا متا سب ہے۔(ش رع ای قاری:۱۸۳) 

چل لو جار YT...‏ جا جا کر 
وَإنَمَ هم فرط الم فی الَصُلِ لاه على هم له لیس 
من مباجب علم الاستاد اد علم الاستاد بْح فيه عَنْ صحة ایب 
و ضحم لِيعْمَل به أو يرك به ین خبث صفات الرحال و صِیّغ الا5اء- 
ولتت لیمحت عَنْ رخأل بل جب الْعَمَل به ین غَيْ بح - 
ر چم بلا شریٹشن میں شرو امو ا رکوہ موز ی ےا 2 ےمد ا سکیغیت بے 
عم الا ماد کے میاحث میں سے کیل ہے پلم الا سنادیتریف ہے ےک و جم جس 
یں مت عد یث اور ضف عد یث سے بح کی جائے ‏ تکاس صد بیش بل 
کیا جا سے یا اس پیش لکوت کفکیاجاۓ »( کف )روا3 کی صفات او رن او اک 
یت ے موی ہے او رتوا کے رال سے پٹ نمی کی با باس پیش کرم 
لا پٹ وی واجب ے۔ 


من میں شرا وکا رکیو لک سکیا گیا ؟ 

ال عبارت سے ما فط ایک سوا لکا جو اب د ےد سے ہیں ءسوال ہے س کشا مت ا کا 
زک پٹ مو ا یس جب ا تھا ض رو ری ےا پرا ف نےمفن ( مت تخل ان شرا اکوکیوں 
یں ذکرفرایا ۴۔ 

ماقا ےجا بو یاک شس نےمفن میں شرا ترو ا رکواس ےکس کک مت ات اس 
کیت تفیل کیا تھے ا علم اصول حد یٹ کے مہا حث یس سل کول اصول حد یٹ 
شک عد یک ی کت او رضح ی ل وش ےا ت رال اورادا کے یخوں ے کف موی 
ہے کہ بیش بعد یم ہوک بعد یشک ہے اس مک کیا جا سے »یا یتلوم وک ہے 
مد یف شیف يا موضوع ہے و ال پل تر ککیا جا ء اور ہے بات آ پکومعلوم کے 
اعاد یش ما2« سار یک سار واجب ال ہیں اس رال اور اس شل واردشد ہی 
الادا سے نش لک جائی بلک پرعد ہے توا لکر تا داجب ے اکر چراس کے راو فاق 


ړو اتر DE RASER ESE‏ ا کاٹ یں رد N‏ 
ہی E‏ 
وان ورد عن الفساق بل عن الكفرة“ ( مر القاری:۱۸۷۱) 
لہ ان میں ثراو زک کر ےکا بی جب ے۔ 
TT TY TE... E TE TE‏ 

فافدة: در ان الصاح أ مقال ارات على التفسيرالمتقدم يعرز 
رده إلا آد یُذغی ذلك فی حَدِيْ "من ذب غلی مُنعَمَدَا ترا 
مَفعَدَه من التار" وَمَا اعا من الرة مَمنوغ و گڈا ما ادّعَاهُ غیرهُ من 
العدم ل ذلك نا عم قَلَة الاطلاع على عنرة الطرق و أخوال 
الرجال و صفاتَهم المفتَضيَة لابعاد لاد أن یتواطوا عَلَی الکذب او 
َحَصُلِ منم تا 
تر جمہ :فا کد ہ: علامے ابن صلااع نے قرا کہ پاش لک یتفییل کم لب متو ا رکی 
مثا لکا نا ےق اور ے الا ےک اک حد یٹم نک ب ‏ لی حم افلیق ا 
مقعره تن النا ر“ کے علق تو اتر کا رکو یکیا ہا ے ( تو تتا بل قبول سے )اور 
نے فلت اور ثارت کا وگو گیا سے وه وی نو رسب اور ال طرر این صلاں 
کے علا وہ ٹس نے متو ات کے علق مر مک وکو کیا و یتو ہے ای ہک ہے 
دو ےطر قک یکشر بت»رواة کے احوال اوران صفات پ نا داتفی تک وج ے پرا 
ہو ہیں جو صفات ال با کی تن ہی ںکہ عادت ان کے اج راذب 
اوران ےا ا قا وت کے صد ورک یال تر اروت - 


وا رک وجووچار ی : 

اس عبارت لعف یه یا فر مار ے ہہ کت رمو ا زک عارع شں و جود ے بل ؟ 

چنا علا مان صلا نے فر مایا کی طر ماق شترا ورا کی شرو ار بوتقصیل 
اانا ہیں اس قصیل کے مطا ان وار کا وجوو عاررج کا اور اوت 
صرف ایک هد یٹ کے باد سے می اگ رات رکا وکو ی کیا ہا سے نو تم اسے مان لی کے اور وہ 
هد یی ےا تپ کذب علی متعمدا فلیتبو | مفعده من النار " #ل ال کے اہ وبا 

مو تر کی مش ل مل ے یکن !۳ شر ش پیل رام نے متا کچ میک ہیں .اس 


عرجالظر وی گوس ماھت یسیو دا میک عو یا اکر ہی ہے LAO‏ 
سے معلوم مومت ات کاو جو بل امش ل ہیں ےپ 
علامۃ ان حبان اورعلا مرها نے فر مایا ےک مت ات مارح یں مد وم ہے پزکور تفیل 
کے مطا بی ا کول مشا ل موجودنیں ےکر مثالوں کے کر کے بعد یرقول ا ل الات 
لح > کوک را قول کی ےک متو ات کاو جو دک رتح راو میں ے ج وح زات قلت ونارت با 
ال کے معد وم ہو ےک با تک ے ہیں ا نکی بات ال ی ےک اکس اناد یکشثزت »رد2 
کے احوال اوران صقات سے ز یادہ لگا وس حن صفات ی وجہ سے عادت نے ان وت 
پا تفا کر نے اوران سے انھا ت وت کے صد وکوا ل قر ار یا ے۔ 
ال‌عپارت ل لابادالعادة ک ہجاۓ اگر لإحالةالعادة ہوت آوزیادهمناسب 
تھا( شرع لا قاری 6۱۸ ۱ 
جیلو FF... TF YK‏ جار جا 

ون خسن مَا مرب وف لوار مَوَحُوْدا جرد رة فى 

الا حادیت _ إن الب الْمَخْهُوْرَة الْممَدَاوَلَة بای ال الملم شَرْقَاوَ 

ربا لمع عِنْدَھُمْ بصه نسبیها إلى مُصنَفها إِذَا اجْتمَع على 

اخراج خدیت و تَعَدَدَتُ طرفه تَعدَدا تحیْل الْعَادَهُ تَوَاطومُمْ على 

اکب إلى آجر الشرط فاد للع یی بصحة نسْبیه إلى فَائلم و 

تما عاد یٹ یں متو ارک کت کے سا تھے دجو دخا بت کر نے وا نے د(ائل یں 

سے سب سے اتر دل یم کو هکلب ج وک شمو ر ہیں ۰ا م اں رق 

مرب تم وت ان کے پا و ہک | ی نک طرف موب 

کت ںای ہیں جب کنب" تنداولسی عد یکو لا نے شقن ہو چا شس 

او رال حر یف ےط رن اگ رموجا یک عادت ان کےا تھا تی اک بکو 

الق ارد ے( وش روقیره) و وه حد یی ال با تکام در ےک یکا یکی 

نہ ی تا لک طرف ےاڑی ال یکت شوه ببت ز با دہ یں - 


مت کے نمار بی وجود رب و : 


ز رها ها یعث مس ات بہت زیا دہ ہیں اس پرقائم کے جانے وا اکن سب نے 


عرو اتر مومع سن اس ساس شک یا ہے LR‏ 
ا a‏ تر کت 
کیضبت ان کے ینک طرف +وری ہے ینب تک ال ی تی ہے رطق کین 
کلب خی ی یک وور مشق »ول بای طو رک سب نے ا سکواچتی ای سند 
گیا تم زک رکیا ہو ہے هد بعش توا »امک اعا یٹ ا نکتب شوره مل بہت زیا دہ ہیں 
کی کہا کت ب ھور م کے ین کے تو اط لی اک ب یا الن سے انم قا ھوٹ کے صد و رکو 
عادت مال قر ادد ت سء ان کے طر تی پھ یکی ر ہیں ان سے م ن بد می کا فا کر هی حاصل 
ہوتا ےا بخ رت او رک یاکلا س کی _ 

احا د یہ نوز بل سے چنداحاد ہے ثا ل کے طورمتررچرز لل یں : 
)...فا عت بولا ل ت کر نے وال ا عاد یٹ سب تو اب ۔( علا مستا وی ) 
۲)......عد بث ”من بنی لا بنا الله له بیتا فی الجنة" توا ے_( عاش ) 
۳( > مہ یب یو 


(برم) 

ے).....عد یٹ " النهی عن اتخاذ القبور مساجد“ بھی متو اتر ہے -(اییتا) 

۸).....عد یٹ "[هتز العرش بموت سعد بن معاذ* و 72۱ ->-(۱ من کیرالیر) 

)...هد یٹ "انشقاق القمر“ گی 1 ے-_(الیضا) 

٭)..... .عدیث ”النهى عن الصلاة بعد الصبح و بعد العصر“ وا ے۔( این بطال ) 
کل الرجلی نکی احاد یت کے ذکر کے بعد غ ابواسحاقی شرا زئ فرا-2 ہیں پل 
ال وی نکی ا خبا رکا خہا را مادک کہا جا سکتا بلا نک جو ےو ات نوی کف کر« وا سے وا 
6۴ رک نے وا اتف کا١‏ زا رکر کے ہیں جک متو اتر کے وجود کے نین تو ا تر معو یکا 
اما کر کے ہیں :اس سے معلوم ہواکہ لش اختلاف ے۔( رای قاری:۱۸۹ ۔۱۹۱) 

KK HK Fr... E FY 


عرچانظر وک سک DO‏ 
وُو الْمَفْهُوْرْعِنْد الْمُحَدَبیْنْ مى بلك لِوٰضوْجبء وهو 
امیش عَلى رأی جمَاعَة ین ية الْتقَهَاء سمی بتلت لائبشارء 
من فاض لاه فی قتضا وینهم من یر ین مت 
هو با لمستَویض فی ایذایه و انهاه سء اهر آعم 
من لك رهم من ار على ية اخری و یس من اجب هذا 
امن نم الْمَشْهُوْرْبُطُلَیعَلی مَا فا وَعَلی مَااشتَھَرَ على الالينة 
یسمل ما له ساد واحد فصاعدا بل مالا يُوَحَد له سناد أضلا- 
قر هه : ادردوس ریش خ پور سے اورو ٤ا‏ خباراعادکی کہم ہے ادرت شور 
ووثر ے جس کےطرق دو ے الہ ہوں( گر حد از 2 ہیں )اورگجی 
رشن کے پا شور ے ۔ ا کووا رو ےکی وجہ سے ہو رکہا جا نا سے :لق ۶ 

کے ای گر وہ کے بقول یف بھی ے ا سکوافادء عا مکی وجہ سے خی 
کے ہیں فاش امام( )شیش فیا ے ماخ سب »ان شس ے٭ض 
حرا ھور او رست کے ررمیا ن فرق سل ہیں پا طو رک تی یی 
ضرو ری ےکا بتراء ےآ کل ( حرا وروا ۃ یں )یرای رک موا ور شہو را یں ے 
عام ہے اور ےکی دوسری جبت سے فرق میا نکیا ہے تا چم ا لک اشن 
(اصول عد یٹ ) کے مہا حف کل ہے ء چو رکا ا طلا تی ال پ ہوتا سے 
جوم رم کیا او را کا طلا ن اس ی موتا ہے ج وگو لک ز بان زدہواں 
یس و بھی وال سے کی ایک یا دوسند یی ہوں بلدد ہگھی ‏ سکیا صرے سے 
کول ستری دہو_ 


اخبارآ مادا بیان : 

عاف نے کی تمغ چا اما ذکرفر مائی ہیں »ان ملس لیم فرت اتر ہےە اس 
کے عطاوهپا لول اقام( شور ربیب او رز ےد ) خباد اع دکبلا نی ہیں ٣ا‏ بتک اش خر 
تواتز کی ابات بل رت »یبال سے ان تن اشپار اعا کی امحاث شرو ہو رن 
ہیں ء نرکوروعیارت می ان تن اخباراحادیل سے کی نر داع شور کامیان ے۔ 


شور لتریف: 

کد تن کے د یک ہو دلیف ی ےک نشور :وق و اعد سس کےطرق اور 
اسماغیردو سے ز اند مو ں ئگ رق رمتو اتر کی هد س ےکم ہوں' ءا ںکی و شیم ہہ ےکہ یبور 
چام کے نز یب پا کل وا اور روف مون ہے اس شر تک وجہ سے ا سکومشہور 
وک 

ای نشور کے سات ایک اورا صطلا ں ریش کی سے ا سکی حقیق کیا ے؟ ا کی 
یقرت ےعلق ما وڈ نے تن اتو ال ذکرفرماۓ ہیں:۔ 


نبت ے٢‏ لہۃ اب تقیقت اورت ری ف ن رش ہو رک ے وی قیقت اور یفن رف کی ہے۔ 

)٢‏ ...ٹون علا ےکی را ےگرای ہے ےک ھور اور تفص کے درمیان در ے فرقی 
ہے٤‏ وہ اس فر لول بیان ف مات ہی کف وہر داعد س ہک ی کے روا ق کی تخ رار 
ارام اا اء د اد ازراظائز از تن زاون ن ار اور ساوی و ر ر وران 
سے ام س کاک شل اس مساوا تکاپا ق ہونا ضرو ریکل ے۔ 

)...شض علاءاسی ذرقی ےت قال چ ں کر و ہا یک لول بیان فر سے لک تفیش وم 
رت ںکوا مت ےی لقو ل ےلو از اموال میں عرووتحرا وک اقا رد مو ای وجہ سے 
رصق نے فر ما )کی متو ات کے ی سے اورت ر ھور یں عر دطر یکا اتپا ر ہوا ہے 
هز ادونوں میں فر ت دار ہوگیا_ 

ولیس من مساحث هذا الفن : ال تباتک مطلب یک جب تفا کی دوسریی 
تقر ے او علا مہ صر نی کے قول کے مطابق ت ریش مو ات کے تمس ہے نو نس طر باب 
الو اتر شش عر وط رق اورروات کےا وال سے بک اسک مان بک مام موم تی واج یال 
ہہ گیل کان ها طر ع متخ بھی ن رمتو ات کے ہم کی ہو ن هک وجہ سے اس می بھی 
عددطرق اوراحوال روات سے بث کے اش راسے واج ب الک شرو ری سے اب ال کے 


ع ړوار لی مہ تھی سس رس سی کو ا ہی ۸ 
رق اور رچال سے ب کر نا ا أن اصول عد یٹ کے مباحث یش کل ہے ء جلی ا کنر 
متو تر کے پل میں اس فصیللز رچی ہے۔ 
مستفیض :يلفط -"فاض الماء (ض) فیض ا“ ےشن ہے اس کےسو کش رہوناءزیادہ 
۸ ے ۶ب" کما یقال فاض الماء ی کثر حتی سال علی طرف الوادی وزاد حتی 
خرج من جوانب الاناء “ا یکثزت اورشہر تک وجرسے اے خیش کی ہیں۔ 


شورف راصطلا گی : 
مہو رکا طلا ہو را صطلا ی نی »وتا » جو ریف یم نے ذک کی ے یراک اصطلا ی 
ہو رکآ ریف ہے اس کے علا ود شود رکا اطا ںہو ری اصطلاتیٰ کی موتا سے جخ رام 
وخوا کی ز پان زد و وگ مشمپو رکہلا قی ہے خوا ہا یکی ایک یا دوستد میں ہوں یاک یکوگی اسل 
بی دموا سک فصیل ہم ضر الد یٹ کےا سے سے هرکرک کے ہیں۔ 
علا مقا وی نے ا سکیا مشا ل ذکرکر ے ہو عفر اک مدر ”علماء آمتی کانبیاء 
بنی إسرائیل “اورحد ي ”ولدت فی زمن الملك العادل کسری * ہے دونوں میں 
ای مہو ر قرا صطلا ی کے تیل سے ہیں ال کےعلادہ مندرج ذ بل عاد یٹ کک ترش غیر 
اصطلا یکی مثا لی ہیں : 
۱) ...من شم الورد ولم یصل علی فقد حفانی - 
۲ ......لولا ك لما حلقت الافلاك - 
۳) ..... آنا افصح من نطق ضاد وغیرها ۔(شرح ماگ ٴقار:۱۹۵) 
مر و ۱ 
والیث: لیر ور آن ره لین لب عن ان سم بدك 
ما له و رده رما یکونه عر ای وق بمَحبیه من طرّق آخر - 
تر جصے :او رت ری خرعز ی اور وہ ہے ےک دور اوک سے دو ےک شیور 
سے روات کب یا تو قلت وجو رک وجہ سے ا سکوعز بیز کے ہیں »با ای وجہ 
ےک ردو سر ےط لی ےآ ےک وج سے میق ا ہوجا ی ے۔ 


شرع زی دا لغو ی تن : 


تیر یھت رر باب رافظ عر یم کل لوچو ومون ےہا خو و ے 7 بت 
ی تمل الوجود ہے یا لف عزن طا قت وال ہونا سے ما خوذ ےا مل ےکا تج رکودوصرے 
مر لن اورسند ےو ت مال مون ہے ۔ ۱ 
شع ب کی اصطلا لیف : 

ضرع زی کی اصطڈا یت ریف س دوقول ہیں : 

عاف کے نز د یک قول عقاد کل ثرگوصرف دوطرقی ے ردای یکی گیا ول خر 
کے طر بی کے خرائل میں س ےکی بھی ایک مر عل مس صرف دو اوک مول بخ اہ دوسرے 
راعل یل ال سے زان راوگ مول ہے رز یڈ ہے ء اس صصورت علخ رتور تن طرق یا ال 
سے اند کے ساتھ ماس موی اورعم: یز دوطرقی کے سا رتش موی ت ال یاز ے ان وونول 
ما نکی ہت ے۔ 

تن حرا ت (ائن مر ہء امام فو وئ وان صا نے عز کی تخر یف بولگ ہ ےک 
کے ور ےک رج سکودویا جن راوید وای تک بسن اس کے ووی تن طرق ہوں ا 
تول کے مطا ان مشپوراورعمزی: می وم وتصوض من وج ہکی نبت »وگ لہ ال سے تن مارے 
یں ے: ` 
گ٤‏ مس جس ن رک مرف دوطرق +و لین زین ہے۔(یہ پہلا افر ال ماددے ) 
(r‏ تک جس خر کے ین سے زا دطرق بولگ متو ات ےکم ہہوں فو کل ھور ے ۔(ے 
دومراافزاق اوہ سے ) 
٣‏ تر کے رف تن طرق »ول یہ رک ےکی ہے اور ہو ری ہے ۔(ے اجا ی 
(zol‏ 

عیارت مل اور ”ان لایرویه اقل من اثنین عن اثنین “کا مطلب یہ ےک رست ر کے ی 
اس ر1 ا کان رت کباش یر 


یلع یل _ 


لیس رطا بدسجیح لقا من رَعَمَه ورب علی الجبائی ین 
لته وه رین کلام الحاکم آبی عبر فی وم الْحَدِيْبِ 
ی قَال:الصَحیم هُو الَذِى یره الصحابی الال عنه اسم الحهَالة 
بائ یود له زاویان م یداو هل الب لی وفینا کالهَادة 
على الضْهادةٍ- ۱ 
تج :خر کیل ۶ے و رل خلا ف ان طرات کے ول نے ہے 
گان نا ہرکیاے اور و هالک جیا مت ری ہیں او رکا ب علوم الم یٹ شی ها ۲ ابو 
عبدال کا کا بھی اک طرف می رہہ جهالانبول ےر ایک( م ) دقر 
ےک جن سکوا یا شزو ر ومح رو فا یک جو پول نہ مور وای تک ےب راس سے 
روا تک نے وا راوی دو ہوں » پھر ا ے علاء امي حد عث نے قو لر 
مو( اور می حاات )جا ےا ےکک باق ر جاک ”شهادة على 
الشهادة“ کے مکل ھل ے۔ 
کیل ب موناضرور یس : 
ماف یہاں سے یہ بیان رما سے ہی کک فر ےی مو کیل ہکم ا کم اخ رکا زی ہونا 
تشرط پاس ؟ ا میں خرہب فار ہے ےک کیل کم ازم ع۶ ی: ہونا ضرو رل ہے یر 
خر جب ج ں کا صرف ایک یع ران ہوتا ہے روگ مرک ے۔ 
کرمز ر می ابر جبائ یکا نر ہب ہے ےکچ کیل کم ا کم عزی: ہونا ضروری ےکوی ان 
کے نزک خرف بک ہو نہیں کت ء ابوعبداللد حا خیش پر کناب علوم الید یٹ مل 
مود هکلم کی شاد« س کر کیل کم ا زک زج ہوناشرط ہے ۔ چنا ده اپ یکتاب 
علوم ری یج رک تری فک نے ہو سے فرماتے ہی لک خر دہ نر ےک جس نرک 
۱ مروف صا ی روا کر ے اور ال سے رواب کر نوا نے سر کے ہرمرعلہ مل دو راوگی 
مول ها لک کرو ہت ر مکک اک طرں چا ۔ 
جی اک شهادج لی الشہا دک اولا دوگواہ مو سے ہیں »ار دہ اپ نوات اہ انا چا ہیں 
ان دوفوں یں سے پرای کگواہ اپنۓے لے دود یگواویٹا ےگا ای ط رح اگ رم خر ال زکروولول 


جر ماک ال شال ے لقصو ری ہیلہ ر ET N TTT‏ 

مروی عشرگی دو ہوں اوران کے راو یکی وو ہہوں ‏ اس می کی در ےلو اس ے علوم مواکے 

رهز ر کے 2( کش جا ہے۔--) 

جا E FF... FHF‏ یر 

رح الماضی گر بن الربی فی شرح ابحَاری ب با ذلك شَرُط 
رن س شر له رت ننس 
لخدي الاغمال بالیاب فَرْة لغ روم عَنْ عم لالم فلت 
انْگرُوْه کذا قال ء وتَعمّب بانه لالم من کونهم سکنوا عنه آن 
ونوا سمغزه من عيرم و بل هداز سُلم فی عُمَرَمُیع فى رد 
سَعبٔدٍ به عَنْ مُحَمُدٍ علی مَامُو الصَجيْح عِند الَمحَدیینَ وَقَذُ وَرَدَتُ 
ال ابن :ولد گا یکفی الْقََضِیَ فی بْطلان ما ادغی آنه رط 
2 چم اور نی ار امن ال ری نے شر بخاری می اس با کی تر فرب 
کہ یہ بات ( کچ کی ۶ز یڑ ونا شرط ہے )بغار یکی شرط سے اوراس نے 
اپنے او پر داروشمدہاختراضا تک ایا جو اب دیا جس می نظ ہےء اس لے اس 
ن ےکھا: اگ باکترا کیا جا ےک ”انما الأعمال بالنیات "وال عد یش فر د 
(نحریب) کر ا یکو حخرت گر سے روا تک نے والا صرف علق ,نو 
جواب ٹل ہم بل کک ےک اک وخرت عمر نے خطبہ یس تنا مم یا کی مو جو دی 
بس ذک رکیا تھا ,ار وه ال جد یٹ ے ناواقف تھ نے ا لک از کرد 2 .ال 
نے و اس طر کہ و یا جا م ا کا تھا قب اس طر کیا گیا س کاک عد هش ے 
ملق ان کے نما موش د سے سے مہ لا زم ںآ تا ک انهول نے ا لحرت ر 
کے ماو یک سا ہہوگاء اور( اس ط رح بھی نا ق بک یا گیا کہ ہے بات اگر 
خر تک رک عدکک بان لا جا -2 بی ران سے روا کر نے وا لے عات ےت و 


کړوا ار سومیسشی سیل سس شس سس ام وه سر سے .۰ ۸۵ 
ے تلق سوال ہوگاء ہعلق کے رادبی مھ بن ابرا کیم ےلو میں سوال موک ر 
مج رای گی بین سعیر هرد وال ہوگاء پیسب اس پات ےک جو 
رشن ناد کج »ان تام روا کے ماعات کی آ کے ہی گر وہ سب 
فیرعت ہیں اور اک طرح عد یش گر کے علاد و تک جد یٹ میں تم ل 
سے امن رشبد نے فر ما اک رق ی این الح ری کے ووی( آدشرط الفارگ) سک 
بطلا نکیل بقاری شریف میں تاو کی حدیث تی کان ج( کوک ووک 
مو کیا غم ب گی ے )۔ 


ابن الع رف یکا رکو اور اک تر دپړ: 

گز شد عات یل حاف نے ىہ بیان فر ایا تھا کنر کے جح ہو کلم زب ہونا ضروری 
یں تو قاحضی اب وبکر این الع بین اک تر کے جع ہو بے یز ہونا ضرو ری اورش نش 
ہےگرامام کار نے پچ خا رک شیف می ا با تک ترا مکیا ےک وو وی عد وچ 
ذکرکر میں کے جوکم از عزی: موز قاری بقول ان سکول خر فرب نیس ہے ء ای 
مرا حت این الع پی نے ابی شرج تفا دک لک ے۔ 

امن ال رپ یکی نود هپت برا عتا کی يا رتخا ری شرب فک مکی صد یث : 

”عن عمر قال:قال رسول الله انماالأعمال بالنيات“ 

رد بث مب سب۶ یل چا برآ پ ےکی کهد اک یرش ریا با رک سے ؟ 

ات ار یا نے جاب دی اکاک عد یگریت بھرے مع میں خطبہ کے دوران 
میا کہا مک موجودگی میس ذکرفر مایا تھا تو سب نا موی ر ہے اکر وہ ال حد ی کوک دوسرے 
ربق سے نہ پا سے و3 و دہ ا لک زا رکر تے مالک اون نے ار کیا لہ ا ا یکو 
ی بکبنادرس کل 

این الع لی کےاس جواب رواد دک جک رانا .کرام کے خا حول ر نے سے بے 
کہاں لا زمآ ہ ےکہانہولی نے هد شک اور ےک یکن ہوگی ؟ 

چو( علی طریق التسلیم ) ہم مان لیے ہی کان کے نا مور نے سے موم ہہ وال 
انہوں عق اور تک موک فو اس سے حطر تک کے درج ہاور رع لک تقد اور 


عرجلظر 7 اه ی ...ار 
خر بر نتم موی رححفر کرت دای کر نے وا نے راو بھی صرف عات می تو ان کے لفزوکا 
کیا بن گگا؟ حطر عقوم سے رو ای تکر یو اے راو بھی صرف جج ین ها تم ہیں تو ان کے 
ردا کیا ہے گا؟ حطر تہ بن ایرام سے دوا تک نے وا نے راو یگ مرف مگ بن سعید 
یں رازن تمر وک کیال کک ؟ 
کم یہ بات پیل بھی مر کر چے ہی ںکہ اکم اصول عد یٹ م ات لکو اکٹ پت پیا 
ال مو ےمذ جب ال عد بیش یں ا تفر وات مو جود پل اس صد کو۶ کی کے 
ںیت یب ی ےار 
روا رکرنے کے بعد جواخترا کی ط ربق ميا ینار طرف سےا کا 
جاب یدیا گیا ہکا نتفردات کے متا موجود ہی ںک و نکی وج سے ریف بت شتم تی 
ے حاف نے فر ما اک جناب عا ےتا بحات دای ای اور خی رح ر ہیں »ان سے بیفر ت 
ووش موک _ 
عاف نے یم رک نر ےآ ف ان رقم کر نے اتی 
ان ار کے دو ری فا ری کے پل ہو کیلع بنا ری ش نی فک مکی صد یث ہی کان 
ہےکردوعز یس مدا تک ما ہجرف ر یب ہے ہاور غا دک شرل فک کی صد مشک 
طررح ا سک یآ رک مر عث: 
” کلمتان حفیفتان على اللسان ثقیلتان فی المیزان“ 
بھی خر یب کراست رواب یکر نے میں اولا حضرت ابد ہر ہرد ہیں »رال سے 
رواع کر نے وا ےراوک الو زر من رد یں »گرا سے روا ی تک نے دا نے رای ارہ مین 
توت رد ہیں و یرہ رهز اتا ی این الع ر یکا دجو بی د لان لکیسا تح روود موگیا _ 
جل جل بل ...۲ج و جر 
وَاذٌضی إِبْنُ جن قیض واه فَقَلَ ول رِوَأيَة انين عن اثَیْنِ لی أن 
يهى لاجد اضلاءفلث إن اراد ا رِوَأیَة الین فقط عَن اين فَقَط 
إلى أ يهى لاوح اصلایمکن أذ یلم ما ره لیر تن 
تاها فمَوجُودة بأد لايرو قل من ان عم ال و ماله مَأرَوَاء 
تھا خن اور بو وان رز 


ع ړو اتر من سیا ہنی سد سی کت AI‏ 
رسو الله قال لَابُوْمنْ یش ختی اكوب أحَب یه ین وَالِدِم 
وَودٍه_ لح یی وراه عن انس ده و عَبْدُالْعَِیْر بْنُْ صُهَيٍْء 
ره عن فاده شُعبة و ِء وَرَوَأه عن عَبدالعریر اسيل بن عليه 
عبْدالوَاربٍ» وَرَوَاءُ عَنْ کل حَمَاعَة 
2 :اورا حیالن نے اص کے وکوے کے کش وکو یکی او رگا کر 

* روا نکن ان ال نی بلس پا ہا دی رسک 
راو یم ےک صرف دوراولو لک روات مرف وون راو ولا ہے۔۔۔ 2 
ال موجو یس ےت يرنه رزیل جوصورت ہم نے 
زگ رگ دہ ال رخ موجود کاک روا تکودد ےکم را وک ا دو ےکم 
موک عد ے روایت شر یئن “ورت ال بال )الک ال ده 
مد + سکو بفاری وم دونوں هرت 37 ے روای کیا ے اور 
صرف فارگ حشرت الا پر ے روای کیا ےکرسول الہ راا کہ 
تم میں ےکوئ یبھ یئن کا ی معن اس وت یک ال نم ج بتک می ا سکو 
ال کے وال اور اولاد سے ڑیاد ہجوپ تہ 4و چال(حد یٹ )ال روا کو 
حقرت تیاده اور الع رہن ے رای کا ے اورئادہ تشه اورسد نے 
روا تگیا ہے اورعبدالع زین ےا سل بن علیہ اورکپرالوارٹ نے روا تگیا 
ہے اوران ش سے برای سے تقر نے روا کیا ہے 2 


ام ن‌حا نکا وی اوراکی ت ویو : 

اف ال عباردت میں علا مہ امن حبان کے دو ےکو زکرقر مار سے ہیں ء امن حبا ن کا وگوی 
تا ضی این الع پی کے وگو سے کے با کل ہنس ہے ۱ وہ فر مات ہی کت رز کو ره یکر نے 
وا دوراوی مول ران دو ے روا کر ے رای دو ہوں اور سل لآ سرک 
ارگ د ہے » ان حبائن فرماتے ہی ںکہ ره صورت با للل معد وم ہے غارس ا یک کول 
وجودگال ے 3 

اف فر ا ے ہی لکراءن حبانع وگو کے دو مطلب ہو کے یں ان یش ے ایک 
مطل ب چب لیم ہے پچ دوس را مطلب مردود ہے 


حر ڈانظر ET‏ 

پہلا مطلپ ہے ہے:روایة الائنین فقط عن اثنین فقط ۔۔۔ الخ ی نر۶ ی و وت کے 
کر سی د کے مم عل بیس صرف دو نی راوی ہوں وو ےکم ہوں تہدو ےڑزیادہ‌ہوں 
اگراتن حا نک وگو "لا یوجد اصلا“ اہک ترز ید تخل تو ہدعو ت ل تلم سے 
کا کی ر کے مطا بی رز یز معروم ہے۔ 

دا مطلب اس وکا ےکا وتک ہے جوم کے ر نکی سورت یا نکر ے ہوئۓ زگ رگا 
ےک ہا سر ط ران ےکی بھی مر عل م را وی دو ےکم دمو ے ہوں مت اگ ری مر عل 
ٹش دو سے اند ہو چا یں ت2 اس می کوگی رح نیس ءا فی سک ما نکب جد یٹ یم یر 
کی بہت یا دوم ال موجود ہیں اگ این حبان نے ا آفییر کے مطا بی زین کے معدوم 
مو ےکا دگ یکا اگوی مردودے _ 

زد مثال شل حاف ئے وه عد بعش کر فرب سے جن سکوحضرت ال ےر(وامت 
کہ نے میس بغار وسلم دوفو ہش یک ہیں اور ا ے صرف با ری نے خضرت ابو ره ےکی 
روا کیا سب وہ هد یٹ ہے ے: 

" لا یو من أحد کم حتی أكون أحب اليه من والده وولده والناس 


۰ 


7 


یت رعز یز ہے ا یک سند کے بر یق می سکم ازم ووراوی موجود ہیں اس ق کو 
بلا تظغرمائمیں: 
حر ال 
دة قرا ر زین میب 
اع سید اينع گدالوارٹ 


ال کے اجان راولوں شل سے ہرایگ راوگ سے روا تک نے وا ےکی رر وات یں 

حافڈ رید مثا ل ٹل جو عد یٹ ذک کی ہے ہے صد بیث امام یغاد یکی سنر کے مطا بن تو 
وا طور 274 س ےکا یکی سنر یس سی فی کے ورج س کی دوراوی ( مظرت و الو 
پر ) مو جود میگ اما سم نے اس عد شورف حر رت اس ے دوا کیا ےا ال بے 


ع ړو اتر Ra‏ رجہ سط سرت سس و AIS‏ 
ہے اکتا ہوتا ےک ایا کس مکی سند سی فی کے درج می شتفرد پایا گیا ن صرف ایک راوی 
ہے ا صورت میں ال عد ی کوخ رع ہکی مثا ل یں کرک نا درس کا سے _ 

ا کا ہے جاب دیا یا ےک تجرع زی مس سیا کے درجہ مل تخد و روات ضرور یل ے 
سن رسای کے ورج ُل دوراوی د مول صرف اک بی راوی ہونو ای سے اس تر ے 
ری وگول انیل پڑ ےگاء چنا چلال تا ریت رمیفر ماتے ہیں : 

والأظهران تعدد الصحابة غیرمعتبر فی العزة لأن هذا عزیز سد 
مسلم مع أنه صحابيه واحد ۔( شر دا انتاری:۳۰۸) 
وو بی نوج کو روب ہدوت 
والرابع :الَخَرِئبٔ وَهُوَمَأ يتَقرَةبِِوَاىَؾہ شخص وَاجد فی اى مَوُّضع 
وَقَع فد به من السَندعلی مَأ سَیْقْسَم اليه الِبْبْ المُطُلَیْ وَالْعرِيْبْ 
النشیی و كلها أی لافس ام الربعة المد وره وى الأول وه 
الْمْتَوَافِر اد ویْعَال لل واجو منها حبر واجد عبر الواجیفی 
اللعَة مَأيَرُوِبه فخص راجد وَفی الاضطلاح ما کم يَحْمَع فيه مرو 
التواتر - 
تیاور چ م خرخریب ے اوروہے کل تر کے اند رایک راو ےک 
روا تک ےک وج لفردآ جا ۓ خواہ و روسنس یبھی مر عل میں بواس 
با هروه یب ملق اور ب کیک طرف نی مکی ہا ےکی سوا ے کم 
ےکر وہ متو ات ہے بقی سب اقا مق رآ عاد ہیں ان شل سے برای ک رواع د ے 
. اوراشت میں تر واحد ا سج رک کے یں کاک کے اورا ê‏ 
ا ت ریت جس میں تو اتکی شرا ناد پا ہا س - 
یب ۱ 

ا عیارت سے عافڈ م ی چگ رغ ی بک جٹ روغ فرمار سے ہی ںکنر 
خیب ات روچ ہی ںکرجس کے ر یں کے کی بھی معط م کوت راد ی اکیلا ر گیا ہو یاس 
نر کچ ہی ںک سخ رکامرف ایک یط ر ان ہو۔ 

رر بک دو یں یں : () یبطق (۲) غر ےی 


بان رغ ی بو لک ردص می خرابت اصل سنر یس مو جود موق می لی 
کے بعددا لے بل مم غ رایت ہو حدیث النهی عن بيع الولاء والهبة ا یکیال ے٠‏ 
۱ ک عد لحرت کے روا بی کر نے والا راو ی یر الد بعد ینارتفرداوراکیا ے- 


خر یب کی ال خرف ی بک کے ہی ںکرجس می رات ام سند یس د ہو باق کے ع 
کے جحعدسند کے درمیا ی طبقات ل غ رایت ہو خواہ ووغرایت ایی چگ ہو کل جلہ موحد یٹ 
شحب الا یمان الک ال ےک اس عل خضرت ابو ہریرہ سے روا تکر نے والا راو الو 
صا تشرد ے براك سے دوا کر نے والا راوید الد بن د اتف رو ہے ا عد ہش کے 
تام ما اک روات شی تفرد ہے جا ہم مش بڑار اور" ا اط رٹیم ا کی عبت مادک 
مالس موجودہیں رای کی مر لقع لآ ے٦‏ کی _ 

خر ی بکی ان دواقسام کے علادہ عر یردد اقام م پچ میا نک چ ہیں »ان تر یف 
وم لاس و ہیں ا حفر ا" نات 

و ہہ دہ دج نی بجر 

وهای فی ال خاد لول وَهُو مایب الْعَمَل به عند الحُمُھُوْرٍ 
وا رده وم الى لم ی جى يدق المخبربه لوق 
الاستذلال با علی البحتِ عن اخوال روا دود الأول وَهُو 
لایر نله بل ادة اطع بصذی مُخبره بجلاف عبر ین 
اخبار الخاد 

ترجہ :اوراشباراحاوٹیش سول ہیں اور دہ مہ کہ ود نز دیک 
جس پگ لک ناواجب ہے اوران شن ےش مرد ود ہیں ارو هیکرت 
ریس مرکا صرق را د موا ی ل ےکہاخباراحاد سے اتد لا لک ع ان کے 
روا ق کے احا لک بث پ موتو ف ہوتا ہے کیم کے علا وہ اور و وم ار ہے 
وہ سب قول یں یر برای طور پاک اه د سیک وج سے لاف 


عرو اتر TASS‏ ۹۱ 


دوس رک اخیارا عادے۔ 


ریما 

ھال سے ماف رک دوس یم ذکرفر ار ے اسف ملق مرف اخباراحادے' 
ےم روا سے ا کا ہہ پت 
اخیار؟ ماد اقنام: 

اخبارامادگ و وکسیس ہیں:(١)خرمولئ‏ (۴ )خر دود 
ښرتبو ل کت رف: 

خرو لکت ریف بے : 

کچ ر تول و خر ےک یس می قو لی کی فات غلا عر الع دا وک اورطط را وک و رہ 
هو ومول ب 

پل رات نے اس ت رتو ل کی دوسرےالفاط ںیو ریک سک لول 
الذی یرجم سدق المحْبَر به“ کر 117 نس تج میں را موو رول ے۔ 


تقبو لک کے 

نتو 6 ےکور کے دیب یراج باعل ہے۔ ۱ 

اف _ تو لک ج ریف ذکرفر مکی ے وو درا سل ت ربو ل کت ری فیس بلک ا سک گم 
ہے سے ” الائمز ارئب غاد“ کھاجاجاے برمتبو لکاعم درک تے بو عدا ھور“ 
کی قیداس لے کر فر کی ےک کش حضرات (شلا معز ل القا شال ی ءرافضہ وغره)اس 
ول وجوب ال ہو ہکا اکا کے ہیںءتا ہم جپور کے مقاب س ا ن کا تول 
مدودرے۔- ۱ 
وجرا د یہ ےک ھا .کرام اورجا لنشین عقا مت روا هد( مرول )سے اتد لا لک نے بے 
ن ہی ں کان ےا ہے اقو ا لمنقول ہہ ںک ان اتا یکا مخ رل رول ے_ 


رود یر یف: 
جج روود ارف یسب : 
کے خیش متبو لکی صفات دپ ال دوخ رر دوو بے 
اف ےترم ردو دک تر یف یو ںاخ لکی ے: 
کل خر شرا صرق دار نوہ دورنے_ 


رمدو م 
رده دک ہ کہ پیٹ وا جب ال رک ہے من ال ےا رلا لک با لت 


بول اورم رونو وچہ: 
اخبارآحعاد میں ےش تر بی مقول ہیں او رف مر دود ہیں ا یکیکیاو ے؟ 
عافڈأفرماتے ہی یک اخپا رمتو ات م سے استد لا ل کاک پٹ دض پرموقو ف نہیں ے 
نی متو اتر میس روا کے احوال سے بک لک چا کرفلا ل راو یں صغ تکا ما کک سے 
انز و خودواجب ال ہو هک وکل ہے ء جب روا ق کے الا ت اور عفات سے 
شش مو او ان میں سے کی خر پر مردودہو تیا کل لگا یا جا تا کک وہ س ب کی سب بول 
بو ہی ںکران ےرک چا تور رمعلوم مون ےل ہد اان ٹس ےلو ن ر مرد ورشس» 
بخلاف اخیا رآ عاد ےنہان ہیں حض مو ل بھی »ول ہیں او رکش م دددجی مون ہی ںکیوئلہ 
ا کے روا ۃ کے عالا ت اورا نکی صغفات سے یک تک جا لی سل یس 2 روا ۃ س 
صفا قول مو چو دہوں وومخبول بن جا نی ہے او ر کے روا یل صفاتِ مدودہول وه 
مردودن جال ے۔ 
جار FF‏ ...جار با او کر 
لک نما وخب الْعَمَلُ الیل بنها نها مان يوخ نها ال 
صفة لول وَهُوَثُبُوُتُ صدّق التأقِلٍ ال صِفَة الرد وَهُو بت 


ع ړوار pS E a‏ وہ 
کذب الناأقل أو لا ءفَالوّلُ يلب عَلیٰ الظِنْ دق الب لوب 
صذق ناقله فیوَخد به -والئانی یب علی الط کلب الْحَبَرِلِثُوّتِ 
کب تفه قیطرخ ۔ ولاك إِك وَحَدث قرة لجف بعد لقشمین 
التجق بے و لا قوفف فيه دا تفت عن الْعَمَلِ به ار كالمَرَدُوُدِ 
5 لوب صفة رد بل گنه لم یرد فيه صفة ترحبٍ بل ال 

اعت ۱ ۱ 
ترجہ :کان ان شس سے متبول ہک لکنا واجب ےا ےک یاو ان شس 
اسل‌مفت تبول تن ناخ لکی چالک شوت پا بایان یں اصل غت ر وی 
ا لک یکذب بیان پل جائی گی یا ان (دوٹوں ) میں بل پایا جاڑگا 
لی صورت تلکسا یکی دج گرگ نا لب موتو الکو اف رکیا جا گا 
اور ووس ری صوررت قل اا کو تک وجہ سے ر کے تجو ٹکو نا اب 
کن ےل ا سکوچھوڑ دیا چا گا او رتیس رک صو رر تکیا تھ اک رو ایا قر ده و جود 
ہو وک اس نرک یھی ووا قا م یس سے کی کیہ تھ لاتا ہف ا گوا سکیس کے لا دیا 
ایا ور اس ہک کر نے ے تلتق تو فف افیا ریا اور ج بک لکر نے 
میں تو ق فک رل گی توا ی ترک امک کی وچ سے وهمروود کے مشا موی ررد کے 
صفات کے ٹیو تک وج کل یرانک صفات کے معدوم مو ےکی وچ سے جو 
کرو تک تفش اورمو جب ہیں وا عم 


مقبول اورم ووو شی مکی وج : 
ال عبارت ل ماف ”انقسام الأحبار الآحاد الى المقبول و المردود“ گا 
وچ اور وگل وکرفرمارے ہی ںکہاخا رآ ما دگو ان ورتصول( حول اور مردود ) شس کیوں 
مایا ؟ 
ا کی دیل ییا نکر ے مو ے ما فر مات ہی ںکاخہا رآ عاد س تین صورتیں شق ہیں : 


یال صغ ت تبول ہے .اس صو رت غل ناثل صد قکی وجہ ےکر ہکی سیا ی کان ناب 
م ل ہوتا ےی نبرمقبول ے اور ہو اجب امل ے_ 


عرجلظر بد سو رت ا ا ی 


او رهز ال مشت رد ہے ء اس صورت یل نال کےکا زب او رو سل مو ےکی وچ سے 
رکذ ب اور وٹ کا ا ب گان x‏ سے ی تر دود ے اور ہے واجب الرو اور 
روک امل ے۔ 
۳)..... ری صصورت ہے ےکہاخباراحادٹیش درا ل صق تو ل »واور دا عضو رو 

ہو ءا سکی پر و وصو رل می سکہا سکیسا تح اگ رکو الما تر یندعالیہ با ولا ل مار ج مو چو ر ہوجو 
ا کول دوصورققوں لک ایک صور یکی تج کرجا موتو ا کو یکیرات ہلاو یا ہا یک لن 
اکر اییا قر یھی مو جوت ہو اس صورت یل اس پک لک نے با سے رداورمت روک امل قر ار 
د سے کے موا لے میں و نف ا فا رکیا چا + ہیور ت مردود کے مشا ہہ ہے اور مشاہ تک دج 
اورعلت کل سک اس مر می چبھی مرو وک طرح غت رومو جود هلال میں تیو لی ےکی 
مفرت ای طرع مدوم ہے کک ط ررح مروود ٹل عفت معروم ونی ہے الات دوو ٹل ال 
صقت مج وم ہو کیہ تسا تفر روگ مو جود بو ہے اس لے اسے مرو کے ہیں 
و ولا س میں صرف صف تو ل مفتور ہے اورصقتب رون مو جور ےو یرف مر دود.گ 


وَقَديَقمُ فا أي فی عبر الحاو الْمْنْقَسمَةَإلی مشهور و عَرَیْر 
وَعریب مَأبْهیدالعلم النظری بالقراین علی المُعْتَأرٍ جلافا لِمَنْ آبی 
ذلك وَالجلاف فى این فظی لد من حوراطلاق الملم ده 
بگونه نطریّاه وَهُو الحاصل عَنِ الاستدلال ‏ وم ابی الاطلاق خص 
لفط الیلم بالات وَمَاعَدَاه عنده ظنی لکنه لایئفی اد مااختف 
بالقراین ارجح مما خلاعنها_ 

7 جمہ:اخبار اعاد ل وکت رور ,یز اور بک طرف م بول سے وہ 
خی ہیں جوقرائ یکی تی مگ رتو ل تا ر کے مطا بن مرکا ند« بت ہیں ان 
کے برغلا ف ان حرات کے جو اس کے مر ہیں رتقیقت میں با خفن 
ہےءااس لے ےک جو رات طلا نم کے جواز کے تال ہیں نجل نے ا للم 


ع ړو اتر مھا روس تی سکس مدع مق سراف ی 3۵6 
نکر یکیرات تی رکرو یا سے جوک ات دلا ل سے مال ہوتا ے اور جوحعضرات 
اط ت م ےک یں ہیں انہوں نے فیا وتان کی تیصو سکردیا ہے اور 
مت کےعلادو ان کے ند دی س گنی ہی لگرو ی اس بات رل ہیں 
کہ جوت رق را نکیسا تح مقر ن مووہ دوس ری کے مقا یل ہش را »ول ے۔ 


ابا رآ عاد ےم ری حاصل موتا ج ابد بی ؟ 
اف هل با مار ے ہی ںکاخبار ماد( شور معز ج: غر یب اعلم من یکافادود تچ 
ہیں یانییں؟ اس میں ووتو ل قل کے گے میں : 


ہیں تو اس وقت ان اخبارآ عاد ےت ائگ کج ان مکی وج ےعلم می کا ناکد ہ حاصل موتا ہے 
کر ہک کم ری موتا ے۔ 

)...ووس راقو ل( ک فرعتا ے کیہ ےک اخبارآح اك لق نی یں ان ےک 2 
کم اوقت نک کر و ھا سل موچ یم او رین تو سخ رمتو اتی ے مال ہوجاے۔ 

حافڈفرماتے ہی ںکہ نرکورہ دوفوں اقوال میس میق اختلا ف نہیں بار فی اختلاف ے 
اورا تا فلت ہو نهک وج یہ ےک جن حف رات تش رو اتد لال سے م سل شد همم 
شی کااطلا قکیا ےا انہوں نے اسر یکیرات تی رک دیا کیوک یم ن بی تصرف نر 
متو اتر ےم گل تا ے۔ 

اور حرا ت اخبارآ عا د ے مال مو نے وا سل قا کد د یم کےا طلا کو چا تہ اوردرست 
یل »ان کے نز د یک علم نی کا اطلا‌صرف اس پر ہوگا ج رک متو ات سے حاصل موتا سے 
بق سب اخبائننی ہیں ان سے مال شد هس بک لمڑلنی ے۔ 

کرمگ نگ اس بات کے تقائل ہی ںکہ وہ اخبا رآ ماد جوقرائ نکیا رم بو دو ان 
اخبارآعاد پر مقدما وا ہوی ہیں جوا خبارآ حا وقرائع سے شا ہو ی بل - 

KHK Kr... KF FY 
7 الب رام حتف بالقراین آنواع: منها ماأحرجه اسیخان‎ ۱ 


عرڈانظر هت و وت هت ی سپ QO‏ 
هی الما لْهَا لول وَهذا ای وَحْدۂ وی فی دة 
الیلم من مرو کر الطرّق القَصرة عَنْ خد الراثر إلا أ هذا 
بختص بعا لم ده أحڈ من الما ما فی الکتابیّن و با لمع 
ال بين مَدلُوْلَیه ما وم فی الْكتابيْن یت لاترحیِح لاسیحَالة 
الاعر وَمَاعَدا ذلك فالاجمَاً ع خاصل علی تیم صحته 
جورخ سکیا تج رانک ہوتے ہیں و ہکئی اقا م پہ سے ان یں سے 
یتم دہ ےلین( بقا ری وسم )نے ا یکین میں ذکرکیاہو بش رط ۱ 
وه عد 2 اتر تک نہ گی م وکا کیا تج ےکی نار کی قر ای ہوتے ہیں ءان 
( راک )شس سے خی نکی باب مس جلالت وحفدت او رک کو غر ی سے 

متا زک ٹل ان دونو ل کا زرم اور علا ء کا ا تک رولت ےل واز( 
وغیر وشائل ہیں )شض تی لقو لم کے افا دہش ان طرق ےا کے ج 
طرقی ع ات ےکم کر بیقر غا س اگ کتک میں مو جو دا س ق رکیا تو نا ی 
سس ال ےی تقو کی مواوران کے براول کے ما ین تاف 
بھی نہ ہو باطو رک کوگی تز بی بھی تہ م وکوک اتی سے ای ککی دوسرے پہ 
23 کے بر مک افا دہ حال ہے اور چوا Db‏ ای کی کر ليم 
نایمار > 


رت ایکا 
تم کار 


یہاں سے مات تک اقا مک تک وف مار ے ہیں اک ناور وعبارت مل ان شش 
سے کک دک بف رکف بالق رائ نکی تم درس ےک جس نی وشن امام غا ری اور 
اما کم دوفوں نے اپنی اپ یکا ہوں یں زک کیا ہو بش رطیل و وت رح دق 2 ےک مون و انز ترمو 
اور ال خر سی حافظ (ن تد )نے تقیدنہکی +واو رال کے براول تا لف وت ات نله 


عرڈالظر رس مار سم بس ا و SS‏ ا سیف ۹27 
ای رواد یکو ییا ری وسم نے کک موو ونی اظ ری ہو یکوک ای کے سا تح من درجم 
ز یار ہے وت 


٦ (r.‏ مہ ہت TT‏ تو لت رے 
و از یا 

نارق ننک مو جوک میس دوخ روا رضرورمفی رکم ری وی ۔ 

حا فڈأفرماتے ہی ںکہان دوفو ں حرا تک دوف تتابو ںکوعلا امت نے اٹ یی بلقو ل 
کے سا ت ٹوا زا صرف ی لقو ل ہی ان طر یکذره ے مفیدلم ہونے میں اوی ے ج 
طرق حد از ےک ہوں ٭حافظ نے کش 06 س نکی زر روم یه ری 
اض ری مگ ول ال مت کی مت ورل نتر رم قرو مزلم 
سل موک .تفا جد یٹ نے ہا رگ ایک مودس احا د یٹ پتقیدف ما ے ری ایک 
سول احاد یٹ پتقی دک ےہ او تھا بقار یک ات ہیں او روک مکی ہیں او ری ووتو ںکی 
زک میں »حافظ ان چرس ان اماد یث پر جرب ولق رکا جاب مقر مہ بری الماری ں دیا 
او رل اعاد یٹ تق رتو لکیا_ج - ۱ 

عا فا ے دوس ری شرط بی لگائی ےکہان کے ملول مس ایی تقض نہ ہوک شس می 7ج ۱ 

بھی درو یگئی ہو »پیش ط اس لے کا ےک دوایکی احادیث ن کے برلول ناف ہوں اور 
ان یتپ بھی :ہوا لیے ناس ےم مکافاد حال ہے جب اس ست مک فا الا 
اس تقض المرلول کے نہ ہو ےکی شرط یکی ےا کل بش یہ ہوا کی نکی زکرکردہ 
اخبارآعادجوففاظ ناف بی نکی جرب اور کور م تیا رض وتات ال ہوں دہ اخبا رآ حاداجماعا 
مفیدعک ری ہیں 

اس ب شتا هکس نکی احاد یٹ پرمفی٠عل‏ ری ہو نے کے اعقبار بیس 
سے بان سےواجب امل is‏ پاجماے؟ آنے وا ی عبارت ٹل حاف ای شاور ای 
وکا می کی 

ونہ نے دی دجو دی بی دی 
فقيل انما اتْفَقُوْاعَلی وَجوّب الْعَمَلِ به لاعلی صحته متا 


عو اتر RSA‏ مر امھ اسم سای ۲ 6۸۵۲ 


حاص غلی أ لما رة نا جم إلى تفس الد وي م2 
بافادة مَاحرجه الشیخان الملم النظری لاه باق 
الاشفرآیین وین یمه الحییت آبوعبیالالخنییی وَآئز القضل ی 
اهر وعْیرهما ویَختمل أ يقال ألْمَرية لد کوره كود احادییهما 
اصح الْحَيِیْثٍ۔ 

تر جم :اگ ےکا جا ےک بلا شا ءا مت نے ( گنک کرک وم ) عد یٹ کے 
وبوب‌امل ہونے پا تفا کیا ہے ہکا کی کت پر نو م ال شیر ع وارد 
کر ی اور کی ےا ۷ 
اقا کیا چ اکر چا حد شین کر ديا ہوا اس صورت می تین 
کی اباب کوٹ خصوصی نیس ہے ادر ای بات حار ےک کی نکیل 
ای کت کت کا هس ون لن نے 
ا ات قر نک )کرد ادیش رس ری بو 
ہیں ان یں استاد ابد اکا اسف را »ا عد یٹ ٹس سے ابوعمبدالش یدگ اور 
بقل ن طابر ویره شائل ہیں اور ال بات کا بھی اخال ےکہ رہ 
تصوصیت ے ی نکی ا عاد ٹکا اح امد یٹ ہوناعراوہوں 


تی نکی ا عاد یت پر ہونے کے لاط سے اتان سے ینس ؟ 

عفر مار ہے ہی ںک اکر ہے اقترا کیا جا ےکی نکی ذکرکردہ ادیش کےصرف 
واجب ال ہونے پا ءا مت نے اتا کیا ےکن ا نکی اماد یٹ کے جع ہونے اتقات 
کل واک دک وج سےا نکی اخبارآ حا دی نظ ری ی کات ود یی 

عافڈأفرماتے ہی یک ہم اس اعت را شک وم کرت ای س 2کرعلام امت نے اجار 
کے دل پراش راو اچب امل ر اردیاے جر ور چا خر کو وین نے ذکرہی رک 
00000 
واج ب امل ہے ء لہ اعلا ءکا اما نک احاد بی گنت سے اور بی ا نکی تصوصرت 


ہے ور کی نے کم یکوئی تصوصیت پا نجل را بل دوس ری یکت میں مو جو واا دی 
رگ وا چب امل ہیں :اس می سس یکوا تیاز ماس - 

یں اک وجہ سے لو ںکہا ہا ےکک مت نکی تصوعیت پر جو اما رغ موا ے وہ ای در کی 
کت کے اقا ر سے ےواج باعل ہو نے کے لا تال ہے چنا درج محارت 
نے ا سک صراح تک ے: 


ویحتمل آن يقال .....الخ: اس عبارت یش ایک اعت راض ذکرف ماد ے ہی لک رتخد نکو 
دوسروں پر جوخصوصیت ها ے اس ست لاز ما لآ کہا نک احاد یٹ سبق یں 
رای سح یا دہ سے زیادہ بی از مآ اکا نکیا عاد یث دوسرو ںکی بضبت ا یں عالاللہ 
یہاں ا نکی فطع تک ۱ شا مقصودے جو حا لکل ہوا_ 
حافظہ اک بجر نے جو ا ری وس مکی می الا طلاقی دوسردں پرمقد مقر ارد یا ے٠‏ ےتا یں 
یں چنانینضق ای کا اس پار سے میں فر مات ہی ںکہاگر عد یٹ خاری ٹیش ےو اء 
اک صد ی ٹکوصرف اس وج ے ڑ پیل + یک وہ خا ر یکی ے بک نار سکول وجہ 
7چ یش نکی جا سک اور خلت اک دا جاک اپ سح یاوعد مش 
ہے جو ار ی سکم میس ہے ہے بات قا مل تلیننیس ۔( قد :ا /۳۸۸) 
اب اعا فط این راکنا کمن میں ور ہنا یوجر ے با یل لی ہیں ہے٤‏ انہوں 
نے صب شاف المسلک »وس ےک وجر ےک ے۔ 
YF‏ دی دی و چاو چاو تب 
وینها المشهور !دا کانث له طرق مباینة سایمة من ضحْفِ الرواة و 
. العلل وَمِمّنْ صرح بفَادته للم النظری الاسْتَاد بُمَتَصورٍ البعدادی 
لاه یبن فك یرهم - 
ترجمہ:اوران یش سے ایک ن ہو د ے جب ال تا کلف طرق روا ۃ کے 
ضح او رل ( رح  )‏ تکقون ہوں او رن مطرات نے ال( شور ) سے 


ری کے افاده ی‌صراحت گ سے ان میں استاز ال وصور بخراری اور استاو 
ا یکرو رک وغیر شال باس 


دوس رئیم :ن رشبو ر بطق که 

خرف پا لق ائ نکی کی رق "ماع رجه الشیحان “ ی ج کا بیا نگل ہوگیاء اب 
یہاں ےش رف پالرائ کی دوس ری کم ہو کو بیان فر مار ے ہیں ہفرماتے ہی کروه 
ر شور ےکی طرق »ول اور وہ طرق ما اور تلف »ول اور وہ ط رن مخز روا کے 
اسیا بض حف او رل قا دح وظمرہ ےتفوظ ہوں تو ای تشر( ج کیج رداحد سے )کر یک 
کان ےکن 

علا امت نے ال شور کے فیرظ رک »وس ےکی ص راح کیا ہےء ان علماء یش رز رست 
استاوابونصور بخ ر اوی (لتو: ۳۲۹ م )اوراستارابرگرثو رک (التو:۳۰۷ع) یں۔ 

TE TE ار ار ...ار جا‎ TE 

نها :امس سل بالَابِمة الحفاظ المتفیین حبث لایکود عَرِيبًا 

ال ینب الى یرون ند بیع ون رگا فيه یه عن 

الشآفیی یشاک فيه عَيْرَة عن مایب بن نس » قانه ید الیلم ند 

سَایوم بالاسیذلال ین جهة خلالة رنه و أ يهم من الاب 

عبرم ولای کل من له دی مُمَارسَة بالعلم واخبارالناس أن 

مَأ ځا مَل لوشاقهه بِحَبَر لیم آنه اوق في قوذ انضاف لب یا 

مَنْ هُو یلك الدَرَحَة داد فونه وَبَعْدَ عن مَايَخشى عَلَيْه مِنّ السْهُو- 

تر جم :اوران ٹل ساب وہ قر ےک لک سند س سلسل ات قطن روا 

ہوں پا یں طو رکرو خرف تب مولا :”وو هد یش سکوامام ان ہ نجل ے 

حخرت امام شاف 70 9+ کے تا قوی اور 

راوئی بھی شیک »مشق نے اس عد یکو امام ما کک ین اس سے 

روات کا اور ا کی روایت س ان کے ساتجھ ایک اور راوگی بھی شرف 

ہوگیا۔۔ م جر ہے عد بیش اپنے روا کی جلا لت شا نکی وجہ سے ا کیم 


نظر یکا فا ترەد سے اور بلا شان لامک صفات مو جور ہیں ج وک تو لیت کے 
لاکن ہیں اوروہ رواۃ کے جنر -ساوی ہیں 2 ج :اور و ہآ وی ال ٹکو 
نکی لک ےک کک کم سے اور وگول کے مالا ت سے یا تفیت م وک مشلا 
لام الک جب ا لکوآ مے سا ایک رو یلو وه لقن سے جان ےگا کروه 
اس یش سے ہیں بر جب ا نکیساتھ ا کا م منص بآ وی ٣ل‏ جائے تو ا سک 
توت ٹل اضا ف ہو جائگا اوران و ونیا نکا ان یشگگل رےگا۔ -- 


تی ریئم :"سل بافاظط: 

هل شحف بالق راک تس راگ کا کر فر مار ہے و ہتس رینم ووخ ر ہے جن سکیا سند 
میں سل امام ادرطفا ظط مو جودہوں اورسند کے چرم رحلہمیں اس اما مکیسا هو دوسا راو کی 
شیک ہوگو یا کہ سند کے ب رم رصل ں دودو راوی ہو کے وو سمل ء ای وچ ے ماف 
نے ” حیسث لایکون غریبا “کت دک ص راح تک ےء اب ما کل ی موا کو وخ راع دقر 
خریب جس کے طر بی اورسند کے ہرعبقہ میں با ری ب کوک امام عا فط ن ایک شرف راوی کے 
موجود ہوا ایک تبر داع مقر یکا فا مہ دی ے۔ 

اک مشا ل بیو ںیک ےک ایک روات ہے جس کے اول راو ی صحخرت با کک من اس و رہ 
20 ال کے لحد ان سے روا کر نے والے دوراوی خضرت امام شاق اور ایس 
ہیںءاس کے بحدامام شاق سے روا تک نے وا نے دوراوی تر ت امام ا نب او راکب 
شس ہیں .اس عد بی کی سند کے ہرم رعل شں ایک ای کیل الق ر راہ م موچور ہے و ا یر 
واع کت رک فا ده کی اکچ ر کے روا ان عخظام ہیں تو ا نکی لالات قد راور 
مت شان ا سخ ر کے مف اظ ری ہوک ید ے٭ اس کان ٹس ای صفارت ر فعہ 
موجوو ہی ںکران صفا سک ودب ا ل قر ے رمعل کے دورا وی روا ۃ > بہت 4ے 
کے ا م متام گر ہے بات یاد ےکا لف کال عد یٹ خر جب ہے یں ہے بللہ ا کا 
تصرف رشو راورن زیت ے۔ 


ی 


کشت عپارت مل ماف نے سل گنای ) ل جو پ جو شال ذکرفر ایی اس عبارت شش اس 


TT:‏ 0 رز 
کی عز یراد شع فر مار سے ہی ںک جس17 و کم میس با رت مکل موا وراخپا رگا م سے شی 
ہو وو وی اس می کول کی کر ےک کہاگ امام ما تک ا کوکو تی ترآ ۓ سا سے دیے 
میں نے وہ راچان لتا سک یرام ان قرش صا رل اور تچ یک ووا ہے عل الق راما م 
ہی ںکران صرق اور کے علا ون تن ہے امام ما لک کیسا تد ای خی رکی رواعت شش 
اک چم رحب ایک اور اتد راما مکی ش کیک ہو جا ےلو ا خی رک ص دات تک قو ت مس مر ید 
اضا وچا کہ و مہو ونیا لن کے ان بے ےکی بحر ہو مایا - 
ود ۲ بے 1 ...... 1۲ ۲ ۲ 1 

وضذہ انوا ع البی ذگرتاها لایَخصل الْملمْ بصدق الْمُخبر منها إلا 

لام بالحییب امتح يه لاف بأخوال الروثمطم على 

لمئل وه غیره انس[ لالب بیدی ذلك شوه عن 

لوصف الم وه لاننفی مُصُوْلَ الیلم لِلمتَتَحْرِالْمَد كور و 

صل برع لاله لین دراد اول يعس بالصَحِيْحَيْن 

والشانیْ بمَاله طرق مَعَدَة ال بمَارواه یمه وَیْمکن اخیمّاع 

2 م :یدالو اع کو ہم نے ذک رکیا ہے ان ہے صد ت ث رکا م ایآ و یکو ی سل 

وکا جو جد یٹ کا عا من عد یٹ ٹیس تر احوال روا سے بات اور عرےےٹ 

سے خوب وائف ہواوراال کے علا و وگو( جرک ان اوصاف ےر اور ا ی 

ہیں ) ان سے صد ت غ رکاعلم حاصل نمو کے سے تاره ادصاف ما کی 

علم ی سل ہو ےکی تش مون جن تین اقسا مکا زکرم ےکیا ے ال نکا لام 

ہے س ےک ات ری م اس ت رکیاتججتس سے جس 

کے رق متمددہوں جر ری انم دہ سے + سکوا تما ظا نے روا کیا ہگ ران 

ول اقا مک ایک عدیث می مع بان ہے اس وت ال خر ےمد تق کی 

قط کول بر امس ہسے۔ 


رت بالق را ےکم :۲۹ 


ال عبارت مل عاف تن با ٹس کک نا چا سے ول ایک ہے بات ےکہ ےکور ہ او ار سے 


ع ړوار یج E E‏ 
ک سآد یکوک یا کل ہوگا او رک سکوعلم ما تن ہوگا ؟ء اور دو سرک بات ےک ان انو اع کا 
غلا صراورلپ لہا بکیا ہے؟ء یسرک بات ہک ممکودہ لول اقا م ایک صد یٹ شش مکق 

میں پاتیں؟ 

کل ا بے ےب اا ا رلک حاصل ہوگا 
جومندرجرذ ل اوصاف ارب وکا عال ہو: 

( بک عد کاعا ‏ ہو۔ 

E‏ میں کر رکا بو 

٣)......راولوں‏ کے عالات ے پان رہو- 

(r‏ ی کے ااا برد 

جآ دی ان اوصاف ار وکا عا ئی ہوگا ا ےش رجف بالق رائ نکی کور ہ افو اع فا ےکم 
ال ہوگا اس کے ماو ی1 د کوان تکفا رهب گرا ےھت رآ دی کیل کف وش 
ہونے سے بلا می لآ اس عا م اورت رگم امل ہو بان عازن سے ضر ورم 
حا ہوگا- ۱ 


خرف بالق ران نکی بک ٹکاخلاصہ: 
دوسریا بات کرک نے ہو ےرا نے ہی لیگران افو ا کی بک ٹک ما سل اورخلاصہ ہے ے 
وس ۲ 


0جچج- 

۳).... یس ری م وور اعد سے جن لک سند کے ہرمرعلہ می اج اور تفا ہوں اور ان 
کیساتھ ہرم رعلہ می سکول دوسرا راو یگ ش یک م وگو یا ا کی سند کے ہرم رعلہ می عم اکم دو 
راو ضرور ہو گے اس سے معلوم ہوا کا فی رکام نجرخر جب داش ل نیس رو اس سے 
مار ر ےی 


توں اقمام کے اجار کی صورت او رگم : 
رک بات بی ذکرفرمائی س کہ تلاصا ک ایک تبروا صد مل بھی تی وک ہیں اس 
صورت یس اس ر داع سے صرت ف رک قطعیت موق کل ر پیا اور ای سمل کا فده 
بر لن ان ہوگا ما ایک ترو اعد سل کے متحددطرق ہیں اورا ی کے پرم رعش راوی 
امامادرحافاجی چ اورا تین نے فک کیا ہن ا فاط سے بقل اقام ایک یرس 
و ہیں۔ 
جل جا بل YE E...‏ جا 
م الراب ما آن تحود فی ال السَنَد ی فی مَوْضَع الَذِیٰ یَدُوْرْ 
شاه و ورج ولز دب الط ق اه ره طرفه ای فنه 
الصحابی أو ایکون ذلك بان يکود المرذ فی اَی کان یَرُوِیْهِ 
عم السحابی أ کر ین واج مقر ويه عَنْ وَج منهم شخص 
واحدٌ 
ترجہ :پچ رخرایبت 7 ال سر ش بی ال جواستادکا گور اور 
عدارےاگر رق عرو وما شی اور و سرک وہ عل گر میس سای x‏ 
سے یا اس طرح تذل وگ پا بی طو رک تفرداورخرایت اسناد کے ورمیالی میں موی 
جیاکرال روا کسی لی ہے روا گر نے وانے ایک سے ز اد ہو ںتگ ران 
سو ایکا وی رده وگیا _ 


رابت کی اقمام: 

اف ال عیارت مم رات اورآفردگ اقمام بیان فر مار ے ہیں ءاس بک کاتعلق تل 
یش میا نکردہاخباراحادکی تن اقمام ل ےآ خر یح جرخر یب سے ہے ہف رما اکسفرابہ کی 
رومی‌سی:(۱) ردق (۲) ری 

ان دونو لکی وج خر س ےک ۔تفرداورغرابت باتو اکل سند می صھا لی کے بعد تا بجی کے 
م عل شل »وک یا جا بھی کے مر عل کے اح رسن کے درمیان مس ہوگاءپہگی صور رتکرابم تکوڈرو 
ملق کیچ ہیں ,کہ دومری صور تک فا تکوفردجی کی ہیں ران دوتمول کے علادہ ہم 


عرچانظر مت یی کا ہج هه وه کیش ۱۵۲ 
رام تک دواو ر ہیں بھی خ رخ یب کے ذ یگل می با نک ع ہیں ان جس سے ای ک عم 
”فردسندراوقنا'اوردوس عفر وسندالا قنا“ے_ 
ییہاں عا فی ذکرکردہعپار ”وهو طرفه الذی فیه الصحابی “ زراورطلب »ال 
عبار ت سے بجر یتلوم مور پا ےک راس سے سن کا دہ مرح مراد س ےک هل می ال موتا سے 
یی اگ رصھالی کے درج اور م رعلہ عفر پایا جاۓ تو و غر یب سل ےکر می ظا ری ہوم 
درس تچ اور یہ ال مرا وتیل ہے ء چنا ن ملاع الق ریت غر مات ہیں : 
"و أما إنفراد الصحابی عن النبی فليس غرابة اذ لیس فی الصحابة ما 
یوحب قدحا فانفراد الصحابی یوجب تعادل تعدد غیرہ بل یکون 
ارجح“ ( رپ ملاع قاری:۲۳۳) ۱ 
لی رک ےکا مکا حالمہدے ضور اکم روا یکر نے میس 1گ رکوکی سی لی ایا 
ہو اس ساف کے تا ہو ےکی وجہ سے وہ روات غر ب یں ےکی کیک سا ہے مل پا عش 
قر کول امنیس ہے بل کا یکا اکیلا ہونا دوسروں کے مقر کے بر ار بللا ےکی ران 
موتا ہےلہ ال ےمعلوم »وکا کے درج شی لتفردسے وه هد مش بل موی - 
اس کے دراک قاری حافڈ کے گر دعلا ماک قو لکر تے ہو ۓےککھتے ہیں : 
”قال التلمیذ:طرفه الذی فيه الصحابی قال المصنف الذی یروی عن 
الصحابی وهو التابعی وانما لم يتكلم فى الصحابی لأن المقصود 
مایترتب عليه من القبول والرد والصحابة كلهم عدول"رایضا) 
علا متا م کے کلام کا عا گل ہے س ك عاف اقول ”طرف ه الذى فيه 
الصحابی“ کے پار ے شی فر ما اکراس سے ده داوی مراد ے جوسھا لا ےر وا تکر ےاور 
وہ ی موتا ہے ء اس مس ای( تفرد )کے بارے میں کلام اس لی یں مو کے 
ال روای کوتبول یا روک کو ہیا نکر نا قعور ہے اورا یاب سول سمارے کے سار ے 
عرول ہیں ان کول سبب تد رل »اک رح علا م این الصصلا کی فرماتے لک 
ایک الا ہو نا اس دیش کے جب ہونے پر دا کل ےآ خر میس ملاعل ا ری فربا کے ہیں 
کہ "طرفه الذی اراد به التابعی "کال سا مرا وگل یت بی مراد ے۔ 
PF‏ کر جا Kr...‏ چک جک رہ 


عرجانظر 0000000 ا ا ی 
5 رو E‏ ب 7 # ر رر ہو کک بر مر و ےہ ود 
قالاول الْفَرْد الَمُطْلَقْ كجدِيْث النهي عَنْ بيع الو لاء و عن هبیه تفرد 
به عَبدالله بی ينار عن ابن عُمَرَوَقَد یرد به رَأو عَنْ دك المنفرد 
2 2 ھی رھ تور ور رم رر ء ر و ےر ہے رتور ا 
کجدیّب شعب الایمان تفرد به ابوْصالِح عَن آبی مره ورد به عبد 


رن دیا عن آبی ضالح و ق يسر اعفد فی حیبع رازه از 
آ کترمم وفی مايرأ وَالْممْحَم الاوسط بلطبرانی امبله یرہ 
تیم و فر ولق ہے جیے تق الولاء اور ميد الولاء کے کر وال 
عا یث ےک اس ُل ام گر سے بد الت بن د ینا رنفرد ہیں پچھ راس ترد سے 
روا تک نے والا راو ی کی قرو ہے شحب الا یما نکی صد بی شگطر کےا ی 
م حف رت ابو ہریرہ سے ابوصا ‏ فرد ے پچ الوصا رسب اش ند یت رتقرد 
ہے پھر یتفرداس هد یف کے تنام رواۃ یا اکٹ باب اد د پاء اسان مک 
مثا س مر بزاراورطبرا لی کی نتم اوسا شل بہت زیادہ یں - 
زر لق کی شل: 
ان غات میں مافغفر وق کی مشا دب ر سے ہیں اور نکب بیس گی مالس 
مو چوو از کی ت کر وکر ہیں کے فر وسل کی مثال بیا نکر ے ہو ےر ما لک صد ی فو 
"الولاء لحمة كلحمة النسب لايباع ولايوهب ولايورث“ 
اس شال گرال روات سو 1 نے روات نے وا سای حزن 
عبد الد بکن عر یں ران سے روا یکر نے و رو او رتھا کیرالٹہ بن د ییار ڑل اور ہے 
ید الثر بن د تارج کے ورج میں اصل سند یل تفرد ہی له ایر مد یٹ فر ساق کی مشا ل ے۔_ 
اکی دوس ری شال عد ہش شعب الا بماك ے : 
”الإيمان بضع وسبعون شعبة فأفضلها قول لاله إلا الله وأدناها 
إماطة الأذى عن الطريق -- ۔“ (الحديث) 
اس عد ی ٹک وحور اکر م وا سے حضرت الد رین روابیت فر ماتے چگ ان ے روات 
کر نے دا نے راوی چ لی کے درد ہیں لت اسل سر یل الوصا رخ رد ہں اس کے بجر ان 
سے و ای ںکر نوا ےرا وک کید انز د ینا ھی تفرد ہیں اور ترآ گے چم ی ر یبا لک 


عرو اثر ا NT‏ ےا 
کاک عد میٹ کےتمام رداق یا اک روا تقرد پل اور وا کی اکل سنددرجہتا گی می تفرد 
موچوو ےل ہز ا کی فرطل ق ی شال ے۔ 
۱ عاف فرب اک دو چشالیں ہم نے دکرکردی ہیں :و نگیم لو ںکیضرورت ہودہ 
سر اراورطبراٰ کی تم اوس کی طرف مرا جع تک میں دہاں ا سکن مش مو جود ہیں - 
KK YF‏ دج دی KH FH‏ 
وان ره لنشیی شمیت لگن ارب لنش إلى 
شخص مُعَيْنٍ ون كأ الحَیِیْث فی تفیه مَشْھُوْرَا۔ 
رج :اوردوسری رف ری ےا کاینام۱ مس لئ رگا گی اکاک صد عم س 
تفردکسی نا ین راو یک تست سے پیدا ہوتا سے اگر چروه هد یٹ نہ 
شور بو 


فرری: 

یہاں سے ما قاقر دک دوم ری م فر دب یکو یا ن فاد ہیں »سی نون کےکسرہ اورین 
کو نکیسا تھے اس عد ی شک وی ال س ےکہا ہا تا س ےکا کی سن کے درمیان دا ےکی 
ان داو یکی وجہ ےخرایت او تز دآ تا ہاو اس خمائص راو کی طرف نہ کی و 
سے ا یکو کے ہیں ن ار وہ را وی اس عد ہک ایک ستر میں نو رو ہے اور ای اس 
سند کے اظ سے بعد بث نر ب ےکر ووسر ے طرق کی نا هعیش ف ف خر شور 
.ایک سنا سط رب ے: 

یروی الزهری عن سالم عن عبداللّه بن عمر حدیثاً“ اک عد یثلاءامز ہرک سے 
ایک ی راوگ نے دوا کیا ہے ء اس سا تک دوسرا راو یش رل ےنم اا مذ برک 
هامریت الم سے ا کور دا ۃ کے ایک جر نے روابی کیا ہے ء ا کی ط رح سا لم کے جن 
یرال بر ےکی تحرو روا ق نے رواے تکیا تو وہ عد یٹ امام ز رگا سے روا یت کر نے 
وا ےت روراوی لیج رف ہے می اس ایک نام نبت ے لز داورشحرابت موچودے 
جا محرت سام سے روا تک نے دا نے روا کی راو رکید اٹہ ہن ع کے تحر دروا ی طرف 
کل بعد یٹ خر بل ب نود سب _ 


و يَقِل اطلاق الم رويهة له لان الْعَرِیْب والفرد مرادن له 
027 
الاسْمِعُمَاُل َل الفره اکتر یط عَلى ار الْمُطْلَيٍ وَالْعَريْب 
تار ی مونه علی ار انی وَهذَا ین حَيث اطلاق الاسشم 
سد مشش متا لعل فمشتن و 
فی فِیْ الط والنشبی تَقرَةَ ب فلا 7 رب به فلا 

تج :اور ای فرد یت کاطلات تک Ê‏ ے اک ل ےکہخریب اورفرد 
دووں لغوی اورا صطلا گی اعقار سے متراوف ہی گر ائل اصطا رح ان ووفول کے 
بای نکشثزت استعال اورقلت استعال کے لیا ظط سے ما یت تلا ے ہیں چنا مج 
کٹ طور فد اطلات فر وطاق کر سے ہیں وراک ور غریب 6اطات رو 
ہی پک تے ہیں بیفرقی ان دول پرا م کے اطلاق کے اتبا ر سے سے ور ول 
شنن شقن ے ستعال ےکی وو فر نک کر ے هد افر ولق اورفررتی رونوں 
کے " تفرد به فلان“ اور آغرب به فالان“استعما گر ے میں - 


فرواورف را ےکااستعال: ۱ 

ال سے مافظ فد اور یب کے درمیان 2 ادف اور تفا کے پارے میس جن پاش جا 
دب ول : 

کی بات یک فردادرغر یب کے د رمیا نوی اورا طلا ی فاظ سے تر ادف یز اہر 
عا مش فر ی بکوفردادر مرحد مش فروکوفر ی کب کے ہیں ۔ 

دوسرکابات ہے سب ےک رف رایت اورفرد سے نے وا نے افعال میرم کی استعال لا نز 
سے7 ادف اراد ہے دوفوں بش سے رای کک "آغرب به فلاں“ اور ”تفرد به 
فلان“استمال »وتا 

تی رک جات یه کرام کے اطلاقی کے افقهار ےکثزت استعال اورقلت اسقمال کے 
یی نظران دووں م تیار ےک اک اوتا ت ف ملق کل لفن فر واستعا کیا اج ےاورفرد 
کیک اک ڑطور غر بکا لفظ بولا جانا ے۔ 

و پل و و بج 


ورُب من هدا اخَْلَاقُهُمْ فی المنقَطم وَالمرَلٍ هل مُمَا ماران 
ولا ۴ فا کر الْمحَدَیین على التَعار لکنه عند إطلاق الاسم وما عند 
ایغ مّأل الفعل المشْتَق فیَستعملوّن الازسال فَقَط فَيقُوْلُوَ ارس 

ائ سوا کان ذلك مُرمَلا أ قلعا زین م اق یر اج یشن 
لابلاجظ مَرافع سیعمالهم على گیب من المخذینآنهم ارون 
ين المُرْسَل والمقطم لیس كلك لِمَاحَرَرنَاه وقل من به علو 
كت له الم بالصرَأب 

تر چ :اور اک اختقلاف ریب قرب ا نک رل وفع کی اختلاف ‏ 
کر وہ دونوں پا تم مغامہ ہیں یا ہیں ؟ اک مد شین تخا ہے تال ہی راس 
.ام ےاطلاق کے وت »رشن ےا ستمال کے وت تو و وصرف ارسال 
بیکواستعا ل کر ے ہو ہے'' ارسلفلا ن“ کے ہیں خواہ وخر مکل ہو پا فطع ہو 
.اک وجہ سے ایک سے زا کر حفرات نے ( ےک موا تح استھال کا لایرس 
کت )اک نکی طرف ضو ب کی ےک دہ رک اور فلع میں فر ق یں 
کرت ء ھا لا پات الس طرر یں ے جج اکم ےکسا سے ء اور بہت یکم 
لگ ہیں جوا کد یملع ہو سے ۔ واول رم پا لصواب 


تر 

اف جس ط رع فرداورخر یب کے درمیان تاو ی وتز لی ےل ق شارت مس 
ایا یط اس عبارت میں مرسل او تفع هلق ذکرفر مار ے ہیں۔ 
ارسال اور انتطا رکا ستل : 

مرسل او رشع ےعلق ہے بات بیان فا کر کمن کے نز دکیک اسم کے اطلاقی 
کے اط ے ال دوول میں تفا م اور عا ن ےءان دوثوں می کسی کا دوسرے راطا یں 
(yr‏ کی ن روای تک سرن ارس ل »وال رواےت پر جوا صطلا کی نام لیا جام ےوہ مکل 
تی ہوتا ےا ہے ع الف ان بولا اج »اک رل روا تکی سند ٹس انقطا رم ہداس بے 
جاسم بل ےد ہے بی ہوتا ہے اس پر لکا نہیں ہو کے _ 


ع ړو اتر ا ا ا ا ا ا اس جک 
انس نے وا ےک ل تین کے استعال کے لاظا سے ان شس تفا کل ےکوگلاں . 
دونو ں کٹل تن استمال یل ہوتا پک صرف ارسال کا فنل شقن اسقعال ہوتا ے خواہ وہ 
عد شم ہو پا فطع ہواور بیو ں کے #ل :ار سله فلان“ اراد اض لشتن کل 
استھا ل یں ہولہز | ”انقطعہ فلان“ اسقعا ہل ہوجا_ 
یح حفرات نے فرمایا س کہ اک حر ٹین کے نزو یک مرک اور یع کے درمیان 
مغامی تس ہے بل ادات و2 ادف ےگ ان حرا تک لول .و ے عافظ 
فرماتے کہ ہےحضرات ان لوگوں میں سے ہیں جو اسم کے استعال کے موا ے ناواقف 
ہیں یا ان موا کوٹ ٹنیس کت »الا ان کے درمیا نتفاي ے7 اد ف نیل ہے ای دج ے 
عد یٹ مکل ب لقع کا ا طلا یل ہوتا اور هر بش تفع بر لفت مر لک اطلا نی ہوتا اور 
ان حرا تکو مقا لطا بات سے لگا ےکم رشن دونو گس حل صرف ارسلہ استمال 
کر ے م اتقطع اشنل استعا ل نہیں »وت شی عد یمر لکیل کی ارسله کالفظ استعال 
کرت ہیں اورحد بث تقو مکیل بھی ارہ ھل استعا ل کر ے ہیں ات استعال 
کو دک ےکر ان حضرا تکو فا لط ہوا اور اتہوں سے عدم مغا پر تک اک ڑ مد شی نکی طرف مضسوب 
گرویا - عافڈفر مات ںکہ یلیک ایا ےکر لپ بہت ی کم لوگ ہیں لہا سے 
با ی‌طرر نایاش ۔واللهأعدم بالصو اب 
FE YK‏ ی ی E‏ 
ُو الصجيْح وهدا اول مسيم الْمَمَبْوْل إلى ربع انواع انه ما آن 
َمِل من صفأب ابول على آغلاه أو لا لول اَلصَجِيْح بای 
ژالشایی ود وج ابر ذلك القُصُوْرَلِكثرة الطرق فهو لحم 
ضا لا لِدَأيّه وحیث لا جبران هر الحسَن بذایه ورن قامث فَرِينة 
ظا اجب رارق کل سک نا ا کے ا غارل 
او رکال الط ہواس حال می ںکہ اخ رک ست رصل ہو اور نہ ا لگ سند ٹس 
ل تا دح ہوں اور دش وذ ری ہے اور عقو لک ليم ہے ج چار 


عو الم موس ھی EASES‏ ره میٹ اسشھے۔ ۱۳۶۱ 
اقا مک طرف م ہےء اس ل ےک و وخر یت تو لی یک ال در جک صفات پہ 
شتل موی ای ,یل صورت می وخر لذ اتر ے اور دوسری صوررت 
میں اراس کے نمقصان او رک یکو باکر نے وا کول چزموجود ہوم ڑاکثزت 
طرق وغر ہدیچ ےگرلز اوش ( بلق ه)او را اس‌نقتصان او رکی 
کو پور اکر نے وا کول چز مو چو ن موتو وو خرن لز اھ سے اور اگ کی ایب 
تر مو چو و ہوجو تو تف وال ترک ہاب قو لی کور از قراردرے نو وهی صن 

کر لزان( کار ۰)- 


اخبارآحادکی دوس ری یم : 
یہاں ے عافٗاخباراعاد( ہورع زی اور یب )کی دوس ینیم کر ر مار ے ب ں گر 
تیو لک یی یم »اشنم میں خرمقبو لک ہن چا اقا مک زک ہے دو مہ ہیں : 


ان اقتا مک وج حمر ہے ےک صد تیو لی تک اگ صفات اور در چات تل موی ای 
در چات وصفات برک ی اون او رمتو سط درجات تل موی »اکر وو اد واوسط در چات بر 
تل ہو ای درجہ ے جوگ اورنقصان ے اک رکز ت طرق ونغیره سے بو راکرد یاگیا ہوگایا 
ا کو را کیا گیا دیاش مم لیکو قر یمر مو جو وہ وگ ج وک جا ب قو لکور ا کر ییا۔ 

کی صورت میں وہ عدی ٹک لزاع ہے دوسریی صورت ش وہ اغیرہ سے یسرک 
صورت یں وو سن لذ اد یل چگ صورت میں و نار ہے۔ 

تول اگ رقجولیت کے ای در چات پتل ہوک تہ تول لذا ہے۔ 

صفات قول کےا و ایا ادن درجات تل ہوگی تو ای تن صورتیں ہیں : 


”رول ار ہے۔ 


عرڈانظر ایی یں سی انس سا ی ا 
۴)...... اس تا وک ڑ ت طرق سے را ںکیاگیا ہوگا تو ربو لصن لز انیب _ 
۳)..... وتات را کی گیا را لک ہاب تیو لکورا کر نے الکو ار یی 
ریدم ولا 


عرش کلذ اتک بیان 


عد یت یل ان دکی لغوی اوراصطا یتر رف : 
فعض تک عیضہ ہے اور یس مکی ضر سے ء اس صغ تک استعال اجمام کے نرق 
طور ہوتا ے اور میا فی اورعلوم عد بیش یں اس کو مھا زا استعا لکر تے ہیں ءا سکی اصطلا ی 
تلف ی ے: 
الصحیح مااتصل سنده بنقل عدل تام الضبط من غير شذوذ و لاعلة 
اق هناسر کل و ئن قاروا کی ا 
یں عا ولاو کال الضیط مول اورا روات می لیا کا او شنروزاورعلت ترمو“ _ 


عد یٹک لذا دک شرا کر : 
اک یکل چا رشرائط میں : 
( ی ادج ا سک ست رصل »وال میں ارسال یاانقطا رع نو 
SS - (r‏ 
2 عم الخز وز 
(r‏ ۰ عرم العلع القادحد 
شرا اعد ع کیل ؤں۔ 


کوک عد یئ جت ہب ےکی اورک یں ؟ 

بل ایک بات ذ جن یش رک چا س ےکک عد ع شک" ہوا انگ پیز ہے او رای 
عد یشک" بجت ہون الک چز ہےء چنا چ صا حب متا ر ےکا کت رواعد کے بجت ہو نے 
کے لے چا د چز میں داو کے -2ضروری ہیں اود چا د چز یی ردایت کے لے رور ہیں ء ج 


۴)...... راوگ یکا ملمان وا 

اور جوا چ ڑ بی ردایت کے لے ضروریی میں وہ ىہ ہیں : 
...تاب الث کلف نموا _ 

٣‏ )...س ہو رہ کے تالف تہ موا ۔ 


اوراگر راو ی اورروای تک ور شرس پا جا تو دہ روات چت“ ےگ رل 

ہز اصرف عد یٹ کے ہو نے سے از لآ ک وہ ج تبھی بو پا گنت 
ال فو را يد سے و کہ جناب ی عد یٹ ہے اس پیش کرو بقل فلط ے اور جہالت 
پک ہے ۔کڑٰی عد بیش بجت ےکی او زک عد بیث مت کل بل ؟ میک باه خی ر ےت 
را لک با تک بات ە یا ک۷ام ے۔ 


عدی ث٤‏ لزا دک ثال: 
ایا شال یش عد یٹ ذک رک چان ے: 
"حدئتا عیدالله بن و مف قال ا عا مالك عن ابن شهاب عن 
المغرب ”الطور“ ( آحرحه البخاری فی کتاب المغازی) 


مد یی ی لام 

علا ء عد بی کا اس امان س ےک صد یش لذ اعد لکر نا واجب ے لہا اورعلاء 
اصول فقہ کے ن دیک یہ جت شرعیہ ےا کومتر وک امل قر ارو اک مسلا نکی یال 
۳ 


ړو اتر کا س EES‏ یی ۳۳[ 
۱ هد یٹ جر «کایان 
عد یش جر تمرف : 


نی ہ دراصل صن لات س کہ ای شس فا ت آبول کے ای در ات سے صا یکو 
کا رط رن ویرہ سے لور اکی کیا موتو وی سن ل ار خر و جن جائی سے ءا کوخ و اس 
لئے کے ہی ںکہ ا یکس سنر لکوکی کت کا در یں بڑ ھا بر دوصرے مر ان کے اس 
کیرات اتا مکی وجہ سے درجہ باتک دہ سے بے لخر بل ے ء ہی لاجد ےک اور 
صن لزاع سے ا کی س ےگو کہ یران دوفو ل در جول کے درمیا نک ایک مس - 


دیش یره یشال: 
ا یکی مشا ل کے طور ید عمش ذک رک با ے: 
” محمد بن عمرو عن أبى سلمة عن ابی هربرة آن انیت قال: لو 
لا أن آشق على امتی لامرتهم بالسواك عند کل صلاة *" (67) 
ره شیر ہکا مثا ل ہے چنا نا مات صلاح”'علومالید بع“ میں فر مات می ںمہ 
اس عد ی کا راو :نمرون عاتھہ ہے ء برص دت ددیات میں شور رال انان شس 
الم کش ترات نے دک وی ناف نے 
ال ی صرق وبا مت شا نکی وج سے ال کال کی ج۔ 
جب اس هد کی روات شی ال سا تج دوس ر ےکی اور را وک کی شر بی ہو کے من 
١‏ کے طر نکر مو کے و اس ےق سوم حف کا 2 مرگ اور ا یکی اور نتصا نکو 
دوصرےطر قی نے او را یلهد ااب یسن رار و ہے الکو کیسا تح نت کرد یاگیا۔ 


مد مٹ”ن لذ اک بان 
عد یش تن لز ا دک لغوی اوراصطلا ی آم ښ: 


الف ن سفت مق رکا صغ ے :تو بصورت هن می لآ تا ہے ا سکی ا صطلا یآ ریف 
ںی اق ال ہیں : 


عو لر ۸1010000 a‏ جو تھا 
) علام خطا لی کے دی صن لذا کا ریف : 
”الحسن هوماعرف مخرجه ومااشتهر رجاله“ 


(r‏ مافظ اب تچ ر کے نز وکن لزا د کت ر ښ: 
”و حبر الآ حاد بنقل عدل تام الضبط متصل السند غير معلل ولاشاذ 
هوالصحيح لذاته فإن حف الضبط فالحسن لذاته“ 
ا ں کا عاصمل ہے س ےک اکر راو کے ضط مک ہو وخی لزا ےک لک رصن لز اد 
بن جال ےء پیسب بت تیف ہے ۔لہذااب اکچ تح ریف اس ط رع ہوگی: 
۱ ”الحسن هومااتصل سندہ بنقل العدل الذی حف ضبطه عن مثله إلى 
منتهاه من غير شذوذ ولاعلة“ 


ین کلذ ات ےصرف طب یگ یک وجہ ے دمن مز اع بن چان سک 


مد یٹ صن لذ اک گم : ۱ 

ہیقت کے اط سے اگر چرچ لذا ےم ےکر اه ی ال کے ساوک ہے ۰ن ہم 
یح قرو مین نے اسے مت رہ کہا ےچ اض قما بین ( ہام این حہان )نے اسے 3 
لزان غاریاے۔ 


مد یغ سن لزا دک شال: 
کیال شش بیحد یث کرک ہا ے: 
الجوزی عن آبی بکر بن آبی موسی الأشعری قال:سمعت آبی 
بحضرة العددی یقول:قال رسول الله‌ّطه :الجنة تحت ظلال 
السیوف . (2ک) 
ال عد یٹ کے سارے روا چ ات جنران ای صن الد یٹ ہیں ( وه 
ال ال اٹیل ہیں )ای مچ سے بعد یٹ کلذ اتد کے درج ےن لذا کے درد مل 
آ۔ 


نخر کیان 
مد ی ن غر ہک اصطلا تین ریف : 


ہہ دراصل عد ہش ضف ےگگراس کے ط رت متعدد ہو جات ہیں تو ا ےن خر وکیا ہا ا 
سے بش رطی اک ضع سق راوی اک ب راو یک «چ سے نہ »وال سے معلوم ہو اک صد بیش 
ضیف د وط رع سے قحف ےک لکرس ناقیر بین جا ے: 


را زی ی ادزا تل وخ د 


عد ی نلف ر هکم 
ین لذ اتد س ےکم درج کی خر ےگ رمتبو لکی اقا م س سے ہو نکی وو تال 
احا > 


مد یشن غیر دک مثال: 
اکی شال ےمد یث کور ے: 
عن شعبة عن عاصم عن عببداللەعن عبدالله بن عامر بن ربيعة عن 
ابيه إن إمرأة من بنى فزارة تزو حت على نعلين فقال رسول ال 
أرضيت من نفسك و مالك بنعلين ؟ قالت: نعم ٬فأحاز-‏ (ترمذی) 
اس عد تشک سند شں' عا م بین عبیدراللہ“سوء حفٹ کی وجہ سے حف می گر امام تز ی 
نے ا کو کہا س کدنگ بے ایک سے ز ائدطرقی سے مر وی ے ۔ ان پاد اقا مر یتیل 
مل ہوئی۔ 


م وروم ت 


عرو اتم ... ی ۲ ےا 
7ات ند گری رازه لت بظری ات 
اعمال السية من شرك أو فِسُق أو بدُعَو_ 
تر جمه: ار لذا پا ماش > اگل مرح ہکی وج ے ما مقر مکیا 
اورعرل سے مراد ے س کرای میں مراک مو جوا ے لقو ی اورم وۃ دامر 
ابھارتا او رتو کی سے مراد ہے ےکرک ت اور برعت بے اعا ل سے سس 
ہی زک ے۔ 


٦ 


تح ٹیک میں وارد چپندالفا اک تو ع بھی فر یں گے_ 


امرس وج 
20 - 0+ مقد مکی اکان چا رول اقام شش سب 
سے عا رجا یکا سے لہ ا سے عا لا رجہ مو ےکی وجہ سے نم پا لامعا کل موا ۔ 


لذادک ت ریف کے الف کی تج 

نقل عدل: بیہاں ع دل یا تو انم فا عاول کے کن ٹس ہے یا ا لک شاف جزوف 
ہے ”ای نقل ذی عدل“ء يم "رحل عدل*ک‌طررمیالف ےکن یں ے۔ یبال عدل 
سے عرل ف ال وای مراد ہے :شبادت وال عد ل بیہاں مرا ول »بل عرل سے مراد ہے س کہ 
اس راو یکواییا لها کل موجولقر ی او رم رو کےکا موں پ رتام ودائم ر گے ء اور صفات نفماعے 
فیس را کان م کک کان اگروو راغ وا میں کے بلا ے مال کے ول ۔ 
قوی : 

اور کی سے مراد ےس ےک وہ د اوک شرک امت اور برعت لے بر کامول ے اچاب 
کر ے ای ط ررح دہ اصراریگی الغا ےکک ب می زک سے ۔ 


یرت : 
اور پرعت ےکی برک ت ز7 مراد ے یا دہ برعت مراد ے جو انا کو ن ہب فاس رک 
طرف نے جاۓ۔ 


ہو : 
کی نے ہیں نج ن کا مو ںکوعقول سل حرف موم قر ارد یں ا ن کا موں سے یچ کا نام 
مر ہے ملا راس میں بول و برا زکر ناءعیاش وگول ی پوو و پاش اقتا رکر نا وغی رہ تخل 
حرا ت کے مرو کا بڑے یدسا عراز ےآ ری فک ہے٠‏ چتا خچردوفر مات ہیں : 
و لاوس سد لاک وا عازن سرت 
الأحوان وبذل الإحسان إلى أهل الزمان و کف الأذاء عن الحیران“ 
یل ریف الفاظ دراچیر کے اظ سے بہت بت بل مش او رمتا م فا هک 
آ ریف ز یدنا سپس 
لزا دک تر یف مل راو یکیلئے عدالت ی ار وای تک تی را ے ےوہ روات ریخ 
ہوئی جن س کا راوی مروف پا بل ہو یا ا سکارادئی چول الین ہو یا ولا ال بو 
PF ۲‏ جا Kr...‏ یا پر 
لبط صَبُطأن: بط صَدر وهو أذ بت مایق بحیث ینکن 
من اسْتحْضاره مَٹی شَأءَ ۔ بط کتاب وَھُوَ یاه له مد سَمع 
یه جح إلى أن بوذ نوفده بالقام إِشَارَة إلى للع 
تر جسصے :ارگ دو یں »سل ہی اکنا اود ہے ےک سے ہو 2 
کلام ویر ہکواس طررح کفوظ رسک شک جب چا ے ال کے استضار رکا در بو اور 
کناب عل تہ ناور وہ ے سک جب سے ای کے سنا سے ا وال( کناب ) 
سکفوظطا ر کے اور ا لک کب ہا یک کال سے وهآ کے ادا کرت 
یکتم یا مرح علیا کی طرف اشار ہک ےیل مقی رکیاے۔ 


ضط فی الصدرکا مطلب ىہ س ےکہ جو روات راو سف ےکا ہے ا لآوسید می ال 
رع مو کر ےکہ جب اس سکوادامکر ن ےکا اراد ھکر ےلو ادا کے ء بیط کا اگ در 
ے۔ 

ضط فی اکنا بک مطلب ہے س ےک جس روا تکو اس نے رت سنا ا کو ای وقت اپ 
کاب اور طخ سک ےک رکفو کر نے اور الک کک یکر ے پچ رای س ےآ گے رواےت 
رن ۱ 

طب اکیسا تحتام ہہون ےکی شرط اکا کرجا فلس ال طبط ای درج ہکی طرف اشار کیا ے 
کہا سے عبطا صد مراد ہے :تا ہم اس مرچ ہے ےکی مرح کسی رادل ہے بلہ اس سے رجہ 
تور مراد »اک دمل ید ےک ےک راب ہیں ء ان ما ب متقاد تکا تقاضاے > 
کہ ھال مرو عیرس راداو 

اب سوال مک با مت کل ما لت ٹل ضروری ے ؟ 

الک جواب یر کر ما لمع رک رواب اور ما عر اداءرواعت دوول عاللال ٹل 
ما میت بط ضرورک ے ,لیذ | ان الال میں نہ ضط می فور برداشت ے اور ندال کے 
ما فظہ شلک عار کا عرو برداشت ے۔ 

ماف نے لاد یت ریف میں تام شب رک قید کر ان ردا کی رواع تکو ار کرد یا 
جمففل ہوں کی رافطاءہہوں ہو وج اور خی می قیفر کر کے ہوں بھی موقو یکو مفو رئ اور 
گم تل تر ارو ے ہوں یال الیل ہوں ن ای سے هن لذا غا رح موی الہ 
ا کے را وی میں صرف مبی‌شرمفقو ومو ے - 

رو وی ہو ری E‏ 
الما سیم سُا ین فرط فيه بحیّث یف كل ین رجاله 
سمع ذلِك الْمَرَویَ من سيجه _والسَند عم تفه »- المع عه 


مَافیّه عِلَةء و اضطلاخاما فیه علةً قادحة والشا لُعَة الم ود 
واضطلاخا مَبَْایف وه رارق من هو رح یه ۳ سير خر 
شا إن شَأءَ الله تال - 

تر جمه :اور وو کرک س رقو وا راوی سےتفوظا ہو پا یی طو رک اس 
کے بررادی ساسحا سیخ استاذ سے سنا مواو رست رکآ لی گن ر ی ے اوراشت 
مم تلل وہ ی سکوئی علت ہاور ا صطلا ]هکرس کو یی 
علرت ہو( جوسند میں شع اا ی ہو ) اورشاز لشت میں فر ده میں اورا صطلاں 
عل شاذ ہے ہ ےک دا وک اه سے ار داد کی ننا لش تک ے اور شا ذکی ایک اور 
ت ری بھی ہے ج وتر یب ان شا ءانآ هک ۔ 


مد یی سل کت رف: 

ال عپارٹ س لزا ےکآ ریف میں ذکرکردہ بقیہ الفاظ اور ورک و ج فرماد سب 
ہیں مع لذا دک تعر یف می '' تصال السند' کی قید ےا یکا مطلب ہے س ےکا روا کی 
عمل سند عزف رای سے اس رع کھت ر کا لک سر شل مو جود پررا وک اس مرو 
لئ ا ن زا دی 

سن اور اسنا د دولوں ایک کی ہیں »رواییت کے طر بی ( ن فلا ن ئن فلا ن گن فلا ن )کو 
یا نکر ےکا نام ست داور اتاد ہے لیا کہ یہ پیل ہگج لگ ر چکا ے۔ 

کل ا دک یت یف لن ”متصل السند“ عا ل و ےک وجہ سے نصوب ہے ال 
تید سے ما فو مرسل مہنفحع حل اور کو نار کر دیا ا نکی تر یفاتآ گ ےآ تی ںگی۔ 
ال اتی بات ذ جن م رک ای قید سے ان روایاتد معا کو ار کیا گیا سے چان روا 
کت قکردہ ہیں جن کے پ کک ت کا اتر زا مک کی گیاء ہاں اشن کے پا صح تک ارام ہو 
اور سک صیخہ جز توق وهای سے غا درل » بل وت صل کم میس ہیں جیا کے امام 
بقار یک تعلیقا تد کر ومہ ہیں ۔ دالل عم پا لصواب ب 


یر یر معل لک لحریف: 


غیرمعلل: بل کی فک قیرے اورتصل طوف ہونے وج ہے 


عرجالظر وی شی یو ود راو ای جرا ها مت ا بای فرصت سس * 3۳۸ 
منصوب ہے یمصد ری لکا مفعول دنل می کول علت دغیرہ بو اورعطتا پچ 
لیف وف سب کوک ںک ت سک وجہ س ےکر عد یث لت شآ چا ہے اور طابر ده 
حد بث جع معلوم و ہے اصول عد ی کی اصطلاح می سل اس ر وای تکوکہاجاتا ہ ےک 
نس می کول ایک پپشیدوعلت ہوک جن سک وجہ سے روایت مض فآر پا ہو یا ا سک یھت 
می سن سآ ر ہو ا پر اطلاع بای بت مشک لکا م ےب ر أن اصول عد ہے تی اس بے 
۱ ترت رھت ہیں کی کے ا کی با نہیں هو تک ےک لزا د کت ریف 


ےی محل ل لوی کے رے سے نار کروی ۔ 
مر ہما زیم شښ: 


ولاشاذ: شا کا اتات کے اعتہار سے اکیلا تپا اورف رد کے ی لآ ا سے ء اصول صد عم 
کی ا طلا رح مس شاذ اس روا تک کیچ ہی ںکج٘س راو نے اپنے سے ار داد کی 
خالف تک ہو لحر یف ماف نے ذکرفرمالی ے۔ 
دوس رکآ ملف افا نے کے کی کر دوا کا را وک تام حالات ٹیل سوءحذ اکا 
ارہ دوہی ایک را ےکی شا ہے اا ترات زین مس رحس ال گے 
ز ہن نکی نا طم شا زک اورتر یا بھی لاک الق ری کےکلام ےکر تے ہیں : 
0)١‏ الشاذ مارواه المقبول مخالفا لما هو اوثق منه والمقبول 
اسان نویه ارس فا می در قفا بعک اماع 
الحافظ ابن حجر کماسیأتی- 
۲)...... الشاذ مارو اه الثقة مخالفا لمارو اه من هواوئق منه 
۳)..... الشاذ مایکون سوء الحفظ لازما لروایه فی حمیم حالاته_ 
6).....الشاذ هومایتفرد به شیخ۔ 
»)......الشاذ هوما یتفرد به نفسه و لایکون له متابع۔ 
٦‏ الشاذ همومارواه الثقة مخالفا لمارواه الفاسق بالمقايسة هذا 


نقل من الامام الشافعی _رشرح ملاعلی قاری: ۲۰۳) 


شزوز وعطت س قبا ود ن کے ہاں فرت اورا سک تو : 

ھال ىہ با تھی د نش نکر نک یہت مارک شیب الا ہیں جو ححدشین کے نز دک 
علری اور شو ڑکا سبب شی ہی ں گرم چز ی نقباء کرام کے نز د یک عل وشزو کا سب یں 
ٹیس ء اور اک رع ا کا ال کی »وتا کہ بہت مسا رکا چ ہی ایک ہیں جوفقها کرام کے 
ال علت وتو زک سب ب ٹن ہیں رح شین کے پال عل وشو کا سب لت( ر یب ) 
ڌا اوق خدث اک ے جو محر مین کے ظا ہر از معلل بواورفقبام ال ہے 
ات لا لکد ہو ںآ ای سے بے یا نکیل مون چا ے اور را فقھا رام رطع و شتی ہیں 
کر فی چا ست کول نے اذکواپنا متیر ل باس ےکی رک کن ےک وہ عد یٹ فقہاء کے ال 


از شوت 


KK‏ بے دج و چا چاو 

تنبیه: قول بر الاخاد: کالحنس باق فده ال وق 
بنقل عدل: : ا حرأ عا یله عير المَڈلِ وله و یْسَمُی: : نَم 

یسوط ین ادا لحر يوذ بان مَابْعده بر ما قبل ویس 
نی له قرلا یه بخ نمی صجیحا بائر حار چ عن 
شوج : خردار ! ماف کال ورالواعد یی لگ‌طررت-چاورال 
کے بق ورن لکی مر ہیں اوراس کے قو لق مرل“ سے قر عر لک قل 
ےا راز ہے اورا کاقول عو ی لکہلاتاے ج رما اون ورمیان ٹش 
7 ہے ءاوداس با تک نرد عا س هک وکا بجر کیل ت ےا کی صف یں 
ہے اورااس سول لزا سے ا کچ کو فاد کروی ج کی نارق ارک مو 
ےک لے 


حدیث کج لزا کت ریف وان قود 

ال سے ایک بی کے ز ر لہ لقف اھ تو رکو ییا نک رر ے ہیں »واه تور ہے بیان رے 
پل یہ بات ذ جن شل لتق جا اور ا لت ریف وی ہو ے جیجن س شتی 
الق بو پال معز ف "حبرصحیح لذاته" ہے جک ا ہی ت کیت ے 


عر:انھظر 001 0000:0000 ا ای ی ۱۳۲۳۰ 
مزا ا سکیا لوی جس نیقی ہو اور ےکوی ملق »اک وج ے حافظ نے ا یکی سکو 
”کالحنس “ اورا نع لکو «کالفصل “کہا-۔ 

حاف نے فرما کہ ہا ںی ”حب رالآحاد“ مجن کی طرحع ہے اور باق سب ا لآ ریف کے 
ققودات ہیں »سل نے سوا ل کیک ما فآ ریف کے اچنا س دصو ل تار سے ہیں و ہآ رف 
ہے ”وخبرالأحاد بقل عدل تام الضبط متصل السند غیرمعلل و لا شاذ “ لو 
ا ںآ ریف میں پظاہر ”حبر الآحاد“ خودمحرف بآ پ نے ا گن کی ےکھردیا؟ 

ا لک جواب ہے ےک ہآ پک بات کیک ےک ھا ہرک طور راا عاد معز ف ےکن 
عقیقت میں مو ف یں سے بم ف ( پاگسر) کا ایک جرک اورم ی " 
الصحیح لذاته“ے خبرالاحاد یں ے۔ 

جب تب رائ ھا وکوک کی رح یناد یا تاس کے ائ رتا م اقام دال بو واه ہوں یاغیر 
ہوںء تفر کودوسرىی قود کے ذر لیرگالا جایگا- 

”قل عدل“ ک تید ے فرع لک رکو لزا ےزم تاد اکرو اور 
یرعرل مل مدرجڈذ ل رواةدا فل ہیں: 


۱( ا مس راو یکا ضع روق بو 
۴).... یس راو یگزات ول موب 
۳)....گکسکراو یکا حا لول ہو_ 


آ ریف ےآ غ شافط ے "هو الصحیح لذاته" ر ااب "هو" کے پارے 
یش تاد ہی ںکہ کیاچز ہے؟ فرماتے ہی ںک ویر را ےل ےء می مجقداادرخر a‏ 
درمیان شآ کر ہہ اس سے مہ بات معلوم »یکره وک بابح دای کے ال کیلع مت 
ٹیش ہے بللخیرےء ا س کا حاصل بی ہواکہ ”خبر الآحاد“ سے نےکر ”ولاشاذ“ کک 
راء ے» جر " الصحیح لذاته “ ا سیر ےء او رھو ز اند برا ہے پا 5 

ال ایک وسرا اش ل کی م وکا کت رال اد سے ولا شاک تدا ءاول مواور 
عومیتر اب 70 لزا پا کی خر ہومقداء ما نی ای خر ےکر کربت راہ اول 
کیلع رہو_ 

لزا دک ید لفیر وکو ار کرد یا وگ ا سک سندکی ذات صح ت نہیں مون بل 


عر والظر SESS a‏ 
ال شک نار ہی اع رک وجہ ےصح تآ ن ے۔ 
E‏ کو و E‏ 
ماوت رب ی رب الصجیْح بِسَبَبِ هذه الصا الْمْفْتَيِبَِ 
بصجیح فی الم نها ما کانث مُفِيَْةلِعَلية لطن لد عَلَيِْ 
داز ال هرق أذ گرد لها فرخاث بَغضها قوق بَعْضٍِ 
بخشب 3 9.0 وت 
الْعْلْيَاً من العَدألة و لبط وسایرالصَفات این و حب الترحیم كأن 
اصح مما دون 
ترجمه :ا مرا جب تفا وت ہیں ہن ان اوصا فک دج ے جو رت 
کت تا نی من »ال کے مرا کلف میں اس ےک جب 
غل نکومفید ہیں ج وک رک تکا ار ےلو ال نے ال باس تکا قا ضا اکن 
کے کے بعد دیس عقوت فرا مکر نے وا نے ا مور کے اعقبار س ےکی ورات 
#رل» اور جب بات اک ط رر سے ےجنس راوی کی رواعت عرالت» طبط اور 
مو جب تر زج صفات کے ورج عل موک وہ ال ےگ درج وال ردابیت کے 
متا بل شا موی _ 


عد یئ کے مراب 

ھال سے ماخ کے مراب فلگ پٹ ش روغ فر مار ہے ہیں کوک ی کا قاض اکر نے 
وا نے اوصاف وصفا ت لف اور تفاوت ہیں ءا ی اوصا ف تفگ وج ے اخبار و احا د یٹ 
ان فا اب پیدا وتا ہے ج وک هرا کت ہے اود اخبار کے ان ر چون فا اب موتا سے اس ھن 
الب ےکی مراب ہیں ء جب اک ٹن نالب کل عراحب ہیں تو این کے علت نے 
دا ےاوصاف وصفات( عرالت ‏ طط )کی در جات وما ب تال گل جب اوصاف 
ےک مراب ہیں ان کے شی شی کی کے بھی قوت اس ےکی عراحب ہیں ان س 
ےک تو ی ملین متو سیا او رض ادلی بل - 

لہ ای راو ی کی روا کر دہ هد یک سنر ثل اوصاف تھے او کی اور ال درج کے 
2 ہا ںو وه دوسری اسناد کے مقا بل بلاشبہ اس موکی ۔ ای عبادت غل ماف اس 


ع ړوار e‏ ا ی رس سا سی و یمشاہ نٹ یل Pa‏ 
را بک ما تال یا نراد ہے یں - 
جل E E‏ ىم ye‏ 

من ال اف لک ما طلق علبه ب و ا ا 
سید کالژمری عَنْ سَألم بُن عَبْدالله بُن مر عن أيه » و کحم 
ین مین عن ال عمرو عن علی » و کر خی عَن 
تر ج مه :اس باب میں درجطیا گ و اسار بش ا نے اس 
الا سائد ہو نے کاا طلا قکیا ے ھا بعر نکر" زر یگن سا لم بن یار جن 
رگن ایی او رھ بین سیر بنا گن یبن رگ نک اور بر ایم شی کن 
علق یمن !ین مسعور_ 


ا الاسانیدکایان: 

اس عبارت میں حاف نے ورج علیا کی تین اسان کو شال کے طور ذکرف مایا ےء ان تن 
اساحید یم سے ہرسند مرق اہ نے ا ال سان رکا طلا نکیا ہے »وه تین اسانید ہے ہیں »ان 
ت کیم اتیاق نے مز یدد دکا اضا فا ے٠‏ اس رح اب یکل پا بو میں : 


ام ی نمل اوراسحاقی بن را ہو ہے ےا ا الاساخیدم ںشارگیاے- 


۴).... محمد بن سیرین عن عبیداللّه بن عمرو عن على رضی الله عنه » ال 
سن دکواما لی بن اید نی ارو الق نے اس الا سات کہا ہے - 

۳( .... ابراهیم النخعی عن علقمة عن ابن مسعود » اس سندکوامام نما او ری 
من تج نے اع الا سای کہاے۔ 

۴).....مالك عن نافع عن ابن عم اس سند پرامام خا ری ے۱ الا سان رک اطلاق 
کیاے۔ 


®(« زهری ا بن الحسین عن ابيه عن علي" اس سند برای ویر بنا ی 
شب ہے ۱ الا انی دک طلا نکیاے۔ 


چانظر و aes e EOD‏ ا ا ا ا ا و IFN‏ 


مر و وم 


رای ره گرِوَأية ردب لین آبی برد عَنْ یه ی 
موی » و کحشاو بُ سَلِمَةَعَىْ کاب عن انس ء وَدُوْنهَا فى الب 
که بن آبی ایح عن یمه عن آبی مُرَیرَةَ و گالعلاء بن 
عبدالرخمان عَنْ بيه عَنْ آبی یره 

تر جمه اور مرچ ل ان س ےکم جی ےکہ وید نکر جن ا فی پر رن این 
مو یکی ردایت ء اور یه ماد بن سام گن ما بر گن ال سکی روایت او رحب شس 
ان ےکم جی کیل بن ال صا گن ای گن ال ہر 7 کا ردایت٠‏ اورعلاء ین 
عبرا رما نن اہن از ہر آاردامت- 


۲ 


کر : 
اس عارت من ماف جع کے در تو مط اورورچه اد کش لیس ذکرفر اتی میں : 


دومع( متو سط ) ورج کی اسا تیر : 

مئر رجز گل دوا لش ور ستو سای 1/3 

ا)......یزید بن عبدالله بن ابی بردة عن ابیه عن جده ١ک‏ ر ل چروےخضظرت 
الو برد مراد ہیں ء اورایے ے الوموکی اشح ری مراد پل - 

۳).....حماد بن سلمة عن ثابت عن انس 


تیسرےدرجہ(اولی )کی اساثر: 
متررچز ی دومث ا اد دج کی خی : 
۱( ..... سھیل بن ابی صالح عن ابيه عن ابی هریرة- 
۳).....علاء بن عبدالر حمان عن ابیه عن ابی هریرة- 
جج لو KKK...‏ 
َد المیع يَشمُلهُمْ اِسُمْ الْعَدَلَة وَالطٌبُط إلا فی الَنبَه الارلی من 
الاب مره ایض ی تیم ریم على یی تَلیهَا وَفی یی 


ع ړو اتر 0 0 مل 
روايَة مَنْ يمد ماینفرد به حَسَنًا کحم بن اسحاق عَنْ عأصم بن 
عم عن ابر و عمرو بن شُعَیْبٍ عن ابي عَنُ حدم ۔ وق علی ہم 
مایب مَایْْبَهُها فی الصفات المْرَحَحَو_ 
تر جمه :بلاش ران نام رواة :وعفن عر الت وطبط شال ےگرورج علیا یش 
اک صفات مرت ہیں ج رک ای کے ملعد نشم کا تقاض ا کہ ن ہیں اور ای کے 
ابعد وال میں قوت ضط سے کے رجہ رگ کا قاضا کر ے اورے ۱ 
تھیسراو رجہ اس راوی 1 روایت ررقم سل ۳1 روا ص نا 7 ے 
هگ بن اسحا نکن عام نگ رن جا کی (دایت ٠‏ او رکرو بن شی بن 
انچ کی روات اورا شی مراب پرا گرگ قا سکرو جوصفات مرج مل 
اك کے مشاہ ے۔ 


اظاصنا بت اسنا دک درج بند یک ضرور کیوں ؟ 
گت عبارت میں جو تن مراب ور علیا ,توس اور اد ذکر گے گے ہیں چگ ہے 
مراب 23 کے ہیں اس لئ ان تام درجات کے روا کے اندرصفت ع رال اور ضط نرہ 
موجور ےکر ان صفارت کے فاو تک وجہ سے ہے داج ی وجود م ںآ کور علا کے رواج 
کات رای صفات مر مو جووڑتھیں ج وک رال با تکا تا اکر می خی سکہان کے عا ی روا جک 
اتا وگو ور جم سطہ سے مق مگیا جاۓ ۔ ۱ 
ایر درجم سطہ کے روا کےا مررطبط بہت ای درج کا ھا جن کوج ام ے 
ورج ادن پر زم حاصل بو اور چو تی راورج ( ادن )ے دہ بلاشبہان کور دود چات سے 
مور چگ وه ال راو یگ رواعت سے مقدم موک دس راو یکی روات ردول ار 
ها ی ال کے سد ےک تر ے در لوو قیت ون زم ما ضل ے: 
۱)..... ”محمد بن اسحاق عن عاصم بن عمر عن جابر“ 
ا گی ظط اس ومد 


کن عمروبین شی بن این وق : ۱ 
اس میتی ملا می تین نلک ہا ءاسے حف کل »بے درد حد یٹ 


ٹس یکی _ 

اس سن چ وسار پا اداد ہیں ۰ا لے ا یک ھی عالت الط رح ے 

”عمرو بن شعیب بن محمد بن عبداللّه بی عمرو بن العاص رضی الله عنه * 

اس سند می ںآ خی دوفوں حرا ت صھالی ہیں + حضرت عبر ارگ ما ہیں او رخزت 
رون العا کی سھا لی ہیں ۔ اس سند کے لفت ده میں دوا تال ہیں : 

ا)...... پلا ال بی ےکا کارت گرو بواورجدرےعراد رو دادا تم مول 
تو مطلب ہے ہوا گرو نے اس وال ر شیب ے ہےر وای تک ادرشعیب نے اس ٹج کے واوا 
مھ س کن .چگ تال ہیں نے اس اتا لکی صورت غل ال سند سے مرو روایت 
مر »وگ »کی وکر ھا یکا واسطساقط ے _ 


قذ اس صورت میں مطلب یہ وکاک گرو کے یبد واعت اپ دال ر شیب ے ماک لگ شیب 
سا داد یدانتسا لگ ا یصو رت میں اس ست ےم روک روا یت نعل موی 
کیک بد انشا ہیں جو حضو ر اکر صلی اٹ علیہ وم ےر وای کر ر ہے ہیں۔ 

ان دونوں احا لون عل سے دوسرااحمال زیادہ را ہے ء اس اخال کے را مو ےکی 
وج س کہ اما م ابودا اور امام نما کی رواعت میں جد ہکیسا تیر کیال دکی صراحت مو جود سے 
چنا نان کے پال بی سنداس رر ے: عھمرو بن شی ب م٠ن‏ ای ےکن جد و کید اند _ 

جس حفرات نے ال سن رگ روا تگوقو لک نے سے الگا رکیا ےہ چنا راما الور 
فر مات ہی لک روگ وای تک کد ن نے انا کیا ہے اوران کے دال ر شی بکوہم جا ے ہی 
نیش تب اتی بات س کم کی ایدم کول جاح جس نے ا کی نو نکی مو این 
ع ی کہا مرو تہ ہیںمکران کے طر اکن اب ہگن جد کی روات مکل ہوگی۔ 

بل قاری فر مات ہی ںک جن رات نے الک روا کو مک کہا ے انہوں نے عیب 
> کا الق تساک انا رکیا ے عا امک شی بک عبد اللہ سار ہت کل شیب کے 
والد ج رکا بت جلری اپنے وال مگ حیات ہی میں انقال ہوگیا تھا تو شعی پک یکفالت دال دکی 
با سے دا داب ان نک اورشعیب نے دا داد لش سح اعا د یٹ گج یکا یں ا جب ا نک 
سا ات چالک ددایت می لکوکی لن نیس ہےہ چنا رانا مو وک فر ا کے ہیں : 


بات یس ےک شی بک بر انش سار مت ےکن اس ست د می ا لکا بھی اخالن 
ےکچ دہ ےعبدانڈدکی مہا ے گر مراد و ای وچ سے ال سند کے سات مر وک جد ے ٹکوسحاح 
میں شا ری نکر ہی »ات ےت بل احقا رح اورقا ل اتد لا ل سے چنا چ علام نو و اس 
سے استھ لا ل کیا >( رقا شر مشکا 3 (Fee/:‏ 
امام بخاری نے جوششرا مقر رل ان شرا اکا اس سندکی حد ٹیش اتر ی اس لئے 
امام خا دک نے اس سن دک صد یث سے ات دلا لاک شکیا_ 
دوب نی دج بی E‏ چا 

وَالْمَرْتَبَة الاولی هى ال ال عَلَيْهَا بَعْضْ الَئِمة إنها اصح الاسَانید 

و الْمُعَْمَ عم الاطلاق لِتَرّحَعو مین یلها نعم تفا ین 

مجموع مااطق الابِمة عَلَيْهِ ذلك أَرَعَحِیّة على من لم یله 

سجن بهذا التْفََضْل مق لْیْحَاد على ترجه بالتسْبة إلى 

ماانفرّد به اََنتُمُمَا وَمَا ار به لحار بِالتَسْبَة إلى مَاانْفرَدَ به 

سیم لتق الما ء تما على تفن اهما بل یلاب 

بعضهم فی آبهما أَرْحَخْ قفا عَلیه رح ن هذه له يا لم 

یا عليه ود صرح الْحُمْھُورُبتَقَبْم جح البخاری فی اه 

تس سمه : پہلا رع دہ ہے( جس بے ) نف سآ یہ نے ار الا انی دک طلا کیا 

ہے اورمعت رق ل یہ کار الا سان رکا اطلا ن کٹ لکرن چا بت »نی پا لآ جم نے 

شس پاک سا دک اطلا کیا ے اس کے وع سے فا ده ہوتا تکرده ران 

گی اس کے تابد مس جس ب ہے اطا ی کیا یا اس فضیلت عم نکی وہ 

احاد یٹ کی شا ہیں جنگ پردونوں نے اتفا کیا ہو مسبت ال عد یٹ 

کے ج لک و پان میں سے ایک تفردہواو رج سکیف مک بر با ری رد مو 

(دو راع موی )سیت اس کے لک تب ترو ہو اس لئ کعلاء نے 

ان کے بعدا نک یکت بک تو لیت پا تفا یکیاے او رل ے اخلا فکیا ےکہ 

ان میس ےکو نک رال جس پر دوفو ںکاا فان »وال حیقیت ے ده عرم 

اق دای ےرا ہوگی اور جور نے عحت کے اتتا ر جار یک تک شرع 


ع ړوار 00090 می | 


شر : 


اس عیارت سے عافظ چند با نس تا نا جا ہے ہیں : 


تی سندکوا سح الا سای دکہنا یا سے ینیس ؟ 

۰7 رت ہے انل ؟ چنا ماس بارے 

ںا کسی سنا اسان دام لگا ناج نہیں سکیا کمک مطلب ہہ ہہ ہک 

ینس سند پا الاساخید ہو ےکا دقو یکی گیا سے اس سند کے تھام ر ال کے ا ندر ای در کی 
صفات اور ادصاف برا برابرم جود ہی ںکہ سب کے سب عدالت می لک مساو ہیں اور ضط 
می بھی مسا وی ہیں یره »اش طر کی طور پر برا بر یمن ےکیوگلہ ان اوصا ف کا اگل 
مرو م تفص کل سے پل دہ مرج نوعیہ ے جس شل تقاوت ہہوتا ہے و جب ان مل 
راب گنل ہے و اس صورت می کسی منکن کم کا نز درست چگ اصحنیت ام 
لگا :ا درس ت کچ بی وج ےکک سرپ ای تکام( معت راو رمعت رتو لکیل ے _ 

پال اتی بات رورس جک جس جس تر سس ملام او رآ م ے اصحیت کا تو ل قول 
سے وه ست ووسر ان استاد کے متا لہ یش ار من کے بارے تلا کیت کا تول 
قول یں ے۔ 


کک سن رورا ق راردرۓ میں تا ور نک اخ فی : 

کسی سند پر اح الا سات رکا عم لان ىیفبایت بی مشکل اورختاط اھر ہے اک دج سے اکر 
حرا تک راۓ مگ ےک هک سند راس الا سای دگل لگا نا چا ہے الہش حضرات نے 
ای تم نس اسناد پ نایا ے یی اکہ ی ا سکی امش رکز ر کی یں کی سن رکو ران اورا قر ار 
د سے یں مد شن اورفقہا را مک لاف ہوسکتا ےکی وک دوفوں طبقات کے ہاں معیا راپنااپنا 
الط میس امام ام اب وحفیفہاودرامام ادزا یکا اکا شور ہے _ 

ایک دا راکنا من میں دولول خخرا تک لاپ ہو امام اوزاگی نے امام ام سکب که 
آپ رٹ یھ کو ںی ںکر 2؟ 


عرچانظر خر ای مر ور SR SS‏ ۱۳ 
ساب رک ال EST‏ پل اش یلم 

لد ال بار سے شتو یں ہے۔ 

امام اوڈا ی کہا کول عد یٹ ”تقو ل یں ہے باک سے عنم ز رگن سا بن بد الہ 
گر ےط ل سے امام ذ رک میا نکیا س ہک ھی اک رم می ال علیہ سمغماز کے شروغ س 
راغ من چا ے وت اور رکون سے مرا مات مو تیدج گر کے 

امام انم نے قر ای کہ که ماد نے ار سے مادک ابرا تین عاتن کی رل بن 
سور روا تکیا کي اکر م صلی اش علیہ رح یه کر ے ےگ رصر ق ناز کر 
روغ عل - 

امام اوزاگ کہا کہ یش امک صد یث با نکر پا موں جوا الا اتید ہے اور اس کے 
مق بل ںآ پ کے ما وگن ابا تم وای وات سار ے ہیں ا نکا مطلب رتفا میرک ر دا تک 


رمان ے۔ 
ام فانک 
حمادبن ا مان .ساب ڑ افق کے 
ابرا تمش سی رپ غا م افو کب 
علق و از گر ےکم نہ تھے 


او ربدالٹہ بین مستووتو عیراوثر بین حور تھے نے اس پرامام اوزاگی خا موی ہو گے ۔(مند 
اما مك م:۵۰) 

لہ اامکال سے معلوم ہوا فقهاء کے پال اس الاساخید ہو ےکا معارگقدہ ے۔ 

ماف نے ج رای اکا ع الا انید ہے ملقب اساخید ہرصورت میں مقدم ول ہیں مشوخ 
کے ہاش ہہوگا المتہ احاف کے پال کوک درس کل جلی اک او بر امام انم Efi‏ 
روایت ادوا ی کور انوا تر اردیا-۔ 
اعادیث کی ارجخیت : 

ال عبات ٹل دوس رک بات ہے تا ےکا فضیلت او را ریت مین (امام قاری 
۱۶م لم کی فن علیراحاد بی بھی شائل بو له ان احاد ی کت امام یقاری دامام 


مدوقول ےکی وه احاد یٹ مقدم اور ار بو ان !عاد مث سے یکن کیاح ن 
نے اقا سکیا ء بک ان ٹس سے کی ایک نے کرک وء ای رع نجس عد ی شک 
صرف امام بفاری سک مو وہک عا یٹ سے مقدم اور ار موی ں کی تز ت صرف امام 
مم ن کی ہو۔ 

وط سی سار سح سز 
ان کے باسح دب( با کت ول سلدنا اہر 
ال سب ے ابا اورا قا یگیاے۔ ۱ 

راس بات ںا خلا ف س ےک کت کے اتبا ر ےرا کیاے ؟ 

فرماتے ہی لک ہن احادیٹث پر دونوں عفرات کا اتان #وتزوه را یں یت ان 
اماد یٹ نپول نے اتا نی کی کت مس جہور نے اس با تک تص رجح 
کی ےک کرت کے اعقبار س ےکنا ب بخادی مقدم ہے اورا نلم مکی وج با تآ ےآ ری ہیں 
علاوه از بی یکناب ار ملاو کسی کے ہار سے می پا تپا ہکرت کے نف مکا تو ل را حت 
کی تق تقو لآ ہے متا ہم امام شاف ہے قول ےک 

”ماأعلم بعد کتاب الله عزو حل اصح من مو طاماللنْ “ 

اقول شاف یکی تو جیہ یہ ےکرانہوں نے مو طا امام ما کک کے باد سے مل ہے با ت ال 
ہا نے فرمائ یی جس زا سل بقار ی شر یف مظرمام یس یی ای طرں کاتول 
ایشا ےکی ”تقول ے٢٦‏ کے ما فقو لکوؤکرفر مار ے بل - 

وو YE‏ دجو نی نہ دہ 

وما ما ثقل عن آبی علی النیسابری له قأل: ما تخت أدِیٔم السمَاءِ 
صح من کناب مُسْلم فم یضرع ينه أَصخ بن صَحیٔح لحار 
لاه نما قى جر کتاب أصَح من کتاب مشیم إِذ نی نما هو 
ما مضه صِیْعَةأقل من رياه صحة فی کتأب سارك کتاب مُسُلم 
فی الصحه یمتا لك الریَادة عَليْه ولم ینف الْمُسَاوَاةٌ و کذیك ما 
سار یں سب وہر ضوح دس ابر 
دك فِیْمَا یَرُحع إلى خسن السیاق وَجُوْدَو الوم وَالتْرتِیْبِ ولم 


یَمُصَح اد منهم بائ ذلك رام إلى الاصَحیّة ولو افصخوا به رکه 
عَلَیهم امد الَحوه فَالصْفَأت ای دور عَلَيْهَا الصحة فی کتاب 
البخاری ام منها فی کتاب مُسْلم امد وشرّطه فیها آفوی و اس 
تر جهه :اور ایام اب نش و ری سے ج وقول ےکا کہ اکا سآ ان 
کے یی کراب سلم سے ا و ینا ب نہیں نے اب بتاد کےا 
ہن ےکی صراحہت نی لگ »ال سل رال سے سلم سے زیاده ا کناب 
ودک ی ہورہی ہ کی یل تن نی ہور ہی ہ ےک کک کی 
زیادل کوکناب مکیسا اس رح شرب کل ہے دہ اس ونی کی 
وب عم تاز ہو جا نم مماوات و باب یکی یں ے اور اک طرں ج 
یح ال مرب سے قول کد و ماو با ری بر تبت د سے ہیں تو ان 
کا یل صن میا جودة شع او را یکی ت تی بک طرف داش ہوتا ہہ ان س 
سے کی نے اس با تک صراح تنم نکیل کیک طرف را 3 ہے اگر دہ 
صراح تک یکر ےو وا ع وال تال رد دية» بل وو صفات جوکت 
کا دار ولو کناب بخاری یں بدرجراتم موجود ہیں سب کنا ب سم کے »اور 
بغار کشا بہت تو ی اورورصت یں۔ 


یسل مکی یت متعلقہ اتا لکت جے: 

ال عبارت سے ماف اکم شا ری او رض ال خرب کے ان اقوا لکی تج 
دک کر ہیں ج کناب مک ف تیت اور کیت کے بار ے میس منقو ل ہیں ء چنا اما م بیع 
شا پورگ سےمنقو ل ےکہانہوں نے ف رما اکہ: 

”ماتحت ادیم السماء اصح من کتاب مسلم “ 

کا ںآ سان کے ین ےکا ب لم ےذ یاد لو لتابگل ہے۔ 

عافظ اہن جر نے حاکم کے مرکودہقو لک بیآوجیرفرال س ےک اس قول سے ال با کی 
تقرس ول کاب ماب بغار ی کے ما لہ میں ز یاد ولا قول ے ہے 
بات معلوم ہودہی ےک کم ے یاد وکاب دنا مو جو ال س کوک انی جب صخ 
سیل دا ہوا چا اس ہے تع نہوم نتصودہوتی _ پم أ کل نقصوریس 


عرو اتر اسیج نس سی کھت ماس سی دہ اس EE‏ 
بو »تن اس قول ےہک کا کال موی بک ز یادن صح تی »ون کنا ہکم کے 

زیادہ کاو کا با »پا کت یش برا در یکا بکاد چان ہے ءائی با تک 
عافظ نے ال انداز یش مایا س ےک مام کے قول ے می :م تضیں ے تی ( زیر 
حت ) کی مور یی ہے الہ ال حاکم سے برایری اور سادا کیش مول لہ انے 
بات غا بت 4و یک کنا ب سم کے ورج کت )ول او رکا ب بھی ا ںکیسا تحوش ریک ہے۔ 

کن ماف نے جوم می صا وات ذک کیا ہے بتو ل سب اللفہ ‏ ےکک عر فی اتبا ر سے 
ا لول سے زیا ول اورمساوات دوفو لک ئی »وبا یهانگ ا قو ل حا ےذیادل 
کیت سار مساو کی یی ہوچا یکی کی وک مهو مع نی روج او روم وی مت 
ہے یی وج ےک سید نے شرع امان یں فر مایا سکم امک 2 الب ے الضلیت اور 
صاوات دوفو لگ مون ے۔ 

لاعلی القا رک ما سے ہی یکرت ہم ها مک قول تر ٹسل کی انا ری کے بارے میں مصرح 
یں سکول اس تقو بھی مرا ولا اس ہن رملائلی ری علا مرب یکا تو ل قل 
کر تے ہو ۓ کھت ہی ںک اس م فی لکوت اوق بت متا لت تھ لکیا جا جا سے 
اس وقت اس تصرف ید کی مو ے اور اوقا ت ا سکوع نی مفہوم میس استعال 
کیا جات ہلاس سے برا رک اورصاوا تک کی ی مو انی ےگ کاب ماو رکا ب بفاری 
کے این الا تقاضل ہے تماد یں ہا جب ان شل سے ایک سے افضلی تک کی کی 
توم افنفلیت دوم که بت ہو جا گی غاا ص کلام ہے س کہ ال با ت کو اب یکر نے 
کیل کہ ح اک کا تول صراح کی تسه کی انو یکوم راد ایکا :تی عر یکومراد 
سی ےکی رورت نہیں ے۔ 

ای طرر ض ال مخرب ن ےکچ اک کرابم وکا ب بغا ری پر انخلیت عا سل ےلو 
عافڈفر ماتے می ںک اس اففلی کا حا ق کے ال ی کناب مک اس فضیل تک 
ت اماد یٹ کے درمیان نیاق وش کی ا چیا اور تیک یکی تھے کیرک ام 
مل نے اپ کاب کے اند ای عد تیش کےطر کر کو ایی تہ ماد یا ےک سک وج 
سے اعاد بی کی طلاش می ل کا فی آ انی مون »ال کے برخلاف امام بغاری برطر ره 
متا م یں ذکرفر ماتے ہیں ارچ ومع یکر تے ہیں ءاسی طر ع ارام سم یل عد یٹ 


عرجالظرم ا سا ا وی و سن سس PA‏ 
مل اور مکل لا ے ہیں ال کے بحدحد یٹ ین لا ے ہیں اورحد ہے ورخ زگ رک کے اس 
کے بحد صد یٹ نار ذکرکر ے ہیں اور لے عد یٹ حر ذکرکر تے ہیں .ال کے بعد وہ 

عد یٹ لاتے ہیں جن مج لد ث وا ع کی مرا حت »ول ے۔ 
خلاصہ یہ ہواکہ مقار کا تو ل کی کی تک طرف رال ے یک وضع وت بک کی ہے 
مول ہے بھی وج ےک کی نے بھی اس با تک نر نمی لک یک ما رک قو لک تک طرف 
را ہے او راگ رکوک اس با تک ص راح تکرتا ت کی دج پات ا لک 2 دیرکرد تج »ی وچ 
کر بخاری شلک تک صقا تسم کے مقا بل بہت گل طریقہ سے مو جود ہیں اورای 
طررج ار یکی شرا کک یکم سابل تفت ہیں می اکا لک جح زک رآ یا 
E‏ ی چا چا 

ما رُّحَعَاَئه نی الاتصال فلاشیراطه أن یکون الراوق قَذ بت 

له یقَاء من رزوی عَنه ولو مره واکتفی مس بل الْمُعَاصَرَة وَلْزمَ 

لبخاری باه یاج أن لبیل العنعنة أل وَمَا رمه لیس بلازم لان 

الراو ی إِذًا ی و ا مد لایخری فی روَایته اخیمَال آن لایکون 

قدسیع لاله یرم من حزیانه أن یکون مُدَلْسَا والمَسْلةمَفرْوّضة فی 

تر جسهه :اورا تصال ->انقهارت بفاری کر ار ہو ےک وج ا کا بشرط 

گا س ےک راوئیکی اس روک عنہ سے طاقات غا ہت ہوخواہ ایک بی مرج بو 

اورا سم نے ملق معا صرت ب اکنا کی ے او رکم نے بخ رک اقا 

عا هیا ےکہبب نو امام بار یکو چا س ےک دہ با کل عدو بول بی کر میں اورسلم 

کا عات کروم الزام یلام جال ےک جب راو یکی ایک مرت ملا قات 

بت وجا ےا ا سکی رواییت میں ہے اتا لک لآ کاک ای نے سنا ی ت ہو 

کیوکمہاس احا ل ےآ نے ےت یہ پند کاک دہ یٹس سے اور ما رک بک قر 

مک می ے۔ 


رک شرا کےا ظط سے بغار یکت( ۱ 


حافظ اہن تم ال عبارت سے اتصال سند کے اختبار سے ماب بنا ری کی 7ی يان 


عړ و اتر ENS ae aS‏ 
فر مار ہے تک قصال سند شک کناب بفار یکناب کم متقاعلہ یش راز یں کوک انام 
تفارک کے پال حد ثٹ تم نکوقو لکر ن کی ش رط ہے س کاک داو ی کی مر وی عنہ سے ایک 
حرط قا بت بت ہو دابا سم نے صد یی حن کے اق اتی تو ی شون کا بک وه 
صرف شع نکوقو کر نے کے لئ راوی اورمروی عنہ کے دورما ن لق موا صر کوان تا 

ازج ول 

عد یٹ صن اس عد ٹک کہا اج سے جس سک را وی اپنے مر وک عنہ سے لفن گن فلا لگن 
فلا گن فلا ل سے روا تک ےا روا وعد بعش ت اورا لکوت کے ہیں _ 

فت رگن فلا گن فلان سے روا تک نے سے ہے پات وا رل مون کے راوگی نے ہے 
ردایت اپ تن روک عنہ سے برا راس تک ہے با ک وا سے سے کی سے لتق اس مس عق 
یگ اتا ل ےک روا یت کل مواور یگ اھا ل ےکر روا یت فطع ہو ۔ ای وجہ سر تن 
کے پال مہ بات سا ےآ یکین فلا گن فلا ں دای سن رکو صل قر ارد یا ہا سے یا ےی که 
چا 2 کک اگ رز تم لک رد تن هدقع زم نے ش۲ ی ران 
اگرا سے نف جک را لکد یٹک کے زمرے می شا رن کیا ان اس هک ہو نے 
کے لے مل الندہونا ضروری ہے ۔ غلا کلام ےک هد نک ا فرع کن کے لئے 
یروک تھاکہ پیل نی نکیا جا ےک بعد بیش ے فطع ے؟ 

مر ہے تیک ی اوق رد کے کل تین شرا نجل : 


۳ ...تس رکاش رط ہے س ےک راو اورعروی عنم کے ورهیان ورس موا صرت کے رات 
سات ز ن گی می لک ا زکم ایک رہطا قات غا بت ہو ۔ بی شر تتف فیہ ہے امام بغار اون 
الد بی ادس کے ئل مگ اما لم نے اس 1 خری شر ےکوتلی نی سکیا ۔ یی تیوں شرا یو گر 
عد یش تن میس پا جا تی تو وه عد ہے صل موی اور اکر تی ری شر فقو ر موز اس کے 
اتصال وعدم اتال خر کیا ای - 

اا م سم کے ن دی عد ہے کت یکت قر ار د سے کے لئے بی دوش را ئا کان ہیں ده 


عرڈانظر چک چھد ند تی ہس کی کل هدوت ما سیت ۱۳۶۰ 
تسریش شورس لقا وولو مو کے امیس مہیں-۔ 


بہت شد بت دید یکرت ہو دواعتراضات کے ہیں ان غل سے ایک اع را حافظ امن 
تر یہاں ڈکرفر مار ہے ہیں۔ ۱ 

اس اعت ڑا شک لب باب ہے ےک امام بار نے مد سس ن کےا تصال کے لے لتقاء 
واوعرۂ کی شرط اس لے کا یتیک عدم سا کا اخا ل نم مو جا ےکر اس ش رط سے مہ فا ده 
ام ہوالھز امام با ر یکو چا ی ےک وو نع کو با کل تول بی شک می تو اوو و کی مھا ص رکا 
تحت ہوخواہ وک ما کا متحت م دوگ ہمارے باس ای مشا ل‌موجود جک رراوی اورمروی 
عنہ ےد رمیا ن طا قات کے شوت کے پاوجودهد یرٹ خن لالح بل فطع ےش : 

”عن هشام بن عروة عن ابيه عن عائشة رضی اللّه عنها قالت كنت اطیب 
رسول الله صلی الله عليه وسلم لحله ولحرمه باطیب مااحد“ ۔ (مسلم) 

بعد یٹ حن سے اوراس میں لقاء ولوصرئ کی شر موجور کشا م اچ وال دگ روہ 
سے روا تکرر ے ہیں اور دوفول کے مائین معا صرت کے سا تھ ملا قات کی ات بل 
نک ےککہان میں سا کی صراحت ہے اس کے باو جو جب تین کی تو معلوم ہو اہ اس 
سن یل انقطا رس ےک ایک دوسری دو ایت سے معلوم وتا ےکشام نے یرایت اپ والد 
کی ما2 اپنے ها تان بن عردہ س ےکی ہے او رثن نے بر اس راست وال روہ ےک 
اڈ اس سے پت راما خا یکی ش رط کے باو جو وی انقطا رک خا ل باق ر تا ے اور ای 
اتا ل انقلا مکو کر ےکی ایک ی صورت کہ راو ہر پر عد یث میں ماک تقر 
کرد ےلو جب صو رت مال اس طرحع ہے امام یار یکوچ ےک و کیک بھی عدو ب کل 
ول رن 

مافظ اء روما الزمہ لیس بلازم سے اس اق را کا اب د ےر ہے ہی ں کہہے 
اقترا رو ےکیوک شوت لقاء کے پاو جود جرا وک سند ےکی واس کو ساق رکرتا ے وہ 
راو ی مرا سکہلاجا ہے اور مارک پٹ یر رس ےعلق کوک ملس سکا تور تو پل ھا ق قول 
کیا ہاش ان روا ۃ کا عت رقو لکیا جاجا ےکن سک لقن سے مہ بات بت 
موا ےکروہ تک نکر کے لہ النقاءکی قید سے ا خا ل انقطا نت یا 


ڈاظر و سا ہی وس مت PA‏ 
دار اتک من خی العَدَالّة وَالضٔبٔطِ فَلاد الرجَال زین تکلمم 
فیهم من رخال مُسلِم أ کر عدا من الرخال الَذِيْنَ تلم هم من 
رال البخاری مم اه لباق لم بکفر ین (خراج حدییهم بل 
فی لامرن 
تر جصے :عر الت ادر ضہط کے اعتبار سے بقار ی کے را ہو ن ےکی وہ یسک 
کم کے وو روا جوم فیہ ہیں دہ بفاری کے جم فیررواه ے تحنداد ٹل زیادہ 
ہیں اور سا تھ ییامام فارگ ا نکی اعاد یٹک کت سل لا ے بان س 
سے اک ان کے وه اسا تہ ہی یک جن ے انہوں نے علم حاص لکیا اورا نکی 
اعاد یٹ ٹل ہار ت پیدا کی ا ورای م سم دوفو ل امو ریش ال کے برخلا ف ہیل - 
یط اورعدالت کے اعتپار ے با ری 2 

ال عیارت شل حافظا این رکب بفادک کی 2 ی دوسرکی حثیت سے بان فرمارے 
ہی ںکرعدالت اور ضط کے اختبار ےک کناب بقار یکناب سم پر ران کی کین کے 
جن رواب کلام کیا گیا ان مج اکر روا کت مسلم سے ہے جع با ری کے لم ے 
روا کی تد اکم ہے اس ےک کش رک ددا؟ کے علاووصرف متفردروا؟شٹل ےکم مفرد 
رواع کی تعراو 3 سو نس سے ہین :9 سے ایک سوسسات رواج کم یہ یں اور تخار 
ری کے لم فیرروا کی تحدادکادوگناہ ہے۔ 

اس کے علاو کاب کم سے لم فیہ روا ؟ اک تز شل ہیں تن کے عالات واشیار سے 
آدئی اتا زیادہ پا ریش »وت اس کے برغلا کناب بنا ری کلم روا اکر امام بغاری 
کےاسا نز اور ما مر ین ہیں او رآ وی د شن کے متا بلہ شل ا سے اسا ت و اور متا بین کے 
حالا ت اوراگی اعا د یث واخپار ےو ب و اقف اور پاہ رہوتا ہے لہ اال اط ےک کاب 
بغار یک وکا کسام پت بی حاصل ہے۔ وادظداعلم با لصواب 

1 ا ۷ E KE‏ 
سا رحخانه من خی عَدَم الشْدُوُذِ والاغلال فلا مَا اند على 
البخاری من الاحَادِیْثِ اقل َدَدا مما اند عَلی مُسلِم هدا مَعَ اتفاق 


عرجالظر AE SRE‏ ۱۳ 
الْعْنَمَاءِ علی أن لحار کا احل من مُسلم فی الْعلُوْم ورف ينه 
بِصَنَاعَة الحَدِبٔث وأ مُسلمَا یله و عریجه ولم رل هید منه 
یتسم شاه حى قال الداز ْطبی لو لا بای تما راح مُسْم 

ولاجاء ۔ 

ترجمه: :روز اوراعا ل ہو لک حو یثیت ناب بفار کارا بو 

بی طورہ ےک اک جن احادیث کچ تاد ری 

تقیرشد ہآ عاد بیش ستاو رال کے ساتھ ی گکعلا کال بات پا غات کہ 

بنا ریلم سے علوم میں بہت بڑے ہیں اورفین عد ی کال سے زیادہ اش 

وس ہیں اورامام مان کش گرد ہیں او ر کل جار سے استتفاد کر ے 

ر ے ہیں اور ای قو شی تد م پر لے ر ہے ہیں با کک امام دار کی لاب 

کرد ی اک اگ ایا م خا رک نہ ہو تے وہ نہ ظا ہر ہو ے اور داس‌میران ش لآ ے 
عدماعلال اورشمذوذ کے اختپارے بغار یک7 یا : 

اس بارت شی حافظ ان تج کاب بغار یکی عدم اعلالی وشذ وذ کے اھا ر س ےکا ب سم 
ا گی تک مان فر مار ے ہی سک کناب بغار یکی وهاعاد یٹ ن پآ تم نا قد بین نے نقذ و رت 
کی ےہا عاد کاب مک ان اعاد بعش سے بہت م ہیں جن نا قد ی نکی طرف ےنقر 
وج کی سے چا سی نک تقر با کل دوسودس اعاد مث ی دک کی ہے ان یش تنل 
اعاد یٴث دولوں شش رک ہیں اورجن احاد ی شکا کاب بقار سے ے وہای ےکی 
کم ہیں اس کے علادہ رق نتر انوس پا تر انو ے ناش س مکی اعاد بعش ہیں اس ے مایت ہوا 
ک کاب بغار یکوعدم اعلا ل وش وذ کے اخقبار ےک یکناب سلم پت بی ما کل ہے۔ 
علادہ از کی امام بای کے بار سے می عیام ام تک ا تھا ےک دہ اما سم کے متا بل 

یں علوم کے کر بڑڈے در ہے کے دی تھے او رتصو ] علم عد یٹ کے مړال کے لووه 
او صواروں شش اشن هل ال بای +پارت حا یا مان ن عد عث 
یس اما سم امام تا ری کے شاگرد ہیں اور وہ یش اما قا ری سے استفاد ہک تے ره 
او رورم میں ا نکی اجا کر ے تھے اور امام فا ر؟ ی تس عم میس استتقاده کے لے 
تآ EE‏ رد 


”لولا البخاری لما راح مسلم ولاجاء“ 

کہاگ رمییرال یناعم عد یٹ ٹش امام خا ری کا پور تہ ہو اور وہ ا ےل یکھوڑے اس مس نہ 
دوژا 272 اس مان دآ ے ءا کا میران لام »قاری کے تمو رکا 
رول مت ے۔ 

لت ہاں ایک سوال بسک گرا باتو ل سے یتلوم اک امام خا ری ابا لم کے 
مقا بلہ شل بڑے پا یے کے امام :ریش اور عا مد بین تھے ال سے و صاح بکنا بک فضیلت 
و2 مورتی ے٤‏ اس سےا نک یکنا بک تز بی کے لت ٦ن‏ _؟ 

ا کا پہلا جو اب نو ہے س ےکہ جب امام بخاری اس میدا نک وا اول ہے و ال سے 
معلوم ہو اک وہ اس مید ا نکابادشاہ ے اور اور ه پور کر کلام الملوك ملوك الکلام 
و اس میدران کے با دشا ہکا کلام کی اش می دان ےکا مموں بی سب تاک داد ہوگا_ 

ایکا دو مرا اب ہے کالم کے ہاں ایک ا صو ل محروف ہے ”سو الو لفات 
بعلو طبقة المو لفین * ون ےا عق و در تی وچ کلب وتالیفا تکا ور چکگ بڑھ 
جا تا ےلو جب اک میرن غلابم بغار یکا درج لتد وار رل ا ن تن کا در بھی بتر 
وار وه ارم پالصواب 

KHK HK FE 
من شم آق وَمنْ ہہ الجهة ومی چيه شرط لبحَارٍ علی عيرم‎ 
فذم صَجیْخ لحار على عيرم من الکتب امه ف لدب گم‎ 
شجیځ مشیم تقر کی ری فی انا الما علی تلٹی کنا‎ 
قر جسهه:اوراک جمت ےک بقار یک رط رخا ری پار ت بغار یکین‎ 
مد ری کی دور کب تقزم مال ہے اس کے جر سم مقرم ے‎ 
کیونک دوس ام ریس ی بر کے مشا رک ےکا یک کا بکویھ یق لکر نے س‎ 
علا تفا ہے ہوا اماد شوم تلم کے-‎ 


ال سے عافظ امن تر مہ یا نکد سے ہی ںک عم عد ہف بل سب سے مقر مک یکناب 


ع ړوار ا ا اک و گی ریس مہ وو اس ےس وی Rh‏ 
9 و ...۴۰ و فر مات و ںکہ کہ امام بخا ری نے اخذ صد ٴث مل ج 
شرا اهر رک ہیں چ وکل و شرا کیا سب سےقے گی او رت ہی ںکہان کے علاو ہک نے ا کا 
ات ام سکیا و ا نکی شا نگ دوسرو لک ش را ئا سے دار بل جب ان شرا اکوٹو و 
رکاکر ا نہوں ےھ بغار یھی قد و بھی ان ا م کنب جد یش نے ان دک یجان وك 
مو جو ڑتھیں مشلا موطا امام ما کک ی کلم (وخیمرون سید بغا ری کے بعد اخ عد بیش 
یس دوسرے درج کی شراک ام مکی ہیں تو ا نک درج ری کے بعد ہہوگا اک وج ایا کر 
ال کے اج گناب مدومرول پرمقدم موک وگ ط رر کناب بغار یکوعلماءراصت نے 
تھی لقو ل سے فوازا اور اس پر اجھا کیا ای ط رح کاب" مکوچھ ی تی الیل ی سل 

چاو رال مگ علا مک !مار ہے۔ 
کاب بقار یک تیو لیت براجاع سے مگ راس می ںبھی محلل وشاذ احاد یٹ ہیں مان بہت 
کم ہیں اک وجہ سے حافظ نے ا کا کر وت ںکیا یلیک کا بک مکی صرف ان اعاد م ٹک 
ولیت پرا یا ے جوغیرمعلل اورغیرشاز بو زا مکی محلل اورشاز اعد یٹ قا ئل 
تقول نہہوںگی۔ ۱ 
وچ دی نے سم و چاو 
نم یم فی اجه ین خی لاه ما رف شرطهما لن 
مراد به رو هماع باقی شُرُوْط ال بخ و ررانهْما فد عَصَل 
لتاق على اقول تلهم بر الوم ق مد على غرم 
فی روا ایهم رها أَضل لا يحرج عَنه الا بل فان کان الب على 
شُرطهمّا مَعاً گان دود ما خرجه مُسْلم او مله - 
کر جمه: ردان وو نا کی کےاخبار سے ده روایت مقرم بو جوان 
دونو لگ شرط پر ہوکیوکراس سا دوفول کے روا ۃ جک شرا کل کے س تھے 
مراد ل اوران دوفول کے روا ۃ کی عدالت وتخ ر بل پر التزای طور مار 
واا ماگل ےل دہ ان روایت جس دوسروں پرمقدم مو کے اور ایک ایا 
تایرہ ےکس ے بلا ولیل خر وج من تس ےو جوردونو ںکی شرط کے 
مطا بن ہوا لک ددجم ہے اس خر ےک ںاو صرف اما اسلم ی ان کے چعم پل نے 


عرڈانظر و سد tS‏ ہے 2 182۳2 


روا تگیاہو- 


چو ےنب رک صد ہے : 

شت عبار ت مل حافظ نے فر ایا تاک کیت عد یث یں امام با رکی وکلم دوفو ںک یف زج 
کر دہ مد کا پہلا نہر ہے اس کے بحرصرف امام یریک یج ج کر دداحاد ی کا دوسر انہر 
سے ءاس کے بعدرصرف امام مل مک ینز کردہ احادیث کا ترا ٹر ہہ اب عهال سے 
چو تہ رکا زک کرد ہے می کرای کے بعد چوق ہمراس صد ی کا ہے جو با رگ ول مکی شرط پر 
ور بغار ی وسلم نے الک نکی ہو۔ 


می شرا شین کا مطلب : 

اب یبال ہے بات نا ضر و ری س ےکی ش رط نا ری ما مطل بکیا ہے ؟ 

علا مر وی فر مات کر ریہ کا مطلب ہے ےکہ اس صد یث کے تام رواۃ بقاری 
او رکم کے روا ول ن وہ روا ق قاری او رس مک کسی هدع شک سند مل مو چو ہوں ءعلادہ 
ازي اس س ی کی بت شرا زی بھی موجود ہو ںگلرکسی وہہ سے تین ( بغار وم )نے ای 
حد بی ٹکو کر نکیا و حافظ ان جر علا مرا د تین الع راو رعلا مہ ذ یکا بی قول تار ے - 
حش حضرات نے فر یا کی شمسا کا مطلب ہے ہ کہ بخاریی وسلم نے اض صد یٹ مل 
ا جن شای ر کر کا ا رما سے وہ تا م را زط اس روامت میں مو جوو ہو ں کرای کے پاوچود 
نین نے اسے زگره کیا وا اس روایت کا کت میس ترا یر ہے مشلا امام بخاری ال 
عد ی ٹکو زک رک ے ہیں ینس میں من د رذ بل شا او جودہوں_ 


(r‏ -- روا ۃ قات ہوں 
(r‏ کے تین بون 
)...ا کراپ شون سروح شس ملا زمر طو یلم ما ل موو یره ذ تک اک طرر امام 
لک اش ا ہیں گر و شرا ری انس مل مو چو ریو لو ووروا نکش مات - 
عافظ اب چجرفر ہا سے ہی ںکہ جس روایت کے رواۃ بخاری وسلم کے رواة #ول ا یکو 


ع ړو لطر ا ید جع کو ےت مس TSN‏ یا 
تیر ےن رکا تم اس لج حاصل ہ ےک بخ ری موی مت کے ہا ںی بالق ل ما سل 
ےا اترا ‌طور پر ان رواک تحر بل وت شی ےگ کا تان «ا مار موگیا ا ےرواۃ 
اک ددایت کے اندردوسرے روا8 پر مقدم ہو کے کوک دوسرو لزق وتر بل lal‏ 

اڑا یش »وا ۱ 
عافظفرماتے ہی کہم کت میں تقزم کے ج وتن راحب ذکر کے ہیں ہے ایی کی 
ےکا سے ورج بلا ولیل گن ے۔ را 
او لم : ما اتفق عليه الشيخان 
دو ر : مااحرجه بخاری منفردا 
موم بر : مااحرجه مسلم منفردا 
ار : الذی على شرطيهما ۔ 
RK KK... KE KF‏ 
گات على شرّط أحدهما فُیْقلُمْ شرط بای رده علی مر 
مشیم وخدء بَا لاضل کل منهما فعرَج نا من هدا ستة آفسام 
ماوت کرجائهافی اه وم قِسْعٌ سابع وَمُوَ معا لیس عَلی 
شرطهما اخیماعاً وانفرادا_ 
تر جھے :او راهان دولوں مایب ی شرط پر موت تھا شرط بر تشرط 
کم تقزم م ل ے ۔اس ی کل اقام عاصل بو جن کے درجات 
صحت میں متفادت میں اور هل ایک سالک مگ ہے اور وہ ےکر وہ ردایت جونہ 
اعا نک شا تنا یر ہواورت اتراو 


اه ی اور تبر احاد یٹ: 

اس عبات مم عاذ کت کے در چات کے اعبار سے روات کی بق تین اقام ذکر 
فرمارے ہی ںکہ جو روایت صر فی شط ابا ری مو ایا م مکی شرط پر نہ مو ال روابی تکا 
وال نر ہے۔اس کے بح دوہ روایت جوصر کل شر کلم موی شرط بغا ری نہ ہوا کا چا 
رخا 


سا و می کہ رکی حد یٹ : 

اس کے بعد وه روایت چجوتہ اچ گی طور پر ان دوفو لکش رط پر ہواور ت اف ادئی طور پر ان 
نش سے کی ای ککیشرط ب ہوا لک سا تو ال نر ہے لجع ان خذ .ال کے بعد این حبان 
اس کے بحر عام ا نک بک احاد یث اک تیب سے سا تذل نر پہ ہیں غا مے بش ہے 1 
ہو اک کت مل در چات فا بارس صد یث دردای تک کل ات اقا م مار ے سا سے 


لب 


(r‏ ا چو ےنم روہ روات جوان دوفو لکشرط یر و- 
۵( تک پا ب نہر رده روات جوصرف شر بخا ری پر ہو- 
۷).... بر پردوردایت جوصرف شر کم ړمو 


اما انفرادآءشال او گذ ری ے۔ 
E r...‏ یں 

وهدَالَقاوث نما هر بالنظر إلى اهلد کرو رما لو رح قشم 
لی ما قوق بامو ری تتجی الترجیخ علی ما قو هم 
علی ما قرف ؛ قذ برض للمفُوق مَا یَجملهُ فَابِنَاء ما و گان 
لح یی ند مشیم لا وَمُو مَفُهُوْرَقَاَصِر عَنْ در جة التواتر لکن 
حمْث فَربنة ار بها هید للم فة یمد على الَحَدِيْثِ الَذِیٰ 
یخرجه یار 5 ان دا مُطلمَاءو ما لو کاب الْحَیِیْے الَذِی 
نم یداه من ترجَمَة وصفث بگونها اصح الّسَايیْدِ كما لِكٍ عَنْ 
تام عن این مُمَرَقَإنَّهيْقدُمْ علی مار بهأَحَدُهُما مثلا لَاسَیْمَا إِدَا 

کات فی اسْنادو من فیه مَقَال : 


تر جمے: ےا خلا فا یت کور ہک دج سے تھا مار دج ہگ اک لوا 
کے افو ینم 2 پیک کا تقاض کہ نے دانے امو مکی وجہ سے7 یا دیا E‏ 
در کیم اس ا لی اور ماف نم پرمقدم ہو جا گی اس کرش اوقا تکم درج 
وای مکواییےگوارش لات ہوجاتے ہیں جو اسے فآ دا بناد ےے ہیں جک 
افش ایک هد یث امام اسم کے نز د یک شپور سے عداو ات ےم ےکر و شور 
کف پال ریہ ےار دک وجہ سے وہ مفیدعم ب نکئی نو عد بیث ال عد عث ر 
مقدم ہوگی جن سکوامام قا دی نے ذک کیا ےگرووفرد اک طرح ده عد یث جو 
کا الا اتید ے موصوف لب کک نا عن ای نک اور ا کو وین 
نے زرد 7788770 EEE‏ 2 رز 
کی موصو صا دا کی سن ر میں ایا را وک ہو رم زرے۔ 


ادن مقر ےک وج ے مقدم موک ے: 

مصنف مافظ رف ماتے و ںکگز شر مات اقا م خلت ره کے تاو تک دج سے 
ماسآ یں کن ان ہی سات اقسام میس سے تارتین ے۶ 
کے اتش اوقا تقد مرک لان مو ہا او ا قر ےک وجہ سے ال کے سے 
ای اور ماف کپ تقوم حاصل ہو چا تا ہے کیو مفے ‏ کواییا تر ےد مرک لان مواکرا نے ای 
مق کون واعل تاد یا ا کوشا ل سے لول یگ ےکہایک د وات کر سکوصرف اا سلم 
نے ذکرفر مایا ےکر ووتو اتر یں بلک مہو ر ہے اورا کے مقا یل ٹس یک ایک روایت ے 
که لوص رف امام غا ری نے ذک کیا ہے :امام بغار کی زک کرد م رای تکومقد مک نا چا ہے 
ان ام ل مکی دک کر شور ساتھ چن را ہے امور اورقر ای ماج ہو گے ہیں جوا سک 
تی وذ مک کر ے ہیں اوران قرائ نکی وجہ سے ووخیرمشپورمفیدعلم بن جا نی ہو ایی 
صورت مل امام بتار یکی منفردروای تکونقم هکل کل بوک ی اما مس مکی روا تکوامور 
مرچ اورت ر اتقو کی وجرسے ام ال ہوگا- 

اک با تکوایک اور شا ل سے ےک ایک روایت ہے جو اس سند وط ان سے مرو اے 
+ سکوا الا سان کہا جانا ہے شلا ہا کک کن تانح کن ابی عر( اس سن رکو امام یا ری نے سمل 


ع ړوار ری نے نت سی سس ھا یا ی ی پا 
الع با e EI‏ :قاری کوک 
کیا اور تایا م سم نے فک رکیا۔اس روات کے مقا بلہ شل ایک امک ددایت ہے جم وصرف 
امام بقارک یا صرف ایالم نے زک کیا ےا کل دہ روات جوا الا اتید وا ی تر سے 
روگ ہے وہ تھا بخا ری یا تاس مکی ذکرکردہ روات پرمقدم ہوگی اور ماع اس صورت میں و 
ضرورمتقدم بل جس صورت ٹیس بنا ری ی کا مکی سند جس ایا راو مو چوو ہو جوم زے ے 
کد ف رم 7 نہ 37 مونل ہے لو جوسٹد خی رضم فیہ ہو نے کے سا تج سا کے 

سلسلتۃ ال زهب ہوو وت ضرورم قرم موی _ 
جو ۲ r... TE‏ جا KF‏ 

فوه خث الط آی فل :يقال حف الْقَوْْ وفا فلا وَالرَاُمَم 
َة الشروّط امعم فی خد السْجیح فهو هر الحسَن لِذَاُنه لالم 
حارج وه الَّذِیٰ یحو حسنه بسبّب الاغیضاد نحو دیب 
الْمَسُتُور إِذًا تَعَددَت طرفه وَعَرَج باشیراط باقی لضاف الضْعیّت 
هلا الوم ین وٹ یو و امو اد 
دُوْنَه وَمَضابه لَه فی انقسامه إلى مراب بعضها فق بَعَضِ - 

EE‏ ورن ہوا ے منم مہا سے خض القوم غو ال وق 
ھا اج سے جب لو گکم ہو جا یں اورم راد یہ ہ کہ ضب طک یکی بقیہ ان شرا کے 
ابو جرک تمرف مم شلگمذ ری ہیں قو یخن لاع ےی نار گی ش کی وج 
سے کل اود وه ہے کل کا تن فقو تک وجہ سے #وجیبا کہ راوی مستتو ری 
روات یں کےطرق عرو وھا یں اور بقی را صا فک ش رط 6_ذ _-ضع فکو 
مار گرد اور نی یم ات لال مج کے مساو وما ہک جاگ چ ہے 
رہش ال( )سکم ہے اون تلف عراعب وور جات می بھی کیچ کے 


مشاہرے۔ 
صد بث ن لذ اتک بیان : 
حافظ ائن ر لاح بش سے فا در ہونے کے بعد اب ال عات ےن لذ یرگ 
بش شور فر مار ے ہیں ہم سن مز ارک مق تارف اورا یکا گم و فر و فی نر( ۱۱۴ پر ژگر ‏ 


عرڈالظر ڈیو وس وو وو چو ی ی ۔ 
کر گے ہیں اسے یاو آسان ہے اک لور 

ای کی تھا شر کیرش موجودہوں ین راوگ کے یط یں تتصان وگ موز وہ 
مد یٹ کچ کے درجہ سے کل چا ہے ات صطلا رصن لذا کہا اس کیک ای کے 
اد رک نک خا کی عا لک وجہ ےکی آ یا بین ا یکی اپ ذات مل موجود ے۔ 

اس کے مقابمہ میس ای کشم تن یرہ مون ہے اس کے اند رن زا نی موتا بی 
مار ی ( لاک طرق ) کی فو تک وج ےن پا موماج سل چوراو ی مستورا ال 
ستو ران موز ا سک ت ضیف بو ےکن جب ا سرامتو ر کےطرق جرد موہ یں 
اس می ںض فی میا عقوت پیدا وچا ےکر ریقوت نار یش (تحدوطرق کی وج ے 
آ لاک وجہ سے ا لر نار کہا جانا ے۔ 

حافظ قرم اکن لاہ E‏ کے تاوصا ف دج را نیا مو جود بو یں صرف بط 
مک موی ےا ” تہ اوصا فک مو جودگی' کی تیر ےن لذا دک ت ریف ےت رضح فکو 
ار کرو )کوک ای میں اق شرا فقو ومون یں _ 


مدشن لزا ٠:6‏ 

م کے لاط ےت اورت رشن لاد دوٹوں اتد لا ل وا پقسام ش برابہ او رش رک ہیں 
ینی جس طرں ری سے اشد لا لکیا چا ے اورا ے ول کےطور ی ںکیا جا تا ے ای 
طررح چ رصن لز اد ی اسر لا کاواس یل تچ ی کول 
ے اف ححفرات رون نے تسن لزا رکو مترو کہا ے۲ شحف ارت شا مین ہے 
سن لزا تو لذا ھک مش رکیا ے ۔ او ری ط رح کت کے ورات ٹل نقاو تک وت 
کی کل رجات اورکئی اقسام ہیں ای ط رح حن لذا ےک یکی در جات اور اقام ہیں 
»چا چعلامز ی نے ا سکودودرچوں میں مکی ہے سن لزاع کے اع ی مر ہس من رج ق لل 
استادوال احاد یٹ یں : 

١ز‏ بهزاد بن حکیم عن ابیه عن جده- 
۲)...... عمر و بن شعیب عن اببه عن جده - 
۳( ابن اسحاق عن التیمی - 


تن لزا کا اگ مرج ہے دہ لاک ادف درج لیلحت قول 
ضیف ہو وہ ن لزاع کے اع درجہ پر ہوگا هن لز اع کے ار ورج مل ان رواۃ کی 
اعاد یٹ ہوگ یکہ جج نکی ین وتفعیف کے بارے میں اختلاف سے شلا عارث من کید الد 
+ اسم یکن مکھر واو رت رن جن ار طا ‏ وفیروب 
۶ و بی KK TE Tr...‏ 

وبگنرة طرقه ضحم وَإِنَما کم 4 بالصحة عند تعَددالطرق لان 
لِلصوَرة الْمَحْموْعَو فوة تباقر ای فَصَرَ به بط زاوی الْحَسَنْ 

عَنْ رای الصٌحِیٔح من نم بلق الصَحة على الاشناد الَّذِیٰ ین 

حَسَتا بذاته لو رد دا تلد - 

ترجه :حن لذا دک ڑ عوطر نگ دج ے ی خر ہ )ین چان اور اش 

ال هکت طرق کے وف تک تک کم 6یا یی نگ موی عا لر تآوامی قوت 

ال »ول ےک وہای نقصان وگ یکو کرد سے جو کے راوی متام 
تن کے رای کے بط شس ہے اک وجہ سے ال استاد پر جونفر دی صورت شس 

صن لز امون ےر تر وط ر ک‌صورت غل اس سک تکا اطا قکیاجا ا ے 


عد یث غر وکا یان: 

ما ذظ ان تال یات سے یہ اا چا سے ہی ںکہ ج بخ رسن لذ اعد مور بعر از ال ال 
سط قرغ ین وو زی نکی مد وخ خسن لاد ےزم ےک لک رکش 
در بے شس شار مون ے۔ ۱ 

کوک ڑ طرق ک وجہ سے ا سخ رل ای ک کموک صورت ہا ےآ کی یوی صورت جو 
کثرتوطر قک وجہ سے پیدا مو ے اس نقصان اورک کو پور اکر د ے ج ورن کے 
اوی کے درمیان مار الفرقی ہے جب رگ پو رک + و اب غ رصن لذ ای کہلا ےکی بک 
اب ی کہا کنر لز انس قرب تک دوس یضم بویا ج کو ار , 
کچ ہیں - اک وج سے ا نر تحرط قکی صورت »و ےکا اطلا یق کیا جانا :لب 
تفر ورگ کی وجہ ےن لذ اکا اطلا کیا چا تھا_ 


ع ړو لطر 0ی یی ام PO‏ 
ودا عَيّ تَنقرة الوضث قوف معا ي لیخ لسن فی 
وَصْفِ واجٍ گقتول ری وغیره خدیت خسن صحیخ 
ہے سے ہس ریس ہے 
الصحة أو فَصَرَعَنْهَا وهدّا حث یحخصل مه لمرد يك الرَوَایَة۔ 
تو جمه: :بل اس وت ے جب اس وص فکوعبودہ ذک کیا ہا ےشن گر 
007 ورن 
کول ے *"حدیث حسن صحیح “ توا ی تر ووک وج ے سے وگ راو 
نال کے بارے شل کال کے اثر رک تک بم شرا یمو جود ہیں یا ان س 
۳۳۹ سے اور یرال وشت ہے مد اس روا یت یں رو مو _ 


تزع تیر ام فان 

اف این جر کشت عبارت میں بای کرت لز اتد لا کے مقاب یل رہ کے 
اط سے ال ہے٤‏ اب یہاں سے ہے بار ے ہی کر اوقات امام تن کی ء امام تفارک اور 
امام تقوب بن شی کی حد یث پ رکا مکر تے مو ے ان دونوں وف لکوت کرد نے ؤں جیا 
ک۔اما مت نہ یکا ول اس معام علخ شیرت رکا ےک ”هذا حدیث" حسن غریب 
صسحیح “ اس صورت می ایک ی عد بیش ے علق وصف ال اور وصف او دول 
مو ے ہی ت2 ا سک یکا یہہ ہوک سے ؟- 

ما فظ امن تفر ما تے ہی ںک ایک می عد ہے سے تلق دونوں وصفر ںکواس لے م کیا ات 
ےک تمد و محر ٹکواس عد ہش کے اقل را وی کے مال سے تحلق تر ووک ہہوتا ےکا 
کے اتر رت کے شرا رمو جود ہیں با مفقور ہیں تو ال تر ددکی وچر سے وہ دولوں وصقو ںک وح 
کرد یتا ہے کہ بعددا نے حرث کے نز وی جورازٗ ہدوہ ا یکواخقیارکر ےکا تفیل اس 
وت ہے جب اک د ود ث کے با ل ال مدای کی صرف ایک می سند ہو ہاں اگ اس کے 
بعد ایک سے ناسنا ہیں ا کے بادجوددوتر ددکا ا تھا رکرر پا ہت ا سک یتیل هآ ری ے 

۱ لہ لو ...ی ی ی 
ورف بهذا جَرَاب مَنِ استشكل الُحَمُع بَيْنَالوَصُفَيٍْ فقال الحَسَن قاصر 


الَفُسُوْرِوَتَفْه وَمُحصُلُ الْحَوَاب أ ردد اَم الْحَدِيْثِ فی حال ناقلهافقضی 

وم جح ار صو عند قرم وَعَابةُ ما ہآ ذف بل حرف ار 

لا حَقَء ان يَفُوْلَ «حسَن او صَجِیْم وَهدّا كما حذف حرف الْعَطٌفِ من 

ای بَمْتَه _ وعلی هد قما یل لہ عَسَنٌ صَِیْح دون ما له ضيح 

لائ الْحَرْمَ آقوی من رد وهذا حَيْت التفرد- 

تر جهه :اس سےا یآ ویک جوا بگیمعلوم »کیال نے مع بین ال خی ن کا 

اکا ل کیا ے او راصنا چاو جیا کہا نکی تم ر لغوں سے معلوم 

ہوا تو وولو وصفو ںکو کر نے میں اس شور ونتصا نکوجا یم کر نا اور ا یکی 

کر نا دوفوںل با جار ے ہیں اور جوا بکا عا ل ہے ہ کہ انم هد یٹ کا ال 

عد یش کے ناش لکی حالت یں تر ووک اس یا تکا نی ےک جرا سکودونوں 

رون شن تک وش کے سا شف کر نے اوران شی یکا جا ےکر 

ایب وم کے ند یک ہے باغقبا ر و صف کے صن ہے اور دوسری وم کے دک 

تیار و صف کے ے ال بش ںآ رکا بات می ہ ےکا قول سے مرف 

دوز ففکرد یا گیا سب وکن تھ اک لو لکہاجا کہ حسن او صحیح“ 

اور ایی رح چچلیما کہ اس کے ما بعد وانے سے رف عط فآو عذ کرد گیا 

اک وہ سے جس قو گل مم سن کہا جائے درج مج کم ہے اس قول سے جس میں 

مرف کاس ےک ھک یقن تک ےت ابش اق بی سب 
ایا مت نمی کے ٹول پا ترا اوراسکاجواب: 

ال عبارت سے حافظ ار ن رای یہو را شال اورا یکا جاب ذکرف مار سے ہیں - 
اشکال ىہ ےک یم محد ین لا امام نر وغیبرہ وص فن اور وص فک کو ایک بجع 

کرتے ہوۓ موه اعد ن فر ماتے ہیں اور ہہ بات اپنے مقا م پگذ ریگ سے 
کہ کے راد یکا متا ماو رکا ل ہوتا چاو رن کے راو یکا بط تم کل پل اس »وب 
ق یچ کے ان رامیت دکاعلیت ے جن کے انررق ےلو ج بو محرث دوڈو نک وکیا 


کر کے مار ا یک ذکرکرتا ےت اس وشن کے ذکر سے ممیت اون 
وولو ں کا ات لام٤‏ ےک ورس کل ے۔ 

ماف نے ا یکا جاب یدک د ریت اتم عد ی ٹکوا هد ععث کے قل اور را وک کے 
الات پا خلت دوو اکان ےا ایی طبط سب( کی اکن 
ضط ہے( ج کن ل اکا خاصہ ہے )تو جب الوا ی کے پار ے یل تر وور پا تو یز د ده 
کے 2 ال با تک تھا ی تاک وہ اس حد یث کے باد ے میں کک تکا با ن ہو ےک کی 
فیصلہ در بدا نچ نے دونوں وصفو ںکو زک رکرو اک ین ای اظ ر ےن دب دہ ٹا قل راوی 
گج کا راو ےل ای اط سے دہ عد ی میرے نز دی کک ےکر ولا ر کے نز ویک وہ 
تل را وک درج کرت ےک ن کا راو ےا ای لیا ظا سے دہ عد بعش مر ےن وین کی 
ے رمصنف ےٹول ”حسن باعتبار وصفه عند قوم ؛صحیح باعتبار وصفه عند 
قوم“ کا مطلب ے۔ 

ا قو ل کا مطل ب کیل س ےک ایک توم کے نز دیف دہ عد ی تن ہے اور ایک تو م کے 
رک وق کار یراد لو اس صورت کول افا لش E‏ اور گی 
کے تال تلف لوک ہیں تو اس می کول تا رض ی ہیں ر پا و پچ رکوگی اشک کی ہیں بہوگا له 
مطلب ومراد ہے هک اور نکاما وال جج ایک ہی ے مجن تنل ایک ےراس 
ھچ رکو ای عد بیش کے راوی ونال کے حال می تر رو ےک حش نے اس کے سائۓ الک 
ال ی کہا او ا ےن الد ی ٹکیا( وا ام پا لصواب )- 

اس جوا بک تل ہو اک درتقیقت اس قول ”نج“ کے درمیان ےت ف عطف | 
و دی ی لاذ فکر و گیا ادا سل شس بقل یو ں قاحس او صسحییخ" اب بر 
کل ای رع »کي لک کر ہآ ےآ ر پا ہے :خلا کلام بو اک چا ل ایک بی سند وال 
عدیث کے بارے ٹل ”حسن صحی “کہا جا ےل چ وکا ی مل 7 دواو رک ےمذ اا 
کمک درج ا ستول ےم ےک موک نس میں ج م اور یقین کے اتم ”صحیخ“ کالما 
جات ے کوت قاع کہ "الحزم اقوى من التر دد“ ےسا رک چٹ اس صورت شس یک 
جب ال عد ی ٹکیا ال حرث کے پاس ایک ہی سند لین اکر سند مم ترو نو ال سے 
متعلق نٹ ال عبار ت شل بیان فر مار ہے یں - 


عرڈالنظر کر ہو یں او ا 
وا آی ردام بح صل اسرد فاطلاق الْوَصْفَيْنِ معا علی الحدیت 
یحو باغتبار الاسْنَادَیْنِ أَحَنُھُمَا صَحِیْح وال خر حَسَنْ» وَعَلی هدا 
زا کثرة الق موی 7 
قو جہ مے :ورن اتر متفر دنہ ہو چھردونوں وصفو لک کی ایک صد یٹ پر 
اطلا یکر دود وسندو لک بت بو کال سے ایب ی مواور دوس ربی صن 
ای 020 کن کہا جا سے ایی و ا قول ے بس 
شس صرف کہا جا سے کبک سندافر د(خر یب ) + وی ط ر کی کر الق یت 
شق ے_ 


دوسندوا لی عد کون يم 

یہاں سے مافظ دوسرک ش یکو بیان فرماد سب ہی کرت کی حدیث کے بارے مل 
حسئ صسحیہح“ کے الفا با اراد ث کے پال اس صد بی شک ایک سے ز اکر 
سند سی ہیں شلا دو اسناد ہیں و اس صورت غل ان دونوں وغو ںکو چا زک کر کا مطلب ہے 
کک دہ هد ایک سر کے فاظ سے تچ ج بک دوسرکی سن کے لیا ظط سے و وحن ہےگویا 
اس یس بھی ان کے درمیان ےر فت ود ”او “ومز فکیاگیاے_ 

اک متفرگ کے ہو ے فر مات ہی ںکاگمردوسنددائی عد یٹ کے بار ے ئل حسسن 
صحیح" کہا چا ےآ ا یکا درج ائ »وکا ا قول تیش ور و 
صرف صحیح کہا ھا کید لول سے معلوم ہوتا س ےکا ی حد یی شکی دواسناد بل 
ایک کے او اود دوسری سک یا ےن ےا ا سکوتعدوطر کی وج ے تو ت حاصل ہوگئی 
اعد ادها ہے ج بک دوس رےقول” جج فت کک م جس عد یث پ لگا جار ا ہے دفر دوخ یب 
۰ ہے ا کا صرف ایک نی طر ان ہے اس میس تروط ر کا وص فیس ےن ا کرو وتو ریس ل 
نیس ج یط دا کو ل ی لذ اپہلاقو ل تو گی اور دو سرا کی کے متنا ہکم در کا ہوا_ 

ھال بے بات ذ ا ند ہک ی اور کو بطو رمال کے پش کیا ار ہا ے ال سے حمر 
مقمووس ہےلہذ ال ےول ی کک کر ادن ٹس سے ای تک اوردو سر ے٤‏ حن ہوتا 


ضرو ری ے اک بات یں سے بلا کا فف می ۰ سے شال می سض فکواس ے ذک ریس 
کیا شا ید ار نکی ضیف کے سا تکوئی ال مو جو ون ہو واش ام 
کاملییت ضہط اورنقتصان ضراو کر نے پراشکال اورا کے جوابات: 

ایام ت کی و یره جا عر اخ کي کرو ہک عد یف ےتال حن مسحیح* کا 
گم لگا ے ہیں تو اس می لکاملییی ضط اورنتصاان بط دول ں دفو لو ےکر نلاز مآ جا سے بو 
کو رست محلو میں موا ای کے جوابات د سے گے ہیں : 


عط ف یز وق ےت حط رات نے اوک ویز وف مانا ہےگوی اک ہامامتز نھ یکوک ہ ےکا 
اههد ےکوی یں شا کی ہا ے پا تن میس ذکرکیاجاۓ جا ہم جاب اس لے خرش 
ےک اما م تر زی سول احاد یٹ کے تلق ےکم لگایا ہے نو امامت ہک ہی ے شی محر تک 
شان ارح سے ہے بات بحر ےک الا ده اعاد یش کے مت ددتھا_ 

حش رات نے رف عطف واوک ویز وف مانا ے اس سے امامت جک یکا مفشاً ہے کے 
ادت دو ی ی و هو ی ا و واا ت 
2 رو ری کاک صد یث ےکم زگ و وط لت ہوں نس کے تاق امام تر ہی نے م لگایا 
ہے مالک غر جب ا عاد یٹ پگ ا کا ا طلا یکی گیا ج ۔ 


ضسن سے سن لاد مراد سے اد رک ست یت مراد ے اور ہے دوٹو ںہ ہو کے ہیں اس 
ےک جحد یٹ نتصائن متب اک وجہ ےن لاد ہدااگر دو تحرو طرق ے مردی ہو د وک 
خر بن اي جواب ابی جک ہہت ا چھا گرا سک ححت اس بات پ موق ف کک 
عد یٹ لام ھی نے ریگ لگایا ہے دومتوددالطرقی ہاور ی ل‌ضرو رک یں - 


إصطلا یں چا س ہے بل ی اد اور ای در چات نام یں تن ادلٰ دیج ے اور 
11 درچہ ے اور راو ور کل یں مو ور ہوا ے یار ار لو ن sx‏ کار 
عد ش ضیف ت اواو د ون ہے ال ساسا تیاس شلک شرا ئیابھی مو جود ہوں زو 


ےگر بر ن کا ا ہو رور یل _علا 0 هشیم ای جوا پک شرف ایا چرس 
EE‏ سے ہت نی سے مت 


ی س ےک اگ رعلاء امام تر تھ یکی زک کر وول ریف سن یس تو رفرما و وم 
ہوتا حشرت والا امام تر ھی کی دک کردم کت ریف ذکرکر نے کے بحدفر مات ہیں : 


اام ھک کی ا ت رل فک رو ےکن دہ عد غ سے جن سکی سند سکوی راوی 
مغ پاگزب ۱ یں شزوذ دہ ہو مہو رک طرں وو راوگ کے ما فظہ کے 
نقصا نکن کے لی رق انیس د تن وز اا تھ ری فک رو سے سن اور 
ٹس عا م ما کا نبت ب د دک ای کان عام ہے اور ناص نس 
رواعت پرامام 7 ھی کی عد بعش ن کته یف صاد قآ ری »واگ وو ساتھ ہی 
تام الضبط افراد سے مرودی #واورال کول کی دول و سماتھ نی کی کی 
و اور ار الضہط نہ ہو با ا کی رواعت کول علت پا پاری ہوا وہ 


مرف صن ہوگی یں «اشکا اعم ( دس ت مک: ٩)‏ 
9+۰۸۹ 
قد یل قد صرح الَرمَدِیٰ بائ شَرُط الْحَسَن نوی من غَيْر و خه 
کیت يمول فی بعُضٍ الاحاویّب : حَسَنّ عَرِیْبِ لا تغرفه لا من ها 
وه فَالْجَوَابُ أن الَرْمَدِیٌ یعرف الْحَسَیْ مُطلما وَإِنْمَا عرق 
احرای - 
تر جمه :اگ کہا جا ۓکرامام ی نے فص کیا کح نکش رط ید تک 
د ایک ےا طرق ےم وک ہو پر و وض اما و ہے ےی تلق خسن 
غریب لانعرفه الا من هذ الوجه کیے ر ہے شی و الک جواب ہے ےک 
ا امت فی نے معلتی ضس نکیت بی فی ںکی بک انہوں نے نکی ابو د ۶ 
یھی فک ہے جوا نک یکناب غل وات سے اور وہ بی ےک ج٘س مل ووصرف 
حسن “ فی دوم ری صقت کےف مات ہیں۔ 


هذا حدیث حسن غریب لا نعرفه الا من هذا الوجه ک‌لوچیر: 

ال عبارت می حافظ ان ایک ا عراش اورا یک جاب ذکرفر مار ے ہیں ء ات ڑا ہے 
س ےک امام ت کی نے اپنی سین قزر یک ی کاب العلل کے اندر اک صراحت فما ےک 
مر ے2 د یک آن ده کہ ”یروی من غیر وحه “کہ ایک زانط رل واتار 
ےم روک +واو ریب اصطلا رح رشن یں ال روا کوکہا جا تا ےج صرف ایک ن یط ران 
وسند سے مرو ی »ول ا ےم علوم ہو اک امام ھی کے ییا نکر د سن او رتم یب کے ما ین 
ان وتخا ےا رام ریش اوقا تک حد یٹ شا ہے ی ےا ں کہ هذا 
حدیث حسن غریب لا نعرفه الا من هذا الو جه و جب ان دولول لتخا ے ےل9و وہ 


رونو ں وا س قول میں کح فر ا ے ہیں ؟ 


”ایک سے اکر طرق“ کی قید گان ہے اس سے عا من مرا وگل بلک اس سے وہ فاص 
حن مراد سے ج اکلا رال کے سات ےکوی دومراوعف وم دوز | جو۳ کی دوسرے 
وصف کے ساتھ کور ہوگا اس تن سے دون هراد ہوگا جو مد کے نز دیب هکل کے 
راو کے طط میں نقصان ہو اس فا سے من اور ی کو کر نے می ںکوکی اھا ل یں سے 
کول جور وا ےےل الت ہواوراس کے رواش ع رال کی بولگ رال کیک راوگی کے طط ۶ 
می کی »او رک مرعلہ ےا لک ایک ہی راوک ہو ے روا تن لذ اتد ہو نے کے سیا کے سا تھ 
ی بھی > ی جواب ال بات بق سکن سے مراد مور و الا تن وایا منز یکا 
سی ا 


و رج کوٹ 
الٹرعرادہوتا ہے اورخر جب اند ے وہ روایت مراد موی تی ےک رج وضور اکر مکی اشدعلیہ 
وم سے روا ی کر نے وا نے تحر وی کرام ہو گر راو ا کو کی صلی سے روا یکر نے 
میں تفرد موق اس روا یت کا تن ص نکھلا پگ اور انی سر بکہلا کی توکو یا سن غر یب کا 
مطلب بی ہو کین ب نا امن خر یب پا یا رامش . وا ام لصواب 


عرو اشر RRR‏ ات ا ی ا سس کم ہا 


وَذَالِك أن یَقُوْلَ فی بَعض ال حادیب خسن وفی بَعْضهَا صَحِیْح وی 
نما وق علی الأول فَقَط 

۹ جس :ادرددبہ ےک امام نی اماد ہے لتق مرف رر 
اوحض کے حلق صرف و صحیخ» اور ی ی *غریثٍ» او رض 
کم و س0 لم جا 
یس ی غریب اور ا حسن صحیح غریب“ 


فمر مات ہیں ارادم کیک کک رد وآ ریف مرف یی صورت ( لسن ) پہ 


صاد قآ ےں۔ 
اعاد یٹ پیم کا نے ٹیل امام ز نکی کلف اسا لیب : 
حافظ ائن تر نے اما مت مرک کے اسلو بک وضاحت فر مال س ےک دہ عد یٹ پ کل مک سے 
ہو ۓ کی کیت الفاط ذک رکر تے ہیں چنا چا ی عبارت یش امام فک سارت ال کے 
یں کرو هکلف ا عاد یٹ کے تلق بو نم لگاتے ہیں - 


"0٦1‏ وی 
02 


هذا حدیث صحیح غريب 
.هذا حدیث حسن صحیح غریب ۔ 


امام ت نی تام اصطلا حا کو مور کے مطا بی ی زک رر ے ہیں گر جال وو رٹ 


وو 


حسم“ ذک رک تے ہیں دہاں ہو روالا صن مرا ول 2 بلک و ہا ن سے وہ ایی بش 


کر ارچ و سے لاف رال ارت مم 
ذکرکرر سے ہیں۔ 


عو اتر با و سے وسھٹو مس سو 1 


وعبارنه ترشذ الی ذیك حَيْك قَال فی أُوَاجر کتابه ما قلنافی کتابتا 


عبت سن فما رنه سل نادند ول یب بُرُوی 
لا خود راوبه مهما بالکذب وَبْرُٰی من عَيْر وجه نحو لك ول 
يحون سادا فَهُوَ عندنا عَسَنٌ۔ 

تو سے :اورا نکی عبار ت اس طرف رجنمائ یی ہے جہاں انبول نے اپ 
کاب ےآ ر میں فر ایا کم نے الاب کے اندر جولول عد یٹ یق کی 
ال سے ہم نے وه رواییت مراد لی ےکی سند ہمارے نز یک صن مواد ہر 
وه حر یث جوم روک مو اورا کا راو یلاب r‏ »اور وواک س 
زاترطر ےم وک مواو رتشا ہو وہ مار دیف تن ے۔ 


ناتسن ے تاق اما تر ہب یکی ول ؟ 
اف این رگ شت عبار ت می ہے وکو ی کیا تھا ک ابا م مک چہاں صر فن کچ یں 

ق اس تا اپنی اش اصطلا رح مراد مون ہے اس دگوک پرا عبارت می دعل کر ے 
ہی ںکہ اما م تر نھکی نے اپ یکا ب کے اوا می کاب انل کے انہر ا کی وضاح یکر دی 
ہ ےکر یکتاب کے اندر چا این ےکور موو ہا لن سے و ون مراد موتا ےک کی 
ست رن ہواورو صن ج سکی ست رن ہو اک یتح ریف ی ذکرغر الا ج۔ 

کل حدیث یروی ولا یکون راویه متهما بالکذب ویروی من غیر 

وحه نحو ذلك ولا یکون شاذا فهو عندنا حسن *- 

کہ ہرد عد ہے جو مرو ہواور ا کا راو یحم الب تہ بو اور وہ ایک سے ز ابر 
۱ طرق سے مردی ہواوراس شش ذو کک نہ ہوق دہ ہمارے نز دی ک سن ہے۔ ارام 

KHK دی دی دی‎ KT 
قرف بها آنه نما عَرّت الَذِیٰ يمول فيه خسن فَقط ما مَا یل فَيْهِ‎ 


رص ےم رص کر ر رو2 را گار ےر مر یھ ۔ رف ٍ رص مرو وه وم 
حسن صحیح او حسن غریب او حسن صحیح غریب فلم يعر ج على 


رو و سے و هم را عو وی ےہ اواو ر وی عے ض گر مر 
تغریفه کما لم يعر ج علی تعریف مَايَمُوْل فیه: صَحیٔح فقط »او غريب 


2 


مقط. فکانه ترق ذلك سیغْناء بشهرته عند أَُل الق وافتصر على 
تغریفه ما يمول فیه فی کتابه حَسَنْ فقط ما لغْمَوضه وم لان 


عرو تقر 0یپ مم" سس گی 1۵۸ 
الحَدِیْثِ کمّا فَعَلَ الخطابی وَبھدًا لیر ینف كير من یراب 
یی طال لت وی وم یرجه تَوْجِيُهها فلل لحم على 
امعم 
تر جےےه :اس سےمعلوم ہواکرانپوں نے ا یکت ریف کی سے جس می وه 
مر فصن بل ہے دواقو ال جن می و وصق کان خر جب یا نک 
خر یب کے ہیں تو انہوں نے ای تر ی کون چھیٹرا جیما کہ اون اس کی 
تر ی یکین بی ڑا جس میں و وصرف با صرف خر یب کے ہی ںکو اک انہوں 
نے ان دک ال ود جو ےکی ہے نے متعم ای رک 
کرد یا اور انمپوں نے ا سک تحرف پر اکتفا مءکیا نس میں وو صر ف صن کچ 
میں اس کے فا مس ود تق وس کی وجہ سے ما ایک ئی اصطلاح مو ےکی وج 
.ای وج سے اس ے' "ندچ" کی تیر کے سا تیر مقی رکر دیا اور ا 2-327 
طرف مضسو بک ںکیا جی اک علا مہ خطا ف نکیا سے اور ا یتر ے سے بہت 
سار سے وہ اقلا ت دور ہو گے ہن میں بکنش وتو ہر طو بل ے اورا نکی 
کول جک غقی نیس ہے اس بیش کے الما کر نے او رسکھا نے پر مت ریس 
الل تھا ی ہی کے 2 میں ۔ 
امام نکی کا فاص تس نکب مراد موتا ے؟ 
اس عبارت سے ما فط ابن تہ اتا چا سے نی ںک اما م7 نے مرف ان کت ریف 
کی س کر کو و کیک و زک رکر ے ہو ئے ”هذا حدیت حسن “ یا ین ان کے 
۱ سا تھے کی دوم رک عصف تکوننیں فک رکر تے اس کے علا دہ ان کے دوسرے او ال جن می جن کے 
اک ری فت کی داور و هن ی یا صن خر یب بصن ی خر جب 
.ان اق ال میں مو جو دص نکی کر ون ریف امام تم نے نکی نکی لف ا ہاں امام تر ہی تھا 
یق کر -2 ہیں دہاں ای ئ او رص وتر یف وال سن مرا د موتا ہے اس کے علا دہ چہاں وه 
تو نکو دوسرکی صفات کے ساتھ باکر فک رک کے ہیں فو و ہا ں سن سے محر شی نکی شهو را صطلاں 
و الان مراد وتا ےک یں کے راوی شقان بط ہو - 


ای رع چہاں امام نک مرف چ یا مر فغ بک بھی مد ری ف لک یز ی 
کک مرش نکی اصطلا شور موافقی بی زک کر تے پل - 


ا ام نکی نے صرف ضس ن کت بی ف کیو ںک ؟ 
اب سوالی ہے پیړا موتا امام نے تھا نک یت ری فکیوں ذکرفرمائی ے؟ 
اکا ایک جواب یدیا ےک چگ رص نکاق و تق تاک بھی ا لک ہا مح مان 
تھی فک لک بلهزا اما مت نر نے اس ئل قش چھا اورا سکی یور ت ریف زگ رگروی 
گرا ما مت نر یک ذک کرد وآ ری ف کی ہا ئ باعل ید ابی جو اب خد و ج - 
اکا ورا جواب هم امام 7 نکی کے ند یب ىہ ایک نی اصطلا نیت دوه 
رشن نے افقیا رن لکیا تھا اس کے جد ی مو ےکی وجہ سے اس که زرکرو یاء ہے جاب _ 
زیاده تد یرہ ےا وجہ سے ان ہوں نے ا سکوا بی طرفو کر کےعتد نا کہا دوس 
مرش نکی طرف ا سک نبس تک ںکیا۔ 
آخ یں حافظہ این رف ا کے ہی ںکہ ہما ری اس طلو ع لاق رسہ ہے اس بث سے متتعاقہ جل 
اعتراضات رح دنق ہو جک جن مم وکا نی طو بل ہو اتی ےکر انکا کول نط رخا رمل 
نظ ی نج ان اختراضنا تک نعل کے لئ شر الہ لزاع تار یرف مرا جعت فرا ی 
F.-Y TE YK YF‏ جار جا جر 
وَزِيَادَه رَارِيْهمَا اي لسن وَالصجيح مَقُبُولَةمَا لم تفع مافية وة 
من ُو اوق مِم لَمْ یذ کر یلك الريادة لان الرّیَادَة رما أن تکوّن لا 
تنافی ها وین رِوَاية من لم يذ گرها هه تفیل مُطُلقَا لها فى 
کم الح دیب المسْتَقل ال یر الق ولا رو عَنْ یه 
َير وا أن تکون متفه بحیث یرم بن قبولها رَد الرراية ال خری 
موم هی لیقع ربخ بها وین معارضها بقل الاح ورد 
الْمَرَجُوْحْ ۔ 
تر جمه: اوران وولوں ن سن وک راو یکی ز با | سل وقول ے 
یو هک اہے اش کی ردایت کے متا نموت نے اس زیو یکو وکر ںکیا 
کر ز یادنی یا تو اک بو کراس شی اور اس راو یک روایت میں جس نے 


اسے زک رکٹ کی کول ما فار کل ہوک نے رز با وی مقبول موی ال ےک راک 
تقل میٹ سم هل س ہک لک روایعت مل لھ تفرد ہےء ال روا یکو 
E SE‏ مر ا OE‏ 
حت ما وکا تو لے ےدوس ری ردای تکو رر وکر ع لا زم 
ہو دی وہ رواےت کال کے اور ا کے موا رش روایت کے درمیان 2 
کے ل کواپنایاجائگا و را کوقو لکیا یا اورم رج کور دکیا نا 
روات می ز یال کوقو لک ن کا ان : ۱ 

ال سے عافظ امن تہ بیان فر ماد سے ہی ںکرددایت مم سس ز یا ونی کوتبو لکیا جا گا اور 
تا کر کا ا سن تک سک رام یک یدق کواس وقتقول 
کیا جا ئا کہ ینس ونت دہز یادن ال راوی ے اون راو یگ ردایت کے منا فی د ہوٹس نے 
اس ذیاد ‏ کو زک رکا _ 


تن اور سک روا کی ووصو رتس : 

ورا سل صن اور کے روا کی یاو کی دوصورنل ہیں - 

ہی عصورت ہے ےک یادن وال رواعت شس او رت روات شس بیز اد تہ موان دووں 
کوت تشاد دہ مون اس ز یاد یکوقبو ل کر نے سے دوس ری دوا تکو ردکر نا لا زم ہآ ئے تو 
ای یدح نرادن مت قو لا ہے خواہ ہرز ادلی قتا شل »نوم شل ہو ء چا ہے 
ای ےکوی م یلق و چا سے نہ ہوخواہ وولو ں کا راک ایک یق + دک ایک ر 
روا کیا دو مرک مزا ده دوا کیا و بیز بادئی تقل صد بعش کے درجرٹش س کا 
زود کے راک عاو ای کےا ےی اور نے ات دوای ٹکٹ کا 

دوسرکی صورت ہے س ےک اس ز یادف وای روات شمل اور یں غل بیز یادن لب 
وولوں شیل ما فا ت اور نشا د م وک ای ز یاد فی کوقو کر نے ےا روا یتکور وکر لا زم 
9 ہے ای صورت مل برزیادل عنرا جر تن قو لک سکیا ییک ان دونوں کے و رمان 
اب ت کر یقافتا رکیا ای ان شل سے جرا موی | سقو لکیا ای اور رجوح 
کوردکیا ای - 


عرڈانظر سی هه ا و ا ا ا یا بے شا BOs Saa‏ 
زاوی کی جن سورس : 


علامہا ن صلا رح نے اس مقام ڈیا دی کی تین صو رس وکر فر ماکی ہیں : 


ور تکام ےس ےکر دورد ود موی - 
(r‏ .... دوس رک صورت یہ ےکر وہ ت یادیک یکی روایت کے ب کل مان یں ےا اس 
کاعم ہے ےک ہہ مقبول موی _ 


۳) ..... یس ری صورت بل ووصو رتو ں کے درمیا نکی صورت ےک صد یث مل لفق ایی 
زیا ونی ہوکہ جے ونر بقل روا ۃ نے ذکر کیا بو رصورت مال طا ری طور بر ہو ری 
ردایت کے متا ف مو ےکی وجہ سے می صورت کے مشاہ ےکر وونوں ملق بعر ایی 
بی ہو انی بل ال لاظ سے یدوس کی صورت مشاب 

اںآ آخر یصور تک مال بیعد یث ے: ای الاو O‏ 
ایک راوی ریت ابو ما لک اش نے تام روا سے مد ہ ا کوان القاظ کے ات روای ٹکیا 
کم ”حعلت لی الأرض مسجدا و جعلت تربتها طهورا*. 

یمان دوفو ںو کر الکن کہ و ھا جا ےکا ما نک ای رای خد مش 
2 مت سے رادار - 

علامہ این اللا حع نے اى کم اس کم کرک کی راو نے فر مکحم ال کی 
رواے بول ےکوی قن ہے_ 

عافظ این تر نے علا ادن صلا ر کی اجار )کر تے ہو ے زاوی کی دواقمام ذکرفر میں 
کر حافظہ نے یی رتس رب یکو ا م کر سکاف مش رکیا سے اور دوس ریش مکو تخل زک کیا 
ہے لک وجرےتجی نکی میا ے وو ہیں می نگکیں .( شر مایت ری ۳٣۰١۳۱۸:‏ ) 

ماف نے ہا ںا لش تک بیا نک ے ہو ے ”من هوآوثق “ فر ایا ےتا ی پاشال 
ہوم ےک امک رف کی ز ونی ان کے تالف تہ مو بلا سے درجم ےت راوی کے تالف ہوتو اس 
کی اس یا ونی کوک قو لی سکیا جا بلہاس میں نف کیا جانا ہے ماگ رال پگ یہ بات 
صاد ںآ ری ےک اس ےی او کی الف یں کی یلاس نے تو تک خال فک سے ماف 


ع ړو اتر ê‏ ام مک جس سے تھی رووا 
کے بیان کے مطا بی اس تک الفت وال سورت کی ز یا وئ یکوقو ل کیا جانا پا سے مالاگلراس 
میں لو ت ف کیا ہا تسب 
اس اعت را لک ایک جواب یس کہ یہال ”مقبو ل “ سے مراد یے س کا ےکی طور پر 
روک کیا جائیگا و اب یرال‌صودت غ لبھی صا دآ یکاک صو رت میں لتا سین ہم پل نت 
کا لق کر ر کا یکی تیاو ی طور مرول موی _ 
اکا دو سرا جاب ہے س کا قف سے ر وکر نال زم لآ تلف خی رمحمول ہی مون 
لمآ ہل اکر قرا سے م درج دک مخا لف تک ےو ا یکی ز یادن خی مول پم ہوگی _ 
ماف نے جس ز یادتی کی جودوصورں زکر فر مائی ہیں ا سک اتل نسن اور راوق کے 
ما و اس ے معلوم ہو اک سن اور کاو Û‏ ا طاد سا تک 
ید یکو ہا لو لک سکیا ابا سک تو مطلتا روا ی تکویھی قول کی سکیا جا گا 
لو HA‏ ...جار KHK‏ 
واشقهر عن کر ن الْعلمَاءِ ول بل جو مطلتا ین غير 
سے ےر تہ 
رل مِنْه راخب من غَقَل عَنْ ذلك منم مََ اغیرایه باشیراط 
الْْفَاء الشُذُوْذِفی خد الحدیت الصجیح و كذلك الحسن_ والمنفول 
ی هلت امین کب ردنب مهد یح قطان 
ومد بُن خن یی بن مَعین وَعَلِیٌ بُنِ یی والْبُحارى وأبى 
رعة الرازی واي حاتم والنشایی والدّار فُطْنْیْ وَغَيْ مم ینار 
مرج ما ناوغرا لا يعرف عن اعد مهم لا 
بل الّیَادَوِ۔ 
تر جصے :اور »بت سار ےعلاء ے ز ال کو مطل اش یآفصیل کے قو لکر نے 
کا قو ل شور یراك محد شین کے اسلوب کے مطا ن یں ے جو صد بیش یسل 
شاذ دوس ےکی شط کے ہیں برش نک یری فک سے ی ںک ق رادی اپ 
سے اون راو یکی تالش یکر ے او رب ہے ان ٹل سے ان رات جو اس 
وچ ارو کرو ریق ور فرح رشن ترف 


عرچانظر 7 امس ہس سس سس سی کیا 
یس عدم شنو زک شوگ 2-8 ہیں ۔ اور نف ین اعد یش سے ز اوی اور 
ریاد وال ردایت تز پیا ےط یتک حت رمو ستو ل ہے ان میس سے کی 
ےکی ز یادلیکومطلقا قبو ل کر نے کا قول قو لا متلا عبرا رن ین مد ی 
ی التطان »ادن بل ی بین بل من الم لبم خا ری ءابوز رید 
راز ی۲ لوحام امام ناء ارق ورور اتال _ 
راوی ی ز او کومطلت ټول کر م: 
حافظ ان جرف مات ہی ںک علا ہکرام کے ایی ہیر سے زیر ی کومطت خر ی فصیل سے 
تو لکرن ےکا قولمشپور ےکر قو ل وور ور سا ےکرک ول صرف جع اورنن 
شر ے اور اورشن دوفول میں عدم شزو زک افتبارضروری ہے اگ زی و یکومطاتا قول 
کر ےکا قول ل مک ر لیا ہا ے تو اس صورت مس بول کچ اور سن میس مرن ر ےکی ۳1 
متبول شا ذکویھی شا ل ہوا ےکی تن بم طر جح اور ن لوقو کیا جا ا ہے ای طرح شا و 
بھی قبو کیا ہا کا اورشاذ کے متنا ل ض رکفو طاکو روک نالا ز مآ گا اور یہ با کل خلا ف اگل ے۔ 
عافڈفرماتے ہی ںک ملق ز ادن ٰکوقو لک نک قول رشن کےطرز کے طاق نہیں 
ے ورن جح اورصحن یں افا شزو زک شوتر ارد 2 می ںک و خر یا ا کا را وی شا دہ 
ہو بع داز ال شزو فک رل فک نے ہو ے کچ ہی لک اکر تہ ا ہے سے اون راو یک مخ لفت 
کر ےو یشو ےا اکر مطاتق زی ونی قبو لک لی تزا یکا مطلب ىہ ےک ہم روا ہت شا وکو 
و لک میں مال امک یح ین روا یتو شاذہ اور شا کے راو یکوقو لآ لک تے »ال وج سے بران 
سےاسلوب عم بسچ 
آ میں فر مات و ںکہ نب ے ان قرات رثن بج ارس نی تیف س 
عرم شزوز حرط ہو نا اعڑا فک یکر ے ہی کر غفا کی وج ے زیاد ی کومطل ول 
ک نے ےکی تال ہیں۔ 
ول ز ونی سے یر ر ے: 
ایک روایت یوی تل مواورووسری رواهت اس یاد سے خا بو ال‌صوررت 
میں مطلتا زیون یکوقو لت ںکیا جا ۓگا بللہان دونول روایات میں راو رون کے رت سے 


عرجلظر .. ۱ ۱ ۱۱۳ 

CG‏ ےج 
امش دار هدک کی قطان اتب نیل » گی بیشن بی من مد بی اعام با رکا 
موز ام عابشا اودامام دا فی کے اس رای رفست ہیں۔ 

ود بیو بی Kr...‏ بی KK‏ 

وب ین ذلك إطلاق یبر ء من السَافِعيّة ال بقل زیَادة الثْقَة 

مع ائ تص الشافعی يدل لی عَيْر ذلك فونه قال فی ناء کلایه على 

مَا بعر به حال الرّاوی فی الصَبُط مَا نله يخود إِذَا شرك أَحَدَامِنَ 

الحخفاظ لم بحَالِفه بقل الق فَوَجَدَ یه أْقّص کان فی دك 

دلبل علی صحه مرج خدییه وَمَلی خالت مَا وصّف اضر ذلك 

بحدییه - انتهی کلام 

ره ریسفت 

ٹہ راو یکی زیادثی کو مطلت و لکر نی تو ل منقول ہے باه جود لہ امام شاف یکا 

تول ا کے فلاف پر ولال تکرح ے امام شاق نے اس پٹ مس" جہاں انہوں 

نے راو یکی عالت باک کر هیا فر مایا تک ج بکوگی راوی ک حافظ کے 

سات روات می ہش یک ہو جا ئے فو ا کی نا لشت کر ے اور اگ ال نے الگ 

ال کی او راک حد ی ثکو نان پاات اس ٹل ا کی عد یٹ سک کی 

کتک س سے اور ار ال اور مورت کے خخالف موتو ال سے ا گی 

عد کونتصان یکا امام شای کا کلام تم ہوا۔ 


امام شاف اورتټول ز ونی : 

ہو رحد نکا مھ ہب ہے س ےک ہق راو یک ز یادن مطلً وگل »جیما کر یہ کف بل 
گمز یی ےمم نپ شوانع ے قو ل ےک وہ تقد راو یکی ز ا وئ کومطلت قبو ل کر تے ہیں » 
حافظ بن رما تو ہی ںکرا ن نف شوانح بے بہت یچب موتا س کے انہوں نے ہے ہا کی ےکہہ 
دک الاک صاحپ نم ہب رت امام شا سے ال کے خلا فقول ےت ان مقر بن نے 
ا سے امام کے غلا ف با تکہددی جوشا ن لیر کے خلاف ے۔ 

چنا تیا م شای بط داو یکی پٹ شل فر ما تے ہی ںکہ ج بکوگی را وی کی حافط کے اتر 


عرجلظم وص سد ره ی ۰ ۲۱۱۵ 
روا یتو عد ہے میں شش ریک موا ےلو وه راوگ اس عا ف کی الا مکا ن خا لشت نکر ےکن 
رک هریش یش اس اوک نے اس عاف کی تالش تکردی تو اب تم ال راوکا کی حد یکو 
ول گےءاگراس راو یگ حد یث حاف کی عد بیش کے متنا بل میں اقش اورک موت ہے بات ال 
کی بیش - ون ےکی علا مت ہے کین اکر ا راک عد ی اس حاف کی هد بیش کے 

مق ب لہ شس زیاد یل موتو اس ز باد تی کی وجہ سے ا لک حد ی فکونقصا ن اورضرر ی 
امام شاف کےا یکلام سے حا بت ہور پا ک قراو یک ز یال مطلق تقو کل کوک 
گر ان کے نز یک ثراو یک ز ونی مطل بول بو تووم ”اضر ذلك بحدیثه “مہ 
فر کہا سک روا تکاس زیادلی کے مج تتصان موک اور وہ زیا وی مرو موی مط 
تبو نکن و ال عبارت میں حافڈ ام الا مکا تفا بیان فا بل کا 
ال تم نے بیان ذکرکردیا ے و ارام پا لصواب 
YE YE Yr... YE YF YE‏ و 

وَمُفُتصُأَنه دا خالّت فَوَحَد حدِيقَة ید اضر ذلك بحیییه فدل 

على أ زبادءة العذل عنده ایلزم لها مُطلَقاً وَإِنمَا يمل من 

الحافظ. فان ارآ يكو حدیث هذا المَُالِف ۳۳ من ا یا 

من حالف من الحْفاظ وَحَعَل نصا هذا الراوی من الحدیت لیا 

علی صکیه له یل على نريه وَحَعَلَ ماغدا ذلك مُضرا بحدییه 

بحَدِیٔثِ صَاجبھَا۔ 

تر ھھھ :الک تضاءي ےکہ جب اس نے تنا لق تک ا لک عد یٹ زیا وی 

پتل پائ یکئی تو ہے یاو ا یکی حد ی ٹکو تصان پا گی تو اس نے اس پہ 

ولال تک یکامام شاق کے نز وی ٹک ز یاو یکومطلت ہو لک نا ض رو یل 

اور بلا شی حاف کی زیادقی قبو لک چان ہت امام شافق نے اس باتک انا رکیا 

س کہا تال فکی حد یث ان موی اس عاف کی عد یث کے متنا بز یش جس 

نے ا سکی تالق تک سے اورامام شای نے ال راو یک عد یٹ کے نقصان اور 

ک یکوا سکی کت بوعل بنایا ہ ےکیوککہ یج ا کی احقیاط پر ولال کی سے 


عرجالظر و 
اوران ہوں نے اس کے علاو و ور تکو ا لک هد یث کے کے مرق ار دیا سے نے 
اس میں ز یاون بھی داخل موی بل اکر امام شاق کے نز د یک ز یاو مطلتق ول 
ول یادا راو کی عد عمش ردول - 
امام شاف کا مک متا : 
ال سے کل پات غل امام شاک لا مگ رسب او راکب رضرورت وضا حت کی ٠‏ 
مکی اب حا ف این رال عبارت سے صرت امام شا کل مک تتا م من فر مار ہے تا 
کہ امام اف نے فیک جب ٹقرراد کی حاف کی رو ایت صد بیش مس ال کر ے اور 
ال ثراو کی عد یٹ اس حاف ظکی رعش مزال پا جا و یہام 
نی زیون تل ہون اس راو کی عد ہف کے لے نقصان دو ہوگا““_ 
امام شاک کلام ا بات پر دلا کرد ا ےکہ ان کے نز دب یق راو ی کی زیاد یکو 
مطاے و ل کر تالا زی اھکیس ے بک صرف حافت کی ز یادن تک ما ام شای نے اس 
با تکا اتبا کیا س ےکہاس ثراو کی عد یٹ زیا وی کی ا ےکی تل ہواس ماقت راوی 
کی عد یٹ کے مق بل لت حا فک صد یٹ زیا ونی پتل مورا راو یک صد یی اس 
یادف سے فا موتو اس صورت یں امام شاف نے اس امر( ن زیر سے خالی ہو نے 
کو )ا یکت پر دی لق ارو یکیو ما کین رک اوراعقیاط پا ہے۔ 
ال یادن تال ہونے دا لی ورت کے علا دق تا م صو ری اس ثراو یکا عد عٹ 
کے لئ نتان دہ ہیں ان بق ر سورتڑں میں ایک ز یال موس وال صور بھی ے از ا 
یگ ای عد یٹ کے لے اضراورنتصان دہ ے- 
ال سارک بج تک خلاصہ ہے س ےک امام شای کنو یل ت راو ی کی صد ٹکا زد لے 
تل ہون ا سکی عد یف کے لے نقصائن دہ ےا اس سے معلوم ہو اکان کے نز د ہک اہ 
راو یکی ونی مطلق متبو ل نیس »و کوک ار ا شک ز یادن ان کے نزو یب مطلق بول 
مون تو ووا زیاد ‏ یکوا یکی حد ہت کے لے نتصان دہ در ارد یت تو جب صا حب نہب 
حضرت امام شاف کا قو لت مطل زیا ون کوقو ل کر ےکا ہیں ےا جن اا بی شا ویر نے مطاقا 
زیا ونی کیلک قول افیا رکیا ہے اننہوں نے اپنے تاک تنا لف کی ہے جوشان اقترا 


عرڈانظر وا مت وص جس سس حم موس ۷2 
فلاف ہے داشرا پا لصواب 
YK YF‏ لو KK...‏ جک KK‏ 
فف وف بارحم مِنْه لِمَرِیٔد صَبُط أو كُثْرَة عَدَ د او یره ذيك من 
وَجوّه التَرْحیْعَاتِء قالرَاحم يقال له المَحْقُوظ وَمُمَابلة وهو 
لوح قال الِمَاڈ 
شر جمه:اوراگرای(راوی) کلف تک ار اور یت (راوی )ےکی 
شل ف رک یاون ی اک ت عددوظرہ 2 کل و جوه ے و ران ک رکفو ظا اور ا 
متا لکوج کہم رج ہے شا کہا ہا ہے۔ 
تنا لفت کے اعقپار ےن رکی اقمام: 
ال حافظ این تق ری ایک او رتم بیان فر مار ہے ہیں ا نم کے اتبا ر ےرک 
کل پاراقام میں:(ا) خرکفویر (۳) خرشاز (۳) خرسروف (م) نھر 
ان پاراتامگ وچ ری کف اف تک دوصورکیں + ںکہ | نو راو یی روایت 
۱ اپنے سے ارز او راو غلا ف بو تو اس صورت می اس کی راد ی کوخ رشازص سل 
اور او وار کی روای تکوش رکفو ہیں کے یا ضف راو یکی وی تک ایی 
روات کےخلاف موک تالضع فک روا کو رم رل کے اورک روا رمح روف 
A‏ 
اوک عا رت میں حافط ن کم اول ت رکفو اورحم انی رشا ذکیتحریف ذکرفر ا ے۔ 
ن تقو اکآ ریف اورگم : 
جم تفو ظط و نمر س ےک ایی قرا وک ا سے سے اون راو یکی تتا لق کر خلا وہ راو اوق 
ضا تیاده رکتا ہو یا ا کی روایت کےطر یک رہوں کول اور وج تی موتو ا س اون 
راو یگ روای کون رکفو کل ی رکفو کم ہے ےک بے صد مھ متقبول ہے - 
شا یتح ریف اور 


شا ا ی ن کہا ہا س کر لک را وی ڈت (متبول ‏ اہینے سے اون وار کی القت 


عرڈالنظر 0 .0۴ ۹ 
کر سے شا کی تفار یف میں سے میکح ریف تال اعتار ے شا زک بق رش مم مر 
ر(۱۲۱) کک ے ہیں۔ 
ا کم ےس کشا مت مرددد ہے نو لین ے۔ 


از اورگرس‌فرق: 
شاداد رگ مقر بے ےکیٹ را داد تنا ہے ین را راد شیف بر ہے 
ا نی شال ال عبارت می لآ ری ہیں- 
YK‏ دہ نچ E EK K.-T‏ 
oT e‏ 


مق مره عي وس 


گی الس سس ےت 
وتا لا موّلی هُو اتمه ۔(الحدیث) وتاب ان عَيَبنةَ علی له ان 
حریج وغیره و خالفه ماد بن ری قروا عن عمر و بن دنر عنْ 
عَوْسَحَة وم ید کر ان عباس قال بو حاتم الْمَحْفُوُظٌ حیِیث ابن 
عة إلى كلام مما بی ید من هل العداله لبط ومع 
ذلك رح أَبُوْ عایم رِوَايَةَمَیْ هم آکنر عددا مه وعرف من هذا 
الشقریراه الشاه ما روه الْمَقُبولُ مُحَالِغا لِمَن هُو أوٴلی منه وهدّا هو 
المد فی تَعرِیٰفِ الا بخشب الإصطلاح - 

قوج“ :اورا ی کی شال دوردایت ہے جن ںکوتز یی »نا اوراجن ماج نے 
گن امن عی نہ۰ کرو بن د با رک نوچ ان این خحبا س کے طم ان سے روا یی ےکا 
ےک ای یآ وی حو ر اکر مم سی اڈ علیہ وسلم کے کہ مہا رک فقوت ہوااوراس 
نے وار یں وڈ ا سوا 2 ایک موی ےک جس مو یمکو ا سآ وی ( می ) 
ےآ زا دکیا تھا امن ین نے ا یکو وصلا با نکر نے مم این ج و غر ہک 
متا بع تکی ہے اوماد ہن ز بد نے ای تتا لق تک سے بل اس ےکن مرو ب 
د ینار کچ کے ط ر ان سے روای کیا او رانا یکو کر ںکیاء ابو مام نے 
کہا کہا ہن یی دک عد م ثتفو ظط »بل ماد بن زیم عدا لت وضبط شش سے 


عرجالظر ے نے تحت گچچچھوو چو و ی ۱۹۹۰ 

سے اس کے باوجودابوعاتم نے اس روای تکوت بی دی جوت رار کے اعقبار ے 

اپ سے اکن ے ١ا‏ لے ے موم مو اکس شاذ 7 سے ہج سکومقبول راو 

اپنے سے او یکی نالف تک تے ہو سے روا تک ے۱ اصطلا لیا سے شا کی 

یا ری فر ے۔ 
ست ر کے لی طط سے شا زکیمشال: 

اس عبارت سے عافظ شا زک شال د ےد ہے ہیں الت یہ بات ذ من مں ر س ےک شنو زک 

رین ہیں: 


حا ف کی زک کرد و مثا لش وؤ فی السن دکی شال ہےء ایک صد مث ے: 
ئ رَحْلمُوقیَ لی عهد رَسُولِ اله صلی لل عله وعلی آله و صَحُيه وَسلَمَوَلمْ 
دع وأا ِموی هو اه( اتر ی دسا داینب ) 

ہے عا ی ل سند سے مر دک ہے اس سند می پا تیب ہے چا دراو یآ تے ہیں : 


اس سند ٹس اہن یز راو یکی متا بحت امن جک ےکی سم اس روا تکو این ج تا 
نے با تو این یی ےا عمروین د ینار سے روا تکیا ہے یا ای سے ابن ید کے مع اخ عوسجہ 
ےروا بی کیا ہے ببہردوصورت امن جرگ ان عیر کا تا سے بی صورت میں متا بحت تامہ 
موی مہ ووس ری صورت می متا بعت نا قم ہوگی تو امن جج کی متا بح کی وجہ سے اس سن رکو 
. تقو یٹ ے۔ 

تہ اس حد بعش کی دوسری سن دش2 کن حماد بن ز ی رن گرو بن دیب رگ کوج ہے یہاں ماد 
نز یلد نے اہن عیب ہکی ست لفلف تک ہےء او رکوہ کے بعد حضرت ابین یالکو کر ںکیا 
ی این یگ ست رل ے او رای کے برخطاف تاد سند مل انقطا رسب ۔ 

امام ابوحاتم نے اس اختلا فک کے ہو فل فر مایا ہ ےکہابن یی دک هد ٹر 
. گنول ے جس میں این عحبا کا ذکر ہے اورحماد بن ز یرک عد ی رشاو ے جس میں این 


و لطر N ea SRR‏ 
عا یکا کر ۔امام ابد عاتم کا ملآ پ 4 لیا عالاکک حماد جن ز ید عادل اور ضا لا 
دک چگ انا متا ل ان لوگو ںکی نرک دک کی سے جوا کے خا 

یں تعداد کے اعقبار ےکر تھے شا ل اس شا ذک یج یکن سک سند شش شزو ہو 
من کے لاو سے شا زی شال: 
اب ق راشا وک ووش ل کی یا سکرس من مں شز وز ہو: 
عن عبد الواحد بن زياد عن الأعمش عن أبى صالح عن أبى هريرة 
رضی الله عنه مرفوعاً ”أذا صلی أحد کم الفحر فلیضطحم عن 


بن 
بمینئهہ 


ال روایت کمن می شذوز ہے ج٘ سک وج سے یش دزن ام نکاشال مگ چان 
امام لی فر مات ہی ںک اکٹ ححد ٹین نے اس صد بی ٹکوتضورصلی ول علیہ وم سب لک حیشیت 
سے روا تکیا ےگ رعبدالواعد نے (جکہ لق ہے ) ان س بک قالش کر تے مو سے الکو 
خضرت صلی اول علیہ وم کےقو لکی یت سے روای یکی اعد ا اکر روا ی ردایت جن 
ےج رفوا با وید الاح رک ناور« ردایت ج کرت کی ہے شاز سک 

الیل سےمعلوم وا ک راز اس نج رکوکہا جات ےک کک رادی ٹھر( یول )ہے سے 
اون وا رر کی مخ اش تک ے شا کی تار یف بی سے رت ریف تا مل اتاد ے۔ 

FF‏ دی دای دی بی نت 

ود وفع مهم الضغفب قالراحخ یال لَه مرف وَمُقَابل 

یال له نکر مال مَارَوَاه ابی ابی حاتم مِنْ طربْی خبیب بن حبیب 

کو آش و ب عیلب الاب فا ین شاو مار 
ُن ری عن انب عن ی صَلّی الله عَلیه لی آله صخي 
وشل قال: من ام الصادة انی الکو وخ ابیت وصام وی 
الصيف دَعَلِ الْجَنَةَء قال بو حاتم مو مت کر لان خر ہی الات راز 
عن آبی اسحاق مَوْقُوْفا وَمُو وف ورف بهدا بين لاد 
نکر عُمَوْمَا حضوضا من وجو لا نها اجیمَاغا فی اشراط 
الُمُعَالقه رافیراقاً فى ان شاد رِوَایَة مه او صَدُوٴق »والْمنگر روَاية 


ضییف, وقد عََلَ مَنْ سوی بَیْنَهْمَا - وال أَْلَم 
تر جمه :اتف راوی ات وات ہو را کن لحرو نس 
کےا ورای کےمتقا بل م جو کو رمک رک کےا سکی مثا ل وه رواایت سے لاو 
این ادها نے تعیب من عیب ( ج کی ز ہن حجی بک باق ہے )گن ا احاق 
گن الا بین م گن ان عبا گنل کےط ات سک ےکر ضور 
اکر لی ان علیہ ال وی وم ASAT‏ فا زگ پایتد یکی اور 
زو ۃ ادا اور بیت ال ہکا ر کیا اور روز ےر کے او رما نکی ضیاف تک وہ 
جنت میں چا ۔امام ابو عام نے فرمایا کہ بعد ہے گر ےکیولک حبییب اوی 
کے علاو ام ہروا ۃ نے ا ی کوالواسیاں ے موقو ف ےطور روا کیا ے 
اورموق یروف _اس سے معلوم وا کرشاز اورمگر کے ورمیا نگموم 
وتصو سک وج رک لست وگ ان درلال کے درمیان اتاق ادها لق تک 
شرط ےاوراف ڑا ق مادهي_ ےک ترشا یتو دراو یک روات مو ے یا رای 
صدو قکی جب رخ رمک ر ضعف راو یکی بو ے اورجنھوں نے ان دوتوں شس 
برای روما وات قائ مگ و فطل کا شکار ہو ۓ ہیں _ وا ام بالصواب 
مرو او رخ رم رک ت ر ف: 
اس عبارت میں عافیڈ محروف ون رک ت ریف اور مٹال ذکرفر ار ے ہی لک را رضیف 
راوگ ثراو یک تالف یکر ےو ثراو یکی روات ران موی ءا کی روا ی تکوخی رمحروف 
ہیں گےا و ریف راو یکی روابیت مرج ں گی اسر کہا جا تا ے۔ 
ا سک مشا ل وہ روات ہے جوکوان ال ان نے ای سد 
”حبیب بن حبیب عن ابی اسحاق عن العزار بن حریث عن ابن 
عباس عن النبی“ 
ات دوا کیا ےک حضو ر اکر مکی از یرومم فا 
مَنْأَقَام الاد وآلی الركوة وَحَجّ ابیت وضام ری الضَيْفَ دحل 
اة 
ال روای تکو امام الو اسیا سے شا ردو ٹس ے صرف عیب مین عجیب نے مرد ا 


عرو اتر ای ER SAR‏ 
روا گیا ہے اس کے علادہ ان کے بق شاگرووں نے ا سکوموقو قا روایی تگیا ےک انبون 
نے معخرت امن عا ل رگ الد کے و اسوک ذک رک کیا ۔ 
امابو عام را سے ہی نک اس روای تکوم رفآ روا کر ناخ رمگر سب الم ب» اور 
ا سے وتو فک این عپاس کےطور وای تکر ناخ رمحروف سح 
شاو اورمگ رمیں لہرت: 
علا مان الصلطا رخ ےرا المنکر بمعنی الشاذ کشا اور گر وونوں پرابراور 
اوی یں ٭ عافظ این تج رعلا م این اللا رح کی 2 دید مار ے لکرالن دونول کے درمیان 
مساوا یں ہے پل عموم وضو کن و ہک بست سے - یہا ںعموم وحموئ کی وج سے مزا طق 
کی و صو اصطا رح مرا وی ہے یجس میں ایک اجا گی اوہ اوردوافتز اتی نے ہیں باس 
سے بیہاں مراد ہے س ےکران دولوں (شاذ ونر ) کے درمیان ایک لاظ سے اتان دابقا راب 
ک رونول یں دوسرے اون وار راوی کی خا اشت مونل ہے اور ایک اظ سے ما لشت 
وافتز ال کشا زک راوگ تول ہوجا ےگ را یکی وہ روات دور موی سے جب رکا راوی 
ضیف موتا ےء اک وج شر مر شد الع تکام گا ہا ع سب 
مصنف حافظ این چرس جوفرتی بیان فر بای ہے فا لب استعال ای طرح ی ہے الہش 
اوقا ت کرک شا ذکواستعا ل کر لیا ہا ع ے _(و الم لصوا ب ) 
gt...‏ 
و مات ره من لد النشبی اد و جد بعد طنْ گنه فَردَا قد اف 
َيه فقو الْمتَابعر بکسر الموحدة) وَالْمُعَاَعَةٌ عَلی مراب إن 
الْقَاصِرَه وَیْسْتفَاَدُ منها اتقو 
ترجه :ادرت ں فر دم یکا دک یذ رگا اگر ا لو دی متصورکر نے 
کے بح دکوئی دوسر! راوی الک موافقق یکر سل وہ دوسرا راوی متا بح ( بسر 
ال )ہلا ے اورا بصت کے( دو )درہات ہیں ارف راوگی شل متا بت 
پا جا سے متا تا مہ ہے اور اکر داو کے استاد ای ےکی او پرعتا بحت پا 


چا سا توق صرہ ہے اس متا بت سے ردای تکوقو تلق سب - 


2 3 
یپ نے نف یب کے ذ بل مل پٹ مات اک رای تک دوس ہی ںک اگ اصل ست ر نی 
تا بجی کے ورج میں ریت ہے تو ا ںکوفر وس کہا جا جا سے اور اکر ا صلی سل رایت تہ ہو بک 
وریا سند یا اس س ےکی جات موتو ا لوف ر وی کیت گر استھا ل مر شین سک( سے 

کچ گر درک فرب کی یں ۔ 
متا جع کی تع ریف : 

اک غر یب لت فر رسکی کی اگ رل موافت کر من ایک رواعت خر یب ہ ہکا کی 
ےت و ےش رت 
ہے اک درجہ یں اگ رک ووسرا راو یگ اس کے سا تقش کیک ہو جا ے نے ائس شرکت کیم لکو 
متابعت کے ہیں ؛ش یک مو نے وا نے راو یکوستائقع ( کسرالیاء )کہاچا جا ےء اور راوی 
سا توش کت شو لیت اقا رک ہے ا سے متائع ( الباء ) کے ہیں اس متا بعت سےسند 
میس تقو یت قصو و ہو ے۔ ۱ 


متا بع تک اقام : 


متا بحت جا مہ ہے س ےکم ال حش ریک ہونے واے راو نے اک راو کے اہ درج ش 
رک تکی ہے ا تست جا مہ کے ہیں ا سکی مثا لآ ےآ ری ے۔ 

متا بعت تا ره ہے ےکرنٹس را وک کےا تدر رکت نہ ہو ی اس کے استاد یا اس کے مخ اخ 
کے درج میں ش رکم یک موت ا سکومتا بحت ا صر قاطا لآ ےآ ری ہے۔ 


رمق یت بعکم : 
سای پش نف دی کے بارے مم بھی لیکن گر فر یعطق بت درج تا بی سلوی شکب 


چا ۓ وووروا بت فردمو_ ۵ غاد توا ہے۔ 


عو الم LOR E OR‏ 
بُن تار عن ان عُمَرَرَضِی الله غ سول اس صلی ال فا 
وعلی آله وُه وسل ال لشهر سم وشن فلا تما عتی 
روا الهلال ول تُر وا عتی ترفن عم علیکم فا یلوا اله 
کلایین فهدا ابیت بهذا لفط طن قوم أن الشافعی تفرد به عَنْ 
مالك فَعَدُوْهُ فی عَرَائیه لا َضحاب مالك رو عَنه بدا الاستاد 
۵۹ 9)ٰ یھ 
بد الله بُ مَسْلَمَة الق ذا حرج البخاری عنه عَنْ مالك وَهذِم 

مُتَابَعَة تامة 7 

تسر جمس : اورمتابعت تا مکی مال وہ روات سے می سلوکتا بالام ٹُل امام 
شاف ےن مان کک ن عبد الین د ینارگن ای نکر نز سے ر وای کیا ے 
کر حضو ر اکر صلی اللہ علیہ یلم نے فر ای کی یتیس دن کا ہوتا ے ای تم 
روزه ض رک ا کک چا تاو کیو لواو راطا ر کر و کاس دک ےدلواوراگرو منم پہ 
پاد لگ دج چا ندمشتتہ ہو جا ےا ول دن پور ےکرلو ہے عد یٹ انی الفاظ 
ےے وی سے تا تم تش حضرات نے هگا نکرلیا کہ امام ا لک ے روایت 
کر میں امام شاق تفرد ہیں ےا نہوں نے اس صد ی ٹکوامام شاف کے فرب 
یس شمارکردیا یگهام ما یک کے دور ےش اکر دول نے ال عد بی ٹکو اسی سر 
کے سا قحان الا فا نگم میک فا قد روال ہے روا تکیا یں اام شاق 
کا ایک متاخ لگیا اور وهی اللہ بن سل اتی ہے اعام خاد نے اس سے 
اک رع ردای کیا ہے اورا ی نے امام ما لک سے اور با بعت تا مہ ے ۔ 


ما بحت ما شال: 
اس عبارت یل حافظ امن تر نے مایت جا مکی شال وکر فر ما ےک کناب الام کے 
نامام شای نے اپ سند کے سا جح الیک روایعت ا یط رح ذکرفر مکی ے: 
عن عبد الله بن دينارعن این عُمَرَرَضِیَ الله عَنه ائ رَسُولَ الله صَلّی 
الله عَلَیْه على آله وصخبه وَسَلَمَ قال الشهُرُ یمرو فلا 


عرو اتر ASS Saa‏ 
قَسوْمُوْاعَتّی قروا الهلال ولا تُر وا ختی تََوٰه قن عم کم 
فا کملا الْعِدَۃ تلائین- 
امام ما لک کے شاگمردوں میں سے صرف امام شاف نے اس وای کوان الفاظ ( الوا 
العد ڑا تن ) کے سا تج روا کیا ےگ رامام ماک کے دوس ر ےش اکر وحضرات اس روای تاو 
اک سند سا فاد روا کے الفاظ سے رواب یکر 2 ہیں »ای دج ترا کو ے 
یم موی ہکا می امام شاف ےت دا ئیارکیا ےاورو ہا روا تکوامام شا کےلفردات 
اورخرائب میں شا کر نے کے _ 
کرای وہ کا یقت ےلو یکل تی کیرک یں امام شاک تاج راو ی لگیا اور ده 
:تن مل بی »ابا ہار نے اس روا تک عبر تن سل ای عن ا کک سے 
لی ےج کی سے یتو متالبعت جا رک مشثا ل کوک رتس راو لک لح ملا ےآ کے 
متا بحت ا صر هگ ال ذکرفر مار ہے ہیں - 
چل پل YE E YE... YE‏ یز 
دنا لیصا ماع قَاصِرَة فی صَحِیٔج بُن یمه ین روَايَة عاصم 
بُح عن أيه مُحَمّد بی ري عَنْ له عبد اله بن مر زضی الله 
۰( 
فی هزم المع سوام گات نامه زار على ال لو اش 
بالمَعتی تکفی لکنها مُحْمَصَة یکونها من رِوَايَة ذلك السْحابی - 
شر جسهسه: درم ایخ یمیس ای متا بعت قا صر والی رواىی بھی 
بط لپ عام بن گن ایی ےھ بن ز یرگن جد ہ عبد ان بن عم ران الائ املو 
ہہ شین' کے ساتھ پال ہے اور سکم میں ایک روایت بطر یه ان بر 
ن تاکن کید اش ران الفا "فا له روا ہر شن“ کے سا تم( ے )اور 
اس متا بت میں فی طور کول تما رگن ےک اہ ابع قاصرہ ہوخواہ ابع 
امہ ی اکر متا بعت بای ےو ی کان مون ےلکن متا بحت وال رداهت 
کا ای کی ی ے موی ہوناضروری ے۔ 


مت بحت قا صر ی شال : 

عافط ارات تا صر هی دول د ےر ہے لک امن یش کرو روات 
کی سند میں امام شاک ملع مو جود س رتست قاصره امن چات طر کچ 
مسلم میں بھی ا کا متام ابیت رہ مو جود کش کف میس امام شاف کی سند میس رت 
راثآ گ'ڑ سے روا تکر نے والا راوی خر تک اللہ بن دق رازم اک 
روا توا الفاظ ”فک مل وا ثلاثین“ کے سا رح قب راڈ ب کر ےکی ان کن د ینار 
کے اس رت نز بر دای کرد سے ہیں تذ بن ز نے امام سک ام( عبر 
الث بن د ینار ہے مو افق ت فر بالات تا صرہ مون - 

ای طرںح کے کلم میس اسی روا تکوان الفاظ” فقدروا ٹلاٹین “ کے مات ےبد الہ اب کر 
سےعبد اللہ ہن د ینار کے میا ۓ حض رت ا نے روای تکیا با کی حطر ت ا نے امام 
شای راغ( یداش یار ) سے موافق ت فر ما سےا یی متابعت قا صر ومو _ 


متا بح کیل روات بایان ے: 

آ یس ایک سوال بی ہوتا ےک خضرت امام شا ضف نے اس روا تگوان الغا د "فا کملوا 
اة ری ss‏ ہہ “""٠‏ 
۱ روا کیا یل تن بعتکر نے وا نے را e‏ ”فکملوا ٹلائین“ کے 
الفاظ سےاوردوسرےمتابع بان ا یکو و ”ف قدروا نلانین “ کےالفاظ ےروای تکیا 
ہے۔الفاظانذ دوٹوں کےامام شان کی رایت کلف ہیں ؟ 

حافظ اب تر نے جاب دس ہو فر مایا کہ متا بعت ( خواه جامہ موقواه قا رہ و کر 
صو رت ) لسع الفاظ شس مطا ان »ون ضر ور ی یں ےء بل اکر متاخ کی ردایت پات وت بھی 
کف س ےکیوکلہ اس ےش تقو یت قصوو موی سامت اک بات ضر و ری ےک وہ ای مال 
سے مر وک مو صھا لی سے اصصل لماع (با ) کی روات مر وک جکیگ ریا تبر بل 
ہونے سے وه رواعت تایح یں ر ے کی بل وه شاه ہن با جس ک درآ گے را 
ے۔ اٹ ام بالصواب 


ع ړو اتر "۷۹۹ ۰ھ 2 
ود جد من ری من حدیت صحابی آَحَرَ يبه فی الط 
المَعنی أو فی المَعْلی فقط قَهُو لشاید ناه فی الحیب الق 
قَْمُناه مَا رَوَاه النسائی ین رِوَايَة مُحَمّد بُنِ حُبَبْرٍ عَنِ ان عَبّاس عن 
الثبی صلی الله عَلِيْه وَسَلَم فد رل عَیِبٔث عَبُد الله ُن ینار عَنِ 
ان مر سوا هدا لفط -وآما بالمعُلی مار لحار ین 

7 رواة مخ مد بن زاو عن آبی هريره بلط فان عم لیم فا کیلرا 
عة شان لین ۔ وخص قوم الَمْتَابَعَة بِمَا حصّل باللفط سَواء 

گان من رِوَامَة ذلك الصٌحابی أم لاہ وَالشامد بمّا عَصَلِ بالمَعُلی 
ذلك ,وق بطق سابع على السام وبالتکس والامر یه هل 
ترجمه او کون هدب الیماپایا جاۓ چک دوسرے ھا ی سے مروی 
بو اف وت یس ما صر فن میں اس کے مشاہ موت ا سکو شا تم ہیں ء اگ 
مثا ل ال ردایت میں جن ںکا زکرم نے چپ کیا سے وہ ہے جس سکوا ما نا ن نم 
بن رن این يا یگن ال لی الیرم ےط ربق سے ذکرفرمایاہے او رحبد 
الد تن د ینا رگن این ر ےط ان وال روایت کے غا( و ی )مشاہ روایت 
درک اور میس( مشا کی شال )وہ رواعت ےک کو امام بخاری نے 
مھ بن ز اون ابی رڈ ےط ران سے ذکرفر مایا ہے نس کے رالفاظ ”فان غم 
علیکم فا کملو اعدة شعبان ٹلائین“ یں ۔ شحف رات نے متا بح تکوال 
مشا بت کے سا تیر ا سکیا سے جولفظا حاصل ہوخو اہ ای یا ی سے مرو کی ہو یا نہ 
مو اور شاپ رکو ای مشا بہت کے ساتھ خا کیا سے ج وحن حاصل ہوخواہ ای سی لی 
ے موک و با واو رض اوق ت شال تالح ت کا اطلا یقگردیا چات ے اور 
ا کاک کی گرا کا محای ہآ سان ے۔ 


ھ 


مر ‘U‏ 
اس عبارت میں ما فط این تجرّشا ہدک یتریف اور ا یکی مثا ذکرفر مار ے ہیں بعدازاں 
شاب راو رمتا می فر ق کی بیان فا بل گے 


شاپ رکآ ریف 


ایک ایا ن عد یٹ جو دور ےن صد یٹ کے سا تج لفظا اورمعتا دوٹوں ط رع با مرف 
مع مشا بہت رکھا موا ور وولو کر مد ول سے مروگ ہو تو ا سے شاپ ر کے ہیں ۔ 

ا کی مشا ل بے یا نک ےک بقل یل تم نے جود یٹ کرک ہ کے ”فان غم 
علیکم فاکملوا العدة ثلائین“ ای حد میک شاپ دہ عد یٹ ہے بے امام نما نے مھ 
بن يمن این عا کن اسر سے ب کل انیس الفا سک ات کر فر مایا ےر ہی 
عد یث ٹس صحاپی رت ابع گر ہیں اور دوسرکی می حطرت این عیاش ہیں٠‏ ہے بل 
ومنو یکی شال ے۔ 

شاب رحو ی کی شال وہ عد یث ہے >ے امام غا ری سے تھ ین ز یاون اف کے ر ن 
سے رف ایا ےک ” فان غم علیکم فاکملواعدۃ شعبان ثلائین یمتا شاھد ے۔ 


شاب راو رمتا میں فرق : 

اپ سوال ہے ےک شاب را ورای ٹر کیا ے ؟ 

توا یک جاب ی کرای ی فرق وہ ے جوا د ےکآ ریف سے ظا م مور ا ےک جاع س 
درج ابیت شش راوی وی ما ہونا ضردری ےگ تال بیضروری س کروی سا راو 
مو بک وو سرا کال مو 

کرت حطرات نے اس ررح کی فرق جیا نکیا ےک اکر لتنا مشا بت موخوا و سیا فی ودی 
ہوخواہ نہ و اس متا ہیں کے اور کر معنا مشا بہت ہوخوا سیا لی وتی بوخواہ نہ ہوا سے شاہر 
کی سک الہ رتش اوقارت استعالی کے دوراان ای فر ق کوٹ ہیں رکھا اج بل مالعا 
اطلا ن شا پراورشاہ کا اطلال متا کرد چا ے۔ 

کر ما فظ ان تجرفرماتے ہی لک ما + تکی زور ووتو ں سورت ل سے اس روای تاولقو ہے 
ہوئی ہے اور می اس ست قصوو سے جب وولول‌صورلال تلقصود حاصصل مور پا ہے تو اب 
آ پک می س کح صور تکومتا بد تک اور صور تکوشاہ رل اس می کح ع 
یس عاف کےقول "الامر فیه سھل“ کا کی مطلب ہے۔ والڈ ام 


ع ړو اتر رس ٹیس کٹ سنہ کی مر سس ی 

الم ان کے طرق ن لوب لت اید ابیت 
الْحيِیْۓ اَی بظن آنه رد للم هَل له متابع ام 9ء هو الاغتباز 
ول این الصاح مَغرقة الاغیتار وَالْمُتَابعَاتِ والشوامد قَد یرم 
الاغتبار یم لَھُمَا ویس كلك بل مر هي النَوَصّلِ إِلیْهِمَا و حمیع 
مَا ققدم من افسام الْمَقبُوْلِ تحصل فده تفییّمه باغتبار مَرَاتبع عند 
المعارضهة ۔ 

تو جهه :اور چان می ےک جا ئح ءمسانیداوراتزاء سے اس ص یٹ کے طرق کی 
حرش تق نکر شش صد یث کے باد سے لگمان ہے کرو دفر و ےک معلوم 
ما ۓکہ ا سک کوگی متائع (یا شابر )موجودے بل ؟ بی ( تع ) اپار 
بلاغ ہے۔اورعلا مان الا کا بیقر ”معرفة الاعتبار والمتابعات 
والشواھد“ اک با تک طرف مو ہم ےک اعقباران دونوں ( تلع وشاهد ) کا 
کم ہے عا لا بات الط رح نیل سے بک اتپا رز ان دونو لکل پہو ج ےکی 
کو اورت کوچ ہیں او رمتبو لک ی کی اقا م ہگ ری ہیں خرمقبو لک 
(ا نکی طرف م مو )فا ده تفارش کے وقت ان کے م راب کے یاظ سے 
یا ل ہوگا۔ 


اتبا رک تحریف: 

گذ شت عپارات کے ذ ہل شل ہے بیان موا کرت اوقا تی صد یٹ فردکاکوگی متا یا 
اہر ہوتا سے جو نکی وجہ سے اس هد یش تر دکوتقو یت مق ے اب یہاں ے ماف ماك 
کناچا سے و لک هک عد یٹ کے باد ے مس ےخیا لکیا ا کہ ہیف رد سے پل رکب صد عمش 
جوا »ماخ اور اج ال حلا کیا جانا ےک اس هد یث فرد کے ےکوی متا یا شال 
ال ال تع اورجلاش شکواصول مر یشک اصطلاع میں 'اعقبار کہا جا جا ے سن ماع اور 
شاپ ریک رساق لے ہین اورعرق ربز یک ہا سےا تع کا م اعقبار ے۔ 

علا مان الا رس ایک مقا م پر امک یات ذکرفر ال سب ہک هل سے مہ یم ہوتا سے 
کہراختبارءمتابعح اور شاه دک م چ ے بات نیس کی را نک میں ے ان کف 

رسای ےط ان اور وکا م اپار ے ۔ 


بائ یر یف: 


حسوامع : بیلفظ اک »مه تن کے پال جاح اکتا ب عد ی ل کہا جا تسج 
+« سکاب کے ائد رآ کے ابواب سے تلق احاد هشمو ود مول _ 


و کےا لواب ہے بل : 

(١)......الواب‏ التقا بر (۳).....الواپ الا ام 
(۱......)۳ یداب اشراطالماھ (۳)......ابوابال داب 
(۵) 7 اواب القير )...لواب الارن وار 
)4( ¥ ابوا پان (۸)......اواب ا تا فب _ 


ان تا ماداب پرامام قاری کی بغار ی تل »اک وجرے اس السجسامم 

الصحیح تلبخاری کھا جاک نے ال الو ب شاع یکو درخ ذ بل شع رٹل بت کر دیا ے۔ 
کیرآداپ یر وعقا رل قاط وا مومنا قب 

من دک تحریف : 

المسانید : مگ ہے محد شین کے پا من دا لکنا ب صد بی کہا جانا کرت 
کاش اماد ٹکو ما ہکرام کی 2 جیب سے گی کیا گیا ہو وہ تر تیپ خواه سائقیت ال 
الا سلا م کے اعقبار سے مو وام و۶ وف کی کے اشا ر سے ہہیا فضای تیل کے اختار سے 
ہو یا اقرب الب ال ای مکی اللہ علیہ وم کے انقبار سے بہوہ ان سب صورتؤ لوف سند 
ال ہے ملا ند امام ات ب نمل 
بر تیف : 

الأحزاء : رآ هگ رن کے ال جز وا موم“ احاد شرا اتا ےک ج 
مرکورہ بالا الوا ب نما ےش سک ایک باب کےصی ایک موضور] کی اعاد یش تل بو وه 
کی ایآ و یکی اعا یٹ تل ہوخواودوصحالی مو با ج بی و یرہ ہو ء یی صور تک مثال 
تب حزء رفع اليدين للامام البخارى و حزء القرأة للامام البخاری»دوسی‌صورت 
کی شال کے جزء حدیث ابی بکل ءوجزء الامام مالك-وفیرهوفیره- 


بو لک مک فا رو 
وجمیع ما تقدم من اقسام المقبول ۔۔۔۔۔۔ ال کارت ے ما فظ ان ریب 
الک جاب دےر ے ہی ںکخرمتبو لک وہ اتام نک درل ر چا سے شلا ی لز اسل 
حن ویر ان کے ذک رکا کول نا رہ خواہ فا کد وار ںآ ر کیو کے وہ سار یگ ساری مجّول 
ہیں ان یں ےلو مردودت ےیل ؟ 
اف نے فر مایا کہمتبو لکی مش اقا مک فا .دہ اس دقت حاصل ہوگا جب ان کے 
اکن آ ہیں یں نیا ر ہرگا و تی رض کے وت ان کے مرا ٹب کا ا اکر کے ایی مرح وال 
ری کواد لی رت رال ر یج بو ولد کم دالمویب 
YY‏ چا چا KF...‏ لو پر 
الول نشیم إلى ول به وغیر ول به »له رد سُلم 

من المُعَارَضَوِایٰ لم یاب خبر یاه فهو المخکم » وامیلته کیره 

ورد غورض فلا یخلو إِمّا ان کون مُعَارِصه مَمُمولا مل او یکون 

مرَدْود» واانی لا اثر له لائ لو لایر فيه مُحَالمة لضْعیّفِ » 

ور کات المُعَارَّضَهُ بمشله فلا یخلر مان بُمکن المع بين 

مَدلُوْلَيْهِمَا یر تسف أو لا۔ 

تر جمه :بولغم مون حول ہاو رغ مول ہک طرف :اس لئ 
. کک اکر وہ موا رض ےتفوظا ر ےق ام یکول ددایت نہ ۓ جواس کے تاد 

ما یق رکم ہے اورا سکی مشا بہت ز یادہ ہیں او راگ را یکا محار کیا گیا جوز 

پچ ر(دوحال سے )خا یک یتو وہ موا رش ای کے کل مقبول م وگا یام دود ہرگ 

اکر دوس رک صو رت »ول ال ےکوگی ال پٹ کوک ضع فک مخ لف تک۱ قوی 

ٹس تال +وج اور اکر وہ موارش اس هل ہو( حن یی صورت ہو )نو پچھر 

(وو حال سے ) نا یس با تو اف کلف ومشقت ال دونوں سے اولو ںک وع 

کرم کن ہوگا فک نکی بو 


سول ی دوسری ا 


یہاں سے ما فقو لک ای کیم بیان فر مار ے ہیں ا تیم ےلاو ےت رمقیو لکی 


عرۃانظر SR‏ و 
کل سات می خی ہیں ءا نکی وج تع راصو ر فش ہم اس عبار یش رن ر کے بعد بیان 
ESL‏ 


رمت رف: 

اس گرا رت مل حافظط نے فرما اک یج رمخبو ل کی اول وو ہیں مہ ںکہ ووک مول موی ا 
تیر مول یہ ہو اور ہلیم ای ےک یگئی ےکا سی رمقبو لکی ووصو رتس ہی ںک ا سخ رمتبول 
کے ما رکو روای نیس موی میق اک رن »ویک اس کات ونموم اس کے موارش 
ومتضادہوں لو ایی“ مول خر مو لاوت مم کچ ہؤں- 


رمک شال: 

اس مکی شا تپ عد یٹ مٹش بہت ہیں ٹا ل کے کور پړ وہ رواعت ہے کے امام کم 

سل روا گیاے: 
عن عائشة رضی الله عنها آن آشد الناس عذابا يوم القيامة الذين 
یتشبھون بعلق ال (مسند عائشه) 

ا کی د وسر کی صورت ہے کش تیو لک کی ایک ردایت سے موا ر کی گی موک من 
ونم اس کے متشاد مولو ا لکی دو صو یں ہیں ء یا تو وہ دومری تر موا رش اس ےش مقبول 
»یا دور دود چوک اکر تر موا رش مروود موز بی معارضہ فی رمعتر سے .وگل ر ضیف سے 
متارضہ سے رمتپول کون ال بت - ۱ 

ال تیوک بول کے زر بیہ سے معا رخ کیا گیا واو ہے موار هت ےک اس 
صورت می رون کے ےک اکر دوٹو ں یول خرو ں کو ع کر من ہے ران مم ق وق فی 
دیا مکی ا تاتف الہ یٹ کے ہیں ۔ 

اور اگ ووتو لکوت کر م کن ن بو پر ر زر رم وم آوعلومگر ان کت 
متلوم چا ۓ و مق مکو شورع اور رون رس 

01 کے زر لچران کے تم اورا رک م تہ مولو ویرت رای اور وجو 2 ت ے ان 
وونواں میں سے کی ای یکو ید ییا کی کو ند یکی ہے اس کو ران کے ام سے با دک 


عرڈاتظر مع سر میں بی دس شر ہت سے AE‏ 
جانا سے اورج٘س پرتز تی د یگئی ہے اسے مرجو کہا جات ے اور اگ رق ائ بھی سفق دہوں و پر 
ان کے معا مہ می فو ق کیا جائگا۔ الک فی لآ ےآ ری ے۔ 
وو KK‏ دج بر E‏ رد 

رن مک المع قَھُو الوم المسمی بمَختلّف الْخَدِيْبِ» ول له 
اب الصْلاح بحییب لَاعَدُوٰی ولا طیَرَة مع یب فر من المَحْرُوْم 
فا من لاد »و کلاشما فی السحیّح وَطَاهِرٰمُمَا لََاض 
ووجه الع ماک هنم الَامرَاض لا تَعَڈی بِطَبْعهَا لک الله 
ا قل محال العرذض بها للم سنا لاغاه مره ت 
هم ای اللا ح تما عبر - 

ترجمه :اکر ووتوں می یں ن موتو ا تلف الہ یٹ کے نام سے 
موسو مکی اج ہےء اورا یکی مثا ل یس علا مہ این الصلا رح نے لا عرو ولا طبر 

کیا مد شک رکیا سے اور اک کے ساتھ بی حد ت بھی رین اکر دم اکن 

الا وزارت ون E‏ کے کیل ے ہی کر ظا ری طور پر دوٹوں تیا رش 

ٴٍں اوران دولوں رت کی صورت بے س کر بش یماما لفط ری طور تخر 

او رپا و زی کر گر ارڈ تھا لی تق رس تآ و یکی مر بش کے سا تج خالطت اور 
نیل جو لکواس جا تکا بب مناد یب لک را ری شکا مرش اس تد رست کی 
طرف مت ری ہو ہا ے پل اوقا ت یی اب سبب ہے قل فک رتا ج جیا 
کہا کے علا وہ دوسرتاسیاب می لبچھی قلف مو ہے اک طرں علا مدان 
صلاع ے دوسرے ترا تک چرو یکر ے ہو ے ان دوو لآ عاد ہف ٹل 
تق ما ے۔ 

شر : 
گمذشنہ وج حصر کے اظقبار سے جوسمات اقام تنل ان 22 ےک رگام سے 


ان نکی مال وک رگ ےک ضرور تک کو ز ره اعاد یش میں اک اعاد گم بل“ 
اک وجہ سے حافظ نے ا لک مشثال وک ریس فر مال یکر یط ہم سند عا کش کے حوالہ سے شال 


تلف ال بی شک تریف: 

ال عپارت شش عافظ نے دوس ری مکو کہ فر ایا س ےک دوفوں خیروں کے با م موارضش 
ہو ن ےکی صورت میں اکر با بھ جع وک صور کان بو ال تلف ار کے ہیں ۔ 
لف ا لد بی ی شال: 

ا کی مثا ل جیا نکر تے ہو ئے علا مہابن اللا رح نے دوعا رق لت می ذکرفر مکی یں : ۔ 

۹ ...... لا عدوی ولاطیرہ۔ 

 دسالا فر من المجزوم فرارك من‎ ...... (r 

ان دونو ں مرول یں تا رل ہے کی خمریٹ اس با تکا ذکر سپ ہک مرش می تخ ی 
با کل تش م کج دوسری خم رٹ اس بات کا کہ س ےک مرش جذام یش سے اس 
ط رح پو ں طرں شرت چ ہو ان دوفوں میں می یف ہوم کے افیا ر سے تا رش ےکر ان 
شش وی قکیصور کن ے۔ 


ا( ٦‏ علا مراب صلا کی بیا نکر و میق : 

چنا ترا م اہن صلاع و یرہ نے ان دونو ل شل اس طر تل دک س ےک می عد بیش اس 
بات پر دلالم تکررنی کے یرامرافل بات خود تع ری کل ہو نے »اور دوسری صد یث ال 
بات پړ ولال تگررنی ےک اش کل شا نان امراف لکو دورول کک اناد نے ہیں اورا ںکا 
سیب یی با پھیمیل جول اورقالطت ےا ال خی کا عاصل رواک کی عد عف ” لاعدوی 
ولاطیرة “ مزال اورفطرآخری وتھاو زی ے٠‏ ادرددمری عد بیش "فر من المجزوم 
فرارك من الاسد“ شی سیب کے درج یل ال تحر ی وتچاوزکا اثات ے۔ 

کرش اوقت سل چول اورمخالطت کے باو جو دم مت کی تر ی س پا ہانی کون جب 
ل اوقات ا سیخ سیب سے قلف ہوجاتا سے چیما کہ عام طور پر دوصرے اسیاب کے اندد 
اس چ رک معا یدود بتاے۔ 

الک ال ہے مو اک عد تیش اول ٹل ال بات کا کر ےک ان امراش می فطری 


عرڈاانظم پٹپپ7 2 تب" 
طور تخد یل ہے اد رحد عث ای یل اس با تک شبات ہے نخالطت او رل جو لت اسیاب 
عاد یش سے ہے اس دوسریی عد یٹ ل جو :نے کاامر ہے اس کے مین ضعفاء ہیں ن ہے 
رخص ال حاصل ہے ان کے علاو کال متو٘ل حرا هت میس بل جو لت کول 

تقصان ده ے بی وہ ےک حور اکر صلی اوش علیہ یلم نے روم کے اتی رکھانا تاول 
فر ایا ےآ کے چ لے عافترا یک ایک او رل یا فر اد ے ہیں- ۱ 

لو KK‏ ...جا چک TK‏ 

وروی فى الحَْ بمْتَهمَا أن بقل نف صلی الله عَليه وَسَلَمَ 
لِلْعَدُوٰی باق علی عُمُوْمه» وَقَد صح قول ضلی الله عَلَيْه ولا 
دی َي یا »وق صل الله له سم من عارضه بأ بر 
الا جرب يكو فى الابل السَحیْحة فیخالطها فَتَحَرّبُ .یت رَد علیه 
بقوله: فُمَنْ آغدی الالء یغیی الله سُبْحَاتَ بت ذلك فی الثانی 
کم اه فی الاول- وَأمًا الفراژمن المَحْرُوْم فَمِنْ سَدٌ الدرائع ِا 
توق پلشخص ال بالط ی ین فيك مدير الله تغالی دا 3 
العذوی» یم فی الحَرج» مر بَحنبه حا لِلْمَادَة_ و الله عم وَقَد 
صنف فی هذا الع الامام الشافعی کناب اختلاف الْحَدِیْثِء لکنه 
م يَفُصُد یاه وصَْف فيه ده اه والطحاوی وَعَيْرمُمَا۔ 
تر ج سے :اوران دوفوں می فو کی سورت ہے ےکہ لو ںکہاجا ۓکہ 

تد بج امراف ضکی جوتضور اکر لی اللہ علیہ وسلم ےی فاگ ے دہ ا عموم پہ 
باق ے او رآ پ سی اللہ علیہ و مکا بقل ی سند سے بات ول چوک 
دوسری نکی طرف تع ر کل مون اوراکاطرر آپکایفرا نگ بت ہے 
ک ای ےآ دی ےآپ س کہا کرفارش او تر رست اونڑل س ہوا ےلان 
الط یکر کے انی لگ ای بنا دا ہے آپ نے ا یکا ردکر ے ہو ے 
فیک ی اون تکوس نے نارشی منایا تھا ؟ ن ای شانہ نے دوسرے 
اونف میس( بھی )ا کی ط رح ابتراء خاد پیدراغ مادک یط رج ابت اء پل اون 
مم پیدافر می ۔اورر امج روم سے ہی گے بت یح رذ وہ ورا واسیاب کے 


ع ړو لطر می RSS Se SASS‏ 

پا کر نے ےیل سے ےکم ریا کے سات کل جول کے وا اوی 
کو اگ رکو مرش انھا قا تقزر خداوندکی سے ایتا ءاخر ہے سفیم کے !غر لان 
جو جائۓ فو دہ ےگا نکر ٹیش ےکہ برع رق خالطت Ol‏ ہوا ےلو گر وه لد ے 
مرف لک عقیدہ ہنا نے اور وہ ۶ ر می لا ہوجاۓ قآ پ مکی ال علیہ وسلم نے 
روم( ریش ) سے ی ےکا کم فر مایا کے ج ی ہوجاۓے ۔ل( الد ی بتر پاتا 
ہے )ا نو للف الہ بیٹ مس اما شاق نے اختا ف الم یٹ نا یکا بی 
چا مدل نے استیعا بکا تمر تیک ںکیاان کے بعد این کیہ اور اام شاوی 
ور بھی ا ران سکتا ب یں - 


اس عبات مل حافظ ان تر ره دوقول صد یں میں اپ طرف سے ایک یق ذکر 
فر مار ہے ہیں ءا شی یکا هل ہے ےک بلعدیثٹ ”لاعصدوی و لاطیرة “ مل قدے 
امرائ کی جوقی سب هت سوم باق ےن فط ری طور هد هوک ہے ء اور تسیاب 
ہے درج میں تقد یہ ہوسکتا سے - الوم با مو ےکا مدآ پ کا تول مبارگ ے :* لا 
بعد ی شیئی شیعا“ کک مض می تقد ہاو رتھاو زک ملا حی تگال ےت 

اک ط ررح ا لکوم پ با مو ےکی تا تیر اس واتعہ ےکی ہولی ےک تضو اکر صلی ار 
یرمک نت ین یکس اور هآپ ےرا ا ای ارف رت 
اوتڑں میں٢‏ ہ ےل دہ ان س ب کا ری ہناد ا ےن تخد یں ہو ےگا وج سے دوصرے 
اون ٹف کی خرن ہا ے ہیں آ رپ اش علیہ وم نے الکو جواب کے طود فر ایک 
پیل اون وا مرش بای ؟ ن تخد پم شک ہوتا بک ینس طررج اش تھا ی نے اینراء 
نیل جول کے خر ی اوت یس تا رکا مر پیی افر مایا سب ای رح ابد اء دوصرے اونوں 
بھی تار کا مر پیا ر ماتے لها ںبھی راح تد کنیا ہے ۔ 

اور چا لتک دوسری عد يث ”فرمن المحزوم فرارك من الاد“ کان ےو ای 
یں میٹ ست اکم سد ورا ےتیل سے سپ ہک با فرش اک رکو آو یک مرب سے 
نالطت او رل جول ر کے ہو ے موور ںا اء اس سکو و بی مرش امرخ داو رک سے ابترام لا 


ع ړوار ک٦‏ م-ے موه موف aes cena‏ موه موی مد بو ما وم ومد A4‏ 
ہو جا و وهآ دی ہے کک ےک اک شید پم اس کے اتک ر ےکی وجہ سے لگا ہے حا اکا ےو 
خود خی ابنتدا اھ رخداوندکی سے لگا ےء جب اس ںکوم رش ےگا او وہ یقیدہ فاسدہ متا ےگا کہ 
امراش میں تخد براورتھاوز ہوسکتا ہے قرو« لعل سے دورر ہی ےک یکوش کر ی + سکی وجہ سے 
رج یش پا قیرہ اورگمان سے چان کیل آ پ مکی ال علیہ وم نے یم فیک 
بز وم( میں ) سے اس ط رع بچ ط رع شرت 2 ہو کہ سے سے ا سحقید ہ فا سد ہکا 

یادن ہوجاۓ- 

اس نوع کلف الد یٹ یس امام شاف نے ایک رسا لکا ے2 کا نام بی طقف الہ ہے 
سے دسا ہم وسوعۃ الا ام الا یکا ایک حصہ ہے ای رح اما ملما دی نے بھی اسان میں 
”مشکل الآثار“ ن مکنا یھی ہے او ای تیف علا ماب ق رگا ہے_ 

ا فی ہیل حرث امن ی بہت اہرت۔ چنا نچ ددفراے اک دو اجاد ی 
مر عم می کل ہیں ن کے درمیان تناد وتارش ہو لعز اج٘س کے پا کی دومتوارش 
ومنضماداعحاد بث ہو دور یال لا کے سان می ںیقی دید و اکر ا سفن میں ا نک کول 
کاب معلوم دوگ و ارام پا لصواب 

FE E FE YE... YE YE 
وان لم بمکن الْحَمُم فلا یحو مان عرق التاریخ أو لاء قد غرف‎ 
بت المتاحربه او باضرح منه فهر لناسخ و لا خر المنسوخ-‎ 
نش رم نع گم قرم بل زم شرع وین‎ 
مايل على ارف امد کر - سيه اسعاً مجاژ لائ الاح فی‎ 
۳ 


ا 4 لوت سی ھا وو و وہر ری وا 
اللخييقة هوالله تعالی ويعرف النسخ بامور: اصرحها ما ورد فى 


ووو > ورور۔ر ےے اہ اہ رٹ سم ےج ۔ ہے ر رر ها و ر 4ق ۶9 
لْقبُوْرِ فَرُورُوْمَا قإنها ند کر الا ره ومنها ما یرم الصحابیٰ بائه 
و۴۴ و مور ۔ ما ا سر مم رف مه و و و 
متاخر کقول خابر رضی الله تعالیٰ عنه کان آجر الامرین من سول 
ط رد ار ےم عو ہے ےہ ےر د و ه رو و 2 - 
گر ما ور 2 و ی و وو مقر و وس ره 
اصحاب السنن. ومنها ما یعرف بالتاریخ وهو کثیر - 


ترجھ :ار یق دیامن نہ ہو پھردوحالل سے نا کل یا تحار معلوم 


2 کل بل اگ رجا ری معلوم مواورال کے و ر مج راخ رایت موا سے -یاال 
ےکک رت ریت سے ثابت مو ہا ےآ دہ نا ے اوردوسری روایت مضورخ 
سے اور شرع نک کرای ای وت کے زر بے جو دنل اس سے 
متاخ ہو ےر ہلا ے اور جو چزال رئ عم پولا ت/رے دہ نا بل ہے 
تا ہم ا کا نام کنا با تپا راز کے کیو نامع درتقیقت اٹہ تا ہے اور ہے 
ٗی امور کے زر رمعلوم ہوتا سے :الع ٹل تسب ےھر دہ ہے جو ای 
مس میں وارد چیا کیج کلم لحرت بری کی صد یٹ ہےکہ شش نے 
یں تو ری زارت سکیا ۳ ہیں ابم ا نکی زیار تگیا گر و وہ 
زی ارت تیو رآ ت اردلا ے اوران میں سے ایک دہ سجن کے پادے 
ال لقن کے ساتھ کک ےتا سے جیہ کک حطرت جاب ری اٹ رع رک قول 
ےک عضو ر اکر می الطرعلیہ یلم کے ددامور یں ےآ رک امری اک ہآ پ نے 
آگ هب موق چ استعا لک نے کے بعد وضوکر نا جچھوڑدیا تھاء اصحاب خن نے 
ا سی زی ے -اوران ٹیش سے ایک دو ے جوا رڈ کے زر ل موم ہواور 
ا یکی مان بہت زیادہ یں - ۱ 
رما اورترضوخغ: 
یہاں سے عافظد ای نترب رمقیو لکی یسرک اور چگ رت اورت رور سے متعلقہ کش 
ذکرف مار ے ہیں جن دوقروں کے و رمیا ن نا ہ ری طور تی رش معلوم پہور پا ہوء ان شں با ہم 
تل قکیکوئی صور ین د مو چھران قو رر سی کان و سے مق دمکو نی ے اور 
مو لوی ے۔ 
نر کے باد ے میں کا رئ ےو ر ب ب قو ل ساف کے ذر بے اک اور با ط بے 
یوم ہو چا ےک هد یٹ مو الور ود ہے نو ا سے فرغ کہا اا سب»او رلک پادسه 
می ان ز را سے معلوم مو چا ےک ہے عد یث مقدم الور ود ہے و وخر ضور لا ن ے ۔ 


رن کتریف: 


پردولذل اساءلقظ رس باخوز ہیں ور ره ی ار 


عرو اتر ہی رٹ کی ا E‏ مہ ا 1 
یل کے ذر بیت کرو ینا چو ول انم سے متا خر ہوغ ہلا ہے اور ج چ ا گم ےم 
ہونے ولال تک کی ہے اے ار کچ ہیں چوکلہ پر مکونا ز لکر نے والا اورا سے تد بل 
کہ کے دوس اعم اجار نے والاصرف اللہ تیا ےل نارق اش ی ےگ راس چ روما | 

نا برد یے ہیں۔ 


کی ییا نکی صورشس: 

کی ییا نکی تن سورت ہیں: 

E (1)‏ ان ٹیش سے سب تاو کل اود اص رح سورت وه ےکا او رور ایک ہی 
نی آررززایع می موجوو بو اک مث لی سام میں موجووحضرت بر یر ری اٹہ ع دک ہے 
صدےث ے: 

”كنت نهیتکم عن زيارة القبور فزوروها فإنها تذ کر الآخرة“ 

ای روایت یں یل کم معلوم با راب ز مان مک حضور اکر مکی اللہ علیہ لم E‏ 
ملمانو ںکوقبرستان جانے سے فر بای تھا اک وایعت شی جچہاں یی مواد الا لکنا تھی 
موجود ےکا بے زیا رة الق روا اع مشخم م وکیا لہ اا ب قرستان یش چایاگردگیرگ ہا ے 
آ تک ی واورا کوسنوار کار پیا لی ے۔ 


رن کی پیا نکی دوس ری صورت : 


ایک کے بارے یل لین کے سار یمد ےک بد دایت متاخ سے اور دو سرک قد م ے لہا 
مو تر الورووروای تون 7 اور قرم الورودروای وشو صو رک جاگ ہا ںیشال یج 
کہآگ پر کل بو چز پاوضوم عالت می لکھانے کے بحر فا ڑکا ارادہ موتو دوپارو وضو کرت 
ضرو ری ہے یل -؟ اس کے بار ے مضو ر ارم ال علیہ یلم سے دونو یف مک روایا ت 
قول ہی ںکہآپ نے مامسته انسار کےاستقعال کے بعد وضو فر مایا اورآپ سے یگ 
قول کا پیل اش علیہ ول نے ”ما مسته انار “ ےاستھال کے پیر وضو وس 
فر مایا تو ا عم کے شمو نکی روابات یں تارش ےح رت جا بر ری اشدعنہ کے تو ل مہا رک 


ع ړو اشر و 

فالتخا کو کر کے ماع کی می نکر و یک ہتضور اکر مکی اٹہ علی ومک بش با ہے شش 
آ خر یگل بتک ہآگ هپت کو انتما لکرنے کے بع رآ پ صلی اش علیہ وسلم وضو 
فر ما سے مخز سید انار کے تال کے بعد وو وک کال مق دم ہے او رور ہے اور 
اس اتال کے بعر وضو کر ےکک متا خر ہے اور نا سے - اس روا تکوقمام اصحاب 
اشن ن ےنرم کی ہڈا پ ا ےکن ت نر دایودادد ش ل بھی پڑھیں کے _ 


رک با نکی تس ری صورت: 


زر لہ ہے معلوم ہوجااۓے کوک تمرم ے او رای موف ے جومقدم بل ورعضو رخا 
گی اور جوم وخ موی دو تار ین ےگی وم ایک حد یٹ می ں حور اکر صلی ادن علیہ سلم نے فر ا 
ام انتا راس 

کہ یآ نے وال اور لگا ۓے والا ووٹو ںکا روز ولو چاتا ےگراس کے توا رک اک 
دوس رک روات سآ تا کہ 

”ان النبی م احتجم وهو صائم “ 

ک حضو ر اکر صلی الف علیہ وم ما لت صوم یس یی وا ہے بیک ونت ان دوفو لب 
ملک کل ےء اوی کیک یکوئی صور مک ن نہیں ہل امام شاف رک 
جد کا ز مات ور ود چوگ ,2۸ ہے مہ دوم رک صد ع کا ز باه ورود لج ےءہٰذا 
bt‏ اس تا رل کل رواعت مطسورغ ہے اورد ورک رایت نا ہے اور مول ہے ۔ 

( شرت لی القاری ) 
لو TE YE E E YE‏ 
ویس منها مَا یره الصحابى الما خر الاسلام مُعَارِض لدم له 
لاختمال ان حون سیعه من صحخابی آ خر ادم من الْمْتَقدم 
الْمَدُٹجوْر وَمِئْلَۂ قَارسَلَه لکن إن وفع التَصْرِيْخ بیماع مِنْ النبی 
مه َة آن يڪو تاسخا بط ان یکود لم يحمل عن النبی تله 
بل ٍشلایم میا وأا الاجما غ لیس بنایخ یلیل على ذلك - 


7 


(. تمہ اور لنش سےکیں سے وو روات کون رالا سلا م سی نی 

روا کر ے اس حال غ لکروه حتفم الا سلا م “ھا کی روایت ہے موارش مر 
کیو ہااس ‏ برا ال مو جود کرای ےہ ای مال سے برد ایک ٭ 
اس زم الا سملا م کا فی سے بت پیک اسلا م لا یا ہو یا( اسلام لا نے بیس ) اس 
کے را #واورال نے اس وا تکوم رسلا با نکیا وین رحضو ر اک رم کی اللہ 
علی دم سے اس سا روایت پرصراحت مو جود موز ریت جک جا یک 
وه ردایت نا سے بش کہ اس نے اسلا لا نے سے می حضو ر اکر مکی الد علیہ 
لم ےکی پچ کل کیا مواورہ برع روت رل بن سکتا وال 
ولال تاج 


نل تق ال سلام رن کیل ےکا فی س : 

هل سے اظ ان تر بیان فر ماد سے ہی ںک گر متا خر الا سلا م معا اور محقم الاسلام 
اک روایات هاش ما تو کی متا الا سلا م سی یکی روات نا گی ال ؟ 

تو حافظ نے فر بای کے متا خر الا سلا مکی وہ روایت چو تقزم الالام صحا ‏ ی کی رایت کے 
موارش موو و حتقڈ م الا سلا م سا یکی روایت کے لے نار یں موی کوک متا خر الاسلام 
م رک ےکا یں سے »کوک ای میں اس پا کا خا ل مو جود ےکا متا خر الا سلام 
ما نے دورواییت پراہ راس حضو ر اکر مکی اشرطیر وم سے نہک وی رال نے وہ رواعت 
کیال ہوجو اس تقزم الا سلا م ( لک رواعت محارش سے )ےکی حزم 
ہو یا قزم فی الاسلام یش اس کے براب موتو تا خر الالام سعا لی نے اپنے مرو ی عنہعھا ی کے 
واس گت کفکردیا ہواور براه رات و وضور اکر صلی اللہ علیہ ولم سے روا تکرر پا مولو ہے 
روایت ورتقیقت مر اکر بلق کے متا خر اسلا ماک روا تک نام مان لی تو 
ان مقامات شی چیا ں سا ےک را حت نہ مو ا کات نک ےم نل وا قح بو _ 

ال اراس متاخ الا سلا م کا لی کے ہار ے میں الک مرا حت مو جود ہوکہ اس نے حضور 
اکر مکی ال علیہ دیلم سے سناہے بشرطیکہ اس نے اسلا م لانے سے پیلےتضو کرس مسلی ال علیہ وم 
سے دنہ سنا ہو ال‌صراحت مار کی صورت ٹیل اس متا خرالاسلا مکی روا کو مھا اک 


کیا ماع نا ین سکتا ؟ 

عاف نے فرمایاکہاجماع کے ذر بی کسی عد کوعضو رخ ںکیا جا سک ,لد امار د اع 
ہے گا اور یک یکومضسو کر یکیو ال اجماع سے اجماع امت مراد ے اور ام کی ابص 
وسور نہیں ق ار د ےکق + سکوحضور اکر م سای اللہ علیہ وم بیان فر ای ہو اض 
قرات نے اجار کے نار ہن ےکی علت ہہ ینف ماک ےکا جا حضو ر اکر صلی ال علیہ 
وم مکی وفات کے بعد سے منعق ہونے لگا مگ رر تو حطر کی وفات کے اتک مرح ہگیاء اس 
کے بعراو ر وخ نہیں ہوگا_ 

برع رال تکرتا ہے ن اما کے زر برای خر اور رواعت کے وجود پر 
دلاات 4و گرد روات کے ذر لیر وا ہوا ہےء چنا خضرت الو پ ریہ اور رت 
معاو یی روات ۶۴ص٢۲‏ ہے لا ۶آ دی چگ مرت شراب ہے اس لکردیا جا ہے“ رب 
روایت بذ د لچہا بقاع ور ہے وکا متا کے د ا علوم ہوا کر ہےر وات غر مول 
بہ ہے ئن ال دوا تک تا براجھا لس بللہامام تک فرماتے ہیں چ مرو لکرم 
ا وال اسلا مک محا مل گر بعد می ہضور ہوگیاء چنا نچ ناسا مھ بین الد ر کے 
مر بی سے مر وی ےک عضو ر ارم می اللہ علیہ و نے فرمایا: 

”إن من شرب الخمر فاجلدوه؛ فان عاد فى الرابعه فاقتلوه * 

راس کے بععدامام تر ھی نے فر ایا کہ بعد از ال ایک ایا آ وی حضو ری ار علیہ ول مکی 
خدمت ٹل لا یا یا نس نے چگ تراب فاگ آپ نے ا سکوکوڑے مار ےگنن ہیں 
فا تو حضو ری اللہ علیہ وکا موخر رل اس کے لے ناس ہے »کل تم برع کے 
زر نموم ہوا_ 


Kr... وی‎ ۲ 

۳ 7 و DG E‏ ۱ 5 ہےر رو گار 

ود لم بُعُرَفِ التاریُخ فلا یخلوا ما أن یبمکن ترحیخ آخیهما عَلی 
€ رو مر و و قرو و وع کے 7 ۳۹ وت کوت 
الاخحر بوجو من وجوه الترجیح المَعَلمَة بِالْمَتنِ أو بالاسُنادِ او لا 
کر گر سے رڈھ و ها مق مس ؛+۔ وا )هد مگ ۱ ی 
فا اکن الترحیخ تَعَیْنَ المَصِير یه ولا فلا- فَصَارَمَا هره 
اعارص وَاقعاً علق هذا اتیب لْحَمُم ِد أَمُکنَ» فاغیاز لناسخ 


ع ړوار ا ا ا ا ار ا یھ زی 
والتشوع ناشرجنخ تین نم اس رقف عن الل اعُد 
الْحَدِیْتِیْنء والتغبیر باقن ألی من التغبیر بالتسَافط لا عِفَاءَ 
آخ یمتا على الا خر نما مر باه للم فی الحَالَة راهم 
اخجمال ان یه ليرو ما حفی عَلبه۔ وله عم ۔ 
تر جسمه :اور اکر ری معلوم نہ ہو کے برو وھا ل ے نا یک لک یاى ان ۰ 
۱ یس ےی ای ککودومرے بت دیامن بو جا کی ان دجو میس ےکی 
ایک وجہ زر ی رک نکن نس با اتاد سے ہوگاء بات یاک یں 
ہوگا, یں اگرتر دیامن موتو بی صورت ان ے او راگ نہ ہو پل و 
جن میں نا بر طور تا رش ہو ا نک 7 تیب اب الط موی ےک (ادق) 
تق اکن بو پھر یا اورضسوخغ فان تی صورت ےاگر 
کل ہوجاۓ ء پر ووتوں مد یرل س , ,0 
میں نے ت فکا درجہ ے۔ اور ق ف ک یرتا ق رک جر متا بے میں بہت تر 
>کوگران رواتوں مل ےک ای ککی دوسرے پر (تز ٹج کا )ی ہونا 7۶ 
در مت رک موجوده حاات کے اعقبار سے سے ما آ جم اس کےساتھ ہا حال کی 
مو یوو کرای کے علاو وی دور U EE USE‏ 


ھ 


مر 
ال عبارت میں جا فط ان رخ رمقبو لکی پا نچ عم ( دار )کی م (مرجور)» اور 
سا میم( موف فیہ کیان ف مار ے نب - 


ردان اورشرم رج : 

جارح دغیرہ کے ذر یہنا اور و غ کت نکر کن ران فور 
تراک مرک زر پیر دوو ل عار عد یل هلک حد ی ثکودوسری عد یٹ پر اد ینا 
کن موق ران تر انی اور وج ہک وجہ نے ای ککوتز تی دم گے اوراسی کے او پگ لک می 
گے_ وولوں می جس عد بی توت د یکی ے اے را اورک پر یق ها 
ان ی 


وار ا ا ا ا RET‏ ھا AF‏ 


راکم اقام: 

رای مرج ا ورو جو وتر کی وو یں ہیں : 

۹ ۳۹ ای کیج وو ے سکن مث ے شلا ان ووتمارش عد ں س ہے 
اک مد یش کا تن شبت سے جب دوسری صد بیش کا من نی مق پبل وکا عائل ہے نو اس 
وت هل روا یت شبت رارق مو ے اود نان روا یت مرجوں مون ے ۔ای طرں خلا ایک 
روا تح زم( رامق ارد ہے دالی ) ہے جہ دوسرکی رواییت کی( علا ل قر ارد یذ وال )ےلو 
اس صورت غل روات یی کورااورروایت نز موم جو ر ارد ی گے _ 

۴) .... دوس ری اض وہ ےج لکا صد ی کی سند سے ہو ملا ان دوتوا رش روا ول 
e‏ ےگ رای عفت کنیس کے سا ترصف ےلو اس اع روا تکو 
تر زع درا اور دور یکوم جو تر ارد یی کے ای رع ان وتا رش روایتول شل ے 
ایک روات لفظ ار کی صراح کیا تح مر وی ہہوگردوسرکی روایت دوم ےر طہا سے تم بعش 
مرو ہو سار وای روا اوران اور دوس یکو جو عککیں گے _ 
موف ف: 

او را رک طر یق سک تیان دق بک ان دو ل مد لش ےکی 
ایک پ۰ لکر ن کول صورت ا ہرنہ مولو ان دوفو ں لت سکیا ہا ییا بلک کے اعتار ے 
ان شش و ت فکیا جا تگااوردونوں رو ایو ںکومتو قف فی ہیں کے _ 

اف ال جو ق فک آجی را قیفر ہا ے بی سا قط او دسا ق ر کآجی ر ےبقر کی 
یہاں ان دوروایجوں یس ےکس کرک جو رل د یکیو ا کی دج یہ ےک اس ھر حر 
مرن سا اس وقت ان غل سک رداعت کون ور ت ا رل مو یکر ای س 
کی کن ےک دوسرے وقت ‏ اک مث کے ساس ول دجہت تی ط ہو جاے اکل 
دوسا محرث الک بی کی عللت سے واقف ہو با بعد غل واقف موا ےا اس فحاظ سے وہ 
عد یث را اورت کل ہوگی ۔لہ ١ا‏ ی روا کو قو ف فہک ےکا مطلب ےک نی الال ان 
شش ےس یک ت م افش ہو کے برا ڈیر او رتا یی می ال دوصرے اقا یکا 


ع ړوار امم ما ما مس تام ات ای ا AS‏ 
تل مون هل کوک تسا قط وساڈی کلم اور روات کے غیرمعمول ہے ہو زک اترا ر اور 
روا بے ل۲1 ے عالائلہ ها دوا مل ہے کل روبنز جح کا وران ہے اور ج ےت و رکا 
امکانع ےلو نم مول ہے مو نے کے دوا م او را ترا رکا اما یل .له ااس ے عابت 

مو اکسا قط متا بل ستو ق ف یرتسب 
رمتول کی یک خلا ص : 

٦خ‏ میں ماف رمتبو لکی بک کا غلا ص ذکرف مار ے پک وہ احاد یٹ ہن میں ظاہری 
طور پر تار ہوتا ہے وہ منعدرجہ ذ بل تر تیب کے اتبا ر سے چا راقسام پہ ہیں ء »ال اس تا رش 
کے سات ”ظا ہرک طور ب کا گرا ےکی کی ےکس الا مرش تم دوسر ےم سے 
تیا رآ ہوتا ےاور یوی نشی دوس رین کے متضاد موی ے یک می ھا ہرک فاظ ہے ماری 
کرای او رتا دشک وجہ سے هار1 تم وه تیب ے۔ 


جا گیا۔ 


جائیگا۔ 

رتو دہ نہ بج ہبہ دی 
م مود مب الرد مان کون بیط من ناو رطع فی 
زاو غلی اشیلاف رو لسن مین ان کر لام برجم للی دیا 
الرّاری أو إلى ضُبّطه - ۱ 
تر چجهه: پرمردوداورمو جب ارو( دوعال ے غالک لک )با تزستر س 
تھی گی ا ےکی مومت مرکا ی اوی می لن نکی وم دح بر 
وچ کے اتا فک ینام پ اس بات موم کے سا جح کہ یا تلا کی 
ای اھ رک وج ہو جو راو یک دیا تک طرف را ت مو یا راوی اک 
طرف را »و - ۱ 


ړو الظر E‏ 0م میس ھی سیت REE‏ 


رمدو رکا بیان: 
ماف" رو ل کی اقمام سے فادرا ہونے کے بعد اب یہاں ےن رمردودکی اقمام اور 
ان سے متلقہابحاث فک رف مار ے ہیں : 


دود ہو نے کے اسیاب : 
کار کے مر ووو ہد نے کے دوسبب ہی نک یا ٹڈ ان سک ٹر کول را وی اکر مگ ال 
کی سند ےکی راوی می کول تن ہوگاء اس لع یکی صورتس + ہیں جن کا زک ۲ یکا 
ان سو رتو ں مج سکن ضط راوی سے چاو کات دیات راو سے ہے ان 
س بک او زی یں دج کے نقشہ مس ملا حظہفر ہا ہیں » اس کے بعد ا نک یتیل ہیا نکی 
جا ۓگی: 
خر دود 


ردسقط راو یکی وچ ے ہو معن راو یک وچ ے ہو 
بلس 


: ۱ ۱ 
طا وا وی وجو جن ن کل دیس ہیں 


ا 7٦‏ 
ال کی چا ریس ہیں ایک دی ہیں 
چل YE YE‏ ...و ا بجی 

فالسقط ما يحو من مَبَادِی السْند من تصرف مُصَنَف أو من 
آجره أي الاسناد بعد التابعی أو غَيْرَ ذلك قالاول لمع سَوَاء كان 
الاقف واه ام وَبَیْنَه وَبَيْنَ الْمْفْصْلِ الاتی ذ کره موم 
و خضصوّص من وجو فمن حیث تغریف الْمُمْصَلِ بان سَقَط مثه نان 
قضایدا نختیع تم تع ور ال وین عبث تقد ال بان 
من تصرف المَصَنّفِ من مَبَادِی السند يرق عنه اد هو عم من ذلك 
تر جمه : بر تیا یاو مصنف نر فک وجہ ےس رک ابت اء ٹل وکا ا 
سنر ے٢‏ خر میں ج بی کے بعد بہوگا یا ان کے علاو کول تیسری صوررت موی 
۔ بی صو ر ت کا E‏ مات ہے خواو سا قط مو نے والا راو ایک ہوخواہ ایک سے 


عرجنظر جس سے ی ی O‏ 
زار ہوں‌اوراں اق اور ( + لک زک رآ یکا کے ورمیا نموم وخصوص ۱ 
صن و کی ست ےء ہیں حضل کی ا ںآ ریف فا س ےہک یک با الیک 
سے ات راو سا ڈیر ہوم بل ( تو و تل ہے )ینک ایک صورت کے 
سات جع ہوچائی سے اور ( کی ت ریف ) یں ال تقه کی وجہ کرال 
(معلق) میں ست رک ایام س مص ف کی جاب سے چو تصرف ہوتا ے وہ 
محضل ے برا اور ہاب افزاقی میں بوجا ی سے ال لے کہ وہ 
(معمل )ال( ن )ےا ہن دج ہے ۔ 

توا رم کے اعتپار ےت رمردودکی اقمام : 

پال سے حافظسقط وا کی وجہ سے مردود ہو نے وای ٘مرکی اقمام ذکرفر مار ہے ہیں ءسقط 
وا اقب ےت رمر ووو یکل پا میس ہیں : 

(«)..... خر (۳)..... تر مکل( )...محل (۳).... خر فطع 

ا نکی وچ تصریہ ےک داو یکوعذ کر کال من سیا را وک سن دک ابت اء شل مصنف 
کے تصرف سے وگاء یا یہ سقط راوی سند ےآ سے ہوگاء یی صورت علخ نج اور 

72 ی صصورت میں چ ر مل و ۱ 

اورا راک یاوق ل خر مرن ول سے اور ار ود کرو 

کد عزف »ولو تفع ہے۔ یمق یکا کل ہے۔ 

کرادت میں ماخ نے کی من رکو ان فر ایا اورا یکی ا صطلا یآ ریف ال 
ضرع میا فر مال ے۔ 
مل کی تھریں: 

جد ٹک یناب هک مصنف نے با تقد سن رک ایتزاء سے ایک با چندداوی جز فکر 

د بے مو ںو اک هد ب شاوخ ر کہا جانا ہے ملا امام فارگ نے ایک روایعت اس رع بیان 

فا : 
”قال لی یحیی بن صالح :حدئنا معاوية بن سلام :حدئنا یحیی بن عمر 
بن الحکم بن ثوبان سمع ابا هريرة رضی اللّه عنه :اذا قاء فلايفطر“ 


ع ړوار ٹیمس موس اه مت مک IRA eee‏ 
یت امام قاری کل سند کے سات اک رج ہے رات خر اق ی شال ال 
رع ہین کرام با دک شور کے روا کوحذ فک بل فا : 
”عن عمر بن الحکم بن ثوبان عن آبی هريره قال :اذا قاء فلا یفطر “ 


یرک الک چنرصو رت ہیں جن نکا ز رآ ےآ ر اہے۔ 


علق او محل ثل‌نیست: ۱ 

بطق ور مضصل کے درمیا نموم وقص و من وج کی ہت .تفیل سے پیل مر 
متس ل کی تریس کین _ 
تل کی تھریں: 

+عد یٹ کی سن دک درمیان سے یا رور سے دو ےڈ راوی کل پا درپے 
عزف »و ہوں(خواومصن فک تصرف بویا ہو ) و تر صعمل ے 

جب تنعل اورقرمعمل کے دورما ن گوم نول من وج کی تبت ان کل 
کن مادرے ہیں کے 

۹ خی ماد ای گی :اگ رکوئی مصنف سر کے اوا سے دو یا دو سے زان راولو ں سل 
په دا پےے عذ فکرد ےو ا صورت ن رمع بھی صاد قآ نی ےا و رصل بھی _ 

(r‏ تک پہلا مادہ افزاقی :اگ رکوک مصنف سند کے شور ے صرف ایک راوی عزف 
کر سیک سے زان دکوعذ فک ےکر چ دد لزان دوفو ں صو رتو ں مر فق راق 
رک جم 


"س0 پوس یت ان وولو ل‌صورول 7 
محعمل ماو قآ ہے :ن رن ساد س ٦ن‏ _ 

یہاں جوت کا اورق حل کے د رمیا نعموم وضو تن دی نبت میا نگل »ال 
سے مزا ط کا اصعلا قگوم وتو کن وج مراول ے ہلگ اک سے صرف ”محرد الاحتماع 
فی وصف والا فتراق فی وصفٍ آخر“ مراد ےسک ووتو ں تمو لک ایل صورت 
(وصو السقوط على التوالی) لن ون اورووصورال روهو السقوط لاعلى 


التوالى) یں جاو مراد ے _( ال القاری:ص۳۹۲) 

0 ی ی 
وین ور الْمعَلي أذ بُخدت یع السند وبمال مَقلا قال رول الله 
صلّی الله لو وعلی آله وَصخُبم وس وَينھا أ يُحْدّق إلا 
الضحابی» أو الشابعی وَالصّحَابیٔ مَعًا۔ وَمِنْهَاأن یُحَدف مَنْ عَڈئۂ 
ویب لی من قرف ون گان مَنْ قوق يخا ِلك المُمََفِ فَقَدٍ 
اختلف فیّه َل بُسَمُی تلا أو ل۴ وَالصٌحِیْحُ فی هذا التَفُصِیْل » ان 
شرف بالنص أو الاسْیشرآء» إن فاعل ذلك مُدلسَا فضی به» وإ 
کم شیم د شرف پان ی٤‏ شسٹی ین وجو ری 

تر جصے اور نک صورتڑں شی ےایک یگ ےک( ر وای تک پور 
سند عذ فک د سیا سے اور یو ںکہا جاۓ مخ تال رسول ارس اولہ علیہ وم 
“اوران ( صورتڑں لت )کی ےک ا لی کے علا وہ صحا لی اور ی کے 
علادہ پوری سن مذ فکر د یا ے اوران( صورلال میں سے )یی ےک راوی 
اپنے مروی ع دکعذ کر ال سے او پر والے راو یکی طرف نس یکر دے 
-ا راو والا راوی ا ممت ف کا استاذ ے نواس میں اخلا ف ےکا یکی اس 
ترذ کے با ہی اي ہےکراس یتیل کرٹ ا راہ 
سے یتلوم ہو جا هک رالی‌طر کر وال ارگ من ےت نز سکم کا 
جاگ وزو ہے اور کش رم ردو رک اقا م میس حرف شدہ رای کے 
عالات سے ناواتفی تک ہتاء پر ذک کیا چا تا ہے -او را وم شور ہو چا ۓ نو کت 
کم ایا اي ایی در ہک ک ووسر سند مم اس (حذز ف شد و راوی )کانام 


آجاۓے۔ 
تر 


اس عہارت میں ما فت نکی چا رو رس بیان فر مار ہے ہیں اورآ خر ٹس اس با کک 
ما نکر یں مگ کت مت وق رمردودکی اقا م میس ای شم > طور ہکیوں فک کیا جانا ے۔ 


ری پا رصورش: 
۱..... می صورت یر ےکر مصنف عد ی کی لور ی سندحذ فکر کے لول کل ”قال 
رسول الله ٹل“ الوں سک ”فعل رمسول الله تاه کذا“ بالوں گر ”فعل 
بحضرته پل کذا“ .نع یکی اس سور تک شال شس امام بغار یکی روات دک رک انی 
ہے سکوامام با رک نے سندعذ فکر کے ذکر فر ایا 
. ”قال النبى تله :لعل بعضکم لحن بححته من بعض “ 
(r‏ کی دوس ری صورت ہے ےک مصنف صد ی ٹک لور سند عز کرو ےکر سی یکو 


مز ف تک ےا لول کے: 
ہد لسن مر فان فا لوسر لاله تا 0001( 
قبل العصر اربعاً“(الترمذی وابو داؤد) 
یت کی سی کل سک سای رکه »ها یمتا ےسیک رن ان 
یس رومز فکیاگیاے۔ 


(r‏ 7 تس ری صورت بے سب ھک متف مد مک پر ضرع کرد ےگ ال اور 
چ بی دونو ںکو فک رک ےا نوعرف دا ےت 

۴) ...چگ صورت ہے س ےکہمصنف اپے استاذ اورمروی عنہکوعذ فکردے اوراس 
روا کو باورا ست او پ وا ے راو یکی طر ف ضو برد »لورت س تفیل ے 
: 

الف : ار او والا راوی ات( عذ فک نے وال ) مصن فکا اتا او رم ہو اس 
سورت میں دہ پا لا تھا تن ہے۔ 

ب : اکر اوی والا راوی ال (عذ فکرنے وال )مص فک اتاو اور ی موتو ال 
فو رت میں !ےت یل نکہیں کے بای ؟ 

حافظ این تر نے فر ما اکاک شی اختلاف ہے ہراس بارے می کچ قول ىہ ہ ےک ہاگ ری 
امام الد یٹک صراحت یا ا تراما ورک لع سے وم ہوا ےک اکر جز یکر نے وال 
مصنف یر سکر نے میں ہو ر مون دہ یراس موتو اس صورت میس اس تروق ںہیں کے 


عرڈالظر aR‏ تھا م7 
پل ا س خر ریسکا عم 6 میں سے۔ 
اوراگ ران سک ون ہونے کے باد سے می کسی ابا مر کت نہ ہو اور استتقراء اور 
ملع ےبھی معلوم نوت اس صوررت میں اس کے ا سک لکوت یل اور ووروایت 
من مرگ _ ۱ 


ر م وود زمر کے ن مان ےکی وج : 
یہاں اع را بی ہوتا کت ن اپفی بق اقا م کے مات ردد وکال ےا برا سکوقیر 
مردودکی اقام لکیوں زک کیا چا ے ؟- 
عافڈ کے جوا بکا اکل ےکن ٥‏ کوخ رمردودکی اقسا م یں ال لے دک کیا چا سے 
کن رک سند ےی راو لکوعذ کرد یا پا ہے ائس راوی کے تام اورال کے عالات 
ےم تاوا قف ہو 2 ہیں ء بی ال نا وا تی تک ناء رم سے رم رد ود می شا رک ے ہیں - 
علا وہ از خ رع خرقبول میں ےنیس ہے بل جہا نہیں خ تل قکوتو لکیا جانا ےا 
وال خار کی ا مور کےاعقبار سے اس قیو لکیا جا جا سے مشڑا من آعلیقا ت اک کول 
ور مون ہی ںکہا کتاہوں می “ح یکا الت ا مک یا گیا ے شلاتعلیقات با ری یا وق 
ووسر کی ایک ند کے سا ت یھی مر وی مو ے ہنس میں اچ 1 ہوئی کان ری سد مکورہوئی 
ےی طف شده راو یکات مکی کور ہوتا ے۔ 
اک وجہ ہے اگ ریخ ان کے بارے میں معلوم ہوجا ےک وخر ای سند کے ساج بھی 
روک ےکی ل وه عذف شد و راو تن سے اورا کا نام زک رک یاگیا ےل کچ راک تی کو 
تک که باس تکام 6کرا سر کے ہیں - 
TE‏ نچ نے دی خی بی نود 
رن قال :حَمِیْعْ من أَحوفه ثقَأةٌ ءجَاءَ ث مَسُفْلَه التعُدٍبْلِ على الابهام 
ند الم یل عتی سُمیَ» لکن ال ان الصلاح هنا ند و 
العف فی کناب ارت صحف کالبخاری وَمُسُلم ما ای فيه 
بجزم َل على آنه بت اده عند نما خدّف لِعْرّض من 


2 مہے رگ 7۰ و ماو مرو رس لا ہن 2و گر ما زر و گا ھ٭ے 
الاغراض, وما الى فيه بغیر الحَرّم فَفِيْهِ مَقَال ء وَقَد اوضحخث امُبْلَهَ 


تر جهه :۹( خن ) کاراوی کک جتے راولو لکش نے مز فکیاے دہ 
سب فلز کم دا لو ں کی تخد کا ملس اور جور کے نز ریب بول 
ول ہے یہا ںک کا نکنام کیا 2 ین علا مہ ابن الصعطا ره 
اس مقام میں فر مایا س ےک اکر زگرہ دو یو ںکا حذ فک ال یکتاب می موک 
+ کبک تکاالتزام وا ما مکی گیا سے تی ےکنا ب بخاری وم ,تاک 
یاب میں جها لتق ین اور رز م یغ کے سا تھ مولو وه لین اس جات بے 
دلا کر تا ہ ےکا کی صاح کناب کے پا ل اس عد مث کی سند ا برت او رموجوو 
ےگ ری وجہ سے اس نے ال کی سندعذ کروی ہے اور جو یقن اور ج م کے 
سات نہ ہوقو اس می لا مر تخانش ہے میس ( این تج )نے ا کی لول 
کو( پت کناب ) النک تی این الا رح یں وضا حت ے ییا نکیا سے ۔ 


تحر پل" کابیان: 

اس عبارت میں حا فلا نے خ را کی ال صور تاو ذگرفرایا ےک نس مج سکاب عد ہف 
کے مصنف نے ب یلہا وگ حمیع من احذفه ثقات “ ہل نے جت راو لو لآوعز کیا 
وه وف تام رادئی ڈت ہیں ءااسقول سے مصنف نے مز ف شد دراو لو ںک نو شی نکی ہے 
> شلا اححبرنی العقہ ال‌صور تور شین کے پاں' تور للام کہا ہا ے۔ 

ققابرگرصر ‏ اور خلیب بفدادی کے مول بو رکا نہب ہے س ےک تخد یلیم اس وقت 
جک مقبو لکییں ج ب کل اکم راو یکا نام یا ا سک یکنت اور لقب زک کیا جا ے کہہے 
کن س ےکہ دوم راوی ال یکر وا مصنف کے نز یک وت بر دوسروں کے 
دیک لق نہ وء ہاں جب ا یکا نام وکنیت اور لقنب زک کیا ای تو ال کے بعد اکا عال 
وا موکرو ہق ہے نش - 

الت علا م راہن اللا ع نے مود کے مہ مب سے ایک اشنا ذک رکیا ے اوراس اشام سے 
علا مرا م پر ددکر ا مقصود ہے چجی اک ابی ذک رک گا ۔علا مرب ارگ نے اپنے عاشیرٹش 
ت اک الصلا رع کےقو ل لو کہا ہے اوران م و لک خی می کہا ہے ۔ 


e Ra  صص7 عرجرلظر‎ 

چنا نا مراب الصا فرما اک ہاگر کور ہ ف لیا ان یکناب میں داع بوک 
+ سکاب کتک اترا م اور اجتما مک یا گیا ہو مل لاب بنا رک کا ب سم لب ا انی 
اب میں جا مروف ےا کے کور مء لان اور ج م کے سا تھ ہو ے ال بات 
کی علا مت سک مرکو وخ مع کی سند اس مصنف کے پال مو جود ہے یراس ےکی ناش 
غرض اورمقدد کے نظ را لک سن رعذ کر دیا از او مت مل قول ہے۔اورجھ 
تلق مین ول ”یوی رو ی »یک و یرہ کے ساتھ کور موت ا سکوقجو لک نے میں 
کلام نشج - 

علا مہاب ۶ م نے امام خا ریک ووتحلیقات جوصیش ج م کے سا تم ملا ”قال فلان» 

: وروی فلان“ ال نکوانمقطاغ ا دح شا رکیا ے ۔ علا مام کا رقو ل درست کال ے 

چنا ت مولا عبدالڈ گی قن این الہما ماورححخرت اہ ول ا محدث دوک کول ے 
ام کیا س ےکتحلیقؾات قاری پمک الچواز بول او رمع ہی ںکی وتک انہوں نے ال اب 
کک ارا مکیاے۔ 

تش اوقا ت امام با ریا کی ردای تک ست رکو کی نا سخرض اورمقصرگ وچ ہے مذ ف 
کرد ی ہیں ال حذ فک کیا غر او کیا وجہ وگ ہے؟ حعافظ ابن ر نے المت کل این 
الصلا رم ا سکی تن وک ر یر مکی ہیں : 


دو پاد ہا ی روای تکو زک کر ےکی ضرورر وی مو وگ رار سے تیک فرش سے سند مذ ف 
کر کےصرف روایت ذکرکردیی ءحاص۰ل بے ہواک کی وج را رک وفع 


سے (اس روا کو کل الا جار وک رک سکیا جرک ال مقر ے )اور استشمادات اور 
متا عات میں تسا تکام میا جا جا ےلہن ایض اوقات متابعا تک ک کرد ات کروه 
سل مقر پرابرنہ ہو جا نہیں اگر چا نکی سنرال کے پا ی مو جووہو۔ 

۳)... مرک وجہ یہ ےکم امام یفارگ ال عذ ف فد بی کی اي مقا م برک سے 
ہیں جہاں ا نکی زک کرو ہج روایت تا مطول( با لیس وغیرہ) ہو ےکا کم ہوم ہو 
اس وہ مکوت کر نے کے ے ایک ق رواعت لا ے ہیں شلا امام با ری نے ایگ روات 


عرڈالنظر کک ا ا وک رب ی سرع وک سے FeO‏ 
اط ںیا نز ال ے: 
نت عن فان الشوری غن حمیدعن انس رضی الله عنه عن التبی 


اس روا یی تک زک رکر نے کے بعدامام بخا رک فرماتے ہیں : 
سس سس او یا تفت ا رف له غقه غن 
النبی به کذا ......الخ 
امام خاک بردو سرک روات ت ا ہےء ال قکوذکرکر نے سے امام ہا ریا مقصود 
ہے ےکرک ارہ ردابت ان رواچوں یل سے ےک بج نکواما مت نے حر اس ری اٹ عر 
سے تا راکو آری بی شال نک ےکہاس روات مل امام ھی نے نز کی سے اور 
اس مروی ع تلعز فک کے اس تاه بحرت الس رن الد ع دک طر نیس تک دی سے 
ما یاک امام بخاری نے اپ نکودہ دوا تکوم #ل سے بچانے کے لے دوسریی خر 
ری 
اب سوال بی ہوتا ‏ ےکر امام بغا رک نے ال دوسری سند( ن‌طر لگ تن الوب ) سے 
روایت وک رکیو لن لک ؟ یل سند ال وان ال ےحفوط ہ ےکیوکلہ ال جم سا کی 
صراحت موہودے؟ 
عافافرماتے نی سکہ مکورہ دوس ری سند سے ال رواع تکواس لے کرک کی کے راو کی 
بن الوب امام خاک شاپ پور ےکی ات تے تے او گر دو یش رط انا ری بھی ہو سے 
جب بھی سفیا نو ری ان سے درج ٹس بڑے اورا حفط ہیں ء اک وچ سے اض وں نے سفیان نو ری 
وال سندا تا ری _( ال ت گی امن الا رج:۷۰۰/۲) 


| 7ا لصا کی ردایا تگکاگم: 
حد ی کی اصطلاح میں اس طر ا قک ”ت “فی ںکہا ہا تا ال ےک صاحب مشکا نے بکرم 


پملا عاد ثا ےط لن اورا ی سند سے روای نی سکیس بلک انہوں نے با حوالہ دور یتپ 
عد ی ےق کی ہیں اوران احاد بی کی استا دا کتک میں کور ہیں ہز امقکوو شیک 


وار وی اماک یی سک مد کج E‏ 
اماد ےک خر تہ کہا چا تاپ اور 
ا سالک ے ری کچ ہیں۔ 

پ) ۱ e‏ مام بغار اور لام حم نے صرف اپ ابی کین میک احاد یٹ در 
کر ےکا انتا مکیا ےل اباب اکت یش ہا ل که کناب بای یاس مل م7 ےو 
اس ےچ با ریسم ی مراد ہو ہیں۔ 

ےریت ص عو ی کات ا 
تزا مک ںکیاء چنا نچ امام بخارک التا ر ایر جز ء الق راہ اور ج رالد ین شس ہرطرح 
کی احادیث کر فا ہیں ءاور امام مس م نے بھی سم کے مقدمہ میں بھی ہرطر کی 
اا ہیں اور مق مل مل م کا جز م اور نہیں ہے بللہ دہ ا نکی غلاب 
-<( از الا چ پت الفاضل ) 

KKH BK... KK YF 

والشانی وَھُو مَا سَقَط عن آجره من بَمد التابهی هُوَ سل رورت 
آن يَقُولَ التابعی سَوَاء کان کبیرا او یر : قال رول اللّهضلی الله 
عَلَیْه وَعَلی آله وه وَسَلَمَ گذا ول گذا رف بحَضرته گذا 
أو حو ذلك بو الما دکرفی قشم لمَُمُوْد لحم بخال 
الْمَحَْذوْفِ لانه يَحْتَمل أن کون صحابیا وَيَحتَملُ أن حون تابعی 
وَعَلی التََابِیْ یَحْتَمِل أن يحو ضَعِيْقَا وَبَحْتَيِلُ أ | 
الانی يحمل ان حون حمَل من صخابی وَيَحْتَمِلُ أن يحون عَمَل 
عن تابهی آخر وعلی الثاني فَيَعُوةُ الاخیَمال الستابق وَیَتَعَذدُء ا 
بالعجویز الق فولی مَا لا ِهَاية لَه ما بالاسیقراء فالی ستة أو سَبعَةٍ 
هو أکتزما وذ من روَاية بَعض التابعین عَنُ بَعَض ۔ 

قر جسصے :اوردوسرکا کم( خر مکل ے )او ری ر دای تک سند ےآ ے 
بی کے بعد وا لے علبقہ ےرا وی ( ای )وع فکردیا جاۓ ول > 
اورا کی صو رت ہے ےکا بی خوائ بے ابوتواه ون ہو لول کې قال رسول 
الله مه کذا » با فعل ته کذا با فعل بحضرته مطل کذا ءونیرواورٹر 
سر لاوز وف راو یکی عالت سے نا وا ققی تک ناء پر هردود زمر 


عرچڈانظر E‏ مان کٹ لا ا ا کی ا 690 و 

زک رکیا اج کوک ای مس ےکی اخال کہ دہ کت وف ال »واور کن 
ال ےک و ہت بی ہواورا خا ل تا بھی ہو نکی صصورت غل یرگ اتال ےک 
وہ تہ ہویا ضیف ملق ہون ےکی صورت مل یبن اال ےک اس تہ نے وہ 
رواعت کی سیل سے کی مواور گی اخال کہ اس ٹہ نے وه وی 
دوس تا سے مالک بو اور لی ہے لک صورری یں پا اغال 
دو پارولو تمه( کو ڈت ے پا ضعیف؟ )اور رت سا ری صو ری ہنی ںکی یا 
تو جو بح یی ے فر اہی سل چت ریا اور انق راء سے بچھ با مات کک ہے 
ساس مایا او رت ات نکی دوس ر ےش سے روایت حاص لکر نے ےعلق 
سب ہے اک عر وی پال گیا ے ۔ 


شر 

ا عبارت سے حافظسقیط دای کے تقار ےی مکی دوس با خ رم کل( جیپ کو بیان 
اد یں۔ 
رس لک لفو ی ن: 

لف مل اک ضو لکا عیضہ ے مہا رل(افعال )دسالا سے ماخ ذ ےا رسا لکا این 
ی" الاطلاق وعدم المنم" سی چھوڑ ا اور تک ناء اورا کو کل( چھوڑ 1ہوا) اس 
ےکا جا تا س کے ارسالک نے وا نے راوی نے ال دوای تک سند و لے بی جوژ دی ے 
ا ےی روف راو کے ذکر کے سا هقی سکیا 

نل رای کے( مل ) ناقة مرسال سے ماخوذ ےی یز دو ڑ نے وال اون ء 
او را ل ن کے لیا ظط سے الک مکل اس سک کہا جا جا ہےکمادسسا کر نے وا راوگی نے اس 
کی سند بیا نکر نے میں جل یکی او رجلر ی یں سند کے راو لو لآوعذ ففگردیا۔ 

شض ےر ما اک ی( رل)”حاء القوم ارسالا ای متفرقین “ےم شوڑ ےاور 
اس معن کے فحاظ سے ا یکو ١ل‏ ای کہا چات ےکہ حب روایی تک سند سے ایک با چٹر 
راو لو ںکوطذ ف گرو گیا فو ال عز ف اورظا کی وج سے ا لک سن رکا + حص دوس ر نش 
ےک گیا او رای ے جداہوگیا_ 


E eae aon عرڈالظر‎ 


07 اصطلا سو 

رم اس دوای تک وت ہی لک سک سند کے1 خر سے ما بھی کے بعد دا نے طق کے 
راوی ( ا ی )کو وز کرد گیا بوخواوحز فکرنے دالاج گی سے دی چ کا ج کے ہو خواہ 
مو نے در کا ج بی مور ۱ 

ا کی شال بیوں بھی سک جا بی 1 خضرت سل اللہ علیہ وسلم کے کی تو ل یال یا تقر یا 
کوگ ی عم اکوئی جواب یا ان کے علیہ مار ککو با نکر ے او ریاف یکو کر کر ے پل یراہ 
راس تآ ضرت مکی ابعل کم ے روا تک تے »و2 لول سک 

ان قال رسول اه له کذا ی 
 .)۳‏ فعل رسول الله تاه کذا ا 


01 

احناف کے نز د یک اس ج لہ یکی مکل ردایات بول ہیں ج بھی بھیشہ لق راولوں کے نام 
مز فکرتا سے شا تسیر ہن میب _ 

اور وه ج نان ج اور غرفت م کے راولول کے نام مز فلز »ول ا نکی 
مرا کل متبو ل ہیں یں الا رشن سے محذوف ےت ہو زک م مو ہا -2 الد ج بی 
کی عادت محروف م وکہ وہ تہ ہی سے ارسا لکرتا ہے و ا سکی مرا لک م7 ےتال 
عبات شآ ر اے۔ 


ر سس لکت ر ردو و کے زم رے میں شا رمرن ےکی وحم 

افا یعادت سے ایک اکت اکا جواب د ےد سے ہیں اق ڑا مہ س ےک مح دجن کے 
زز وی حبراو رمحتو بی ی قول کیره رک لک سند سے جرا وی جز ف وا ے وهای بی ہوا 
ے او رما ی کے لت بو ۵ سول r‏ سے اورک روات حول ہوئی ےمدووکٹں 
و رم لکوت رم ردو د کے زمر می ںکوں فک کیا چا ے۔؟ 


عو اتر توب ماق امن اما سس اہک ES‏ ۳۵/۸۵۲ 

عاف نے ال کا جواب ہے دیا س ےک رع رک یکوت ر عرد وو کے زمر ے می اس لے با کی 
جانا ہک رس لک سند سے عذف ہے واسك راوگ کے نام اور ال کے عالات سے م 
ا واقف ہیں ۔ اس نا وا تی تک بناء پرا ی تر مک لکومردودکی اقمام یٹ زک کیا چا تا ہے کول 
کال حر وف را وی کے بار ےش ں کی ا الا ت میں : 

اک کڈ وف کے بار ے مایب ا خا ل ہے س کرده ال ہہوگا۔ لاک قا رک ےکا ےک 
کد نک حت دہ مب میس کہ یک وف ر ادا وتا ے۔ 

اس میں دوسراا خا ل ےکی ےکرد+محز وف راوک جا بھی ہوگاء ملاک القا رک س ککھا ےک 
یال اتال بی 'ے۔ 

جال وا ےا خا لک صورت میں کی اتال ےک دو تا بی ضیف ہوگا اور کی اخال 
کروه تا بی شق موگاء ار دو تا بی یف بو رال صورت میں خر مکل کے دودو 
کول کش - 

۰ ج لت ہو ےکی صورت غل بھی اتال ےک ای نے وه روا کی صا لی سے 
عا لک موک ۰یا کی دور سے بجی سے اص لک وک دوسرے تا لی سے اط ردا کی 
مورت می بر ارتا حال لو ٹآ یک وجا ی بات یف ہوگ با مرگ 

اس میں او رکئی اما( بھی کل کح بل خوا ود٤‏ ا خالا ىف ہوں خواہ وہ اقترا ہوں 
* چنا نچ حاف نے غر ایا کی ال تاو خی رھ ہی ہیں تن بہت زیادہبن کے بل »یبال غر 
نی ےک ڑ ت مراد ے باک ت مس مباز کر قصوو ی طور پر یرای ہونا رال 
ہ ےکیوکلہ ہم ےلنگر جد سید نا آرم علیہ السلا مکک نبت میا نک نا تقلا ء کے نز دیف ایک 
نی چ چپ ایک تب ےتضور اکر صلی اللہ علیہ وم کے درمیان زا تنا ی سل لد کے 
ارک موک ے؟ ؛گحف اس یرای ےک ت بی مراد ے - 

الت ات ال االات کی رل ہیں بسانت افراد ہیں ؛ی]ش ین او رجطش سے بیمعلوم 
بوتا س ہک دوایا تک سند می ایک جا بی سےتضمورا 3رس صلی ای و مک زیادہ سے زیادہ 
مات وا کے مو جود ہیں ال و یں »الب ان سات افراد شش سے ایک رو سک 
پا یں اختلاف س ےک وہنا بھی ہے با صھا لی ہے؟ :اکر ا کا ما مون جا ہت موا ےو اس 
سورت می ہی وا سے ہو گے اورا گرا کا میا لی موا خا بت نہ موق سارت واکلے ہو گے تج 


عرۃانظر اص یی صلی امه مهو هو rae‏ ۳۵۵۹۲۰ 
او رتلا سے اس سے زیادودا سکیس با 2 گے - 
یی اد .چا جال جال با 


ول رف من عَادة اتابعی أنه لَایْریل إلا عَنْ َة فدهب جمهور المحدزین 
إلى اقب لبقاءالاختمال وهو اح ری أَعْمَد همقل اکن 
وال حوفي بقل مُطلقاء قال السافی :فيل إن اغتضد بمَجیه ین وج آخر 
ین لطریق اون متا ان و مرس رم اخمال کون موف 
فی تفس لام تم بو بكر الرازی من له بل لباحن ین 
ماه إن الراوی إا کا رل عن اقات وعیره لا یل مسل مق 
تو جسهه :۔ اگ رتا لج یک عاد تروف ہوک وو صرف ی ے ارسا لکرم 
ہو ہو ر رشن ا خا ل کے بتاک وجہ سے نے ف کی طرف کے ہیں اورا مام امھ 
کے روتولوں میں سے ایک بی ول ے اورا کا ووسراتول وه ےج مال اور 
کوفو ں کا قول ہ جک اس مطل و لکیا بای اور امام انف نے فر مایا کہ اگر 
اسے دوس ری اسک سندےتقو یت ما سل ہوجاۓ جوسند پل طر ان کے مان مونو 
ا ے قو کیا جاک خو اہ سند ہو یا مکل ۰ت ٹس الام یل حذوف راو ی ےت 
کوت نی دی جا کے »احناف میں سے ای وبکر را زی اور مالکیہ بش سے ابو 
الولی ر الا سے ”قول ےک جب راوی اور غ رشن( ہرطرح سے ارسال 
کیال تقاق اس (راوی) کي کل متبو کل 


جال یکی مرا لام 

ال عبارت یں حافڈ اس جا بت یکی مرا لکا ہیا نکرد ہے ہی ںک ننس تا یک ىہ عاد شهور 
اور حروف ہوکردہ یش راو لول سے ہی ارسا کرت ے اور جب کی و وی راو یکا نام عز یکرت 
ہو راو کی حعذ فک رتا ہے ای تا کال کے تو ل کے اور کے شس اختلاف ے 

ا) ...و رح دش نک ہب ہے ےک راک صورت میس ا ہے ما ب یکی مرا لکوقول 
کر نے اور ر دس میں تو قف انا رک نا چا ے »یوگ ای مس می اخال ہ کال نے اپ 
عادت حرو ق ہے ہ کر یراہ ے ارسا لک ہو اور کی اخال کو ہ محذوف اس کے 
روو یہ ورس الام می تن ملع الو قف ات رک پت اام اب یک 


عروالظر ی ی ری ا ا ا و با وهی مرمع هراودای و ہار ۳۱۵۲ 
ایب تول مہو ر موان ےگر یف پور سے( شر القاری:ع۳۰) 

۴( ابا ال کا ہب ہے ےک ایی تا یکی مرا لکو ایی شرط کے تقبو لیا 
اه اد دش رط ہے س کہ ده ن ر کل دوسرے ایی ےط ر ل ےکی مروی ہوجو پیل طر بی کے 
این وخواہ دوسا طر لی سند ہوخواو ھرکل ہو هکوگ ووسر ےط ر لی سے م روک مو ےک وجہ 
سے پیل ل تایب لاظ ے تقو یت مال ہوجا ی سے -اورال دوسرے ط ری سے ال 
اتا لکوت یی بھی ہو جا ےک یکو محذوف را وئ ھی الا مرش لسع - 

)٣‏ ... پالکیہ اور یکو کا نم ہب ہے س ےکا ےی تا بی کی مرا ستل مطلتا مقبول ہیں اس 
یس وا ح کی ذک کر دہش رط اورقی رک ضر ورکس » جب اس تا بی نے ساسا لک ےک 
تزا مکیا ےن ایخ رم ۷ لکوقو کیا ہا یکا خواودوسرے ط ری سےا ےت یت لے اد لے ء 
امام اھ بی نت کا مشبورقول بھی بی ال میس مطلق کی ید شا رہب کے . 
متا بلہ شس اطلائی بیا نکرن مور »ور مرکو تفیل بھی اک رف ہے٤‏ چنا رل الق ری 
فر مات ہیں: 

و الظاهر انه اراد بقوله:مطلقا سواء اعتضد بمجيئه من وجه آخر اولم 
یعتضد بمحیثه_(شرح القاری: 4۰۷) 

۴) ..... لت یش سےامام اب وکر راز ی اور ما لکیہ ٹس سے علا مرا لول الپاگی سے 
قول ےکہ جب ارسا لکر نے ts‏ کے راوگ یکو وز فکر ےءاورراویکانام 
عذ فکر نے تقافر ھک میرک کر تا ہے ع ب یکی مرا سل پال تا متو لی ہیں 
باک مردود ہیں - جب ارسالک نے وا ے ع بی کی عادت محروف موک وہ بیش لہ ے ہی 
ارس لکرتا ےت ا سکی مرا تقو ںکی ہی ےرت سعید بن المسی بک م راسمل یں _ 

جیلو لہ KK... E‏ 
وَالقِسُمُ الثایث من أَقُسَام السْفّط من الاسْمَادِ إن كان بين فصاعذا 
مم التوایی فَهُو الْمْعْصَل ولا بأل کان السَمط تین عَير مرن فی 
شرع تین مق هو ال وگذا زا شوط واجد فقط ا کت ین 
تین لکن بشرط عَدم التوالی - 
تر جسوسه :سقو اتا وک اقلا م می سے تم ری ( اور چ ی مس ےک اگردو 


ع ړوار ےت مس ہر ما ید | 
راوگ پا دو ے ذاتدراوی ۱ اد ےتا تو ہوں و تر هل ے اور 
ار دو را وی سا ی ہو ں کر کل نہ ہوں شلا دومقام »ی فطع ہے اور اکی 
مرح اگ رایک را وی سا قط ہو یا دو سے ز یا دہ سا قط ہوں کن ا یش رط کے اتک 


ول 


نو م7 0 

مرکوروعبارت مل سیوا ت کے لیات سے ردو وک شی مکی تس ری اور مک زک سب» 
ا تیمیمص چاو راکچ تمن تفع ہے۔ 

فص ا مفعو لک صیف_ب» اعضل (افعال)(عضالاً آی اعیاه ( تا د یت عا ج 
کرو ینا ).ال لیا طط تال رال ال - کہا جاجا سک دو ابی تک نے وا لے 
محر ٹکوا خر نے تکادیا اور عاج ےکر وی اور ای سے روا کر نے وا روا کول سر دہ 
نل کی وج سکول فا ره تہ ہواء نیز الک ایک تن مالل بو یج ہے ء ا کن کے فاط 
ےا ےحمل اس کہا جانا ےک ریخ رمث او رص فی روا کے درمیان مال موی سب 
ایک رکاوٹ بن گئی ےراووں کےسا قط ہو ےک وج ے گر ث ان کےا جوا لک حرفت 
یں کرک 


رل ل ا صطلا یت رف : 

مد شی نکی اصطلا رح شخ سل ال ردای کو کچ و ںک نجس دای تک سند کے 
سان وواک وای ل ن 
ع افو ی ن : 
۱ ایز یح اسم فا لکا صیخہ ے٤‏ اور انقطع (انقعال )انقطاعاً تکفا ول چوک 
ال خر سند راو لوں کے عذ ف ہو ےکی وج کی ول موی ے اس لے ےی فلع 


0 و 


عرڈالظر سی گر یت اٹ ےت PIE‏ 


خر نکی ا صطلا یف : 

رمع اس ردای کو کے ہی کر« روا تک سند کے درمیان سے صرف ایک راوی 
عذف »و ا چ اوی ما وو سح رک تبون یل لات اک حا ات ے »ول ان سب 
صو رتو یگنر فطع کے ہیں ا ںآ ری کا م کل بو اکر: 


کر رت 
لت برصورت تلا کا نام کلف سے بن سک سند کے درمیان سے ایک رای اقل 
بو الک تفع فی موی“ کیچ ہیں )او رن سک سند سے دوراوی تلف مقامات ےہا قر 
مولع ی مون کہا جا جا سے نز ایتا للع ہے موان ون ار بود موا 
۱ (شرں القاری:۳۱۳) 


شک تمریف : 

خطیب بخ اوی اورعلا این تپ رال ر کے مول جمہورمرشین نع کی تر یف ری 
ےک خ ر شع وہ روات سے جن سکی ست رصل نہ ہو تلع ہوخواہ اا سکی سند می سکس ی بھی 
ہت سے افقطا رع ہوخواہ راو یکو سند کے شر ور ے عذ فک یا گیا #وفراه ورمیان سر ے ‏ قرام 
آ سارت _ 

اس تھریف کے فان پیش رمل مل او رگ شال ے الہ استمال کےلھا بط 
ےمد شن اک ڑطور ال روات شع کا اطلا کر -2 ہیں ی روایت ٹیل رچ بی براہ 
را ست صا ی ے روا کر ے اور درمیان شس تا بی کے واس کو مز فکردے چجے سد 
:با کک اہ کر ری اشر عد( ررح القا ر ی :۳۱۳) 

TEK TH Fr... FE FF 
مإ السفط من الاستاد قد یکون وَاضِحًا يَحصل الشیراكُ فى‎ 


اتر اتی جے سی ترس E I N‏ 
یدرک إلا امه الحُداق المُْطيِعُوْن عَلى طرق الحَیِیْبِ وَعِللِ 
الاسَانیّد قالاوّل وَهُو الاح يدرك بعیم التلاقی بَیْنَ الراوی وَشَيْجه 
بگونه لع يدرك عَصره آو رکه لکن لم يَحْتَمِعَا ء وَلَیْسَتُ له منة 
لحار ولا وخادهة وَمِنْ نم اج إلى التاریخ لِتَسَمُيه تَحْرِيْر مَوَالِیْدِ 
اروا و راهم رقاب طلبهم وارتحالهم وق اصح أَقُوَامٌادَعُوْا 
الرََایة عَنْ شیوخ ظهر بالتارنخ دب عواهم - 
ترجمه :ری سن ر یں راو یکا سا قط ہون داش موا کا کو پا تن میس 
سب لوگ هراب بو کے ہیں لا رایخ مروی ع ہکا پھم حصرنہ ہو با ( سن ٹل 
راد یکا ساط ہوا )پل موتا ہکوہ ماہربین ام( جوطرق جد ہے اورلل 
عد یٹ مل ارو کے یں )کے علاد و دوس ال سک ء او رم اول جو سقیظ 
2 ہے وہ راوی اورمروی عنہ کے ما ٹین طا قات نہ ہونے سے معلوم موف سے 
کہ یا ال نے مروی عضکا ز یں پایا وای ز مال پایا ہوتا ےکر دونو کی 
اقا کل ول »ول اورا یکو ای مروی عنہ سے نہاجاز ت حاصل مون ے 
اور دوچاده ہوتا ہے نب نی ت راو لو گت تاپ ال ءا نکی وفات »ان ے 
حصو لک زماناوراسفار ره پتل ہو ےکی وجہ سے ان کم جار 
کی رورت بل سے ۔ اور کت لوگ رسوا مو کم یں جہوں ےکی سے 
روا کا وکو یکی ارجا رن کے ذر لیران کے وگو یکا وٹ نا ہرہوا_ 


سے انی کے اختبار ےترم روو وی اقا م: 
اف یہاں سے وزی کے ا عتبار ےی رم روو وی شیم ذکرفر مار سے ال اعقار سے اس 


" سقط وا یی تحرف : 
تیا و اس سق اک کت ہی ںکیڑ ایس شل راو یکا عزف ہو آ سای سے موم موا ے 


عرڈالظر و اه ی 000 0 PRT‏ 
“ا سح و معلوممکر نے میس ماہراما مکی رورت کل مون پلا صول عر یث اورحد یٹ ے 
حلت کت والا جرعالم اسے بلاط فان راوی اورفلال مروی ع رکا ز مات ایک 
یں سء یاز مانا ایک ےگراس دراو کی ناور وروی عت سے ملا اش مو اوررواعت 
بصوررت اچازت یا اصورت وچاد ہگ یل ےلو جب راوگ اور مروی عنہ شل طا قات دشیرہ 
نس ول فو اس سےمعلوم ہواکہران دوفوں کے درمیا نکر راوی عذ ف ادرساقا ے _ 

اب یال ہے با تک کول سک کی راو یک مروی عت ے ملاتا ت »ول پا نہیں ؟ وولو ںکا 
ز مات ایک ہے انس ؟ قلال را وی ا مر وی عدگ جار پیا کیا ے؟ او را کا کن وفاء تکیا 
ہے ؟ فلاں راوی ےکس زمانے یں اس جج سے احاد یٹ ماگل کی ہیں ؟فلاں راوگ نے 
تصول روایت کے ےک ب سفرکیا؟ءاو کیا کا فیا ؟ _ 

ان تام سوالات کے جوا با تک معلوم ہو ضرو ری ہے ت اک ہآ سای کے سات سنہ ےر اوی 
کا سا قط ہونا معلوم ہوجاۓ اور قام نزیس انا نکی مرن سے معلوم مون ہیں اک مج ہے 
ن اسول عد یٹ میں علم جار کی بھی ضردرت پل چم میا کیت ری کیا ہے ؟ اس 
کناب شروش جہاں ملق خ رک کف ہے وبا عم تار کت ریف ناور ےضرورت 
کے وقت اس متا مکا مطا لع کیا جا کا ے _ 

ینک تار کا خی کال جکرا یج »بت سار ے روا8 ز یل اورخوار ہو گے جھوں نے 
ضس شیوخ سے روات اص لکر ےکا وکو یکیا ارت رو کے ق ر وی رمعلوم ہواکرا کا ہے 
رکوی تجھوٹ یق ہے اور عدگی کے با رے میں جا رق سےمعلوم ہو اک روک عنہ سے طا قا ت بی 
نیس »ولا ںکاز ادیش پایا۔ . 
سی یکیتحریف : 

فی اس مق اک کے ہی سک ینس مل راو یکا سا قط »وتو ہواورآ سای سے معلوم نہ 
ہو یفخ یکوصرف ا بے امام اورا یمم معلو مکر کے ہیں چوا نن اصولي مد یٹ مل بہت 
ول اود وہ طرق عد یٹ پر اورک وستزل رھت ہوں ای طرح و وکل صد یث ےکی قوب 
وف »ول -صرف ان نی عفات کے مان ای پپچان 2 ہیں برس ونس کے مم سکی 
پاتگل ہے۔ 


پڈانظم 27 7ی HAS‏ 


سن کی وو یں ہیں: 
(0) خرس (۲) ر ملش اگ عات شا نییان ے۔ 


ود ودی دہ کو HETE TF‏ 
7ت تو 


الراوق لم يسم مَنْ له ارم سِمَاعَ لِلْحَدِبْب ممن هیخب 
سوا ھی 2 و وق هم 1 فر 
»رات قَافه من الڈلَس بالتخریك وَهُو احَْلاطٔ الظلام بالنور» سى 


۳9 


ان ہے و سے آفھر / 2 ۳ ر‫ ۳ گے 
بڈلِك لاشیرا کهما فی الْخمَاءَ ويرد الْمُدَلس بصِيغة ین صیغ الا داء 


يَخْتَمِلُ وو ع اللي بين دنس وبين من اسن عنهُ کمن و ذا قال ء 
وَمَّٹی وم بصِيُعْة صَرِيْحَةٍ کان کَذِبًا و خکم من بت عَنه التذلیس إِذَا 
کان عَدل أ لا ْمَّل منه الما صرح فیه بالتحَدیت عَلی الاصح 
وڌا الْمُرسَلْ ای دا رین مُعَاصِر لم یلق من حدت عنه بل 
تر جم :ادردوسر نم می جس میں ھی موو ہر دس (لام کے ے 
ساتھ سے ا سکواس نام سے ال لے موسو مکیا جا جا ےکم دا وی الک نام 
وکرٹییںکر جن ے وو روا کر ہے اور ے داو دوصرو ںکواں وم میں 

ہن ارتا کہا لک سار هد یٹ اس شش سے ثابت ہے ننس سے ال نے 
روات ھا لگ نک :اورا ( راس ) کا اتا ق لفط وس( وال اور لام کے 
ی کےساتھ) سے سے جس کے جا رک کرو مات قالط موا سے 
* وہ وولو ل خی شش رک میں ای وجا نام سے مو ۳م 20ھ ۔اورر 
اس اوا کی سے اقا س ےکی ا لے اقتا کے سا وارد مو ےک اس 
Jie‏ رس اور ال سے موی عد کے وت طاقات کا اخ‌ال 
(اوروم)پھا ہوا سے یس اکن اوراسی طرں قال اور جب خر رال 
صرح صیضہ کے سا تھ وارد ہو ھوٹ ہے ء اودجشس راوگی سے نز ال کات 
مو چا ے تو الع تول کے مطابقی ا کم ےک ہاگرد راوی عادل ےلو ای 
کی دہ عد بیث اس وق تک تول دک جاۓ ج بل ومد ٹک صراحت دہ 
کے ۔ اک رع خ رم رس ی ہے جب و کی ایے موا صر سے صادد موش . 


عو اتر یا ہیں ری شمه ای SAN‏ کرس هد O‏ 


نے موک عت ے لا ا تدل موا وروولو ل کے درمیان واسط ہو- 


ال عیارت یس حاف نے ستو شی کے انار ےق رمردودکی رین کرای میں ان 
سا ملس ا 


بلس افو ین : 

لف رش ( لا م فسات )افعو لکا عیضہ ے٢‏ یہ مادووٹس سے تن سے مس کا 
معن ال معام لاو چپ اتا ر کور شی میس ملا جلا د ینا ہے بت ماس (انز با ب یل )یی 
سےا مفعول سےگویاککہ ماس نگ کر کے روای تک سند کے معا لکو پل تا ری یکر وچا 
ےکرروایت پٹ توا نے ا سے وا نے کے سا موا لوا ی ہوتا۔ 


را سک تحریف: 

ریس اس روا تک کچ ہی ںک ل روات تثل راو اذل مرو ع کا نام عزف 
کر کےا سے اپ وا لچ ل(جس سے ا سک طا قات تو ہو گی رال سے بے رایت درل 
ہو ) سے اس طط رح دوا کر ےک اصل مرو ع کا مز وف ہو ال معلوم زر ہو یل ول 
وک ال نے ال سے اوپر اس ی ہی سے بے دواع تک سے لا عن کے طر لد سے 
روا تک ے یا قا لک کر ر دای تک ے۔ 


ریس کا م: 

ری سکرنے والا راوی اکر عادل سے تو اس صورت میں اح قول کے مطالقی ا کی 
روات جب قو لک جات ےکی جب ومد شک راحم یکر د هکوگ اقا تلم کے ہے 
ابا م پیر اکر ےکا ا مت ےلو جب را وک وا ےے اس کےا صا لک راح یکر وینو 
اب هام لد لیذ اا سے تیو ل کیا ای او اکر تر سکر نے والا راو عادل ت ہو پراش 
کات ول فی نکی وا گان 


عرڈالظر ےم تی اگ رت ای اک ی تی ME‏ 


رم ۱ 

ار نز سک نے وال راوی الفا تلم بیان شک ے براحت کے ساتھ (اپے ال 
مر وی عنہ کے )و تاج الفاظ سے رودایت بیان جن سے ماع خابت ہو بو لا 
سمعث » اخبرنی »حدثنی وره ع لمات کرک حا اکا لکاعدم سار مت چاو 
اس صورت میں عر مچھوٹ سے بہت لی سیل ہے اور ا لک ذ بک وجہ سے ال کی عداللت 


ضحم ہوجا گی 


لی سی اقام: 
باعل اقا رگن کی تین اق مق کی ہیں : 
0 کی لیس الا سار (۴).....م ریس الخو ۳ ا ترس التو بے 


...نز لش الا ستاو : 

بر لاس الا ماد جکراوی اپ نادرم روگ ع کو یا اج کوعذ فک کےاو پر وانے 
سے روا کے یا ےک روک | سچة کے دوا تک سے ال کا طا قات تہ 
ہوئی ہو با طا قات و ہوگر اس سے اکا عدم سار خابت ہو یا سار بت »وگ وه خاش 
روات ال جن سے نہک ہو رال کے کی ضیف شاک و ےکن ہوک را یکا وا طط سا اکر کے 
سے اس ط رع روای کر ےک سے سا کا وتم ہوا ے معن سے با قا لک کر 
روا یگ عسشریچز اتکی لین ایی کے رن 

)اش (۳)....وری (۳)..... این ان 

(۳)..... رن الولیر ٠‏ (۵).....ولید ین م 


رس الا سنا وکام : 
جو سکی یکم نا امد اور بہت زیادہ نموم ہے او خضرت شعبرا لک بہت زا وہ مت 
یا نکر ے تہ چنا امام شالق نے شم ےق لکیاے : 


عر وار as‏ نود کت 
ادلس“ 
ال کمک ت سکرنے وال بد کی بہت نموم ہے اور چ وآ وی تریس میں محروف 
ہو جاۓ ده ر کے ند کیک بر ہے ا لک وہ روات و لآ ہے جس کے بارے مل 
سار کی صرا حت نہ ہوء الہ ارا تصال اورا رع میا نکیا گیا موتو وہ روایت متبول موی کے 
لس . لیس مفیان بن یی( شر القاری:۴۲۳۰۴۳۱)۔ 


: ا تز سا شوخ‎ (r 

یس ارب ےک داد اج مروی عد کا فر حروف نام یا قر حرو ف نبت 
یا خی ر حرو ف عفت ذکرکرے اورا کا مقر ےم رک لوگ ا سے بیان نکی کوک ووضعف با 
اد درج کا راو ےء کے ان ماد امقر ی ےکہا :مدا جج بین سند“ ےہ بین ست اس امن 
هدک ره اناد نے ا کی نسب یا نکر نے می تی سک ہے ۔شھ ین سند سے الو 
بکرم بین ان اقا مراد ے اورسند الک کوق داداے ءا کا نب اسطرع ہے : محھ مین 
اکن بن ز دیناد ون تف ربن سند _( شرح القاری:۱٢٣)‏ 
تریس اشوخ کا م: 

نر سکی یه نامز ول سےگر نا منا سب اور نموم سی 


اتف ے۔ 


۳).. ...زلیس التو ے: 
تز سبلتو سے اس ورن 
اتررمو چو کی ضوف موی راو یکو یت وی رید ورای متا م پرایا 
لفت رکر ےجنس میں سا کا اشال ہو- 
07 و مم سسجت روک ع 


ا چو کے 22 دا 0 ہے 
ضیف راو ی لک لگیا نوا کن الق بت کے درجہکی ہوگئی۔. 


عرجانظر ی ی که و 
لس التو یک 


ز لبیک پیم ام ہے سرا مرو وک اور یب ہے ء اس ےک سند لو رکر نے وال 
اس سن کوشا تعن شات کے در کی سن کرس هک کم کا د مالک یقت اس کے 
پک ے۔ 

وقوله: و کذا المرسل الخفی .الخ 

ال ار سال سے وہ ارال رال ےکک سند سے مال عذ ف موگیا موجییا کم ` 
مر لک تحرف می بیان موا ے بک یہاں ارال ےق انقطا راد ہے 

اس رت 


صرل ظا لف 

ھ سمل نا ہراس روا تک کے ہی ںک جس ں انلا ر الیل وا شع ہو با میں طو رک را دی یر 
مواصر سے ردا کر ے می دوفوں میں با معا مرت حابت نہ ول رت امام ما لگ 
سح :لن میب سے روا تک باب 

ا سکوواج اس لے کے ب لک رن tL‏ اف 
کرت کل سان واے۔ 


مل یک تحرف : 
017 ہی کی مل انقطاغ وا نہ ہوا سک تن صو رش ین عق 
ہیں: 


جوا سے ہبی مون مت - 
nnn (r‏ بارا وک ایی موک عت ے روا تک کل سے ا قات کے موت کےا کے 
عدم ا کی حابت مون یرو ی الراوی عمن لقيه ولم یسمع منه - 


عرپالنظر 7 ۷۷۷۷۷۷۷۷۷۷۷۷۷۷۶۷ ۳۵۰۳ 


اس سے لا قات نکی موان تا مصورتڑں یل اس روا تکوم شکچ ہیں ۔ 
اس مس لکوت ال لے کے بل کش اوقات مہ انقطا را ما ہر من پگ پوشیدہ او رح ی ره 
جا تسکت 
YE‏ چا و e‏ 
الم بين ملس والمرسَل ای دیق یَحْصُلُ تَحْرِيْر بما کر 
ههُنَا وَهُو ئ لیس يحص یمن وی عَمّن غرف لماه یه ما إن 
عَاصرة وم یعرف آنه قیفر المرسَلُ ای وم َذخل فی تَمرِبْي 
لیس المْعَاصَیَه ولو بر لقي لرمه حول الْمرَسلٍ الخفی فی 
تغریّفه والصَوَاب لتفرفة بَْنَهْمَا۔ 
EE‏ مان مت تفه یبال زک 
کرد تخل ےا سکی ع موی »اور وه ےک تریس ال صورت کے 
اما ےک جس مل راو ہے م روک عنہ سے دای کر ےک اک سے 
راو یگ ملا قا ت مروف بواوداگرصصرف ز ماشہ پایا #واورطا قا تک نا محروف تم 
ہو وه رل ی سے اور نے نلیا کت ریف میں مور تکوداقل ماناے 
واه بلا قات تہ ہو ال سے مہ لا زا مآئیگا کر مر لف خر رل سک ت ریف شس 
وال ما امہ ہے ےکان دوٹوں فرت ے۔ 


مر 0+ 
عاف نے اس عارت یل خر ماس اورشمرم مکل کے درمیا ئن فرت میا لن فر ایاے۔ 


اس اور مس نی میس فرق: 

وس اور رک ی میں فرقی یہ ہےک ہت یس شاوی( اس )کش سے( موا صرت کے 
ساد سا )لا قات بھی غات ہوئی ےکر جاع ہیں ہوم با ملق سار ہوا سےگرروابیت 
کردہ صد یٹ کا باعل »وتا مج مرت میں مھا صرت نے ثابت »ول ےکر ال سے 
لا قا یں ہوئی ہوئی ال فر یکا ھا ل يہ مو اک ہت لیس یل بلا قا ر کا جورت ہوا ہے کہ 


FEL E AIO AS SAS RAA SAS عرڈالظر‎ 


رل تی میس بلا قا کا موت کیل ہوتا- 
زا صاحب غلا کی ررح جن حط رات نے تز لس میں ملق میا صرت ( خواه لاقات 
خر انتا کیا ہے و انہوں نے نذا سک تھ ریف میں رمل یکوھی داخ لک رلیا سے 
کوک م رس ل کی می بھی صرف موا صرت مون ے ملا قات نیل موی لو ال فاظ ان 
دوثوں کول فرق نی ر امن بتنادی ادرعدم الفرق درس ت کی ہے بلک یہ کان 
میں فرق اورتاین ۔ 
 KK‏ ...1 جا جا 

ی و اعغتبار اي فی لیس دون المعاصرة وَحْدَمَالَابْڈٌ 

مه طْبّاق هل الیلم بالحییت عَلی أ رِوَایَة المُحضَرِمِیْنَ کابی 

فاد ای ویس بن یی حازم عن التب ند من قل الإزَسَال لا 

من قبیْل لیس ویس گان مُحَرد المُعَاصَرَة یتفن به فی لیس 

تکان َولاء مین هم عاضوا لب تفه قطغا ولکن لم رف 

هَل لَقُوْه آم لا وَممُن قال باشتراط اللَمّي فی ایس الامام الشافعی 

یربک الیْژارُ ء و کلام الحطیّب فی الْکَفَايَة یمه وهو الْمْعْتَمَدُ - 

تر جمه: تر ال ملک معا صرت کے علا و ہلا قا تک اختبا رک نا رو رک ے 

اس رعلا ء عد ی شک تفت ولال تکرتا ےک کر می نکی روایمت ارسا لی کے 

تیل ہے س یلع ہے شلا عا نند ی اورت مین ایی ماز مکی 

ھی اکر مکی ابن علي و سے روات :او راگ رت یں می رکش میا صر کان ی 

جا یلگ رکیل میں سے ہو ےکیوکہ ان لوگوں حضو ر کرم صلی اقدعلیہ 

وکا اش پایا کن غاب یں س ہک انہوں نےتضور سے ملاتقا ‏ کی ہے 

انی ء اورت یس میں بلا قا تک شرط کے تنل سے امام شا اور لور 

زار ہیں او رکفا میں خی بک کلا ی الک تی ے اور ی حت ے۔ 


٠ 


مر ۱ 
ال عمارت می عاف نے مہ میا فر مایا ےک نلاس شلک مھا صر تک یل ے بک 
اقا تکا موت ضرو رک سے اور با ہپ را زا ہین حطرات نے لیس شش 


عرڈالظر Sees‏ 6و" PEF‏ 
محعاصر وکا تر ارد یا ہے ا نک قول رال 


تریس بیس طا قات رو ری سے ۱ 

چنا نچ ماف سے فرما کلاس کے اتر روا صرت کے سا تک سا تھ طا قا کا جورتضروری 
اورلا زیا رے۔ 

اورا کی دل ہے ےتنام علاء عد بی ٹکا اان س ےک حرا تحضر می نکی وہ روایات ج 
ها« رات بی اکر مکی اللدعلیہ یلم سے مر وی ہیں دو سب دو ایا ت ھک ی کے تمل سے ہیں 
ا رکش میا صر کان »و ان حرا کی ردایات تاس سل وت کوک انہوں نے 
می اکر کا ز ما ایا ےگ رانی ٦‏ خضرت لی الشعلیہ وم سے ماما تنم ہیں موق _ 

لعز اوہ روایات جود ر رڈ ل یط لی سے مرو ہوں و وتر مل سل بک رس یتیب 

١)......عن‏ عثمان النهدی عن النبی جع .ہت 

۲).....عن قیس بن آبی حازم عن النبی نله کے 


شحف مکیکحریف: 

خر ین اف تفر مکی مع ہے بطم ان حرا تک کہا جا تا ہے ہن وگول نے بات 
جا لیت اور ز ماشہ اعلام دوٹول باس ور خضرت صلی اللہ علیہ یل مکی زیارت لیب شم 
موق ےل میریمن ال عازم۔ 


ی شش لقام کمن : 

اور تن عثرات نے نگل میں معا صرت کے سا سا تماق یکو رو ری قر ارد با سب 
ان یں سرفہرست خضرت امام شای اور ار بد ار ہیں انہوں نے ملا قا کو تز لیس مس شش رط 
قراردیا ے ‏ خطیب بخد اد یکا ب افا ےش کی ا نک کلام اس شراک ی ے اور بجی 
مب “راورراے- 

اب سوال ہے س کہ لیس مل بلا قات اور عدم طا قات کا پد یت گا ؟ عبات 
و کال ںا یکاییان ہے۔ 

KK‏ ...و ای 


عرجلظر aS‏ ات PERO,‏ 
TEE AT‏ ارت زنل ا 
ولا یکی یم فی بَعض الطرّق رِمَادَه راو أو کر بيهم لاختمال 
ان يحوب من الْمَرِیْد ولا يحم فی هنم الضورة بخکم کلی لِتَعَارُضٍ 
اخیمّال الانصال والانعطاع. وق نت فيه الحَلیْبُْ کناب 
"لتفصیل لِمَبَهُم الْمَرَاسِیْلِ۔ و کناب امريد فی مُتَصل الاسَازید 

وَائتَهّتُ ههتا ام خکم التسَاقط من الاسْناو. ' 
تو جصے :لا تا کا ہون ودرا وی کے ترد ہے سےمعلوم ہوتا ہے بای ماہرامام 
کی لگن صراحت سے او رک ط ان اورسند یس ایک یا ایک سے ڈائد راو یکا 
اج ہوا لیس کے ےکا نمی ہ کیو مکن ےک بیط ربق مز یر ےتیل 
سے ہو اور اس صورت مل اتصال و انقارع کے تھا کی مبلق رپ 
سکن ایا اس ءادرخلیب بخرادی اس تم میں۷ * اٹ یلم 
ال ال“ اور از يرن تمل از اتر ےنام سے اتائ یں ہیں .بان 
کک اسناد یں سق کی اقا م کےا ام ہو گے - 


‘U ۴‏ 
الس عبادت می حافڈ ہے بان فر مار سے ہہ کل وفیره ٹل بلا قا ت اور عدم طا ما کا 
کیت پعد چےہگا؟ اد ری سند می اگ رکوئی ایک یا یک سے ز اداو یآ جا لکیس سند یں 
ہے اند راوئی نہ ہوں اس تکام لیا ای فی ؟ اوراس م سک کرک تساف 

موجوو ول ؟_ 
عم علا قا تکی مرف کا طر چ : 
ہو و سر چو سا 


0ھ" 2 ۷ نک 
ان یدک غدمت ٹل گے وو مفیان بن کید نے رواعت بیان 2-1 »وس ها صن 
الزهری* التبا گیاکہ ”احدٹك الزهری؟* گیا آپ ےذ ہر8 نے یا لیا ے؟ 


عرو اثر e‏ اکسا دی ا ا سا PE‏ 
تق امن یا مو ہو گے » رسفیان امن ید 1 لو ں کہا ”قال الزھری“ فو ان ےہا گیا 

ککیا آ پ نے ز ہر سے تا ے؟ و فیا لن امن یدنس صرا حت کر دی اک : 

”لم اسمعه من الزهرى ولا ممن سمعه من الزهرى بل حدثنى عبد 

الرزاق عن معمر عن الزهری"(شرح القاری : 4۲) 

نکی یی نے وت و یر اوت تی ی ق 

بلک یر وات ےکپ رارز اتی ےر ےا و ہے ز ہرک سے با نکی ے ' 

اس وا قہکو بیا نکر کا مد ىہ ےک اس س راو سفیان بن عینہ نے قووصرا حت 

کردگی ےکہ ٹیش نے ز ہرگ ےک سنا ]شی اس سے می ری طا قا کل مول _ 


صراحی کرد ےک فلاں راو کی فلال مر وی عنہ سے لا قا یں بو یز ا اس ے سار کا 
وی ہےء اود یہ زج رن نظ کت سےمعلوم مون ہے ا سک ال غل بیردایت کر 
کال : 

”قال العوام بن حوشب عن عبد الله بن آبی آوفی کان النبی ون اذا 

قال بلال :قد قامت الصلاة نهض و کبّر“(مجمع الزوائد )٠/۲:‏ 

ال دوا تک سند کل مگ تے بو کے ابا ماک رز ایاکہ ”العوام لا يدرك 

ابن ابسی أوفیٰ“ کمراوئی ۶ا م مین حوشب عبر اٹہ ہن ای اوق کول پایاادراس نے ای 
تلا قات کل ۔(شرں القاری: ے٣٠‏ ) 


ژاتررا وی تخل روا تکاگم: 

7 روات ی ای سن شی کول ایک رای زا موا ایگ ےزیادە راوگ زار مولتو 
ای صورت میں اس روا تک اس سند پر نلیا سکا یں لگایا چا ی سند م ےزیو 
یں ہ ‏ ےکیوک جج ططرق می زیادی کےا ن ےکی وجہ سے نمی لک اور عدم طا قا تکمین 
لک کوگرکان ےک اس روایت نرق مش ر اوی وم ات اد ہو گے 
»ول تن وه روایت؟عز یرل الا ای سکیل ے ہوش ی قلا ےآ گی۔ 

اہم علا خیب بر اد نے دوو رکا ر کی ہیں جن کے نام مہ میں : 


ع ړو اتر او سو وو ی ۳۳۵ 

۱.. التفصیل لمبهم المراسیل - 

کو انریا ف ف نات 

امد شسقط اور عز ف راو یک وچ ےن رکی اقام اوران کے اکا مک یا نکل ہوگیا_ 

آ کےا ہا ب کاییا ن نشردر »ود با سب 
KHK Kr... KE KF‏ 

SS 
لام یر اعد القسمین  0029 ذلك وم‎ 
- َر یبا على اشد فَالاشَذٌ فی مُوُجب الد علی سَبیٔل التَّدلَیْ‎ 

تر جح : رن رادکی کے دس وجوه ہیں ان میں ےش دور ےش کے 
ال ز یاد تت ہیں »ان یٹ سے بالق( راو یکی )ع دالت سے ے 
اور پا کل ( راو کے )طط سے سے ءدوفوں اقام مس سے برای و 
دوسربی سے ایک اہ یھت کے ٹیش نظ رم زک کر یکا امتا مک سکیا اج جو 
تحت اس (عرمتییر ) کا ققاضکرکپی ے اور وه لت ان وچو هآومو جب 
الررش اشد فا لا ش دک 2 تیب پر اس رح فک کنا ےک ای یل ال درج سے 
اد یدرک طرفتڑژل بو 


روک دواسباب: 

کار مردددہو نے کے دواسباب زک ہو سے تھے ایک سب تیل راوگ اوردوسراسبب 
لع راوی »پل سج ب کا بیان اور بحٹ پور 7 ہاب یبال سے ووسرے مبب ی 
رادیکیھٹ شرو وریا چ ٠‏ 
معن راو یکا بیان : 

ہی راو ی کی کل و جوہ اور اسباب دک ہیں ء ان دس شل ےش اسباب دوسرے اسباب 
کے مقايلہ یل زیادہ شد ید او رت ہیں اور شد یل ہیں پچھ ران اسبا بکی دبڑکھیں 
ہیں ء اس طر کان می سے پا اسیا بل راو یک عدالت سے ے اور پا اسیاب 


عرڈانظر 00000 بنج 

کال ر اوک کے ضط ے ے۔ 

عاف ے فر مایا کہ نکوره ووتموں ( متعلقی پا لع رل تلق بالضبط ) شس سے م رای ی مکو 
لیر , طبر کر بے وک رک نکیا جات یل س بکو عدالت اور ضط کے 9 کے لخر اشر 
فالا ک تر تیب کے مطابی زک کیا جانا هد اشد ی تک بفیاد پا نآو مح بکیا جا تا ےکہ 
سب سے زیا دہ شد یهد مکی جا جا ہے پا راس ےک شد یرک ی یبآ خرس نو ظط مون ہے 
ابش علاء نے اشد ی تک تر جیب کے مطا ان در کیا بک ان ووتصو ںکوا لا کک 
کے ذک رکا ےو ودوفو ں یں لیر ہمد ہر میں : 


لاد الطغن ما آذ يحو یکذب الراوی فی الْحَدِيْثِ اللبَوِیٗ بان 
رو عَنْه صلّی الله عَليه وَعَلی آله وصخبه وس ما مه مدا 
يك او تهمی» بنيك بأد وروی یك الحبیّت لا من حهعه 
ويون مخ ایشا لِلقَوَاعد الْمَعُلُوْمَةَ وَكذَا من رف بالکڈب فى 
کلامه وَإِن لم یَطْهْرمنه وفع ذلك فی الْحَدِیْبِ النبّوی وَهذا دود 
الاو ل أو فخش علط ی ثرت و عملي عن الانمان ۔ 

و جممه: ال ی یش نوی رادگ کے فو کی مچت 
ہوگا بای طو رک و هآ خضرت صلی وڈ علیہ وم سے قصداد قول رو ای کر ے جو 
آپ کل اللہ علیہ لم نے ارشا ویش فر ایا ءاور یا اوی سم پائقذب 
ون ےکی دجم سے ہوگا بای طو رک وہ نک رایت بیا نکر ے جوتو اور متو رم 
کے الف و ءاور اک طر وه راوی چو ا کشو میں ون مشپور ہو گر چ 
عد یٹ نوک نل ال ےجو ٹ کا دقو رع خلا رنہ موا ہہ میم مہبم کے متا بل 


1 BASES SOE ورس‎ 


عد ہے لنغحقل تک وچ ے »وگ _ 


مر 
0 008+ 


ریا سو یو نہ 
کی طرف قد ا کول و بات اگل عضو بک ے٤‏ مہ بہت بے اکنا ہے (خوا کسی سای کی 
خرس سے ایا کیا گیا ہو )چنا نهد بیش م ںآ ا س ےک رسوال انڈ ٥ی‏ اش علیہ سلم نے فر ایا کے: 
”من کذب علی متعمدا فلیتبو | مقعده من النار * 
”نین جآ دی قصرا مج پرجھوٹ بو دوم تابنا کے“ 
جس راد بیس ین( لذب ا الد عث )»وتا ےء ا سک ردای تکخرموضوخ کچ ہیں 
.....٣‏ جم تلذ بکااعا ی تعارف: 
یہ پل کے مقابلہ م م .الک مطلب ہے س ےک راو قصد ا موی روایت تو ہیں 
کرتا ات رصق ان مو جود ہو تے ہی ں کر نکی وج ےک ب ف الہ ہے“ کی بگمائی 
ہر لت سا وی سی 


کےبخا لف بو 

ب)..... اوایت هد بیش کے ملاو ہ وہ راوگی اپ یو کول بمو میں محروف ہو 
اس سے یہ بدگماٹی مون ےکسشاید دہ عد ی بوک یں کی وت بولتا ہو نس راوی می ہے ی 
( مس یکذ ب ) ہوتا ہے ا لک روا ت کو رمت روک کچ ہیں ۔ 


۳)... .یش خلطکااجما ی تغارف : 
ین ببت زیادوخلطیاں ہوناءا کا مطلب ىہ ہ ےک داد یکی فلط یال اورنطاً ا یکی کر 


ع ړوار AAAS‏ ا 
یا اددد رگ سےزیادہ ہو یادوٹول مراب ہوں :یں راو ی شس کی ہوا سک روا ےکر 

ا 

۳ )..... .کش غفل کا اما تارف : 

ن بہت زا دہ تا ٹل ہوناءا سکا مطلب ہے ےک را وک ا عاد یٹ اور اگی اسناوکوا تھی طرع 
کفووگر نے میس اکشرغفلت اور ےا بج یکر مو راوی شس ےی ہوا یکی روا ےکوی 
رک کج وان 

جا ہل T.-K‏ لیر 
ره باعل لول مما َم يبلغ لکفر وينه رین الأول موم منم رد 
لول کون الفَدُح به مد فی ها القن مالس بالمعتَقد فسیاتی باه با 
یه بائ ری على سل الوم ٤و‏ مالقیہ اي اماب او جال بن لا 
مرف فو تغییل وَلا ترح نا دع وجی ایا ماخ على 
لاب ام عن ای صلی الله عه وغلی آله وَصَعب وَسَلَم لا 
اة بل بعش او و جفظه وهی باه عن ان ایکون عله ال 
من اصابته ۔ : 
تر جمه :یتو( و وط )ا بیغ یت یکی مب ہوگاجوض قکفرک مر 
تک نہ چا وه اس سیب اور یط سیب ( کف مب الد یٹ ) کے درمیا ن و مکی 
تست ہے اور پل سج بک وکر ہ اس لے بیا نکیا کہا ن شس اس ( کب 
کرک )منک وج سے زیادہ وتا ے اور اض اعتقاد یکا کرت ا ںکا 
با نآ گ ےآ این وت مکی وجہ سے وگاب ری طو رک وہ بطو ر وام روا کر ے٠‏ 
امن شا تک تالف کی وجہ سے ہوگاء یا تن راو کی جال تک وچ سے ہوگاکہ 
ال سے تلق تد یل یا جرح تکام ہو ی من برعت راو یک وجہ ے ہوگا 
اور ی ارم اٹہ عل وم سے جوا کا مقو ل ہیں ان کے غلا فی یا ده 
چ زک اناد رکا ہے برعت سے را اد مھا مدان نہ ہو بل لی ش کی وج سے ہوءیا ۱ 
معن راو یکی یا دداش تک ثرا یک وجہ سے ہوگا اور راو یکی غلطیوں کا ا یکی 
درس ت ہونا سوء حفظ ہے۔ 


ع ړوار 017 کن ی کی او دک ریو تہ ۳۳۹۰۰ 


اس عبارت ٹل لہ چروجوه اور اسیا ب کا کر ے- 


۵ ...شس راو یک امال تعارف: 

سن راو یکا فان .گنک راو برد بین موتا ا یکا مطلب ہے ےک راو یکا ایل یکا 
یرہ می تل اورملوث ہوع ارو ات و هناگی هگفری عد س ےک ہو ءا ز اک ناء چوری 
کر بش گا لی بل مکنا وصغیرہ بر مر ناس راوی شل بیطتن ہوا لک روا تکونی مر 
ود - 

4( وتم راو یک اما ل غارف: 

بحن وتا یکر تا ا کا مطلب ہے ہ کے روایا تک سند میں یا تن می رو و بر لکرنا 
ا یں طو رکرخ مل یا تمش کوس لکردے یا ایک رایت کے حص کو دوس ری روابیت کے 
ات ملاو سے یا ضیف راو ی کی جر راو یکا نام ذککردے جس درا وی می یبن ہوا یکی 
روای توش مخلل کج یں - 

ے( د مالفت قا تک اما ی تعارف: 

اکا مطلب ہے س ےک رای دوس رے ڈراو لول خلاف روا یکر ےا انیل 
ا 

۸( کت چهالبی راو یک ا جال تعارف: 

ا کا مطلب ہے س کردا وک کے بار ے میں یتلوم نم وکو ل ے یال - 


جر ن اور ردک مطلب : 

ماف نے ها" تن رایع اور جر کیا تحت نکی قید ال ے اور جرا 
می نکا مطلب یم س کا وک کے رق ہو نے کے سا تح سا تھ یب ذک کیا جات ےک راق 
م ےکی وجراورسج بکیا سے بب کے ذکر کے ا تھ جو جرح موو وجب نین او رل شس 


ړو اتر 00000 مود یی 
سب کر تہ دوه جج برد ے۔ 

ا ھن کی قرا ےکا مقعمد یہ ہک ج رع رداک رتیل بل محد ٹین کے 
پاں وتی جرب متبول ے چو جرح سیب ءعلت کے ساتھ جیا نک جاۓ لت جرح مین ہوہ 
ال تخر ل کے لج سبب اور عل کی ضرور یں مون یش" عدل اش کہا کان 
ہوتا .الک مز ری ل۲ مےبھی ؟ من اورجص راوی شس بیشن موا یکی وای تکوم 
ول کے ہیں - 


a (9‏ برعت راو یکااجما ٰ تتارف: 
ال کا مطلب ہے س کہ راو دن لک اس امرجد ی دک تی ہوجس اع رک اصلیت 


قرآن مجید شش با ماد ہے نو ےش ا رون شروو ها بارش دق ال ہو۔ا سل تفصیل 
آ ریاس 


٭١..‏ وو جف کا اجا تارف : 
نی باداش تک خر ای »الک مطلب یی کر پا ودا ست اور ما فک قراف یکی وجراو یکی 
ول اور قاط ایی ا کی دیس اور یاف سے زیاده یا اس کے برا ہوم نہ ہو۔ جس راوی 
جس یفن ہوا لک روا کشا کچ یں ۔ 
ود نچ دی جا ہی بج تہ 
قالْمسم الأول وَمُوَ الطعن بکذب الرّاوی فی الْحَدِيْثِ الَبَوِیٗ هو 
بلطم دصق لوب لکن لاغل الم بالعدیب مَلکة فو 
رود بها ذلك ونما یرم بتیك نم م يحو رطلاعه تاش 
. وه لاوما ومع رای لا على ذلك مه . 
ا تر جم :لپ ںا اول ف موضور]چاوروههد یٹ نوک شل راو کےگھوٹ 
ہو ل ےکا سے٢‏ اورا تم پو کا کمن نالب کےطور پر ے فی طور پہ 
ال گید اوقا ت تون 1 دی کی بی بول د یا ے »مت عد یٹ کے 
ما رعلا ءکوایما کال مللہحاصل ہوتا ےک کی بدولت وه وچ او رتو ٹک یز 


عرڈانظر ای ASR‏ ا RR‏ رد 
کر یت ہیں علیا ء عد یٹ پم سے ا میٹ ک ےکا مکو وی عا م اجا م د ےکا سے 
جر معومات رکتا ہو روشن زان اون سی مک ما کک ہاور وہ ای تر اک سے 
انی طر واقف »وج هک روایت کے م وضو ہہونے ول کر ے ہیں- 
شر 
اس مقام سے ماف لن نکی دس اقما مکوتقیل بیان ف مار ے ہیں اور کورہ ارت س 


لو کیم اول ےتا قنتقصیل ے _ 


م اول :کب راو یکی بیان: 

عاف نے فر ا کیلع نکی کم( کز پ راوی )کوت رموضوع کج ہیں بت یہاں حافظگو 
تما ہوا کوت یک کم او لکوخ ر موضو نہیں کچ ہلگ کی روایت کے ر اوی میں یہ 
( اول )مو جودہوااس روای تکوجرموضوں کچ ہیں ۔(شرں القاری::٣۴۳)‏ 
ثرموضورن کت ری : ۱ 

چرموضورع ا سم نگھڑ ت دوا تک کے ہی لک کا راوی حون پاللذب ہو دوسرے 
قاط یش بیو نک کہ کح ہی سک اخ رموضو رع اس روای کو سے ہی ںک جس روایت س 
زب الراوک'“ مو جود موا س فیرش شک کی کچ ہیں ۔(ش رح القا ری : ٣٣۵‏ ) 

رکو وخر پر جوم وضو ہو ےکا کم ایا گیا ہے یبن خا اب کے اعقبار سے س ےک کور ہ 
رادی وگ ہ اکر اوقا ت روامعر عد یٹ میں ھون بو هد ا اک رکا اتپا رک کے الگ بر 
روا ی تکوم وضو هد ںو کا یگ شن اور یں ہوتا یوک جوا آری روفت لو 
ول بوما باتش و فد بھی ولت تو چوک اس مج لکذب کے سا تح سا تحوصدق کا بھی 
اتال موجود ہز ااس ال صر قکی وجہ سے اس ی اوق طور پر بش کال لگایا 
گیا بین نالب کے اخقبار سے ا ےی وضو کہا یاس ۔ 

الت اتم حد ی ٹک ایا مللہ اور شصیرت س مون ےکی کے زر لچر دوش رموضورغ 
اور نی موضورع لیر لیے ہیں اک ط رد هجوت اور ویر ولور و متا زکر لیے بل _ 

تی ددایت پر م وضو کم نا ہ محر ث جھے سک جات کین کل زواجت جر ن 


ع ړو لنظر ای ما ی اه ی بل ههور تسش سای معط 
92 سے وا عام عد یث اور ابام موضوع ہو ےک عم لگا ناس میس من درج ذ لی صفا رت 


مو ور مول: 
۱( تک روا ت ی 1اضر روا نے نع وت او راز ورد 
۲ ...... روا دایتعا کا جن روش وو 


۴) م ۳ 

۴) ...کر کے موضوع ہونے پولا کر نے وا ےر ان ےو اتف ہو۔ 

کل حرث کے اند ہے صفات موجود #ول» وہ حث الک ال ےک ہی رواعت پر 
موضوع ہو ےکم لگا سے ۰ا لیے اک میس سے ایک امام دای بھی ہیں »ال قا رق نے امه 
سخا وی کے حوالہ سےا نک قو لق کیاے : 

قال الدار قطنی: یا آهل بغداد لا تظنوا آن احدا یقدر آن یکذب علی 

رسو ل الله ن واا خی -(شر ح القاری:۱ 4۳) 

ین میری زندگی شلک آد ریات کے محا لہ م وٹ بوس ےکی 


ٹررعن ٤‏ بو ےک یں اے جا ن لوزگا )- 
سی لی سای سای ...سب سای سای سای 


7 .00۳80 ضع رار واضع» ال این دَقیْقِ المیّد: لکن لا بِقَع 
پايك لاعیعال أ يحوب کذب فی ذلك الاقرارِاَِْهٰی۔وَقَهمَ من 
بْعضه أنه لَايْعْمَلُ بلک الافراراضلا یکونه کاذباً لیس دی مرادء 
الک ی بان ایب وَمُو جنا ذلك لو ذيك لما ساغ مَل 
امقر بلقت ,ولا رجم المعترفِ بل لاخیمال ا ونا کین 
فِيْمَا اغترفا به_ 

سو جسھه :او رل اوتا ت وا کے اقر ارکی وجہ ے وش موم ہو جانا ہے 
کن علامہ این دیق الع نے فر مایا کہ (اس کے پاوجود )وه طق طور پر 
موضھوع ہیں ءکیوکہ اس مس ہے اتال ےک اس (واضع )نے اس اتر ار س 
وت إو لا ہو تش رات نے ا کلام سے یکلا ک پچ رو اس کے اتر ار 
کے مطا بی با لع ل نمی لک نا چا کید وه ال اتر ار یں جوا ہے تا تم اس 


عر جلنظر 0000000000000007 PEO‏ 
کلام سے پر ما دگل سے رال سے تو قطعی کی ئی تتقصود ہے او رتطییت کل 
ی ےک مکی زم ین نی کوک حم زين نا لب کے اخقبار ےکا ہے اور 
با ںبھی ایا نی ے اور اگر ایا دہ ہوا تک اق ارکر نے دا نے ( تال )کو 
ل کر کال ت مون اور ترز ا کا اھر ارک نے وا سپ ری مزاجا رگا 
مون یوک ان دونوں صصورتوں میں یرال ( ی )مو جود ےک وہ دوتوں 
ا سے ات رار جو ے ہوں۔ ۱ 


راو یکا اق اریم وش کیلع مربب ؟ 

اس عبارت یل ماف یہ بیان فر ماد ے جک اکر وا صد بث خود ال با تکا ا عتزاف 
کر ےکی نے فلا ردایت اپ طرف بن اکر کی ہے نکیا ا ییے اق را رکی وجہ سے ال 
روابیت پر وضو ہو نے اعم لگایا جا گا انل ؟ 

یواح کے اقراراوراختزا فک وچ ےکی ال روات برموضوع ہو ےک رز 
کب علا مہ این د شی الع کے بقول اس صو رت میں بضع کالم کر تیاور 
نی طور یل بل برستورطن بنا لب کے اخقبار سے نی لک کول ناور وصورت یں اقرار 
کے اندرچھی و تک اتال مو جود ہے اور جب اف ار کی ا خا لک ب مو جود ہے نے ال 
ال پاوجوداس شوک مکی ےک کا ہے ؟ 

الہتہ یہاں ایک سوال پیا وکا س ےک جت بھی تر اکن ہیں ان تا مقر ا نکی وج سے ہیں 
کی ت یی سکن رجن الب کے طور پر یگ مکنا چو ا قر یہ کے سا تما طور پہ 
ان و تت ا لھ رک تو لکیوں زرف رای ؟ 

ا کا جاب ہے کا قرائی میں سب سے انم دقن اقرا ماع ے اس 
اترا ر شس ال چ ڑکا وم ہوسکتا تیک جب خود وای بمو تک اع ڑا فک رر پا ےآ اس اختزاف 
کے ترا روایت ہی طور رمع کم کا ہا ے لا وود و رک ےکی این 
دش العیرکاقول ؤ4 رردیا۔ 

تح مین خلا این جز رک وغیبرہ نے علا مہ ابن د فی الع کے قول تراک وا 
کے ات ار بر پا لی لح لک کیا ہا یک اور ال وا کی ےکور ہ صد ی کم وضو نی کہا ایحا 


ع ړوار A‏ ی r E es Sea‏ 
را الط ناسکی اد دا )ترچ 

بک علا مہ این د تی الع کےا مکا تید ہے س ےک وان کے ار ار سے الک رواعت پہ 
مفو بوس کات اون طور یں کلب کے تار سے 
کوان کلام هقرت اور یی نک نی تقصور ے اور اسول ےک لین اورقطعی تکی 
ی ےک مکی دا ز مسآ ینم یرواکیر شرت 
بیشن طا لب کے اتبا ر ےکا ے اوراس مقا م او رکف مل ار اراو ر اعرا کاوتی درچر 
اوردی حیثیت ہےکرجس پنن قالب کے انار سم زا ہےلہذ اداح کے اق ارک 
صوررت ٹل الک زگرہ روات بن فاب کے اعقار سے وفع کا عم 02220 روایت 
وضورع ن ی کہلا مر ,تفر وروی رانک نے اپ ایک ددعت کے بار ےس 
ارارک ے »و کہا: 

" "انا وضعت ححطبة النبى ل“ ( شرح القاری:۶۳۷) 
یھی ری وہ روات ت س بھی اکر صلی اللہ علیہ وم خط کا زر ہے ۷وہ 
س نے ابی طرف ےک ڑی ہے '۔ 

ای طرع قآ نکری مکی سو رق ںکی فضیلت تحت ال می نکعب رل اللد ع کی ۱ 
لعل ردایت سے اس ردایت ےرا وی ے شع کااقرارکیا ے۔ ۱ 

ال ہے »کت مکا دار ویدار غااپ بے ہوا سے یی دج ہ ےک جآ یلاق اور 
اعرا فکر لتا لو اس کے اس اترا رکون الب کے فاا صرق اور بک یولع 
ا سے کیا جاجا سے اگ رکم کے وقوع خن تال ب کا اختبار بو پھر کور وصور رت یں ای 
اترا دک نے وا ةالو لک ےکی کاش ہو۔٠‏ 

اسی ط رجآ وی خووز کر ن ےکا اق ارکر لیت ہ نے ای کے اس اق ا رکوک یں غا لب کے 
طور پر پچ اورصد پو ل کر کے اسے ر کیا ہا ا ہے اگ عم کا رارت الب پر نہ مو تاک 
صورت میں اس اتر ارک نے دا سے زاف ر تم جار یکم نا جا موا ۔ 

کوت ب زور دوٹوں صورتڑں میں صرق کے ما تم ات ی اتا ل مو جود ےک انہوں 
ے اس می ںجھوٹ بولا ہوگرنن نا لب کے اعتبار سے طا ری حا لت د بے ہو سے ہاب صرق 
کے احقا لک را کے ان ب رهم زا ہار یک جانی کوک م نا رسک مکلف یں - 


وار اھ جت مہ سے چس سی سی ۳ ۳۳ 
ون المراین البی يدرك با الرضع ما يُوَجَد ین خال الرارک کمّا وَقَم 
امون بن مدآ هر سره جلاف فی کون لسن سمع عن یی 
هر ره او لا ؟فساق فی الال اناد إلى الب صلی له له وَعَلی آله 
وصخبه سل له قال : سَمع الحَسَنْ من یی هر و ما وق لباب بن 
راهم خیث دخل على امه فده یلم بالحَمَام قسَاق فى الحال 
تاا لی ای صَلّی الله علب وعلی آله وصکبه وس له قال: لا بقل 
فی نصل و حف أو خافراؤ ختاح راد ف لیب "وَحنام" رف 
الْمَهُدِی آنه کذب لاحَلهعامر بح الْحَمّام_ 
تر جهه :اور ن قر ای ے وفع معلوم ہوا ے ان ٹس سح( ایی ید )دہ 
سے جو اوی کے حال ہیں مو جود »داجیا کہ با مون بن اج رکا واقد ےکہ 
الک بل میں اس ا خلا فکا ذکر موا رسن بم ری نے ححضرت ابو ےڈ سے 
روای ت کی ے بل ؟ نو امون نے فراع اکر م صلی اش علیہ وسل مک سند 
مت با نک یک ہآ پ مل الل علیہ وم نے فر اا کن نے حطر ت الد ےڈ 
سے روا تک ہے اور ای طرں اسف بن ابا کمک واقعہ ےکی ونت 
وہہ دی کے پا گیا تو اس کوت کے سا تح مکیل ہوا پا مق اس ( یا )نے 
فو رای کر لی ا علیہ یل مک سل جیا نک یک آ پل اللہ علیہ سلم نے 
رای کہ بازی لگا ناک نی گر ترادا زی شش با اونٹف می با کھوڑے میں با 
بے ملاس (غیاث ) نے صد یٹک هل" و چا" کا اضا ذف /دیا 
.ا چم مہ دی بک گیا کہ اس کش مر ی خیش کے لے وت بولا ہے ال 
بت وت 


ان دش کابیان: 
اس عبارت سے حا فان قر اکن اورعلا ما کو کر فر مار سے ہیں جن کی وج ےکی خر سے 


موسوع ہو ےکا م ہوتا »یک دوق ائن یں الت اک رگش اقا رواخ ری ان میں 
ام کرد پا پل رع موی نین کے 


عړ چ ار ا ا EAA‏ ا ا ا او FEO‏ 


ہلا ر ید عا دت را وی ا مال راوی 

وش عد کا پہلا خر ید راو کی عالت اور عادت ےکا لک عادت اور حالت سے 
معلوم وچا تاس کہا کی نے مخاط بکوخو شکر نے کے ے وہ روات کرک ے ی کی ت ار اور 
اختلا فکوش کر نے کے لے ی ےک یکی ے لک راو یک عادت ہے س ےک وہ ظلقاء اور 
امرا مکی ماس میں تصولي ما لکی خرس سکول ایک رواعت بی کرد چا سے جو ان اھراء کے 
افعال دعادات کے لے مو یل یاان کے موان ہولی ے۔ 

چنا جرا یک دق با مون بن اح یکس میس چندلوگوں کے درمیان یا خا ف ہو اک خضرت 
کن بر لک جحخرت الو ہر ے سار عد عمش ثایت ہے بل ؟ اس اختلاف می ما مون ان 
سار کا ای تھا تو اس نے فور رت اوہ علیہ و مک س رصل کے سا ایک 
رایت یی یکی: 

”أنه مه قال سمع الحسن من أبی هریرة “ 

کپ الش علیہ کم نے فر ما امن هرک نے صرت ابو بے سے ردا تک ہے 
اوران کا سا غات ہے اب ال واققعہ ہی ما مون نے اچ قو لکو ران کر نے اور ال 
اختلا فکودو رک ےکی برخ روع کا» ال یبد کے زمانکی بات تضو رک اللہ علیہ 
لم کے انرک پات ال ہے یروا کل ضوع سب - 
۱ اک رح غیاٹ بن ابرا تی کا واقعہ س ےک وہ ایک دفعخلیفہ ارون رید کے دالرگر 
مہ ری العا کی کے پا گیا تق اس ونت مہ ی ای بور کل ر ب تھا جب غا ٹ شی نے 
یکمک مهد کے تج ہی کو رہ ےق اض نے یر یک کے کے لے ایک ی 
روات یل پرندہ کے ت کر ہکا اضا گر کے س سل کےسا ھی ہکھا: 

”أنه َه قال :لا سبق إلافی نصل أو حف أو حافر أو جناح“ 

کہسوقت مرف رانا زک ءاوٹ :کھوڑے اور پرن ے مل ہے انع کے علاوه یں 
سغیاث نے اس روات یل "او جسناح“ کااضا کیا رہ ی ب اراس رج خوشل 
کر نے اور نامع لکر نے کے لج یوت بولا ہے تا مک مہ دک نے ا کو پا رد رم 
دزن اوروا لی یگ دیاء جب و ہا لکیئاس تچ یاو مہ ی سے ما ضر بین ن ےکہا: 


حرڈانظر سس مسا شر PEA SR N AS‏ 
"آشهد على قفاك أنه قفا کذاب“ 

ک ایک جچھوٹا آ وی واچ ںگمیاء اس کے مخ کی کہ اک می اہو اس( یات ) کے 
وت ہو ےکا سبب بنا سے مل اا یکیو رکوز ن کرد و -( نش انقارک:۳۳۲) 

اک مر ایک فد ها دیش ہن عبدالز یی ےکی نے باکر که رن ہوا؟ نو 
7 بے پل رن کن ا بقل رش سل 
لیر یدق ہو اہ بی جوا ب یکر سائکل ت کہ اکا لک وع لکیا ےو ا بی با تکوغا ہت 
رن او راکو کر نے کے ے ال نویر دای ھک ری لکردی: 


”حدٹتا ابن الصوافءحدثنا عبد الله بن أحمد ء حدننا آبی » حدٹنا 


عبد الرزاق عن معمر عن الزهری عن أنس رضی الله عنه أنه قال إن 
الصحابة احتلفوا فى فتح مكة أكان صلحاً آو عنوة ؟فسالوا رسول 
الله مضه فقال: کان عنوۃ“۔ 
کاب الصواف ے س رتل کے سات روات یا نکیا حت ال فر اک ع 
کک کے بار سے میں سیا هراک درمیان اختلاف ہو اک آ یاو کیا ہوا سے ی عنو؟؟ ت می ہے 
کرام نے رسول انش ی ااشطیرو مت در یاف کیا و آپ نے ارشادفر مایا کک رر و٤‏ 
ہوا ہے ۔ اس روایت کے راو یگ حالت سے تو موم موتا کرای نے بد دای گی سے 
علا٥ہ‏ از ی اس راو نے اس کے شع کا اعت ڑا یک یک رل تھا (شرں القاری:۳۳۱) 
جل لو جار r...‏ جار جا 
ومنها مَا يُوْجَدُ من حال الْمَرْوى كان کون مُناقضا لنص ارآ أو 
السنة مان ة او الاجخمّاع المَطعی او صَرِیٔح العف حَيْتُّ یل 
یی من ذلك التاویللم مرو تاره برع الواضع تاره باد 
من کلام غَیْرِم کبَمض السَلَفِ الصشالِح و مُدمَا الخکماء أو 
الاشراییّاب أو يَأمَْذُ عَیِبْنًا ضویف الاستاد یر کب له سادا 
تر جمه :داك ری یں سے ایک دوه جور وا تکردوعد یش یں ہوتا 
سے شلا رو اہ کا ص تقر انی ی رمتو ات ی افلتی ی صرح قل کے اس طرں 


ع ړوار یہ میتی شر شا سر یس اسم تی ہے PPA‏ 
الف ہو کہا مشک تا درل کن هروه رداعت بھی ای ہہوکی سے 
کہ واش ( راوی) ا سے خو کج ہے او یی وه دوسرے حخرات کلام سے 
اخوذ ونی ہے ملا سلف صالین یات تمس کلام سے یا سرا مگ روایات سے 
(ماخوز موی ہے ) یا داض عکوگی ای عد یٹ لتا ےک کی ست ر ضوف اور رور 
#واورال کے سا تح ایک کی سندجوڑد تا ےتک دە عد یٹ داع پا جائۓ۔ 

تر 

اس عبارت میں اف سورع کے دوس رے تر ید ہیا نکیا سے او رسا تھ کی میا نکیا ے 
کرش کر دہ روا کیک کی صو یں ہوکتی میں ؟ 
دوس ار ین :الفا ظا عد ٹک صو شرع ےتا لفت : 

ص عد ب ٹکومعلو مکرنے کا دوسا ر ینہ ہے س کہ کی صد یث ٹس بیان شد ہ ا رکو د یا 
جات ےک و ووک ی شرع سے ما لف و یں ے؟ اکرو وضو شرع کے مخا لف مولز ہا ل یا تکا 
رید س ےک دہ روایت موضورغ ےل ت اوقت وہ موضوع روا ین ق ٦نی‏ کے مخا لف 
ہوگی اش اوقا ت وون رمتو ا کے خخالف ہوکی فش اوقاست وہ ا ہا رطق کے من اقش موی 
02 اوقات و اور قال کے کل خالف ۴ »اور اور صورتال س ئا شت اور 
تا اس ط رع ہوگا کہ ان فصو »یار اود تاش دغی رہ کی تا و یکو یکی نہیں 
ہوئی ای صورت شل وه روات مردوراورموظور) ہوگی چنا مرا نک نے را اک ہرد ہت رج 
کی کم پا لکی مو تم و اور و کی مکی تا وی یآوقول دک ےا وور مون سے تی ا یکو 
موضو عکہا اک ۔( تع ا جوا حع :۱۳۳/۳) 

اب نکرپ وتیل میں رتوا مراد ہے اخبا ر پور و اور اخپارآ ادنیل ی 
ار رواییت کنر شور با روا عد کے موارش »و تفارش اک روابیت کے موضورع ہو تک 
وس مان ےی 

اک رح تما سےا ما تھی مراد ےکن ایب برع غ رکون مواو رت ات کے سار 
تقول ہوء اس ہے اماع ول یاوه جا جو بطر ان ما تقو ل ہو مرا وس ےل ہد ا اکرو 
روایت اام کون کے موا رش ہو یا سےا مارم کے تالف ہو جو بطر ان ٦‏ ھا منقول ہو اس 


الف روا تکوش ر وضور کی ںہیں سے - 
بض حضرات نے اعطق سے اجما ق یکوخار کیا س ےک اماع ی خر واحد کے 
ورج ٹل ہوا ےہذااجما رپ نی کےبخالف روای تکوم وضو ر عبس ہیں E‏ 
(مرالقاری:۳۳۳) 


شی خی کی صو رش : 
کرام کر نے ریقف سور ہوک میں 


ا يش 
دیاب ءا سکی شاش یز ری یں۔ 


ا مم وت 
طرف نو کرد یا لا یتک گرم اف وجهم کےگکرات ہیں حض زت ص نکی موتو نات 
ہی لک کے بارے ںہو ر کر ”کلام الحسن يشبه کلام الأنبیاء “لہا نک کلام 
ایام کلام مشاب ہوتا سے اور ما کک بین ویار یل ین عیاض اور ریت جنیر کے 
افادا تکوکی ذکرکردیا جا جا ےء اک رح ام یل سے مار ث ب نکلا«» قاط اور افلا طو یکا 
کم بت 

)...تی رک صو رت ی ےکہدائٹع اوی اعرا می ر وای تکوذک کرد چا ہے ء اوران کے 
لام رمشاک اقو ا لکوسز رص لکیہ جح ذکرد چا ے۔ 

n (e‏ چم صو رت ہے ےک واضع نش اوقا یکو ای روایت افیا ررح ے م[ سک 
سر ضوف ہوئی ےکر روا کا تن ی ہوجا ےا دو واضع ا متن حد یہ شک وک کے .لئے 
ا کی ایک ی سند بات ہے اوراسے اس ی سند کے ساتھ بیا نکرتا ے۔ اک صورت میل ہے 
روات سن کے اعقبار سے موضو ر گیل ےکر ین کے اتپا ر سے وضو )لب 

جلر و و YE‏ ید جر 
ولْحامل یلام على الم ما عم این كالرنادقة و عَلبة 


انظم ا تا ا اس A‏ ا و ا Pe‏ 
الْجھل کبَعض امن او فرط ایض امین أو اتباع 
هوى لیغض الروساء أو الاغراب لِقَصّدِ الاشیها رب كل ذلك حرام 
ماع ملي بم إلا اڈ بغش الکراه بعش اضر یل 
هم اح اوضع فی ارُب واشزمنب وهو عطابن فاعله نا 
عن هل ل رنب رامیب ین مه الگا الشر یه 
نات ان تمد الُکذب عَلى الا ی ول اه یه وعلی آله 
وصحبه ول من الْكمَاروَمائع تُحَمَڈ الخویین فکتر نمشد 
کب على الب لى الله علیہ وعلی آله وصخبه ول وق 
علی ریم روا سول مرن باه له صلی الله لب 
وی آله وضخبه وسَلَم :من خڈث نی بحدیب یری آنه گب 
هر اخذالگاذبین» أخرجَه مُسلم_ 
تر جم :اورداش کوج هد یٹ پرابھار نے وال ام یهد ی مون ے 
کے ز ادق یا چمال تکا غلے ہوا ہے جی ےپنن تیا تکز ‏ رارگ یا ہیی کا لورت 
ہوتا سے تی ےلت مقلر بین یا اما مکی خوا لکی اج ہہوتا ہے ایخ رغ بکو 
ہو رکرجمقصودہوتا ے( یا جر یب میا نکر کے انی شہر صو و موی ے )ان 
سارے امو رکی رمت پر مت ر شی ن کا انار ےہ اتف سکرام اور حش 
صوفاء ےکا مکی تیب وت میب کے لے فر وش کر ےکی ابا ح تقول سے 
ملین اق ی سے اور ا فی کا ناء ا نکی جات کوگ تیب 
ور ہی ب بھی احا م شرع مین داشل ہیں (اور احا م شرع ےر وضور سے ما بت 
نی ہوتے )او رعلا ءا لامکا ال بات پہ انفاقی ےک نی اکر م مکی اش علیہ سلم 
پر تد جورت بولنا گنا ہکبیرہ سے اور جو یی نے اس مستلہ میس مال کر ے 
ہوۓ نی ارم اللہ علیہ هط پر قد دا جھوٹ ہو لے وا ےک یع رکی ے اورعلماء 
اسلام سے تر حوضو کو گے روا تک ےکی حرمت پا تفا کیا ےکر یک وش 
کی صراحت کے سات مو کی کم صلی نی وم کے ا قر ہا نک وچ سےکہ جو 
آدٹی میری طرف سے عد یٹ بیا نکر ے اور ا سے معلوم مرک وٹ ےووہ 
مونو ل مج سے ای ھون ہے ا عد ت کا اما م سکم ن ےکی ے۔ 


FS سپ‎ ي٣‎ N عرڈانظر‎ 


اس عبادت میں حا فی نے وش خر کے اسباب اور رکا ت بیان فر ما ئے ہیں اور اسباب کے 


اا 

ماف نے د عد یٹ کے کل با اسباب ذکر کے ہیں : 

۱( - وکا پہلاجب ےد نی س کک لوگ ےد بی او رگ راب یکی وجہ سے ۶وا موک راہ 
کر نے اور د بین سے نف کر نے کے لے ےکوی دیشک لیے ہیں درا سے گام یل بیا نکر ے 
پھرتے ہیں کے زنر انلو کرت میں - 

زن ان وہ لوگ ہو ے ہیں جوظاہری حاات کے فاظ سے مسلمان ہوتے ہی ںگگراندرو لی 
لور کا رہ ے ہیں چنا نماد بن ز یھ کے تو لی کے مطابق ان ز ادت نے چوده بزارامادعث 
کم ری ہیں اوران سے لوگو ںکوگمرا کیا ہے اور مہ دی کے پا و ایک زن ان دبی نے اس 

* بات کا با تقاعدہ اقرا کیا سکم جا نے چاه ہار اماد یٹ انی طرف سے بن اکر لوگوں میں 
یل کی ہیں۔ 

اک ط رع جب عبد الک ریم بین ای العو ہا ,کومیرجھ بن سلبان ےک نے کے لگ رفا ری 
ت اس وقت عبد ار کہا کہ یں نے تہاری خاش کے مطابی چار بترار اسک امادیش 
کی ہی ںکجن میس میس نم ا مکوعلا ل او رعلا کو ا مکیا۔ شرح القاری:۷٣م)‏ 


پر خر کرد ےے یں کی ےش صوفاء ہی ںک وہ فال اور تر خیب وت ہیب کے باب ں 
اعاد یٹ و کرت ہیں اورده اپنے زگ اورخیال باعل می ا لآود رین تصورکر تے ہیں ءا یکی 
مشثال مس ر اوک ایوحصم رت فوع کا ق زور ےک انہوں نے ق رآ نک رم ی‌سورتل کے فضائل 
سے تحلق حر گر مہ سے ایک ردایت میا نک ء جب ان سے بے چا یفالت رآ نم 
رت ر مہ سے تم نے یہ روابیت کی کی ؟ جب ہن مہ سک دوسرے شاگرد کے پا ی ہے 
. ادا کیل ہے تو ابوععمہ نے واب دیا کرد رال پات ہے کل نے عوا مکی عاات 


ع ړوار تہ امن ہت rrr‏ 
اک وہ رآ کرک مکوچھوڑکر امام ال فقر اور من اسحا کی جار اور مقا زی می خو 
ل ہو گے ہیں تو من نے عوا مک رآ نکی طرف لا نے کے ے فضا ی ق رآ ن والی روا روا 
سے۔(شرں القاری:۳۳۸) 5 ۱ 

e (r‏ شع کاتسا سب ہے س ےکر راو ی تحص ب کا شکار ہوک رکو ر وای گت ے چنا جج 
ضس مقر بین ےا سے نم ہب کے سا تح تحص بل ناء پرا سے امام کے فضائل اوردوصرے امام 
کے رزال سے تلق اماد ی گفری ہیں ء چاچ ما مون مین اج الہردئی نے حظررت امام شا 
کے خلا فش تحص بک وج سے روات ذگر لا ے: 

"یکون فی أمتی رحل يقال له محمد بن إدریس یکون أضر على 
أمتی من إبلیس“ 
او رتش وگول نے امام اعم کے فال مس ےر دای تک کی ہے : 
”ابو حنیفة سراج آمتی" (شرں القاری:۳۳۹) 

۳ )...و کا چوتھا سب یہ ےک اھرا مکی خوشتو وی اور اتا کی خر سے ا نکی رائے 
کے مطاب کول روایے گی ڑی کی ال سے ا سک ال پیز ریگ جس می کی کو زنع 
کر یکا ذکرتھا۔ ۱ ۱ 

۵( 27 وش کا پا وال سیب ہے س کہ راوگ یکو اپٹی شرت اور نام وو لقصو و ہوتا ہے ال 
خرس سے وہ گیب ور جب دوا گے ییا کرت ہے تا کرلاگ ی هد نکردہ بہت باعلا مہ 
اورمحرث ہے چنا نایک دف وکا داد ےک امام ام نیل اور ام سک بن من دوفول ایک 
اکس کرد ہے ےس ر کے ددرائن انہوں نے بخ اوک شرق جاب رصا ص کی ہا پر س 
ماز ھی ہنماز کے بعد ایک خی ب کی ڑا ہوا واو رای نے امام اھ بل اورامام یی ب ن 
کے واسط ےد رذ گل روات یا نگ : ۱ 

”عن معمر عن قتادة عن انس قال قال رسول عة من قال لا اله الا 
الله یلق الله من کل كلمة منها طائرا منقاره من ذهب وريشه من 
مرحان “ 

اس دوران ہے دولل امام ایک دورود کے گے اور لی ینیشن نے اما بن بل 

سے بپ چھاکہآپ نے اس سے هیهت میا نکی ہے؟تذ امام ات تنل فر ای اک شی یہ 


عرجالظر E‏ ا ا ا ا ا ا ا وو ور مر 
کے بیا نک رکا ول » میس ےلو یکی نیک ہے اس سے پم شس هکت لگ - 

خیب صاحب جب اپ بیان سے فار ہو ےل لی ین تن نے پا تد کے اشماارے 
سے اس خی بکواچے پاس بلایا خطیب صاحب فور آ ہے (شاید ہے وتم گیا موک شش نے 
بہت نی | بویت زک کیلب | انعم ےگا )»ال کے نے کے بعد بی بن تن نے اس 
سے در یاف تکیاکہ یی دواعتآ پ س ےکس امام نے با نک ؟ ای کہ اک اھ می نل اور 
بی بن من نے کی بن تن کبک کی بر تن ول اور امام ا بن بل ہیں گر 
ہم نے لو بی طکوروعد یٹک لک 

تو خیب کہ اکا چگ بت نآ پ ہیں ء میں سس لکن در پا تھا کہ لی من تن اق 
ےآ رج ےا لک تشر + ول ہے مو لی ب ن اکآ اور اک بو ؟ تو اس 
کہا کیام دوفول کے علا وہ وتات او رکوگی سک بن ان اور تهب لت ہے؟ یس نے 
تو اچ ری ن مل کے مل و وس اج ب مل نا ی روا سے رها ملک ہیں ۔ 

اس کے اعد ابام اھ بن “بل نے یبن ن کے منہ پر پا تد رک ھک کہا کے چموڑ و الکو 
جانے دوہ تو تطیب صا حب ال دولوں اا مو ں کا ےا اڑا ہو ےا گے 

(شرں القاری:۳۵۰) 

رم 

مع رحفضرات مرگ نکا ال جات بے اجمارا کہ وش تج رکا رگ اور بب ج بھی ہو عبر 
صورت ون را م اوتا چا لے ۔ 

الب ضکرا می اور صوفام ے تقول کڈ اب اددعذ اب ےیل سے جوا وم 
ہیں ان کے لئے احادیث وش کن چا اور مباجع ہے ۷ت ا کل ہے تا کان اخاد یٹ موضوے 
کے ذر لیر وگو ں کو نی ککا مو لک 2 خیب دی جا اور بر ےکا مول سے در وکا جا ئۓ - 

ان حرا رت صوفاءاورکراميکا مت دل وه و رعد یش سل ٹل "من کذب 
علی“ کےالفاظظآ تے ہی ںکراس مس علی ضر رکیل ے اور ہم ضرراورققصان لئ وج 
کن لے مع سک کے کت -اکطررح حا ین تن کی 
علمت "ی نضل به الناس“ آ گی ےلو لوگو کار نے لیس یلکلا بکا کا کر نے 


ع ړو لطر ا کہ یک ی ی VEO‏ 
اورع زاب سے بچانے کے ے ای اک تے ہیں لزان نیب اور میب کے لے اماد غو 

رن میا ال 

حعافظائن ر ےر ماب اک میت و پلا ت اورا تد لا لات ان لوگو لک چیا لہ تکی دمل میں اور 
وح کی ابا حت می ا کو ای جیا یک وج ےی کی سے اس ل ےک غيب اور جیب نے 
اا مر شس سے ای ک عم ہے اورک یحم شر یکوت ر وضو سے ما بر گرا اور ا ںکو ا بہت 
کر ن کون خوش کنا دوٹوں نا جا یں کوک علماء اسلا م کا ای بات ب اماع ےک 
حضور اکر م صلی اٹہ علیہ وسلم ہے قص را عجھوٹ بول گنا هکبیرہ سے او رک تم شر یک وکنا هیر کا 
ا رکا بک کے ما بم تک نا ہا یں ےکک علا م جو نے فو وی خجر کے سد باب کے کیل 
نظ تضو راکرس صلی الد علیہ و پر تد وت بو لے وا لن ےکوکا فرقر ارد یا ہے 
خرموضو کو پیا نکر م : 

عیام اسلام کا اس بات کی اما اور اتقات ےک خر موضو )کو موضوع مو ےکی 
صراحت کے بغر روا تک نا اور با نکر نا 7ام ے الب اگ رخ رموضوع کے سا تھ بیصصراحت 
کر دی جا هک وضو اس می اس کو با نکر ےک کیت سے کیک ریخ مل مس 
ےک تقو اکر صلی اٹہ علیہ یلم نے فر ھ0" 

”من حدّث عنی بحدیث یری أنه کذب فهواً حدا الکاذبین* 

کین ی ےا ی ا یا کر ےشن کے ا ین رت او 
کہ یوت لس اور پر وه وا ہو کو بیان نکر ےا و هجو نے لوگوں میں سے ایک 
2 ہے - یر اس عحورت یل سے ج بکاذ ث کو کا صخ ما ٹیل او راگ ا سے 
کا صیند یلآ اس مطلب ہے ےک دہ با نکر نے دالا دوگو کے افر ادل سے ایک ے 
کہ ایک تے ا سخ رک اشع جوا ے اور دوس راف سو ٹا ے جوا س تب رموضو )کو بیا نکرجا گر 
اس کے م وضو ہو ن ےکی صرح تک لکرجا۔ و ارڈ اعم پالصواب - 

جا E E KK... KK‏ 
والْقسْم الثاني من أَقسّام مود وهو ما يكو بِسَبّب تَهُمَة الراوی 
بالکذب قَھُو لمرو مراابث المُنْگُر علی رأي مَیْ لا يَشُتَرط فى 


ع ړوار O. BATE Cr ae‏ 
الْمُنکر قید المُعَالقة و ذا الرابع والخامس فَمَنْ تخش عَلطہ أو 
قر جم :اورت رمدو دک اقمام یں سے دوم ری خجرمتردوک ہے اورمترہ 7 
خر ے جوراوی لس تکذب کےاعقبار سے (مردود) ہواو ری ریم مت رشگر 
ہے ان حرا تک راۓے کے مطا ای جو هر میں ما لف تک ت رکش یں قر ار 
دی ء اک ط رع چک م اور پا نچ بحم ے یں جس راو یک فلطیا بو یا 
مفل تک بہتات ہو یاوه فا تروق ا سکی صد ےکی نرگر( کھلا فی ) سب _ 


7 
جو 


ر ‘U‏ 
حا فا نے ال عبارت می ںخ رم روک او رت رم رکو ہیا ن فر مایا ے۔ 


سول ترف : 

رمت ر وک ا روک ہی لک ج کی ا ہے را دک ے موی مو جرا ویم بلق ب ہوء ایی 
راوخ مر ھک نت ہیں ا ےرم وضو رت ںکہیں م ھکیو کش اتبا م سے بضع کم لگا نا جات 
نہیں ے۔ 

ښ رک ریت رہیں: 

ط نکی تیسری ء ,چگ اور پا نچ یم جس راوی میں ہو ای روای تکوش رم کے ہیں » 
دوسرے الفاظطا س ا کت ریف ال ےکس راو یک غلطیا ںکش رہوں یا غفل کی نات 
ہو یال ےس کا پور ہوا ہوء ا ےے راو یک روا کوخ رم رکتے ہیں _ 

درگ ری ممکور ریف ان حف را تکی را 2 کے طا ان ے ج وح را مر یں اور 
رواة کی الق تکوش وگل تر ار دیع بای جن حضرات کے نز ویک مر ہو نے کے لیے 
تخا لفت قات رط ہے ا نکی دا سے کے مطا بی مخ لت کے یر کور ہ تنو ں صورتڑں یبر 
مر ہل ےی پر وه عخرات فرماے ہی لک ا/رضیی راوی راو کے غظلاف 
روا تکرے و ایی تالق ت کی صورت میس تقد راو یکی روای کوچ رمح روق اور ضف 
راو یگ دوا کوٹ رگ کے میں _ 


پانظر سس مس اہی سس جس را ہر سر N‏ 
مرل ےکور و وولو ں تم لفرن میںفرں: ۱ 
خر رک زلور ہ دونو ںآ ر یقول موم وتو ن وج ہکی ضبدت سے ا ی ضبدت کے فیا 


قات کے غلا فک روا کرت ےلو ای صورت س ره وولو ں آخریقوں کی دوه ے 
روات ترم رکہلا ےکی ےاج ی ماد ہے ۔ 


رواة کلف تک لکرج و اس صورت عل ال راو یک رایت مرف قا لف تک ش رط نہ لگانے 
دا لے عفرا تکی راۓ ما خی مگ ہلا سک دوص رےحظ رات کے ند یکلا "يم 
پلا ات اق اددے۔ 


1 و ے ضیف ہے اور ال ضیف رادی ی رواهت دو سے رح رات کے تالف ہے 
و صرف تالف تک ش رط لگا نے والوں کے نز ویک ا کی روای تج رمگر بچ» ددرا افر اق 
مادہ سے واش اگم ا اصواب 
E r...‏ 
م رهم ور الم الشاوس »نما فص به ول ال إن 
اطع عَلَیه ی علی الم بالْقراین الڈالَّة على وَهُم رايو ین فَصُلِ 
مرس أو مُنْقٌطع أ ال دیب فی دیب أ نحو ذلك ین 
الاشیّاء الادحدة وَبحصل مَعرفة ذلك بکثرة التتبع ومع الطرّق 
هدا هُو المع وین أغمض آنوا ع غُلُوْم الْحَدِيِْ ادها وه 
يموم به ولا من رَرقَۂ الله تَعَالیٰ ما ابا وَجفطا وَاسِمًا مره 
امه بمرایب الروَاۃ وَمَلَكة قوِبّة بالأ اند وَالمتون وَلِهٰذَا لم یکلم 
فيه تنل هذا الشان گقلی بُ العدیین وَأحُمَدَ بن خن 
لحار وَیَمُقُوْبَ بن آبی شَيَة وی حاتم وآبی ززعة والڈارِ 


و 


aa PD A go 4‏ و ھت و و پر ھا یو جو سا و ا لو و A E‏ و 
7 و ام 5 ده : 
قطنی وقدتقصر عماره المعلل عن اقامة الححة على ذعو اه 


عرڈالظر RASS Ree‏ کل یک یپ ۲۳۴ 
كَالصٌیْرَفِی ی تق انار وَالڈَرْعَم - 
ترجمه ر کک ہاور ےب فلع 
ان ہونے )کی وجہ ے نام ہے سا ذک کیا سے اگ راوک وم پا 
تراک زر کی اطلارغ ما سل ہو جاۓ جوت رای راوی کے و ہم پر دا لم تک تے 
ہوں خواه وه (وم )نہ رس لک وضع کر نے ( ی صورت و و یا ا 
( سل )کوخ کر ے ( کی سورت یں ہو یا ایک روا تکودوسری روات 
میں واف لک کے بیا نکر نے ( کی صورت میں )ہو اا ن کول اور مورت 
مو اورا لگ بیان ( مالا ست روا 3 )کے ببت ز یاد تح سے او رط رن عد ی ٹکو 
کرنے سے عاصل موی ہے بھی ووصورت ےج ںوت محلل کج ول یہ 
علوم مد ی کل تر بین اقمام ٹس سے اوراس( وہ مکی مان ٹین کے 
۳ )ویآ وی تار ہوتا ے بو درست کک و حافظہ روا 7 کے ما ب _س ۳ 
وا تت رکتا ہو اور اسان ومتون پر اسے کک تا مہ ھا سل ہو ی وجہ کر ان 
مفات سے متصف چچر ی آومیوں نے ا تم میں ( لی )گر ہے شلا کی 
بن مد یفام تنل »انم غارک تقوب بن ال شیر »العام ءالوزرھ 
اورامام نی اور روچ معأیل ( ار ی ہکا لیے وا نے حر ث )کی 
عبات اپتے هوک پر وکل با نک نے سے اک طرح ا صر موی ہے جس طرح 
درم اورد یرو هکت میں زرفر و کی عالت موی ہے۔ 


رل کت ریں: 
محلل اس ن کو کج ںکجس میں راو نے وب مکی وج وتف رود لگرديا بو 
(اور الک مق ان کے ذر ی اور ال روایت کے بم طرق شع کر نے کے زر لیر 


(gts 
رمل لی مشال:‎ 
ا سی شال دروا ۃ کے روات ے:‎ 


"......یعلی بن عبید عن سفیان الثور ی عن عمرو بن دینار عن ابن 


OAR و ا ا ا ا ا ا ا ای ار‎ i: 


(صحیح مسلم » کتاب البیوع) 
ال روا بی تک سند من تام روا تہ ہیں اورا سکا من پال تھا یچ ےرا لک سند یں 
وم ہوگیا ہے سی وجہ ے بے روا ترمتلل بک کیا ہے چنا نج رال روا تک سند س ایک 
راو ”گرو بن د ینار کور سے ال راوئی کے نام میں تن یی رکو دم ہوا ہے ہے 
درا یر لش بن د ینار کید سفیا ن فو ری کے تنم شا گروول نے ”عبد اید بن د ینار 
کے ساتھ روا کیا ے ء الب ىہ دولل لت ہیں ہز | روات کی ګت کول از یں پڑے 
گا۔(شرں القاری:۳۵۵) 


وتم رل کر نے وا نے شر ان : 
راوئی کے وم پر ولا ا ت کر نے واه چنوق ان مت درج ذ یل ہیں : 1 


۴... 8ج رم فو کاخ رموقوف کےطور بر رکو رمو 
۵( مم شحف راوی ی جد ندرا دی زرا 7 


وتم راو یکو معلوممکر نے وا مر : 

را وی کے وہ مکومعلو مکر تا تشک یک م ہے اس کو محلو مکر نے کے لض رو ری ہ کر 
آ وی استاوا عاد یٹ کے ر ال اور ال ف تون کلت رر کے اورا م اتاد ای کے پاک 
ہوںء اور رهد بیث کے برراوی سے تلق اختلاف پا لک نظ رہ وکر واے یکو و کے ی ا سے 
معلوم ہوچا ت ےکفلاں تر ےاورفلا ں سد نہیں »یال شی تبد بی ول ہےہ مرکورہ 
مشک ل کا موی ما م او رکد ث انیا م د ےسا ے جو مد رجہ ذ یل صفا کا حائل ہو: 


عرجلنظرم ےکی کس دی ۸ن و کر جس ی ہج EOS‏ 

۳)...... او و مو ۱ 

)...روا کے مرا یرت ٹرورےأ اض 

_ اسنادحد یث پر نا رمو‎ 2 (r 

۵)...... الا ف تون تخل ہار مہ رکتا مو ۔ 

راوی کے وت مکومعلو م کرم او ری رومتلل قر ار و ینا بہت و تا او رشک لکا م ے جو 
ی شن کر الا صفات کے حا مین سے ان میں لت حرا ت نے اسم ( وتم )میس 
اویش دماح کیا ہا رات کے اسا گرا ی ہے یں : 

لی بن م ب ۔امام اھ تل ۔ امام بخار ی ۔ تقوب من شب ابو عاتم را زی ابو 


زرط ایام وار ی 


قوله وقد تقصر عبارة المعلل کامطلب: 

حعافظ اب ن ترا سقو ل سے یہ بیان ف مار سے ہی ںکریکسی روای تخل لکہنا اور اس شش وتم 
گیا وج ے واردشد متیر بی جلا ا ایک وج دا یز ے مکی وج ے محل کین وا نے راوب یکا 
کلام مت اوقت ا ولو ده میا نکر نے سے عاج ہوتا ے من اکر ححرث فد 
(مکل کین وا ے )باجا ےک پک زگ کرد عل کی وم لکیا ہے ؟ و اس کے جواب 
مس ححرث ناقد نا موی اختیا رکرتا ےہ وہ اس دیل کے اظهار قاد رل ہوا »الک کیفیت 
فر وش اورصرا فک ط رر ےکی فی (زرفروش)جب ک د ینار یورتم کے بارے می ں کا 
چک جناب !رید ینار یاد رت مکھوناے اور ے ۱ ا اکر اس س ےکہاجا ےک آپ کے 
پاس ا سک یکیادیل سے ؟ او رآ پکو وم وو فرش اس سوال 
Rl‏ »وا ۳ 

رت ای ب کردا تکومطول تر ارد سے پ پا لا 

کالب ۲ 

قابوز دع نے جاب می کیاکی ا کی سی ول و ی او 
میں معلو مکر وتو میں ا سکی علت بیا نکر وکا پر مجر بن سلم کے با جا و اوراسی ردایت کے 
باد سے شی سوا کر وء اود رت باد ے ٹس اس کے ساب ذکر کر ءاس کے بحدتم الو 


عو اتر و" 
عام کے پل جا ءاورای ردابیت کے پار ے یل سوا کرو چ رکم سب نے جو جواب دیا لے 
ال تو رکرو چنا چا ںآ وی نے ایبا یکی اور ال روات کے پارے شل ان س بک 
جواب ایب تھا تاس نے فو رآ کہا "آشهدان هذا العلم إلھام“ کب یم ایک انھا ی 

عم ہے۔ واللہاعلم پالصواب ۱ 
۷۲ 2۲ بی دای دج دہ KK‏ 

نم المُحَالِفَة وَهُوّ سم الساوس زد گات و موا ا 
ی باق لاساد فَالوَافع فيه ذلك لیر مُذْرَج الاسناد وهو سَامْ: 
لا یروق ج ماع الحییت يايند تعقو يروي هم اوه 
یم الكل علی ستاو واجد من یلك الأسَانيد ولا یبن الاخیلات 
تسرجمه :. گرا لت ( اور و یم ہے )اگرسیاقی اسنا یر کے بب 
واک بو یرل مل دا موو همیخ الا مناد سب او را سک کی مین ہیں بی 
عم ىہ >ک مح شی ن کا مقف ریک روای تک کلف اسا نید کے سات روا ےکر 
ے اوران سپ ہے ایگ بی رادوگی ال‌طرن روا کرت س کراك س بکو ایک 
سند میں عکردیتا ےگرا شا فیس ییا نکر ۔ 


خا لشع شا تک اقام: 

اس عبارت تما فرط نک مساو من نا لت شقا تک ملف اقام اورصو رتل زکر 
فر مار ہے ہیں الف کل جج میں ہیں : 

(..... در الاخاد (۴).... مرح سی 

(۳)..... لوب .۰ ...)۴٣(‏ خرعزیدنی صل ال اتر 

(2.....)۵نطرب (۷)..... کف ورف 

کور عپارت یں الق تک کل زک ہے اوراس کے بعد اک کیل مکی چا راما م اور 
صورتو ںکا کر یگا_ 
مرج الا ناد تح ریف : 

تمرم رر الا سادا رای تک سے ہی ںک جس مم سیاقی سرد بل ہو جا ےک وج ےل 


عو اتر 0 2م ۲۵۱ 


روا کی خی لفشت :جا ۓ- 


خر رخ الا ناد اقمام: 
خر ریت الا سنادکیکگل چا یں ول : 


1( سام مرخ الا ارک می 2 

مد الا متا دکی کم ىہ س ےک ایک هد ی تکوم رش نکیا بڑی جماعت لف اساد سے 
روا یکر ے اور ان سب سے ایک ہی راوی ( ج میں مخا لف تکا ہن ہو )اسطرر روامت 
کر ےک اك س بکو ایک سول کر د اور اسانی کے اخ فک یان نکرے۔ا یک 
مثا ل نے نہ یکی وہ روات ے جو اس سند کے سا تم رو کات : 

”عن بندار عن عبد الرحطن بن مهدی عن سفيأن الثورى عن واصل 
ومتصور والأعمش عن آبی وائل عن عمرو بن شرحبیل عن عبد الله 
قال :قلت يارسول اللّه :ای الذنب أعظم ......“الحديث (سنن 
الترمذی : کتاب تفسیر القرآن »سورة الفرقاب) 

۱ سل ر وای تور بی نکی را لہ ری ےکی سفیان سے روا تیا ےلو وا ایک آورهرواعت 
منصور اور اتل کی روات کے ساتھ ھر کوک واسل اپ دوا تک سند شس کر وکو 
کر ںکیا 1 کے" کن الی وات کن کر اڈ کے ر ان ےرواء ےکا ہے گرو متصور 
او راکش کی سندیس ہے بے رت الا اد کی مقا ل ہے(شرں القا ری ٣۲۳:‏ ) 

ون دو دی دا رر رم FF‏ 
والشانی ان یکون المع عنة راوی إلا طَرَفاً من اه عِنْدَه بإِسنَادِ 


خر فیروبه عنه زاو ناما بالإسُتَادِالولِ وَمِنهُأن بَہ سم ایک 


من یه إلا رفا مه شمه عن یه پوایطو یر اوه 
اما بِحَذُفِ الوا بط : 

تر جسهه:-دومرکا ےک( عد شک )تن پا حص کے طا وه ایک راو 
کے پاس(ایک سند سے )تھا اورپ حصہ ال کے پا کسی دور سند تار 
وو راو کل م نکو یی نر کے ساتھھ روا جکر نے 6 اور ای ووسر ی م 


عر ڈانظر ۹۹۹ ۸ج ANS‏ 
ٹس سے رگ جک راوس ایک دوایت اپنے استاد ےکن را کی روا کا 
و تصراس نے استاد سے ایک واسط کے ساتھ سنا قزر وه اس روا تکو ا سے 
ا چادےوا طخد فکز کے زوا تکرنے کے 


در لاد دمک کم ہے س ےک دوا ت کان ایک سند کے سات راو کے پال سے 
اورا کی ست نکب حصہ اس کے پا کسی دوس ری سند کے ما تھ ےکر وہ رای ان وولو ں متو ںکو 
اکٹ اکر کے عرف مکی سند کے سا ھ یا نکرتا سے ۔ 
الک ال وہ روات ہے جس میں رسول ای اللہ علیہ وس مکی نما کی ما لت اورصفات 
کا ذکر .اور لوا تدغ رکیک اورسفیان بن نے ”عاصم بن کلیب عن أبیه عن 
وائل بن حجر “ےط ر ان ےرواے تکیااورال مم لها کر 
"شم حئت بعد ذلك فی زمان برد شدید » فرایت الناس علیهم حل 
الثیاب تحرك آیدیهم تحت الثیاب “- 
ال روات کے پاد ے میل موی من هارون کہا کر ”جت ...۱ ل‌ستر کے سا تح 
مرول ہے یہ جال هدیچ یل" عاصم عن عبد الحبار بن وائل عن بعض 
اهله* کے لبق سے روک ہے چنا نز رن معا ہے ادرالو بد راغ ین ولیر کیہ مد ہ 
یا نکر ے ےن تحريك الأیادی کوعأیدوسندرےءاور ثم حفت سرت 
یا نکر ے مه( شس ازشرں القاریص:۳۹۵) 
ال دوس رکش مکی ایک صورت پیٹ موک کے راک نے ایک ر وای تک تن ا بے استاد 
اور سا گرا یک پ ان امتاد ےا کی وا سک اتا ی ان کی کرد 
تن بے ادیآ گے روا ی تکرتے وق ےگل روا تکواستاد سے روا تکرد یا ے اور 
ال داسذلاعز فکردتاے۔ 
۶ یچ دی با نے جر 
و المثالث اہ يکو ند الراوی نان مُحتلمان بِإِستَادَیْنِ مُحْتلفین 


مس و فا مج ۳ 2 ی و گام و ارو الاو رو و گر 
فَیْرُويْهمَا راو عغنه مقعصرا علی اد الاشنادّین او وی احَدَ 


rar A RSE عرڈالظر‎ 

لحَدِیْعَیْيِ باشناده الخاص به لک یَرِيْدُ فِيْه من الْمَتَنِ الاخر ما 
یس فی الاوّل - 

ترجمه : تہ ری صورت ہے جک رای بان وولف تن وگل سترول 
کسام موجوو ہیں تو اس راوی سے روا تک نے اى 2ے 

ان دونو ل‌عتو ںکوان دواسنایٹش سک ایک سند پر اکنق اکر تے ہو ے رواعت. 
کان کے ی اک مه کون کی ا ہے سات روات 
کر ےکر ای ( ن )یس ووسر ےن سے بل ییا اض کرد ے جو سن 
شل ہے۔ 


.۔-۔ مھ ہت 
سنروں کے سات ہی گر ال نے وولو ل‌متتو ںکو ایک بی سند سے بیا کرد یا ء یا ال نے ا 
طر حکیاکہان دومتقوں میس سے ایک تر کا کی فاص اور سند کے سا یا نک ینگ راس 
ےسا دوس ر ےکا کی نحص شا کر دیا 
لا یک روایت + لک او سعید ہن مرم نے ا یط رع جیا نکیا : 
”عن مالك عن الزهری عن أنس أن رسول الله تل قال :لا تباغضوا 
ولا تحاسدواولا تدابروا ولا تنافسوا--_الخ" الحديث (صحیح 
بخاری : کتاب الأدب) 
ال روایت یل "لا تنسافسو ا“ در چ یبال دای تک رل ہے بل راو سعیر 
لن مرکم نے امام ما لن کی ایک دوسری ردایت سے لیا ےوہ دوس ری روات ہے ج: 
”عن مالك عن الزنادعن الأعر ج عن آبی هريرة رضى الله تعالیٰ 
عنهم عن النبی تَا "ایا کم والظن» فان الظن أکذب الحدیث »ولا 
تحسسوا ولا تحسسوا ولا تنافسوا ولا تحاسدوا“ (صحیح مسلم 
»باب تحریم الظن ---) 
يہ مرکورہ دونوں میں رت امام مالک ےط ر ان 5-ء-ء 4 
سس ”ولا تضافسو ا کل بلکمددوصری وای کا حصہ ے سیر بن مرک نے یی مس 


عرجلظر 000 - ص 0م" PTS‏ 


KK... لہ‎ KK 

آلوابع:ن یوق الإستاد فیعض عَلَیْه عَارِض یل گلاما من قبّل 
تیه ین بعش من سوعه ال ذیك الكل هو منك الاستاد 
يريه عنهُ گڌلِك ہوم أَقسام مد ج الاسناد - 

قر موه :- چگ صورت یس ےکر داو لآوسند با نکر نے کے بح رکوک عارش 
یی یآ گیا تو ای ساپ جاب حول با تک ذ له والول مس ےش نے 
لیا کہ ہے بات الس سن رکا رن ےلو و( ہا ع )اس سے اک طرح روامت 
کہ نے »سب مر الا مناد اقمام تا - 


۴ ...مل در الا تا دی چگ م: 
هدر الا شاد چوک م ہے ےک اتا داور نے عد مشک سند با نکی سن رک ہیا نکر نے 
کے بعداس نے فو ق کیا او رال قف کے دوران اس نے عد یٹ کے علا د وکو اورکلا مکیاء 
عد یٹ میا نک کی ٠‏ نے وا سے هکم ببعد عمش سے اور وه( سا مع وش اگرد) ا سکویوں 
بی میا نکر نے لک ہا ےا کی شال سن امن ا کی ہے رداچ ے: 
عن اسماعيل الطلحى عن ثابت بن الموسى العابد الزاهد عن شريك 
عن الأعمش عن آبی سفيان عن جابر موقوفا :من کثرت صلاته 
باللیل حسن و جهه بالنهار ۔ 
اس اس روات کے بار ے مل فر ایا کر جب راوشد بیا کر ر سب 
اجب انہوں نے ”قال قسسال رسسول اللہ“ کے الفاط سکپ موش ہو گے »ای 
دوران'ثایت بن موی داشل مو سے چوک بت ب رکآ وی تے ادرا نک چره بت و رای تھا 
و ری کک نظ رجب ان کے پر سے پر یڑ کان انہوں نے ما یت بن موک کے بار ے س کہا: 
”من کثرت صلاته باللیل حسن و جهه بالنهار“ 
او تنوکس اک ےن هد یٹ سےا ورو ہا کا ی طرع روا کر کے در سے 
ہے چا دول اقسام ری الا سنادکی ہیں ان مس یل نین میں تو پل وا طور برسند 
سے تلق ہیں الہنۃ چو تم جس یت نک ی رف ہے - 


ع جر موز وه ۳۵۵ 
وم مدرم الْمتَن فهو أن يَقَعَ المتن کلام لیس منه تاره یود فی 


E مہو‎ 


یه وَتَارَةٌ فی ناه وتَارةٌ فی آجره ومُو الا کر لاه یم بط 
جُمله على حُمْلَو أو بدَمُج موف من کلام الصْحَابَة َوَن یعدم 
برو ین گلام ال له من عير قصلي قهدا هو مُدزخ ان 
وَيُذُرَكُ الاذراج بورود واه مُفصُلَ لد انّمُدُرج مما اذرج یه أو 
بالتنهیّص على ذلك من الراوی أو من بَْض الاب المُطَلِعِیْنُ أو 
بإِسمحالَة کون الیل بل ذلك ود صنق الحطِیْبُ فی 
لمُدُرج کتابا وله وردث علی قذر ماد کر مَرتبن أو كر وله 
المد _ 

ترجمه پا درخ امش نک وه ہک تن حد یٹ مایا لام 
آجاۓ جوم ن کا حص نہ بو کلام ل دفعرشرور)] هل )وتا سب اوقات ‏ 
وسیا حد عث مُل ۶ حاورا اوق بآ خخرمیں ہو سے اور کی صورت زیادہ 
کوک معط ملع ابمل ہکی صو ر ت میں وا ت موتا سے یا انی ی ی کے 
کلام موقو فکو ې اکر سی اللہ علیہ و مکی عد یث مرفو ر کے ساتھ بلا اتیاز 
لاد نی ےکی وجہ ے »وا ے اور در ج ان ہے اور اس ادرارج کا م ایی 
روات کے ورووے وج سے ج روات مر گوای لور هلر ےس 
ےکلامم یکر اوراخ کیا گیا با داوگا کے چا ب سے صحراحت کے ذ ر لچ ایض 
واقف الہ کے لانے سے یا اس بات کے مال »وس ےکی وج سکف پاک 
علہہالصدا 3 و السلا م نے ىہ بات فر ما ہو ۔خطیب بفد اد نے ا لاحم بر مل 
ا بای جاور یں نے ای کی یس کی اور اس یش کور موادت 

د گنای ای ےکی زا دک اضا کیا اور شی کے لے بت میں ہیں۔ 


رجاتت نک‌تریف : 

ا عبارت میں ما نے تالش تک م دوم مرخ امن »اک ریف اورا یکی علامات 
کو یا ن فر ایا ے۔ 

تن اعد ی ٹک کے ہیں جس کے تن مرکا کا ا طرح اضاقکرد گیا ہو 


کر شام رک ا ا و ت 


رررج ات کی صورتیں: 

اس اضافہاورادرا کی جن صو رس ہیں : 

)...ص اوقات ییا ضا من هد یث کے رو شل موتا ے ۔ 

)...کش اوقا رت ان عد یٹ کے و رما ن مل ہوا و 

۳)... 8ص اوقا تک عد مف کےآ خر میں »وتاب ۔ 

تیسری صور کٹ ر ورس ےکیوککہ اس تیسری صورت میس اضا ف شد ہ کلام کے جم ہکا 
عطف اص لمت صد یٹ کے مل پر ہوتا سے تق رخطلف امع | بل کے تیل سے ہوتا ہے اور 
رطف اہی یی ابمل رورپ کلام ل نی ہہوتا ہے ۔ 


مرج ات نکی یل صور کی شال : 
جب من عد یٹ کے شرو سکس یکلا کا اض یا ہا سے تو ا یکی مال خیب بِفداد یک 
ہےر وات ے: 
”عن أبى قطن وشبابة فرویا عن شعبة عن محمد بن زياد عن آبی 
هريرة رضی الله عنه قال :قال رسول الله مد "اسبغوا الوضوءء ويل 
للأعقاب من النار“۔ 
ال روایت کے شرو کےالفاظہ ”اسغوا الوضوے “ بی حخرت ار کلام س وشن 
عد یٹ شور کرک گیا چنا رات روا تکوامام برق نے صراحت کے سا تھ ذکرفرماا ہے : 
”عن آدم بن أياس عن شعبة عن محمد بن زياد عن أبى هريرة 
قال:اسبغوا الوضوء فان آبا القاسم َة قال:ویل للأعقاب من 
النار_(صحیح بخاری: کتاب الوضوءع) 
7 نی روسری‌صور رت کی شال: 
ج پتل عد یش کے وس سک یکا مک اض فہکیا جا ے ذ ا یکی مثال امام دا کی کی ہے 


رواےت ے: 


POLE SS EA AEE ع ړو الظر‎ 


”عن عبد الحميد بن حعفر عن هشام بن عروة عن آبیه عن بسرة بنت 
صفوان قالت :سمعت ر سول الله 19۶ یقول: "من مس ذکره آو آنه 
أو رفغیه فلیتوضاً “۔ 
امام وار ےر ما کہا شل‌راوک نے ”او أنثییہ أو رفغیہ“ کااضا فیا سرت 
بسر ہک روایت شل یل ہےء بک راو کرد ہکا کلام ہے۔ 


انی کی تیسری صور تک مثال : ۱ 
جب من عد بش ےآ غر ںا یلا مکا اضاف کیا جا ے تو ا یکی مشا ل ابو ہز ھی بن 
محاد ےکی یےر دات ے: 
عن الحسن بن الحر عن القاسم بن المخيرة عن علقمة عن عبد الله 
بن مسعود :أن رسول الله مه ع مه التشهد فی الصلاة فقال: قل 
التحيات للله فذ کر حسین قال : آشهد أن لا زله إلا الله و أشهد أن 
محمداعبد ه ورسوله :فاذا قلت هذا ءفقد قضیت صلاتك إن شعت 
أن تقوم فقم وان شفت أن تقعد فاقعد.- 
(أبو داود » کتاب الصلاة» و الدار قطنی ) 
ال رواییت ےآ خر میں راو ی الوفٹھ نے " فاذا قلت۔۔۔“ کاضافکیاے تفت 
داز بین حو وکا کلام ہے ی اکر ینعی یل مکا کال _چ-( شرح الق ری :ے٣‏ ) 


ادر ار کو پیا ن ےکی ن علامات : 


ید چلنا سےجس مد ہے میں ال تن اوراضافہشد کلام کلام 2 س ارخ ر ر س یره 
او رمتا زک سک بیا نکیا گیا ہوا کی ال لک ری ہے 


کہ ہے عد یٹ سے اور مرا کلام سے جییہ اک خضرت کید اٹہ بین سول ایک صد بش ہے وہ 
را ے ہیں: 
*سمعث رسو لاله تاه یقول :من حعل السا حعله الثار *وقال: 


عو اتر سمیسچ وس RAE EA‏ سو سمش فا 
وأآخری آقولها ولم أسمعهامنه ”من مات لايجعل للله ندا أدحله الله 
الجنة “(مسند احمد) 
ال روات یل حر ت کید ای بن مس ہو نے ایک بم کا اضا کیا ےگ ی تاد یا کب 
کلام یی الل علیہ لمکا نویس ہے کک می را کلام سے ۔ 


قرا اکہ: 
”وددت آنی شجرة تعضد والذی نفسی بيده لو لا الجھاد فی سبیل 
الله وبر آمی لأحببت أن آموت وأنا مملوك “ (القاری:4 ۶۷) 


تم دک یک کب : 
الم ریت خیب بدا دی نے ای تاب بام ”الفصل للوصل المدر ج فی 
السنقل “ کی ہے عافقر ماتے تکرش نے ام کور نا کشک ہے :اس کے 
زوا دلاعذ کر کے ا ںکوابواب کے لیا ظا سے مرت کیا سب ارهز ید ےک ال مل فو ائ رکا دہ 
چند ےزیادہاضافہگیاے ا لا پکانام ”تقریب المنهج بترتیب المدر ج“ رکھا ے_ 
اور اس زیا دی اور تر تیب پر یس ایل کا شگ رکرتا ہوں اور ود یتر ف کے ان ے۔ 
FF‏ و بجاو نچ تچ بے 

۳ کانت المَالة تیم وئاجیرای فی الاسْمَاء مره بن کفب 

و کب زا کات کرت ای الاعر_فهذا هر ارت 

ویلخطیب فيو کناب "رافع الازتیاب “وقد یالب فی الْممَن 

ا٦یىضاً‏ کحییت آبی مره ری الله عنه عند مُسُلم فی السبعه لین 

هم الله فی ریم وه رل تصق بصدقة اماما حى ل 

تلم یمین ما لفق ماه قهذا ما اقب عَلی أخد الرواة وَإنَمَا هو 

سی ور لئ ور تمعن تین 

تو جمه :ی تا لفت نامول مل توج خر سے 6 گی مره نکحب او رکب 

بن مره کوک ان شس سے ایک کا نام دو سے کے وال کل نام سب میں ہے 


عرچانظر Se‏ ہدس که ی ہے = ۳۵/۵۰ 
(صورت )خر مقلوب (کہلاٹی ) سے اس عم مس خطیب بفدادی کی "راخ 
الارتاب نا تیف ے اور اوقات بقلب ( تقر > وج خر )ن میں بھی 
دا بی ے ترت ار هگ عد یٹک سکم ان سات اراد شان 
س نکواللد ا سپ عر کےسامہ شل جک دیا ال صد بعش نجس ےکا فآ دی 
ہے شس نے صدقہ ال فد ر شید وط بیقہ ہے دیا رک اس کے دا یں پات ےکوی 
معلوم نہ م کہ با لپ ےکیا غر ی کیا بل ہے ( آ خر )جم وہ ہے ج ایک 
راوی مقلب دیور در یقت یمن ےک اس کے با میں بت ولو نہ 
کردا لاه ےکیاخر کیا یس اک مین میس چم 
ف رمقلو ب کت ر ښ: 

"موب اس ت رکو کچ ہی لکری کے روا کے ناموں میں اتن حد ہے میں الف 
پیٹ اورت ےم وتا رہوگئی ہو“ _ 

ا حرف سے معلوم موک تفز ےم وت روا کے موں می ںبھی موق سے اورا سل مین 
عدیث مم بھی موق سے چنا چ ہروا کے نامول میں نظ یم وت رک شال ہے سے یه ایک 
داو یکا نا مکعب بن مہ ہے ادر د وسر ےکا م مرہ می نکعب ےل ان دووں کے ک کر نے میں 
شی دا یرگن دول مشش سے ایک کادہنام ہے جودوسرے کے واللدکانام ہے۔ 

روا موں یں ترم وج نیرخا خلیب بغرا وی نے یارآ الک 

۲ "رافع الارتیاب فی المقلوب من الاسماء و الانسا بت 

مین عد یث می پیم وتا خی رکی مال ہے س هک یلم طرق میں جرت ابو 
بر ایک ردایت ہے جس میں ان سامت افرادکا دک ے مج کو اش تال عرش کے سای 
شمعنایت را ہیں کے ان سات می سے ایک تس بار ے مم اس روات شس یوں 
روک ے: 

. ”ورخل تصدق بصدقة أحفاها حتی لاتعلم يميينه ما تنفق شماله“ 
(صحیح : الركاة) 
ال رایت س‌فظ یمیینه مقرم ےاورلفظ شماله مور جر اوردر سے شن 
ٹس شماله پك اور یمین بعد ٹل ہے جیما بادگی اورسلم کے ض طرق س ای 


ع ړو اتر ہس دمح یک سی کسی ا CS‏ وت 
رر رد ہے اود کل کے کی ن مدا ب س دم بیش عطاء اور کو دم ای 
طر ف ضو بگیاجاجٴے- 
۹چ FE‏ بی بج دی ہی ہد 
ورد کات المُحَالْمَبريَائ راو فی أَننَاءَ الاسُنادِ وَمَنْلمْ یردان 
من رادها فهذا هو المَرِیْد فی متصل الأسانید وشرّطه أن یم 
اشضینخ بالشماع فی رضم الادة وا عفی گان معنا تلا 


و 


یت ان 
قر کف :اورا را لفت وسی لسن شلک راوی سےا کرت زان ال 
ع لکراضا ف ہت ہک نے وال راوی ز یاد ہت موا ی راوئی. سے جن نے اضا فیا ے 
ی( صورت ) نرم یری کل الا انید( بل ہے اور ا کش رط ید جک 
مومع اضافہ ٹیش سا کی صراحت o‏ ورد چہاں حح ہوگا ( و ال صورت 
ٹش )اضافہ(دالی سنرکی)ت دی ام 


مر ړن الا سانیر‌آمریف: 


یی مل الاسماغیدراس عد ی ٹکو کے ہیں جن سکی سز مل می کسی راوی نے وہ مکی 
EE‏ ,02 


بلک شرا 
ا کی دور یں ہیں : 3 
)...موی شرط مہ ےکک اضافہ شل سا کی ص را حت مو جود ہو > وکر اگل اضا ق س 
ما کی صراحت مو چو ود ہو بک تل فور شل عن عن موز الفا شت لک صو رت ئل اضا وای 
اوران ی رداک کی رطف 


را شس رت 
اضاذرا ول کے وہ مکی وج ے ہوا ہے اگ ریما تر ینہ نہ ہو اس صورت مم اضا وای سٔراور 
خراضا وال سنردوتو ں لو تر اردیاجایگا۔ 


عرو لطر 0 یره ای ور هی کل ی هر ۰ ۳۱۱۱۰ 
ا کی مشا ل کید ان ا لہا رتست روک ایک عد ہف ہے اہول کہ کرد 


حدئنا سفیان عن عبد الرحهن بن یزید بن حابر قال حدئنی بسر بن 

عبيد الله قل سمعت آبا إدریسس يقول :سمعت واثلة بن الأسقع 

یقول:سمعت أبا مرثد الغنوی یقول:سمعت النبى بط يقول :لا 

تحلسوا علی القبور و لا تصلوا علیها*- 

ال روای تک ست ر یل سفیا ن اورابدادر کا اضافہ دہ مکی وج سے »وا البتراپوادرنش 
ےے اضاۂکا و اہم ید انش بن امياد کک طرف سوب سے کول رواة کے ج می رنے اس 
روا کو اس سند سے ا رح روا کیا >" ان این جا یهن بسن وال ان قات نے 
بسراورواشلہ کے درمیان ابواد ری سک کرک ںکیا اور بس کا واشلہ سے سما کی ایت سے - 

اورسفیان ہے اضاد ہکا وم کید ال بن الپارک کے اور ظ رف ضوب سے 
اور دہف بھی س کی تروق اش روا کی سند می کر اب جع البارگ اور ان جابر 
کے درمیان فیا نک دا سط در لک تے -( شر القاری:۳۶۹) 

۱ و rc E‏ ی جا 

و انب الَمُعَالَنَةً بابداله آی الراوی وَلَامُرَحُحَ لاخد ی الروَ تین 

على الا ری ها هُوالْمُضْطِرِبُ وَهُرَیَقَمْ فی الاشتاد غالبا ود 

بی الس لین قل آق شک الشخت سی لا باوضهزاب 

بالنسْبَة إلى الاختلاف فى الْمتن دون الاسْناد وقد یَقع الإْدَالُ عَمَذا 

ِمَن برد اخویاز جفظه امانا ین فایله گمّا وَقع لحار 

والمقبلی وَقَیْيِمِمَا وشرطه أ لایستَمر علبه بل یھی بائیهاء 

اجه فلو وفع الابدال عَمَدَا لا لِمَصُلحَو بل بلاغراب مَعَلا فهو من 

ام الْموَضو ع وَلَو رقم غلطا فَهُوَ مِنَ الب أو الْمُعََلٍ۔ 

تسر جمےه: او گرا لش راوی کر )ید تک وج »وا اورایف 

روای تک دوسری 37 ده والاول ای خر موو ای روات قطرب 

ہے اور ی ابدال اکر طور برسند یس ہو ے البت رت اوقا ت سن می لگ ہوا 

ےک ی تم ےک کوئی مر رش سند ےپ رگ تن میں اقلا فک وج سے 

کی هدش “سنرب ہو کا عم 2-6 او رش اوقت ابال قصدرا ہوتا سے 


عرچانظر ANS‏ ی ی جر 
اس قش سے لے ضص کے ما ف کر مان ہوتا ہے ی ےک امام بغ ری اورا مت 
یبر کے لے ہوا اورا لک شر ہے چک اتیپ بت باق نر ہے کک 
رورت کے پش مکردے بر قصدا ادا ہو کو کت نہ ہو بک 
ات عفد وق دوموضو رک اقسام می سے ہے اور ری سے ہوا مولو 
ہیں وت 


نرب اس روا کو کیتے ہیں من سکی سند باقن مم ستقیر وتبد ل کی وجہ سے تہ رای 
ے اخ ف ہوگیا مواور رونو ں رواتول مل ےکی ای ککوتر دامن ہو 
صورت نرکورہ ناک ایکون د یٹ کن وشا لیک روا کا راو دومری رواعت 
کے راوی کے مقابلہ ہس احفظ ہو یا مروی عنہ کے پاس زیاده د پا ہو راز کوٹ ر بول اور 
مرج کر ردو یل کے اوراضطرا ب ہوا 6 ۱ 
خر ول اک ڑطور رر واے تک سن رٹ ہونا ےج سک وجہ سے ووروایت ضیف ہو جال 
ہے ابرع اوقات تخر وید ل ایت ےن مم لبھی ہوتا ےگ یہ بہت لاور 
رع ایور لک نواعت مم وق تل ہے اک طر کسی رایت پر سن کے 
اختلاف اورتبد ب یکی وجہ سےمحخطرب ہو نے اج بھی کر ین بہت کم لگاتے ہیں من ا شاف 
۱ مرن کے اعتبار ےکس الا راو رتقیشت میں بھی افطراب بت ہوا سے اور ظا ہر شس بھی 
محر شین الط رب ہو ےکا عم ہکم لگاتے ہیں ۔ 
اضطراب لی الا سنادکی مثال: 
معط رب فی الا سنا دی ال اسا مل جن ام ےک بر دامت ے : ۱ 
إذا صلی أحد کم فلیحعل تلقاء وحهه فإذا لم يجد عصا ينصبها بین 
يديه فلیحط حط“ 
ای روا تکی مندرج ذ ٹل اتاد : 
۱) اسماعیل بن آمية عن ابی عمرو بن محمد عن عمرو بن حریث عن 
حده حریث بن مسلم عن ابی ھریرہ۔(ابن ماجه) 


عرڈانظر ET a ASA‏ 
۲) اسماعیل بن امیة حدثنی ابوعمرو بن محمد بن حریث تو 
حده حریثا عن أبی هريرة (ابوداؤد) 
۳) اسماعیل بن علية عن ابی محمد بن عمرو بن حریث عن ده 
حریث رحل من بنی عذرة عن ابی هريرة (ابوداؤد) 
)٤‏ اسماعیل عن ابی عمرو بن حریث عن آبیه عن آبی هريرة » 
)٥‏ اسماعیل عن عمرو بن محمد بن حریث عن آبیه عن أبی هريرة 
٦‏ اسماعیل عن حریث بن عمار عن ابی هریرة- 
اس ردای تک مور پاک چراسناد ہیں ءآ پنورفرماتی ںکان س١‏ ل اور 
روک عش ںی تر رافطراب ے۔ 


افطراب نی اتکی قال : 
افطراب نی ات نکی مشثال فا مہ بن تھ لک ہے وات ے: 
قالت سالت أو سئل النبی مطل عن الزکاۃ قال:إن فی المال لحقا 
سوی ال زکاة *رترمذی) 
اس عد یٹ تنم اختلاف ج چنا نان اج شل بیردایت ا ط رع ہے: 
"لیس فی المال حق سوی الزكاة“ 
منک فرش غرم 
ع دف کی کد یث کے حا فظ کا اتان لین صو و ہوا ےک آیا اس کے لسن یتنج 
لر یت ےکفوط ہے نہیں ؟ 
اس رع اا نکی غر سے روایت تخر ود کر ایک شر طدکیسا کے از »وه 
شرط ےکہ جب و وضرورت اور عاججت بور ہو جا ےا اس کے بعد اس سند یا ن کے 
تفیراورتبد ب یکو درس یکر د یا ہا سے چنا چ رت امام بغا رک جب بخ رادت ریف نے او 
و ال کے محر ن نے ایک سور وایات اسان او رتو ن تخر وتپ لکر و ا اور وس افر او 
کوش یکر کے ال دس وس ر و اکت د بد ہی اور اا امام ار لس میں سنا ےکوکہا تو 
ام بفار نے س بک خلطیا کچل یں اود رای یکی ع سندبھی بیان فر ال اک طرح 


ا مض یکا بھی تہ ے۔ 
اسر پا من میں تق راتا نکی خر ے مہ ہو بل چب اور رت کے لیے الی ا کیا گیا ہو یا 
کو رش فا سر ولو اس صورت یل ایی تق رروای خر وضو گی اقام ش سے مو اف 
سند یل ین می لن یکی دی ےتید ہی وا تع ہوگئی ہو و وج رمقلوب ے انلس _- 
۶ دی بے با دی بے ےد 

وإ گات الم ال تفر حرف أو روف مَم باه صُوْرَۃَ اط 

فی لباق فلن گاک ذلك بالنْسْبَةِ إلی الط فالمْصَحف أو إن کان 

0 7 الشکل فالْمحَرّف وَمَعرِفَةهذَا لت ع مُهمَة وَقَدُ صف 

کرک والّارقطیی وعیرهما وا کر مایق فی تون ود یم 

فی الّاسْمَاءِ ای فی لاد ۔ 

ول نراقت ی ا رف ی جو سز مو 2ے قل 

خ اک صورت سیاقی یل باق ر ے اگر یر( الفت) افتلوں میں »و یت کف 

ہے اور اکر ہے( تا لفت ) کل اور ہیکت کے فا ظا سے »و یش رف ا 

معلو مکرج مت شک کا م ہے الہ اس ( م ) یں علا کرک اور ابام دانشفی 

وغیرہ هکت تھی فک ہیں ال اعم کا ز ادہ7 وقور) ون ٹس موتا ہے پا نی 

کبھی ان اس مکی الک ور موتا ہے وتا دش ہو تے ہیں - 


کف او رگر ف تیف : 

کف اس روا تکو کے ہیں + سکی سند او رت نکی صورت ا برق ارر ےکر ایک رف با 
کی وف کآخیراورتیر یکی وجہ ےرا وی ےنا لقت ہو جاۓ ۔ 

'رکور وصورت ٹیل اگ رر ف ا و فک تقر وتیل صر فنقطوں کے زر لی ہوتو رج ر٣‏ حف 
ےا وراگ راک 7ف 1 نل دو ے 7ف 11 گا ےل 770,11 ٹف ے۔ 

سنو امن می ںنقطوں کے ق ر یہ یا ۶ و کش بد لے کے ز ر ليم جوتقیرہوتا سے الکو 
معلو کر اور ین بہت م شک لکا م ہے اور ے ہنی محد کا کا کل ہے بک اج رادرب 
کارت ی ا کو بیان کا ہے چت نا 7 ش چند اب رن نے یکتا ہی کی ہیں ملا 
علا مکی »مرت :علا مرا او رل مان جو زک - 


ع ړو لطر شس ا سی ہی جس اس ار RNG eS‏ 
کور وتخ راک طور بر روایت کے تن میں ہوتا س کر تن ںفقطو کا اضا نہ اک یکر دی یا 
ا تر فیدر رف سے بل دا اوت یت وکت او 
ہو ٤ے۔‏ 
خر فی شال: 
رکف ی مثا ل ہو رر و ایت ے: 
”من صام رمضان ثم آتبعه ستا من شوال كان کصائم الدهر“ 
ال روات مم لکفظ ست (چه ) مرو من ایک راو ابویک الو ی نے اس ے یف 
کر کے ری بچاے ”شیع“ رسب ۱ 
مرف شال: 
ححخرت جا بی ردایت کہ 
”رمى أبی يوم الا حزاب على أكحلة فکواہ رسُول اللہ ا“ 
ا ردایت ٹل أبی ے آبی بن کعب مراد ے ہگ راو یتر نے ال روایت شس 
ری کر کے اے اضافت کے مات ”بی “( مق مراوالد ) ۸کیاے۔ 
رجف ی اقام: 
ا ما کشک سجن تال نن 


ا رت سح لت وپ وی 
کیا جح زام کیا سے اون نک شال هلا ردایت ہے جس می ابوک رسو لی نے ستا 
و 


0-ص“"- ء74 میں 
الا عرب ید کرد یا۔ 
می نک ثا ل ہے کیک روات مل لفط ”ال سد جاج“ کیا ۓگ ری نے اس 


ع ړو اقم ا ا ںا NSE AR NETE OSA EE‏ 


. الزحاجه“ کت یی 


ل آن رسول الله سل إلى ره ا عنزة ےت 
جوماز سے وت ہر کم دیا ےگ ربص رداة کواس ملس کےا ےی ہہوکئی ہے اور 
ال نے روایت شل عنزه لبیل بنی عنزه گھااور لول روا کرو ”آنه مه صلی 
إلی بنی عنزة “۔(شرں القاری: 0۹۰) 
YY‏ دی دی gE E KK...‏ 
وا یحور مد تَعيْرٍ ضورة الم مُطَلَفا ولا الإخيصَار مِنة بالقُص 
ندال لفط الم ادف بالط امراف له لا لالم بمَدلُوْلاتِ 
الالْماظ وَبمَایجیل المَعَانی عَلی الصَجِيُح فى امین ما یضار 
لديب فال كرون غلی جوازه بشرط أن َون الى با 
عالما العام یفص من الْحَِيْث إلا مالانعق له با یهن 
بيك لانیف اللا ال یمان عتی يخود ال گر 
الم دوف بعس وله رن أو يدل مادکره علی ماحد جلاف 
الحامل فانهقذ یفص ما لَه على کترله الاسیناء - 
تو مه :اور نک ضور یکوقصرآبرل گی طر ھی درس ت کل ء اور دم 
کر کے ا ختضا رکرنا اور نایک مراو فک د وسر ے مراوف سے پرلٹا برای کے 
سل( جات ہے ) ج الفا ظا کے لولات سے اراک چڑ سے واقف »ول 
> ردوضورت قو ل مطا ان برل جا ے ہوں ٠‏ اورر پا عد ی اوق رک نا 
تو اک حضرات ای رط پا خقار کے جواز کے قال ہی ںک اختضا رکر نے وال 
ٹن مام ہد کوک ما هبش سے وف چزط فکر جک امیش 
کیج ےکوی ا کل ہوگاء پا طو رک اس سے دلا لت تت یں »وگ »اور د 
م میں خلل ی ( یکس ہوگا )کہ کوراور زوف (دوٹوں الگ الگ ) 
ووتروں کے ورج ل ہوچا یں با وہ رکو رکیز وف ولال یکر ےگا لاف 
جائل کےکہ وہ عد یث کے اس کی عذف ریا کاس ن 
مو بی ا شا واو موژ د ینا ۔ 


اف نے اس عبارت مج تن ستل ذکرفرمائے ہیں : 
...ن حر ہے می یروت لک - 


لمع کے پار سے مس افا نے فر مایا کرد بیش کمن میں قم اتخ وتر لک نا چان 
نیس ےہ خو اہ تخ رمفردات روایت مل موخ واو کبات ردایت یل ہو خواہ کات وتات 
میں ہواورخوامکوئی عا ماخ کے با تیر عا م ہبرصورت نا جا او رگناہ ہے چنا نچ ملا اھا ری 
زق کیا ےکک محر خی نکووفات کے بعدخو اب یں اس حالت یں د یلعا گی اکان کے 
ہونٹ اورز پان کے »و -2 تھے ان سے ا یکا سبب در یاف تکیا یا زاو نے جواب دیا: 

"لفظة من حدیث رسول الله مه غیرتھا ففعل بی هذا“ ( شرن القاری:۲۹۳) 

ک سول سی ابش علي وک مکی حد بعش مبار ککا یک اتید ب کر ےک وج سے کے ہے 
ہزادیگئی ے۔ 
مد ی ٹکرک ن نکم 

دوسرے ستل( ر وای تاوق کر نا ) ں ر تن تلف اتو ال تقول ہیں : 
)...کش حضرات ملق عدم جواز کے تال ہیں >کی وکل اس میں بھی کی ابم لتخ وا 


ہو ہے۔ 


وق کی ذکر کیا ہو ای صورت میں اس روا ی وق کر نا پل جا نز سے الہ گر ایک 
دفعرروای تک وکل طور بے بیا نکر دیا اس کے بعد ا ےت قرط یت سے ما نک نا چا چا ےل یہ 


اج 


عرۃانظر Se‏ کہ رک رس ری ا 

۳).... #جو رکا ہہب ہہ س ہک ای غل بل ہے اور وہ یک عد ‏ کو رک با غر عا م 
کے پاک ناما »ات ا ےے عام کے ے اختقصا ررردایت جات ے جو براولات الفاظ 
سے اورا یا مور سے ا بیط رقف ہشن سے موان برل جاتے ہیں - 

عام کے کے ال لیے جا س کہ عا لم عد یٹ کے ای ج کوک مک ےگا نس کا بقیہ 
7 لول کی تن بوک لہ ا اس چ کو عذ فکرنے سے دراو مت کی ولا لت لف 
وگ اور رم لک تید بی بو »یوگ ارس کول تب بی آجائے تو مز ف شره حص 
ستل ترشا روگ اوز زره ص لیر وخ رشار موک وه دورو ای مو پا ںگیا۔ 

ای رع عام کے مذ ف کا بت بھی تک کہ اس کا ذکرکردہ حص عزف شدہ حصہ ر 
رال کر پک خلا ف چائل اور ناوات فآدٹی کک دہ عد یٹ سے رو ری صھے اوراصل ج کو 
بھی مز کدی جس ےمم میس اورم میں فر نآ جا جا ہے جییے ا شیا رکو کر نہک نیاق کو 
زکر رن گلا ے روات ے: 

قوله‌مّطة ” لايبا ع الذهب بالذهب إلا سواء بسواء “(الحديث) 

اس رواعت سے اسشا م( الامواء یسواء )کوا خصا رآ عز فک نا چا لس گیوگ رال کے 
عذ فک نے ےی او رگم بدل چا تا ے۔ 
۱ اوتا تک کر کر کال ہے روات ے: 

قوله مص" لاتباچ الثمرة حتی ترهى“ (الحدیث) 

اس روایت تن یکو اختضا را فک نان اس کوک ای ےکم بدل جائیگا۔ 

اخقا د ق الہ بعش عا لم کے لیے بھی اس ودقت جات سے جب دہ مور ت سے بے توف 
وال گرا ےتپ تکا خرف + وک ال نے ایک مل روات ذک کی اب اگ ا ےق رک پیا 
ت لوگ اس پل رجہ کرک دہ یادن کے بار ے ضبمت کا ہیں کے یا ا سکوقلت اکا 
طعنرد بی اک عالت یں اس عا م کے کی دوس رک مرح را ختضا رکر نا چا لس 

اوراگر ی اتبا مکی صو رت کی مرج ہروا کر نے مل پیر ا ١وا‏ ےلو ال‌صورت مل 
بھی ا ختضا رک نا جا ں٤(‏ شر القاری:۳۹۷) 


۳۹۹ 0ٹ ی مجاهم و ٔ ٹب ٔ+ و کہ‎ Ty: 


عد ی کیج کا مطلب موتا هک ممت فکتاب ایک ہی ردابیت کےگئی ص ادرک ے 
کرد جا تاک کلف مقامات میں ا نککڑوں میں ےکی سے امت لا لکیاجا .اس ج کا 
ایا ہے؟ 

ملا لی اقا ری فرماتے ہی یک سورت جواز کے ز یاد ہ قرب معلوم یکیو امہ 
حد بیث نے اعاد یٹ می ہت یع کیا سے چنا چرام بای ءامام ما لک »ابا ءامام بدا ود 
ورام نا لکلا کم شمپور ہے۔ 

لد علامہ این الصطاع نے فرمایا کہ هد ینک ی جا ت س ہک کا ہت سے خالی 
ٹیس ےکن علا منت الو زی نے علامہ این لا رخ کےقو کور کر تے بو ئے فر ما کہا 
میں نظرے اور وج نظ ریہ ےک روات عد یٹ اور انار پا گم یث وونل سول فر نس 
ے» اور عد بیش کش حم کور وای کنا بلاکراہت چا ے نے پھر اتا کی رش سے 
دک کر کے بیا نکرنابھی بلاکراجت ام ہوا چا ہے اود علا مساو کا ظا مکی اک 
جوا زک طرف هر ہ٤‏ چنا رو هوشر الق یب میں فرماتے ہی ںکہ: 

....... وهلا احتجاج والاحتجاج ببعض الحدیث جائز لدلالته على 
الحکم المستقل» _ 
تی را سل( روات بات )انی عبارت میں بل فرب - 
ڈیو تہ دہ نے دس تہ ہہ تی 
وما ار بالمعنی قالعلاف فيه شهیر الا کر غلی الّحَوَاز یْضّا 
کر عو اک کے سا گر 
بیتانهم لِنعَارِفِ به قلا جا ال له ری مَعَوَاز اة 
الْعَرَبيّة أولی وق ما یی المْفرََاتِ در المرَكَُاتِ رقیل 


عرچالنظم سو س مھا تم سم می تی FERO‏ 
اسَْحضَرَلفُطَۂ مخ مَا تمعن بالخواز وعیمه لامك ان 
الّاولی یر الَدِیْبِ بالفاطه دود تصرف فیّهقال الَْاضی عَيَاض 
بنبفی سڈ باب الرٌوَاية بالمَمُلی للایتسلّط من لایبحین من یط آنه 
یمین گُمَا وَقَع كير من لوا قَدِیمًا َحَدَبْنًا وله الْمُوَفُیْ 
قو جصے :اور جہاں کک روایت با تان اس میس ا شاف مشپورے 
اور ارات ال کے جواز کے قائل ہیں اوران کے ولال شل سے سب سے 
تو کید کل بے کال جات پا جار کشر لھ ت کیتش رت اب لچ مکی ز بان س 
ا ںآ دی کے یه جات ہے جاک ذبا نکو ان ہو جب ایک ز با نی دوسری 
زبان بدلنا ام رای ( عر فی )کو عر فی ز بان یں بد لی ےکا جوازت بطر ان 
دل ہنا ی کہا گیا ےکم دات یس چا د ےم رکا ت م کیل ءا رکا 
گیا ہ ےک یاف کے لها سے نت الفا صد یٹ حض رو جا کہ اس س 
تر فک نے بے دہ قاد ہو او رکا گیا سک یبالق کے لیے جائز سے جے 
عد یث نز یاد ےگ الفاظ بجو گیا واو رای سک اس کے ذ جن میں پا کی بہوں تو 
اس کے لیے جا تا سب ےک دہ عد یث تکوم سح وکر ےکی فرش سے ا کا 
زدایت پا مع کرد ے یخلاف ال سن کے جے الطاظ اد ہوں زع انس کے لے 
روات پا می امیس ) او ای سل یی بح یگ ری سے اس تلق 
وا اورعدم جواز سے ہے الہ حد کو پل کی تصرف کے اس کے الا کیا تج 
روا کر نے کی اولوت می لاو کم کنھیں ہہ قاضی عیاض نے فر مایا کہ 
زا )یئ ینا درواژه تی بن کرد ینا جا کہ ان طر ی سے ( روات 
ای مک ن ےکا ما نکر نے دا لے حرا رت میس ےکی سکو ا یکی ج رات ہی 
تہ ہو جو اسے ابی مرخ نام نہد ےکک ہوچی ا کہز مان فک مم اورموجودہ بات . 
کے بت سار سول سے الا ہوا سب - 


روات پا یکا مطلب : 


ا انا مطلب یہ س کہ عد مث کے اکل الفا ظطکی با ے عرادف الفاظط کر کے 
ال اک مل اختلاف ہ مشبور ہے اورعا ا مت ےکی اتو ال قول ہیں : 


مت ٹیا وا جو رو a‏ اس ی اید ا 
...لح رات ( جن مر تن ےتوج ہت 
ا 
ان حرا تک سب سے اہم اورقوی وکل ہے س ےک اف تم کے لیے ا نکی بافوں را 
ترک نے کے جواڑ انار سے بش ری تشر کر نے وال دوفوں ز بائوں سے ا بھی طرح 
وافف ہوء جب رآن وسن تلع کےعلاوہ کی دوسرک نی ز پان هبار 
ال وت ھت 


یس امس ہر سا ید مو 7۳2 
الما اکو لت مج ہے ا ےج ےت یت سو 


گرا کو وی موا اورمغپوم اس زان ۳ 
ولآ ےآ وی کے لے اس روایت و مت کر ن ےکی رش ا 
لاف نف که اقا عد یٹ ستحض ہو ں تو اس کے لیے الفاظ حد بیش کے یاد 
موه کے پا وو وا جو دا یت پا ال نے ب 


قوله وجمیع ما تقدم یتعلق بالجواز وعدمه کامطلب: 

عاففڈأف مار ہے ہی یک هد یٹ مل اتا رک نے اور روا یت پا کے تلق جو او زار 
کیا گیا ے ا سکاتعقے جواز اورعدم جواز ے تھا الہتہ جہا کک اس مل بل اواو یت عاق 
اڈ د یہ ےک عد ی ثکومطلقا اس کے الفا کیا تھ بلاک تصرف ویر کے با نک ناو اور 
اکر 

چنا تیت ی عا سےمنقول کہا بات پر اپنے مشا کا ارا ر ا کے دہ عد مث 
کاک طرع روا تک تے ےط ر ان کک کی تھی اس شلک مور کرت 
2( رر القاری:۵۰۱) 

ب ہی ت تقاضی عاض نے فر ایا کہ رواعت پم کے پا پکو بل ب دکرنا واجب 
ےک رای ل دای ی م ات د بو کے کرت اور اقا مادق گے 


عرپانظر هک وی یوت داد گس دم مت عم 
استعال ړا بیط رر قاد رشاو ۱ 
و وی ہو وو وت 
فان حَفِیٗ الْمَعْلی بان کات اللفظ مُسَْعْملا بقل أُحْیِیْجَ إلى الکتب 
له فی عر عیب گكتاب ابی ده القایم بن سَلام هو 


یر مرب وَقَذ رتبه الشیخ موف الدیْنِ بن قُامَة على لوف 
رمع ین کناب انب لهروی وقد اغتلیبه الحَافظ بو موی 
الْمَدِيْيِى فَعَمَب عَلَيْه وَاسُفَذرَ ویلرمخشری کناب (سَمه لابق 
خسن ارب شم جمَع ایح ان لیر و کناب هل الکلب 
تر سوه :او را وا نہہوں پا یی طو رک لف اکا استمال رل بو پھر 
ایی کتاہوں کی (طرف ماجع تک ) ضرورت بل سے جو ابا ول الفا 
تن اھ یگئی ہیں 1 یوعیہقاسم بن سلا مک کناب کر دہ رم لب سے اور 
الکو موق الم بن قد امہ نے ترو فک یک تیب پمرت کیا سے اوراس 
ےکی زیادہ ہا کناب ابوعبید ہرد یک ے اور عا ذظ الو موی الم یی نے اس 
کاب کی طرف وج دی ال پ اکتزاضات کے اور ال کی ف روز اشتوں کا 
اسر را کیا اورزشری ی فا نا کاب بب ت که ہت تیب پر ہے » ران سب 
کوابن الا شر نے (ا پت یکناب التھام ) غل کرد یا ا سک (ہے کناب استفادہ 
کے فحاظ سے سب سےآ مان سے الب ھا مال ال بھی ہیں - 


مشکل الذاط کے لکی صورت : 

ال عبادت سے ماف ریہ با لف مار سب ںک عد ی ٹک ایت کے رورا اگ ا لے الفاظ 
جا ہیں جن کے عق ظا ورهار ہوں ای صورت می لک کر با کے ؟ 

چنا تفر ای کاک هدع کا نی ہوء دامع اور اہ رنہ ہواوراا کی صورت کی موق 
ےک وہ لف اتیل الاستعال ہواور ا سقلت استعا لکی وجہ سے ال کا مت ظا ہرادددا ع نہ موتو 
ای صورت میں اس لفظ ےن کے لیے ا نکر بو ںکی طرف مرا جح تک چا یک جکتاہیں 
خیب ناما وس او رل الاستعال الق تشر تی می نی فک اگئی ہیں _ 


عو اتر ES‏ ال ا کی می نی کی re‏ جو 
عدا یث غم یب اور ناما ٹوس الغا کے بہت امن ےقصو صا دن کے لے بے 
بت اہم ہے ال نین ے لے ستل ر جال اورعلماء ہیں چنا ت ایی د ف خضرت امام امرب نگل 
ےا یت کے اب حر یب ایو سے تلق سوا لکیا گیا تو انہوں نے جواب یں فر ما لکا حاب 
الخریب لی ان کےعماء سے بوچ دیول اس با تکوپ کرجا ک تقو ر اکر مکی اللہ 
علیہ یلم یتو ل مہا د کک اپ راۓ ےش ر رون ۔( شرع قاری :۵۰۳) 

ان یں علا مہ ابو ی الق کم بین سلام نے اباب ی »اتبول تے ا یتنا بک 
وک دا 0 مورا نتب رمرعب 
نان اش وت کل ال نش لک ی کتب یس سح سب هرت اک جع الم 
کے ہاں ا ےکائی مق م حاصل ہوا اور ال لعلم اس سے استفاده 2-2 سے غاد 
مون الد بین بن قد ا نے ا کا بکوترو ف لی سکطرز برع رج بکیا۔ 

ابوعبی دتا م کناب سے ابید برو یک کاب زیاده جا ہے ہت ہم ال پگ حافظ ابو 
موی الم رن نے اختراضات کے اور ال هکل معا وف اح ہکا اا کیا١7‏ لن ٹل علا 
زگش یک بھی ای کناب الاکن سا سے سے وہ بب کد تیب پہ ہے۔ 

۳4 خر می ابن ار نے ان س تابو اوا تب "تال کرد یا ےہا نکی ہے 
تاب استفادہ کے اعقبار سے نہایت تی آسان ابش مات پران ےکی که 
رکز ات تیچ علا هلال الد ین نے این ارگ نا یی سک سے اوراس له 
اضا یگ گکیاےء ا نکف تا بکانام تن الس نے سو ارت 
الأئیر“ے۔ 

جل لا r... E‏ جا YT‏ 
ون کان الط مُسْتَعْمَلا بگفرَوَ لکن فی مَدلوْلِہ دق تج إلى 
الکتب ال صَفه فی رح مَعَانی الاخبار بیان المُشکل منها وق 
آکتر امه من التض انیب فی ذلك کالطعاو ی والجطابی وابّن 
عبار غرم 
تر جصه :او راگ رفاک رال تال وکر ای کے لول میس بیج خفاء »و پر 
اعاد بٴ شک تشر یات اور مشک انس بیان رک یگ ۷ بک یضرورت ت لی 


ع ړو لطر raf E SSS‏ 
ہے اکان می علا مک بہت ز پا ده صا تف ہیں مشلا ا وی٤‏ خطالی اور اہ نعبدالبر 
وفیره( کی صان فمف رست ول )_ 


مرادویرلول دا بو سور می سکیا جا 2؟ 

ال عبارت ین حافظ یہ بیان فرماررے ہی نک احادی شک رواےت کے دوران ارب الفاظ 
چات سککیٹرالاستعالل ہونے کے پاوجوداان کے براول مس تفا موت ای صوررت می سک یاکرنا 
سے؟ 

چنا نچفرمایاکراگرعد یث کے الفاط کے بلول مم سکثزت استعال کے پاو جوددقت اورتفام 

ہو ای صورت غل ال خاءاوردف کو دو رک نے کے لیے ا نکما ہو ںکی طرف مرا جع یکر ی 
اب ج کنا یں اعاد یٹ سای نٹ رج مس اور اعد یٹ کے شک الف کی شیج می سی 
گی ہیں۔ ۱ 

ال باب میں حرا ت ا ترک بہت زیاد* تصاخیف مو جود ہیں جن میس مندررجہ ذ ہی اتکی 
صا ت ف رف رست یں : 


46 


ود ا ۱ -' ا 2 2 و ا ا و ٤‏ 
نم الْحهَالة بالرزاوی وهی السّبَبْ الامروفی الطفن وبا مان ان 
جھائة ب راز : ِ 


جا کر 72 واي وااو اوگ در گار ہے گر کو ای و 
2 کر قوف رق یہ روٹڑھ مر ہے تھے تو یر ین 
نشب فیشهر بشیی منها فید کر بغیرما اشتهر به لغرض من الاغراض 


کے “f‏ عم مر Ag‏ ب+ھو ۳ مر من وگن اوھ 
طن آنه آخر فیحصل الْحَھُل بخاله وَصَتَقُوْافِیْه أی فی هذا النّوُع 
مد و و وگو ا رو رر رگد در گم رو 7¢ رو لا Ern‏ 
الموضح لاوهام الجمع والتفریق »اجاد فيه الخطیب وسبقه إِلَيْهِ 
fou 0‏ ار و ام و گر ۳ 7 ۳ ۳ مه و 
عبدالغنی نم الصوری من امُبِليه محمد بن السایب بُنِ بضر ا 
تسه بَعْصهم إلى حَڈہ فَقَال مه ما ماد بر 
السالب و گا بَْضهُم آبا انضر وَبَعْطهُمْأبَاسَعِیُدٍ وَبَعْصَهُم نامام 
کے وآ مو ای سر کے ا ول کر تو سو رب و وی سو وب و | ۳ 7 
»قصاریظن انه عَمَاعَة وَهُو وَاحذ وَمَنْ لإیَرفث حَقِیْقَة المرِفیٰه 
bi 7‏ 
تر سے : رداو یک ول الال ہو ہے اور یط نک آتھوال سبب ےءاور 


عرڈلظر ہے ا یی ہیک ا E‏ سی سرت ED‏ 
اس( ول الال ہونے )کی دو وتیل ہیں ء ان یس سے ایک یم کرراوک 
کی صفات ببت زیادہ ہوں ثلا نام یاکفیت یا لقب یا عفت یپ یا سب ءان مل 
سے ایک سے بور ہوک رن شک بناء برا سکوخیرنشبوروصف سے ذک کیا جا ے 
وم وا ےک بے( اس علا وہ )کوک دوس پٹ تو (اس سے )ا سک 
مات ول ہوجاتی سے ء اس نوع شاو لوصا اج والنفر نم 
سے لاء ماگ الہد اس (فوم) مس خیب نے بہت عدہکام 
کیا ے اورعبدا شی او رصو ری اس ےکک سبقت نے گے اور ا لک متا لی بن 
الاب من یش ری ےش نے ا کال کے داداکی طرف عضو بکر سین 
یش کہا ءاور نے ماد بن الا کہا او رح نے اضر اور نے ابوسعید 
اورٹنخل نے ابو ہشام سے ذکرکیاءا کی الت ہے مو یکا سے ای یکر د گان 
کیا جا نے لگا حا مامکہدہ ایک (ہی راوی) ے اور جو وی اس فورح می معا کی 
ال میق کوک کک ےگا و وال ے ذرابھی و اف شہ ہو سک ےگا۔ 


ھ 


مر 1 
عبات شل ما فلس را وی کے کا 7 وال سیب ذ رگیاے_ 


راو یک ول ہوم : 
ی 1 الراو یکا 1 #وال سیب راو یکا ول ہو( ے اورراوی ول کے وو 


سب ہیں: 
چا ل کا پہلا جپ: 


لیب ہے س ےک داو کی ذ ات بے و لالم تک نے وال چ بل بہت ز یا دہ ہوں ء ملا اس 
راو یکا نام .کیت ءلقب > صفت , پیش اورضب سب چ ہی ہوں کر راو ی ان یل ےکی 
ایک سے حرو ف ھور ہو اب ال راو کوک فشک ہناء رای صفت سے زک کیا ہا ے 
مس صف سے وه شور نہ ہو ال‌طررج کے زر وبی راو کول ووس | راوی معلوم 
ہو نے لکنا ہے حال اک وی را وک وت ے ,و اس ط رح غر حرو ف طر یت اس کے حال 


شس جہالتآ جا ی ے۔ 

ا سکی مات بن الما مب بین بش کی ے ض حط رات کے ا سکودا دا کی طرف موب 
کر مھ بین بشر سے ذک کیا هتسه ا سکا نام ماد جن سا مب بقایا سے ھن نے ا سکیا 
کنیت ابر فک رگ ہے مین نے ا سک یکفیت ابوسحید زک کی من نے ابو بشام ذک رل 
ہے اس طر کلف طر بقوں سے نکر ہو ےکی وچ سے ا کی حاللت امک مو کہ ہے الیک 
شس پودی نیک جا عت تور ہو نے لگا عال اک مسب نام رتنس ایک شک ہیں ۔ 

چنا ئا نم کےراوی ےعلق جو حقیقت مال سے وا قف نہ ہو ا سے با تکا 
کس موک بعلا مکرام نے یع وف کے او ہا مکی وضا حت ع سک کب ہیں خطیب 
بداد نے بھی اس باب یں بہت عو ہکا مکیا گر علا مر فی اور لا مرصوری ال سے 
سوقت نے گے ۔ ۱ 

E YK TK FF جیلو‎ 

مر الشانی أ الراوق قد يخود مُقِلا من الحییب فلایکثر لد 
عنه وقد صَتَقُوْا فيه الؤْحْدَان وَهُو مَنْ لم يرو عنی لا وَاجد ولوسمى 

من عَمَعَة مس وَالْحَسَنُ بن سيان وَعَيرْمُمَا۔ 
تر جص :اور( راو یکی چات )دوصراسبب ہہ ےک راو ی یل اید یث ہواور 
ال روایت ها کر ن کا لکش رنہ ہواور ا سض شش (علماء نے )وعدان 
( کب )کی ہیں اورواحددہ رادئی ےج ےر وا یکر نے وال گی صرف 
اک بی راوی ہو اکر چہ اس کانام کور ہو اور جن حظرات نفد وعدا کو مق 

(کر کے بایان )کیا ان میں اما کم او رسن بن مفیان و غیر شال میں - 


و 
اس عبارت شل عاف نے راو ی کی جال کا دوس راسبب ذکرفر مایا ے۔ 
چا ت کا دوسا بب : 


مامت راو کا دوسا سب ہے س ےکہ وہ راو یل الم یٹ بواوراس سے روات ما سل 
کر _ ےکا سل کی ہر تک ہیں وه را وی مل ام یٹ ا ولا نز عدا لد یٹ ٢و‏ ےکی وج 


ع ړو لنظر N OA‏ ی را 
سے ول ہو جا جا ے۔ 


وعدا نکی وضا حت : 

| ےتیل راوون سے بارے می جوک بآم گی ہیں انیں وعدان نام سے موسوم 
کیاما ا ےت طرں م راویوں سے متا کت کو ہما کہا ا ا ے لفظ وحدان وامدکی 
جم ے۔ 


داع دک تحریف: 
اسول عد ی ٹکی اصطلا رح ں واعد ال راوی او رید ٹک کہا جا ت ہے لت روایہت 
کر نے والا را وک صرق ایک ای ہو اس کے سا جم رکو دوسراراد یش ریک نہ مو _ 
نامہم بن ایاج“ 34 اس میں ؛* اف دات والویران" “کی ے جک رش 
اسا ن صن بن سفیان لها فی نے بھی اس شم میں یتنا ی مگ را کا ب کا م 
معو م کال ہو۔کا_ ۱ 
۶ بچ دی KK‏ دی KH‏ 
و ارس و E‏ لاد و 
یفمآ ان قلن يسل علیمغرقة رشم مهم 
و من طریق ری شمی, وصتفوا فيه المْبْهَمَاتِ ولایقبل 
حَدِیٔث امهم مالم یسم لاد شرط فُبُولِ الب عَدَالَة رَاویْه وَمَنْ هم 
اسمه لاتغرّف عینه فْکیّف عَدَالیة ۔ 
تسرجمه :یا اس راوگ سے رواب تک نے والا راویا ختضادگ‌غرش تال 
راوی( ی مر وی عد )کا نام 3 لا اخبرنی فلان با اخبرنی شیخ 
یااخبرنی رجل یا اخبرنی بعضهم بااخبرنی ابن فلا نکھردےاو ری 
دوس ری سند یس ( ال "کم )راو یکا نام کور ہو نے سے ال کے نا مکی حرفت 
اور پان پر راجنمائی حاص٥‏ لکی باق ہےء اس ضم میں (علماء نے کارت ای 
کل عم ایند سے ات 
کک ا کا نام ذکر نہکیا جا ۓےکیون یی خر کے مقبول ہو نے کے لیے ا پر کے 


عروالظر عو ی مره موس ہام RE‏ 
راو یکا عادل ہو ضروری ے اور ی راو کانا مہم # وال وجہ سے ا لک 
زا اع یں موس تزا شک عدالم کی معلوم موی _ 


رک مل رف٠‏ 
رال روای تک کیچ ہیں یس میں راوی اپنے مروی عگواختضا رگ ٹل ےعزف 
کرد ےٹلا راو لول کک 
أحبرنی فلان» آحبرنی شیخ» آخبرنی رحل» آحبرنی بعضهم »أخبرنی ابن فلان۔ 
کور وآ ریف حافظ امن رک ہے الہ ٹف حعضرات غ کت ریف ا ی طرں کا 


سے 
0 


مہم وه عد بیش + سکی نر شس یامن لاو ایا مرد یا عورت موت کا نام زک رت 
کیا گیا ہو برا سے ایک عا م اقتا ےاج رکرو کیا مو ۔ 
ا ںآ ریف کے فاط ےا م سر ش۲ کی ہہوتا ے اورمعن جم کی _ 


بم نانک مشا ل: 
م ف الست دک مال وہ روات ے جے امام ابودا ود نے ال طط رح روا تکیاے : 
حجاج بن فرالصة عن رحل عن ابی سلمة عن آبی هريرة رضی الله عنه عن 
التبی مط أنه قال: المومن غر کریم*(ابوداژد) 
اس رای تک مدش گنل ییا کم لک وج سے ال عد یٹپ کہ کا اطلاں 
کیا گیا هرفن ابددا 5 دک ایک دوسری روایت سے معلوم ہوتا س کہ ہہک گی مین 
ا یکی _علهز ابیروا یت تول ے۔ 
مہم فی ات نک ال : ۱ 

میم نی تنل مثا لحرت ما رن اکتا وہ روایت ہے جے امام فارگ اورایام 
مرن تا ب اش یں دک رکیا سے چنا مج بقار سا ںکہ: 
ان مره سالت لنبی بطل عن غسلها من المحیض فأمرها كيف تغسل قال : 
یا مھ ا ۴قال سبحان الله 


عرو اتر OY DE SS‏ 
تطهری بها فاحتذبتها إلی فقلت تتبعی بها أثر الدم-(بخاری) 
اس روایت میں سوا لکرنے وال عور تک نام رل »لبم سب لهز ایم فی 
ات نک شال ہے ال ت پت روایات ے معلوم ہوڑا ےک ییکرت اساء بست یز ین اکن 
اور روایات سے معلوم ہوتا کہ گور ت امام بحت اکل ی _ 


مک مرف تکاطر له 

ما ارما سے ہی کہا مکی رف تکا یط ریت کاک د دای کی اس سند علا دہ 
کسی دوسری سند غل ا م راو کا م نکر موتو اس سے اس “م راو یک من ما 
ہےء بی ہم فی الست دکی ما میں مطن ابودا کی ردایت ذک رکف ہے ادد دی سنہ کےحوالہ 
تکام یکر ویک ہے۔ 


یر ام 

ج بکک الم راو این نواس وک خر رقو لس یا جا ۓگ ءالبت نا مکی 
ی JE‏ کنر رولیت کے لے اس کے رواۃ کاعادل ہونا 
ضروری ےلو جس راو یکانام بی معلوم نہ موتو ا سکی ذا بھی نامعلوم اور پول بو »اور 
ج سکی ات ول موتو پھر ا سکی عرالر ی کیے معلوم بو ؟ جب ا کی عرالت معلو میں 
موی اس وقت اک روا تقو کل وی داشرا پا لصواب 

KE جار‎ KK KK یل‎ ۱ 

وَكَذَالائْفْبَُ حَبَره لو أيهم بلفظ لديل کال الرّاوی عنه 

آخبرنی امه لاه يود بٛقَة عنده محرو حًا عند غیره وهدّا عَلی 

الأصَّح فی امه ولهذم النکتة مق لمَرسَل ور سل اذل 

حَازِما یو هدا الا خیمال بيه ول لسکا بالظاجرذ لخر 

علی لاف ال مل إن گا القائل عایما رذب فن خن مَنْ 

یره فی مه ها لیس من مَباحث عُلُوْم الْحَدِبْثِ والله المُوَقَق 

تسو جسوسه :اک طرر ال راو یکی روات کی قول کک ہا هک ارات 

تحر یل کے ساتح م رکھا گیا ہو شلا اس سے روا تک نے والا ول کک 


عروانظر e LD RD SO‏ اج 
"خر اش“ کت وفع وه( م )اس ( راد ) ند یک تو تہ موا 
سے گر اس کے علادہ (دوسرے روا )کے تاو یب رون ہوتا سے ال ستل 
( تد »)هلا بات بھی سے ا ککتداور بحیعہ ای احا لک ناء خر مکل 
کو تو لین جا ۳۳ چات عادل راوی ب مکیسا تھ ارا لک ے اور (ہے ۱ 
بھی )کہاگ س ےک ظا ب( لفط ) کا نیا اکر کے ہو سے اتقو کیا جا ےگا یرتک 
جرع 2 ظا ف اگل سے اور( گی )کہا گیا س ےک اک سکینے والا عا م ہوتے خر ہب 
یش ا سکیساتھ موافت کر نے دا لے آدی کے من میں ہے ( تر ل) کی 
ہے الہتہ یکلم عد بیث کے میاحث هلسلس 


تخر یلپ رکا مطلب: 

جر پل "مک مطلب ہے س کہ را دک اس مر وک ع کا نام ذکر نہک سے یرال کے نام کے 
با کول ای صفت ذکرکردے جوهضت ال کل شا ہت اور عر الت پر ولال کر ی ہومٹلا 
راوگ لول کک کہ احبرنی الثقة » اخبرنی العد لا صور تآوعلوم حر یٹ کی | صطلاں شش 
تد یل “م کچ ہیں۔ 
تعر لبم 

حافأفر مات ہی کر تول کے مطا بی اب راو ی کن تول تس ج وکا مرول عدو 
اف تحر بل کے ذد له زک ہے اس کی عر م قو لی کی وہ یہ کش اوتا بت ایک روک عر 
یتح حفرات کے وله تاور عادل ہو ےکر وو دوسروں کے نز دید تنل ہوتا۔ 

الب علا مہ عیدایٹوگی ‏ کی را گرا یم ےکک مکی تخد ب یکر نے دانے داو ی کی 
روات کم فص + چا ی ےک ار تور هبل اہ صد یٹ مل ےکی نار مکی 
اب سے ہو ای صورت ہیں اس روای تک قو لیت می لاو نیس ہے مشلا ہے تقد بل 
امام کرک اتب نل یا امام ما ک کک ماب سے ہو یم جب امام با ری کی تعلیقا نت 


کوقو لک یا گیا ہت یبای ہے جیے امام بار یکی تقو لکیل گیا ہے۔ 
( عق رالد ر رن جرح لظم) 


ال ات ارتخد بل ای سے ام ےحقول نہ موتو اس صورت ین اتقو لسکا 


جا ۓگا۔ 
ایک تول کی ےک ظا ہری صورت حال اور ظا پر ف کو وک ےکر ا سے تقبو ل کیا ہا ۓ گا 
کیک تلا بری طور بتو اش مروی ع کی تحر بل اورتو نگل .اور یل وتغر لل ہی 
ال ہے اور جرح غلا ف اصل ہے ملہذ ااص لکوت ی د سے ہو سے ا سے تو لکا جا گا ہکن 
یلو لضف ے۔ ۱ 
ایک ول یگ ےک اگ تال هه اور صا حب نم ہپ ہے یتح بل اورت مق اس کے 
مد بن کے ےکا نی ہے مشلا امام شا ضف ا یں کہ ”احبر نی الشقة* ییاد بل ان کے 
مقلد نشوا کے کان ہے٤‏ حاف نے فر ما کر قول علوم حر بیش ما حرش لق 
لا 
عا اقرا سے ہی کرام نے تعر بل وتو ل ہک نس تن جوک زک کیا کش 
وای راوی حش کے وک ےکر دورول نز دک یس مو“ کل ا کے 
کی وجہ ےش مر لکوقو لی جات ار چٹی ماو راوئی نے جز مکیماتھ کے ساتھ ا سے 
ارسا لکیا وگول ہو سا کرده دومروں کے نز ودرک ل شوت 
E +007‏ 
الةم إل ن بقع مارد عنة على لاس رعلا تی اف 
عَنْۂ دا کا ماما بذیك ار رزوی عنه اتان مضاعدا ولم ین 
هر مَحْھُوْل الال وف اسر وق بل واه عََاعة ید 
برد امه ور وَالحقِیٔی أ رِوَايَة الْمَسْنُوْرِ یحو ما فیه 
الاخیمال لایْطلَق لْمَرل بردهَا وَلا‌بقُبُوِْهَا بل هی موه إلى اسْبَانة 
خاله گمّا حَوَم به مام ات 
برح غیر مسر 
ترجه :یلا مہ ا o‏ 
ککرنے مهرد ہو بول این ہے( الک )مک رح ہے الا یک 
ا قو گی کے مطا ان اس مضرد کے علا و هلو او را لک کرد ے اورا یں 


ع ړوار ROSS SA ES‏ 
وہ رو( فو کرو ے ) چیک وہ اک الل ہو اور اگر ای ے دوا دو ے زا کر 
روا روا یک بی گرا کنو شی کر میں فو ےہول الال سے اور می مستوربھی 
ہے اورایک جا عت نے ا کی رواک بلائسی تیر کے تو لکیا ہے ۔ الہ مور 
نے ا گا روای کو مردووقر ار دیا ے کان مستوروفیر وک روا لہ کے 
باد سے می تان ىہ ےک ناس مطلقا ر وکر ن ےکا قول اخزیارکیا جا ےگا اور نہ 
اتقو لک قول اخقیارکیاجاۓ »بل اس راوی کی عالت کے معلوم 
و ےکک دہ روات موف موک »ابا انھ رشن نے اک ب مکیاے اورعلامہ 
ایی السلا رح کا قو بھی ا ننس کے بارے می ای رح ہے ج سنٹف لکوت رة 

رسک زد یز رکرو کیا گیا ہو۔ 


ول ات نکیتحریف: 
ول مین اس تیل الید ی راو یک کے ہیں بس سے نام کے دک کے ساتحوصرف ایک 
تی راوگ نے روا تکیا ہو ۔خطیب قد اوک نے علا مہ جم رک ےا 27 ا ل کی ے: 
کل من لم یعرفه العلماء ولم یعرف حدیثه الامن جهة راوواحد فهو مجهول 
العین_( شم القاری:۵۱۵) 


ول نکم 

وی طرر یرل این بھی تا بل تیو لکیں »بت ار وتعد بل می ےکی 
نے ا سک نو کردی ت پر ول این ت بل قول ہوگیءاسی طرع اس منقردراوگی کے 
پا سے میں در موک وو پیش عا ول راوی ی سے روا تکرتا ےو ہے کول ان راو یکی 
روات تو لک جا ۓگ ور زنک تیان ری ادد کی بن سید ہی ںکہ یردوخوں حطر ات 
یش ما ول راو ی بی سے روا کر ے ول - ۴ 

رات فر مایا ےک اگرو(منفردراوئی تام( )سک علاو وی دوم ری مقت سے 
محروف ومشہور ہو شلا ال کا زیر یال کشا ع شور ہو ای یہو رصفرت کے زکر سے وه 
ما لت نار »وجا ےا تو اس صورت تلا لک عد ع بول موی _ 

(شرں القاری:ے۵۱) 


ول الال اورستتور یم یف : 
ول الال ا سکنل اید یٹ راو یکو کے ہیں جس ے ام کے زک سکیا ردو یا دو سے 
زاکدراولوں نے روا تکیا ہو سی امام نے ا کی شی نکی ہو۔ ا سکومستوربھی کچ ہیں۔ 


ول الال اورمستو رکاج : 

امام مادعا مدان حبان کےئ د رک ردایت ی ی ئن 
راد تسه اضرا تک دیلک ماد و وف ےک ضحم کول سب مرو 
ت ر دواو را ملگ وی احوال می صلا وع دالت پہ ہو تے ہیں الا یک یکی ج 
وقد ظاہرہوجاۓ اور ہم اسان قاری حال کے ملف ہیں باش احوا لک یکھورج اع 
مارک ذ مہ دار یں ے ٢ہدا‏ م ظاہرپ عم لگا یں کے ء اس لیا در ے تم ستتورا ال راو یکو 
عادل وٹ شا رک تے ہو ۓ ا یک روتکو لکرس ہے 

رات نے فرما اک امام ؛نشممٗ نے صدراسلام یں تقو رک رو لکیاتھا ں وقت 
عداا کا دور وور و تھ تیگ نآ جک لق دفو ر کے نل کی وچ ہے کی ضرو ری ہے بی صا 
کان ہب ہے ءا تو لکا حاصل ی ہو اک ھا کرام :حط رات جا مان او رح رات بی جس 
مس سے جو را وی مستور الال بو الک رواےت قو لگ جات ۓگ یکر وہس رکا دوعا صلی ایل 
علیہ عم نے ارماك ”حير القرون قرنی ثم الذین یلونهم ثم الذين یلونھم “ کے 
زرلا نک عرالت بیان فا ے اھ ان کے علاوہکی مستور الال راوی کی رواعت 
بلانذ شی یقلت لک ہا ےکی _( نش القاری:۵۱۹) 

ہو رکا نہب ہہ ے ,تور روایت تا مل قبو لیس کین تما محد شی نکا اس بات 
اما کش تول ردایت کے لے ماع ہے ہز اتو ل روات کے لے راد یکا یراس 
اورعادل موتا ضرو ری ہے اورمستو رکا مال چگ ہم ےکی سے جس کی وب ا سک وش 
وک یں 

چ رستور ےکم کے ار ے میں حاف کی ن ىہ ےک رتور » ای طر ف رم اور قر 
ول ا لمال ان تتول یں راو ی کی عر الت اور ا سکی ضد دونو ں اتال موجود یں لہ ١ی‏ 


وه 


عرجانظر مه او دا نی یق ARES‏ 
اتال کے ہوتے ہوئے تا نک اخبارکومطلقا رد پا سے اور تا نکومطلقا ټول ره بان 
ان کے مما لے شش اس وقت کک تق فکیاجاے جب تک ا نکی دالت اور 

ون ا پراور ہین نہ ہو ہا سے ١ا‏ کی قول ام ال رشن نے ج مکا ا نہ رکیاے۔ 
چنا نے علامہ این اللا رح نے ال راو یک ردایت پم لا نے کے سے یں ای طرح 
ت فکیاے :ینس راوک بجر تنل مومت ” فلان ضعیف“ کہا گیا ٭وا ورای 
کیسا تح سیب تع ف کا کر نہ مولز اجس طط رح علا مہ امن اللا ر نے کور ہ صوررت سگم 
زا نے میں فو ت کیا سے یع مبھی خی رمستور الیال ول الال ارم پم ۵-6 می مور 
مدال کک و ق فکر میں کے اام پا لصواب 
وو وب رب KK TE‏ 
م الدع وهی السب العاس من أسبّاب الطن فی الاو وهی لا 
آن نوہ بمکفر اد یَعُتفْد مَایستلرم الکفر ار مس فالاول 
لَیْفُبَلٌ صاجبَها الْحُمْھُوْرُوَقِيْلَ بقل مُطلفا وَقيْل رن اد لَايعَمَدُ 
حل الکذب لِنْصرَة مَقایه بل وَالتْحَْیٔق أنه یره کل مکفر بذعي 
ا کل طایفة دعي ائ مُحَاِفیْھَا مُبْمَدِعَة وَقَد الع قتکفر مخالفیها 
كلو جد ذلك عَلی الاسلای لاشتلزم سر ہت ویب فالْعتَمَدٌ 
أ اذى ترد روایته من آنکر مرا متوَاترام من الشُرُع مَعلوْمَا من الدْن 
بالضرورَة و گذا من اعُتَقَدَ عکشه اما من لم یِکن بھذم الم 
انضم إلى لك ضَبّطه ما رمع وزع وَتَفُوَاه فلا ماع من بول 
تر هه :من نی ارا دی کے اسباب ٹس ےلو ال سیب برعت ہےء برعت بو 
برعت مکفر ہ ہوگی پا سی طو رک راوی امک چ زک اق ور ک ےگا ج کف رو زم ہو یا 
( برعت )مشق »ول کی م کے برق ( کی روات کو مہو رتو ل ی ںکر تے 
اور ہے( کی ) کہا گیا س کہ ای ( کی روا یہت )کو مطلتقا و لکیا ہا ےگا اور ہے 
( کی )کہا گیا ےک اکر وہ( بدن )اپ با تکی تا تیر کے ل مو لوطلا ل بے 
کا اعتقاد نہ رکتتا واو را کی روات تقبو لک ہا ےکی ۰( ای می ر س )تن 
بے سب کہ ہرمو جن بکفر برع تک دنل جات هگ کوب رکرو ہ اپنے طا لف 
کے بق »وس کا مرگ ے او رش اوقا ت عد ے تاو زکر تے ہو سے خال فک 


ع ړوار NST‏ و ا PAD SNE RAE‏ 
گن رکرو ینا ہے اکر ا تو ل کوک الا طلا قی مان لیا جا ےو اس تمر ومو ںکی 
لا زک یل تد بات ہے س کا( برق ) کی روا کور دکیا جا ۓے 
گا جو شر بجعت کے ا ہے امرمتو ا کا گر ہو چو ( ام ) ضرور یات د ین شش سے مو 
اور ای طرں وو جواس کے بر سک اعا د رکتا مو الب جن سک شان نہ مواور 
اس کے ساتھھ(اس میس ) ضط فی رایت اور وررع وت ی کی ہوا ا ہے سکی 

روات اول ٔ)۶ نع 


برح تک اقمام: 


برع کف ه ال بد عت نت ہی ںکجس فرلا زم ا ہواوراس کے قال (برگق )کو 
کفرکی طرف مضو بکیا ہا سے »لا وه ہرگ یی ہے ام رکا ا عتا درکن ول س کف رلا زم 
7ج ہو بے حررت ع یکرم الد و چ ےکی زارت میں حول الو ہی کا تنل ہون بخ رآ نک 


تال ہوناوظیرہ- 
۳)...... بت هشرقم 


برعت مضہ ال برع تکو کے ہیں جس ےنت وور لازم آا مو اور ال کے فا کل 
( برق )کو ای بدع تک وج ےسک طرف ضو بکیا ہا ے مقلا يرعت تل عتا رکا 
تقاتل ہوا۔ 

خرکادہ با لا عبارت میں ماف نے صرف برع تک میا کمک ذکرفر ایا جک دوس رام 
اعم ای عہارت ش ںآ ر اے۔ 
برع تعفر هک م رک بکی روا ی تک گم : 

برع تافر کے م رگ بکی روایت سمش چا راقو ال ہیں: 

)...ور کے نز ویک | برق کی روایت ب کل قا بل قیو کل بل مردود ہےء چات 
ای الق علا مز رک کے وا نے ےش کیا س ےک : 


"لاتقبل رواية المبتد ع ببدعة مکفرة بالاتفاق* 
کہ یدع تم یم وت او وه 


٦ ۳‏ 00 کت 
تو را لک روا تیو ل س موی بلک مر دود موی ء کے فرق خطای ےک و ١‏ ال طرح سک مور ٹکو 
علال متا تھا- 

۳( تیرا قول ہے س کاب بر کی ردایت مطلقا متبول ہوگی خواہ وہ ا ۓ اختقادی 
ارفا سد اور فا اظ ریا تک تیر کے لے عو ٹکو طلا ل تتا ہو یا علا ل شتا ہو بہرصورت 
ا کی روات بول بو بر یو ضیف ے۔ 


س ان ہے س کہ برعت کف ہے مرگب مر ہدک کی ر وای کو روک کیا جا سنا ای س ےک ہر 
گردہ ات مخالف پر بر ہون ےکا وک یکرجا اور اوقا ت مبالقہآ رال مٹش اپنے الف 
کوک ف رک ی کہہ دیتا ے مب !ار اس رد کے قو لکول الاطلاقی مان لیا جائے توا ے تام 
گرو ہو لک رواو لکا دود وال ما آ گا ھک درس ت کل - 

ا انیل کے مت رلور ہ روا تکام ےکک برک کے اتہر مت رچ زب شرا کو 
مو جو و ہوں الک روایت‌قو ل کی چا ۓگی اور یل پیشر انا موجود هواک رواعت رو 
کی جا ےکا ۔ دشرا کے ہیں: 

( 4 سم یہ سیر تی lG‏ 
مر ہو شا روز وناز وروت 

(r‏ کٹ جوا ضرور یات د بین مھ کل ےا سے رور یات د بین یں غار کرجا ہو 

n (r:‏ بق ہونے کے طاوه »و ن کی مل صفات ال‌موموجوو ہموں »عا ف وررغ 
وتقو یکو زک رکیا ےکر وھا ہت میں داخل سے_ 

)...آل وعد یٹ میں تر لی فک قال ن ہو۔ 

۵( 7 شی ویے ۱ تتا ہو۔ 


عرڈالظرم 0ا ا ا ا ا ا ا ا ا ا ا ا کے چھو ای 
ان شرا ئا کے حائل یق کی روا یت مقبول ہوگی اس کےعلاد هگ روا مرو ا 
KR r E‏ 

والانی وَهُوَمَنْ یی بُعَته تفر أضْلا وق اتف أَیَضَا فی 
بوه ورد بل یره مطلفا ور یبد واکتر ماعل به ئ فی رواب 
عن روا لامره نها بکرم وعلی هلا ییآ ایو عن 
جل کلب کمَاتَفَدم بل یل بن ده إلى بذعیه لاد تزینن 
بذعیه قد يَحْمِلّة على تَحْرِیٔف الرّوَایّاتِ وتسوَیها على مَا تیه 
ده وهدّافی الاصَح 

ترجمه :اور دوس ری م اور( الک فا گل دہ( بر )که لک بدعت 
کک لگ ری تھا ی تہ ہو اور ا سکوقو لکر نے اور ر وکر نے می بھی اختلاف 
ہے لیگ )کہا گیا س کہا سے مادقا ر وکیا جا ےگ گر ہے( قول )بعد ہے 
اور دک اس قو ل کی مت ہے بیا نکی جانی ہ کہ اس ( بق ) سے ردامت 
کہ نے میں اس کے اع رک ت وتک ہو ہے اور اس کے وک سے اس تفيم 
(لا زم۲ )اک وجہ سے اس تد ےکوی ای هد یٹ بھی رو ایس 
کر چایے جس می اس سا خی تقد ش یک مو اور یل کی )کہا گیا 
ےا ےمطلتی و لکیا جا ےگا الاک وہ مجھو کوعلا ل تا ہو چ ےک بیز ر 
چ اود( پیک )کہا گیا ےکہ ہراس( برق )کی ردایت تول کی پا ےگ ج 
ال یدع تک طرف داد »گید برع تک خوشنماگی ا کور و ایا ت می اس 
طرں یف شت او رر یف محوی اعا رق ہے تج ا کا نہ ہب چا جتا ہے 
اور ار اقول)ے- 


0 2 

اس عبارت یل حافظ نے بدع تکی دوس ری کا گم ذکرفر ای 

برع تکام انی دہ ہے جس میں اس کے م رک بکوکفرکی ط ر ف و بی لکیاجاجا لراست 
نی رف خو بکیاجا ا ے۔ 


برعت مضفرتہ کے م مک بکی روا تکام : 

بعت مز ہ کے مک بک روات سم تس تین اتو ال ہیں : 

۱ ..... لا قول س کاک مد کی روا تکومطلقا ردکیا جا گا خواہ وہ پل برع تک 
طرف دا ئی ہو با نمو اور خاوو وت ر کےطور هو تاولا ل متا ہو با صلا ل نم متا ہو۔ 

ا ی قو لکوحطرت امام ما ۲ کی طرف خو بکیا جا تا کید یب را وک ال مکی بعت 
کے ارکاب کی وج سے فا ن ہوا اور فا کن ( مول ور اول ) کی وای کور دک نے بے 
اا ے۔ 
گر قول ر تن کے اسلوب سے بعد ےکک جر تن کت بتر می دائی کی 
روایات سے گل ری ڑ کی ہیں ۔(شرں القاری ٩:‏ ۵۲) 

اس تو پر ”شی نکی ہاب سے سب سے اق می دمل مہ کرک جال س ےک متا سے 
روا کر نے بش اس کے ام رفاس رک ور اور اس ی م ون ہے عا اکلہ وه واچب 
الا بات سے و ان کی روای تکومطلتقا وکر کے الک اپام تک جات گی - 

ا نکی ال وی پر اترا کیا گیا ےک ہاگ ی بات »و پچھراس ہت کیسا تی 
رایت شی کول یج العقیره دا دی( غر تد )شال موی ےا بھی ال تد کی روا تاو 
با لول کیا جا سے عا رای صورت ۲س تقو یت کے ےا سک روات جا بح اورشاہر کے 
طور برقو لک جالع 

۴).... دوس راقو ی کرام کے مد کی ر وای تکومطلقا تو لکیا جا ےگا خوا وہ 
دا ال البرعت ہو پا نہ ہو ءالہمتہ ال‌مبتررع کا ی »ون ضرو ری ہےء اس لیے وای ت کا ار 
داو ی کی دیترارک اورز با نک چا( ہوتا سے لک وج سے ده جھوٹ ہو لے سے پر یکرت 
ے۔الا ےک وہ تد جو فاوصلا ل بیت ہو را یک روا یت مردود وی کے یز ر ا 
ےا قو لک نت حر ت امام شاف کی طر فک ہا ہے ۔(شرں القاری ۵٣:‏ ) ' 

۳).... ترا قول ہے س جک ال کمک متقد ا ار اپ برع کی طرف دا نہ موتو ال 
صورت ٹل ا لک روا تقو لک جا ےکی او ار وا ی ہہو پل رقجو لک جال ےگی۔ 

ال ل ےک دہ سے ہب اور قالط نظ ریا ت کے تقاض کے موان ال برع تک کیان 


عرورلظر . ۲ ۸۰۹ 
سے رت مت 
کی روا یت تو لی کی جائی »شام پا لصواب 
KK KK KF YK FX‏ 
وعُرَب اب با فُاڈغی الاتفاق علی بول عير الڈاعِمَة من عَيْرٍ 
تَفُصِیْلِء‌نْعَع الا کتر على قبل عير اه إلا أذ یروق مایق 
ِبْرَامِيْمْ بُْ یَعُقُوبَ جرا شی آبی ورد والنسائی فی کتابه 
مَمْرفة الرخال فَقَالَ فی وصفٍ الرواة رهم زَائِعٌ عَنِ الق ی عَنِ 
السنَة ص اوق له فلس فيه یله لا أن یذ من خدییه 
مالایکود مُنگرا ذالم يقو به بذعته انتهی وَمَاقَالَه مَُجهَة لن العلة 
ای بها یرد لح دی الدٌاعية واردة فِْمَا ۱ كان ظاهر المَروِیَ 
اف مَذهَبَ المبَدع ولا مک داية وان آغلم 
تر جصے :اور ابن حبان نے تر جب تو ل اغا رک ے ہو ے پر کیا کر 
یا یکی ایت کب کی یل کےقو لکرنے اتاق نے بنا ان کو 
۱ علخ دا ی کی اعت اول لر نجل لین ار ده امک رداعت بیان 
کر ےننس سےا سک بدع توق بی تی بوت نم ہب متا ر کے مطابقی ا سکیا 
اس وای تکوردکیاجا ےگ اور امام ابودا داور ایا م نای کے استاز حافظ ابو 
اسحاق ایا تم ن تقوب جوز ال نے اب یکناب محرف الر ال یں ا کی 
تمر کی ےہ انہوں نے روا کے ادصاف ییا نک ے 0 - باس الض 
دو روا ہیں چون ن سنت سے بے ہو ے بر وه صا دق ال مان ہیں سوا 
لاو رع کل کا نکی وہ عد عث لی چا جوم نہ ہوججکہ اس سے اس 
کی برع کوتقھ یت ہق موعلا مہ جوز ہا ی کا رتو ل تها یت عدہ سے ء اس لے 
کال سیب سک وج سے دا یک عد بی شکور دکیا جاجا ے وہ( سبب ) ال 
صورت کی وارو + ل‌صورت یل مرو یکا ظا ہر تر کے نم ہب کے 
موان م ووو ہا لکا دا نمو 


اس عار ت می اف مان حبا ن کا تو ل تر یب اورا ک و جیہ ذکر فر ماد ے ہیں »۲ غ 
یش نہب گرگ ذکرفر مایا ے۔ 


علا مرا مع با نک تو ل تر یب : 

علامرائن جیا نے ہے دقو کیا کے یروا گی مدع راو کی روا یت بلاک ی فصیل سے 
تیو ل کر نے برعلا اتا اورا )تمد کی دہ روات خواو ا یکی بدعت کے لیے 
مقو ی اورمد یر ہو اہ ترمو یرد وصور ت ا ےو ل کر نے پا تفال ے۔ 

حافظ نے فر مایا کہ می پاں علا مہا حبان ےو لکوہم اک کے انان پو لک بی کک 
یروا ی تدر کی روایعت اک علا ء کے نز دکیک قا قبل سے الہ علماء کے ا فا کا دو یکرم 
درل - 

کیوکمہ مھ ہب مقار یہ کے فیروا یک روایت اگر الک برعت کے لیے مقو ی اور موی 
مورت ہو ا هقی ںکر میں کے پل ر وکر میں گے۔ 

چنا چرامام ود داورامام شا کےا متا وح رت ابواسحاقی ایرام جوز چان نے اپٹ کاب 
مرف ار ہال تلا ل نہ ہب متا رورا حت کے سا تھ با فر مایا ے۔ ۱ 

چنا مج دہ رداۃ کے اوصاف کے ان مین ریف مات ہی ںک کش روا ق سنت سے بے 
ہو سے ہو نے کے باوج دظام کے سے ہوا تے ہیں تو ای روا ؟ کی ایی روایت م گر نے 
ای ر ہیں ہے بو روا ہت گر تہہواورا 30 1 برعت کے مو بر وتو ی ہو_ 

تد راو یکی روای تکی تن صو رت ہیں : 


کی روا مت تال عقا تراور برع تک مر موق سے ء اس صصورت می الک وب 
مقبول یل - 


برک تکیت تیر مور تی سےا کی صو رت می بھی ا کی روا بول کیں _ 


ع ړو اکر DOSS‏ اه و اس مهم و ۴۳۰۰ 
۳).... تس ری صورت ہے کرو هبتر رع دود واگ جاور تالک روات ےا 
1 برع یکو تقو یت ٹل ری سے و اک رت یس ایک روایت قول موی بش ریہ وه 
روایت س٣ر‏ ہو۔ 
عاففرمارے ی ںک علا م جوز انی کا قول بہت عدہ اور و چم ےک یکلہ تقد راو یکی 
روا کور دکر ےکی ال عبت ہے ےکا رواعت سے ا یکی برع تکولقو یت ق سے 
لہ زاج ب مدع نفیردا یکی روایت سے ا سکی بدع تکوتقو یت ر بی ہو ال‌صورت میں کی 
ا سکی روا ت قول یں جا کول ط رع دائی مو ن ےکی صورت مق برع تک 
وجہ سے الک ددای کور دکیا جار پا ے اک طرح تیر دای ہو ےکی صورت می لک تقو یت 
دک تک وجہ سے ال یک روات رد چا ےک کی وک ر وای کور وکر ےک سب وولو ںصوروں 
میں مو چو د ہے اور و م سب بلقو بیترت ہے۔ واراعلم پا لصوابپ 
Fr... TF KY‏ جا KK‏ 
م سُوءالجفط وم سیب العَاشِر مِنْ باب الطعن وَالمَْاهُ به مَنْلَمْ 
برخم جانب اضابّیه على جانب الْحَطَاً وهو على قسْمَین و کات 
لازنا بلراوی فی جمبّع خالایه فَھُوَ السا على رأي بَمُضِ أمُلِ 
الحییب أو رد کات سوء الحفظ عاریا على الراوی اما لکبره أو 


ذعاب بَصَرو أو لاخیراق کتبه أو عَيِمَھَا بأ کال یَعتَمد ها فَرَحَع إلى 
حفظه فساء قدا هو الم خبط وَالحْکم فيه أ مَاحدّت به قبل 
الاخیلاط را بل وا لمیر وت فیه و گذا من اه لام 
یه ورف باغیبار لین عَن_ 

ضسر جسصے :اور ریا وداش تک رال اور ےا سپا بت ٹل ے وسوال سیب 
سچ»اورال سے وه( راو )راد ے جوا نی درس تو لک جا بکوخطا ب7 یا 
ددت کے اور ا کی ریس ہیں: اکر ہے( سوم حفظ) راک کے تام عالات 
یش لازی پایا ہا موتو حش جر تن بقول ہے شا ے اور اکر ہے ( سوم 
حفظ )راو یکیماتھ بد ما هگ وج سے عارش ہوا ہو یا بصارت کےتم ہوجانے 
گی وجہ سے با کتابوں کے بل چا ےک وجہ سے ب اکب کے نہ ہو ےکی وج سے 


عرڈانظم A RSA E TOE ERA‏ 7 
بای کا یک ا نکتب ےا دقاو ای سے ا سک یاداشت راب ااوروه راب 
مکی و قاط ہے ا کا عم ہے ےکا اط سے بط ال نے جو بر وی تکیا 
ے اگر وہ تاز موتو وه ت بل بول ے اور اگ رمتاز تہ مولو ال کے بارے شس 
توق کیا جا ے ا٤اک‏ طرع ی کول ام متم وکیا مواوراس اک حرفت ال 

ل و 


ای عبارت میں حا فو ےہ راو یکی دسو ی کو حفت رک میا ن فر ایا سب ۔ 
سوم حفظکی اقمام : 

سو حف کی د وکین ہیں :(۱)..... سور حفط لا زم (۲)... سو حفظ طا ری 
)...و < لا زم: 

سو حفظ لا زم و تنس جو راوگ کے سا ریش سے و اور رال یش اس کے سا حر بتا 
وا سے جدانہہوتا ہو شس راوی تفن نویک ا کی رداک 
کو شا کہا اتا ے۔ 
۱( و وءحفظ طا رى : 
سو ریش شک وج سے راو یکی تھ لان بویا ہو ء اس 


e 7 ۹‏ وک ۷ء تب راوی عطاء بن 


میور - 

۹ .. ماع اسیاب کے علاد هک فد رل سب بک وجہ سے حفظا می سک یآ گئی تو ای روا کو 
شاط اورا نکی روا تکوت رخ کے یں - 
خی رکم : 

رل کم ہے کہا س تلط راوک نے مر ا خلا د سے یل جوددایات جیا نکی ہیں اگ 
دیز اور دا یں اوران کے پارے میس ری معلوم ےک وہ اختلا ط سے پگ رای تکردہ ہیں 
ا نکر لکیاجا ۓگا۔اورا ضا ط کے بح دک روا کر دکیاجا سکاب 

اور اگر ان روایات کے باد سے میں یمعلوم نہ بو کی اخلاطات یک یں اور 
کڑی اخلاط کے بع رک ہیں ت اس ضورت جس الط راو یگ ددایات کے بارے ش 
توق کیا چا ےگا میتی ا لک ردایا کنر روکر میں کے اور تقو لک سی کے _ ۱ 

ای‌طرن ال راو یگ ددایات کے بارے می لے ف کیا ہا ےگا جن کے بارے میں ہے 
معلوم نہ ہو ےک لط ے پا نی ؟ یا ای نے اخطلاط کے بعد روایا ت بیا نکی بل یال ؟ 

ا بوا ل می >کر کر ہ ا ختلا ,یناور شام یتلوم وگ ؟ 

فاد ہی ںکہ یہ ره امو را ی لط را وک سے براہ دا ست احا د ےت حاص گر نے 
IDET‏ سے معلوم مول ےک انبول ین FE‏ یں 
متنا م بر ھا لکیں؟ اور مز ید ےک اتہوں صرف اختلا دا سے پیلہ حاصل یں ؟ یا صرف اختلا ط 
کے بعد حاص یکین ؟ یادونوں ما اتوں میں ےس ل کیں ؟ 

چنا1 رن مرج کو اختلا کا مر لان ہوا تھا ان یش سے ایک رای عطاء بن 
الات ن اس راوی کے کل لن روایت ها ار نے وق روج ت شعب اور 
فیا ن ٹو ری ہیں ۔اوراختلا ط کے بعد روایےت ما لکر نے وا سے گر وم مین عبد امیر ہیں 
۵ 9 ۹:0 )زاون شل رزای تکرے وا شا روطرے 
وال ء می وجہ ےک وکا او رترب ب کید ارگ عطاء سے ها لکردواحاد یٹ ا ٹل 
اقا یں( شر القاری:۵۳۸) : 


TT:‏ 0000۳۳۳9 ی 


۱ مر E‏ و کار رش رم رم گار تم و مرس 4 
وَمّلی وبع یی الحفظ بمعتبر کال یعون قَوْقَه و مه اون وگذا 
7 دہ وف 0 و از ۳ وا فو یر ہی ا گَ 

الم تتلط الذٍی ليمير والْمستَور والاستاه الْمرَسَل و کذّا الْمُدلس 


بدیك باغیار الْمَحُمُوْع ین المتابع التبم اد واجذا منم 
باخیمال کون رواییه صوَابا أو یر صَوَابِ على حَذ سَوَاء ادا جَاءَ 
Rg‏ 
الا ختمالیّن المَدُكُوْرَیْنَ و دَلٌ ذلك علی ائ الْحدِيْك مَحفوّظ فارتّفی 
من دَرَحَة اقب إلى فَرَعَة المَقُبولِ وَالله عم وَمَمَ ای إلى 
دَرَجَة الْمَقُبُولِ فهو مُنْحط عن رة الْحَسَِلِذَائِم وَمَمَا توت 
مہم عَنْ (طلاق اشم لسن عَلیه قاط مایق بالَْتن من 
خی الْقبُولِ والرد ۱ 

تر جمه :اور جب“ وء حفظ ( کے را وی ) کا کول ایاستا شع ل ہاے ال 
ورج یل فان ہو با برابر وال سم »وهای طرر ا ہے شط راوی( کا متاح 
می ہا ) جس( کی اعا وٹ ) ک۱ تیا ز نہ ہو کا ہوء ا کی طرح سٹو ر راو یکا اور 
رس راو ی کا (حتائع مل جاۓ )اک رع اس راد کا (حتائع ل جاۓ )- 
جب کڈ و فک عرفت نہ ہو( تو ان سب‌صورلال شی )اس راو یک عد عفن 
مہا سے کان لز ال یک اس روا تکومتائع اور مائ کے بمو کا نهر 
کر تے ہو ۓ ال وصف( 7ن )یر منص کیا گیا ےکی ولان یل سے ہر 
ایک ال ع رسک ها ےکا کی رواییت درست ے یا درست یں ے٤‏ اور 
جب مجح رشن سے ان شی تک ایک کے موافن روا تک ہا ےا پر رآوره 
وواخالوں مل ای ککوت تی دی جال هگ اور اک مسجم( کی روا تک آھ )نے 
ال پر ولات کروه روا تکفویز ے ہل دہ روات درا تف ے ررم ٹول 
کک کل -( کن ) درج تول پر کے کے پاوجوووه رواعت در صن ےم ی 
د س ےکی او رش نے ال بصن کے اطلا تی سے ق فک کیا ےہ یباتک دہ 
پیٹ ٹم موی جس کا درل کے انتب ر من کے سا لق تھا۔ وا شام ۱ 


حا ال خیارت 0 ہے بیان راد ہیں ان کے کم ےکی فچرت روات درجم 
وتف ے در قول یچ ہا چاو دا ےت سن خر ہ کے زمر میں ش ام لکیا جاٴے۔ 


خرن نخر دک ایک‌صورت: 
من درج ذ ہل روا کی اخبا رک اگ رکوگی ایا تمالع آجاۓ جومتائع اس راوی کے چم پل رمو . 
یال ے درج میں ایی ہہ وم نہ ہو ان روا 3 گی ا خپا رمتو قو کی اس متا ابع تک وج ے درجرن 
یر کال »وه رواب ہیں: 
(1)..... وء حف ے مطعون‌راوی 
(r)‏ موه شش راو ی سک روایات ریز ہیں 
()......ستورراوی 
(۳)......استاومم کا راوی 
(۵).... جر لکاراوی 
ان تام روا کی اخبارال مال تک وچ ے ور ج2 تف ےک کر در سح یل رسا 
ما کر لتق ہیں اور ال خر کہا ہا ا ہے ما ہم ال حن لم ال بل سن خر کے 
زرے میں شا رکیاجا ا س کیان کے ان ریصن الیک نماد گی عائ لک وج ےآ یا ہے اور 
خر کےا نر نماد ییا رک وجہ ےصح نآ ا کون خر ہکھاجاجاے۔ 
عا فر مار ہے ہی ںکہ ہیاس ار گی عال مایق اور تان کے اس و طور پر اے 
تقو یت مال بو ے اس بو تو یی کی وچ سے ا یکو اس وص ف تن کی ہے 
متص فکیاگیاے۔ 
او ریو یکیفیت سے ان ت نک اطلاقی اس کیا گیا کان رداق ٹس سے ہرایگ 
راو یگ جد یٹ ال احا ل کیک برام کہ ا نز وہ ورت ہے یاوه درس ت یں سے مین جب 
مت ر جر ٹک روایت ان ٹیش ےی ایک کے مطا بی اورموافن موی و اس‌موافق تک ور 
سے ممکورہ دووں اخالوں مل بر 6 اک اخا لایخ ہوجا ےگا اور ہے تا لصت اور 


عرڈانظر سر ی سے جس کی و 
موافقت اس با تک د یل ےکہاس راو یکی رواخ رتفوط ہے بل اب ا کی روا یت ال 
کی وچ سے متوقف قیال د ےکی جلکراب و وتر بول بن جا ےکی الہ ىہ بات یاد س ےک وہ 
روات رول ہو نے کے پا وج دن لا سے درچ سکم ی موی اس هکل یا ان کے 
او یں موی من وہ روابیت صن خر ہ مو یکوک تقبو لکا یچ یکم تر درجہ سے ال ےکم تو خر 

ضیف )ول 
مض حضرات نے خی رمتقو ل کی اس خاش صورت ب کا اطلا کر نے سے و قف اخقیار 
کاس - ۱ 
مساق دک نے اورقو نکررئے کے جرا موجن وه اراس مقام 
کل موی ہیں اب اس ےآ گے سند سس تلق اا م بیان ہوں گے - 
TF YE FE‏ ا جا EH‏ 
م الستاد وم الطَرِیٔی موه إلى تن وَالممنُ و غاية ما هی 
یه الاسناد من الکلام وَهُو إا ا لثبی صَلّی الله 
وعلی آله وضخبه وَسَلَم ری تلفظه إِنَاتصْرِيْحا از مکنا أن 
امقول بثك شناد من له صلی الله علیہ على آله صخي 
وَسَلم مِنْ فغله أو تفرره ال رفوع من الق تَصُرِيْحَا :ان 
بقل السخابی سَمغث رَسُوْل الله صَلّی الله علیہ على آله وصخبه 
وم یل دا أؤ حًا سول الله صَلّی الله علیہ وَعَلی آله 
وصَحبه وَسَلَمَ یگذا» و بل مر وغیره ال سول الله ی الله عَلَيْه 
رعلی آله ََحبه ول کذا او عن رَسُوْل الله صَلّی الله عليه وَعَلی 
آله وَصَحْب وَسَلَمَ أنه قال کذا وَنَحْوذِيِكَ۔ 
تر مه : اور راستاد چاو نگ پیا نے وا نے راس تک نام اسناد ےء اور 
+ لک نقصود سای موو ہمت ہلا ع ہے اوروواسنا و اوقات نی گرم 
کل ام علیہ ول مک نی مو ے اوروو اسنا دا کے تیر شی ہوا ہے( ناه 
وو راح ہوجو ا٤‏ وا بو ) کہ اس استاد ہے تقول ہوے والایا ضر سی 
اش ایل مکاقول وکا ہل ہوگایاا نک تقر ہوگی ‏ مرف ق لی صر کی شال ے 
ہ کال ول کی ہک میس نے رسول انی ول علیہ وم مکو تولف مات ہو ئے 


عرڈانظر سوا سا سو اناد ھا سد فا مس اص را وا ہو ۴9600 
سناےء یارسول انش ینعی وم نے ا سط ر ع بیان فر مایا سے یا صحالی یا بی 
ول کک رسول ایڈی٥ی‏ ال علیہ یلم نے لول ایا سے با رسول انش شیر 
لم ےمنقول ےک ہآ خضرت مکی لق علیہ نے ترمایا۔ 


مر 
اس عیارت میں ماف نے اسنا تن او رت رع فو کیا ریف وف رہ بین فر ال ے۔ 
اسنا دآ رف : 


و وراس یاوه زر اھ جن کک باس ا سکوا سنا کہا جا ناج 


م نک یرف : 

اس تہ عاف نے مت نکی ترب نل فر ا ہے ہک جن کلام پاستاو کی وا یکلا مکی 
۱ بت نج 

ا لت ریف پیات اش ہوتا ہک کلام باتوی ہوا یکت ن کی ہیں یی اک یل 
گز د چکا سے کان اس نرکودہ پالات ریف سے فو ہبج می لآ با ےکا یکلا مکی انس حرف 
. پر ہوا لت کچ ہی کدی کرعد یث انما الاعمال بالنیات ل7 ف تس ے۔ 

اک التقا راف رماتے ہی ںکہ جال لفیا ای تک ا ہے اعد طرف اضافت اضاضت یا _ 
اور یفام فغ کے یل ے ہے تو اب اس عار تکا هل باکر ”و السمتسن خاية 
السند وهو کلام ینتهی إلیه الاسناد“ ات جیہ سے اشکال دور ہیا کین پ تھی الس چک 
”غایة“ کو زک رت کر ی مت تھا اک شی نہ پیداہوتا۔ 


سند ک ےکی بط ےترک اقام : 
(۱)..... تم فوع (۲)..... بر وتوف (۳)...... خرمقطورع 
ا)...... مرلو حرف : 
اکر روا کی سن ر خضرت کی اللہ علیہ یلم پشتی و اور ال سکف اس باق 


عرڈانظر خر رر ہم رات 
ہوکہااس سر کے ذر لیر جومنقول ہہوگا وو صا ۃ یا ھا خضرت کی ول علیہ یسل مکا تول 
قرب ےا ا ورف کہا جانا ہے۔ 


خمرم فو کی اقام : 

ارف سے علوم ہواک وو تقول لین اوقا ر ہرگ اور لش اوق تھی ہوا 
اض دف وتو ل موف وقول ہوگاء اور وف تقر ہے موک تو ال اط ےرم فو کل 
یس بو 


(0).... رم فو صرح قول AIAG)‏ 
(۳). رفص ریق (۴) ...خرف کیل 
(۵).... خرم فو یل (۹)....خرم فو ینت ری 


جرم فو صرح ول صو رت شال : 
ا ریا ی عند رج ف ل الفاظ سے روای کے یرذن ر6 تو یکی شال ے: 
۱ تسه رسرل الله مضه کذا 20 


رمو صر یی صو رت مال : 
رای مندرجہ ذ ہل الفاظ سے ددایت با نکر تے یف رم فوع صرح نی ی مثال ہے 


1 


) کان رسول الله مله یفعل کذا میم ( اس نی مھا ی بھی شال ہے‎ ...... ٢ 


مور صرق مر یکی صور رال : ۱ 
اکر سی ی مندرجذ بل الفاظ سے روات میا نکر ےل یم فو مرن لر ر یکی مال ے 
ی خض ریت ال علیہ و کال ےا کا رھ مت شوب 


ڈو مر هی سد ی ی یت موز 


رم فقو یکی صورتت مثال: 

سی یکا یق ل مرف کیک شال ے: قال رسرل له کذا 

الہ تہ اس شس چا شراک بل : 

ا)... کک شرط یہ ےمرووقو لی یا یک ہوجوصھا لی بی اس ال کم بیان کر 
ہو رال سے اجقتا بکرتا ہو چنا نج راس شرط کے زر رکب ایر بن سلام او رح رقب راڈ بین 
ترو بن الوا کونا حکرناعقصدد ےک وک نک میم وک میں ا کناب یکب ان کے ور 
ان اور رات ا نکتب ےئم واخیارسنا یکر تے تھے ۔(ش رح القاری:۵۳۹) 

(r‏ 1 دوس رکاش رط بی ےکا قول اورروایہت میں اجتچا کول فل شوب 

۳)..... تس ری شط بی >کال رواعت اورقو لکا عل لفت ےلو کان :ہو- 

(r‏ ۳ یش ط یہ ےکا قو لک الفاغ لرن ےگھ یلق دب 

لهز اپرو وچ اورروایت جوبرماقلق تن ہوہ یا نوا یم الملا م کے مالا ت وواقعات 
تلق ہو پا آنیوا نے مور ےتخاق موم بل سے تعلق ہو با فتوں عبات ہو یا ت مس 
کےاحوال سے تلق ہو یا ان اخیاریں ے مون می نمو و اب با خصو ع زا بکا ذکرہوتا 
ےو ان تا م خا رکا رف رع سک زمرت ںا کیا جا تا ہے۔ 

ا گرا مق زمر میں شا لک رن ےکی وج یہ ہ کان اخبا رکا ضرورکوگی دول خر 
د نے دالا در کیان می اجچا دک کول وتیل ہےء اور جن اخیار میس اہہتچا دک ول نہ ہو 
اک اخبار کے قا لکوا نکی اطلاع د ہین وال ای ضرور بضر و رکو ہوگا او رسحاہکرا حم گوا نکی 


اطلا ‏ کی دو دی سورت ہوک ہیں: 
١)....یا‏ تق ان لکنا بک کلب سے اطلا ر ہہ یل »سکن کب یہاں یش رط کا یی ے 
کرو وصسھا لی ا سرا لیات تک ز ہو 


اور یی کن ے۔ 


عرو اتر 8:70 یف مج 

جب اطلا رع د ہے وا حضو ر اکر کی اللہ علیہ وسلم ہی بل سا یکی اک روا ٹکو 
لا مر قورع یکہیں گےخواہ تیال نآ تحضر تت صلی اٹہ علیہ وم سے براہ راست سنا ہو یا 
لاس سنا بہردوصورت مب سب - 


مکی یک صور شال : 
اگ رکوئی سیا ہی اپیائنل انا مدع ئل مس اجتچا کول شل نہ وق ایی کل ترذ 
کی یکی ما »اس ل ےک جب ال مس اج رک و وش لیس تو ضرور بضر ور رل 
خضرت صلی اٹہ علیہ وسلم ے با بت ہوگا عب نیز ال نے ال اکیا ہےء چنا نب روامت 
ں٢۲‏ کر تک یکرم ان و جہہ نے صلا کسو فک ایک رکعت میں دو لور کے او 
معنرت امام شاف نے ا نت لکوم رف عحھیقراردیا۔ 
ود دہ دی بجی بی دہ دوب 
تال الْمَرُقُوع من التغریر خکمّاال بُحْبرَ الصخابی أَنَهُمْ انا 
لد فی زمان الثبی صلی الله عليه وَعَلی آله وصخبه ول ذا 
وله یکره له کم حرف تب سی مس 
ی الله له و وعلی آله یه وَسَلَمَ غلی دك لوف دهم 
علی سوه عن مر دییهم ولاك ذلك الرماد نزول الوخي فَلَایَقَع 
۱ جو رو اتی 
الْعَزلِ باتهم گائڑا: 9 رد ڑل ولو کان ما هی عَنْهُ 
لتھی عَنہ رن ۔ 
ترجمه اور یح یک مشالی می کال اس با تاد ےک 
و( “ھا کرام ) رسول ای اش علیہ ںیلم کے ہہ یس فلا کا مکی اکر تے ےا 
دتم را جس ہے با یں طورکہ ظا رسکی ےک ضور سی انر علیہ وسل مکو 
ا کی اطلار] ضر ور ہوگی اس ل ہکوہ اکر طور پر ا ہے سوا لآ خضرت سل ایل 
علیہ و مکی فرصت ٹس یی کہ ہے سے تے اورا ی ےک یک وون ول وت یکا 
ز مان تا یا ہکرام سے ای کو نل صاد رکس سک کرو هاش پ۰ پا لا سال 


عرڈانظر ہیر کر بد سم مس راہ OA‏ و با f‏ 
کر سے مول ( او رال نہک یا گیا و ) الا ےک ول خی رمتو رع وخرت جار 
ند ناور ریت ابوسعید نے ع زل کے جواز بے( ای رع )ات رلا لیا 
کیا کرام عز لکر 2 اور رآ نکر تال مور پا تھا یس اگ رعز لی ی عر 
امور یں ے مو و رآ ن اس سے کردتا۔ 


تر 
عبارت میں حا تمیق نک مشا لک صو رت بان فر مار ے ہیں 


رم فو تقر ړ یکی یصو ررس مثال: 
خمرم فو تقر ےیک یکی صورت مثال ىہ ےک یکوئی سی ترا خض رهز مانہ 
مار کل طرف ذد کر ے لین 1 ضر لگ ک ی بل اور قرم تک طرف اضافت نہ 
ہو مشلا ایک صا یکا قول ے : 
۱ ”کنا ناکل الأضاحی على عهد النبی مو » 
او رشلا حط رت جا بر کید الثم" کا ول ے: 
”کنا نعزل والقرآن ینزل» 
اورای‌طرن یول ے : 
. ”كنا ناکل لحوم الخيل على عهد رسول الله نجل “ 
اس زکرم لیکو مرف رع کے زمرت میں شا رک گیا ہے ا کا وج یک ای ال 
ہوسک اک مھا کرام ترا رکو کا م کرد ہے ہوں اورا کا مکی اطلا ع حضو راکرس ینعی 
وی کون ہو۔ بک خض سل اللہ علیہ وم مکوضرور اطلا ر] ۳7 اکر وو کا می عر و و 
خضرت کل الطد علیہ وم اس سے روک ديع خضرت صلی اود علیہ ول مک ا کو نہر وکنا 
اس ےجا زک وکل ے۔ 
اکر پالفرس سکاب ہکرام ےآ خضرت صلی ال علیہ وک مکو ا سک اطلا نی شکی تز ری 
حضو ر کر لی اٹہ علیہ وک مک لح نہ ہونا خی رمتصور ہے کوک وہ ز نرق نول و اور ٹول 
ت رآ نکا مان تھا را کا م واجب ا رک او رو کا م پل بر مور ے بو ے9 رآن 
کےذر بر را حضو رس انشرطی وس مکوا طلا غ مو چا فی او رال ال سے دوگ دیا جا اء ج بی 


عرڈالظر POO SS eS e‏ 
کا م یں دییات کے جوا زک دل ہے اور ریف رم فو م یس ہے۔ 
چنا هرت بابر بین تہ رالٹہ او ریت اپوسعیڈڑ نے ع زی کے چوا برا یکو ولل ب یکر 
فرمایا: ”کنا نعزل والقرآن ینزل» 
کہاگ رعزل ا مورمتبیہ یش ے ول قآ ن ال سے کرم 7 
تق اس کے جوا زک دعل ے و ارام پالصواب 
r... E FE FE‏ جک r YE‏ 

بلح بفویی کما بصِيعَة الكتاية فی مَوُضٍع الب الصَرِيْحَة 

بالسْبّة له صلی الله عَلیْه وَعَلی آله وَأضحابه وَسَلم کل الثابیی 

عن الصحابی یرف َحدیت أو ره او یمه أو رَاية لب از 

رام وَقَدُ یْتَعرنَ علی الْقَوْلِ مَم حذف الْقَابِلِ یدود به النبی 

صلی الله له زعلی آله راضحایه ول کل ابن رن عن یی 

هريره قال قال تابن قَوْمَا ی (الحدیث) فى کلام الحطیّب 1 

إصطلاح خاص بأہملٍ اضر 

تر جمه :او رمیر ےق یما ووککی شا ہہوگا جو ہی ارم ا زرم وی 

طرف نید یکر ے »و 2 الفاظاصر یہ کے اس کنايم کنو ںيکیسا ت مر وی 

ہو شلا صا لی سےروایت ہو ے٣‏ یک یتال ے› "یرفع الحدیث أو يرويه 

أو ينميه أو رواية أو يبلغ به أو رواه“ اورت اوقا بت ایا کی ہوتا کہ 

ای ( نام )کوعذ فکر کے صرف قول پا تفا کیا ہا ٹا سے اوروه تکل ے 

حضو ر اکر مکی ال علیہ مراد یں ان سیر ی کاقو ل کہ ”عسن 


بم ر ہک خماص اصطلاں ے۔ 
الفا کنا بی ے مروی رواک گم ۱ 
ماف نے فر ما اککدرداییت هد بیث جیا نکر تے ہو ے اگ را وی سی فی الفا فاص پچ کی مہا ے 
الغا ا نا استعا کر ےاو ران الفا ظط ےو راک رم مکی ا علیہ وس مکی طرف نب تک ار 
ہو ا لے الفا اکتا سے مر وک د و ایت کی کا م فو رع موی و و الفا ر کٹا ہے ہیں : 


مرح الد ٹک ال: 
ا سک شال میں حضرتسعیرب نجیر کی بیددایت ذکرک جا ے : 
عن ابن عباشٌ "الشفاء فى ثلاث : شربة عسل وشرطة محجم و كية نار 
وآنهی عن الكى “رفع الحدیث ۔(البخاری »کتاب الطب) 
راوئی نے اس عا بیش ےآ خر یں رخ الد یث کے الفاظ یڈ اکر ا ےنرم رف معاد یا ے 
ای طراگررادی رفعہ با مسرضوعاکےالفاطاستعا لکر ے نذا نک بھی وم ےج 
رفع پایرفع الحدث کا ے۔ 


یرویه /ینمیه گثال: 
ا یکی شال مس بیددایت زک رک با ے: 
”مالك عن آبی حازم عن سهل بن سعد قال: كان الناس یؤمرون أن یضع 
الرحل يده الیمنی على ذراعی الیسری فی الصلاة“ «البحاری» کتاب الآذان) 
حت الوعازم اس روا تلو زک رک ے کے بعدفرماۓے ون "لا اعلم الا آنه ینمی 
ذلك “ای طر رح اگ رکوئی راو یک روایت ےآ شس لو ہرد ےک ”لا الم الا آنے 
یرویه عنه “و دوسرےلفظ "یرویه" کشا لم جا گی۔ 


رواية ک‌ال: 
ا یکی مال غل بیردایت ذکرک چان ے: ۱ 
....عن الزهری عن سعيد بن المسیب عن آبی هريرة رواية الفطرة 
حمس“ ( البخاری » کتاب اللباس) 
ال روا تک سند کے1 فلخت ابو ہ رق ری ادعنہ نے رو ای یکر ا سخ رورا 
مور دیا ۱ 


يبلغ به گیشال: 
ا سی شال ابا کیا بے روات میا نکی ما ے: 


(مسلم : کتاب الامارة) 
ال روا تک سر ےآ خر میں رت ابو رس یسلغ به اقا ذگرفربا 2 ہیں 
ای رات ار ن موق 


رواه گیشال: 

افظ ‏ رو اہ “ا یکا یش ہے ہروا یت هد یش ہی کہ کم استعال ہوتا ہے ماگ 
ما لاش بسا رک بارش گا نل ان و سار اورصررروایت هر مش 
می سک رالاستعال ہیں ۔ 

قوله: وقد یقتصرون على القول کت 

ال عبار ت سے عاف هافر مار ے ہی لک رتش اوقات گر تن سند کے بع رآ نے وال 
تول مہا ہک کے انل بان حضور اکر مکی اللہ علیہ وم گرا یکو دا ت مو ےکی با 
اخضا رکش سے مز فکر و ےے ہیں ء بھی م فو ی ےم ٹس .۱۳ رت امن 
یبر نک قول ےک: 

" عن أبی هريرة قال قال : تقاتلون قوما“ 

ا تول ش پیل قال کے قا حضرت ابو پر ہی گر دوسرقال کے کاک لک وجرت این 
بر بن نے ع ف کر دیا ے > لرگ دوس ر ےتال کے قائل محرو ف ہو ر ہیں اورو خض رت ی ار 
علیہ وم ہیں۔ 

الہ خطیب بفد اد فر ہا کے ہی ںک ہآ فضرتملی اللہ علیہ وملم کے ام گرا یکو سر سے 
معز کرد با یال بهره کی محروف عادت سے اور ہہ لک" نا اصططاع' ے اور 
ترت این سیر کی چوک ریت شکور« پا ابا رت میں انہوں ےآ ضر بی لی 
اش علیہ وم کے اس را یکو عز فکردیا سے خطیب بداد کے قو ل کی تا ود علا مہ این 


عرجالظر اتمم ہی ج جس خسم سی سا لن 
رن کےا قول ےکی مون ےو:فر مات ہیں: 
کل شیئ حدئت عن آبی هریرة فهو مرفو ع “ 
کہ میں حخرت الد ےہ سے جک روایت بیا نکر و( خوا ہآ خض ر ےکی ال عل ےکم کے 
ا مگ راہ یک زک وں یا لر ول ) ببرصورت دهم ا ج( شرن القارگی٦۱٥۵)‏ 
KHK KKK KT‏ 
ین الصَيع المحْمَملَةقَولَ الضحابی: من السنة کذافالا کتر علی أ 
فيك مَرف رخ ول ان عَبْد لب ری اإنَفَاق قال: وذاقالها َير 
الصٌخابی فکثلك مَالم یَفها إلى صاجها كسنة الْعمرَْي وف نعل 
الاتفاق نظرء فَعن الشافعی فی صل المَسْفلة ون ۔ وَذَمَبَ إلى أنه 
یر مَرفوع أَبُو َر الْیرّفی من الشَافِعية ور بر الرازی من 
الْحََفِيّة وان خزم مِنْأهُل الظاهر واختَجوا بان السنة ردد بَيِنَ 
لب صلی الله علیہ وعلی آله وأضخایهوسَل ونر 
ترجه : سین ےل لا یکاقو ل ” من السنة کڈ یواک 
مد ن کا مق ل هک یم رف رم ے جب علا مدان دار اس رابا ع قل 
کے ہو ت کہا ےک اکر یری یبھی لول کے ا کا کی سی یحم ےج وہ 
و غت اران کو ن فی ون ار ےک سید اجرب اوران 
اجاع یں اشکال کول خو وحضرت معام شای سے اسل معل میں دوقول 
( قول )ہیں ء اورشا فیطل سے اب وکرم ق ؛حنفیرٹش ے اب وکر را زک او رال 
ظاہرش سے ان 2 مکا نہب یه ہک( کن ال دک ا) خیرم فوع ے اور 
انہوں نے اس سے امد کیکفت حضو ر اکرم سی اولعلیہ وم اوران 
ےر کے درمیان دارا رک کہا جا اے۔ 


گن ملک بیان 


۹ 7 ال كز کم 
وہ ین جن کے بارے ٹیل کی اا ل ےمد دم رف9 ٗ میں اور کی ا خا ل ےکم ووف 


ړو اقم ... 0909ھ ۳۰٦‏ 
ہیں ان ش ےا اک الگ سو سر قول 
۳ 
”من السنة وضع الکف على الکف فی الصلاة تحت السرة“ _(الوداور) 
اب وال ہے کہ یریخ فو ر ے با موو ف ؟ 


اک ڑ حر نک ٹ رہب : 

اف فا ہی ںکہ اک ہد ن کا رہب ہے س ےکک ال نت کذ ا کے الفاظطے سے مروی 
ادایت مرف ہےء چنا چان قیال ر نے ال عحیفہ کے مرف مو ے پرا ہما ق لکیا ےک گر 
را یبھی اس عیضہ سے روا یتک لک کی یف موی ریہ اس ینوی ناص 
تک کسی نام نف کی طرف ضوب کیا چا سے ۔ ملاسنة ال ئن فان نت 
فا دو عفرا تک طرف کی باهذ ایہم فو نیل ۔ 

کن عافد ها ابر شیہ ہے اود رش یہ ےکر عبت امام شال کےاس مہ 
میس دوقول قول ہیں چنا رانک تد > ق ل ےتا کہ ع خو اہ یی ذک کر ے خوا جا بھی وکر 
کر سے رووص ور ت گام ر سے اورا کا جد یر ل ہے ےکہ پ رع فا فلج 
۱ ال سے خابت با کین الت دک اکا گیا مرف ہونا بھی ادراتقاق معا کل ہے ورنہ 
اس یش مت دودوقو لم قول نت ہو ے_ 


مرن دحیب اورمراد: 

جال گر سے منرت اور ان اور حط رت رفا ردق هراد ہیں ءا ت یس لفقا کو 
قر ہو ےکی وجہ سے اقا رکیاگیا ےکور صد ات ش الفا ظط ز یاوه ہیں ت صر لین کے ش 
اورزیادہ »دا ے اورک یکن ےک لول کے ےش صدا تٹکی شی باق دنق »اس 
کے علاوه اور یکت بات موک بل ۔ 
لا مرصیر ف ٤را‏ زک اوران مکانمھ ہب : 


شا فی لت امه ابقر جس سے ملام ابو رازگ اور ال قرش سے 
نکن ہہب ےک ہک ال دکذ ام رڈ رل ج 


ان حرا تک یدل _ کسذت کے تست طرح ۲ ضر ت مکی اوش علی و مکی 
طر فک جات ہے اک طرع ا سکی نبت ما ہکرا مکی طرف کی کی با سے چنا خود 
خر تک الل علیہ وم کےقول سے غات ے: 
"علیکم بسنتی وسنة الخلفاء الراشدین بعدى“(سنن ترمذی 
:کتاب العلم) 

اس روات میں جس طرح سض یک ہت خضرت پگ کی طر فک سے اک طررت 
رگراک طرف کی کیاکی ےلو وولو ل مل ےک ای ککومراد لیات لالز | 
اس اتا سے نما سآ خضرت صلی اول علیہ و مکی سنت اورا کا طروت مر ادیک جز ما ا سے مرف 
ترارویٹادرس ت یں - اگی عبارت مل ا نکی دس لکاجواب دیاگیا ے۔ 

۱ لو چو لہ r.‏ ی جج 

وا با یال رادة عَيْرٍ الثبی صلی الله عليه على آل 
رأضخابه ومد وی ایحا فی صَحيْجم فی دی 

ان اب عن تالم بُ الله ُن مرن ابي ِي یه مَمٌ 
الحجاج جِيْنَ قال لَه : إن کنت ترید السنة فَهَحرُ بالسْلاة .قال این 
شهاب فلك بای م له سول الله ی الله عَلبه رَعَلی آل 
أضحایه وس فقال: ول ین بلك إلا شنت قتفل سابع و 

اد الْفُقَھَاءِ السَبْعة من هل الْمَدِيْنَةَ وَأَعَدُ الْحمَاظ من التابعین عن 
الصْحَابَة مالفا السنة یرون بدك إلا سُنَة الثبی صَلّی 
الله عَلَيْهِ عَلی آله رأضحابه وَسَلُمَ - 

۰ تو جمه : اورا نآو جاب دیاگیا ےکی رن یکومراد لی کا اخا ل لیر ے٠‏ 
چنا چام بغار نے اش ین شهاب عن سالم بن غبدالله ين عمر 
عن بی کر سے ال عم( یا سا لم کا :تن وس فکیسا ت( ہی ںآ نے والا 
) نف کیا ےکہانہوں ن کہا کم اگرتم قت چا سے ہو تراز اول وت میں 
وان شهب کہ کل نے سالم سے لو چھاک کیا خضرت سی ای 
وم نے ایا کیا ؟ تو سا لم نے (جواب میں )کہا کیا ہکرام اس سے 
خضرت سی اللہ علیہ وم یکی سنت مراد لیت ےت رت سا لم (جوکھ یع 


عرڈانظر NSE‏ کوچ ٹچ ڑھد ۳۰۸ 
ا ن سے چ ے اورتفا ظا جا لان س ے تھے ) نے نف لکیا ےک جب 
وه( ما کرام )ملق سذت ہو لے ہیں تو ای سے رسول انڈ ٥ی‏ الطرعلیہ وم یکی 


سنت مرا ارتول ہے۔ 


علا صرق »یرای او امن مکی دش یکا واب: 
ا عبات می حاف نے من ات دک ا کے ص کو غی رم فوخ که والو ںکی ی کا جاب 


داے۔ 


جوا بکا ها ہے س ےکسختکا اطلاقی بی اور ری دوٹوں کے اق ال پہ موتا ین اس 
سنت سے مشت کال مراد سے اور سن ت کا ی سے یر کی کی سنت مراد لین بعر معلوم ہوتا ے 
* چنا نام خا ری نے عف رت سا لمکا کر تے ہو اعاس ےکسا لم نے تیانع تک اک : 
” إن كنت ترید السنة فھجر بالصلاة “ 
کہ اکر مشت پل ےرا ہون ےکا ارادہ ہے تذل رما ز اول وت میں پڑ ھا کر وء ال کے بعد 
ام ان شہاب ز ہری نے ضرت سام سے پچ چا کیا تضورا رمث عیر سلم اول وقت 
یں نماز پڑت تے؟ او ہام کہ اک "منت" ےآ ضرت کی ای علیہ سکم یکی سنت مراد 
وس 
چنا رترت سا لم ناکرا مکی عا دت اورطر یت لک تے مو سے فر مایا کا کرام 
جب علق نت بو لج او اس سے سنتکائل سن حضو راک رم سل ال علیہ سلم ى یکی سنت مراو 
لیج تو ملق سنت کے اطلا کے وفت خی رن کی سنت مراد لیا بحر ہے ءلبذ اعلام م فی 
علا مد راز ی اوران 7 م6 کاس ےک سنت سے دوفو ( نی ء تی ری )کی فو ںکومرا وای چا سک 
ہے ء ان لیکو ال ے :ا ترا ت کا کہا ورس اکڑل -۔ 
و بی بی TE...‏ بی نو 
شا رل هم ٍن گان ماقم لیرد فيه َال رول الله 
صلی اله غلبو وعلی آله وأضحایه ولم ؟ ره إن تر كرا 
الْعَزْمٌ بلك تَورغا و اخییاطا وَمِنْ هذا فول أب فَلا‌بَة عَنْ نس : :ین 
اسن دا َرَو ج البکر على الب ام عندها سَبْمَاءأَحْرَّجَاهُ فی 
اص حِیحَیي قال بو قلابة َو سفت لَمَلْتُ أن آنسَا رهه إلى ابی 


عو اتر ای ات ہر می کے سس رد ےی رن ہت OE‏ 
ل ل غل ر وعلی آله رض ابر مل ای لو لئ اف لاد 
قول "من الشنه» دا مَعُناه لک يراد بالصَیْعَة لین دکرها 
الصحخایی او ك 
تر ج :حرا ت کا کہ اکاک بی( عکم] )مقر ہے بل محد شبن ت ل 
رسول اوفیص٥لی‏ اش علیہ وک مکیو کل 2 ؟ و ا یکا جواب ہے ہ ہک انہوں نے 
اس ےی طور پرم فوع ہونے ( کآجیر کواعقیاطادردر کی وج چو دیا 
ے٢‏ ای ال ب( کی )حفرت ال سے مر ویرت فلا 2 گی روات ے: 
من السنة اذا تزو ج البکر الثیب آقام عندھا سبعا “ اس روای تک یف © 
تین ےکی ہے بحرت اقا کہ اک اکر میں پاتا ت یو یک تھا 
اک اراس هآ ایوس ما دای ےئ کر 
ٹس لو کہ ردو ںو یس وتات ہو ں گا ای ل ہکن ال کا کی مطلب ےکن 
روا وای صی کی تج ذکرکر نا + سکوصھا لی نے زک کیا ےزیادہ مجر ے 3 


من ال یکذ اک یک کیوں اقتا رک ؟ 

اس عبارت سے ما فظ ایک !عتا اور ا سکاجواب ذکرفر مار سے ہیں۔ 

یح رات نے بات را سکیا جک جب ما یکا تو لی کی الت ہک ا ععمام فو ےا 
پچ رن الس یکنا کم ہک کیا ضر ورت سے ؟ سید مالو ںکیو لک کرد کہ قال رسول اللہ 
ینہ ضبدت کے چا ے برا راس ۹ خضرت صلی الق علیہ وی مکی طرف صرح نب کیوں 
یی نس ر 

عا فا نے اکا اعت ڑا کا ہے جواب دیا س ےکن انتک اکنا اور قال رسول ال کہنا 
دوفوں ط رع درست ےکن چوکین ال ہک انس اتی ادا ہے اس لیے اس اعقیاط اورورر ]کا 
وج سے گنی طور ہآ ضر تک نیس تک سک ال - 

چنا نای ایا پہلو ی حضرت ابوظا ب کا یق ل ےکاتہوں ے ححضرت الا ے 
جو 0 

” من السنة إذا تزو ج البکر على الثيب آقام عندها سبعا“ 
ال ول کن ر او وا ون و ا اریت 


عرجانظر ا وک و او ول وروی یی یی یی یذرہ یی دی میس اوت a‏ 
ہوۓ میں ےک الت دکف کج نیالنا یل ا تیر سک با ے قال سول ار 
صلی اللہ علیہ وک مک یت اتتا کر کے مرف عا میا نکرتا تو بھی می اس شون نہ ہو تا کمن 

ال یکن اک پل بی مطلب کہ یبد دات مرف ے موقو ف نیل ے۔ 
ین دوفو ںکا مطلب یال ہونے کے باو جود شل کے کن ال کے الفاط سے اس لیے 
ا سے روا کی کسی لی رسو لحرت ام نے اک لفن الم ہک امیا نکیا ہے او ریاف کے 
الفا ظط ےآ کے روا یت بیان تاز یاوه ے۔ 
KK‏ ...لو ہیل 
وین ذلك قول اص خاب : أمرتا أو نُهيْنَاعَنْ گذا العلاف فيه 


E ra 


الف فی ای قَبل لاه مظن ذلك يَنْصَرفُ بظامره إلى مَنْ 
له مر والئهی هو الرسولْ صلی الله عل وعلی ال و ااه 
وَسَلَمَ و حالف فی لِك طابِفَةء وَتَمَسکوا باخیمال أذ يحون 
الشراه غيره كار الْفُرآن أو الاخماع أو بَعْضِ الخلفاء أو 
الاسینباط راجیب بأد الاصُلِ هر الأول وَمَاعَدَاه مُحتمَل لکنه 
لته مَرّحُوحٌ وَأيُضا فَمَنْ كاد فی طَاِقَو رییْس إِذَا ال مرك 
ا یُفُهَمْ عَنْهُ اك مره الا رئیسه وما من قال يَحَْمِل أن ین ما یس 
بامره مرا فلا (خیصاص له بهذه المَسُفلَة بل هو مد كور فیما َو 
صرح فَقَال مرا سول الله صلی الله عَلَيْه وَعَلی الم وضخبه وَمَلم 
بِکذا ور اِحُمِمَال صحِیْق لاد الصُحَابیٗ عذل عارگ باللْسُان 
تس جم :ادا یل ےجا کات لامرن بک ا از گنک ا ہے ٹیس اس 
س اک طرع اختلاف ہے بس ط رح اس سے پیل یں ٹوا اس کا نک مطلق 
بظا رای ذا تک طرف لوف سے جس ذا تک ام ون یکا افیا روج ے اور وه 
(ذات )سول اش( کی ذا گرا ی ) ہے ہ ( خر تن کے ) ای کگر دہ نے ال 
کال تک ہے اورد یل پیدک ےکا مل شی رن یکومراد یی ےکا اتال ل کی سے 
تی ےق رآ ن یا جریا کیک عم یا اف اعم -ا کا جواب برد ییا ےک 
التو اول تی ے اس کے علادہ باق جوا خالات ہیں وه ال کے مقابلہ س 


ع ړوار کیک ہے و سے مم ا SN‏ 0اا 
مرج ہیں اور پھر ری ( ول سنا ےک ) ج و یکی عا کی اطا عت 

شش »واور جب و ہآ وی کک یک ےم دیا گیا ہے نو ال مکی ها جات ےگ کہ 
ا کرد دالا ا یکا ام ہی ہے اودد کی تا کا یتو لک اس مل اخال 
بھی ےک ھا لی نے ای تو ل کوک موی ہو جو درتقیق تعم نہ موق وہ ا کی تور 
نا یں بللہ ہے اتال نو د ہا نگ ہہوگا جہاں ی فی مراحم یکر کے کے ہک یں 
رسول الل نے ا لک گم دیا ہے اور یم بہت ضیف اتا ل ے اس لک حا 
صاحبوعدالت اور مار پان ہوتا ہے تو ال کم( امک اط نکل تین 
کے بعد کیا بوک - 


7 
مر 

ال عبارت لها نر سکم الفاظ ملس دوسرےاوزتیسرے لفظ امرنا بکذا اور 
نهینا عن کذات ‏ بج کر مار ہے ہیں۔ 


تی عد ثکوردای تکر ے ہو -2 روما لول کے ' آمرنا بکذا“ یالواں کے 
کر" نهی ناعن کہذا“ تو ابپصوالل ہے کال مکورہ الفاظ ےر وای کر دہ عد یٹ تم 
مرو ہے یا خر موتو ف؟ لیس اک بغار کی شرب فک کناب اعا ےش ایک ردایت ے: 
”ٹھیناعن اتباع الجنائز * 
عا ففرا ے لکران دونوں الفاظ کے م فوع اورموقوف ہو نے میں ب کل اک طررج 
اخلاف ہے شی طر٣‏ ”من السنة کذا“ ما خلا فا ر چا ےک یہن حرا ت الکو 
موقوی کے ہیس جب اک ڑم دش نکا مہب ہی سے کہ یرو و نو ی مرف ہیں او ری یک بت 


تنم رفک دحل : 

ان دوثول خو ںکو تھا رور قرار ہے والوں کی وکل ہے کہ جب کی روایات 
اورامادمٹ میں مطلق ‏ راو رق نی وارر موم حالس رت صلی اشع یلم یک 
اراو نی مرادہوتا ےکی وک احاد یٹ کےا ند رآ ملق اور نای مک بجی زات ہے۔ 


تعن موقو فک ولیل: 

جو حضرات ان دولوں صخو ںکو موتو ف تر ار و ہے ہیں ان کی ول بے لاھ کے 
آحضرت کل اللہ علیہ وسلمکا ام بی مراد ہونا وگل ہے یرال لیگ اتال بک 
قآ نکا ام رہوہ یا ا جماغ کا اھ روہ یاک خلیفہ یا عا مک ام روہ با رک ام ہو ہز ااس میس ا ہے 
اشمالا ت مو جود ہیں فو ا نکی الا تک مو جودگی میں ان خو ںکوم فوع سمل ارد یا 
درس تال - 
مرن موقو کی رل کا جواب : 

نکی 2ا ہے جاب دیا گیا ےک ددایات اور احاد عث شی اص لآ مر اور نا بی لو 
۱ حضو ر اکر صلی الد علیہ ہی ہیں ء اور تحضر صلی الیرم پیک اماو ری مراد موتا سے 
اس کے علادہآآپ نے تی ام کہ کے ہیں دو سب اغالات ہیں ج وکال کے متقا بلہ س 
م جو ہی کوک اص لکی مو چو کی میں فر ر ازع ک کول اعت رت سکیا جاجا۔ 


قطن مرف کی دوسری ولیل : 

ان دوتو ں صیخو ںکوما فرع قر ارو نے والو ںکی ووس ری وکل ہے ےک اگ کو گی 1 وٹ سی 
ریس اورها کے ات ہواور با تآد کی ے وں کے "ارت “ رک مد گیب ) 
و رف عام اس سےا کے رل اور ها تکام روک او رکا تم مرا بو 
۰ لاک طرر ددایات اوراعاد یٹ ٹل جب ایی با تھسا کہا جا ےگا ال سے 
خضرت سی ال عل وم یکا کم اور کی راد ہوگا. ۱ 
ایک شک ازالہ: 

ريگ امرنا بکذا اور نهیناعن کذا لکن ہے سا لی نکی ایق لک 
کم یا ییا ہو جوتقیقت می سکم با نی ت ہوا جب ووفأٹس الا مرش سکم یا ہی نیت پھر 
ا لکلا فوع کے تر ارو ی گے ؟ 

اف اس شب کا از ال رک تے ہو ے فر ماتے ہی ںکہ ہے اشمال ام رم یمین کیا تم نا کس 
سے لبم حال و ال وق کی ہوگا جب فی ظحروف براہ رااست؟ ر ا 


عرجبلظر 7 و 


ول مکی رف خی تک کے ہو ںکہاجاۓ: "مرا رَسُولَ الله “ 


لہ ڑا شک ا مرنا اود نھین ا کیا تھے غا لک کے میا نکر نا ورس نیل ء نی زا سقو لک 
تلا ے او رسای عا دل او رشقو نے کے سا سات ماہرز بان »تال کے اق ہے 
ما نکر ب کل ورس تی لک وه راکذا یا رن یکن شارک ےآ کے بیاا نک ردے گا بنا 
بر یرال بو ضحعف نا قال انقبار ے »بپردوصورت ( محروف وبول ) ا کا ال 


افقیارگال ے۔ 


٠ 


r... TE YF YE‏ جا جا کر 
ومن ذیك قول کنا تفعل غذا ایشا غما تَقَدُمَ ون ذلك أن حك 
الصخایی على فَعُلٍ ین لاله طَاعَةً لله ویر سوه وَمَعُصِيَة 
کقول عمار "من ام لبم الذٍی يسك فيو فقد عصی بَا 
القاسم صلی الله عليه على آله وضخیه وس" له کم ارم 
ای لاو الطّامر آن ذيك معا تاه عنه لی اله وعلی آله 


و 
تر جم :اورا یٹیل ےا یکاقول" کنا نفعل کذا“ گی یا گر 
کر چاه اورا نی میں ےکس یفوک کل سکاو کم انا ےک آفسته 


طاعة لله ولرسوله _أنه معصية لله ولرسوله" جير ا رترت نارکا تول 


RE‏ من صام اليوم الذى يشك فيه فقد عصی آبا القاسم “بے 
(قول) بھی عما م فو ال ل ےک قاری ھکاس ( ای نے ہے 
خضرت پل بی ے حاصس لکیا ہوگا۔ 


کر : 
ال عبارت میں ماف نے الفا لہ یس ے تین الا کر فر ما سے ہیں : 


قح لکز ام 


اگ رکوئی سی یکی فو لک ضر تک اش علیہ وملم کےز ماندمبارککی طرف نس یکر ے 


و2 ول کک کوش کیز ان مد سول ارڈ صلی اللہ علیہ وم یع فذح کی ےا ایک 


خاک ال : 
”کنا نأ كل الأضاحی على عهد النبی ره “ 
او رمثلا جرت جار ی٢‏ ن کید ان" کاقول ے: 
”کنا نعزل والقرآن بنزل» 
اورای‌طر لالب : 
”کنا نا کل لحوم الخیل على عهد رسول الله تطلغ“ 

اش کور وھ ولاخ رم فوع کے زمرے نارکا هالک وجہ یک یی 
ہوک کا ہکرام پالترا روک مک ر سے جوں وراک مکی اطلا ع حور اکر مکی اللہ علیہ 
ول م کو نہ مو - پل ہآ خضرت صلی ال علیہ وک مکو ضرور اطلارع موک ار دو کا می عر و لو 
خضرت کل اٹہ علیہ کم ای سے روک و سے خضررت صلی اٹہ عل وک مکا ا کو ہر وکنا اس 
کے جوا زگ وسل ے۔ 

اکر اما ہکرام نهآ ضرت صلی ان لوط کو ا یکی اطلا نی سکی نز ری 
فور اکر صلی شرع وم املع يہ ہو ق تضور ے )کوک وہ ز اتو نول وگ اورنزول 
رآ نکاز مان تھا اگ یا ہک راخ و اجب ال رک او رتو کا م پل چا مور ے بو ق رن 
زر وی فو راحو ری ان علیہ وس مکواطلاع ہو چان اور ال ال سے دوگ دیا جاتاء جب کی 
کا م کل وکا گیا ڑا ۶ل کے جوا زک وکل ہے اور یق رم فوع ےکم میس ے۔ 

چنا نج ظریت جابر بین کیلش اور حطررت ابو سح نے عمزل کے جواز بے ا یکو وسل باکر 
را ۱ 

”كنا نعزل والقرآن ينزل“ 

کہ اگرعزل امورمتمیہ مٹش سے ہوتا فے ق رآن اس ےش کرت مال اک رآ ن ےکی 

یبال کے جوا زگ وکل ہے۔ والڈ رام با لصواب 


اک رمیا ی یتوس تل پر اطا عت ضراو ری ادراطا عت رسو لک کم لگا ۓ لاان نا 
الفعل طاعة لله ولرسوله اکوئی سیا ی فصو تل برمحصیت ضدا ون ری او رمحصیت رسول 


ع ړوار رھ سیت سا نس شب تا ا ی 
کم 26لا یی کر آن هذا الفعل معصية لله ولرسوله تو صا ی کے بی الفاظگ 
عم فوع یں :جیا ال عفر تکارری الع کا مضرورتول ے: 
من صام اليوم الذی یشك فيه فقد عصی آبا القاسم“(اإود اد كباب الصوم ) 
ایطرں حخرت ابو پر ےکا تول ے: 
*ومن لم يجب الدعوة فقد عصی الله و رشوله“ "سم تابالگا) 
ان الف کواس لے م فو کی قر ارو کیا ےک نا جری‌طور بران الفاظ سے بی معلوم مو 
کال ا آل پاپ طرف سے طاعت با محص کل لگا ر ہے بل ضرور بضر ور 
تحضر صلی لی وم سے ا پل کے طا عت ہو نے پا محصیت بو ےکم ہوا ہوگا۔ 
exe‏ دی دی دی دی وت 
أو یی عَايَة الاستاو إلى الصّحَابی كلك اَی مثل مَا تدم ین کون 
الْفظ یِْنَضی الضریْح بَا لول ُو من قَوْلِ الضحابی أو من 
فغله و من تفربره ول بجی فيه حَميْع مَانَقَدمَ بل مُعَظِمُۂ وََمْيِْه 
يشرط فيه الْمسَاوَاء من كل حهة - 
تو جم :یا سار صحال کی ہوک ن کی ط رح لطا کےص ر تقاضہ 
کر نے ے تعلق تل می ںگز رابا طو رک و ومنق ل یتو صما ‏ یکا قول ہوگایاا نکا 
ٹیل ہرگ اا نکی تقر ے موی ۷2 می کش تام صو رآ نمی ںکی لہا م امور 
(ڑکورہوں گے )کیو تمہ مس ہرجبت سے باب ی کیشر طش ہو ی- 
شر : 
اس عبارت میں حا فۂڈتجرموقو فک تھ ریف او ر ای سے متلق اکا م ذکرقر مار سے ہیں۔ 
عوقو فک یکمرف : 
ر وتوف وه حد بعش جن سک ست رای سی یک خی بو اس سند کے ذر بک 
سای کولب قول ی تقر ہش لک یگنی ہوا سے خر موقو ف کت ہیں خواہ یل ص راح ہو 
خواوعما بو 


افر مار ے جک رم فو کل اقام اورا کا م ترموقوف کے ذ بل شلک لژ یں 


عرڈالظر ISOS Ra‏ 
کے ی صرف چندا م امور ای کے و یل می سآ میں .او ر اف فیک کے چوتش ہہ دی سے 
ا تہ می ں بھی جلا مور کے اندرمساوا اور براب رگ کیشر سے۔ 
قب رموتو فک اقام: 

خر وقو فکیکل مین ہیں : 


0 رتسول (۴).... خی رم وقوف ص رک یتو 
(۳).... موق ری ()....خرموو _کوقیل 
)۵( ا مرق گی ول C1)‏ 7 رمق فک یتر ری_ 


E E HK Kr... YK YF 

ولا گان هدا اضر ساملا میم انوا عُلُوْم الْحَدِيْثِ 
اسْتَطردته إلى ری الصحابی مَنْ هُوْ ؟ فلت وَهُو مَنْ ی النبی 
می اھت زعلی اله وضخبه ملع لزا کات غل 
الاسلام وَلَوْ خلت رده فی الاصم وَالْمُرَادُ باللقَاء ماهو عم من 
المُحَالَسَة وَالْمُمَاسَاة وَوصُولِ أُحَدِمِمًا إلى الأخر رَد لَم یکالمه 
دحل فیه ويه آحیهما الأخر سَواء كان ذلك بتفیه أو بغیره 
مغر باللفي نی مِنْ فرّل بَعضهم الصَخابی هُوَمِنْ رأى النبی 
EL‏ علی آله وضخیه سل ہے سے 

امَکتوم ونحَوهٌ من امین وهم صَحَابَةً بلا ردو 
تسر چسهسه: اود جب بیرسالعلوم هر ٹک راما شال پوش ے 
یاف کت ریف بھی زک رکرو کو کون ے؟ نے شس ےکم اک ھا لی دہ زات ے 
جس نے ایما نکی عالت می بی اکر مکی الڈد علیہ وسلم سے طا قات سے طا ات 
کی ہوادراسلام نی دفات پل ہو ہاگ چردرمیان غل ارت ادن یآ گیا ہو اور 
اقا کا نہوم عا م واه سا تھ بر موخ اہ سا تج لکر ہوخواہ ایک دوسرے 
کوپ لغ سے ہو اگر شوک نو بت نرق ہواوراس می الیک دوس رہ ےو و نا 
کیا جا ےگا واه دخواہ لوا سط اور ہلا قا ر تک یم ران حف رارت کے ول ے 
قر ہےء( ول نے الم یف لو ں کی ہے )ای دہ ذات ےی نے 


عرڈانظر SL AS‏ کی RO‏ 
یپاک کی اٹہ علیہ وم مکود یا کیال ای نوم جیسے نیا ححضرات 
(صابیت )سے نار یج ہو جا یں گے حال کک وہ باب( شای ) ہیں- 


سا تیف : 

ال وه ات ےک نے رسول ای اش علیہ سم ے بات ایمان لاق تک ارز 
الام ی با نکا عا ہوا و- 
ارد ادستامیت راما سے؟ 

حفرت امام شاف یکا مہب ی ےک رارت اد سے سایق اعمال پل کل ہو تے چنا چ گر 
مرت رکش دوبار+ملمان ہو جا ے تو اس کے سابقہز ہا اعلام کے اعمال ضا نیس ہو گے مزا 
اراس نے پر فر اداکیا تھا تو دو بار ہر فرش اد اکر ےکی ضر ور کل > الہ اگ رم رم 
جال ارطادقی شس مرجائے فو رال کے ساق ز ماشہ اعلام کے سارے اعمال شاخ 
وھا ے وی - 

شس رب شاف کے نز و پک ارس اد کے بعحددو پار هلان ہو چا نے ے اوچ ارت ادا مال 
سابق ضا لی مو تے اک طرح شرف ابیت ضا گنی »وت وودو بار و ملمان ہو نے 
کے بح کی بدستورسما لی ہی ر بنا ہے سا فان تر چگ تانق المسلک ہیں اس لیے انہوں نے 
"ولو تخللت ردة فی الأاصح“ کاو لپ کیا ہے ءا نکی دع لآ ےآ ری ہے۔ 

بب حر ت امام انم عیفر ظرست امام ما کک کا ہب یہ کم ارت اد ے ساب 
تام اعما لح ہوجاتے ہیں لہ اددبارہاسلام لا نے کے بحا سے دوبار ہر فز ویر اواکرنا 
پڑ ےگا اک رح ارت اد سے شرف سا یی تگاز ال ہو جا ےگا ء ج بتک دو بار ہا سلا م لانے ۱ 
کے بعددوبارہز ارت نی سرت ہوا وال کل کی ارت اد سے سابقہقمام ییا 
م ہو اتی ہیں۔(شرں القاری:۵۷) 
لقاء ےکیامرادرۓے؟ 


صا یکی تحرف میں زک رکرره لفظ لقاء ( رت ۳ اللہ علیہ وم سے بلاج ت‫ 
کر ناس )س ےکوی وم مراد ےک خوا ہآ پک اش میں ش رکم تکی مو خا هآ پ صلی اش ی 


عرپانظر یما مسکی سس ماو یموس مب هم با هی اد ارم 
ول مکیسا ت هچ پایا گیا ہوءخواو ہا تم یں کنو موق بوخواہ پا بھی مہا لچت مون ہو خواو 

وق طر تہ سے ایک دور کل رسای موق ہو اگر چ رکفت ول ویرت 7 و ان تما م 
صو رت نوف لقا "شا لب 

ای رع اس قمع ایک دوسرےکود نا بھی شا ہے اک چردہ تدالو ےی 
موقا ہآ پل شیر کم اوخو و پا صر و اوخوا ولا قصدد گم ہو۔ 
سواء کان ذلک بنفسه أو بغیره 6 مطلب: 

اس عبارت :نشکا مطلب نوا س ےک خودآپ اوو گم وین بی ر1 اکوئی مطلب 
نیس کل راکآ پکوی ر کے واسطہ ےد یکھا ہونذ خی رکے وا سے سے دنا چم دا رد ؟ 

ای عپارت کے مطلب کے بیان شلک ہا تقول ہیں ہ علا عفر ما یں : 

)...ایک جیہ سے یا نک یکن سک نف ہکا مطلب ی ےک اس نے آ پ سکیا اللہ علیہ 
و لقص والا ره دیا واو خی کا مطلب ہے س ےک ای نے الق کسی اور شکور ما 
ک ربعا با اراد ون تفا ےآ پ نرب کل با دونو ں صو رتڑاں یل الوا بی تکا شرف 
حال »لیا ۱ 


داع اورشن 7 ہوا کے میں حضو ری یار تگرول اور اتر ہکا مطلب ہے کہ ای کے ول 
شی قرو داعیہ یال واگ ک ددم ےی نے اسے اس طرف ج ولال اورا نے کر 
آ پ مکی الل عل ول مکی یات کا تن فر کر لواو رق ر کے وای ہے رھت وجوش 
»رال دہ صا ی کی 

۳).... مرک چیہ ہے میا ن کی س ےک تفم ہکا مطلب ہہ س ےکہ عاقل بالغ ہو ےکی 
ا لر می خو وما ضر م وکر ز بإ ر تک اور اہر ہکا مطلب ہے ےک وو ابھی پچ تھا زا مقر 
ںا ےآ خضرت ی اشرطیر ول مکی ضرمت مل لای اي ادرال نے ای عالت مم زیار تک 

(شرں القاری:ےے۵) 


ا ا تاور رویسر رن : 
ای هلف مل ر٤‏ یت کے یا سے ملا قا تک تھی رز یاد ہر س ےکیوککہ بقول بط گر 


عرڈالنظر 0070 رر 
ما کف شش طا قات سک سے کی تک جرا ختیا رک ے ہو سے بو ں کی ںکہ: 
"الصحابی من رأی النبی مط » 
تو ا تی فک رو حطر عبد اللہ بن ا کت مگب نیا حرا ت ابیت سے غاد 
موہ تس راز حرا کی سی میت می کس یک کو اختلا ف ال دہ بالا قاتا برس 
شمائل ہیں لیذ ار ی تک میا ۓ طا قا کج رز یا دہ تر ے ۔ 
جل لو جار TE TE...‏ جار رہ 
وَاللُفُی فی هذا التَعرِیْفِ گالحنس وَقَوْلِيْ مُومنا کالفضل بَخرخج 
من صل له للم کر لکن فی حال گزنه افر رولب 
َضْلٌ ان یرجم له مُومنا لکن بيرم من انا لکن هَل 
برجم لقبه موینا باله سَُْعَث ولم يدرك البعتة وفیه نظر 
موی وَمَات على الاسْلام فص تال یخرج من ارت بَعْدَ أ لَقِيَه 
مُومنَ وَمَاتَ علی رد كُعَبدِالله بن عخش واب حلي 
ترجمه: اور( سیف یکی )تحر یف میس اقا ہن سکی طرح ے اورم راقو ل مو میا 
پک فل سیل ے جو اس (شخص )کو( ا ت ریف سے ) نار کرد تا ہے 
جک ما قات حا ان فیس و وه او زم ا ول ووی سل ہے جو الکو 
ا تحریف سے )نار کرد ھا ہے جس ےک اور یی ایما نکی عالت ش 
آ پاش یرهطم ے طا قا تک موی نکیا( تول به)ا لوگ فار 
کرد جس ےآ پ ی اللد علیہ وسم ےآ پ کے مبحوث هون ین 
ر کے و سے اقا تک م وکن ز بان بحت نہ پایا ہو؟ اس سر ہے ۔ اور را 
وا علی الاسلام ری ن سے ج کا لاو( ال ریف سے )غار 
کردا ہے جم ےآ پ سے عالت ایمان هل طا قا تک کر وہ مر موک مرا 
ےب ال ین پش اورابنکطل _ 


ر شی 1 AE‏ 


ا) من لقی : 
ا یت ریف یں لتا ہک ت ر کے ورج ٹل سے آحفضرت صلی ال علیہ وم سے ملا قات 


رداق شا سے 
٣‏ مؤمنا: 

صحال یکی تفریف تل کہ نل ہے ء اس کے زد ہا تکوم بیت سے نار کرنا 
مقصود ے جس ن خضرت صلی ابدعلیہ لم سے مال تکف رٹل اقا تک ہو بے کین 
کک 


۳) به: 

ال یکت ریف میس بے دور ی نمل ال کے ور یرال کو بیت سے نار کرنا 
متقصور ےجس ےآ ضرت صلی اشر عل سلم ۔ ےا قا تک گآ پل الد علیہ کم پہ 
اما کل تھا یآ پ مکی ارش عل کم کے علاد مکی اور پرا یمان رکتا تھا۔ 

کان وال ی ےک رج فی س هآ علی یلم سے اس عالت شل طق تک کہ 
دہ پل اریہ یلم کے بحو ث ہونے یقن اور یمان رک وکر ای ےآ پ صلی ا لیے 
وم مکاز مان بعت نہ ای کی یبای کور متیر سے محاہیت سے نار مو ہا ے۴ ؟ 

عاف سے فر ما کہ یود تا ل ہے کوک ال ٹل ابیت وعدم صحا بیت دوٹوں پل 
ہیں ءاان شس سے عدم کا بی تک ہاور ار ےن لی اٹل ابیت سے فاد نس ےکیونک سا میت 
اور عدم ابیت دوتو نک لاحم ظاہرہ سے ہے اور اکا م ظاہر: کے لے ان ےش 
اد اور ظا مرش مو جور ہو ضروری ہے میتی جب ”ایت اور عو کا بیبت اجا م ظاہرہ ٹل 
سے ہیں فو ان کے لے ان ےی بت نیا من حیٹ آنه نبی اراو رطام شل ہونا 
شرو ری ہے اور نی کا نی ہونا الک بعشت موم ہوتا ے لہذا بعشت سے یط نی سے 
طا قا تک ناباب الصحابیّت ٹیل شی مجر ے ۔ 


۳۴ مات على الاسلام : 

حا یک تر یف جس رتس ری آل -چهءال کے ذد یرال لک وکا میت سے فاد کرنا 
مقصور سل نے آ پ صلی اللہ علیہ وم سے محالت ایمان طاقا تکر نے کے بعدار او 
اق رک لیا مواورم رت مو ےکی مامت غل بی دفات پا کی ہوہ یس عبر زب س ۰ای نطل 


+ من صبا بر دیدن طلف دغیرہ- 
87 ات ی 


السةم مره ا باق له سوا لی لاسام فی اه 
بعده وسوا له ام ون فى الا ار إلی الحلاف فی 
امه ول لی رُحُحَان الأول قضه الهْعَبِ بُن فیس انه کان 
مهن ارت وی به أبی بر الصَذَیُقِ أَسِیَْاعَاد إلى الاسْلام فقبل منه 
ذلك رح اخته وَلَمْ سلف أحد عَنْ ذکره فی الصُّحَابَة ول عَنْ 
تخرنج أخادییه فی المَسَايیدِ وَعَيْرهَا 

ترجهه: اددمیرےتقول ولو تخللت ردة فپ ےعالت ایمان س 
اقا تک نے کے دران اور اسلام روفات کےورمیان (رد تآجاع2) و 
لاش ام ای اس کے لیے (برستور )باق د ےگا خا ہآ پل ابش علیہ ےل مکی 
زترگی یں اسلا مکی طرف لو فآ یا ہو یا بعد یں خوا وآ پ مکی اویل علیہ یلم سے 
دوا رہ ملا قا تک مو یا کی ہوءاور میم ےو ل''نْ الا کے امن من 
الا خلا فک طرف اشا ر کرت قصود ے مہ ہب او لک تن اشحف بتک 
وات ولال کرت نگ دہ مرن مین میں سے تھا او رحقرت ال وبکر صد لی کک 
ز مان بی تی یکلا ا گیا تب اسلا مکی طرف لو ٹآ یا حر نے ا یک اسلا 
قو لکیاءاوراس تال کا کا کر دیا اورا یک کا ہہ کے زمر میں شار 
کے کے ی ےم فی اوور ی ےا لے ر 
دغیبرہ میں لانے ے( تل فک )_ 


BS 
ال عبار ت شل حاف ہے بیان فر مار ے ہی ںک ان کول سیا ی مر ہوجانے کے بعردوپاره‎ 
اسلام نے سے وکیا اکا رنہ اد کے بح دا وکیا بہ کے ذم ر ے میں شا هگا جات ےگا انڑل ؟‎ 
الم هن ا ختلا ف »جیا کر نگ بیان موا ۔‎ 
صخرت امام شاف کا مھ ہب ی کرم رہ ہونے سے اعمالی حترضا یں ہو ے الک‎ 


عرڈالظر RO‏ اھ راہ کر سر ھک سوہ رٹسام مس سس کا ره 
وهآ وی عالت ارت ادج ہی وفات پاجاۓ 7 زان ملام کے کیک اال ضا مو ہا کج کے 

مز اصحالی ہونا بھی ایک مگ اورایک شرف ہےلہذ ارت ادکے بحرو پار وا سلا ملا کے سے ا 
شض ےا مان زان لس ہوگا لہ وه برستو رسای رے گا خواہ وہ پکی زگ ںی 
دویاره الام ےآ خواہ بعد شی اسلام لا ۓ ٤او‏ رخواہ و ہآ پ لی اٹہ علیہ سلم سے دوپارہ 
اقا تک کے ا نکر کے بہرصورت دہ اہ کے زور ٹس شار »وگ حاف چوک شاق 
ال میلک ہیں اس لیے انہوں نے شا فعیہ کے مم ہ بک یا نکیا ہے اورا ےا ھاے۔ 

جب ات حن او رحطرا ت مالک ہکا ط ہب ہے س ےک مرم ہو جانے سے حطر سارے 
اکال ضا ہوجاتے ہیں »اک طرح شرف عحب تبھی ت ہو جا ےگا دو بارہ اسلام لانے کے 
خر یت کے لیے دوبارہ بلا قات رو ری ے٢‏ اگ رآ پ مکی اللہ علیہ وسلم سے طلاتقات موی تو 
7 کرش تپ لش وت مگ 
شرف کابیت سردم د ہےگا۔ 


قوله ویدل على رجحان الأول: 

انس عبارت سے افا سپ نھ م بک دعل مان فر مار ہے یں »دعل سے پل يو کے 
العاف نے الأول سے اپاخمہ ہب مرادلیا ےکن انہوں ےکوی دوسرا مھ ہب بیا نکی 
کو الٹانی تو نکیا چا ےلو بر الأو ل کیک کی مطلب ؟ 

جب ایک قرب بگا کہا ہا ےو اس کے مقائل دوسرے ط م ب کوک ےج رکیا ام 
سواہ ا ںکوٹیان کیا جاۓ ءاکی طرح جب ایگ لج کو کہا ہا ے7 اس کے بدرمقا ٹل 
دوسرے طرجی بآوضوف سے متو نکیا جا ا ہے خواہ الک زگره تی نہکیا ہا سے »بل صورت 
ٹس نہب ا الاو لہاج تا ے اوردوس ری صورت میں نر ہب ی الاو لها جا ے۔ 

چوکدحافظ امن ر نے اش رہ بکولفظ ا ےت رکیا ےلو ال جر کے تقد کے 
مطا بی دنیبب اول چا چروہ مار سے( ن حخخیہ )کے نز ویک ران لسع ۔ 


شاف کی ومل: 
فافع کے نم جہ بکی ول یی اشع بی نشی سک تھ قفر ایا ےک اور شش 
الام لا نے کے رت ہوگیا ھا ال یت ال کرصد لی کے زا خلافت می جن 


عرجالظر I RET E AS‏ 
تیر ی :اک رآ پٹ کی خدمت تلایا گیا ت ےا سلا مک طرف او آیا او دس ایکا اسلام 
تیو لکر نے کے رای نکواس کار دے دیا اس نکر شوم ھن اورا حاب 
ال نے سیا کرا مکی فرت یں شا لکیا ہے جب رح رات مج مین ا لک ردایا تکومسانید 

یی زک کر تے ہیں تو اس سے معلوم بو کار اوک وج ےسیا ی ہو ناش نکیل ہوا- 


شا فع کی دی لکاجواب: 

یاقا ری اس دلیل کے جواب می فر ہا ے ہی ںکہ : 

)...ی نے اعت بت سکوصحا بہ ےکر وہ یں شا رکیا ہے دو اس کے ار اد سے بے 
ترتھا۔ 
)...ھی نے اشح دک احاد یش سے دہ اس کے مالا ت ے اوا قف 
تماء یا اس نے الک دہ اعا د ی ضف لک ہو لک جھاس کے علو هک دوسرے تال ےکی 
مرو ہو لگ ا ا نے اتو ل کے مطا بین ا کی روا یا اف لک ہو لگ جس مل ”تحمل 
الروایة فی الکفر والاداء فی الاسلام “ کوجائزقراردیا سے - (شرں القارل:۵۸۴) 

رو دہ بی دج دی ہدوت 

تنبیهان: آخدهتا لاجماء فی رُحْعَان ربة مَنْ رمه صَلّی الله 
یه علی آله رأضحاپه وس ول مه یل تخت رأییه على 
من لم بلازمه میخض رمع مشهدا وعلی من کلم رآ 
ماشاء قلي او رَاه على بُغد أو فی حال الطُفُوْلِية وَإِْ گان شرف 
مرل ین عَیْ الرَوَامَة وَمُمْ مُعَوْن فی السْحَابَهِمَانالَه ین 
شرّف الروة- 

سوج ۳ے :دو یں :ان یس سیک ےک حعفرات ن آ پ مکی اند 
علیہ ےل مکی کیت اقا رگ او رآ پک معیت غل فا لکیایا آپ کے ججنڈے کے 
یچچ بام شہادت لو شکیا درچہ کے اظ ے ان شل ہو نے میں ہونے میں 
کول شا ان وگول سابل لول ےآ پکی بت اخقیا رل اور 
مورک می عاض رل ہو ۓ اوران کے تقایل جتبول هآ رپ سےکھوڑ یی 


کوک یا دم ساتھ گے یا دود سے ز مار تکی با کین میں دیما ( یگ 

افضلی تک بات سے )وکر تشر ف ابیت تا مکو م کل ہے ان شس سے بن کو 

آپ ے روات صد مث یش سماع مال یں ا نکی روایعت مکل موی وہای 

کے پاو چو وکاب کے زمر عل شار مو تے ہی ںکیوکلہ ال ز یار تکا شرف تو ` 

ال 
۱) ہی حعی: فضیلت صا ہس تاوت مراب 

یخی ہہ بیان فر ہا سب ہک شرف ابیت ٹس اگم چ رقم کرام اوی میں جا ہم 

فضیلرت کے مراب ٹس تقاوت ے چنا چ در ذ یل 2 تیب کے مطا بی ی کرو ہکو دوصرے 
گروه فضیلت مال ہے اوراس می کول اشا ف نال ے_ 


ار وو: 
پبلا ره درز بل صفات کے ماع نا کرام قل ے: 


ان عفرا تکودررج ذ لل حط رات م فطیلت م کل ے: 


دوس اگروو: 


شرف با قات ارش رف ریت چگ من د رجہ بالا تما م حت را کو س سل ہے اس لیے ہے 
ما م صا .کرام کے زمرے ملد کے جاتے ہیں ان شل ےکآ پ سے سار روات 
حاصلئیں ا سکی عد یٹ اکر چرم ۷ للملا ےت م دہ لاتغا تقو لک ہا سب ۔ 


ع ړو ار شر رہ A ASEAN‏ رم BAL‏ 
ثانیهما: بُمْرَفُ صَحَابيًا بالتواثر أو الاسْفاضة أو ا 
باخبار بَعْض الصّحَابَةِ و بَعْضٍ یقاب العَابعیْنَ أو باخباره غن تفیه 
باه غاب ۱5 اتث ظا وت تغل نخت الاشگان وق 
وا اف بر سیف( E‏ کرای 

من قال : آنا عدل ویحتاج إلى تمل 
تسر جمهسه: ال شل ےدوس رک ی می ک یکا صا ی ہو نایا و2 ے با 
استفاضہ سے یا شرت سے با کال کے تاذ سے بای ےتال کنر سے یا 
اکا انی ذات کے باد سے میں “ھا لی ہو ےک رو سے سے معلوم »وگ لا کا 
یوگول امکان کح تج #وءاور ای بگروه نے ا سآ خ ری صورت راشا لیا 
ہ ےک 9 ای رک یش ہے بل کے آنا عدل اوراس غور ورک 


رورت ہے۔ 


(r‏ دوس کی بے : ابیت حرف تکا طر له 

صحاءبی تک محرفت کے کل وع ریت ہیں : 

e (1‏ ای صحا می تک پا ط ریت2 سک اتر کے ذر لیر حلوم ہوم ےک فاش 
ما »تحت ال وبکر صد ا نکی صھا ببیت او رح را تکرش کا ہت تحضر ت ابر 
صد ا نکی صحا ہت منم رجرز لآ مت ےمعلوم ہوگی: 

قوله تعالی :[إذ یقول لصاحبه لاتحزن إن الله معنا چ( -ورة ال )٠٠:‏ 

الب ضرت اب صد ا کی صحابیت اور پا خرو شر هک ابیت یں بے فرق کہ 
ححخرت صد ا کی صحا بی تک انا رکرنے سے چوک س رآ نک انار لا زم ٦‏ ج زا زار 
کر نے وال اکا فر ہوجا ےگا جب ان کےعلادہ ووسرو لک کا بیت کے اہارس عکفرلاز من 


ہآ ےگ : 
۳)..... ایک حر تکا دوسا طر یت استتقا ضہ ہےء بیہاں استفاضہ سے ات اورشہرت 
درا نک دیپ مارے- 


۳)....حا یک حرف تک تی راع یق شرت ہے مک مح دجن کے د یک ا کا سای ہوم 
مروف و ہو رمو 


عرجالظر مٹسس امیس مامت مم شب یی PEY‏ 
)...یاف کی مرف تک چوقا طر یق ہی ایک خر کول سیا فی ہے متا س ےک قلاں 
تنس میا فی ہے جیےمحفرت ابوموی اشع ری نے حممة الدو سی کی ابی تک فر ویآ _ 
TT TE .)۵‏ مت 
ععالی ہوں بش فی و مرف ہہ ماف ہے ہیں اس طر رت شس ہرک 
ح ےکا کا کور دگوئی امکالن تآ ج موق وقت اور ز مار کے لاط سے اس ےی مکرنا 
نکی ^ اک رکو ئی خضرت مکی الطدعلیہ وک مکی وفات کے ایک صری بح رسا بی کا ووی 
کر ےو ا یکا دوک امکا ن کے تت دا قل تہ مو ےکی وجہ ہے قو لک کیا ہا ےگا اگر چ دہ 
نس حرو ف الع رال ہو ءکیومرحد یٹ ںآ جا ے: 
”أرأيتكم لیتکم هذه ؟ فانه على راس معة سنة لا ییقی أحد ممن على ظهر الأرض “ 
آپ نے کور تول ابی دفات کے سال میس ا رشا دفر مایا تھا ای سے اس متا کی 
طرف اشارہ ‏ ےک ہآ پکا تر ن اود ز ما نہ ایک ص دک کک رہ ےگا »اک صد یشک ناء محد ن 
نے کور و ھت کے بح رکا بی تکا دو یکوقجد لک ںکیا جم نظ ر نے اس بت کو ره کے بعد 
صحا بی تکا وگو کیا تا گر ا کا توت وا رگا ان یں سے س بآ ری مرگ سیا یتر 
ہندری' وا 


قوله: وقد استشکل هذا الأخير: 

محرت ای یآ ی سورت جس غل اپنے باد سے س حا ی ا سے بارے مل ہے ووی 
کا س ہک م سیا لی ہوں ء اس میں پھر کل درکیور وی ب کل ایا تی ہے تیه 
کول کی ےک زاس عادل موں““ کیو حا لی ہونا اور عادل ہونا وولوں مترادف ہی ں لہ ااال کے 
جواز شس با فلس سک وج ے یلالج 

ابقر فرماتے ہی ںک کور اا ل ( حن کن قراس وقت بش جا ے جب 
دی ھول ہو کن اکر مرک عدا لت محروف ہو( اوروومری شرا ری موجود موں) تو ال 
مورت یل ال کے دو ی لوقو ل کر نے می سکیا کل ے؟ ہیں جس طرں با ب الردایت شس 
عاو ل کی ف رقو ل کر لی ہواسی رع جاب ایی وال ر ےت( ن صا ءبیت ) کی اس قول 
وروگو ی ک وسال مکرلواس می ںکوکی اکال اور لک با تکل ہے۔(شں القاری:۵۹۳) 


عرڈالظر ناف مک ای دی سس ی 
وهی عَايَة الاشتاد إلى التابعی وَهُوَمَنْ ی الصُّحَابیٗ ذلك 
دامع بِاللَقُي وَمَا کر إلا فيد یمان به ولك حاص بالنبی 
CE 2‏ مم علافا 
من اشُتَرَط فی التابهی طول المُلذَرَمَة او صح السما ع أو لمیر 
تسرجمے: اتر ب یکی »و اور لی دہ ذات سے جس نے حا ی 
سے شرف طاتا کی ہو ء اس ( تی ) کاتلق لا قات وغیرہ سے ہے یراس 
یی اس ( ابی )ایا نکی ین کوک بی نی اکر لی الل علیہ سم 
سا تحتصوس ہہ( جک تیف میں ) ی قول عتار ہے برخلاف ان 
بش ےجھوں نے ما بی ( ک یتم یف ) میس طو مل بت یا کت مار یا نیز 
شر کال 

شر 

اس عبارت شک حا فط نے ما کر یف اوراس سے متاق ر احا م کر کے ہیں ۔ 
جا بت یک آمریف: 

تول ھت ر کے مطابق تا بجی وف سے جس نے بھی کر مکی الیو مایم نکی سامت 
شش کال سے طا قا تک بہوادرائس بی ا کا ان ہوا ہو.۔(شرح القاری:۵۹۵) 
ار ادتابجیت ےمان ے ؟ 

اس معط می پل وی اختلاف ہے جو سا لی کے ارت اد کے ف بی مل بیان ہوا له زا 
اس مقا مک طرف رجف ماتیں۔ 
إلا قید الایمان به اس رک مطلب: 

اف" ف مار ہے ڑ لکرجوثرا اور دای یت ریف کے ف بل میں ہم نے بیا نک ہیں 

هساک تا ب یکت ریف کے ہل شک یھ ظط ہو ں کر یک قی رھ ال ہے ادرو ہے ےک می ی 

ک تح ریف میں یہ وداک ہآپ سے طا قات کے وف تآپ پر یمان رک ہوہنگر جا لج یکی 

تتریف میس یہ نیس کیا فی سے طا قات کے وت ت ای را یمان رکتا میرگ یمان لا 


عر ورلظر . 


۳۳۸ 


٠‏ اور بین رکا یق خی ارم ا علیہ وتف سپ طاو و سی اتی من 
لا نے کےکوگی ن ہی ہیں - 
جا مق کت ریف میں فیرضروری شرا ر : 

تن حضرات نے جا لہ یک یتر یف مس درز بل شرا کی الب قل رعتارے : 


تا بل وال کرت طو موب 
یا ایی صحبت رت ول مل تا ب یکا ال ار عد یٹ ثابت وہ ااگر 


e‏ یت 


٠ اقاس‎ 


ES‏ کل جا 

یبن لح اه وال ابیین خلت فی (لخاقهم بای 
القَِسمَیْنِ رهم المُحْضرِمُوْہ الَذِیْنَ ار كوا الحَامِية و الاسلام ولم 
روا ای صَلّی الله علي على آله وضخی وس دهم ین عبد 
ار فی الصحَ ات ای عیاض ويره ئ ان عبد رل هم 
صَحابة وه نظر لان َفصضح فی حطبَة کتابه باه نما رهم لیکو 
كتا حَايعا مُسَُوعبا لاحل القن الأول وَالصجِیٔخ نم مَعو دود 
فی کبّار التابعین مرا مرف ان لواجد بنهم ان مُسلِمّافی زَمّن 
ای صَلّی الله عليه وعلیآیه وصخیه سل له شرا گت له 
عن جع مَنْ فی الارض فرام بی ان دمن کان مومنا بهفی 
یاه ذ داك ود لم بلاق فی الصْحَابَة لِحْصُولِ الروَیة من جانیه 
صَلّی الله عَلیه وَعلی آل ضخیه وَمَلمَ ۔ 

قر جسمه : اد را ادد تا جنک د رمان کے ایک ای طت( کاک )پا ره 
عیاے جس سےمتحلق دوفو ںقموں مج ںی ایک کے سا تح لانے مس اختلاف 
سے اور ور مین ( کا طیقہ )سے جچتہوں نے زب تما ہلیت او رز با ترا سلام ووفول 
پا ونر خضرت کی اللہ علیہ وس مکی یا دک کے علا م این دار 


وار سس ھتاس فا کس مل ی PEO‏ 
نے ا عکوصحا ہہ میں شا رکیا ور 2۳ 7 گراءن 
را ےکا کہ یلوگ وا ںین اس (نفل می ہر کوک ار 
نے اب کاب ( الا تعاب ) کے خطبہ یش ال با تک صراح تک ہ ہک ٹل 
نے ان ( تعفر بین )کو زک رکیا سب تاک می ر یکناب قر ن اول لڑوکوں ( کے 
کہ ) شل جائح ہوجاۓ جب رہب یہ س ےک( کر من ) کار یں ٠‏ 
یش سے ہیں خواہ ان می لکوئی ایک نی اکر صلی اڈ مل ےم کے ز مانہ یں مسلمان 
تھا( ےی شی بیس تھا یکن ار بے بات طابت ہدجا ےک کرات کی رات 
حضو ر اکر لی یوم کےسا نے الل زین کف ہو کے جے اور پ نے 
ان ( تام ال ز ٹن )کو و یا تو پا وسا بی غا رکرلیاجاۓ جھآپ کے 
زان می مسلمان تھے اگ چ ول نے آپ سے اقا تک بترم 
ص٥لی‏ الل علیہ ول مکی اتب ےا رگ تق موی 


خر می نکی انح ریف : 

- تر ین ولوگ ہیں جنہوں نے ایت اوراسلام دوفو ںکاز مان و یکھا ہگ رآ حض رت صلی 
۱ انل علیہ دع مکی طا قات اور کیت سے قروم ر ے ول تواووہآپ کےز مان میں مسلمان ہے 
ہوں با بعد میں مسلران #و ہوں )س ب ضر می نکہلا ے ہیں ۔ 


نر ین سا یہ ہیں یجان ؟ 

تفر ین سا ہیں یاج لین ؟ اس مس اضف ے٥‏ پچ راز قول بجی ےک یہ 
حار کیا رجا تن بی شائل ہیں مھا یس شا کل ہیں »واه ان ٹس کول ز ابوک 
میں لان ہو یا بعر شش لیا ہواہو_ ۱ 

الب اکر ہے ردایت ثابت ہوجا هکرتضو اکر مکی ال علیہ وکام لیل الاصراء س تام 
رو ۓ ز شن کے لوگ لک بھی اگشاف ہواتھا اس س ےآ پ ی انش علیہ وم نے تا لو ںکو 
و کےا لیا تھا“ فو اس ردام تک وج ے ان 0-2 چوا ں ون مو کن اورمسلمان ‏ ےسا ی ۱ 
جن جا ہیں سے ای ےک اکر چان ول ےآ پکوننیں د یھ او رآ پگ ا7ت عئرم 
د گرا پ نے فو ا ناو لت ایمان شس کي تھا 


ت ی ع شکا ووی او را لک 2 د پړ: 

تی عیاض ونره نے پر کیا ہ کہ لام امن قب الب ر کے نز ویک حرا تنحف رین 
کاب ہش شائل ہیں۔ ۱ 

ئن وض عیاش ۷ کور ہ وق لشیم کی علامہ ان عبدالبر نے اپ ی کاب 
" الا ستعاب' کے قم میس ال پا تک راح تک کل نے ان وگول تم کر وکو 
ایک رنکسا تیاس لے شا لت کیا کرو کی سا ہے ہیں بک ٹل نے ا کاب کے 
سا جات لے ذک کیا تک مرک ےکا ب قر ن اول تام لول کے مالا ت پر عا دک ہوخوادوہ 
کا ہہ ول یا دول 

AK‏ دی دک ری دہ ہت 

فالغ الول يما نع رة يى الاسام و وف تى إلى 

الثبی صَلّی له له وعلى آلو وه وَسَلَمَ غَامَة الإشتاد وم 

لْمَرَفوع سَواء کات ذلك الانتهاء برشتاد مُتصل أو لاء وَالانی 

مرف هر مَا ینتهی إلى الصّحَاپیٗ والثالك افو ع وَمُوَمَا 

هی إلى التايعِی وین دُوْن یی من یبن من دم 

یه ی فی سره له ی بقل هى الیاتابعن فی سبد مع 

ذلك مقطرعا وَإِن شنت فلت: مرف عَلی مُلان فَحَصَلَبِ اه 

فی الاضطلاح تِن المَفطوّع المع قطن مَبَاجتِ 

اسنا کما لدم رَالْمَفطو ع ین ماج الْمَتنِ کمّا تی ءوَقَذ الق 

هم هد فی مَوُضِع هذا وبالعکس نورا عن الاضطلاح وَبُقَالُ 

لایر أي الم وَالمَفُطُوُع ع لائر 

تر جمه: ان اقام لاڈ م ےکی رم لان ہج نک تذگره یل لزر 

چکااوروہ(م فوع )وو خر ےج سک ست رور اکم لی الل عی1 مک نکی ہوخوادوہ 

مل ریاد مو اورددسری"' خی رموقو ف لان _جاوروهدونر سک سن ری 

تک ی ہواو رگ ات مقطو الال ہے اورووووقر ےک سرع لیک 

ی ہو ہج بھی هنت جا تن اوران کے بعد وا نے اس تی می اس کے 


عرو قر NSE SSA‏ فو 
2 تن ا کا م مقطو رخ ہونے میں ہا بی کی ہونے وال سند کے 
ہیں او راگ رآپ چا ہیں تلو نک یک 2 ہی یک( یہ سند )فلاں پر مقوف ےڈا 
سے مقطو رع اوق کی اصطااح فرت کیک قح کی ماش سند سے 
ہے جع اکہ یی ےگ ر چکا او رسقطور] کل مباحثہ من سے سے کی آپ دکھ 
ر ہے او رفح ات از سکوا سکی لاسکی استعا ل کے ہیں اور 
آخریرووں' تموں ن م رتو ق اورمقطو 2 کار جاتاے۔ 


هھ 


ر 
ال عبارت شل افا خہا رغلا کے ماح کا حاصل او ریش کر فر ار سے ہیں- 
مفو ر موتو ق اورمقطو رلک ظاصم: 

ستر کے اط ےن رک ذکورہ تن ںقمو ںک فص بج یک ری ہس یہاں ا ںکا خلاصہ 
ج کیا جار پا ےک رک سر ریت ارڈ علیہ وسم یں ی موخ واو ست رتل بویا مو رین ر 
رو یلا »اور سخ رک سد یی ی مود رر وتوف لای ہے اور ری 
سن راک بھی یااس ےج یی هک اوی ی ہوا کون مقطو رع کچ ہیں »اب اس فصورت 
موقو فی فلا ن“ کی اصطلا ح بھی ذکرکی جاک ہے :ملا وقفه معمر علی همام یا 
وقفه مالك على نافع ۔ 
از یتریف: 

اف ر ایک حط رات م رش رموقوف اور متفٹ کو اش کچ ہیں یی فقها کرام 
لف سان کلا اوا کچ ہیں اور خضرت سی ان علیہ یل مکی عد کوخ رکچ و - 

ایک تول یگ جیا نکیا جانا ےک راو هدش ٢‏ پ لی اہ علیہ لم کے سات فصو 
کن اڈ ان دووں کے مقاب می لو یوم رکتا سے_ 


مقطورع او رلح میں فرق : ۱ ّ7 
ع اورمقطو رع میس فرق بیا نکر ے ہو عافڈأف مار سے ہی یک اصطلا ح میں خر رشع 


عرالظر SASSER aa‏ 
کت سن میا حف سے ہے اورخ مقطو رازن کے مباحث سے ےن ان دونوں 
کیان تے ہو ےو ں کہا چا ےک دقع ے اور ہے عد ہے مقطو وج 
کان :ت رشن ہکوہ عد ری ی یرال مو سے بک وولغو ی کا لیا اکر کے ہو ے 
"فک مقطو ع اورمقطو رم کی برع اسقعا ل کر ے ہیں - 
لی ye r... E YE‏ 
َانمُستَد في قَولِ هل لیب هذا یگ مهو مرف غ صضحابی 
نَل طامره ارتَصال برح مَاظاهرة الانقطا ع وید خل مافیّه 
ااخیمال مَا یوج فیه حَقِیْقَة ااتضال من باب الأول وم من 
التَقَيدِ بالضهوّر أ الانْقطا ع الْحَفی كَعَنعَو المدلْس وَالْمُعَاصِر الَذِىُ 
لع بت لهي لایخرج الْحَدِیُك عن كوه مُسنَدَا لإطباق امه لین 
روا سید على لك 
تسو جمھے: اورمد نک اصطلار] مل ان رل 'وز اعد ہف متا "ایا 
مرف صھا لی سک ست نما ہر ال ہے۔( اس تھریف شس ) مرا ل مرو 
مس له اور می رات ل می یل کے ماع ہے جک مرف تال یکو ار 
کرد تا کوک وہ مکل( ہلا ) ےا ورڈ من دون الا ب یوی ( ارح 
کردا ہے ) کیرک وہ اتو محصل (کھلاجا )با )اور مرا تول ظاہرہ 
الاتصال ا سکوخار کرد ینا سے جو ا براع ہوء اورا یآ ریف میں وہ اقل 
رےگا ینس میں ا خا ل (۱ نمال ) ہو یا چرس میس تی اتال ہو وہ بد رچ اول 
(واخل ر ےگا ) اورظمپورکی قید سے ہے بات کک ی جات ےک انقطا رع ی صد ی ٹکو 
مند ہونے سے نار کرجا یس ول کا عتعیہ ہے اور ( ال ط رع ) ال 
موا ص رکا تعر کی طاتقات ایت تہ بد ہاش ل ےک ان اہ عد ہ کا اک پر 
اال ہے ول نے سانید رج ڑے۔ 
شرع 
اس حباردت ٹل ماف نے محر شی نکی املا رح خاش سن ت راف اور اس کے فو اد ٹور 
ماك کے ہیں ۔ 


مرک لفوی ن : 

مند آسند یسند !سنادا (افعال) ستاو لکا عیضہ »ا سک جع مسانیدآ لب 
:سس دک ی پا ھائ“ ےا ست رک ن ہوا چ ھایا دا کن عبال ال ےد ٥با‏ ت 
مراد ےج سک ست رقا لکد با Erf‏ 

اورمند(ائم فاعل ) ےن ہو سے چ ہانے وال ال سے مراد با سن رک نے وا ہوتا ہے 
سن برارستر ی ےحخرت شاهو ل ال محرث دوک مسد الھند زک وتآ مرن بنری 
سند کے بدا راوزگور ول - 


من رک اصطلا یآ رف : 
عافترا 2 ں: 
” المسند هو مرفو ع صحابى بسند ظاهره الاتصال* 
]نی مند وه عد بیش ہے جک ای نے مفو عا ی نکی ہو اور اک سن زک کی بو جو ار 
تل ہو لہ اطع یی من ہلا ےکا( یآ ےآ ر باس ) 
من رکآ م یف فو اکر تیود: 


ا) مرفوع : 

لفط لآ ریف مھ لگٹس کے درج شل سب - 
(r‏ صحابي 

کیال »ال کے ذر با لی اور ی سے ہے کے درج کے روا کی مر ر رداعت 
کار کر نا تقصود ہے .کی شر وف PTE‏ 
کی مرف تم ہی ا می ہوگی۔ 
۳) ظاهره الاتصال: 

تير تمل ہے ء انس کے ذر بی رای ی کر مقصورے, جوطاب رال ند 


عر وار E E‏ ا ا وا بت ۳۳۳2 
موی نع ہو الہ ٛ تر کےا تصال کے بار ے میں اتال مو ی ریق تسا لو 
ردو لاله رف مس داشل ول ۔ 


مدش 

اف نے من رک تر یف شش تلا ری طور پر اتا لکی تید کا ہے لبذا جس خر شا 
انقطا ع ی ہو وو کی ند می شا ہے :ٹلا بر س کا نون اورا ی موا صر راو کا نویر 
جن سکی بلا ا ت ا بت نہ ہوء ان وولو لک خروں میں انقطا رع ی ہو »یرای ند ش 
ال ںیونک جن ا کہا ماو رد شین عظام نے سان کو مرت بکیا اورا نک € ک 
ہے دہ انقطاع ضف یکومند جس شا لکر نے تن ہیں -( ابھی من کی بنٹ ہار ی ہے ء گی 
عبات طا نف اښ ) 

چاو لہ K.-T‏ جار یہ 

ودا النْعرِیْف مُوَافقٌ لِقَولِ الحاکم : اَلمْسْنَد مَارَوَاۂ امد عَنْ 

بح طهر ماع ین وکا مخ عَنْ یب مصلا إلى صَحابی 

إلى رَشوّل الله صلی الله عَلَبْه وعلی وَالہ رأضابه سل وما 

ویب فقال : لسن المتْصلُ فَعَلى هدا مرف إا حَاءَ بسن 

مت بُسَمی جند؛ مُسْنذا لکن ال د ذلك قد یی ِو اعد ین 

عب ابر حیث قٌال: مس المَرفو ع ولم عرض للاستاد » فان 

َصدُق على المْرْسَلِ رَالمعْضل رَالمنمَوع إا كاد الممَنْ مرفرعَا 

و لاقائل به 

تسر جچجھمے: اور ری مام کےتقول کے ماق س گرد و ورس لاو 

تچ رت ددا تک سے او رال سے اپنا ماع اہ رک ے او رای طرحع 

ال کا باذع( ردابی تک ے) ال ما می کر اس سے مال یک 

(اورسعالی )و رل اٹہ عل وکام کم ہوا ورخطیب نے فر ہا اکر مند 

ووخ رصل ے ہیں ا ںآ ری فک بناء ترمو ف اس کے ناد یک مند موی 

بشرطیل و سی رصل کے ساتھ وارد مویاں ال تن کہ اک سورت بہت یتیل 

سے اوران پرا نے فو بہت نی بج رتو ل اخقارکر ے ہو کہ اک دخ رو 


عرجالظر .. ۳۳۵ 
ےاوراں ور TET ۳7 TF‏ ل 2 
ساد قآ ےک ب یکت مرف ہوگ را سکول یں ہے۔ 


۳4 
ê ر‎ 

اس عپارت میں حاف اکم شا ہو ری خطیب بخ اد اور علامہ این عبدالبرکی زگ رکر دہ 
من رکآ ر یفات ذکرفر ماد ے ول اورا نک کت ب بک هرن _ 


حا مکی ذز کک ووت رف صن : 

مام نے رای عند و وتر ہے مج ورا وی سے م سے بای طورروابی کر رال 
سے اکا عارع تلاپ رمو اک طررح اک ہچ اس م سے اور پس سکاف ییک او ریاف سے 
ضوراکرم مکی اش علیہ سے کی ہو 

افا ںآ ریف تلق ف مات ہیں کہ ہماری کرکر ورت ری یف هاگ کی مکور ہآ ریف کے 
کل موان ہے ءکیوک :ہم نے ” ظاهره الاتصال“ کی تیر گال ادر مام نے ” بظھر 
سماعه منه* کی قرا ہے اوردوفوں قیروں سے مقصمدایک نی ران وال ل 
کول رنڈ ہے_ 


خطیب بر ادی ک زک رکرو وآ ر لف مٹر: 

لیب بخرادی نے فربایا: ” المسند المتصل“ کرت ت نعل می کا نام سے حافظ 
نے فر میا ک خطی بک کور وآ ریف دخول یر ے مان یں ہے »کوک کور تیف اس تر 
موقوف کی صا د قآ ہے جن تر موتو فک سد و و 

کان خطیب نے ب کور ہ کال دو رکرو اک کور وآ ریف اگر چت رف کی ساد ق ٦ن‏ 
ےگ رمت رکا موقوف پ اطلاتی پت گیل ہے بذ ال ہو هک وجرے دونوں کے ایک جد 
ہوجانے ںول مر یں - 


این عبرال رک کرک رووا ریش مر : 


علا مہاب کید ال ر قر ایا: ” المسند المرفو ع“ کر رر روج 


. وار کت ا INS O‏ تس 

حاف نے فر ما اکرعلا مہاب عبرال ر نے خطیب کے متا بل میں قول بر ایا کیا اور 
مت رکآ ریف مم سکمی ںبھی ست رکا کرت سکیا ماک رسن من رک دارو ار ے١‏ اک دج ے 
رورم یف مندرج فلل اخباد پر صا دآ ےکی بشرطیلہ ا نکا من مرف ہو حا لاک انس کے 
منرم و ےکوی کی انل تس ےا 


رن قَلْ عَدده ی عَدَۂ رخال السند فما أن مَمَھیَ إلى التبی صَلّی الله 
له َعلی آله وه وَسلَمَ بذك المَدد الیل باه إلى نو آحَرَ 
ره ب لك الحینک يعي ہمد گر هی إلى ونم بن یه 
لّْحَدِیْثِ ِى صِفه عَِّه کالحفظ واه وَالضبّط والضییف وَعَبٍْ ذلك 
من الص نات المُقَضِيَةلِْرَحِیْم کَشْعبَة وَمَالِك وَالوْرِیٔ و الشافعی 
ولبخاری وَمُسْلم وَنَحْوِمِمُ الاوّل هو ما هی إلى ای صَلّی الله 
عليه وعلی آله وصنبه وَسَلْمَ لعلو الط فان الق ان يحوب سَنده 
مان الغا فسوی و( سره ار دوم کرد ان وگن 
مَضوغا فهو کالعدم ای لو التشبی وه ما یل اعد فيه إلى 
ذلك الامام رل کان الْعَدَهُ من دك الامام إلى مُنهَاء كيرا 

ترجمه: یس اگرسند کےر جا کی تخ دادم ہوتے پر ی تو ای عر رمل کے ساتھ 
وو سز رتضور اکر صلی ار علیہ وسل مکش ہوگی کی دومری اڑی سند کے مقايلہ 
مم سک وہ عد ی اس سند کے ز ر لچ عددکشر کے سا تد وارد ہو یا روهام صد یٹ 
یں ےکی ابیےاما مم نی #ول جوامام عا لی صفا تکا حاٹل »وگ اک صفات جو 
7 ک قا کر ہوںء ا حفط »فق ضا بآعنیف وفیره کے ضطرے شر 
حضرت انام ما کک *امام ےریہ امام شاف امام ار اور اا ملم ویر مس 
کی صورری لتق وہ سند جھ ا یکر یم صلی اللہ علیہ وع مک شتی پور رطق 
کل ) ہے لیس اگ راہ کی سن کی ګت پاقال ہو ہا ےل رسب سے بلندمرحہ 


ع ړوار ا سی یں e‏ 
سے ورد صرف بلندی و ال میں ے ہی۔اور دوسری صورت علوٹبی 
( بل )جاور وه رکب ںک ا اما کک اس سند میں م ر وبل +واگر چ 
اس امام سے( آ ال )ست کتک م ر رک ول - 


کار ه«عیادت یل جا فت ستد کے عا لی »و کو ییا فر ماد ہے ہیں- 
عا بی ءنازل اورصاو یکا مطلب : 


سن کے ما ناز ل اورساوی ہو ےکا مطلب ی _ راکو هرمث متنحدداسانیررے 
روک ے ءال اسای یس سے جس سند یس وسا ام ہوں ووسند عا سے »اور پش سر #ل 
دما یبت یادہ ہو اس سن دکوتا ل کچ ہیں ءاورجش سند میس وس یا مرک سند کے باه 
ہوں ا ںکوسا وی کیچ بل - 
علو لاه ےترک اقام: 

وش سنرے مال سے لاه میک ی :)عل ولق (۳) علوبی 

ولج یکی چا ہیں ہیں : 


(۱).....موافتتی (۳)...... پرل (۳)......ساوات(۳).....مصافر 

عو یکت ریف : 

ار راو ےلیک رآ خضرت نیوک سند کے وسا اک تخر اوکم وتا سکم اتی 
کهاجاتا بش رطیلہ و ہن رم وضو دہو۔ 
علو یکین ریف : 

اگرراوی سے نل ےکرک اش حافظ فقیہ شاب امام عد ی کف سند کے وسا لگ داوم 
ہو ا ںکوعل و کہا جا سے خواہ اک اص امام ےآ تحضر ت صلی اللہ علیہ کم یک دسا هکره 


ہوں؛مشااحضرت شع :حفرت امام ما لک ءامام شا ضف ءا سک اقا کا میا نآ گ ےآ ےکا 
ود نچ دی KK...‏ 2 


رجنظر سی هه ساب سا ی FERS‏ 
بِحَیٔ ما الاشتفال بمَا هو هم منه » نما کان ذلك الم مرب 
یه یکونه فرب لی الصحه وله الا له ماين زاو ین رخال 
الاشناد رل والخطا حاير عليه قکما کرت الوسایط وَطَال السَنَدُ 
عذرّث ماگ اج ویر وَُلَمَاقَلَ لت فان کات فی التژول مَربَة 
يست فی او لاد ود رحاله آوئق منه أو اخفط أو َة او الاتصال 
ویو اهر فلا رد5 فی الْروْلِ جين أولى» وَأما من رجح لول 
قر جمه: اورا (علوا ناو کےتصمول ) غل حرا ت متا خر لی نکی رخبت بہت 
ب هگ ہے ہا لک کہ بہت سماد سے تو دوسری ام مصروفیق کو و ڑکر اک 
( ہے تصول) میس لک گے ءاور ےکور علو اس وجہ سے موب فیہ سکم بعلو 
رت سر کے بہت قرب ے او رل الطا ہے کی مہ در جال سند شل سے بر 
راوی می خطاشکن ہے و پچ جتن وس نز یاد ہ موں کے اورسندطو ہل موی تو زیا 
کے مظان کی زیا دہ ہو کے ءاور جب و وتیل ہوں گے یگ ہوں کے اور 
اگرنزول کوگی ا سی خو لی ہو جوعلو میں نہ ہومشلا نز ول کے ر جال علو کے متا بل 
شں اون ہوں با احفظ #ول یا افقہ ہوں یا اس میس اتصال قوب تابر موتو ال 
صورت میں دول کے او لی ہو نے ٹکو تنل ہے اور ننس نے مت 
ول رای کب ا هک زیاوه برش ول مه مش کی ی ےو ال ( 
مشقت ) سے ا کا لو اب بڑ ےک و کار ترچ دام 
ونضرن ے ای ے۔ 


0 
o 


مر 

اس عباردت شل ماف کے تن پاش ذکرفر ای ہیں : 
...دعا تصول میں متا ر نکیا شون او ررغہت - 
۲۴...ند از ل ارک ی‌ضوصی یکی مال موتو ا لک کی اگ ے؟ 


ہت حصول علو ہیں متا خر نک شونی: 

سن یا کے صول میں رشن کے متنا بل ٹس متاخ بین ز یا وہ شوت اور رغہت ر کے ہیں 
چنا چ بہت سارے متا خر بین اس ضر و رک او راب )کا م کک کے عالی سند کے حول میں ہی 
مصروف ہو گے _ 

اب وال ہہ سک ما ست کول می اس تز رف تکیوں رن جال ے؟ 

عافڈفرماتے ہی لک عال سند کے صو لکی طرف اس کے رغیت دی چان ےک کت کے 
زیا د تریب ہو نے کے سا ترا تال میں خطا کا اشا ل کی ہکم ہوتا سے .کول بس قد رسند 
یس وسا تاکر ہوں کے اسی تز ر وہس رطو بل ہو جائۓے اور و a ET‏ 
خطا کاخ ل کی ز یادہ ہوگا او ر تز رسند می وسا ز اکم ہوں کے اک قد ر و وسند تع ر موی اور 
تھی ہہون کی وجہ سے اس یں خطا کے الا تک #ول گے جیسے امام بغار یک نا ات 
نم طا امام ما لن کک شا ئتیات میں اور اما ماک وحدان ہیں - 


مفندناز لک ر کی ایک صورت: 

. اگرسند عا لی کے متا له یں سن ناز ل کے ائ ر رکوگی ای تموعییت اور ا یاز ہو جوسند عا ی تس 
دول ای صورت میں سند ناز لکوسٹد عا ی کے ما بل شس ت جح ما ہوگیءاورسند زل عا ی 
هت موک ملا نا زل کے ر جال عا کی کے متنا یہی او مول ا حفط مول یا افقہ ہوں یا ال 
شاتصال اتر مونو ان‌صورتان میں سنر ازل کے او ی »و4 ول ژرراور کل 
ہے کین کسی سند رای تکام اس وق یکت گت جب اس سند میس ا خالا ت خ اکم ہوں 
یں اگ رسند عا لی کے مق بل یس سند ع ز ل لا خالا ت خط اکم ہو ںو اس صورت میں ست رع زل 
او ہوگ یکیو اواو ی تک علت یال عا لی یں بل از لش ہے۔ 


مطلقا نا لگ 2 درس تک : 
بن فلا و نے ال نظ راتو لاق کي ”إن النزول فی الاسناد أرجح“ لہ 
اسناد کے اندرسند ناز ل راز بو ہےءانہوں نے ا قول مرول ی لک ےکرداوی کے 


عرجالظر Pe AR... TT‏ 
لیے بر ام‌ضروری ےک دہ ا مرول عرک جرب تعر لک پار ے یش کر کلام 
چوک زل یں روا زیادہ ہو کے ہیں کور ٹیش کے رسن را زل کے روا کے احوال 
جات ل مشقت زیاده سے اور جس ثم ر مشقت زیادہ 7 ای تد رواب کی زیاده 8 

گا لہ اول لو اب کے فا ظط ترا 
علا مہ ابع صلا رح نے فر بیارض ابل نظ رکا ےکور وقول وم کے لاط سے بہت ضیف 
چ ۱ 
حافڈ نے ا قح ف کی وج ىہ بیان فر ای س ےک زور« قو لکوجس علرت اور ات2 یا دی 
کی ہے اس علست اورامرکا سحعت وضعف سےکیں ہے لڑی یہاں مشق کاز اوہ ہو س 
الام می مطلو ب شس ے بللہ یبال و کت روات مطلوب .اور وه ما لا سر مال یی 
صورت یل ال مولع 
جل E E‏ ...جار با KY‏ 
هی فیٔ اللو النشیی مق وم الوْصُوْلُ إلى شَیٔخ أُحَدِ 
امین نع طرقه أي سره لی نَمِل إلى ذلك الم 
لمُعَیْنٍ معا وی بان يبه عَنْ ما حییناً ول رین 
ذيك الحبیّت بعیّیه ین طریق إلى اعباس السراج عن همقل 
فی مه مَعٌ علو اساد على الاسناد إِلَيْه۔ 
تر جمه: اورال میس نی عوسی یں موافقت ے اور وو شین ا 
(سف) ےج تک ال طر بی کے طاده سے یہو چنا ے من ال (ے 
اه ر ل سے جو ال مصنف تن تک بو چنا ہے ء ال کی مثال (ی ںی ںک) 
امام با رک کے کی رگن با تک ( ےم بت ) سے ایک عد یٹ روایی تکی بل اگ ہم 
ال حد ‏ کول کے طر ان ےر وای تک نے مار ے او ریہ کے درمیا نآ کے 
وا مول کے اور اکر مهن اس عد بی کومشلا ابو العا الس رایع تیپ کے 
طر لن سے روا تک بو مار ے او ریہ کے درمیان سات واس ہو کے یں 
امام کےساتحرموافقت مال موی بعیعہ ای کے سا 


(۱).....موافقت (۲).....پرل (۳).....مساوات ‏ (۳).....مصاف 
مرکوروعبارت میں ان لت یلک موا فقت' کایان ے۔ 
موافق تک تر شښ: 
کول راو یکی مصنف یا ملف کے سال رست کے علاو مکی دوصرے سال ستو سے ال 
مصنف پا مو لف رخ کپ جاۓ او را ووسری سند کے جا لک تدای وق اس 
کو( اس مصنف یا مو لف کے ساتھ ) مواففش ت کے ہیں- 
عاف فرما اک را یک مال لوں کرابم مقا ری نے ایک روات اس لی سے 
روا تک :عن قتیسه عن مالك اتید اک ط رح امام تفارک کے ان ےم الاو 
روا بی تک یں نے اس صورت میں ار اورقتير ورم نآ کے وا سے اور ر جال موي ی 
ین اکر ہم بحینہ اک عد بی ٹکوامام خا ری کےطر ان ے اس بللہابوالعباس امسرارع کے 
طر ان سے دوا کر میں اور امام بخا ری ہے استاذ تیم کک جا ہیں نز اس صورت میں 
مارے او رت کے درمیان سات رچال ہوں کے جو کی سند کے متقا بلہ می سکم ہیں ۔ ہڈا 
لحاس السراع کے طر بی سے امام بقاری 07 رجا لکیاتے نام 
موافشت تب - 
ی سس چاو KF‏ 
وهآ فی اللو لنشبی اَل وم لو إلى یج یم نیت 
ان ی نا فيك اساد بعییه من رب أحْرٰی إلى یی عنْ مك 
کول اتی بل وو من بکترم تبون المُوَاققة وَالبدَلَإِدَا 
ارتا ال ول قرشم لاه بل وَاقَع یدنه 
تسر جمه :اورا میں نتن عاو یی میں برل ے اور ووک موف سے اخ 
تک ای رع نا ج مشلا یک رود اتاد ای دوس ر ےط ا سکن 
AS‏ 


۹ 


عرجلظر PPS STA ea a‏ 
طور پموافقت اور پر لکا افیا رال وف ت 2-1 ہیں جب ووعلو کے متا رن »ولا 
ور موا فقت اور بل اس کش رگ موتا ے۔ 


ا عبارت می تلو یک دوس رینم بد لکا ذکر ہے ۔ 


تشن 21 لف: 

کول سی مصنف اوراس کے غ مر وئ عنہ ) کے سمل سند کےعلادہ دوس رے سلا 
سند سے اس مصنف یا اس کے مج الخ کک ا-2 ادراس دومر ےط ان کے جال لک تجراد 
کی موز اہ سکو( اس مصنف اور جن کا )پر ل کک ہیں۔ 


بر لی شال: 

مواف یک مثال میں امس ط رب یکا ذک رآیا تھا: 

”٭الامام البخارى عن قتيبة عن مالك “ 

کرس سن کے ملاو هک دوم ری سند سے ہم امام ما کل ہا یں چس مس امام با 
اورتتی ہکا وا سط د »وال بر طا :عن قعنبی عن مالك وال‌صورت ٹل رچال 
سرک کم ہیں ت2 اس یش ابام یک حطر ت قت کا بد ہیں ےکک کم امام بارس 
(م کک ) تک ال مرف (بقارک) او رال کے تھی کے اوه کی دوسرعطر لت بے 
ہیں تاس سے ان یج کے سات موا فقت موی سے۔ 


قو له واکٹر مایعتبرون ی الخ 
عاف کے اس قو لکا عاصل ہے س کرک ن کے پال اکور بمو افقت اور بر لک اطلاق 
اوراستعال علو کے ساتھ ہوتا ہک طلم عد یٹ اس کے تو لکی طرف ا ہک ار چ 
ووتو ں کی اتاو یش مماوات ہو ات کش اوقت حط رارت مر شن علو سے بی ےکی متا نھ اور 
بد لکا ا طلا نک ے یں - 
جلو ۲ ۲ ...جا جا gt‏ 


پالنظم فلشیششہ رہ شسثسسھسسس رش گی 

وه ی فی المُلو السْسِیالمُسَاوَاه وهی اسر عدد الاشناد ین 
الراوی إلى آخجرم أي اناد لعل التشبی مَعَ اشناد أَحَدِ الْمُصنفِیْنَ 
وُعلی آله وَصَحْ وَسَلمَ یه أَحد عفر فافع نا ذلك ایک 
بع پوشتاد ان إلى ای صَلی الله عَليه وعلی آله وضخيه وس 
َقَع یت فبه ین انب صلی الله لو لی آله حه وَسَلَمَأحَد 
ما حظَة ذلك الإسُنَادِ الخاص۔ 

تج :اوراس خل عو ہی میں سا وات ےءادرووراوگی سے ےکآ تر 
کسی مو ل فک سند کےساتھ پرایری( کا نام مساوات )شاا ام نال نے 
ایک حد یف روا تک تو ان کے اود بی اکر صلی ادف علیہ وک مم لک ل گیا رہ ر جال 
ہیں یکن میں بعینہ ونی عد یٹ نی اکر صلی اش علیہ و سک دوسری سند ےب لئ 
کہ ہمارے اور خی اکر صلی نشیم کے درمیا نک کیره د جال ہیں ہم عرد 
کے فا سے امام نا -ساوی ہو گم 


^ 


عبار ت میں عو ی یکی تیس رکم مساوا کا دک ے۔ 


مساوا تک مطلب ہے ےک ہم سے ےکآ رپ اٹ لی وم یک کی عد ی کی سند کے 
رجا لکی جوتحداد ے وه تخا کی اورم لف سے ےک رآ پ کل روا کی تخراد کے مساوی 
مون دونوں ٹیس وسا ئط کے اظ سے برا برک ہو جا ۓے نو ادات ے۔ 


مماوا تک مثال: 

ا سکی شال نون نک با لقرض ایک عد یٹ امام نای نے دوا تک ادرا نکی اس سند 
سآ مکی اش علیہ ول مم کک گیا رہ وا سے ہیں اکر ہم وی حد یٹ امام نا ےط بی کے 
علاووگی دور ےط ات روا کر بل اور ما ری سند ےر ہا لک تخر ار گیا رہ ہون اس 


سے مار او راما نا کے درم ناوات ہوجائےگا۔ 


F&F بی‎ 

یه ی فی العلو النشبی أیضْالَمضَافحَة وی الاسیاء مَع بمب 
ذلك الْمُصَتَفي علی لوح الْمَشْرُوُْح أو لاءرَسْمَیّبِ الْمْصَافَحَة لن 
الْعَادَة جرَتْ فی الاب بِالمُصَافَع بَيْنَ مَنْ تلاقیا ,وحن فی ہوم 
الصورة لاا لاقینا النسَائِیٗ فکانا صَافَسْتَاۂ ماب للم بافسامه 
مد کورة لول کون کل قشم ین فسام لو اه سم ین 
آقسام التژوّل جلافا لِمَنْ عم لو قیقع یر تابعپلتژول _ 
تر جمه: اورااس لب عر کی یں الہ ے اور وہای مصتف کے ارو 
کےسا تی وچ اشر دح اولا رب ہونا سب اورا کو مق اس لی کہا جا ا سے 
کہ بے عادت چا ری ےک جب د وخصو لک بلا قا ت موی ہے اس میں ماق ہوتا 
ہے جس می ہم ہیں ت2 گویا ما ری لا قات شا سے مول او هیا ہم نے ال 
سے مھا فیہکیاءعل وکا مق تل مع ا کی اقمام کے نزو سے یس علوکی ہرم کے 
اب نزو لک ایک نم ہے برخلاف ا تخل کے جک کان مس هک تلو 
بش اوق بت نز ول سک بلج کل موا _ 


شر : 
اس عپارت میں ماخ ے عو یکی چو یا مسا فہک بیان غر ایا سب - 


کی مولف کے شر اور مارب درمیان رجال سند اور وسا ئا گی رار ٹل برابری 
ہا سے گویا ملف سے ما رک طا قات او رمسا لہ ہوگیا- 
مصدا نکی شال: ۱ 

فرخ لک می کہ ایک ردایت امام نا ےئک رکم ہے ونی روات کیل 
دوسری سند گی ء دوفوں سندوں کے ر چا یک تخ راوسا وی ہے ہت روا تم نے امام نا سے 


نزو لک اقمام: 
عا فر مار سے ہیک وک مت اقا م ہیں ان کے متا بلہ یش نر ول کی بھی اتی ہی 
اقام لب اعلوکی پر متا لہ یں نز وک کم ہے ءایض لوگو ں کا خیال 
ہے س ےکہ ہرمک علو کے متقا بل یں نزو لک ہونا ضر ور گیل ےش اوقا ت عون ول کے 
یرگ »ول ہے۔ 
چلو TE TK... YK‏ جار پر 
فد شارك ال راو من رزوی عنه فى أمرٍ من لاور المع بالرَوَابة 
بلس ای ۱۱۶ و مان پور فَهُوَ لو ع الذِی یال له 
رِوَاَةُ فان لاه ی يخود راویّا عَنْ قرئیه - 
کو هت کن راو ردق کے ساتھھردایت سے متعلقہ ا مور 
ےکی ام شش رک #وما 2 کل ر یں بلا قات میس اور وه مار سے 
روایت لیا ےو کم جم سںکوردایت لا ترا نکیابا ج ال کر 
وہای وقت ابنے سای ےروای تا ۔ 


ری اقام باقبارروایت: ۱ 
هل حاف عد ی ٹک انیم باخقبار رواحیت وکر فر ما ر ے شی ء ردایت انار سے 
(0) روات الا ان (۳) روا یت ال مد (۳) روا یت الا کا رگن الا صا ر 
مرکوروعبارت مس مع ردایت ال ثرانکایان ہے۔ 
روات الا قرا نکی تحرف : 
راو ی( شا اگر د )اورم روک عت( اتاد )رایت هد یش ے متاق امور شل ےکی امرش 
ش ریک موی یں ٹلا ووتو ں تم رو »یاوق ےکی ایی استتاد ےکوئی صد نیش ماح لکی 
ہو ا سکوروایت ال ترا کہا ہاج »اور رایت ال الک مطلب ہے ہ ےک ایی اگ 


عړ و اتر ا سی سج  /‏ کے E‏ 
اپے دوس رے ای سے روا تگرر پاے_ 
E E‏ ئ1 
ود وی کل منهما أي ری عن الآخر فهر لسخ وه احص 
من الال فلمك تچ راد ولمس کل قران مدخ وقد صَلْفَ 
الدارفطیی فی ذلك وَصَنّق أب الشٌیٔخ لأصْمَهانی فی دی قبله و5 
وی ایح عَْ تلم زه صَدّق أ کلاینهما یَرُوی عَن الأخر مُهَل 


فاد 


سو ویو مو سو لاه لاهن روا ہی 


الاصاغر بیج ماود من دِبَاجَتي اجه فيضي ان يحون دك 
تر جھے: اوراگران دوسا یول شل سے برامیک دوسرے سے روا یک ےت 
یدیا ہے ادر یگ ادل سے اش ہے میں بر ردا الا ران ےن نا مر 
اق ران مک ی ہے ا اعم می امام وار نی نے ایک کا گی ہے اور الو 
اخ ناس سکتاباکھی ہے ؛ اور ج کر استادابنے شاگرد سے 
روا کر ےت الب ےصاد ت ۲٦‏ ےکہ ان ش سے ہرایگ دوسرے سے 
روا تک پا ےت کیا ا لکو یں گے؟ اس میں ت دد ہے اور ظا ہر یہ ےکہ 
یں > وتک ہے روات الا کا رشن الا صاغ مر ےتیل سے ہے اور پچ ”دیباحتی 
الو جه؛ " سے خوذ ہے لو الک تقاضاي ریا کمن سے ب ددرت 


رتش دای ہوگی۔ 


مرب" 

ال عبارت غل حاف دوریم هی" کو بیان فر ارت ہیں۔ 

لفط رم دیا الوجہ سے ا خوز ہے اس کے مع دولوں رخار چن »اور وولوں 
رار چوک برا ب ہو تے ہیں ن سا تھ ہوتے ہیں اس لیے روات کی اع مکو ر وای 
الد کچ یں۔ 


۲)روایت ور کی اصطلا یآ ر یف : 

رایت هیاس کہ برای سای اپے سای سے روای تک »لامج پر بل خضرت 
ارت الا ہریڈ ے ء او ر رت الو ہر رہ ضرت نا »۲ تن می امام ز ہرک گر 
ب نکپ را لعز یز سے او رگرب ن قیراحز ےڈ اما مز ہیی سے روا تک می تو ید ہلا اس 


رع اور روات الا ران شی لت : 

روایت م ی اگ جاور روات الا قران عا م ہے ؟ اس لی هکرم ی شش جرایک انب 
سے روات ہہونا ضر ورک ےجب روات الا قران یش پیش روک ے بل ای شس ایک جاب 
ےکی روات کاڈ مون سح لپ | ہرردایت ممن رواعت الا قران ےکن ہرروایت 
ال تراك روات رد ل- 
استاد شا گر و سے روای تکام : ۱ 

ارو اتا وا سے شاگرد سے روا ی کہ ےت ال‌صورت میں گی ان ے روای تکا 
ہوا پا یا گیا کیا ا یصو ر رگ روات ےیل ے؟ 

e‏ را کا یکمن کے میں بت وو کوک د ٹیش ری نکی فرب سے 
روایت مون ے ییا تاد اور شاگر دقری نکیل ہیںء بلہ کور و صورت روایت الا کان 
الا صاغر تیل سے چا لکایا نآ عادبا 

لو یہ چو ...و ا چا چا ۱ 
ود رَوٰی الاو ی عَمّنْ مر ونه فی السَن و فی للفي أو فی المِفُدارِ 
هدا التو ع هو رِوَايَه ال كابر عن الاصاغرمنه اى وین حُمْلَ هذا 
نع وفو آعس من ملق رِوَايَة الاباء عن الأبْاء َالصَحَابة عن 
الكَابعيْنَ لیخ عَنْ ِلميُذِہ وَنَحُو ذلك وَفی عکیه کثرة لانه هُو 
الْحَامۂ EET‏ لین مات 
تر السا م منازلهم وق صَنّق الْحَطِیْبُ فی رِوَامَة الَأمَاء عَن 
ابا تیا مور ْرْءلَطیّْا فی رِوَائة الصْحَابَة عَنِ التابعین 
شر جمه: اگرراوی اچے سکم اور احفظ ےر وای تک ےو یع رواعت 


عروالظر وو هه هم و EAE‏ 
ال کا بین الا صا غمر ےا ورا کی فور کی اقا م هل ےر وات الا با کن الا با ءاور 
روایت الصما گن ا تن اورروایت اخ نیہ وظی رہ ےکن ا سے ملق 
ےا ات ے اورا یک اس بہت زیادہ ہے »کک بی تن روط یق ے 
اور مک مرف تک فا کد ہے س ےکرددا؟ کے مرا حب لیف ہو جا اورلوگوں 
کاخ درج مش رکھا جاے اور روات الا این الا بناء س خطیب بخ ر اوی 

نے ای کنا کی اوراس کے ی وتا این( 
بیان )شس فصو لکیاے۔ 


شر : 
اس عبارت مل ما فر وات الا کابرش الا صاراوررواعت الا صا خ رگن الا کابراورا نکی 
اتا م یاراد یں - 
٣‏ )روات الا کا مرن الا صاخ ر: 
روات الا کا یرگن الا صا رکا مطلب ہے ےکہ ڑا وس سے رواب کر ے وا هبار 
یس بڈ اہو خوا ہکم یس یڑ اہو ءخواہ یل ڑ اہو 
روا یت الا کا رین الا صاخ کی شال : 
ال مکی ال اور ال حضور اکر کی ان یرو مکی وه صد عمش ( ابا سے ) سے 0 
ےم الداری سے ددای تک ہے ۔ اک رع پکا ریف ما نگ ا لک شال ے: 
" قوله عليه الصلاة والسلام : حدثنی عمر أنه ماسابق آبابکر إلى خير 
قط الا سبقه“ ( شرح القاری : )٦۳۸‏ 
ردابیت الا کا برگن الا سا خر اقام: 
ا کی پا میں ؤں: 


۹ کے 0+0٦‏ 
نی وال رکا اس سے یا نی سے روا تکر نا ءا کل ز ره اعاد یٹ یل بہت میں 


* چنا تحضر ت الک قول ے: 
حدئتنی ابنتى أمية أنه دفن لصلبى إلى مقدم الحجاج البصرة بضع و عشرون 
ومئة “ ( بخاری : كتاب الصوم) 

ا تم میں خطیب نے ای ےکا ب کی چاو دای کے ایک حص می ام رها وید 

عن لاوز رکیاے۔ 


۲( یا روات الصا یئن الا ی: 
بجی سی یک Ft‏ سے روا یکر جیے حضرت انس نے حر تکعب احپار سے 


روا تگیا ے۔ 


ê 


e‏ اج وس نے اپنے ایک شاکرد 
ااوالچا کس السراح ےر وای کیا ے۔ 


: و روات الا نکن الا ار‎ (r 
TT ن ا نک نج تن روا تکرنا‎ 


روا کیا سب - 


رواعت ال اف کرک سے سان تال کا 
7 بہت زیادہ ہے اور عام طور ریات ا ینیل سے ہی نکوتل ی روای تکا سب ے 
تاو رسب ےز یاد ہرد طم یقدے- 

عا فار ماد ہے ہی لک رهگ مرو تکا هس ک دوا 3 صد بیث کے مراب لم 
عاصل مو چا ےکس بوالن کے درج یل رکھا جا ۓ - 


عرڈالظر ا و تک وه اق مھ هه ی ۳۵۵ 
َفِیُو من وی عن أَپبُو عَنْ حدم وَحَمَمَ الحافظ صلاخ الدَیْن 
لای من المَأْرِیْنَ مُعَلَذا ییا فیمعرة من رزوی نب 
عَیْ جد عن الثبی صل الله عَلَيْه وَعَلی آله وصخبه وَمَلَمَ 
َقَمَمَۂ آقساما »فمنه مَايَعْودُ الضْمِیْر في قَوْلِهُعَنْ عَدم على 
الراوق من يود الضمِبْر فیه علی أبيهِ وََيْنَ ذلك وق 
وخرج فی کل تَرْحمَوْ حدیا من مَرْوبْه وَقَد لخصّث کاب 
الم کور»وزدث عليه تراحم يره حداءوا کنر ما وَقَع فیه ما 
تَسَلسَلَتُ فيه الرواية عن الابَاء باربْعة عَشَرَاُبًا۔ 
ترجمه :اورا ای ( راو ی کی روات کی )داغل ‏ جوگن ابییگن 
چده کے طر لت ر وای تک ے اور متا خر بین ٹل حا فظ صلا رح الد بن علال 
نے ان محد شی نکی حرفت میس ایی مکنا ب مع کی ہے ج وگن اہین جد کن 
انی ےط ان سے ددا تک ے ہیں اور انہوں نے ا سک وکئی اقام ش 
تم مکیا ہے یکی ان ٹس سے ایک ہے س ےک جد ہکی می رداو کی طرف لو ے 
او راکب ےکا کیراب طرف لو ے انہوں نے ا سکوخوب 
وضاحت او رگن سے جیا نکیا ہے اور برجم کے ف یی شس اپ مرویات 
سے ایک عد بث ذک رکا ہے ادر یل نے ا لک کور ہکا بک خی کی ے 
اورال می لکئی 2 اجک اضف یکیا ء اور سب سے زیادہ قرا رس مل 
سمل اباء سے ردای ت کا سلسلہ چلا ہے دہ چددہ آباء ہیں ( ئی چودہ پشت 
بان 


رح 

روات الا صاخ رشن الا کا بر کے ذ یل مھ ل من ای ےکن جدہ -گطر سے مرو ی ردایا تگگی 
آل ہیں مائ نے کارت ںاکم یکو یا نز مایا ے۔ 

حافظ صلاح الد بن عل نے ای ےک شین کے مالا ت تاق ایی مکزا ب کی ےج 
کد شی نگن ابییگن جدہ کے طر بی سے روایت د کہ -2 ہیں »اور انہوں نے ا سک یکی اقا م 
یا نک ہیں۔ 


جد ہک یر کے مرخ کے اتا ت: 
ہد ہی حر کے مرح می ںخین کے اشالات ہیں - 


۱ ” بهز بن حکیم عن ابیه عن جدہ عن النبی “ 
مرکورواشمالل کےا ظا سے بسن رف ول ے: 
" بهز بن حکیم بن معاویة عن ابيه حكيم عن جدہ معاویة عن النبی “ 


”عن عمرو بن شعیب عن ابیه عن حده عن النبی نف “ 
کور ہا الک فا ط سے ا سک ی تفیل سند ول موک : 
”عن عمرو بن شعيب بن محمد بن عبداللّەبن عمرو بن العاص عن أبيه 
شعیب عن جدہ عبداللّه بن عمرو بن العاص“۔ 
ا سے تعل مل تتبن ہی کز یی ے۔ 
۳( 7۰ ت راا تال ہے ےک جد ہیر کے عرق کے بارے میں کی اتال موک راو یکی 
طرف لے اور یکی اخال مرکا بک طرفل ٠۰‏ 
ےکور و ست رک مت را رک و 
سب تک سندجس میں سآ با سے روای کا سلسل چا مووہ وہ سند ےک کو حا فظ 
معا نے کک ہےء اس سد می سآ پا یکل تعدادچودہ ہے دو سد اورردایت ہے ے: 
”قال : آخبرنا آبو شحاع عمر بن آبی الحسن البسطامی الامام بقرائتی و 
آبوب‌کر محمد بن على بن یاسر الجیانی من لفظه قالا: حدئنا السید ابو 
محمد الحسین بن على ابن آبی طالب سنة ست وستین و آربع مثة قال: 
خد و الدیٰ او علی دال ن جمد قال دي ان سید ہو الست 
قال حدئنی آبی الحسن بن الحسین قال حدئنی أبی الحسین بن الحسین قال 
حدئنی آبی الحسن بن جعفر قال حدثنی آبی الحسین (الأصغر) قال حدثنی 


ع ړو اتر PAE RARE‏ 
آبی زين العابدین على بن الحسين بن على عن أبيه عن جدہ على رضی الله 
عنه قال قال رسول الله صلی الله عليه وعلى آله وصحبه وسلم لیس الخبر 
کالمعاينة “ ( شرح القاری : )٤ ٤١‏ 

۰و کم کم ...۰ کم EH‏ 

وان اشْتَرَك نان عن شَیَخ ومد مت دجم على الآحر فَهر 

الشابق واللاجق_وا کنرما اقا عَلَيْه من لِك ما بين الراو ین فیه 

فى اوقا ة ماه و مشود سََة وَذلِك أ الْحَافِط السلَفِن سَمع شه 
ابوعلی الْبَرّدَانیٔ اد ماه < جم حا وواه ع مات عَلی راس 
حمس مائ نم کان جر اب السلَفی ال بط لایس 
عون نکی زگائٹ وه ستة ين زاو ینف 
00ہ ن وآحر من خدت 
عن السرا ی۷س سا انم رقف 
را مَایقع مھ مت سوہ 


ر 


رظ ہے در رر 


مکی جک الاين عَنه مان ختی یسم مه بعش ال غاب وَیَعیٔش 
بعد السمَاع منه درا طویلا فیَحصل م من مُحْمُوُع ذلك نځو هزم 
المد وَالله لوف ۔ 

لگ کی ایک استاد ہے روات شش دورادگی شیک موا یں اور ان 
میں سے ای کک موت دوسرے سے پیل ےآ جا و ہے( مورت ) سا لق ولان 
ہلا ) ہے ددراولوں کے درمیان وفات کے پارے ٹل زیادہ ے ژیا دہ 
هت لس ہا تر ہو سے ہیں دو ڈ یڑ وسال ہے اور وہ اس طر کے ماف 
ملف نے بوک بدا سے عد یٹ روا ی تک ے جوا کے مشار ل سے ہیں اور 
ا نکی دفات پا وی صدیی کے شور میس »ول ے چ ری سے روا یی تر نے 
وس رئیش اگردان کے تے ابوالقا عبد الین بی نکی ہیں جن نکی دفات چے 
سو ای مس بو ہے اورا ےکی فک مم (مثال )وہ س هک امام بغاری نے 
نے شار وال العبائس رارع ے تا رو ٹل ہے رو ایا ت (بیائن )یں اور ال کا 


ع ړوار 5 یس ا سکس سس سی ہس سس سرک وا 
ونات ٢۲۵م‏ شیل »ول او ر رار ےسا کےا ےآ زی لروالوا ین 
قاف ہیں جنک ونا سا۳۹ د اور اک اوقت ایا ی »وت ےک ود ہو 
رواےت دوراولول لک ایک کے اتال کے بعد ایک ز ما کی متاخ ہو جائی 
ہے هالک کک اس سے لوگ رراوی روا تک ے ہیں اور اع کے بعد ایک 
لو ہل ت کک ز ٹہ ر جے ہیں بل ان دوفو ل کے کر نے سے می عرت اکل 


موا سے اوراش ین میق ده والاے۔ 


اس عبارت ٹیل حا فظڈخجرسا ای ولا نک با لن فرر ے ہیں - 
ساب ولاف یکیکحریف: 

اگردوراوی ایک اتاد سے روا تک نے هل شرب ہوں اوران عل ول ایک بط 
دفات پا جا سے پیل م نے وا کو ابن او راک روای کور وات ساب کیچ ہیں اور بعد 
س م نے وا ےکو لان اور ا یکی روا تکوردایت اع کے ول - 

اس یف سےمعلوم ہو اک ساب اور لاج دوف ں کی وفات کے ورمیان فا صل ہوا ےاور 
نس اوقات ات لع ےکا فا صل موتا سک سا ولا مھ ص ربھی شا رل ہو تے اور 
دول باتک لور ملح ہ ہو ے ہیں- 


سا لی ولات کے ور میا ز ا دہ سے ز با دہ فا ص لک مثال: 

ما فار بے ہی ںک می ری معلو مات کے مطا ات ےر او لول س پاعتباروفات ذ یادہ سے 
ز یاد ہر ص دیص دی ن ایک سو پیا ی سا لکا ابت ےء اور یر فا صلہاس ط رب ابت سے 
کہ ایک محرث عاف طز ر ے ہیں ان سے ان کے استاد الو بدا نے روایات ا صل 
کیں اوران کے واسیطرےآ گے روایت با نک یکر -2 ہے اور پا نچ بی صری کے اولل 
شس ا نکی دفات »ول ما ذظ سا کر نے والول یل سب سے خی شاگردان کے 
بے الو القا مھ عیدال رن ب کی میں ءا نکی وفات 1۵ حم موق - 

تو و کت ابعل مدا پا چو می صد کک ابتقداء ٹس وفات پا گے و وہ سال ہو ۓے اورکیر 


عرچانظر FAN RD‏ 
الین می ن گی بش ص دی کے وسط می وفا ت پاپ ےلان ہو اوران دونو لکی وفات کے 
درمیان ڈ یڑ صر ی 6 نا صل ے - 
ال سکیپ مک مان ےکی مثا ل د هکرابم فا رک سے اپنے ایک ش اکر دابا تال 
سای سےا ر سے تلق چندروایا ‏ تک ہیں ا ورامام فا ر کی وفات ۵بح یش بو ء بعد 
ازال اپوالعپاس ےآ غر ی شاگرووں یل سے ال وسین اقا ف ہیں اورا کی وفا ۳۹۳« 
یش موک و ا فیط سے ابا دورن شاگردوں (امام خاک ما این خلاف ) کی 
وفات کے درمیان ایک سو اکن س(۱۳۱) سا لکا فا صل ہوا _ 
عافنڈأظرماتے زک دو راو لوں کے درمیان ١‏ ی تد رکش رفا صلکا سیب ےک راکش اوقا ت 
ایبا موت س ےکر روایت نے والا سام وشا گر وتو جل ری وفات پاچاتا ےنمروو جس سے روات 
کی سے سن اتاد و الک وفات کے بح رکا عرصہزخدور بتاے اور عد یٹ بیا نکرتار ہتا 
ہے ها ت کک ہا لک رخ سکوکی وع رش ار دروایت نتا ے اور وه و راکب طول 
ع رص تک زم ور تا ہے اس سے وج سے دوف لکی و فا ت لکا ی فا ص لآ چا ے_ 
AN‏ 

( وإ رَوّی ) الاو ( عل ین مى الاشم ) أ مَعّ ام الاب أو 

مع ام الخد أو مع اسب روم یر بماتخص گلامنهما إن 

گنا یقن لمیر وَمِنْ ذِلِكَ مَاوَفُعٌ فی البخاری فی رِوَاَیہ عَنْ أَحْمَد 

یر شوب عن ان وب له ِا مین صایج أوأَحْمَدُبنْ 

عیشی و عن محم عير سوب نال ایر راق فته ما محمد بُ 

سلام أو محمد بُ یخی اَی وَقَد عبت ذلك فی مدمه 

شرح الْبْخَارِی وم اراد ِلك ضابطا کل یا به أَحَدهُمًا عَن 

الأخر (قب |خحتصاصه) أي الاوی ( بأَحَدِمِمَا يبي الْمُهْمَل) وم 

لم یبن دك او کان متا بهمامعا کاله ید یرجم فيه إلى 

القَرَائِن وَالظن الاب 

و كت رن زوا نز مو سے روا تک ہے جن کے ا اء ایک جیے ہوں 

ان وال کے اسماء ایک جیسے #ول با داداکے اسماء ایی لے ہوں تال ایک 

کی ہوں اور یز نہ ہو سک کر یمان می شک سکیا تھ اس ے اور اگر وو دوول 


عرو لطر 7 - -_. 
کے وولو ل اڈ ہوں نو ون ر یں ا سی شال بخارک اوه روات ے جن 
اکن این وب ( کے لی سے مر وک ) ے او یہ( اہ )کیک طرفضوب 
نیں ٹیل اس سے امھ ین صا بھی مراد ہو سک ہیں اور ام ب نی بھی »بان 
گن ال ال رای ( کے ر بی سے م روک )»ال کر سے یا مھ بین لام مراد 
باه ان هل مراد ہے با ری کے مقدمہ میں میں نے اس فص یکلا مکی 
سے جو ال می کسی ایی ےکی اکا طالب بو جر( ضابلہ )ای ککودوسرے سے 
متا زگرد( ز اسے چا ہے وہ ا سکی طرف مرا جع یکر ے ) اوران یں سے 
کی ای یکیرات راوی اتی یم لکووا و گردچاےاوروووا دمویاراوک 
کا دوفو نکیا تھے اختضاص وت پر کل می ے | و یس تقرائی ون 
فا بک طرف رج غکیاجانۓگا۔ 


ت رمشو کل اساء کے پار ےنیل : 

اس عبارت یں حا فظ کل مروی ع( استا و )سے تلق فصل زکرفر مار سے بل : 

اگ رکوئی راوی ایے دوتول سے روا کر ے ج ہم نام #ول یا دولوں کے والد بمنام 
ہوں یا ول کے داداہسنام ہوں بقل ایک طر لمت کت ہوں او ری دور صقت 
مس اک زان از وتا موق رازن ہن مت ان کان خا نک اض رل 
جا ےکی ملا راو لکوت کے اتی زیا دہ صما حت ری ہو ہا ہم نی حاصل وتو مرا 
یاجاۓگا۔ 

وراک کی ط رع بھی ا تاش ہبہ سورت دوفو شا ساوک مور نع 
یکمن کے سلا فان مرج ورن غا لبکا اتبا رکا جا گا۔ 


متا شیو کی شال : 

ملا امام خا ری نے ایک روات گن ا رگن این وب“ ےط ان سے کرک کے اس 
سنر ی ات هکل ہے ا کول نیست ناور چا اي یا اہن صا ہے یا راهن 
تک دود ل مادک شید یں - 

اک‌طر امام بفارگی نے ایک روات ن ھن ائل الع اق ےط لا سے :کک سے 


اس سند نی امام بخاری رل ا سک کول ہت نو رتیل بل ہہ الو مجن 
علام یں یا رم بن می ذ ہی ہیں ۔ 


بسنام راوک اور بمنام وال دی ال : ۱ 
اه روا مجن از نام ایک تیه #ول اوران کے وال کےا مکی ایک تچ ول » 
کی الم ین اھر ہے بد وگ نکانام ہے ء ان یس سے ایی سل بن اجھ بن عم رو بک نیم 
وک ے اور ہہ ونی سے جس ےکم العرو شکو ایا دکیا »روما اس استاد عم احول سے 

روایی تک ے ول امن ال نے ا ےتہر وا س شا رکیا ے۔ 
دوسرا محر ل بن ام ابو شرعرلی ے تیر سے رواک ے ہیں۔ 


نام راوگ »متام لاور نام وا دا گی شال : 

اییے روا ۃ من نام ایک اه ہوں .ان کے واللد کے ا مکی ایک تچ بول ‏ اوران 
کے دادا کے ناگی ایک جیسے #ول ایے جار ہیں چا روں مھا صر ہیں اور ایی بی طبقہ یں غار 
وس ہیں:۔ 

۱ھ تن رین ان من با کک لخد ادی 

۲ات می ری ص ران .کدی بھری 

۳)...... اه نتفر تال د یتوری ۱ 

)...ر ہف رہن مان طرطوی -( از شر القاری :۰ ۷۵) 


ماو رل می فرق: 
م اوی الکو کیچ ہیں + سکا نام بی ےکور ت ہو کل راو ا سک کی یں سکا نام2 
زور ہوگراس میس اشنا ہو نشین نہ مو( شرح القا ری :۷۳۹ ) 
پل لہ ار ...یل جج 
(وَإِه) رزوی عن مخ خبینا رخ انشیخ مع ا کا 
(جَزما) گان یَقُوْلَ :کب علی و مَاروَیْت له هدا وَنَحُو ذلك رن 
قح مه فیت رہ فك ت غ دس راکرد 


وتر مسا سی سے OAS SASS‏ 
ذلك قَادًِا فی وَاجد مِنْهُمَا لِلعَارّضِ ( أو ) كان جَحْدَه (اخیمالا) 
حاذ‌یمول : مااذ کر هدا او لاأعُرِفُة (قُبل ) ذلك الْحَیبٔ فى 
الاصح) لان ذلك بُحْمَلُ على سيان لیخ وَقِيْل ایب لاه لقع 
تب للاضل فيه تباث الْحَدِیٔثِ بحیث را بت أل الْحَیِيْبِ تلبت 5 
ر قرو کت ن زد ر | 
رھ E es‏ ا EEGs‏ استاو ا کی 
روات اقا رگرو اوراز( براثگار ) نی طور بے ےش وولو ل کہرد کر 
ال نے مھ پرجھوٹ بولا ہے یا( ےکہہ د ےکہ ) یل نے اسے بے روات بیان 
تک وخیرہ اگر رال ے وات مونو پچھرق رلور وکر دیا جا ےگا ان دوتوں س 
سک ایک و ن یج اور ان وونل ری 524 میں جر کا 
با ع ٹنیس ہوگا یا اس نے خالا انا کیا +وملا ای ےکہا کہ کے با وگل ی س 
اس ے و افش ہوں و ام قول کے مطا ان یر دا یت تو لک جا یکیو 
اس میں استاد کے بجو ےکا تال ہے اود کہا گیا ےک وہ روات بول کی 
الکو ات هد یٹ میں فرع اصل کے ابع مو سے اس یت 
کہ جب مل نے عد بی کواب یکرو یا تو فر ر کیا ردای ت کی ثابت ہو جا گیا 
ت چھرمنا سب ہے ےک تین مم اس فر اورت یع بھی ای طرع ہو۔ 


کیا کر دہ روای تکام 


رش E‏ 
کرت ےکر نے یبد واعت سے ما نکس کی ایی ر وای تکوقجو ل کیا ہا ےکا س ؟ 

فرماتے ہی ںکراس شو الیل ےک اگ رج نے لقن کے سات ا رک دی شلا ليم 
واک لز بل با مادد تلذ “ب ا ی رع کول ایا بج لک و ا یں ےق ا رھ 
7ج ہو ا یکی صورت میں ان دوفوں م۲ کسی ایک کے ضروری طور جوا مو ےکی وجہ سے ہے 
رزیت مرو ور مر هن ذال ور پر یہروامت مردو یل و Ik‏ وچہ ے رور 
متورہوگی_ 

رت کل سار سین رم ا یں جاک 


را ٹول کے مطا ان روت بول بو 
و ل کیا جا ےگا ۔ 
یری ا ڑکا رکی صورت یس علا ءا حنا کا ن مب : 
ابد علاء حتاف سض علا کا را ہے سک دوس رک صورت یں کی ہے روا ےی بول 
میں ہی گرد ات او هد عف ات 6ر7 گی ہشیت امل ہے اورراو کے 
جب کیا ل( )روا تکوٹا ہنی کر ےگا اس وقت کک فا فش 
جب اشبات صد یث مل را دی ماع چا برعم بات بھی رادئی ا ہے تلع ہو 
گالبذاجب ال ( )روا تک انگارکرر ے۶ ر (دادک )اس ےک صورت یں بھی 


ایوہ اس صورت مل کےا ننکارکواس کے ان 


3 ہا ںکرکھا_ 
نان حرا ت کا اتد لا ل ما رل ند و ہے اورا ی کے مقد دش مو ےکی وج 
ال عارت کے بل میں طا حظہ ہو 


ہو وی دہ ہو و وت 

وَهَذَا مُتَعَقْبٍ بأل عَدالَة الْفَرُع مَتتَضِی دق وَعَدَمُعِلم الّصُلِ 
لاب یه فَالْمْنےُ مُقدُمُ على النافی وأا قباس ذلك بالشُهادة 
ففاسدذلاه شُهَامَة الْفرُع تسم مَعالَْدُرَة عَلی شَهَادة ال 
بخللاف الرَوَايَة فافترقا -( وق ) یفن هدا الع صف الذارطین 
کتابا من خلت و تیه ) وف ه مَايَڈلُ على ية الب 
اسیج بگزد کم زا پاک فا عرص له 
ند گرا لکنهم ی على الرواة هم ارو يَرُوُوْنهَا 7 
ی و و اس وی زا ابی صایج من 
خن نزو علیہ زم رن لقن لا 
ك ول خدکیی رَبيعَة عتی آنی خدلته عن آبی به وتطابره کیره ۔ 

تر جھہ:....اودا کا ال ط ررح تھا ق بکیا گیا س ےک بلا شب غر کی عالت ای کے 
صرق تقاضاکرل حاورا لک رمم اس ےمان نہیں ہے بل شت مقدم 
ہوا ہے ناڈ با بترا ںکوشہادت پر فیا کر نا فاصد سکول روا یت کے برظاف 


شہادت پد رت ہدتے ہو عفر شاد تک لک جا ی لہز ادوو ل( روات 
وشہادت ) جدا بو اور ا ام میں را نی یا دی ی ت 
هن فک ہے اوراس می دو با ت بھی ے ج بمب یلق یت پردال کم 
ان شل سے ببت سے تعثرات نے ددایات یا نکس لان جب ان کے سا سے وہ 
یکاش یاوس یں تراچ شاگردوں (روا3)پراعم دی وج سے 
ووتودان رن رواک لزل کے جھوں نے ان 9ی وب 
کیل ین صا کی شابر وکن تاق دہ روایت ج وگن یگ ال ہریرہ( کے 
ربق ) ے( روک ) ےعبدالعزیز ین کہ وراوردگ سکره سے رجہ کیا 
عبرال رن کیل کے دامے سے بے عد میا نکیا » ال کہ اک جب هیرگ 
کیل سے طاقات موی مس نے ان کہا کرد ہے ن ےپ کے وا سے سے ہے 
عد یث یا نکیا ےن کیل اس کے بعد ول کچ تےکر چم نے مه سے روابیت 
(بیان )کی اور نے پاک سے اپ داللد کے واسلے سے بیا نکی اور اس طرح 
کی ام بہت زیادہؤں- 
علما+احناف کے استتد لا ل کے مد ول ہو ےکی وج : 
اف ان کے ات دلا ل کے دول مو ےک وجہ یہ مان فرال چک فر(راوی) 
عادول ہوتا ے اور عداا کی ہے ےکر اوق روایت با نکر نے سیا ہے اور ا یکی 
ردایت تال ب لنقائل اس کے ک لی کا ہا رک اورر وات ییا نک نے سے 
اکا رک نے یل شی فک نا اس کے متا یں ء جب ان دوفو ل کے درمیان منافات تی غا ہت 
لو کے کو لفن ت نی دم ال روا تکوم ردو در ارد ہیں کیوکگ راو روات 
کے لے شت ( یم کر نے والا) ے اور رواعت ای( الگا رک نے والا ) ے اور 
لیے ہشیت مقدم ہوتا ےن انی بلب اال دور ئ ورت شل روات ول بو ردو 
سول 


کگواتی پ رتا سک نا ور سک : 
سل ها کار اورفررغ کے ا یات کے پکورو مس کو شما ورت گی الٹبادرت پر اسر 


درس ت کیل ب ریا لیر الفارٹی ے۔ 

شاد تک الشہااد تک یصودت ہو نی ےکہ جب اص لگواو شہا دت سے یک ها ہک 
د ےآ ا یکی ڈاعھی کے اعدا سک فرر] کشهادت قاب ل قول یں مون يگ مر ووو موی یز | 
ما ی جب ال( )2 روات ےا یک تا رو و اک ی کے ظهار نے 
روا یت روود موف چا سے 

ان ےتیک یگمزشنۃ استقد لا لکی رح تی س مع الغارق سک شہادت او رر وای 
کے اعام فرق س کہ جب اص٥‏ لگواہ شہادت پر قادہ موتو ا لک تز رت کے مو جووگی س 
فرح شاد س د ےکا کن رات ش یس یرک فرت کے رود 
ر( را وی ) روات میا کرس ہے تے ای ط رح اس ستل می کی فرق ےکا ص ل گواہ کے 
کی پرفر گوا دونش د ےکک کر روات می اسل شغ کے کرک اورا کہ را٥‏ یکی 
وچ ےر روات یا نک رع حاورا یک روات قال قیول موی _ 


علا مروا ری کج 

ہے وی انی سیا مدای ایب کناب ره ریق 
آعنیف فر مان ہے چنا را لک کاب لک کت نکی ےک کے ی هفرس 
باوج دشاگر دی روات یول »ول ال شی بہت سارے ال شوخ کا ذکر ےجھوں نے 
ردایات میا نکیا ہیں گر جب بعد ل ده روایات ان کے سا سن پچ یک یش انہوں نے ان 
کے بار سے میں یک ها رکردیالیکن ال چوک ا سے حلا د پرجھر پر در کا اع داز اوہ 
سد تو ت کہ 
روایات بیان یل - 


شی ی وا یی مثال: 

ا لک شہورمقا ل کیل جن صا کی وه ردایت ہے جوشاہراورکیشن سل میں حر 
ابو سے فو عا روک ے چنا تک بد ال ز ےد ب کہ دراور وی کچ یں ہےر دات مجر ہی من 
درکن کل سے یا نک ج ب کیل سے میرک ملا قات ہوئی تر ی تے ال نے اس 


ت-ج- lS eR ES‏ ۳۳ 
روات کے ہار ے میں لو میلس کہ اک کے بل رل نے کیل س ےکہا کدی 
روات د بی نے مر سے ما ےپ کے وا سے سے میا نکی ہے اس کے بح رکیل ال رواعت 

کولوں یا نہ ے ے: 
*جدثنی ربیعه عنی نی حدئته عن آبی 1 
کچ کے گے سے ہے عد بیث یا نکیا اور ہی گے ےر وای تک وای تک تے ہی ںکہ ٹل 
ے مد ث ایکا و بالگ .۰...- 
ttt‏ 
رون ان ارو )فی سنا من السَانید رفی صِیّغ الادای) كُسَمِمُتُ 
فلانا قال : سمعث فلانا أو دتا فلان ال دنا فلان وعیرِكُ ین 
لخ مرا من الحالات) الْقوْلِيةَ کسمغث فُلانا یل اسهد بالله 
لقذ 0808032 ا إلى آجره أو الُفْعْلِيّة موه دنا على فان 
مامتا را لی ایی اه یمه نما گقرنه عقا وة 
وه و اد باللّحْيَة قال آمنث بالقذر إلى آجره (فَھُو المْسَلسَلُ ) وَمُو 
من صفات الاشناد وق لتسلسْل فی مُعظم الاشناد دیب 
المسَلسَل با وة فاگ السَلْسَلَة هی فیّه إلى سُفٰيَان بن عُيينة قط 
وَمَنْ رَوَاه مُسَلسَلا إلى مُنتَهَاهُ فَقَدُ وَمِمَ - 
.ار رون ےئن ایک سند یش تام رادی اوی رواییت کے 
صیفوں می لخن ہوہا ںا سمعت فلانا با قال سمعت فلانا یإحدٹنا 
فلان یاقال حدئنا فلان یا ال علاوهاورالفاا ہو خواہ مالا تی پل ہوں 
شلا سمعت فلانا يقول اشهد باللّه لقد حدثنی فلان الخ باعلا قعل ۳ 
ہو ںا راو یک ٹول دحلناعلى فلان فأطمعنا تمرا الخ قو لوی 
دوو ں مالا ت مولا راو یک قرل حدثنی فلان وهو آخذ بلحیته قال آمنت 
بالقدر الخ اوا ی( صوررت )کو کل( کے ہیں اور بیانادکی صفات مل 
سے ہے ورش اوقت سل سند کے اکر حص میں وا ہوتا ے تب صد بیش 
کل پا ولی کاس میں ہک سل صرف سغیان ڈور یک ہا باکر ہو جاتا سے 
لہذزا ہراوگ ساسحا کل کے ساتحردای کیا اے وہم ہوا۔ 


مد س لکیتحریف: 

صد یٹ کک دہ ےک لوتام روات ایک ہی هی اور ایک بی لف کے سا تح وای ےکر بی 
یا عد یٹ میا نکر کے وقت سب کی ما لت تو لے ایک ہو یا ما لت ذعلیہ ایک ہو یا الم تقو اور 
فعلے رولوں ایک مول _ 


عد بیش سل مس ۱ تفا لف دکی مقا ل : 
اتات لفط مو رت ہے س ےک رسن کی ابتداء سے ا ہا مک برراوی ایک جیما تی لفظ اورعیطہ 
1 سا ع دشا فلا ن کے بمح فلا نا کے ی قال فلا کے _ 


عد بیش سل میس اتات تو ل کی شال : 
اقا قو لک صورت ےک تا م روا ایی قول تل ہو جا یں علا مقا وی نے ا سکی 
شال د سے مو سے حضرت معاد ی وہ روات ذکرفر ال مج لآپ نے ارشادفمایا: 
" انى أحبك فقل فى دبر کل صلوة آللهم أعنى على ذ كرك وشكرك 
وحسن عبادتك“ 
اس عد ی ٹکوردای کر ے وقت شور غل چرداوک اپنے شا گرد سے ایی اجک“ کہا 
کرج تھا( ر مخف |١:‏ ے٣‏ ) 
اک شا لگ ذکر کی ہ ےک تام رای یو ںکہی لک 


سمعت فلانا یقول آشهد باللّه 0 


عد ٹسل می اتا قاع لک مثال: ۱ 
ان لک صورت ہے سک تا م روا روا تک ے وق کو ایک کا کر نے پشفق ہوں 
حافظ نے ا کی مشا ل بے دک سب ک مشلاتھام رواو لول جیا ں کر بی : 
” دخلنا علی فلان فأطعمنا تمرا“ 
ا یکی شال یکی دی کرت هفرس ہیں : 
شبك بيده ابو القاسم تة وقال خلق الله الارض يوم السبت “ 


ع ړوار ا ا ا ا EAA BS‏ ات 
ال عد وروا تک ے وقت ب رھد ث اپنے شا گرد کے سا سے اپنے ات سےنشدیک 
کر اکتا 


عد“ سل میں ا تا ق تول وت لک ال : 
علام خا وکا کہ یود رت صرف ایک می دبع میش لآ کل 
روا کاقول اور وولوں میں اتفاقی م وکیا ہو چنا خی حفرت ال روا ی تک ے پں: 
لایحد العبد حلاوة الایمان حتی یومن بالقدر خیره وشره وحلوه 
ومره قال انس قبض رسول الله مَل على لحیته وقال آمنت بالقدر - 
چنا نجرا کے بعد .هد بیث روا تک تے دقت بر والا محرث اپے داڑھی پا زک بل 
کت اکآ مت بالقدر-( افیف :۳۸/۳) 


9ت ہے اث کی ہیں: 
حاف نے فیک لصف سن ری عفت ہے ا کامتن سے سا تی حا نہیں جس طرح 
فرع ہو مر فش نکی صفت ہے الہ موا ره یش نکی صفا گیل اورسن دک یگ 


۱ تاس لک اصول اورم یسل پالاولبت: 
تکس کے پار ے میں اصول بی ےک وہ ابتا سند سے انتا وسن کک ہوک نین وفے 
سر سے ال درجات تلل tx‏ ے تام سر میں ضس لین بو بی مر یسل 
بالاو لیت س ےکا سک سای سند لس کل یک ابتقداء سے حطر ت فیا ن و رک کک ہے 
تلل ے اس کے بعدنیس چنا چ حافط نے فرا اجس راو نے ا کو کی کعمل طور پہ 
لس لکیہ تھ بیا نکیااس یک 


وت الاو 


بر تحظر تعبد اہج نعمرو :لها کی عد یٹ ہے ا سک سند کے اک ڑ حم سل ے: 
۳ الراحمون یرحمهم الرحمن ارحموا من فی الأرض یر حمکم من 
فی السماء * 


وار ی ۳ یی .اسر 

روبع ال ای امش ار با على مان مراتب : آلاولی( سَمعث 
وحدئیی کم اخبرنی وقراث عَلَیه روم المَرَنَبَة انيه رم فری عَلَیْهِ 
نامع )وهي النية ( لم بان رَمی الرَابِمَڈُر تثُمٌ تازلیی( وی 
الیرم شافهیی) أَى بالاحارة هی السَاوسَة رم تب ال ) 
ی بلاج ازع وهی السَابعة ( ئم عَن وَنَحُوهَا) من الصَیغ المُحْتَملَ 
لماع والاجازة وَلِمَدم الما ع یا وهدا بل قال ود گر وروی 
قرجمہ:..... اور ( روای کی ) ادا کے الفاظ ( ج کی طرف پیل اشار هکیا 
کا ہے ) ک ےکآ ھمراحب ہیں پہلاسسحت ری ہے دوس راخ ری ادرق رات علیہ 
سے ترا قر ی علیہ وان ار ہے تھا اب ہے پانچواں نا وی سے چنا شاش 
بالا جاز ۃ ہے ساتذ ا ں کت اق بالا جا ےآ وا لگ و یرہ ہے ق ا ہے الفاظ 
جار واچاز تکا خا ل کی ر کے ہواورعدم اع کا کی اور یرقال ذکر اورروی 
کی رآے۔ 


ادالۓ حدیث کے الفا : ۱ 
عد بی ٹکو میا نکر نے کے لے بہت سے الفا طا اورگذلاف سخ قو ل ہیں حا فی نے الک کے 
مراب میں ال طط ری کیا ہے۔ 


الفاظ عد یٹ کےا تح مراب: 


( ...یلا رتم ٥‏ سمعت - حدثنی 
(r‏ .... رار : أحبرنی » قرأت عليه 
۳)... تسراعرب قرئ عليه وأنااسمع 


۳ ...... و ارت : آنبانی 
۵( ۰ پا پال مہ : ناولنی 


(0٦1‏ ...۰ امج ۳ شافهنی بالاجازة 
4( ...... الال مچ : کتب الى بالاجازة 


۸( کو 7 وال مرج : عن ۔قال۔ ذکر ۔ روی 


7 راب ہیں اب اس کے بعد حا ف ال چ رای عپا رت سے ہرایگ مرت رگ مره 
جر ددضاحت سے بیالن فر مار ہے ہیں- 
چلر F.-Y YK‏ جار HK‏ 
(3) اللَفْظان( اولان ) من صِیّغ الأداء وَمُمَا سَجِعُُ وَحَدَلییْ 
صَالِحَان «یمن سیع ود لفط الْبْخ) و تحصیص التخدیت 
ہو ور و تو ور وی اصطلاخا و لا 
فرق بَیْنَ التخییبِ والاخبار ین حي للم ة وف إِذْعَاءِ لفق بینهمَا 
کلف مدید لکن تفر نی اصطلاح صَارَ دك حَقِیْقَةَ عُرفية ققدم 
علی الحَفیقه المع هذا الإصطلاح اما شاع عِنْد الْمَسَارِقَة 
ون تبعَهم اما غاب الْمُغَارَِةقَلمُ يَستَعْمِلُوْا هدا لاضطلاح بل 
۱ با 
:.... ادا گی کے الفاظ ٹس سے بل دو تی معت اور می اس راوک کے 
و 
اصطلارج رشن کے با لور وشحروف ے اورلغوی فاظ ےکد ث اور اخیار 
کول فر کل یل روقول کے ما ین فر نکاوگوی شد ید کلف بن ےمان جب 
ی جات اصطلاع م خابت »وی لو پر یقت رل ب کی تو ا ےقیقت انو ہے 
پمقد مک دیا باو جد کہ ییا صطلا رح علا ومشرق اوران تن کے پا لت را 
ےکر علا مغرب مہ اصطلا رح اسقا لک سکر تے بل ان ند یکتم بیش څ اور 
اخبادنم ن یلا - 
رواییت ور ےش ے بل رورت کی فصیل : 
معت اور رٹ ہہ دونوں مرو کے صیغہ ہیں رال وقت استعال کے جات ہیں جب 
ماک رد نے تھاءاپے تا سے عد کا دادر جار عد یٹ مم اس کے سات کو دراد 
شریک شوت 
تر ث اوراخبار یش فرتی: 
که بیث اود اخیار س لغوی فان ےکوی فر ق لیے ان وون ےوران ن 


ع ړو اتر یت N e Rea AS‏ 
طور فر کا وکو یکی نو وه ۱ اس رتسب 

البتہاصطلاحع کے فاط کر شن ان دوفوں س فر قکر ے ہیں چرس بای 
کی ہو عد ی ٹکوقد یث کے ات نا کر تے ہیں اک صورت شل صرف حدا شک استمال 
کر ے ہیں ات رف استعا ل کر ے_ 

چوکہاصطاحع کے فاط سے فرت کر تن کے پال متعارف ے ہز ای اب بی تقیق تع زر 
من چا ہے اور ہے بات اپ لم هک «قیقت ۶ ف قیقت افو پعقرم مون ہےلہذاان 
دوقول کے د رمیا ن فرن وای صو رت دار 


تد ی کی اصطلا ر سی وکرو م ے؟ 
بل بے بات گی ذ ہک ن رانی چا ہ ےک کور فر قکی ا صطلا رح کی صرف علا وش ر قکی 
ہے بللہ لو کہا ا ے نے خلط دراک اک محد شی نکا ہب ہے چنا نامام اوذ ای ۔امام شافق۔ 
ایا مسلمءامام نسا لی ء این جم ء امام راز یکا کی مب ہے۔( شر القاری : )٩۷۵‏ 
ان کے متا ہہ یں ائل مخرب کے پال اس | صطذار] کا تھا ر کل چنا ردقد یث واخیار 
یش یک لک تے »ال یک دورس ےکی چگ استعا لک تے ر سے ہیں ۔اعام ز ہرگ ءامام 
١ا‏ تک )فیا ناو رک گی ین سعیدءاورامام یفارٹ یکا بجی ہب ہے -( شر اقاری:۷۷۷) 
FF‏ جار ہر TE...‏ یو جا 
رود حَمَع) الراوی ی آلی بصِیْعَة الأول حَمعا كان یل دنا 
لاد أو یمتا نا ول رت) هو یل على أنه سمخ (مَع عيرم 
وق يخود لو بلعشمه لکن یلو لها ی صبغ مایب 
راضرخها)آی صرح صِیّغ ادا ء فی ماع قاتلهالان لابختمل 
اواس عة ولا خدئیی قطن فی الاحازة تذییضا رها 
مَارمَبق رفی الاملای لِمَافیْه من الب والتعفظ 


فلان یا حا فآ( لانا) اس یاک دعل ہے اس کے سا( روایت 
)کول دوسا بھی شش ریک ے الب بش اوقا نون مع م کے ےکی 
اسما ل کر ے ہیں کن بہتکم۔(الفاظہ کے مرا حب میس سے ) پل ( جن معت ) 


عروالظر .. و یر ۳ 
aT‏ 
اوراس ےک یک می کا اطلاق اس اچاز ت ی موب ےج میں لیس ہو 
رتم الفاظطا یس سے مق ار کے اپار ےا رن وه ہے چو الا ء ٹل وا وکو 
اس لت او رفظ موتا ے۔ 
عیضححع ”'حدیٹا ۔ معز '“ کا مطلب : 
اس عبارت مل حاف ے بیان فر ماد ےک گر راوئی ہم کا مین استھا لک لا بل کے 
کہ صد شای معنا فا تو جح کا عیضہ لا ال با تکی وکل س ےک صد یٹ سے مس یا کل ے 
ال دوسا آ دی کی اس سا قرش یک ہے۔ 
ایض اوقا تنو نم ور کے ل بھی دک کرد یے رز رمع برا ےم 
تو را کا کور ہ پا مطل ب یں ہوگا کل ا یکا ہے مطلب ہوا کہ دہج سے روات سن س 
هام ی ے٢٥‏ ہم سورت (فون برا ےم )رشن کے ہاں بتکم استعال مون ہے۔ 


ادا ۓ عد بیث کل سب ےز یا دصر صخ : 
جا فر مار ہے شی ںکہاداۓ صد مش سول کے راہب میل سے سب سے یکل مرکا 

صخ حت راوگی کے سار عکوجا ب کر نے ل سب ےڈ یاد ر ہے ہا لت کک بے ص 
سک زیادہ مر سے اس ل ےک اس عبت میں واس کا با کل اتال ی یں اس کے 
برغلا ف جر می واس کا ا خا ل کل کا ہے ای طرح حرج ی کاش اوقات امک اچاز ت پہ 
بھی اطلا ہوتا ہے جس مس مق یس مون سب برغلا ف معت ےکر اس وا یکی صورت پہ 
الک اطلا کل بوک 
الا ء6 مقام: 

اداۓ عد یٹ کے قا مسیغوں اور الفاظمٹش سب ہے زیادہ بد اعلام ےکیونکہ بیج کے 
تفر اور را وی( گرد ) کار او رکنات پولا ل یکر سے اور ای میں نزن سے جحفظ اور 
ض زگ قوب »وتا شلا را وک لوں کک حدٹنی الشیخ املاء “ ا کا ترا ل سے 
کل ز یاد بان چ مل‌صر سمح یکا ذکر ہو۔ 


پالظر ا ا ا ا ا ہہ ہیں یں 
روالشایث ) وهو أَبریی گالرابم) وهو قَرَأتُ عَليْهِ (لِمَنْ قَرأ بيه 
على الشیُح فان جَمَم ) كان یَقُولَ اخبرتا وقرانا ‏ نؤر ین 
وه ری عليه وا اسم وغرف من هذا أن عبر رات لمن قرا 
یر ین تربار له فص يضور الخال 
7 جمہ:......او ریس الفط ( اتر فی )اس راوی تنعل چو ے لفط ( ق رآت عل ) 
یر ہے جوتھاء جن کے سان روات پڑ ھھ لی اکر وو کا سیف( وں 
ےک ہآ خم رن وق رآنا ت2 هروه نچ میں لفط ( تر علیہ وع اع )کی رح ےت اس 
سے معلوم ہو اکہ جورادئی ود تھے اس کے مق رت کج راخب کے مقاب س 
پر ےکیوککر وہ اس صصورت عال کے لے یاده‌هنا سب ے۔ 
اشمرفیءامرنق رتا ق رت علیرادرقر کی علیکا مطلب : 

اس عبارت ٹل ماف الفا اداء عد یٹ می تمسر سے لفظ ار کے بار ے فصل زر 
زاب ہیں۔ 

ملظ ار پل چو تھے لفظظق رآت عل کی رح ہے مہ لفظ ال راوک کے وش کی گر 
نذا ا روات بذک ہو- 

کن اکر ےک کے صیضہ کے ات ذک رک تے مو ے لوں انرا آنا نے پر رح کا 
مین پا نچ یں لففاقر علیہ دا اک کی ط رر ہے اود ران راویوں کے لے شع کیاکیا ےک 
جن یش سے ایک راو ی نے جن کے مات ردایت بھی مواور با روا نے نمی ےکن ہو 


رت عل یدگ نجیر 
جس راو نے بذ ات خو کے سا روات بذک ہوادردوسروں ےک ہوا ی راوگی 
کے لے تر بی کروه الب اخمرنا کے مقاب رت عل کج را خقارکر لآ کے روات 
یا نکر ےکی وق اء تک را حت جس رق بت علیہ کے اف یش ہے ات مرا حت ار 
عل گیل ہے لد اا ےق رات علیہک اج افیا رک - 
جا KE Kr... KK‏ 
جو لوااعل با E‏ اتا 


عرجالنظر می PQ 0... OO O‏ 
الى ذلك من أل الْمِرَاق وَقَدا ند نکاز امام ماب یرو ین 
مین له في ذلك عتی ابص فرح علی السمَاعج 
من لفط لیخ ودب جمع جَمْبنهم البرک كاه فی رال 
يجو عَیْ جماعة ین لو إلى أ السَمَاع من لفط لیخ 
له فی الصّح وَالمَوّةٍ سَواءٌ - والله اعلم 
هر شی و سرو نش سے ایک صورت ترآ لاخ بھی 
ادرال را می جس نے ا کا الگا رکیا ہے ا کاقول ی( ان ) ہے 
اورا می ع یی یں امام ما لک دخ رہ نے اس بارے می اس پرخ ت گی رکی ہے یہاں 
کی کان لت نے اتقامبالضدکردیاکہراسے جن سے 2-۱ دا ست سار 
کی درک ے اور( حش نکی ) ایک بزی مما عت جس می امام بغار یکی 
ہیں انہوں نے اپ فارگ کے شرو یں علا مکی ھا عت ےق کیا ے اس 
ط ر فی س کہ ہر اۓ راست ےسواحخ اور رات علیر دوفو کت رتوت مل 
ماوق ٢ل‏ ۔ 


ر اتکی اج اورا لع را کا کک : ۔ 

مور علماء ات کے ت ول تصول عر ہکا ریسم ہ ےکمداوی چا کے 
خودروایت پڑ ھھ اور او سےا سے سے ا کو اکٹ رشن عرش 2ب کید اس یس 
راوگ روا تاکسا عم کرتا ے۔ 

اش ملا عراقی نے اس صور کول مر نے سے اکا کیا ےکر ان کے اس ا کار ے 
امام ما لک یرہ کت تی کی ے باتش علاء نے فو ان کے اا کو دک ھکر رآ ت لی اخ 
سس تس اس قرم لن کیا کہا (قرأت علی الشیخ )پگ 2 د ییک ۔ 

امام قاری وغی رو حرا ت رش نکا مھ ہب ہہ س کت رآ تی اج اورسماع وولو ں کت 
اورقوت یں پا کل ماک ہیں ان ٹل ےک دوسرے پرتز بی حاص٥‏ لیس چنا نامام بغا رک 
نے اب کاب قفا ری کے شورع (یش کاب اعم شا لول فر مایا ہے۔ 

KKK KK‏ جار ا یہر 


روالانباء ) من بل ال و اضطلاح الْمُتَقَدمِیْنَ ( بِمَعُلی الاغعبار لا 
فی مرف این هو للاحَارة کمن لها فى عرف المتأحرین 
یلوجارة روَعَنْمَتَة الْمعَاصر مَحْملة على السمّاع ) بحلاف عَیر 
لْمُعَاصِر فانها تون مُرسلة و مُنْقَطِعَة فعرّط خملها علی السمَاع 
بوت الْمُعَاصَرَة ( الا ین ملس ) نها لیسث مَحْمُولة على الما ع 
(وَقیل یفرط فی خمل عَنْعَنَة المْعَاصرِ علی الما ع بوت 
لِقَائِهمًَا ) ی السَيّخ والراوق عَنهُ ‏ ولو مره رَاجده لِيَحْصُل الام 
فی اقی e‏ کر وت المُختاز) تب 

پود وا و یو و 
ویو مہو ےوک 
کے ہاں اجازت کے لئ ( ”سمل ) ہے اور مھا ص رکا عندیہسماع ول ہو ے 
لاف یروا صر کک وہ مکی موتا ے با شع موتا ہے ال تسا رو لکر نے 
کے 2 موا رر کا جوت شرط سوا ۓ حع رس و 
ادر موا صر نع ہکوسما رع پولک کے لے ( یی )کہا گیا ےک ہن اور 
شماگرددوفول کے ما ین بلا قا تکا وت شرط ہے اگ ایک کی مرح ہو کہ باق 
نحم رل ی ہو سے سےتفوظار ہے اوریی بن بر نی اورابام بر وخیرہ کے نقاد 
کی رد یکر کے مو سے ( مج کہا یاس ےکہ ای ہب قار ے ۔ 


2 

اس عبارت مل حا فا ء او رتح کے بار ے می تفیل زکرفر مار سے یں ۔ 
ابا ءکلغوی اورا صطلا یآ ریف : 

یعفلفوی اط سے اخبار کے میس ےی لت میں ج وکن ات رف کے اور انر کے 
وی ن ابا ف ادراب اک ہے۔ 

اصطلا کی لیا ا ےکی حعفزارت تز لن کے نز ویک یا خبار نم لد اجهال اخ ری 


عرجلنظر چرس ی EO SS‏ 
ترتع لکا ا ع ے وہاں اما فی او رگ استعا گر کح ہیں - 

رھ خی کی اصطلاں یں اہ نکی ط را چازت کے لے مل بر ے اکا وج 
ساسا بیا نکیاگیا- 

چنا نف شن اور متاخ مین کے درمیا ن کا علبقہ اس انا مکو بیش اجات کے سا تح مقید 
کر کے یا نکرت نان جب ابا را می ریا پچ رح رات متا خر ین نے انس قیرکو 
ذکرکر ن ےکی ضرورت بیو کی ۔ 


تور اصطا کیب : 
لفن فلا نکن فلان کے ذر تہ دوا کر _ ےکوحنعیہ کج ہیں اور جو عد یٹ امین 
روا تک جا ۓ ا یلعد یٹ نکہا جا جا ے بے عن فلان عن فلان عن فلان۔ 


عنع ےکا م 
تور روشطول ا وا 


البتعلام بفاری نے اس میں تی ری شر کا بھی اضا کیا س ےک دادگی اورعروی ع کی 
طا قا ت کی ضروریطور رایت مو چا ے ایک بی عرتبہطاتقات موی ہو ۔ امام بفا ری نے تور 
میس شرط لا قات اس لئ ای کو مرک لی ہونے سےکفو ظط ر »اف تچ رن گی 
جع مھ پٹ اور امام ار یک اتا اک -2 ہوۓ اس مسب( می ش رط طا قات )کو تار اور 
پند یرەآراردیاے۔ ۱ 

رام ےا کوب اکل تل یکی اورا یکنا کلم کے عقد مم اس شرط ہ 
بہت سے ردکیا ۔ 

علاء نے ان rg E‏ برصورت وکر فر می سب کم اصلاً تعر کے لئے دوہی 
شرٹیس ہیں جو اوی کور موق ہیں الب امام بغار یکی کور ہ مرک شرط ملا قات صرف اپ 
ای قاری شل عد یث کے اتاب اود زک رک نے کے باد سے غل ےک وہ ال کناب 


ٹس اس داو کا حتعیہ ذکرکر کے ہیں + لک ایغ مروی عد سے کم از ) ایک م ریہ ملاتا نش 
مایت ہوا کے علاوه فی ف کت هد بیش کے ے اور اتصال سند کے لے امام بغاری اس 
ورد یہی قر ارد ین -والث رام پا لصواب 
HH E YE‏ 

راتفر الْمْسَاقَهَة یی لوجازة المتلفط بها) توا رى گذا 

۔. فی الِحَازة کت بها ) هو مود فی عبَارة کی ین 

ین انیب إل الشاب 0 

کیب یه بالاجارة قط 

تر جمہ:.....اورمشا ن کا اطلاقی ز پا اجازت پ بجاز ہوتاے اوراسی طر حتف یک 

اجازت کی٤‏ اور یبا متا بی نکی عبارات ٹل موجودے قلا ف تفر نیک وہ 

مشا ن ہکا اطلاقی اس صورت کر ے ہیں جس صورت و و اکر رک طرفل 

عد یٹ کک خواہ ا کیا رای تک اے اچا زت دس یا ضددے گرا لورت 

ین جس خیش ضرف اجاز وخ 


مشا فی رک لشوی اورا صطلا یتح ریف : 

مشا تہ ےاغو ی کن من درم ہگ وک نا“ ے ۔ ا صطلا ح محر رن یں مشا نای صو رر کو 
کچ ہیں جس میس نے اتی زان ےک عد ی کی اجات دی ے۔ 
اماز ت کےا رکان: 

اجازت کےکل چارارکان ہیں 

ا( (اجاز تد ۓ واا) 

٣)......الہازل‏ (ج ںسکواجازت دی جاۓ ) 

۳).....الجازب۔د ( 7ں روای کی اجازت دک جاۓ ) 

۳... لفظاجازہ ( ہس صیضسےاجاز ت دک جاۓ ) 

ملام می نے ذکرکیا کہ پا وا رک ن قوس ےک از زایا ہا تکوقجو لک یکر ے 


عرجلنظر ES‏ ا POS O‏ 
کر چو ر تن کے ن دیف اجازت کے صرف چا ری ارکان ہیں )قو ل کر نا ارکان اجاز ت 
میس شام یں ۔(شرں القاری:۷) 
محر وی اورا صطلا یآ ریف : 
ایکا لغو ی یکنا ے ح رین متاخ می نکی اصطلاع میس مرکا بہ اس صور یکو کچ ہیں 
جس میں ش کسی راو یکو انی سند سکول ردایت جیا نگ ےکی اجا ز تک ھک د یر ے چا سے 
حدیٹللوگردےیاددے۔ 
ابر قزم ن کی اصطلارح می مکاح اس صور کو کے ہی ںک ہج صد ی شک ےکر کر و 
(راوی) تک یڑ وت خواہ اسے روا تک رن ےکا اجازت دب یا دب یرلاگ صرف 
اا ود 2 وا لی صور کو ما نکی کے _ 
چو لہ از ...چا ار جا جار 
( وَاشْمَرَطٌوْا فی صِحة الرَوَايّة یہ ( المُتَاولَةاِقُيرَانَھَا بالاذن بالرواية 
رمی) ةحصل هذا الشرط رف آنواع الاحازق لِم نها ین 
یبن والکخصیص وَصورتها أن یدق السْیْخ اضله او مَاقام مَقَامَه 
طالب أو بحضُر الاب أصل السّیٔخ ول فى ورن هنم 
رای عن فلان زو عنی وَشرطه يا أُن يته مه ما مك 
و الارو یل هوالعب ولا رن او اسرد فى الخال ل 
یره لکن لها ريده مره على الاحَارة مه ومی أن بُجِيْرَ 
لیم برِوَامَة کناب مُعَيْن وَبْعَیْنْ لَه كَْفيّة انیم له وَإذَا خلت 
لماو عن ان لمیر بها ند لحَه وحن مارا إلى 
ائ متاو اه يقم ام إرْسَالِه یه بالکتاب من بل إلى بَليٍ وق 
دعب إلى صحة الرَايَة بالكَتَابَة لمحَردة حَمَاعَة من الائِمة ولو لم 
مر بالاٌن بالرَوَاية انهم اکتفوا فی ذلِك بِالْقرِينَة وم يهر یی 
رق وق ین مناوله اسب الکناب بدطایب وین راهب 
بالکتاب مِنْ مَوٴضِع إلى حر دا خلا كل نما عن الإذُن 
ترجم:.... متاو لک صورت شل ردایت کے ہونے کے ےن نے بشرط 


عروالظر ESE GEA ASE‏ کی رن 
ال سپ ہک دات کے ساگ ا چا ز ت مقر ن #واور جب یط ال ہو چا ےو 
پھر اهاز تک تام اقام بر بلند کوک اس نین او ریش ( ہو ) سے 
اورا لک صورت ہے س ےک اسل ت یا تام متا ےشکر وکود ے یا گر وا سل 
۳ ض رر و ےاوردونوں صورتڑں سخ ي هک هد اروا نلا نفا روق اور 
ا یکی شرط ہے س کہ وہ ا لگوال پقد رت د‌قواها کک اک یاعار یت کے طور 
بتاک وہ الف لک کے اوراس ADS‏ امک وراک( ہے 
مورت پ کہ )دیرف راوا یں ےل تو راک ارضحیت ملا پر موی ین( پچھر 
کی )اجا زت يد پرا ےفضیلت حاصل ے ادرو ہے ےک الک کناب 
گی اچازت دے اور ساتھ ساتھ روای تک یکیغیت و یرہ یں موا وش یکر ے اور 
جب مناولرازن تال »ولا وہ مور کے نز ویک خی مجر سب جن رات نے 
اس کا افیا رکیا ے وه اس طرف مائل ہو سے ہی ںکہ ا لک مناولہ ایک شہرے 
دوس ر ےش رکا ب کیہ کے تام مقا م ے ۔اورا تم کی جا عت اس طر فئی 
ہ ےک یگ تا بک صورت میس روا ےکرک ہے اگ چای کے اگ اچازت 
مقر ن نہ ہوگویا ک انہوں E‏ بے اکا ءکیا ہے اور ر ےت ری جن کے 
ارو کاب دیے غل اورا لک طرف ایک شرت دوس رے شرم کا ب مج 
کول فر کل ج بک وہ دولوں اجات ے فال ہموں _ 
رج 
اس عہارت میں حا فمن ول تل قتفصیل زکرفر مار ے ہیں- 
مناولہ: 
متاو ہکی دوصورٹس مون میں ۔ ایک صورت ہے ےکہ جن ابنا این با ا کل راو یکو 
دے اور دو سرک سورت ب ےک راو ۲9 ۷ جو ی موجوو اهاز سر 
ہا لکمردے۔ 
ان دوفو ں ورت ں میں ی اس راو وش اگر دک ہے کک میں الا بکوفلال یه 
روا ی تگرج ہوں »اور لاپ سند سےا کور وای کر ےکی اهاز ت دیتا ہول“_ 


اقفر کل مناولہ سار اجاز رت 
له ان کورهپالاصورت سب سے اع اورا ر ے۔ 
من ولیٹرا : 

امناو لک دوش یں: 

)...کی شر ورگ جب راو کک وکاپ د ےق اس وشت اس سے ہی کی کم مرکا 
روات فلال غ سے ہنم ا لے سے پیا نکرو۔ 


ٌُ مل ووم سورت سب ام 


5 اک وہ ا سےا با یکی کر ا لوج لٹ 

لا ارغ نے وون دیرف را وای نے لیا تو ال‌صورت میں مناو کی صورت اع اور 
ار نہیں لیکن رک تھا حیدشین ےد یب اجازت دپ اسل موی ۔ 
اجاز ت‌معید: ۱ 

۱ ا ب سوال ی ےکہاجازت محوندکیکیاصورت بو ے؟ 

ایکا جاب ہے س ک راچا ت مع ہک صورت ےکی ا لباب( جوا 
وت وپ اں مو جورت ہو ) کے بارے میں راوی( اکر د )سے کے کہ ”ا سکتا بکومیری طرف 
سے روا تک گیل اجازت ہے 'ادداسل کے مات وو روای تک یکیقیت کے پارے 
خ بھی اسآ گا ءکرد مشلا ها کا بک روایت ال فلاں تست اجاز؟ٗ ے یا سا 
سے یا مرا ہےء جوصور ت گیا ہوا سے یا کرد ے۔ 
بلااچاز ت ماو لکاگ م: 

ہو رر شن اور ہا مک غ ہب ہہ ےک اکر متاولہ کے سات جات نہ موتو رال متاولہ 
رت ہے لہ ا اس مناولہ رولیت بیا نکر ال چنا تہ لا مہ ین صلا کیا 
ک بلا جات مناولہ اجاز ت کل ہے اس ےڈ ر رایت یا نکر نا جات کل چنا نچ 
ور فقهام اور اصحاب اصول نے ان جر تن رک تقی رگ ججوں بلاجازت متاو کی 
مورت غل بیاان روا وچا کہا سے ۔(علو مار یٹ :۱۷۹) ۱ 


عرڈالنظر پوھد چو وھ وی ہو ہو ہو ہر 
ات جن حط رات مد ٹین نے بل اجا زت متا ولک ہا کہا سے اتہوں نے ال لول کاب 
عد ہش تو ب کے درخ مس میس مھا ہے ج ھکما ب یا عد یٹ یش سے دور سے رک طرف 
رواک جال ہے ۔ 
اک ڑچ رشن نے ابی بلا اهاز تکتاب دهد ٹک دوا تک کہا سے اورا ے جا مقار 
دیا ہے اگ چرال کے ساتھ اپا زت تل نہ ہو ےحرات جوا زک بی دعل بیا نکر ے ہی لک 
ا کا بکو ا یکی طرف روا تک نااجاز تکا قر ید ےہ اال‌صورت میں صرا حا اجا زر تک 
ضرورت یل _ 
عافظ نے فر ایک بش راو یک ل نم دے اوراجازت ترد ےاوراک ر ددرت 
شرع ا سک طر فکتاب روا نکر ے اورا کی کے سات اجا زت نہک نو می رے نز کیک ان 
دونوں کوت فر نہیں ے ن وونوں صورتڑں مل روات یا نکر نا ہا کوک کناب 
دینا ود ال پات کا رید ا سے آکے روایات یا ن کرو ورن لو صرف کباب 
( لا اجازت )بر کر نک اکوئی مطلب اور فا وتیل سے ۔ 
TE TE‏ بب بوڈ 
رو کدّا اشْترَطوا ادن فی الْوَِحَادَة) وهی أن یَحد بط یعرف كايِبَة 
7 0 
لا ون کان له من رد بالرواية عَنه وال فوم ذلك فَلَطُوْا 
رچ ورای رن رشن نے و جاد وش کی اجاز تک ش رط ال ےاوروہ 
ہے س کہ و کول الیماخط پا سے ی کےکا بکودہ بات مو اور پر لول کک 
وچرت بط فلا ن اور ای میں کش ار کے اطلا ق کال الہ اکر ات 
ال سے روات کی اجاز ت ہو( و پر ورست سے )او رتش حضرات نے ات 
ملاس سوانہوں نے خل کا ہے۔ 
وچاد هک غو اوراصطلا تی تحرف : 
لوک لیا ظا سے وجاد٤م‏ کت که یں ہے ء بیو دی رکا مص در ے صد ر وچادہ ال 
عرب کے پال با لق تک بلمہ اہ کم نے ایک فا ی کے لئے اسے وش کیا ہے۔ 
اصطلاب یش وجاده ال ور کو کت ہیں نس میں راو یکوک معلوم وشمپور محر کی 


عرڈانظر 90 "و 
اب با یه ادیش اس کے خط ال چا ا 


رواییت وچاد ہکا طر لقہ: 

وچاد هی صورت مل تام ح رشن نے روات جیا نکر ن ےکا برع یقہ 2ک کیا س کے ر اوی 
(واچد )لول ردایت بیان کر ” وجدت بخط فلان“ یل -فلال کے خط شس لول 
تھا ہوا پایا اش کے بدا لکل سند بیان ے-یالال یا کے قسرات بط 
فلان یالوال میا ن گے فی کتاب فلان بخطہ قال حدثنا ......الخ یاا ط ران 
کر ے وجدت بخط فلان عن ..... الخ ۔ ۱ 

چنا تیاس وچاد هگ صورت میں ار یا ع کے الفاظ کے ساتھ ردایت بیا نکر ب کل 
AS EL 0‏ کے ر اج روات یا نگا 
ال سے بت بد یی رز دمو سے ۔ 


وچاد هگم : 
وچاد ہ کے زر اروا کردہ عد یٹ اوح موی یا مر موی ءالبتراس تلا تصا لکا 
بھی مشاب ای ا سے کمن جن ح رشن نے اپ یک شلک حد یٹ وک کر نے 
کش رط گال ی موان کے وماد ہ سے ردایت بیا نک نا درس یں -(شر القاری:۷۸۵) 
Y‏ جار لہ لہ ..... EH TK TK‏ 

رق) دا «لْرَصيَة بالکتاب ) وی أ يُوْصى عند مرت أو سفره 

یش خص مُعیس بأصله أو باضوله مق ال قوم من اة لین 

یور له أن یروق یلك الأول نه بِمُجَرّدِ هذِم الَوَصِیَة یی ذلك 

لحُمْھُوْرْ لا اد کان له منه إِحَارَۃً 

تر چ ......اور اک طرر وصیت تات ے اور دہ بے ےک وت پاسفر کے 

وقت سی تن سکواپنے ایک اص لک یک اصو لکی وی کر ے حت می نکی 

ایک اعت ها کرال کے لے چا ےک دوش وصی تک وجہ ے وہ 

ا صو ل اس سے روا تک ےلان چمپور نے ا لک کیا ےگ ےکا کوس 

سے اجازت ما کل ہو۔ ۱ 


وت ب الا بک صورت : 


وت پالکنا بک صورت یہ ہ ےک کوک مد ٹیا رادک کے پار ے می بوت وقا ت یا بت 
روص تک س ےک می رک یکناب یال کب ا وو یرگ جا یت الاب کے ول - 


وت بابک : 


وصیت باب سے اس داد کے لے ردایت میا نکر ا ام ہے یال ال کے پارے 


مل کد شی نکا ا خلا ف ے۔ 


عا قز ن کا مھ ہب ہے کرک وصیت اکتا بک وجہ سے ال کے ے روا یت میا نک 


جا لاس کوگ رال وت غل ای کگوتراجاز ت مو جود ے بل یرف اورمنا ولک ر ےن 


دوریم ےگ وصیبت با ناب ےآ کے روایت میا نک دنا چا کہا ےکرک 
کش وصیت میس نت اجما ی تقد ہے سے درل »اور نہ اس وت میں راح اعلام ج 
کزایے لہ ال وعصیت اکتا ب سے رواعت بیا نکر ]پل نا ہا ۶ ے پال اگر وت کے 


سا روا تک اجاز تک ہو رانک دعییت سے روا تک تا جا ے_ 


۲ کم ما چم ...... وو وت 

رو كذ اشْمَرَطُوْا الاذن بِالرَوَايَة رفی لاغلام) وُو أن ات 
أَعد الطلبّة بائیی رو الْکتاب الفلانی عَنْ فلان فاد کان له منه 
حازة عير ( ولا ا عبر ذلك كالإحَازۃ لقع فی المَحَاز لها 
فی الْمَعاز به کأَذْيَقُوْلَ جر لِعَمِیٔع سین او لمن درك 
یا أو لال الافلیم انى أو هل بل اه رو فرب إلى 
الصَحة قرب اونجضار 

2 جمہ:.... ابی ط رح اعلام س( کی )روات کے لئے اجاز تشرط ے اوراعلام 
ہے ےک ہش کش ادا بتا د ےک ٹل فلا کناب فلال سے روا تکرتاہول 
اراس ال سے احجازت ها موتو بی مجر سے ور ترا کا و اقا رل عا م 
اهاز تک رح صا حب اچاز بت کے ےے هد بیش کے اوه کے احبزت 
لجمیم المسلمین آحزت لمن آدرك حیاتی يإأحزت لاهل الاقلیم 


عرچالظر 0700000000000000 مو 


الفلانى إأحزت لأهل البلدة الفلانية اور یآ خر وا یصورت فرب اتصارل 
وچ کت ادرب ے۔ 


اعلام تیف : 
اعلا مکی صورت هد کم اک ش اگ دکواس با تک خرس ےک فلا لتتاب 
لامش سے دای تکرت ہو ا سرد کواعلا م کچ ہیں ها لاعلا م کن بیس اخیار کے ہے 


وک 

اکر اعلام کے مات ای پا نے ا یکی روا تک اجاز تک دک ہو مر ۳۹ 
نی اس ےرام کر تاا ے۔ 

انت اگرصرف اعلام »وال کے سا اهاز ت تہ ہو9 راب اعلام ہے رواعت بیا نکر 
جا ے یل ؟ تاس بارے یں ر نکااخلاف ے۔ 

اک ڑ م تن فقها ,لا این © این الصباںغٔ وقیر کا ھجب ہے س کہ ایک صورت یں 
روا تکرن چا ے۔ 

الہ نف علا کا پچ مہب یہ ےکہ بلا از کل اعلام سے ردایت ہیا نکر کل چام 
نہیں ےجنس ط رح اجازت عا مکی ورت کل ر وای یکر نا جا کل ۔( شر القاری:ے۸٥)‏ 
اجازت مامر‌صورت: 

اجات عا ہک صورت ی س کاک کاک اج سین ( س نے تام 
ملمافو ںکواجازت وک )یلو کہ اک آجز تان ادرک جیا“( میں نے میری ذ مگ پا 
میں نے اسے اجازت دک ) با یو لک کہ اج ت لآ تیم الفلا ی (ش نے فلاں کل کے 
با شنزو ںکواجازت دک )یال لک کج ت( لالج الفلامیۃ ( مل فلا نش کے پاشخروں 
کواجازت وک )تو ا یسور تکواجازت عام هکیت بل - 
اجازت عام : 


اجازت عامہ سے دوا تک نے کے پاد ے میلح تی نک ا مب ہے - کی ناماما 


کر سو سر ی PARI A SRA‏ 
س وا مس ان افرادکا حصا رم اق سے - 
الا رکوگی ای صورت ہو جو اکر چہ بظا ہر عام »ون ا ےکی اه وعف کے سار 
مق نآرد ےک لک وجہ ے اما راف راون ہو چا ےو یرای صورت میں اجاز ت عامہ 
ےآ کے روات یا نکر نا جات ے تب لول بے : 
اجزت لأهل البلدة الفلانية 
احزت لمن هو الآن من طلبة العلم ببلدة فلانیة 
احزت لمن قرأ علی قبل هذا 
بش لیس ب کل اىی طرں ہیں جس رع ا ت لا ولا دفلاں یا ج ت لاخ ۃ فلان ےن 
ان صورتڑں میں اما راف راو ےکن مو هگ وجہ سے روات یا نکر نا چا ۶ے ۔ 
NTE)‏ 
HHH HK HHH‏ 
رو) گذا الاحَارة رللمخهوّل ) کا یَقَوْلَ مُبْهَمَا أو مُهْمَا ری گذا 
اجره رلِمَعدُوْم »ان یل جرت لِمَىْ سید ِفلان وَقَد فيلإ 
ولفرَبْ عنم ادص که شا و کذیك الاحَازة موود أو عدوم 
لت بمَیية لیر اد یرل حَرث لَك إن شَاءَ فد و أحَزث لِمَنْ 
شاء لاد »لا أن يمول جر لك و شث وَهذا ( على الاصح فی 
حَمِیٔع ذلك ) 
تر چم .....ای طررج ول کے لے اجازت( 6 ) ے شا دهم سے یا 
کل هاوراک‌طررج معدوم کے لے اجازت ے شا دہ ہے ہے کے ابجزات 
ین سیولد لغلا ن اور رم( بھی )کہ گیا س ےک اکر و مو جود پر( معدو مکا) خلف 
کر ےج چاو رای طرح موجود کے لے یا معدوم کے لے ا جات ( کا 
گم ) ہے ج بکروه یرک یت ملق ولا لوں کې جات کک ان شاء 
فلا ن یا اجز ت لن شاء فلا ن لول کہ اج ت کک الن شک رم ان تام 
صورئژل می اع ول کے مطا یق ہے۔ 


اهاز ت ییول گ‌صوررت: 

اپا زت ولگ صورت ہے ےک جو لآ و لوروا تک اجاز ت دء ا بول احاد یف 
ہو لکنا بک کی ( من ہن کواجازت د ےلو یات ھول سے ما جات باع ن 
انس موی ال شال می را وی( ن از ل ) بول ہے ۱ج تک ٹین مسوعالی اس 
شال ں اعادبیث(مماز ہہ ) ئجبول ہیں ۔(ش رح القاری:۸۹٥)‏ 

مرا ذک کیا ےک اگ رج و ایی نام ذکرکر ےجس نام اشفا بت ہوں 
اوران تی د موق ہو یاو هک ان کنا بکا ٹا م کال نام سے + تکتب بو لآ یی 
ول مشلا اگم جن الہ اورا نام راو یکا ہوں یا شا اج ت لک ان تر و یکی 
کاب اسن اس می ںکتاب طن ھول سے( یش :۲۰۳) 


اجا زت بو لک ا 
ال زر لچ رواے تک اھا مج لکد اجازت غ رمحت ر 2 


اماز تمدخ کیصورت : 
اچاز ت معدو مک صورت ےا کی نے کے بارے ڈُل اجازت د لک 
ابی کک و جودجھی ت ہو یرو محر وم »وت یج رت ییول لفلا لن- 


اهاز ت محر وکا گم : ۱ 

علامہ کن صلاع نےککھا ‏ کر قول مگ ےکہ راچا ت معدوم ال نیرمت 
کم جات پل اخیارکی طرع ہے لب اجس ط ررح معددم کے لئے اخیار اش ای ۱ 
رح اجاز ت کی جا ڑل ے۔ 

70 دوک تم ون زر ی ریم 
مو چوو معطو کر کےکہا ما یوں اج کک ون سیل ہلک و ا یصو ر کوعلا مہہ ھت ہے 
جات کہا ےگ حاف این رر ا سے ہی ںک ای لگ بی ہ تست یل ۔ 


اجازت معن یکاصورت یہ کر کیت مو چو کے لے پاک ی معدوم کے لے 
اجات دلگ ال نے اجاز تک دوسر ےک ممیت وچ ہت مق کر وی شلا ا جات کک 
ان شاءفلان اج ت لن یول ران شاءز یو - 


اماز تنعل یکا م: 
ات بھی مت الہ مت کف اگر ان شش تکہا ےر ہا ر وال 
صورت یں اما رع رگن ہے_ 
HEH‏ کو وبون وت 
ود حور لررَايَة نی حَمِیٔع ذلك سوی المَحْهُولِ مالم ين مراد 
ضا ابر بای مه وروی بالجازة العامة عَدْعٌ كور عَمَعهُمْ 
َعْض الحْفاظ فی کتاب وَرَتْهُمْ على حرف الْمُعُْحم رتهم و کل 
ذلك کم ال اب الصلاح تَوسع عير مَرّضِيٍ لاد الِاحَارَۃ الحَاصةً 
الْمُعِيتَةَ تلف فی صحتها(خیلافا قویا عند الْقدمَاءِ ود العمل 
مر على غیبارها عند الم خرن فهی دود السماع بالتاق 
کیت رد۱ حصل فیها الاسیرسَال امد کور قانها تدا ضُعْفَا لکنها 
فی الْمْلَةَ عَْرمِن إِمرَاد الحَدِیٔثِ معا له عم وَإلی هنا ای 
الکلام فی ام صِیّغ ال 2 
ر مد ول علا و وتا مصورتڑں میں خطیب نے روا لوچا تقر اردیاے 
اورال نے مشار کی با عت ےآ کیا سے اوقد اء( میں سے ابوک نداد 
اورگیدالٹہ ہن مندہ )نے معدو مکی اچاز ہوا ستھا ل کیا ے او را وکر بی نخیشہ نے 
اہاز ا یکواتعا ل کیا ہے اور عا م از تکیسا کا بہت سار ےک رشن نے 
روا کیا ےش تفا نے ان( کےت ک٥‏ )کو ای کناب تلع کیا سے اوران 
کیک تک وجہ سے انیس و فک تیب پر مر بکیا ہے یہ سب پائ ابن 


KAP 000 تہ‎ 


صلا کے بقول خر پم یدرو وسیعات زں گوگ اچاز ت نام محی کی کت ٹل 
قد ماءکاشد بد اختلاف ہے اگ چ متاخ مین کے نہب کے مطا بی ال تپ 
تال چاری ہے بل ہے بالاناقی اع ےکم ے میں جب اس شش نلاده 
سیعات عاصل ہو نگ تو کی حال بر ت یق ضعف یک اضاذ ہوگا بہرعال 
معل ط ریت مد یٹ جیا نکر نے سے یر الہ تر سے وا اگم اور ہاں 
ادا گی کے الا کی اقام کیا نگل ہوگیا- 


اقام کرک موم : 
عاذت ےر ای کیب بقدادی نے اما ت پول( روم اراد ( Ûso‏ 
ول سے روا ی تکو چا قر اردیا ہے اک جوا زکوایپوں نے | چندمشا ےکی لکیا ہے 


اجاز ت مرو کن مرش نے استما لکیا؟ 
حزن مس ے ابوبگربن داو دعا ف اور اش بن مندہ نے اجا ت معدو مکوا سا لکیا 
ےتا ہم وتا مس اسے د وکیا ے۔ 


اجازت ما مرن ۓاعقوا لیا 
رش نک کر جما عت نے اجازت عامہ کسام روات ما نکی ے چنا ےش اط 
نےکر تک وج ےا نکو ایک قل تا ب شی حرو فک تیب کیا ہے۔ 


علا مہاب صلا کی را گۓگرائی: 

الت علامہ بن ال لا کا ھب یہ ےکہاجازت شل اس قزر زی و هاش اور و سن کا 
تول غر ند ید و ےہ ۃ اا انش درس ت لوگ بلا آت خا کمن اجازت کته 
روایت غل حطرات حت جن کے ہاں بب ت خت اختلاف تھا اس اختلا فک وج ے ا کا 
رما کے مق بلہ یش بتکم وکیا ج ب کش اخنلا فک وجہ سے مر ہک گیا فو پرا یق ر 
وان اورت کی وجہ سے اجاز تکاکنناز یاد وم رجگ ہوگا؟ 

سی ایک روا کوبطر ات حصل پا بطر ب 0 بیا نکرنے سے بت بھی ہپ کہ اسے 


ړو لطر سس ہس سک دی یس ری کرت یف CRR‏ 


ال اجازت کے سا تھ بیا نآ دیا اس - 
KK‏ ...لا بل جج 

و الرُوَدۂُ ان اتف اسمَاء هم وا آبَائِھمْ فَصَاعِدا و احتلَمك 
شاه شواع ای فی نان مهم آکتر و ذلك را ات الّان 
فصان دا فى له والششیه نمی المْر م ال يقال له ر الیل 
والْمُمُترق) وَفَائِدَهُ مَعْرِقَيه ححشَيَة أن بصن الشخصضان شخضا وّاحذا 
کییرا رها عکس مَانلم من التو ع لمسَمی بالْمُهُمَل لاه بخشی مه 
ان ين الاڈ تین وهذا بخشی أن بسن الالنان وَاجدا۔ 
ماگ روا کے میا کے الہ کے تال سے؟ گے سنا مایب 
کے وین میت للف ہوں خواه ما ثیبت ووراو لوں کے درمیا ن ہو یا ال 
سے زاھ کے درمیان اور ای طرر وو با دو ے زار راو یکت او رنہ یں 
سا مو ںو اموتن وتفرق ی ہیں روخعیتو لک رال بے کفوط ہنا 
ال کاسا خی تکو پا ن کا فده ے اسم س خطیب نے اسیک ماو یکتا رای 
م نے اکتا بک جک اورا پل مورک ا ضا فہکیا ہے ریشم لش 
گمز ری ول مگ کال کرد ال بی قوف تھاکہ ای ککودو ہے لیا جا سے 
اود ہا بی قوف ےک دواو ایی تلا ہا سے - 


روا کا یان: 


یہاں سے حافت راویوں ےق اا م اور ا نکی اقام بیان فرمارے ہی ںک رض 
اوقت دوا ۃ ٹل نام ہو سک وج سے اشتباہ پیر ہو چا ا ہے انس اعقبار ے رواخ یکل تن 


ہیں ہیں: 


ال عبات می کی یکا زج 


جن وتفرل اصطا ‌آعریف؛ 

شن وتفرق ان روا کہا ات تن کے اپینے نام اوران کے الد کے تام لئ اور 
ہو مش کیہاں 9 م۶ 09 سی روا کو نا مکی 
ایتک وج اورزوات س اتا فک وج سے تقر کہا جات ے ۔ 


خن ونر ی‌صورش: 
من تن کل سرت 


ہیں حا ےس نت فوخ وچ کت ر 
بم ری ہیں جک کر مہ کے اکر و ہیں....... چو رر اض تن ی ہیں ا یی لب کے 
قاضی ہیں..... الق ال ملک ہیں۔ 

۴)..... روا » والد ء اوردادا تک نام یال ہوں مشلا مھ ین قوب ن لوسف ہے 
کو موس مو نت زل » با اب 
 !"! 87 ۱‏ 9<" ۱ 


۱ ی 
e‏ 


۰۵م" مو یو کہ 
کم یح شین کے ہا یف ے۔ 
)...کیت اورولر یت ٹل ہرم یں ہر 


راو لک ام ان س 2و والرستان عو ۳7 
ردک ےجب چا رون 2 یث ے۔ 


ن وم لمحرفتکاف تده: 

ا حرف تکا فده هک دو نام ہی مکنیت د ہم بت راوی جواقیقرس شس لیر , 
ده تک ایک ی سور را کل ری ان درد هی جانا بان اه ان 
دواو ای یشو رد ںکیا چا تا_ 


نت وتز سے تلق ت ہیف : 

الم یش خیب بقدادئی نے اکتا بھی سے ال کا م دجام اج 
وات بت ہے یہاچ نک ازع ی ناب ہے سکن اف فا 2 کال کے باو جود 
اس سے پا شیا متروک ہ وگ یں اور اک خی اتد + نکی ضر ور نمی تھی ای 
وت ع 1 الل لاب ی شک ہے اور ساتم مات مگیول او رکو بیو لیکو ورار2 
ہو ئے ایکا فو اترا اضا فک کیا سے ۔ 


تلق رترق ارت 
اکم تشن وف کل کے با لنچ .رل شش ایب راد یکوک که جانا ے 
اوق وتفرق ع لک راو لو ںکوای کبھولیا جا جا ے۔ 
KT tr... EK‏ 
(وَإِن انب السمَاء طا رمث تُقَطا) سَواء کان مَرْحَمْ 
الا خیلاف الط أو الشکل ( فهو وتف وَلْمْمْتَلِث ) ورف ین 
همات هدا و ی فا ا : شڈ التضحیف مایم 
فی الّسمَاء َوُه بان یی یله اياس لاله یی یلع 
وله وقد صف فو أو خمد العشکری لکن اف إلى کتاب 
الصيف له م ارده لیف عبلْعییبُن سید عم فيه كاين 
ابا في متيو الا ماو و کناب فی مه له ومع یه 
الدارفطیی فی ذلك کناب عافلالم حَمَعَ لوب تالم نع 
اليح یوضر یکلا فی کته اگما اسر علبهم فی 


وار PALA aS ee‏ 
کتاب آحر قمع فيه أوهَامَهُم ويها و کته من أَحْمَع مَاحُمع فی 
یھ سی و ار ریس ُمُه 
سس سر ملع مورب سیم( 
بفتح السین)فی مُعَلَدٍ ليف و ذلك یامد بن الصَابونی وَحَمَم 
7 ذلك مُحْتَصَرًا جگا عم فیه على الصْبّط بالْقلم فکثر فیه 
۱ لفط اضف این لِمَوْصُوُع الکتاب تاه ا 
مَعَلَڈ اج فَطَبَطة بالّحُرُوٴفِ علی الطرِیقَة المَرّضِيّة ورد عَلَيْه شین 

کا میم له لیف عَلْهِ وَلله الْحَمْدُ علی ذلك ۔ 

ت چے:.....۔ اکر مات سنو بان مو ں ر ایر میں تلف ہوں خواہ ال 

اخلا فکا وارو رارق #ول یا ظا ہری صورت ہونو ہکم مو تلف ولاف ے اور 

ا سک محرفت اشن کے اہم ا مور یس سے ہے کل بن مھ یف نے فو ہا یکک 

کروی اکب کل وہ ے جوناموں یں وا تع ول ے او رن م رشن 

ےا یک ی چیدگ ےک کوک اس میس تیا کا کل ول ہے اور ہا ی سے 
پیل اورا کے بح درکوکی قر وتا وال هد لالم کر ے۔ 


مو تلف وف فکی اصطلا مرف : 

اکر تحر وروا ی ان ےو الد کے نام یتست خط لت بیس یبال ہو ں گر 
بو لے می لت رک نے می لش ہوں ترا نمض ول کہ ایا تا فی تو نقطوں 
ک مرت ۲ ےت اف ای الا _گلگ مب با ے کی تفص اورثتفر 
ورگ ى اختلاف کا تک وجرے ہوا ے جیے قل ( 6 کد دض درل ( غم 
2-2 بر اف)- 

یم ان کے نہات اہم امور ٹس سے ہے چنا نج نم یف نے فو مها کہ د یاک 
قوی اوی ام یں مون ہے ا سکوبچھنا ہا شک لکا م ےک وک اس میں کر یت کے 
تاو نکا و یں اور دی ا سکوساق وسباق سا جا سک ے۔ 

اس کے برخلاف جوقی ف من حد ہے میں »ول ےتو زوت معو ی الک که لیا ے اور 


عرچانظر AR ERR ESS‏ 
یح اوقا ت ا وان سے ا یکی طرف اشا ر ہو جانا ے۔ 
موف تلف می امھ یک یکب: 

اعم یش ایدارک کر ی نے ای کٹا ب کی ےکا اتہوں نے اگوی ا سکاب ٠‏ 
تیف'' کا راد جما جحیف پلک یک یی صرف اس ہک شحیف م نیس »اک دج ے اساء 
کی یف میں کر ب کک ضر ور تھی چنا ھک ران ین سعید نے ام( شحف اساء 
یش ای تق لکا رای اوراس میں اس نے وتو ںکی تی کول کیال شترا ہا مکی 
زکرکردیا اور شتب الضہہکوگجگی وک رگردیا- 

اس کے یر کے استا دعلا مہ دای ن بھی ال اض شی اسیک جا مع اورعاو کاب 
کی پم خلیب بغرا دیف اکتا بے کامستف کلم ی 

رن تما م کت بکوایدنصر اکولا کے اهکناب" الاک لی میس کرد یا رال کے 
بعد ایک اورکتاب میس ماکولا نے له وا لے فی نکی فر زا شتو لوح کیا اوران سک اوپام 
ارتو لکوبھی خوب وضاحت سے میا نکیاء وه رک یہکتاب الم کلب مس سب سے 
ما ادرا وک جاک وج ےآ نے دانے رگد تس اس ےا عم دیا 

ال کے لخدا ریک لآ نے تو رون .نے اکر اول رور ا شی ءا مورکواور 
کار پیراشد ہا مورکوانیک ل ی م کاب میں می کر دیا کی کے بعد منصور نیم اور 
ابو ھا بجع سا کی نے ا یک لکلا _ 

انس کے بعد امام گی نے اتم س ای تق رکا کی کین تبون نے ا یکناب س 
اسماء کے تفا کے لے کات وکنا ت وق کوصرف علامات ونشا نات سے طبی کیا تھا 7 وف 
کل اس وجہ سے اس می بت قوف اور یال ہو نے لیس جوا سم کے ب کل ضاف 
اورمنائی تھا 

اقرا فی ںیشن سل ی فا1 ای تب صیر المنبسه بعحویر 
ال مشتبه» ی »کل سف ات کناب شل اس ءاووضا کے سک سا پر ی وا راز 
کے مطا بی 2 وف سا کا ت کٹا ت ونا کب کیا ے اوراس یں وه امو ری کر 
د سے ہیں جوعلا مہ کف روز اشت ہو کے ے یا ان کے !عد نے پیر اہو ے تھے۔ 


عرڈانظر رگم ےئ سے رسس ری ہر ہی FARS‏ 
روان اقب الَّاسُمَاءُ ) خطا ونطّا ر وَاخْتَلقَتِ الَبَا)نطُقَا مَع یلاها 
حا مد بن عَقیل ( بتفح العین)وَتُحمّد بُي یل ( بضمها) 
الاو تیسابوری والانی قریابی ما مُمُهُورَان وهُا مُتقَارَِة 
راو بالعکس) كأ یختیت الّاسْمَاء نطما ویاتیف طا وین الاباء 
طا ونفطا گشرنح بی اعمان ورج بن شمان ال لین 
لمع حَمَة ولحاء الْمهُمَلَة َو تابعی یروق عَن علی رَضی الله تَعَالی 
عنْه والقانی بالسَيْنِ الْمُهُمَلَة وَالْجيْم وَهُو من شیر خ الْبْحَارِیٗ رمَھُو) 
لو ع اند یال له رالْمُتََابه و داد وق ذلك ر الاتاق فی 
الاشم وَاِسُم الأب والاخیلاف فى السْسُبَة) رَد صَنّت ويه الْحَِيْبُ 
کتابا حلیلا سَمّاۂ ” تلجیص المتضابه" نم دیْل عَلَيْه ایا بِمَا فاته ولا 
وَهُوَ كير الفَائِدَةِ 
ڑچ ...اور اگ( روا چ کے )اتف اور خط کے فا کے یال #و یکن ڑ 
ان کے )ایام( کے اساء) لفط اکتا ف ہو گر بل اور بن ئل 
کان ٹیل ے یلا شا پو ری ہے جن دوس افریالی سے ہے دوفو "تور ہیں اوران 
کا بت رگ تریب تریب سے یا اس کے برک جواسا ملق کلف اور خو مل 
یال »ول ج بک اباءخطط اور دوفو ل تلکسا #ول ےر نھان اور 
سرت نما نکم لا ہن اورحاءکیساتھ ے اور یہو رج بھی ے جوحضر تک 
ے روا یکر ہے مہ دوس این او رم ام سے اور وه امام قاری شوخ 
یس سے ہے اس سح مکو شا کے ہیں او راک ط رح اک یسا نیت داو کے نام اور 
اس کے وال ر لداع #ول او رتیت مل اخلا ف وا یح ہوا موضورع میں خیب 
TETAS‏ تا پگ ےاودا کاخ فیس ات رکه پر خوونی اس برفوت 
شر امور تل ز بسا اوروه بت زب دوعفید ے۔ 


تھا کی صورتیں: 


کےآہاء کے :ام تلف کے انار سے ملف »ول اور باختبار یدیسا ں ہوں ما ر ب تیل 


ړو اتر ایا ی یه ی هط گم امت وم 
تیالو ری ( من پر ز اد قاف کے چ ) اور بن شل فر لی ( ان برض اور قاف تا 

ز بر ) یہ دوڈو کت روایت میں مشہور ومح روف ہیں ء ان دونو ل کے طبقا ت کک قر جب ر ب 

ہیں یما کہ گے طبققات روا کل بف سآ ےکا ۔ 


ہوں ین کے آباء کے نام خی اوق یس سا ہوں ملا شر بین تمان ( یں وعاء) ہے 
تال ںاور رت ن تمان( کل اورتم یرام خا ری کے استاد یں ۔ 


یس یال مورا نکی بتو ں یل خی ا ورف کے اختبا ر سے اختلا ف »وا مسحمد بن 


عبداللّهالمبارك تَخرَتَیٰ اور محمد ئن غبدالله مرفي 


تم تا می سک یگ نکب : 
اسم میں علا مہ خطیب بقدادی نے ایک یل الق رکا بھی سے اس کا امنیس 
متا یہ ہے رای کے و نے ہو سے امو رکا مھ کھاء کاب بہت نی فی سے - 
یا کک روا تاق وا مکی تو ںتموں ( ن وتفرق مو لف ولاف تھا ) 
کا کر ول ہو چکا آ کے ان تنل اقام کے فر وع کا زک ہے۔ 
ی ی 
(وَسر کب من یا مه نوا نها یل لاتفاف والافیتاش 
فی الاشم وسم الأب مقلا رالافی حرف رفن ) فا کترین 
عبت ار نها وَمُو على سین شا با يكذ الا خیلاف 
برع صان ضٍ لاسما عن عض ینبل الأول مد 
الق بقح العْن الاو م القاف َي الْحَارِیٰ وَمْحَمّد بىْ سيار 
بفتج الین المُهُمَلَة تب الباءاستَايية وید اف راء - 
خیش وش الها الیل و تونین ا اون وة ا 


عرچانظر هه ی وو جو تھا 
بالحیم بَعْدَھَا بَاء موَحدة اجره راء وَهُوَ محمد ُن بير بن مُطعُم 
تابیی مهو ايسا وین لك مُعَرّف بن واصلي کوفی مَخْھُوْرَ 
مرف بن وَاصل بالطاء دل اين مخ خر یروق عَنه بو له 
ورن وید بُنْ الْحْسَيْيٍ بقل لکن بل البٔم ياء تَحْمَاییة َو 
رچ لم ے اورا کی وای اقام سک اقا متفر موی ہیں 
ان بیس سے ایک یم کا تان یا اختلاف ام راو ی اورال کے واللد کے نام مل 
#وسوا ے ای مرف کے یاد ورول کے وو ٹیل ے ایک یں ہویادو ٹل ہواوروہ 
ونوا 4 ےل ا تو اختلاف تی وج ے ہوگا اور و فک تیرارووٹوں 
صورتول میں پا ر سے پا اختا فآ کی وج سے وگنگ رہن اساء یل ووسرو نی 

شب یکی ہو جا ۓ گا کی عثال یس مھ بن سان اور ہے( م راو یو لک ) ایک 

بجماعتکا ے ان میس سے ای کگو تی ہیں ج بغار کے ہیں مھ ین بار (اس 
نام کے رواة کی )کی رات ہیں ان میس سے ھا ی ج یھ رین بش کہ یں 
حر بن تی نگ ہیں جوج بھی ہیں اوراءکن کیال دغمرہ سے روا یی کر ے ہیں اورگم 
ین ر ہیں اور وھ ین تنم ہیں ج هرت بھی ہیں ان جس سےمحرف 
بین وا لکوٹی کی شور ہیں اورمطرف من وال ن سے ابوطذ یش ہن دی رواہت 
کے ہیں اوران یش سے اع بن خی نپبھی ہیں جرک ارام بن سح کے سای 
یں اوراحییدیی ن جن ای کے ہیں ج ک یفارگ سک ہیں اور دای بن ی ی 
الع سے روا تک ے ہیں- 

ترج. 

ال عبارت سے ماخ ان فروگی اقا مو زک فر مار ہے ہیں جوا نگمزشتوں اقام ہے 
یام ہیں ءا نکی اول دوش یں یں : 


یم اور ا سک یصو رش : 


ان ٹل سے پک حم ےک داو وی کے اساء یس یا ان کےاباء کے اساء می یادووں کے 


عرجنظر a‏ ۰۲َوےبعوووو, ہا ۰ تھے 


احاء میں جوخط کے افقیار ےا شان ہہوتا ے یا اخلا ف ہت ہے وو الا فش اوقات ایب 
رف شس ۷ت اوق ت اک ے اک رر وف ٹل توت الیل پر روصو ر یں ہیں: 


۳( ..... وو رک ورت یں وا اء ہے ہیں جولحرا دروف ہاو ہوں۔ 
ان وولو ل‌صورتز سک یکئی شا ال بل _ ۱ 


)١‏ ...من سان اور من سار 

تم بن نان :روا کی ایک تما عت اس ناخ سے موسوم ہےان مس سے ایک امام یفارگ 
کے مھ بن سنا نمو قی ہیں ۔ 

اور بن سیار : روا ک یکچ رک داو ای نام سے موسوم ہے چنا ران مس سے یک مھ بن 
یاد ییا یئگ ہیں جوعھرو بن لوس کے ہیں ۔ 

ان کے وال کے نام نان ۔ او رار ل حادم وف یل مساوات ہو نے کے سا کےا کے 
پل یں موجوددونوفو ںک لہ پر دوسرے میں ی اور ے۔ 


(r‏ 7 ھن ن اور جرب تر 

ان دولول کے والد کے اساء یش تخر ار روف ہیں صاوارت کے سا تیر مرف طور پر 
اکتا ف سے جب رک الغا کے لاط سے جاء اورم یل نون اول اور یا ءاورثو بن عاف اورراء ٹل 
اتال ہے.۔ان ٹل سے پہلاشھ جن نت دق ہے او رتکد الثر نیا کے ر وا تکرتا 
سے تہ دوس اھ بن یرک ی ہو ر بھی ہے۔ 


حرف اورمطرف مل لحد اد2 وف ٹس اوات کے سا کے ا کے رم اط کے فیا طط سے کم 
اور طا یش اتا ے چیک رشق ی لا ے دوفول یس اختلاف ہے ء ان شل سے پہلا حرف من 
دا کون مشمپورراوی سے جب دوسرامطرف بن وال دا دعذ یذ نهد یکا سب 


۴ ین تن اور نین کین 


ام اور !اید ل لخ را7 وق تلاوت کے سا سا تق رم الق کے یام اور یاء 
ٹس اقا یمان دونوں می ٹفش فا سے | خلا ف ہے ۔ ان می پہلا ام ین من ہیں ۱ 
ج ايرا میم بین سعد کے م ہیں اور دوسا انحید بن ادن ہا رک ہیں کیلش نگ نک 


کے ہیں۔ 
YK YK YK‏ .... .1۷۳۰ جا KK‏ 


و و و ین هن راو مور رم ره و لا ر۶ و ده ر لے 
رمن ذلك ایضا حفص بن مَیَسرة شیخ بخاری مشهور من طبقة مَاللىُ 


مر E‏ م ول 
۵ سے 


اه ور رگ مو پت و وا ور رل E‏ 
وحعفر بن میسر شَیْخْ مشهور یم لِعبَدِالله بُ مُومنی الکوفی الأول 
بالحاء الْمُهمَلَ وَالْفَاء بَعُتَمًا اد مُهْمَله والثانی بالحیم ول 
4 ور ا رو2 رو را کر ظز خی ھب ای رواوہ ا کاو ور رر تفت 
المُهْمَلَ بَعدها فاء نم راء ءومِن أَمُبْلَة الشانی عَبالله بن زید جحماعة 
اق و لے وگ مد ر ررھ مرلو ہے ہو 
مهم فی الصْحَابَة اجب الاذان و سم جخده عَبْدُ رَبة وراوِی خدیث 


1( و 7 ۳ و روا گے 7 مزا و رس ۳ ارآ 
الوضوء واسم دہ عاصم هما انصاریان و عبذالله بن يزيد بریَاده ياء 
2 کپ ۳ £ او 5 و و ا وی ا و یت ORE‏ 

2 ہت ظط رور EIEN‏ ورزر ہہ f7‏ 
الصحَابَة الخ طمی یکنی آبا مُوٴسلی وَحَدِيقه فى الصحيْحَين والمّاری لَه 
اش ی ا وی وے وغو رام و مر و الاو ھی جو بر و 
ذکرفی حخديث عَایشة رضی الله غنها وقد زعم بعضهم انه الخطمى 


3 


و‫ 


وفیه 


َر ويها بان یی وَھُمْ حَمَاعَة وَعَبْالله ُن تحی بصم 
و ره کہ وہ ہے مھ ری ا ا کل مرو ور پل رو سے و او ا رز یی 
النون وفتح الجیم وَتشدید الياءِ تابعی معروّف یزوی عن علی رَضی 


و 


الله تالی عنه 
با کک کے عطبقہ میس سے شہور ہیں او رکف ریک ماس روم پور ہیں اور و ویر اللہ جن 
مو یکوئی کے کن میں ان یل سے یبا حاء اور فا ءکیماتھ سے اور فاء کے احد صاد 
ہے اور ووسرا تم اور گن کے اھ سے اور جلن نے لحد فاء بر راء ے 
2 چم ...ور دوس ری یک مکی مثالوں ل سے یدانثر بین زد ور( اک 


ماع تک نام) ہے او کال سے صاحب الا زان یں اوران کے دادا کا :ام 
ید د ہہ سے اور عد ہش وضو راوی ے اورا کے داوا کیا ام عام ے اور نے 


عرڈانظر سا شک سر ما ا ی HR‏ 
دونوں اتصاری میں او رکب دال بن بیز لہ ہیں ہی ایک جنا ع تکام ہےء ان س 
ےکا کی ہیں ی ہے ال نک لکنیت الو موی ہے او سین میں ا نکی عد هش ۱ 
موچوو ہے اور دوسرا قا رک سے صد یٹ عا تھ مُل ا نکا زک ےش من سه 
گا ن کرلی اک دہ کی ہیں مال کک رای شی نظ ہے ان یس کید لت گی یی ہے 
بھی ایی ھا ع کان م جاور وردنت ج وک شرو رجا بجی ہیں اور رت ع 
سےروای تک ے ہیں - 


ہی مکی دوسربی صو رر کی مثا میں 
۱ درک صورت بک ووا اہ چ کرا ور وف شس ساوک ت »ول ا کی مق کل ور 
ذل ہیں: 


)...فطل ره اور رین مصرہ 

ان دوقول میں تخرار روف میں ساوا کل ی یه ام مس جن روف ہیں اور 
دوس ر ےا مل چا ر وف ہیں ان میں لاف ین رہ یف رک ہیں او رحط رت امام ا کک 
کے عطبقہ یں شار کے جات ہیں جکہ دد ر ےت تفم رین سره میم رتم ار یٹ ہل اورخغجبیرالڈر 
من مد یکو کے ہیں ۔ 


..)٣‏ . یزیر اور من یز ید 

ان دوول کے واللد کے اساء ٹل سے زی مل چا مروف ڑں اور یذ ید م پا ہیں ن 
ز دش بے بد کے مق لہ یش ایی کم ہے۔ 

نبرک نشکا نام ہے ان مس سے ایک شرا تصا ری صا ہے جوصاحب از ان 
ہیں اوران کے دادا کا ام ید د ہہ سے اک رع ان ٹس سے ایک دو صھا ‏ یبھی ے جو و وکی 
روات کے راوگ ہیں اوران کے داد اکا م ام ہے بھی انصا رکا صا ا ہیں - 


ان دوٹول کے واللد کےاساء ٹیش ےی میں رفظ سے کی کے مق لہ میس ایک 


تر فک ہے ان لانشن کی ے میت یکی اشنا م کا نام ہے کیہ دوس رےعبد اللہ جن 
هورق ہیں جو تحضر تک یکرم افر چجہ سے دو ای تک تے ول - 

رثن یز ید ییک ین شا کا نام ہے ان یل سے ایک صا لی ہیں ج نک کیت الو موی 
ی ہیں جن نک ی مین مس ردایت مروگ سے اور دوسرے ان مل تال قا دید حد مث 
ما کش میں ا کا ذکرموجود ےش لوگوں نے هگا نکیا ےک ارک انی دووں ایک ی 
ات کے نام یں نین ال می نظ ےکیوک ھی ده ہے اورقا ری مد ہ ہے۔ 

ERE TY... چاو‎ YK YK 
(أؤ) تَحضل اتقاق فی الط والتطي لک تخل لو شیلاف‎ 
شیاه ربالتقدیم وَالَاِیر اما و لہ رم‎ 
ذلك ) کان یقع یم واتار و فی الاسم الاحد فی بَعُض‎ 
حروّفه بالنسْبَة إلى مَا يشتبه به مقال الأول السود بن َرِيْد رنڈ‎ 
ُن الاسوو وضو ظَامِر وینه عَْدالله ُي برد وريد بُ عب له‎ 
ومتال الثانی يب بن سیر ویو بن یار الول مدیی مُشْهُور‎ 
بالقی وال خر مجهول ۔‎ 
وچہ ے دو‎ O ...با اور خی میس جا‎ 

سے سض ات و 
وتا خر دح ہو کے اسود .ن یزیر اور یزیر :بن اسود اور ہے طا ر ے اور ای میں سے 
بان ی اور یه کید اللہ اور دوس ر ےکی ال الب ن سیا داو رالوب من 
یما ہکان تست پل مد کی ہے اورشپدر ےکن تو کل ہے اوردوسرا ھول ے 


دوس ریشم اورا یکی صو رش : 
دوس رک ام ان اسا مکی ےکن اء مس لفط او رخ کے فاط ےو تفا گر ر وف 
کی ت وا کی وجہ ےا سے اساء رٹ اشتا پیدا ہو جا جا ےا سک یپ یکی صو رتیں میں : 
ا)...... ایک ص ورت ہے جک راو او رال کے و الد کے نا موں میس ایک سا جح نف وج خر 
ہوگئی ہو یس اسود بن یز اور ین اسودء اک ط رح ےبد جن عبیدالل اور ارب ید کہ 
ی نا مکوال کرد یا جا ے نو دوسرائن جا ےگا او رار دوس ر ےکوال کرو یا جا ے تو یی کا نام بن 


٦ 


جاۓگا۔ 


e 
کون قد مک د یا جا ۓ نے یبد کے سا شتی ہو جا ےگا ان دول شل سے الوب من سیار‎ 
- مف ہیں اوریشمپور ں من ق کل جب دور ے الوب ین با ربو ل س ہیں‎ 
نو و2‎ EE کم چم‎ 
(حاتمة: ومن من لمهم افی ذلك عند المحدیینَ( مَعْرِفَةُ طبَقَاتِ الوا‎ 
وفامَدنهة الامن من تذاخل المُشْتَهین وکا ااطلاع على تبیین‎ 
لیس والوفرّف على حَقِیْقَو المُراد من الْعَنْعنَة وَالطبقةُ فی‎ 
إلا جه عِبَارَة عَنْ جَمَاعَو اشتر گرا فی الس ولا ء مایخ‎ 
ر ...رین کے دی ان کے ۱م امور م سے طبقابت رداۃ کا جانا‎ 
حاورا کا فا رم کنن ا ےکفوظ ر ہنا اور هل کے ھور پر باقر‎ 
موتا اور تھ ےکی تی مراد ے واقف ہونا سے او ررش نک اصطلا ر] یل یرگ‎ 
تحرف ہے کاک ج مھا ع تک رشل او رش رن ےا قات هلعش رل ہو_‎ 
تر‎ 
ماف سے نما مہ میں ان ا مورک بیا نکیا ہے جن نکا اعد یث کے طاسب کے ےنات‎ 
ام اور بہت قرو ری ہہوتا ہے چنا رال ا مور ٹش سے ایک ۲۱ ام رطلقات رداق نگ ره پل‎ 
عیارت ایا کے پاد ے مل ے ۔‎ 


تحت ۱ 
اک ھا عت او رکرو مراد موتا ے جگ رش یاک رس عد ت مال کر نے لش رکیک ہو۔ 


طبقات روا کمک فا ره ۱ 
طبقا کی حرفت ےکی ف اد ہیں : 


۷( کر روشترن مول ها روا میں اشنا ط سے فاظت #وجال_چ- 
8 چرچ ی و 


دیحو لشخص اجك من بت بر کانس ُن مالك قَإنَه 
من حي تب یه الب صلی الله ء عليه وعلی آله وصخبه وَسَلَم 
بُعَدفِیٔ طبْعَه لش ره مَل من عیث صفر السَن ید فی طِبْقَومَنْ 
دی تی رای الصحابَة 2 باغتبار الصحْبَة جَعَل الْحَمِیٔع طبْقَةَ 
وَاجتء كما صنع این جبّان وَعَيْرَهَ َمنْ نظر لهم باغتبار قذر رائ 
البق إلى الاسللام أو شود المشاهد الْفَاضِلَة وَالّهِحْرَةِ جَعَلهُمْ 
طبَقَاتِ وَإلی ذلك نع صَاجبُ الطْبَقَاتِ أَبُوْعَبُدِالله محمد بن سَعْد 
مداد و کتابة أَحَمٌَ ماع فی ذلك من اتب 
تر چم .....+ض اوقا ت ایک بیت دختلفعیگیتوں ے دور ,لیر وطبقوں 
یں سے ہوا سے تج ححضرت الس بین ماک کہ دہ رسول اک لت ے 
مور یک حیثیت ےک شروش رہ کے طق میں شار کے ہا ے ہیں او رون وال 
ہون هک یت سے اس کے بعد وا ے عطبقہ یں کی شار کے جا ے ہیں نہیں جس 
میا مر فشر ق عحابی تکشر سےد بیکھا پذ ال نے تا م کیا ایک نی طبقہ 
ٹیش شا رکیا جیما کراءتن حبان وقیرہ ےکیا ہے او ر یں نے کاب سکس رق ر زاھ 
وص فکی طرف د ییا ٹلا سبقت اسلام با با عث فضیلت مح رلوں مل ما ض ری یا 
ریت وغیبرہ ت اس نے ما ےکوی طبقات یں شا رکا ءای (صودت مال ) گا 
طرف صاحب طلبقات عبدالش بن بن سعد ال ہو سے ہیں اور ا نک ےکتاب 
( ن طبقات این سحد )اس موضورع یکر وہ تا مکتب شل سب سے جائ سے 


ای راو یکا وطبقوں شس غار: 


شض او ت ایک نی راو یکر وکلک دوج جات وحیشیا تکی وج ے دوطبقوں میں غا رکیا 
جاجا ے تیه ریت انس بن ما کک ایک صا لی ہیں یکر هبش ره کے طق کےا ی ہی گر چوک وہ 


کا ہہ مےطقات : 

اک طرع نج ن مد شین نے تما ھا کا مکا طت شی نکر نے یں صر ف شرف ما بی تکا یط 
کیا سج انہوں نے تام “ھا ہکو ایک بی عطبقہ یس شا رکیا ہے ملا این بان »کہ انبول نے اپ 
کاب می تھا سھا ےکر ا مو اسیک نی بقل دکھاے - 

ورد من نے شرف حا بیت کے سا تھے سارک اور وصف اور حیثی کو کی بن رکه 
مشلا بت اسلا یک رکھا یا ش کرت غمز وا کو مرن ررکھایا جج ر کا ان وکیا تو انھول نے مایم 
کو پا طبقات یس شا رکیا سب کے ابو انم بن سعد بخ داد کہ انہوں نے اپ یکتاب' 
طقاست ابن سح ٹس صا ہہ کے متحددطبقات تر ارد ے ہیں ۔ امن سعری تاب ا نگ 
سب ےا بے اورقا مل اعم داب 

ای طررج حاکم شا لو ری نے شرف ابیت کے مات ساتھ دوس ری حیشیا تکو نظ رک 
ہو سے مھا کرام کو بار وطبقات م مکی ہے دو ار وطیقات اس ط رع ہیں : 

۱)...... وگ یل اسلام لا کے - یس غلفذاۓ راشد بین 


۲).....جاب دارالنرو3- وہر عبش 
)...اب عقاو ی 0۵ک بپ عقا ہے 
01" 2 ۶ 4( کر کاب ار 


ساب نی ہو رد ۰س 
TE... E‏ 


اتر اک میں ید سی سای سک تی KAN‏ 
و کنلك مَنْ جاء بَمْد الصحابة وهم لبود وَمَنْ نظر لبهم 
باغیبارالاخذ عن به عض الحا قط جَمَل لیبق اج كما 
صتع امت O‏ رھ تق تال 
مُحَمّة بن سَعُد ولحل مهما وَج 
ترچ A SL‏ ان جات ے 
چنا چا نکوٹس نے ا نظ ر سے د یکا کرالن سب کے کا ہہ سے استفاد مکی چاو 
اس نے ا کو ایی ہی طق ہناد یا ہے ھی اکا جن بان ن کیا ہے او ر نے ا کو 
طا قا ت (اورعدم طا قا ست )کی نظ ر سے د یھ تو ای نے ال( کی طبقات می ) 
تی مکیا ہے جیما این سعد ےکیا ان ٹس سے برای کے لے ( بر رہ 
اسلوب انتا رک ےکی )انش ے_ 

طبقا رت نین : 

ای طرں ن کے طبقا ت کا ستل کن کن نے ا کو صرف ال یت 
دیک اکان سب نے کا کہا مکی ذیاد تک سے اوران سے استفاد کیا ےل ال نے تام 
وت ہو وت 


ند 


ا ی کی 
جو طا رکھا تو اس نے ای مخ ول سے محطلف طبقات شل کرو یا چا کہ این سعد 
نے طبقات این سعد شی بی اسلوب اقا رک تے ہوۓ جا ان کے تین طبقات ذکر کے ہیں 
سا رارقا کر کے ہیں ئا (er:‏ 


رواو کے شور بار وطقات: 


حافظ اکن ر تقر یب الجمذ یب تروع شی ار ستہ کے روا کو بار ولیقات شمل 
مکی ہے ج نک هل ہی ہے: 


۲( 5 طبقہاو لی : تا ما بہگرام 

۴).... اي کبارتا تا ن کا طبقہ ہے کے ظررت سعید بن میب ۔اورجرات قضر کان 
ای طت میں شار کے جات ہیں ,تفر ین اصطلا رل ان لوگو ںک کہا جا جا ہے جنہوں نے اند 
جا لیت اورز ادا علا م دونو ل پا سے ہیں ما نآ تحضر ت پگ کی لا قات وز یا ات سے شرف دہ 
:و کے خواو هک ع ر مارگ مسلران ہو گے ہوں با بجر لدان ہوۓ ہوں 
سب تفر مش۲ نکہلا ے ہیں اورا کا شا ریبد ےتا نیشن میں موتا سے ۔ 

۳) .....عطبقہٹالٹہ :اتی نک د رمیا طت یی حر ت تن اص کی او رش بن سیر 


0 E 
طبقظہ خاصیہ :نک طت صفری جہوں نے ایب ووی سا و دیکھا اور شک تو‎ ۵ 
ای ےسا کی عا تی جیے امام اشنم ابوعفیفہاورامام سلما ن امش ۔‎ 


02 


بی سے طاتا کل وی تج امام اھ بل 
مج :قؿع جا ن سے دوا تک دالا بحد کے طاق کا طبقہ دی جیے امام 
میں 

..... علبقہ ا شا عحشرہ: ی جا ینان سے روا بی کر نے وال بعد کے طت ےک طت ری تجح امام 


وی ( تر یب از یب :۲۵/۱ ند ی یراق ) 
E... EYE‏ 


۳ و و کف گر ھا ہے را 2 ہے در وار ر گم و موم 
(و) من المهم ایضامعرفة ( موالیدهم ووفياتهم ) لاد معرفتهما 


یحصّلٌ امن من دغوی الم لا ء هم وَهُو فی تفس الم 
لیس کذیك رو ) من المَهم ایض مَعرفة (بلدانهم )راهم وا 
لام من تال الاسمَین لا اقا لکن رفا باللشب ( و ) من المَهِم 
اض مَعرفة رأخوالهم تعییلا رخا وَجِهَالَة) لا الراوی ما أن 
یعرف عدالَه یعرف هس أو ارف فیه شبی من ذلك 

مر ...اور اچم امور یل سے ال نکیا پراش اور وفا تک مرف یکی ال 
ل ےک ا یک حرفت شود رن سے ملا قا کا ہے ولو یکر نے وا لے کے 
رو سے اکن لے ےگا جووگوی یقرت کے اظ سے درست تہ ہو.۔ ام امور مل 
سے شہروں اور وطنو ںکی محر فی کی ے اورا کا فا ده یہ ہگ اک دوناموں کے 
ا رش رن ےک ج بک وہ دونوں نام میں تق ہوں گر ( شر یا ول 
کی )ہت میں جدا ہو پا یں کے اوراہہم امور یس سے برع وتخ ر یل اور جول 
ہو نے انار ےر وا ها حوال له رف تکگی ےکی ومک راو کی یا نوع رال 
پ مہو سخ 


ار 0 ا 8 تارب پراش اورانگیجا ریق 
وفا تکام ہونا چا ہے .یراس سے بی معلوم و کون راو ریس بڈ ا سے او رگونا روک 
ر موی ہے اورکونساراوی مقدم ے او رکونماراوی متاخ ے۔ 


یال ووفات کے ماف رو 


حرفت جا رجآ ے با نرہ ہوتا 0009 
کا دوکر ےل جا رن کے ذر یرال ولو یک یقرت روز روش نکی طررح ہا ےآ جا گی 
چنا نچ راس کے ذر ب کی ا ہے دو ے بان ہو ے ہیں ۔ 


کر ی بی ےکر دوا 3 کے وطنو ںکی محرفت دی مبھی ضر و ری 


ړوار SEL‏ تھی ی 
س ہککونا راو یں علا قہکاباشند ہ ہے او شرت الکا نع 
اوطان روا کمک فا رو 

رواو کے وطوں اورشرول مر فا ندو توت کی اوقا ت دوراوی نم نام ہو 2 
یں سک وجہ سے ان مم اشتباہ پیرا ہو جات س کر جب ال یر ہد وشبرو لک طرف 
مضو کر کے وک سکیا ہا ا وا سے وہ اتپا هدور ہو جا جا سے اور وه ایک دوسرے ہے تاز 


#و جاے ول - 


چا س ےک کونا راوی‌عادل ہے او رکوس راو تیر عا دل؟ اک ط رح کی معلوم موتا چا سی ےککونسا 
را وی لہ ساوراونا را وی رت ؟ او رکون رای روف ہے اورکوڈما پول ؟ 
احا ل روا سکاف رو 

ےا سب سے زیا دہ اہم س ےک جب راو یکی عالت کے پارے شس ماک 
ال کے بعرت الک دو ایت پ کت دش مکاح ملک سےا ور تال کبک روات مت 
و م6 نا اس کے روا کے احوال پرموقوف موتا ہےء جب احوال بی نا معلوم وجپول ہوں 
گے ذ ات داو ی ب ےکی ےم لگا یا جاک گا؟ 

جیلو بل لو ...ا بل ہا 


(و) من عم ذلك بَمُد الإطلاع مَعْرِفةٌ (مَرَایب الْحَرْح ) ومیل 
هم فد یرود الشخص پم الایستلزم رڈ عببیہ له رَد 
اباب ذلك فیما مطی و حَصَرناهًا فى عَشَرَة وقد تم مرها 
مُصّلا وَالْعَرَض هنا ذٍ گر الَلقَاظ الا فى (ضطلاجهم على تلك 
المراتب 

7 چم ...شیر امو رک حرفت کے بعد زر وتخ لی کی حرفت اہم سے 
نشین کتک اک بر کرد کے ی مک دج نے اک سا ری 


عرڈالظر وی سونو و شس هه کش ۰ ۱ ۳۲ 
عد بی کور دک ناما ز مکی لآ اس کے اسیا بو میا نک کے ہیں اوران 

کا تاد یا نکی ہے ادا نمی اتد رجا پگ ری ہے 

یہاں صرف ان الفا رکو زک رکر ع قصور ے جو الفا ظا مرن کی ا صطلا رس 

ان را دلا تکر ے یں - 


تی سس ور 

ایا ز/ ا٤ے‏ کیو شض اوت جرب بہت کی او رقف مون >کرا لک جہ سے ال راوی 
کیاعرویات دردایات مردود ین کل او رتش اوقات جرح بت شد بداو رت مو ےک 
ا نکی وچ ہے ال راو یکی مرویات وروایات کی ا کا ار اج .یز اجب وتخ د لک 
اسباب اورالفا ظا جرح اور تیور کم بہت ضرو رک ے۔ 

جرج کل دن اساب میں ش ن ل ین گے ر چک سے یہاں ان لفصیلنقصور 
۳ > یہ یہاں جرح کے ان الفا کا ذکرمقصود ے جن الفا کی وج سے جع کے لف ۔ 
مراب وجوش ے میں 00,٦‏ 

جلو Kr... E A‏ بر ای 

رو )جرح مایب رأواشوئها الوضف)بما وَل على المبَلَعَد فيه 

صرح ذلك لیر رافعل کا کب الثاس ) و گذا رهم ره المنتَھی 

فیٌ رضم أو ُو رک الکذب وَنخوذیك رم ذخال أو وضاع او 

کَذَابّ) نها ورد کان فيا نوع مُبَالَعوَلکٹھا دزن این لها ۔ 

رسمه أي الالمَاط الدالَة على الحرح فولَ ا او سی 

الجفظ أو فیُو) ادلی (مقال) وین سوء لح رسمه مراب 

ی نال تروق ما آز قایش القل گر غرے 

ا ین قولهم ضویّت أو لین بالقو و تال 

ترجہ :.... 2 U‏ کے چند درجات ہیں ان یل سے بر وه وصحف سے و مبالقہ بے 

ولال کر ے اور ال ےکی زیادوصراحت اعفضیل کے لفط شس ے بیس 

اکب التا س اورا کی طرح جارس نکا تول ال اتی ن الع ( کک رشع کا سلمد 


ع ړو لطر پب««««سآ7ش ۳۰۳ 
ال ال سے ) یا عو ران الک ب( وہ تجو کا رل سے )اک طرں کے اقو ال پر 
ال کے بعد و یال با وضار اذ ا بک درج س بکوگران س اکر چرمپا ےگر 
ری بل ممقابلہ می سکم تر اد رن رو لب کر نے وائے الفاظا یل سب 
ےنرم جار نک بقل سے فلان لین یا فلا نکی الف نادف مقال جرح کے 
سب سے بت الفا ظط اورا ی کے سب سے نرم الفا ظط کے درمیا نک یل مراب ہیں 
ج شیر ہیں اور ار کا قو ل فلا ن مت روک با فلا ن سا قط یا فلا ن فاش الخلط یا 
فلا ن کر ا یر یٹ الفا ظط فلا ان ضیف پا فلا ان لس التو ی یا ف متقال کے مقابلہ 
میں زیا دە شد یه میں - 

راک مں: 


(۱)......چن‌اشر  ......)٢۴(‏ 2 اوسط (0۳...... بر اش 


اشد کال ن عد یشک دوا ی کے پار ے مین ااافا وکر ےک مین 
مبالفہ ہومڈا اح فی ل کا یف کرک ے یا الیماعیقہ فک رکرے جواس کے بان موتو ا کو جرح 


اش کی ہیں ملا اكذب الناس » اشد الناس 'کذباء اليه النتھی فى الوضع » اليه المنتهی 
فى افتراء الکذب » هو ركن الکذب »هو منبع الکذب »هو معدن الکذب۔ 


جرح اوسط یہ کال لن د مشک دای کے ار ے شس ا لے الا ط استعا لکر ے 
نس مس پیل در ہے کے الفاظ ےکم مہا لخر وشلا وضا رع »یال یہ الفاظ اکر چ پال ی کے 
عبیضہ ہیں ران لام بل کے مق بل ٹس مبال کم موتا ے اک وج ے اس فی لکو پہلا درج 
دیااورا نکودوسادرچردا - 
۳).... رب اضف: 

و س کر باب ن ین ی زا وک یک پا ےشن کہ تگروراورژم 


الف طط اتا کر ے مشلا تن الحفظہ ۰ با فلا نکن الحفظ با فیر ادلی مقال ہے ار سے الفا مرن 
اتف ولال کے بل - 
ماقرا نے ہی یکرت اشد اور جر اضعف کے رمیا نک یکی مراب ہیں جوم 
ےا چنا مہ فلان مروك فلان ساقط »فلان فاحش الغلط » فلان منکر 
الحدیت بے الفا ظا چم میں شر ہر ہیں ان کے متا بل ہس نے وا ے الفاط جع ل ذ را تزور 
گی ںخلافلان ضعیف ٠‏ فلان لیس بالقوی» فيه مقال وره 
نچ YE‏ دی E F.E‏ ۸ 

رو) من المهم آیضا مَعرِفَة رمَرایب الیل رها لضف یا 

با دل على المبَالعَة فيه وَأصْرَحُ ذلك لیر باعل اوت الاس ) أو 

بت الناس وَإِلَيه الْمُنتهى فی التب لُمٌ ما تأ كد بصفة ) من الصفات 

لاله على الیل راو صفتین یمه لو َو تب ثبب وق حَاؤظ )أو 

عَدڈلِ ضابط أو تو ایک «وأدناها ما أشعر بالقرب من أسهل التخریح 

شَیٔخ) وَبْرُوٰی حَدِبفه ویر به وتخو لك ون لك مَرَاِبٔ لایخفی 

تر چم ...ورام مور ٹیل سے مراب تخر بل کی محرو بھی ہے ان یش سے 

سب سے بلند وہ وصف ے جومبالقہ پر ولال کر سے سب سے زیادهصر ام 

یل اتی ے مشلا اون الزاس ات الناس یا لی اتی ف ای پر( 

اس لفظکا درجہ ہے ) جو لعل ولا کر نے وال صفات یل ےکی صفت سے 

م وکر ہو پا دیفس ہوں کے میق ند یا خبت شبت با قد حافظ یا عادل ضا ا رہ 

اوران یل سے سب سے او ی وہ لفظ ے جو جرح ےزم الفاظ کے تر جب ہو کے 

ہاور بر وی ےھ اورمچتر بوظیرہ ای اوراو ف مراب کے درمیا نکی مرا ب 


تقد ہگ یکا ای مره ےک محد شین ناقری کسی راو یک تو تی اور تع بل جس مبالفہ پل 
اف لک یف یاس سول یف استعا ل کر ری مشاضلان اوشق الناس » فلان اثبت 
الناس » إليه المنتهی فی التثبت۔ 
(r‏ تک رل اوسط : 

تھ ب یکا اوسا مرج ہے س ےکا ت کی راو کیت ن وتر بل شس دوف کک بی یا 
ایک بی صف کک ر رکر کے زک رکر میں ما فلان ثقة حافظ » فلان ثقة ثقة » فلان ثبت ثبت 
(r‏ وٹ تور ٹل اد ی: 

تقد لک اون مرح ہے ےک اتد کی راو یکی تون شلک ای صغ کو زک کر میں جو 
جرج اد مرح ے قر یب معلوم ہو ملا N AT TET‏ 
روا کیا جا کا )من یرب 
تر دنع لک پار ہما کب 

gl‏ و 
مرا حب بیان کے ہیں یال چا نکیا یصو | صطلا رب جھانہوں نے اہ یکنا ب تقر یب 
الب یب میں استعا لکی ےکن اب عا م طور پر ہ رکد ت ی اصطلا رح استھا لکرتا ہے ء اس 
لئے ان باد ہما بکا انا گی ضر ورک ے: 


کی کے مات کی ے قواوصیفہ ا تفیل ر ستھا کیا ہو ہے اون النا لب کی صفرت ماد رکف 
کر راستما لکیا مو کے نقه ثقة ین لگرار موگے لقة حافظ - 
(r‏ سید ره اس عرحہ یس وہ روا ۃ شای ہیں جنک تر لاس1 ایک مخت باود 


ا SRR Ae‏ ره 


MT‏ سيئ الحفظ a‏ يهم وم له آوهام ا 
صدوق تغیر بآخرہ کےالالفاظ استعال کے گے ہوں ا کی رح و وتا م روا ی ای طق 
یس شا ہین جن کی کک برقي د یک تست ہومشا شیعہ مون یا ت ری مون یا ناصھی ہوناء یا م ری 
مون تھی ا ۱ 


و مو O‏ ل 
سموک سو یہ ۱0 0 


سیر وو ھر ا سر ا 
e‏ 


eS ۱ 

8).... وال مرجم :انس مرح میں وہ روات شا ل تن سے روا یک نے والاصرف ایک 
ہی شاگرد ے اورک امام نے ا یکت نوہس کی کی اس کے لے ول استعا لکیاے۔ 
۰)......وسوالمرتم : اوووموہ و وت کا 
ا نکی تھا خت ضع فک اگئی ہے ان کے لے متروک یا ترک الہ بش با دای الہ یٹ یا 
ساقط الد یٹ کے الفاظ اتال کے ہیں۔ 

E (ıt‏ گیا ر »وا مرج ۰ اس مرش وه روات شا یں جب کے ساج م ول با 
کہا نک رو ایت تم لت کےقو اعدمعلو مہ کے فلاف ہو یالوگوں کے ساتھ بات چیت شں ان 
کا وت خابت ہو چکا ہو۔ 

)...پار موال مرچ : اس مرت یں وہ روات شل ہیں جن کے یکز ب اور وع کے 


O کیک‎ EE EAA RSA aa عرجلنظر‎ 


الفاظط استعالی کے گے ہیں ۔(ازتقر یب ال یب :۳۳/۱ تد ک کب نا تک ر اتی ) 


جیلو ار TE‏ ای 

رو هذه آخکام تَمَعَلَی بلك ود کرئها هنا تَکملَة لِلفَابِدَۃ قافول ر 
بل الشزکیة ین ارف بأشبّابها) لامن عير غارف لقلا یکی 
مجر ماهر له بتداء من یر ممَارَسَة واختبّار ولو ) کانب 
یه صَاِرَۃً (ین) مرك ( وَاجِدٍ على الاح جلافا من شَرط تھا 
نفبل الا من انیس رلخاقا لها بالشُهَادة فی الأصح أَيْصا الق 
بیتهما اڈ از که ول مره الم فَلایْشْتَرَط فيه لد وَالشُهَادَهُ 
نَمَم من الشاهد عند الحاکم فافْترقا ولو قیْل بفَصْلِ بيْنَ ما لا گانت 
لز کي فی الراوی مُسَْیَة الُم کی إلى إِحُيِھَادہ أو إلى ال عَنْ 
یره لکاد مُتَجَها لاه رن کان الأول فلیشْترط فيه الْعَدَه اضلا لاه 
2٥‏ 9۹۷۹۷۷۹ 
وس انه OED‏ سر مد لایشترط فیه 
الْعْدَد فَگذا مَایَتفَر ع عَنهُ ۔ وَالله عُكم ۱ 

ر - اکا ماک( خر وتر بی ) ےعلق ہیں شل نے بهال کم کدہ 
کے طور بر ذک کد ہے ہیں چنا چ سکہتا مو ںک کی کے اسباب چا ۓ وا نے ہی 
ےک تو ل کیا ہا ے اس کے علادہ ےکس اک بلا مہا رت اور بلا زاش جو 
با تج اتد اء ظا موا ی سح کیہ کرد ی اس ار چ ایی نگ سے تکیہ 
صا در موی الا لاف ان رات کے جنہول نے شہادت قا کر ے ہو ئے 
یط ا س ےک کی عرف دو ے ہی قو ل کیا ہا ےگا ۔ اود دوٹوں شل‌فرق ہے 
سک کیم کے درج یش ہے لہذ ١اس‏ مس تقرادل نیس لگائی جا هکل اور 
گواتی جوگواہ سے مام کے بای دا مون ے بی دوف ل جدا هرا ہیں یں اگ رکہا 
جاک ورن ال طر کی گیا ےک مر یک طرف ے راوگی کے تک کا دار 
اچاد ی تیال وفیره ب یتال جیہ ےک اگر پہلا ( جن تما سب 
ت رس می عرد ہا ئگ شر کی کیک وہ اس صورت تما درجہ یس ہے 
اور اگردوس را( )وق پراش مش اختلا ف ہے اور ظا ر( اورا مکی کر 
اس میں بھی مروت یرل میں عددکیکوئی شر تش لگائی جاتی بی ای طرح 


عرڈانظر ہر رگ کی ا یا کک ای ا ا ا OR‏ 


اف سل کلام کر یہاں سے دوضروری مسائل ذکرفر مار سے ہیں ۔ لاس 
ک تفر اور کک کا مر ے؟ ال میں تخد وع زک ش رط ے پا کل ؟ اور دوصرا ستل ےکہ 
بر مقدم ہے یا نهر بل مقدم ے؟ 


دک شک مت ے؟ او رتح رومز یکا مل : 

اج ول ما کیہ ای نف کا بھی معت ر ے اس یں تخرد او هکت شر نی الب 
2 ا ا کی سے توب واقف ہوء ما کل کراسبا بکو جا کے وا لے 
مز یکا کیہقا ٹل قول ے جو اسباب سے داق فس ا سک کیہقا بل تول یں 

م رش نک قو ل ہے ےک و وت کی ہقا بل قول ے جوم از روصو ں سے صا در ہوا وگویا 
وہ تعروهزی کے تقائل ہیں اورک یکوشہا وت پا کرے ہی ںک جس ط رر وای وشهادت 
کے ستل س ںگواہ کے کیہ اور تخر یل ٹل ضرو رک ے کش تک ان طز رایت 
کے متلہ یی کی رای کے کی کے لے دومکی ہوا رو ری ہیں - 

عاف نے ان کے قا لکاي جاب دیا جک راو کا کیم کے کے مج میں ہوجاے ٠‏ 
او رگم لگا نے مس تخر وش کل اور شاه کے کی کا طلب یہ ہوتا ہ ےکآ دی ان کے کی پہ 
گاید ےد پا ہے او موی بیس تخر وض رو رک ہوتا ہے لہ ااس یں تروضر و رک ے 

تدای بے یا شال موتا ےکم ری کی جاخب سے راو یکا جو کیہ ہوتا ےا ی کی کا دار 
وعدار یا تو زک اجنیا ہوا ہے یا بچمردوصروں ےل با کا اعادہوتا ےلو زلور ہ اختلاف 
کک سورت میں ے؟ 

تو حاف نے ا یکا جاب دی اک اکر بی صورت موق الک ےک کا دا رورا رم لک اجناد 
موتو بھی اس میں تور و پل شر نی کیال ورت میں ا کا ت کیہ حم کے درجہ یں سے 
اوریام 73 لئے رورو ریس ہوا او را دوس رک صورت ےکا کا 2 وارورار 
کی ےےل بے ہے اا بی صورت مس کور بالا اختلاف فا راودا بات بھی ےک ای 
میں بھی توت لور لکی اس تعددش نی جب اسل میں تحد دش نی نے فرع یش 


RSS ES عرچالنظر‎ 

سے شرط موس ے؟۔ الشرام با لصواب ۱ 

۱ کل ٠ KF 9۲ ..... KF‏ 
نشج أن ملاعل امن عذلِ مق بل جرخ 
مَیْ فرط فيو فرح بمالایفتضی رد حییّت المحَدبٍ كما لبیل 
تز کمن اد بمعرد الاهر فَأَطُلَقَ ال که وَقَالَ الهبی وُو مَنْ أَمُل 
ا(اسیمٌراء القام فی تقد الرجال لَمْ يَحَمَِم ان من عُلَمَاء هد الشان 
قط علی َو ویب ول علی تضویب وهی ویهدا گان مب 
ر مم: ...اور یضروری ک را ورا کل ے) قول £ 
جائے پلک ای ات سکی جرح وتر بل قد لک ما -2 ) جوعادل اور بیرار ہواور 
ایض کی جرح مت کل جو جرح میں اف را در بای طورکہ وہ ایی جرح 
کرد ے چو محر کی هد شکور وکر ےکا تاش کر وجا کےا لکا 7ک تول 
کیا ہا ا جوش تلا ری اه رکر نے ت کی رکو سے اور امام ی ( جونقز رچال 
سمل استنقرا متا م رک ہیں پان کہاکآ رح کک دوعا م ( ناد "ی ضیف 
کی تون یاک ی تضعیں بح یں ہو سے ای سے امام نا کاخ ہب ہے 
ےک ہکا محر ٹک عد ال وف کک مر دک نہگھی چاه جب ی کک قام 
ناف کا اک کے تر دک ہونے پراجماغ داتفا موہاے۔ 


جرح وھد یگ سک قتول_چاو رسک نین؟ 


ایض دف سی عا مک بات یا می ب کول صو رت مالک ک ےکی محد مشک کرو سے 
گا وراک جم حع گی دجہ ےا ک کد ٹک هد ی شاو ددکر دیا ہا ےگا عال رال بات با وص فک 
وجہ سے عد شکور وای سکیا ہا کا ے - 

پو لے تک عی بکو بڑھا چ ھا کر ہیی یکر ع ال الما ی سے جی ےکی ر کش 
تلاپ ری صورت عا کو وک ےک رکوکی ا سکی تحر بل و بش کر و ے ما کر «قیقرت کے لھا ا سے اکر 


97 کےقاع رئش طا ری طور برد کرتخد یکا اد »داعم 
سےعی بک وجہ سے جر کر نے وا ےکی جرح تال تول یں او راک رح نا ہ ری صورت 
مال تد و کر نے دا ل ےکی تعر ب بھی ا لقیو لت - 
ول امام زی کا مطلب: 

امام زک یکوفظہ ر جال بای کال دشگاه حاص٥‏ لگ انی کے باد سے مل علام اور شاه 
کی ریف رما سے جک از یکو کی او پیب ےک اکر دیا پا سے اور بزادول روا ةگوان کے 
سا سک اکر دیا جا ۓ امام دک ان شل سے برای ککوتصب ونب کے سا پان نی کے 

اف امام ذ تقو لکیا ےک : 

ا وت ی سا الشان قط على توثيق ضعیف ولا 
على تضعیف ثقة' 

اس قو لک ری ہوم ہے ےک علا ءتقیدں کول دونا رک تق راو یک تضعین پیا 
کسی ضف راو یکت مین وخر یل پر نیل ہو ے۔ 

اراس ظا ری موم ایاعر E‏ 
ناف ین نے جر کی کی ہے اوردو ناف ن اوق کیک با ایک راوی سے میں 
احا "ال کے پارے می علاء ناف لی نک تم رولا حنظدف رما سے : 
٤‏ جس ...لیس بالقوی (آو یس ے) 


) ......ضعیف الحدیث(عدیث کے محال می نیف‎ E 7 (Fr 
) شوگ ہشام ا ے ہیں کات ( ہت موا سے‎ (r 


ےت 
رکوہ پا اکبارعلماء ناف بین سم بن احا نگ »بت بر ی طررح رح کی ے ال الفا کو 


سل کے بحدک و کی بھی ا سکی جد ٹکوقبو لک ںسکر ےگا ره 
درز تر ےکی ملا تفر ما ئئے : 


۴۳۴ج E‏ ائه تة : 

ان ھروں ےھ ین اجان کل نون وتر لل خابت ہوردی ے اام گی قول ے 
اشکال یکتم ین اسحا کو بی عم او رو ۶9 7 
یادها یک تخد یل واو کرد ے ہیں امام کی وک یا مطلب ہوا؟ 

اس اشکالل ےکی جواب دس ہیں کان سب سے بہت جواب عبر دہ نے 
ا وکیل میس دی کہ بیہاں امیا ال دوکا رورا ول بایان سے مج کا 
ہوم مراد ےاوراییا کت ہوتا ہے چنا ہاج تا ےک ” هذا الأمر لا ی حتلف فیه 
انان“ کاک معا ل غل دو ےکی ا خلا فک کیا میں اس ےس بن ہو کے ہیں لیذ ا 
اتا ےگ ( سب کے سب )مراد سب _ 

ابا شا کی ےن میں لے کے بح دعلا مذ کی کے قو لکا مہو مکی طرف دھیان کے 
اکا مطلب وم ہہ ہوگاک بھی کی کی ضیف راو ی کی تحر بل ورن تا معلا ماج 
تن ہوا او ری کی تر او یکی جم ود بل برس ب کا۱ تفا ہوا _( ما شا :۲۸۱) 

اب ال موم کر اشک ل تس کی تن جیث اما ی کی حی فک او ق بے 
ہو ے ہیں اور تع حیٹ اما کک ٹک یتفعیبن پر ہو ہیں نم ین اسحاق ار یقت 
مس ٹیہ ہیں تو سب مک رکی ا وضو یگ کہا اور اکر د رتقیقت ضیف ہیں تو سب گر 
ا نگ کہاگ امہ دقن جیث الما حا جا کی کی سےتفو ظط سے واولہاعلم 

جب مخ ابوفدہ کے قول کے معا ان انا نکو چم مت میں یکر علا مہ ف ہی کے قول کا 
ہوم بے بج سآ گیا و گی عبارت ملا حظرفرما سے وبا رت اک مہو مکی تا تیک ف س ےک جب 
علیاء ناڈ بن سب کے سب نہ عاد لکی بر ہوتے ہیں او رضح فک تخر بل پم ہوتے 
ہت کی دج سے امام نا یکا لر نداد کرو وی راو یک صد بی کو ای وقت تک ریس 
ک ے ج بک کفک تما م علاء ناف ین اس کے ترک تفن نہ ہو جا نہیں اس ےک تام تقر یک 


ال انات و جانا اس با تک دار دمل ےک دو حیف کک س کوک ہے جما عت خت 
بات یک سےکفوظط پآ ری واوداعکم با لصواب 

چل یل YE‏ ۱ 
رہ ر دلو م رو ہے لے ر الا و اک ا و و سن سا وف یں 
وی حَذرالمتکلم فی هذا الفن من التساهل فی الحرح والتعدیل فانه إن 
عدل بغیر نت کان کَالْمُقبتِ خکما لیس بثابب یخی عَلَيْه ان 
ماو هل اه ی و ورف میم فص ما وکو و ف ام مر و 
یذحل فی زمرء من رزوی خدیدا وهو یظن انه کذب وان حرح بغیر 
A‏ سوہ میں مر رر ور ا ا ا N‏ ا ور 
ترز اقدم على الطعنِ فى مسلم برى من ذلك ووسمه بميسم سوع 
بى عَلیه عاره بدا وَالآفة تذخل فی هذا تارة من الهُوی وَالْعْرّص 
ماد و کلام المُتَقَدِیْنَ سَالِعٌ من ها عَالِه وَنَارَة من الْمحَالة فی 
لممّاید هر مَرجرد کیا قب دیا ولایبیی اطلاق الْحرح 


رن چا ےکی وک ہگ راس نے اموت کے تخر ب لکردی تو گویاده مایت 
کر نے ولا ہوا جوم ب ت کیل تھا تو اس کے باارے میں ژد ےک دہ اس راو یکی 
رع وجا ےک ود ی ی ا نکر سک پ ری روا کرک ہے اور اگر 
اعیاط کے !خی ر جر کر وی ت وگو یا اس نے اس سے بر ی ملمان ( کی شان ) س 
کا اقد ا مکیا اود ال نے اسے امک برک علا منت سے دا خدا رکیا سک عار 
یش بال ےکی اور یرآ فت ( غلاف واقہ ج ) بھی نو خوا شف سک وج ے 
او ری خر قاس کی وجہ ے واشل »و سب اور تفت نکا کلام اس سےتفو نو ہے 
او ری عق مدکی نالف تک وج ہوحا ہے بے بہت زیاده سے یکی اور ا بھی 
٠‏ الک باد پر درست نیس »بر کی روایت پل هل میتی ہم 
پیل یا ۷ ۱ 


شع جر ودب کے عا مکی ز مرداری: 

نع جرع دتعد ہل یں یکت ومباح ےک نے وانے ما واجب کرو هل اورت اال 
سے اور اپ ذ مدا دک تا سمل خی کا فار نہ ہو یکلہ بی ارخ زک س تکام لن ےکی و گر 
ففلت کے نتم اس نے رک ول نیل ےکی ضف راو یک تحر بل تو کیال نے 


اتب تکردیا ای صورت میں اس تخد بل نے وا لن ےکا عم اس رای والا ہوگا 
جو جد ی شور لصو رکرجا ےکن پچ جج یآ کے ر وای کرد تا ے۔ 
رین تاا اورفقل تک وچ کے ی رارق کی جو کر دی پا اض ے عیب اور 
رع سے پاک ملمان بابک ول ےش ابی غفا تک وج کیب لگا دیا اور کیب 
ا ردن پر پھیشہر ےگا۔ 


جرح میس فلت کے اسیاب : 

ابا ہی کر باب غ لآ فا کا صر ورش اوتا ست نشا فی خواہشا تک 
ات لاح مگ تام کر دک یا یل وج سے بر کرد ی - 

اوقا تک ادرف شک وج ے یآ ان لا زا دش یکی نام کیک بر کروی 
انف ی تحص بک ینام یکا جر کر وکیا شیرت کے مول کے مل ےس یکی جر کروی کور ہ 
بالا ورت عا لکی ناء بے جر کر ےکی اعثال مظن وت خر ین می بہت کم ہیں مت نفا نی 
خوائشیاذ ال د یوغرو فی کو )ر شین جر ںکر نے 

جن اوقا ت عقا رل اختلا فک وجہ ےک راوق پر حکر دی ہا ےمان رت 
کول رای یا غار بی راوی طابری لیا ظا سے عادل وت ہوتا ےکر عتا کر می اختلا کی وج 
سے ال ی سنت وا مات ا کی ج کرو نے ہیں ۔ ا کی ط رح رافق لوگ ال سنت وا ما عت 
کی با لکیہ ھ کہ ے ہیں ریت و سی ال عدالت 5 لاک وت 

حرا نک اما دالیم یت ںکر تے۔ 

عتا کر کے اکتا فک وجہ کس یک بر کرو ےکی امٹال مظن س کیت اور 
متاخ بین می بھی ہیں ہد اعقیده ٹس خاک وچ ست کن درست یں کوک اس سے 
ادایت صد بی کا مت کوک وتا کا شکار ہو جا ےگا چنا اکر سم بنا ری کے رجا یکا 
مطال کیا جا ےو اس سے معلوم ہوتا ایض شی او رض ای ہیں _ 

(شرں القاری:۶۳۰) 

حور وف کر نے سے معلوم ہوتا ےک جرح میں نفلت کےکل اسباب پارڈ ہیں جیما کر 

علا مہاب وت العیر رین مایا ے: 


جاتر Sas‏ تست ۲ ۳ 
eT (ı‏ تفای خواہشمات اور اش فاسد ہک مناء ہے برش تقد سن میں کی تھا اد 


زیادوہواے۔ 
KX‏ کر FE... FE‏ جا یر E‏ 

روالحرخ مُعَد عنم على اسب )واطلق ایک جماعهُودکن مَعله ۱ ِن 
صَدر نا من تارف بأسْبابه) لان ن کان عَيْرَمُقَسر لم دځ فی من 
بت عَالَه وان صَدر من غَيْرٍ عارف بالاسباب لم يعبر به أيْضا رفن 
غلا) الُمَعْرُوْح رعن الْعْدِیْلِ قبل ) اجرح فيه رمخملا) غير مبیّن 
لش ہت عارفب رعلی سو وہ یه تفیل 
ففوّفی عَيْرالمَْھُول وال رل المُحارح أّلی من ماه ومَال 
ابنْالصلاح فی مثل هذا إلى الب ۹ 

تچ .ررقم تھ د بل پراورایک یما عت نے ا ےعلق رکی کان 
الک ےک ہاگ رک اسباب جر کے عا م سے لورت ض روا مت ہو( 5 پر 
ٹیک سے )اس س ےک اکر جرح خی رمفسر ا سقس م کی عدالت بات ےو 
ا ےکوگی ‏ تا نکیل او را جح اسباب جرح ے نا وا تلف ے صادر ہو الک 
کوئی بھی رل او راگ روج جرح مل سے پیل تخر بل سے شا مو جب وہ 
عا م سے صادر ہو قول مقار کے مطابق ایی جرح مقبول ےکی ون اس میں تخد بل 
تین زو دول ہے اور جر حکرنے وانے قول پگ لکر نا ا سک ہل چھوڑ نے 
سے بر ہے اس مقا م پرامکن صلاں فو ق فک طرف بل مو -2 بل - 


۶ں قرم ےیاقر بل سم ے؟ 
اس مت ہک تن سے یدرز مل اصطلا حا تکاز نشین ون ض روری ے : 


4 


جر مکیاتھریف: 

UR‏ جر حک کت ہیں جس میں جر کر والا عا م نا تہ جرح کے سات ےکوی سیب یا 
وچ با علت کر کر ال لو ل کے وی ادمز وی“ کراس کل لے کر زر 
ری و ور 06 دن 
بر سر یآمریف: 

جرح مفسراس جک کے ہیں ینس میں جر کہ نے والا عا م نا قد جرج سا تھ سا تج ےکوی 
سب » وج یا عل تک با نکر ےک یس اس دوکر کا م ا سک فلا ں رک تک وج ے 
گار پاہوں- 


تع لم کت ر ف: 

تخر ی ہم اس تخر ب یکو کج ہیں ینس میس تخر لکر نے والا عا م تخد م یکر نے کے اتر 
کول سب یا وجہ یا عل کر کر ے- 
تخر یل شر کت ریف : 

تخر لی مفسراس تحر ب لک و کیچ ہیں جس میس تحر ب یکر نے والا عا م ٹا تہ تعر ب یکر نے کے 
سات سات لوی سیب »وج یا عل تک ییا کہ س ےکہ ٹل اس را وک پرا کی وجہ سے ع رال تکام لگا 
دباالا- 
لزم جر کا مسلم: 

الان کے پار مض نین کے نظ ر را وی کے اندر عر الت ال ےکن ار 
یبرع گار و کی موجودمواورعرا ار ھی مو جو و وتو اس ط رح کے تیا رض کی 
مورت یل سوال ىہ ےک کیا جرح مطل دعقم با ال میس کچ یل ے؟ 

حاف اک جرف ماتے ہی کف لاء عد ی کا لم ہب ہے ےکن جع کی الا طلا قی تحر بی بے 
مقدم سخ اہ جرح مہم ہو یامفسرہ بہرصورت جرح عقدم س کوک جر کہ نے وال عا م نار 
اس راک کے بار ے می ای وصف پر وافقیت رکتتا سے لک تخد ب یکر نے وا ے عا م ناد 


ع ړوار جس می کی ی سس تن 9 
کو رگن یا لوں کب ہک ج رع کہ نے وا عام نال نلا ہر نوی رظ رے ند کے وا ےکی 
تد ا قکرتا س ہک فیک ےک اس راو مش فا ہری ور کو خ ال نی گر میں ا سک ی 
خرالی سے دا قف »ول ت ےآ پ نابز ا بی صورت یں بر رمطلقا مق م موی _ 

کن ماف ابن جرک الا طلا ق تفم جرح پر رای گیل ہیں اک مج سے فر مار ہے ہی ںکہ 
ای تھا ر لک صورت میں عا قن سے نز یک چپ اتیل ہے اورو ول ہے ےک : 


جس عا م ناف نے ا کی جر کی ہے و اسباب جم ےک ب واقف چاو دا لسن را 
کل یم وتیل کےساتھ میا نکی ہے و ای صورت میں تح یل کے متا بلہ س جرح 
مقدم ہوگی اس سورت میں جرح مرک ش رط لک کوک جع مہم ایی دا وک پراش انراز 
نہیں موق من سکی تع بل ھا ہر »وی ہو 


گر نا قد نے جر کی ہے دہ اسباب جم سے واقفی ت یں رکتنایا وا قت نو کنا ےمان 
جر یا نکی تیر قح لت ںکی تو ای صورت میس تحر یل کے متقا لہ بس جرب را 
نیس ہوک بل تر بل راز ہوگی۔ 

۳). ...8تس ری صورت : یہ ہ ےک کیا ایے راو لک جح“ مک یگئی ہے جوت تخر بل 
سے الی ہے شی ا کی تقد بل لک کل ایی جرح مقبول ین ؟ ما این تفر ا ہے 
ہی ںکہاگر عا لم ناقد ا مہاب جرح سے و اف ہو اس صو ر ہی یں ق ل مقار ہے کر ول 
گا جا ےکی الہ تد علامہا ب صلاحع نے ار او یک جم روح کت مس نے کا نها رکیاے 
جرح “مک تو لیت می علا ءاحنا فکان رہب : 

اس تی رک صورت میس حافظ امن ت رکا ےکہ نا کو ل عتا ر کے مطا ان" جر مت ملول 
سے یرک اس صورت می اکٹ حیدشین اور ام احناف کے نز دیک” جر 4 
قائل قبو لکیس چنا نے خطیب بغ اوی نے الکفا ہہ یں علا مہو وی نے الھنہارج شرع مسلم ین 
جا ع شی »لام اکرم سندیی نے امعان اظ ر میں » علا شی نے المنار میں جر مہ مکورد 
کر تے ہو ۓ فر ماک ہج ف ری ہر ے جرح "مک کول ایا رل ۔ علا مہ بد رالد بت 


عرڈانظر OS SEE‏ سام ۳ 
KRE‏ 
(فصل :و) من المُهم فی ها المَنْ رمَعرِقَةُ کلی لسع ) بمن 
تشه وه كني يوم أن یات فی بَغض الرَوَايّاتِ مَكنيا ل 
ین آنه آخر رو مَعرفة سماء المکتین ) وم عکس اقب رن 
عرق( من شمه کیت وم ليل رو مره رن احتف فى کیم 
ویر ریمغرفة رمن ثرت تاه رن جرج له کنیتان 
لد رای رز كرت ر عون ) رقاب 
میا مور میس سے امو ںک یکیو ںکی حرفت سے جو 
اپنے ا م کیہا تور ہوں اورا نک یکول یکنی ت بھی موتو وہ اس سے ما مو نکی لک 
یح روایات مل و هکیت کے سا ےآ جا سے کہ بیان موک وولو اور ے اور 
( ای‌طرر) کیت والوں کے اساء( بھی ام امور یش ہیں ) اور ہے پل ےکا اٹ 
ہے اود ا سک محرفت ( بھی اہم امور شل سے ہے )کے کا ام ال کیت ہو 
اور ے بہت نیل ہے اور ا سکامحرفت( بھی اہم امو ریش سے سے ) ) سک یکنیت 
ٹس اخطلاف ہواور یہ بت زیادہ ہے اورا ںی مرف کی ( ام امور مل ے) 
کک یں بہت زیادہ ہوں لا این جر ا کی رو تس ( ایک ) ابوالولیر 
(دوسرکی )ابو ا الہ اور( ا کی مرف کی اہم ا مور یں سے سے ) جج سفق 


اورالقاب زیادہہول _ 


تر تخد ل یکی بیش سل ان کے اتم ا مور س سے چرا ماو رکا تذکرہ ہو چکا 

ہے اب دوپارہ اک سمل اوآ کے چلاتے ہو ماق سا اں اہم اھ رذکرف مار ے ہیں ۔اس 
یرت سے اس کت اورالقا بک وجہ سے پیا ہونے وا اشنا «والتال سے نے کے 
لے اساء نیت اور اقاب کی مرف تکا بیان شروک ہے یں ۔اس بک کا دارو مرا اسم ء 
کنیت او اقب ہےلہذ اپ جانا ضر و رک س کرام .کیت اور لق بح ریق بل _ 


اس مکی تریف: 

اعم اس ف کے ہی لک زا ت گا کے لئے علامت کے طودر پش عکیاگیاہو۔ 
کنی ت ک آمریف: 

کیت اس لفن اک وک ہیں جواتش وف ہآ ہام واجدادکی طرف + دفعہ ٹ ےکی طرف اور 
مق وفع ما ںکی طرف ند یکر نے ے وچو و سآ ج ہے او ریم لفظ علا مت وتشای کا درج 
ال کر تھا ہے مشلا این ج ۔ ا ویضہ ام الوب ء این علیہ اہن ماد ابوا حا وره 


اق بکیتحریف: 

لقب اس اف کے ہیں جک قابلیت وصلاحیت مر یاک منصب ومقام بر یا نت ور فت 
پولا ت کرجا مالسلا یراون الہ عمش مذ اء ع دادو غر 

اسماء ءکنیت اور القاب کے ہی کته کے لے ا سآن کے طا ب ودر رج لل با تڑں 
کی فصر صی نجرد یاعد _ 


و سی امهم فی هذا القنْ ( مَعْرقَةُ کنی الْمُسمَيْنَ ) ا أن ےا تم امور 
میں سے سان اں ام ار ہے اتا ضرو ری کہ ج روا 5 عا م طور را ے تا مول کے ساتھ 
مور ومحروف ہیں ا نک یکنتی ںکیاکیا ہیں؟ اور ہے جانا اس لے رو ری ےک اکر وی 
سنه میں | سے جر تک رکذت کےساتھ زکور موتو ا کول لیر سل راوی رشا رکریا 
جاے بل ال پا تکام ہو جا ےکہ وی دا وک جن کا فلاں نام ے ےکوی بر نس 
ےا ایک را وک عبرا لش بن شداد ے جاک نام سس تور ومحروف جرف روایات 
وی" کیت کے سا بھی آیا ہے اب ج کو یتلوم ہوک کراب لیر 
کیت عب اہ بن شدای ےلو وه ابوالولی وکر و راو ی شا رکر ےک الاک ہے دوفول ایک 
تی ذ ات کے لے ہیں ایک ا کا ام ے اوردوسرا ا سک یکنیت ے۔ 

(شرں القاری:2۳۳) 


۸).... ول سے شور ہو نے وا سل روا کے اسیا رکا یلم : ۱ 
رو مغرفة «اشماء تین وهو عکس الْذِی قله اشن کےا ٢م‏ مور شس 
ےآ ال | ام انا ضرو ری ےک جور واچ عا م طور فقو ل کے ات پور ہیں ان کے 
اما کیا کیا بل ؟ اور بان ای کے ضر و ری س ک ایی را وک جوکتیت کے ما کم شور ے اکر وہ 
کسی سند سکنیت کے جا سے احم کے ساتھ کور موتو ا سے لیر سل راو ی نش رک رلیا ہا ے 


E (4‏ ان روا ام یں ہی ا نک نام ہیں: 

(و) مَعْرفة من شمه کت وهم فلل این اما مور علوال ام 
ارات روا کو پاتا ضرو ری ےک ہکا جر و سے ل‌طور پگ نام سے پک ہکنیت نی 
ان کے نام کےطور پر استعا ل کی چا اب روا کی رو" 2 ہیں: 

الف:.... ا لیے روا ج نکی صرف و کتیت ے جو نام کےطور پراستعال ہو ے اورکوی 
کی گیل ملا اپ لال اشعرکی اورا نین ءا نکی صرف ایک ت یکنت ہے اس کے علا دواو 
اورا نک یکنی ت یں ے بل ایک دفعران سےسوا لک یاگیا تو انہوں نے جاب دی اک 

”لیس لی اسم » اسمی و کنیتی واحد“ 

7 7 ای روا نکی ای کیت وہ ہے جا کے نام کےطور پر استعال موس » 
اس کے علا ووی ا نکی ای ککنیت ہے جو بطو رکنیت ا سمال مون ےو انیت کنیت مون ے 
۔ ا ال ویھر دن تھ بک کرو بن : م ا صا ری ا نکی بطو رتا م وا یکفیت الوم ہے اور دوس رک یکنت 
لور ہے اک طرر] فا سبعہ ٹل سے الیک ابویک ب کیال ر بن عا رث ہیں ا نکی یٹور تا 
وا کیت ال ے اوردوس رک یکنیت ا بدا لرکنن ہے ۔( شر القا ری :۷٤ء‏ ) 


رق مَرقة رمن اختلق فی تلم ہم گییر: ا ان ےا تم امور شس ے۔ 
وسوال اہم ام روا ک یکیو کے اختلا فلو چات سب اور رات ف کنیٹ روا صد یٹ شش 
ہت زیادہ ہے اورا اختلا فکو جانا ال لی رو دی ےک ار یبا راو کی سند یل انی 
مو رتیت a‏ دور ی کیت کے سا تھ زور مولو نے عو کل راو دشار 


عرڈالظر میں سے مس سی ہس ۱ 

کرلیاجاۓ ملا ا امہ بن ز یل الب بے ایی روا ے اس کے نام می کول اشتلا ‏ فس ات 
ا سک یکنیت غلکا نی اتلاف ے ضوں نے ا سک کیت ابوز بد زک کی سے ءلبعضوں نے اس 
کیکقیت ابوشھ ذکرکی ہے جک تضول نے اس ادج یکفیت ےک کیا ہے لبڈ ا لاف 
کنی تکا انا نہا یت شرو ری ہے۔(شرں القاری:2۳۷) 

ای یں و وصور رت کی وال سک داو یک یکنیت میں ن کون اخا ف د ہوا لتد ای کے نام 

س اختلاف ہو ٹلا ایک راوی ہے ابولصرہ غفاری ا نک یکنیت ابو بصره ہے اس سکوی 
اخلا فی ں گر ان کے نام کے بارے میں اختلاف سے لعضوں کہ اکا نک مکیل ہے 
بحضوں کہا کہا کا نامز یلد ے جب یلو ںکاکہنا ےکا کا نام بعرو ین الوص رود ہے۔ 


یں بہت زیاده اکم اس کے ضروری ہے کیک ںکنیت ولقب کے بد لے سےا سے 
تیور سل را وی لاملا ان جر ایک را وی ہے ا سک یکنیت اہو الولید ے جب 
ای کی دور یکنیت ابو تالم سے اک ط رح منصور بن فر اوی سی ایب رای ےا یک تن 
یں ہیں اک اور وسر ابا ورس ری ادف 


تور تک مراد تن اور اقا بک صو رس : 

کرٹ ED‏ ) ...... ا عبارت می لآنو کا لف آیا ال ےکیام رار ے؟ + 
رارت وت ےکی القاب بی مراد ہیں مان تقیقت ہے ےک الاب ناس ہیں اور 
لوت عا م ہیں نحوت جس طر اقا بکوشائل ہے اک رح کش علا ت یا تع تکی طرف 
نہ تکوگگی توت شا ی ہے القا بک یکئی صورتیں ہیں : 

الف: ا چو ایے القاب ہو نے ب کہا نکوردایت ودرایت دوٹوں گل میں وک رکرم 
7 و اور لب ہو ]موم حر ت کل یکرم ار 
وچک هچ ت عظرزت فاط ے ا را بر ز ن پر باکر لت سے ےا اه نے 


ال یا ابال زاب کہ کہ پاراال ے کار لقب حت 
نین »ابوک بھی ان کے الق ب تھے 

ب :...... تش القاب ا ہے و2 نی یک زک رکر نا ال اکر ا لے القاب قب 
راو لگرال لقب کے علا و هک دوسریطررج دک کر سکول اورصورت اکر سے و یراس 
اق بکو کرک ےکی اجان تاش - 

...ات ار کور پاما روا3 کے لئ صرف ایب ہی القاب ہیں ال کے علادہ ا کو 
کک کاکوق ذر بست ای ق بک زک کر تلا ٭ ۶۰ں وفیره 

ای طررج معاد یہب ن عبر اگیم لب کی طرف جاتے ہو سے راستہ میس بتک کے ے اور 
راستتہپھول کے ےج سکی وجہ تال "ضال کے لقب سے پکاراجانے لگا۔ ا نکواس کے 
علاو هک اور ذر لچ سے پا را جاسم موق اس سے پک ر ےک اجاز ت نیل »پال اگ ای کے 
او هک اورذر لہ سے بار ےک یکوئی صورت تمو کول ۶ رل _( شرع ا ری :۴۸ء ) 

۲ ۲ دی چم ...... ری روروت 
(و) مَعفة نوات کته شم و ) کابی (سخاق یرای بُن 


کے لے او رگا شتا حالاگ 


اق المَدَیِی اد نبا عالتابن وفایده معرفیهتفی الط عَمن 
سب لی أو ققال ان اق نیت إلى الَضجیف وإ الصوَابَ 
0 ناف ایا کاتاه بو ای سای و 
...اور ی کی محرفت ( بھی اہم امور یل سے )+ یکنیت اس کے 
وال کے نام کے موان مادعا ابرا تم بین اسحاقی مد ی »ع این میں 
سے ہے اورا یکی مرف تکافاد و یہ ےکا سق سکن ہو جات هک جو 
ا کال کے با بکی رف و بک کے لول که رن این اس ق ت ا ےی 
کی طرف شو بکیاجا ےگا اود و ںکہاجا تےگاکہدرست ہے ے اخمرناالواحاق یا 
اس کے بیس بی اسحاق بن ال سای 


ان کے اہم امور یس سے با ہوال اہم اھراس راو یک محرت ے سک یکنیت اس 
کے باپ کے نام کے موافی مولا ابواسحاقی اب رام جن اسحاقی من ایک رادک ے اور 


عرڈانظر ی نس ۳۳۳۲ 
تا بی ہے اس کے وال رک نام اسحاقی ہے کی وجہ سے اسے این اسحا کین بھی درست کے 
اورخود ا نکی اص٥‏ لکثیت ابواسحاقی ے ار یکوان کے وال کے نا کا گیل ہہوگا ز وہ این 
اسیا کی شی و لک ےک اک یہ قلط ہے اور ابداحاقی ہے یا اس این اس ودره 
تتفل راوی شا رکر ئ ےک الاک رال راو یکو ال وا سیا کب کی درست ہے اوران اسحا کب 
بھی درست کوک یا تیل کردا کیت پاپ کے نام کے موافن ومطا بن موی _ 
ا 11 قری: 

گا ول تتاب میں علق شہرکی طرف نیس یکن موت یھ یٹ یکھا تاودا تور کی 
طرف تست نوزم کہا پا ہے الیل من المد ی کے والدھ دشتو رہ کے ر سے دا سل تھے 
قاعدہ و قیااس کے مطابقی ال ہف یکہناچا بے تا رخلاف قیال یبد بٹی سے مور مو گے _ 


ان کے اہم امور یں سے تجیرہوال اہم امرال راو یکی مخروت ہے جن سک نام اس کے 
پاپ کیت کے مطا بی »ولا اسیا ن :نالعا یی لهز اجب ان وال ابد اسحاق ہیں 
یداو خودابن ال اسحا ہو سے اب اک ابن ایی اھا کہ دیا جا ے فو ا کو فلس 
جھنا چا سے ا فر کو چا دک فا هه کید بل واقلی ب کی صو رت مل ز مشو زر 
مواور بن ہا کی لیب وای صو رر کو رمک مکی وج سے ستطفل را وک تو رکر یگ 
کوج 
یگ ین ایک فی ہی طرف موب ہے یی *ن سے کر تک اوق شم مو 
میا تھا۔ا ت امن ال اسحا یی ایی ےک ر کح ہیں - 
لو لو چو .مر 
رات ( تیه نة َرحیه ) کابی یرب الانضارِی وام رب 
صحابیان انوا سم جه سم أيهم کالیعبُن اني 
هگا بای فی الاب فیظن نوی عن أيه کما وَقَمَ فی الصَجيّح 
عن عامر ين سَعُد عن سَمُدٍ وهو َوه ویس آنس بخ ریم واه بل 


عر چانظر صمح ای نو - RO‏ 
٦ ۱۳ ۳‏ ورگ ار ی اکر E‏ اد و ا 
بوه بکری وشیخه انضاری وهو انس بن مالك الصحابى الْمَحْھُوْرٍ 
و رك در بط رو رز گرا 
ولیس الربیع المذ کور من او لادم 


بیو یک یکنیت ےشل ہے بے ابو ایب الصا رک اور ام الاب »وولو ںہو ر سی لی 
لیا ال کے استادکا نام اس کے وال کے نام کے وان ہو بے رب بن ال سجن 
الیش روایات غل اىی طرح ےا کان »و۳ سےکردوداللد سے روا کر ے 
ہیں یاک لکن عام بن ع رگن سحد وا ہوا ہے ہے( اتاد )ا کا والد 
ےکن رک استا دنل ا کا وال ہیں ہے ی ا کا وال ریس استاد 
اصاری ے اوراس مین با شش پورسھالی ہیں اور رخ اس( ی انصاری )کی 
اوللادییش ےکی یں - 


اشن کےا چم امور شش دول اہم رای رای ےیل جانا ہے جس ک یکنیت اس 
کی ز وج ہک یکنیت کے مطابقی »و ابو الوب انساری بو بيس ا نکی وی یکنیت ام 
الاب سے پیک هد رال دوفو میاں بیو یک کیت ایک بی بے ”الاب کی طرف 
کر کے چا کا جانا اس لے درگ چک بن ریف سے یبال لیب 
کی ہا م الاب یا م الب کل تیگ ابد الوب تیه نے وازلہ ام پا لصواب 


۵"( 7 وال ورس نام یں موافقت رک وا نے روا ام : 

اشن کےا ہم ا مور می پر وال اہم ار ہے ےک اس راوی سس تخل جانا ضروری 
ہے جس کے وال کا ماو رای کے استاد وچ کا نام ایک جیا وم ریخ بن اکن اش 
اس یم رب جواٹس ےر وای تکرر ہے ہیں دہ اس کے و الیل یک اور ہیں وال کے 
ہیں ا کو جا کا اهب ےک کو ین ہے تاه ےک رگج اپے والد سے روابیت 
کہ تے ہیں رک کے والہ انس بیرق ر کح ہیں جب ری کے جج ونس انصاری میں 
یجن انار ےعلق ر کے ہی ں لیذ ار راو حر ری اش انصار یکی او لا و س سل پل 
ا سرک یکی اولا دشل سے ے۔ 


تاه ال لج پیرا موسا ےک بہت سا ری ال اک ہیں ن مس راوک اۓ وال 
ہن روا کرت ان عم بن سعدن سعد رح فارگ یک ایگ سند ہے ھال عام رن حر 
راد دالد سے روا کرد پا ےگو یا سالگ ہے اود بھی ہے لہ وه سر 
کن ربچ بن ال من انس خن ایا نی شک راو یکا وال راس وال ری واو رخ بھی .کوگ وال 
ا ری سح انس انا ری ہے۔ وا لداع م 

۱ نے بی دی ور 3 
رو) مره رم یت إل عَيْ یه کالمفتاه بن سوه ) نیب إلى 
لاو الزغیق لئ باه ونم هو معدا ن عرو (آز) يبر إلى 
ئې کس علب وُو َال ن رهم ین مَقُسَم أُحَد الما 
وغل اسم ۳ اشتهر بها و کان لایْجب أن یال له ابن عُليّة وَِھٰذا ان 
برل الشافعی آنا اسماعیل الی بعال له این 2ة 
جر .....اور ال (راوی) کی مخروت ( بھی اہم امور بل ے ) ہے جو اپے 
وال کے علاوه دوس ےکی ط رف ضوب بو لس مق راد بن اسورجو اسورز پر یکی 
ط رف ضوب کوک رال نے اسے مدر بولا ہیا نلیا تھا عا لاک( یقت میں ) ہے 
مقر او ین ترو ے اور( الک مرف تک ج )انی ما کی طرف موب ہو کے 
ان ی اور بابرا کیم بن يب م ہے اور علیہ ا کی ما کا نام سے دہ ال 
سے ہو ر ہہوگیا تھا اور یرال پا تکوپ رگ کرت تی کےا سے ا بن علت رگا جا سے اور 
اک وج ہے خضرت امام شای فر ما اکر تے ےکاخ رع امل ال زک یتال لاہن 
لے( ن یں اس اس ک0" 0 080 


ان ےد ۷ تاق بان نے 
کک تا ی وچ تالم کے عاد هک دوس ر ےکی ط رف طسو بکرو با ہومشاا هت راد بن الاسود 
اس مقداوکواسووز پر یک طرف ضو بک گی بل ےمعلوم پوت ےکا سووهق را وکا والر 
ہے ما لا مق ادکا وال سول بلاک کے وال ہکات مرچ 

ا کو اس لع جانا ضرورگ ےکا ہے راو یکو جب ال وال دک طرف عضو بر 


وک کیا چا ےو اے سل راوی دش رک رلیاجاۓ مشلا عق د اوہ ا ووک جا ۓ مق رازن 
گر کہا چا سے تو کول ی ے متقداد بین اسو وکوا کک راو یھ شخ اور مقدراد بن عر وکاک 
راوی کے ٹیٹے _ 

مقدادکااصل وال گرد ےکن چگ سود نے اسے مد بولا ٹا تایا باق بای ہون ےکی 
وج سے اسے امو وی طرق ضو بل دیاگیا۔ . 


(lz‏ یں والد ہک طر ف ضوب روا ٣‏ ا م: 

ان کےا ہم اموریس سے تر مواں ام اھراس را وی ست خلت جانا ضروری سے ج و 
کک وجہ سے ا سکی ما ںکی طرف تضو بکیا اج مو مشلا اہین عل ا کا ال نام امل بین 
ایام بم ہے ا نک شرت رال ہوتا رال اپ وال ابرا کک طرف مضوب 
تی سکیا ہا ا باک ال علی ہک طرف ضو بکیا ہا ا ہے جوک بقول٭ض ا نکی ماں ہے یا بقول 
شض ا نکی نا ہیں ب رمال بین اپنے اصل نام سے شور بو اور نبت ال الوالہ سے 
شور مو سے یل ای" امن علت سےمشپور ہوۓ اکر چ را شور نت پر ےو کل ہو ے 
تے بلک اگوار یک نها رکیاکر تے کے اک وجہ سے امام شاق جب ا نگ سند سے رواعت بیان 
کر ے اوو ں فر ما تے' اخ رعا مل الین ی یال لاہن عل کا ناگوا ری نو 

ابین علی کن ےکی صورت ٹیل گواری کےگئی اسباب ہو کے ہیں )الت وو اسیا ب تر مین قاس 
ہی لک مات ال وجہ ے ناگوار یک ها رک کر بیعلیہا نکی والد ہیا اف کا نام ے او کرو 
خا ت نکا نا مگ بر در ےک چز ہے جقنا شید ه رکھا جاۓ اتا بتر سے دوسرکی دج کی موق 
ہ ےک کی ناوات ف لوگ ان کے شب کے پارے مس چول رال کر ناش رو کرو ہی »اس 
لئ ناگوار یکا ا تہارک تے تھے۔ 

KK دہ‎ Kr... KK ود‎ 

( أو ) تيب ( إلى غَیْرِمَايَسْبَقإلی الْفَهُم) کالحذاء ظَاهِره أت 

مَنْسوْب إلى صناعیه أو بها لس گنت وَإِنمَا کان بُعَايِمُهُمْ 

و دامن نيب إلى حدم اومن یاس بِمن وَاقَقَ امه اِسْمَة وَإسم 

بيه سم ال المد كور 


تر چے:...... اور( اس راو حر ت کی اہم امور مل سے ہے ) جوامکا چز 
طرف ضوب بو سک طرف ز جن سوقت لتا ہو کے وز ا مکرااس سے خظاہ کی 
ہوا ےکہ یہ چو ےک نع تک طرف با ا لک تار تک طرف وب مان 
بات ات رل کل ی( را وی )ان کے پاش تماقا ںکی طرف شوب 
بوذ ها نیک مس تین اس یسل( مان بک ) 
را تی سے بور م گیا ) اور ای‌طرر وہ (راوی)جورادا ی رف وب ہو 
قذ اس صورت می التباسں سے اص نہیں * جس صورت میں راو یکا نام ال کےنام 
9 مد وا نت 


0208) ج‌ٴےےسھ ا ے٠‏ ۳ 
نکی طرق عضو بک یاعگیا بو ما صلی مغہوم ذنقصودجللری ذ جن می کی ںآ کک اور شو ب الم 
سے جومطلب جل ری ذ جن میس 7 جا ے وومطلوب فقو رال سے ا سک یکئی صو ری ہیں: 

کب صورت )..کوئی راو یکی نا عرس وتف تکی طرق ضو بک گیا ہو جیے خالد 
اراءلفظظ مذ اء سے فو را می ذ جن مم لآ تا کم یاو جو ے جزاتے #ول کے اورا کا کار ویار 
کر تے »ول حا اکلہ ا شک صضحعت کج ے ا نک کو یل تین تھا بل جو ےک صنعرت وک 
والوں کے پا یٹ اکر ے ےج سک وجہ سے انیس حذ ا کہا جانے لگا۔ 

دور بی صورت )...ی راو یکوک فی رک طرق عضو بکیاگیا ہو سے فو راز جن 
7ج ہوک راس قیفر چا سلبان اتکی بھی سے یه شآ باس ہکان عاق بی تم 
سے ہے الاک ہے تقیقت غل ‏ تم ےک تے بلک ان کے ہاں ر سح ےکی وجہ سے 
ال ا نک طفشو بکیاجانے لگا- 

ترک صورت )..... ا راو کے پا می کم بونا ضرو ری ے کو اپ دادا کی 
طر ف ضو کیپات + وگ ا یکا اہیے را وک کے تھے التباس ہوسکتا ہے ج کا انا نام اس 
عنام کےموافن اورا کے والدکانام یل وا نے کے دادا کے موا فی »و ای صورت ٹل 
ووتو ں کو ایک بھی مھا ہا کا ے ج هک فاط سے یاداداکو با بھی مچھا جا سنا سے ہک قاط سے مل 


عو تقر EN rsa‏ 
ایک راو ہے جھ بن سا مب بن بر پم شین کے پال ضیف ہے اس کے دادا کا نام بشر ہے 
بش وف ا سکوداداکی طر ف و بکر رن یش کہا جا تا ہے ء اس کے مر متا دوس اراوی 
ے سکا نا مج ین شر ہے ج وک ثھقہ سے اس کے وال دک نام بشرہ و فرب یں اس راو یکا 
نام بط وا راوی کے موان تن وونوں متام ہیں اور دوسرے کے با پکا ام 
دا لے کے دادا کے نام کے موافی ہے جس سکو پل دانے دای کے باپ اور داداکے نا مک م 

ٹنیس ہوگا و دان دوفو نک محرفت کیرٹ پان ہوگا۔ 

چ سورت ) ..... اس کم میں وه راو یگ اقل ہے جن کا ہے دادایا داد یکی طرف 
مضو بکیا ہا وراه دوص ر ےکی را وی کے سا تھ تال لا ز مآ سے یا نآ سے شلا یهن 
ا ہہ اپ دادا کی طرف مضوب ہیں او رل بین می ىہ اپتی دادی کی طرق سوب 


ہے۔(شرں القاری:۵۲ء) 

A‏ تچ نہب و 
(وَ)مَعرِفَة(مَیْاِنَفَق سمه وم ابه ده ) گالحسن بن الْحَسَنِ بُن 
لسن علی بن ی طالب رَضیٗ الله تعالی عنه وفع کر ین 
ذلك وه من فرع ملس لوق يَف اسم وم الاب مَم اسم 
حورشم اه قصاعدا کابی الیْمَنِ الکندی هُو رید بن الْحَسَنِ بن 
یدب الْحَسَيِ بُن رید بُنِ الْحَسَنِ 
تر جمہ:.....اود(ااس راو یی مرف کی ۱ مور یل سے ہے کا ناماس 
کے واللد اور ئل کے دادا کے چنا م و هن ین سن بن سن و نک لطاب 
ار بت ال سک زیاده دا ا رون شن کے 
اور اوقات راو یکا نام اورال کے وال کا م موق »وتا ے دادا کے نام 
> سا اوردادا کے وال کے نا میا تج اوراس س ےآ ےکک یس او یکن ری 
کرد ہز یل جن تن بن ز هنن من ز یل جک نان ہے ۔ 1 


ان کے اہم امور یٹس ے انیسواں اہم ار ہے ےکا سے راو یک م ہو ضرورک سے 
+ کانام »ات کے با پ کا نام اود اس کے دادا کا نامک بل تلف ایک جیما ہوم شا سن مین 


عرڈانظر 30999 6 PI‏ 
بھی ز یا دو مواقفقت ومطا بق تکی ا مثا ل مو جود ہین جن سک زیادوے زیادہتحداد چو دم کی 
سا کات ک0 


ان کےا چم امورمیں ےت رای 
کا اپنانام اور با پکا نام جوژ ےکی صورت می لآ ک ےکک مایت وموافققت کے ساتھ 
جا سے شلا ایک داو ہے ابو ال نکن ری ا کا م یلد ہے اس کے با پک نا معن سےت مل 
ا E‏ ہی چ ڑ ےک صورت شلک 


( أو ) اق ام الراوق و «اضم یه وی خَبْجِم فصَایذا )یمان 
من مراد عَنْ مراد لول رف بالقَصِير والثانیأبورَاء سار 
الا ان ین الصحابی ری الله تغالیعَنهُ و یمان عَنْ 
اا و ول در ت الطبرانى الا ای 
أَخمّة الوَاسطى وَالالِك این عبر خدن امعم ی الْمَعْرْوفُ بين 
بنب شرخبیل وقد یم ذلك پلراوی وشیجه مَعّا کابی الْعلء همان 
لَْطارِ مَشْهوّر بالرویَة عن آبی علی لها الخداد و کل منهما 
َة خسن بی مد بن الحَسَنِ بن مد بن الحسن بُن أَحْمَد 
فَاتفَقَا فى ذلك وافترقا فی الُنية الب إلى اب وَالصَنَاعَة نت 
فا ا ر ا 

رم ELE‏ 
ہکا نامادراس سس کا نام ایک جیما ہو گرا نکن ترا نگ نعرا نک 
ان شش سے ليم( کے لقب )سے مروف سے دوس را ایور ہاءعطا ریاس شور 
سا امن صن ای سے مور ہے اور( الک دوسری مثال ) یمان 
گن سما نن سلیما نک پل امن ات الوب یراس دوسا این اج واگ ے 


تل ہتس را این درکن دسج جو این بت م رک محروف سے او رب 
اوقات ہے چز راو اور وولو ٹیس ایک ساتھ مون ے لا ابو اللا ءا 
عطار ہے جوا اصیہا ی داد سے روا کر نے می شور سے ان دوثوں س 
سے رای کا نام تن مین امھ مین تن من ات نع سن بن اہ سے ال میں ہے 
دوفو لفق ہیں نیا نکنیت اورصنحت وش رکی طر نبت هل جداہیں ا عم میں الو 
موی ر ی نے ایک عادی رسالرکٹھا۔ 


ا۴)... راوگ او رای کے شیوخ کے متام وکام 

ا لفن کے اہم امور یل سے اکیسوال اہم اھر ہے ہ کال داو کے پار ے شش ان 
ضرورک جس کا نا مکی مرا وطبقات کک اسا تہ کے ہام ہہ و ]شی شماگرداور اسا نهک 
ایک جیما م »وا ایک سند ای رح ہے ”گرا گرا نامگ نعمران' ان تلو بیس سے پیل 
مرا تمس لقب کے مات طق بکیا ات چاو روہ ای سےمشپور ہے دوس را ران دہ ہے 
کی کنیٹ ابورا ءعطا رک ہے تی راع ران صحا لی رسول ےن ران تعن _ 

ا کی دوسری مثا ل لیما نگن سلما نکن لمان“ ہے ان تنول یس سے ملاسان 
بن ام بین الب رای ہے دوسراسلیمان بن ا وا تی را سلبان ین عب دار 
د ہے ج کاب بت تک کے نام سے روف ومشپور ے۔ 

شض اوتا ت استاد اور شا گر رکا نا مک تتو کک یسال ہوتا ہے لا ایک راوی سے الو 
الحلا ء مز الى الط رى ا سے ابوی اصیہا فی عدادء ابوا لحلا ہم اف عطا رال اتا سے 
رای کر سے شک بور ہے ان دولوں (استاداو راکرد )کا مکی چو کک یک جیا 
ٹورف رما : 

ابوالطا ہر الى العطار ...ن بن اج بین جن ناه بصن مین ار 

ایی ها هداد ...سن من ات ب جن بن ان تن بین ام 

پا پچ کک دوفو نکب نام کے اظ سے ایک جیما ہے الہ تکقیت ٭ پ ورملق کے 
اظ ےدونوں عفر سے وو الط کر: سن 

.پل کیت اد احلا م ہے کہ دوس ر سے( می چک یکنیت ا ول ہے_ 


عرو ار محر ےس جس سای دا ساس ہی۔۳۳ 

--٦‏ یپ شک وج سے عطا رک ہیں جر دوسر ےلوحدا د کے ہیں- 

ی لا عطاق ہمذ ا نکی طرف شوب ہے کرد سرا ایا تک طرف شوب ے۔ 

وی نام ونب مک بو ںکیک استاداورشاگر تفن وتر ہیں الہ کیت شر اور شک 

با کلف دمتاز ہیں ۔اس موضورع موی المد بی کل ایب تفر مایا سب 
وید گی ۷۳۲ KKK‏ ۵ 

(و) مَعْرِفَة رمَن انفق سم یه اوق عَنه) هو نو ع ليف لم 
عرض له ان الصلاح وه رقع لس عن من يعن أذ فی تکراز أو 
لین هبار عن مُسُلم وروی عَنه مس یه میم 
ُن راهم الفرادیسی البَصَرَیٗ والراوی عَنْه مسلم بُىُ الاج 
لمعب صَاجبٔ الصٌحیٔج وکا وق ذلك لب بن خُمَبُد ضا زوی 
عن مُسُلِم بن رایع رزوی عنه سم بناج فی صَجیجه ييا 
باه الَرَحمَه پعییها وینها خی ینب یر وی عَنْ جشام و زوی 
عنه هسام يځ مضام ان غروَة و من رانو والزاری عَنه ام 
نی عبالّه لت وینها اب جرج ری عَن جضام وروی عَنه 
شام قالاغلی امن 4و١‏ وَالّدُلی اد مُوسشت الشنعانی وَينها کم 
ی میب رزوی عن انآ یلی و عه ان ی بلیقالعلی عبر خن 
وَالّاڈلی مدب عبالرخدن المد كور وميه کیره ۔ 
2 چم .....اورال راوی اک مرف ت بھی اہم امور شل سے سے ۔ٛخس اوی کے 
اوران کے شاگردکا نام سا مواور رک لطی ف م ےج کواب صلا رع کر 
نی ںکمااور ا کا فا ده الا یکو دو کر نا ے اس سے سںکوگمان ہہوتا ےک گگرار 
f‏ سے یاالٹ وگ ےا سکی مثالوں میس ایک بی ےک بخاری رو حیلم 
وروک عم“ رک من ابا یف راد کی برک ہیں لہ ہا کی کے 
کردم بن تاج ترک ےکم والے ہیں اک طرح بیصورتعبد بن یر کے 
لے وا مو س کرو من برا کیم سے روا تک ے ہیں اور انس سے کم 
کا نے اہن شس هید وان کے سات الیک هد یٹ روا تک ہے اک 
ٹس سے ناک ہیں »ال نے بشام سے روا تک ہے اورال ے :شام 


بام م ردو ین اور ای کے محص بھی ہیں 
اورا کا شاگرد ہشام بن عیرست ہے اور ال ٹیش سے ان بر ہیں 
کرای نے ہشام سے روا تک ہے اور اس سے ہشام نے رو ایتک کان اع 
گر دہ ےچ اد اسف متا ہاور یس ےم بن وہ می یک 
اس نے ان ای ھی ےر وای تک اوداس سے این ال می نے روا ی تکی جن ای 
٦٦‏ 0" 


مو ہپ کڑس 
کے اکر د کے جما م ہوتا ےن ر اوی کے شا گر دک جو نام سے ونی اس کے اتا رکا کی نام ہوتا 
ہے۔ ا لکا جات اس لئ ضرددی ےک میس القباس د ہو ہا سے یا اتاد وش ارو کے نا مور 
و فو جن ۱ 

موو رن اصول صد ٹکا بت اہم اور نا زگ موضورع ہے :علا م اہین لا راکو 
اپ قد مہ یل یر لاسکی ما ہیں ۔ 

یل مثا ...ام فا رکی کے امتا وکا ع مپچھی سم ہے اوران کے کر دکا نا مگیم سے 
ہار کا امتا دو مسلم بین ار اي فاد ری چیہ ا نک شک کم بن تا تی ہے 
ج نکی و کناب * لم سے نس من ےکوا کی فلکم وگو و دونو ں لماو 
ایک که لگا اور کک کہ با ری نے اہن ش گر کم کے واسطہ سے روات میا نکیا سے 
الاک یقت کے فلاف ے - 


نبت فراد یل ن: 

اس ال شس امام بفاری کے اتا وم ب ابرا مینست فر ادیک ند سے رف کے 
رہ کے س ات سی کاب دا اتف کے اتر ادیک سمعا یک کاب“ 
لناپ" ملا ے مرش کے ایک علا ہکا نام سے ء امام معان نے ان تا م افرادور چا لکو 
جع کیا ہے جن ہیں فراولی ںکی طرف و بکیا جاتا س کان ان ر جال مل امام غا رک کے تن 
مسلم ین ابا می مکا کل ہے مز یھ برآ ل ہ کہ فر ادلی شام شل ہے اور اف این تر نے 


عرو لطر 0720 مم وا ۔ ٠‏ 
فراد کی کے کے بعد بص ریبج یکہا اور یره ۶را شل ہے شا م کل :لہ ال سے عر یی 

امون ےک رد “ کین میں ہو ہوا ے_ 

7 ےی کب پا ی 

ابرا تم کےساتحدفرامید ی کی ضبدت کور ہے اعصرہ کے با ول میس ےکور امیر یک یکہا 

جانا ہے اس فاظ سے مافظ این جج رکا ابص ر یکہنا بھی درست ہے اور ا سکا مو بد سے۔ چنا 

امام معا یت رییفرماتے ہیں: ۱ 
فراهید بطن الازد سکان البصرة و المشهور بهذه النسبة ابو عمرو 
مسلم بن ابراهیم يم الفراهیدی الأزدى القصاب من آهل البصرة من 
الشقات المتقنین» روی عنه ابو عبداللّه محمد بن اسماعیل البخاری 

»مات سنة ۲۲۲« (الأنساب للسمعانی: )۳۰۱۷/٤‏ 

دوسرک مثا ل :.... بی صورت عا ل کید نید کے اتکی جک مس روا یک ے 
ہیں او رکم ان ےبھی زوا یکر ے ہیں تو امام بغار یکی رع ا نک تلم بن اب رام 
فراہیدری ہے چیک شاگر زسم بن انق ری صاحب کم ہے۔ 

تیسری مثال:..... ی جن اوک ایک داو اور محرث ہے یہ ہشام ای ایک ہج سے 
ادایت بیا نکر تے ہیں اود اک رع مشا م نا ی ایک شاک دان ے روات میا کرت ےگ یا 
اتاد وشاگر ووتو ں ہشام ہیں لگ بن ال کی ر کے غ واستا دک نام ہشام مین عردہ سب ہک 
بی بن کرک رگ بلا کا اکر د ہشام بن ابد الد دستو ای سب ۔ 

ی مال: ...نج ایک راوی او رحد ث ہے شام نا ی ایک ی سے ردایت میان 
کر تے ہیں او را ی‌طر ہشام ا ی ایک شا گر ان سے روا کر وی استاد وش ارو ام 
”شاعم ہیں ترا جح انم شام بن عردہ سجن ان کے شاک رد6 نام شام مین 
ابووسف صعالٰی ے۔ 

پا هیال ...نتم ایک را وک او محرث میں امن الیم نا اج ے روات 
کر تے ہیں اورا ی رع این انی سنا ی ایب اگ دان سے روا کر ےکوی اس دوشاگرو 
دونوں جسنام ہیں الہ کا ع م عبرال رگن امن ایی سی ہے کبک ٹاک دکا نا مھ ین عبرا رن بن 
کاس مکی الیل اسنا وحد یٹ ٹس بت زیاد مو جود ہیں 


انظر BR o‏ ۳ 
(و) من الم فی هذا ال رمعَرقَة الاسمّاء الْمُحرَدَة ) وَقَدُ حَمَعَهَا 
چرچ وت 
نای عة ضرق فی تارنجهما وان بی ام فی فی الحرُح 
کت وَمِنهمْ من اف لاب كالْعَحَلیٌ وَابْنِ حًا وَابْنِ شاهین 
ومهم من ره مرن کین عَدِیٗ وان باد یا وَمِنهُمْ مَنْ 
قد بکتاب مَحْصوص گرخال یحاری لابی نضر الگلانادی وَرِحَالِ 
مشیم ان نگر بن موه رها معا بی افطل بن اهر 
ورحال آبی داود لابی یی الحبانی ودا رحال التزمزی ورال 
النسشائی لِحمَاعَ من الْمعَارَبّة ورحال الستة الصَحیحیُن وب او 
ری والنسایی وان مَاجَة لِعَبْدٍ الْعَيِيَ لد فِیْ کتاب 
الکمال تم هب لمرٍی فی تَهذِیّب الکمال وَقَذ لخضته رَد عَلَبِْ 
با یه وة ته زيب یی وجا تع ما سمل عّوین 

آھ* 


ات نے ا می یح 
سب تیه ان سعد نے طبقات میس اوراین ابوطشہ اور بفاری اا رل 
یس اورائن ال عاتم نے اپ کاب ابر داتعم یل اوران میں ے عضو 
نے صرف تا تکوش ے کےا ہن ع ری اوران حبان ادرائین شا ٹین ۔ اوران ٹل 
ہے حضوں نے پروی نوم« کیا جیے اب ونھ رکلا از یناب ر پال الظاری 
اور اد وکاب رال سم اور ابو ال بین طابر یکناب ر جال الا ری 
وم اور ابو جیانی کی کاب ر جال ای داد اور ای طرح مض لی علا ی کتب 
رال التر ہی اور رال اقا ارھپ ران مق ری نے پچ ےکابوں (بفاری کلم 
اوداوں ری نمائی ای اجروغیبرہ) کے رجا لکو ا پٹ یکناب اکال س( مج 
کی رم زی نے اسے قب جب انکرالی' شش مب بکیاا ورس نے ا ک نیس 
کی اورا کل زو ںکااضا ذگیاادرش نے اس کا نامع یب ااجمذ یب رکا 
اورے ناب ال سے ایک مت زیادثی کیساتھ(منظر پر )آئی ے۔ 


ان مور شل یمو الا اهري_ کات رداق ,کم ہنا ضروری 
ہے جن سارک مک کوئی تقب کیت کرک لک الیل نام نی ذک کیا جا تا سب چند 
امد یث نے ای تام روا کے اا بک بلاک قید سکیا ےہ خواو دہ رواة نت ال 
شاه اعت د ہیں پان ۰اس ططر حک کسی قید کے خی رتا م ہجرد سا کو کرد یا ہے چاه 
علا مہ ابی سعد نے طبقات این سحد یں »ان ایی قش نے اپ تار ں۰ امام بخاری نے ایی 
ر ش اورامن اي عام نے اپ یکناب جج وتحع ل یش ان س ب کو کیا چ ۔ 

ہن علاء نے اساء ره کے و نے روا بیس سے صرف قروا 3کو کیا س ےکی ون ہق روا ق 
ی مطلوب زنقصودہو ے ہیں ای علا می معا مہ این ان »او راب شا ین رن رست ہیں- 

یح علاء نے اسماء رده کت وا نے روا ٹیس سےصرف ان روا ھر :جع کیا ے جو 
ان ٹس سے جرد ہیں جن هک طرع سک ےکیوکلہا بی روا بہت کم ہیں اوران 
کو رکد ث کے لے جانا ہا یت شرو رک سے ایےیے علماء شی علا ماءتن ع ری اور علا مراک حبان 
رز رست ہیں۔ 

بض عل ےت شتخصو سکب کے اساء رده کت وا نے روا کو کیا سے چنا جرا بوشر 
کلاپا نے کچ بفاری کے ر جال بجر هدع کیا هار دنه سم کے رال 
دهع ابو الفضل بین طا ہرنے دونوں ( لین پچ باری و کم ) کے ر جال کرو کو 
کیاے۔ 

اک طرں سن ابودا ود کے رچال ہجرد ہکوابویی جیا نے مع کیا ہے اور جا مع تر نی اور 
من ال ےر ال برد ہکا مخر بک ایک جما عت نے کیا ہے - 

نمی عبدافقی مقدی نے ای تاب "رال حرف اما ءالر جال ش۲ش صھاۓ ستتہ کے 
تام رجال برد هکو ع کرو یا »پر علامہ ری شا ی نے ضتو وز و ات دکوعذ ف فک کے الما یکا 
تی بکی اور ا کا نا تہ جب الما" رگا - 

. عافظ جن جرف ماتے می ںک ہرجش نے لام زک تب جب الما لک نی کی او یعس 

کات اتکی سار ے فو ان رکا اف یکیاء میس نے اک کا نام * تب یب ام بن 


عرچانظر ENS‏ هم اکا ا ےہ ۳۳ 
بح وش ہش سے سر اع شی مت سج 
بوک ے هلاب اص لکتاب ( امال ) کےا ون ره ے زا لړوار ومواارف 4 

ا 
ار ہا RNR‏ 
(و) من امهم يسا مغر الّسمَاء «لمردة »وق نت فیها الحافظ 
بر مد بن اوه البردیجی فُذ گر اء کیره تب له 
ها ون ذلك قول ضبن ستان أَحَد الضعقاء وه َم الاو 
الْمُهمَلَة وقد تبدل سِیْنَامُهُمَلَهَ نہ الْعَیْنِ الُمْعَْحَمَةِ بَعْتمَا ال 
هة تم ياء ياء انب وَهُو سم علم بافظ السب ویس هُوَفَرَا 
ففی اجرح وتیل لاب آبی حاتم صُمُدِی الحوفى ولق ان مین 
فرق یه وین ای له قَسعفه فى تاريخ اَن صُعُدِی رن 
باه رون قاد ال ايلي یه عير فرط هی واطنه 
هُو لدی وکر اب آبی حاتم اما کون لمن کر فى الشْعَفَاءِ 
ما هو یی اد دَكرَہ عَنه ولیسب الآ مه بل می من الاو 


نه عََْسَة بن وال دن۔ واللّه أعلم وه ذلك سندر بالمُھمَلَةَ 


تلم لکن دراو موی فی ال علی مَمرقة لاه ان مد 
در آبوالاسود وروی له ییا تب عليه ذلك بانه مر ِى که 
ان منت وقَذ د کر الحدیت امد کر مُحمّد بُنُ ریم الُجیْرِیٔ فی 
ارخ الصحاّة الذي ترا ضرف تَرْحَمَةِ ندر مَولى رباع وق 
رت ذلك فی کتابن فی السّحَابَو 

تر چم ...اضر وا ہک حرفت کی اپ مور شل سے سے ء اس میس ماف اب وبکر 
ان پاردون بر یی اوراس نے اس می بہت زیاده زی 
زک رک ہی ںگگرعلاءن ےشن پیز ںکا تھا ق بکیا ے انیس مم سےا لک یق لے 
صغد گی ین اال اور الشعؤا ء صا د کے کس هخا سک مین ے بدل دیا 
اس کے تن ون اورا کے دا او رھبا جن کی طر یاء کے ساتھ سے 


تست کےعییضکی رع ےکم ے تن پیفر دگل اور این الا عام کاب ترا 
وتخد بل ٹس ےک صفد کون ہے امن مین نے ا سک توم قکی ےء ورش کی 
تارج شش س ےکرصفد یی بی یزاوه روا کر ے ہی ٹل کہ اک انس 
کی ردایت ی تفوظط ہےء می مان ہے ےکر صفد گیا ونی ہیں ج نکواین الی عاتم نے 
دک رکیا سے رعا لف کا ا نکوضعفاء ٹیس فک رک رن ال عد بی ٹک وجہ سے ے جو 
اہوں دور ہے اور یف فک آفت ا نکی جاب رن ےکن بان سے 
روا کر نے وا تس کی دارگ نگ ہاب سے ہے۔( واشر ام )اورا( 
کی مشثالوں ) مس سے سند (جوک مین کے سات ر کے وزن )یرذا 
چذا یکا مو ی ہے اورا ے شرف “حا بت وار ردایت ها کل شور یہ جک 
ابو یدارا سک یکنیت ہے جار ےم کے مطا بی میک ایا ندنام ےکوی دوسرا 
اس کا ہنا میں ہے مان ابو موی نے این من ہک مرف اپ زنل کر 
کیا ےک سن دک یکنیت ابوالاسود چاو رال نے ا کی صد بھی کرک ہے :تا ہم 
ای پراشکا لکا گیا س کہ پر سند د ونی ہے جوابن عند ہ نے ذکرکیا ہے اور ین رق 
جرک نے زگره عد یٹ مع میں تم ہو نے وا کا ہک رت میں ستررمول 
زباغ جذائی وان ےکی ہے اور یل نے ال ہار ے می یا ہہ کے 
پا ییا تتاب شی اف کیا ے۔ 


اشن کےا م امور شل سے چو ٹیسوال اہم ری کہا یی روا کو انا کی ضر و ری سے 
نکا رونام ہواسنادحد یٹ می ان کا متا ول نبا کل حافظ اب ات بن پارون 
۱ رگ نے ای ےکنا بھی ا سکاب میس بہت سار ے ا ہے اسماء مور ہیں جومنشرد ہیں ا نکا 
بسا مک ہے ان زک کردم اساء پر اعت اضا تھی کے گے ہیں لا مغد کی نخان 
ایک راوی ے چوک ضیف سے نکر هکتاب غل عافظ ابویک امھ بن پارون برد نے اے 
اسماءمنفردہ مم شا رکر تے مو س هگا کےا کا نام دوس اکوگی را وی مو چو رل رن 
علا مہ این ای حا یکتاب'' ارح والتد بل“ سے موم »وتا سک مغد ی نام کے راوی 
ایک نیس ی دہ ہیں چتانچران دوش ایک مغد کون ہیں گی بھی بن اشن نے تو کی 


ےجب ردو سراصفد ک ٢ن‏ نان ج رخف سح - 

ار ی میس ےک مغد کوب مغد ک بن بان ے جوقادہ سے روای تکرتا ے 
علا تی کہا ےکا نک هد یٹ خی رتفوظط ےکوی اک یک ان سے اس بضع کم لگایا ہے 

عاف این تما تے ہی ںک ملا فی نے جس صغ د یکا کہ ٥کیا‏ ہے میبراخیالل ی سکیم 
وی صغ دی ےج کا ذکراین ال عم نے اتب ار والتح بل“ سکیا ہے اور گی جن 
مین کے موالہ سے ا یک5 ق ما نک ان لی نے ا وضع کہا چ رای سے 
معلوم ہو اک مغد بی منفردں را لک ہسنام دوسراراو کی موجودے۔ 

ما فار سے ہی کلام جوضع کا م لگا یا ے دو اس عد ی ٹک وج سے لگایا ے 
وی نے روا کی ےمان اس می سیب ضعف مغد کی ہن بالگ کی وجہ ےنیس بل 
اس کے ش ار وعنیسہ بین عبرال رگ کی وجہ ہے ضع فآ یا ےا ل ےک صفد کا تا ی دوراوی 
و ہے ادر مد ین ۶ید الو جل ہی ںکیوکہ کی می نین نے 
ا یکوین ۱ 

7 زی شال جس پر اقترا کیا گیا ہے دو سند ہے »و زار ال ایکا 
7زا وگرده سے ء ا سک ہو رکتیت ا یود اش ہے اور یبال او رآ می لش ی سم 
سے روات کی با نکر ے ہیں حافظط ال وبکر امھ بن پار ون دنس علا مہ این مت کی”* 
مرف اه" کے ہاش سککھا ‏ ےک سن رک یکفیت ابوالاسود ے اور الوالاسود سے ایک 
عد گھ ینف لکی سے جس سے معلوم ہوتا ےک سند نا مک کول دوسرا راو کی مو چو ے 
یز اسن ر روت .کی پیل دا نے سند رک یکنیت ابوعبدائلد ہے چیک دوسرے وا ےکی 
گنیت الو لا سود ے اور ہے دوتو ل چد اج دایب - 

اس تھا ق بکا جواب یدیا گیا ےک حرق الاب کے حاشیہ یٹس جس سن ر رکا ذکر سے جس 
20 ,8 
چنا رای کال روای کو( جوابین مند و نے ابو الا سد ووا یکنفیت سے دک ہے ) هن رک 
جیری نے ان کرام یت س ذکرکیا ہے جوم ریس تم تھے اس جار ش سندرمو لی 
جذائی کے عالات شی ال ددای تکو فک رکیا اور ما فظ امن رر ماتے ہی ںکہ ‏ ا کاب 
الا صا ف یٹ الصی ہے یش بھی ای طرر ا سکوسندر مو لی چز ای کے احوال میس زک رکیا سب » 


ع ړوار سر می دی مس SR‏ رج سس ہش رآ 
ما لل یہ ہو اک ست ر خی رمنفرد ہو ےکا اقتال درس کیل بل سندر نا ی ایک بی را وکام 
ا سکا ہمنا مک ووسرا را وک مو جو رکٹ _ واٹ راکم پا لصواب 
وو دو دو جا ری بی یں 
ی دا مغرف رالگُلی)لْمْعََمَو وَلْمئرَتوِ و كَذَامَمِفَهُ رلالقاب) 
وهی تاره يكو بلفظ الاسم وَتَارَة بلقُظ الْکنية وتقم بسبّب عَامَة 
عالاغمش أو جفةٍ ری دا مَعرفة نساب و) می تاره ر قح إلى 
القَبَال ) َو فی امین ار بِالنْسْبَة إلى امین ى تاره إلى 
(الاوْطان) وهدّافی الم حرین کر بِالنْسبَة إلى دمن رالنسبَة 
إلى لوعي مین آن نود رب َجبعا از سک از اى 
تَقَمرإلی السنایم) لبط «وَالجرّف ) کالبزار) رقم فا 
إنْفَاق والاشیباه کالاسشماء وَقَد تق نساب اقب ) کخالد بن 
محر آلقطوانی کان کوفیا ویب بَالْفُطُوَانِی وکا َعْصَبُ نها 
ترج.:.....اوراسی طررح ( مقر وتو ںکی ) مرو کی ام امور یں سے ) ہے 
اورای‌طررح القا بک محرفت( بھی ام امور یش سے ) ہے اور وہ اقا بش 
اوقت نام یعیش ہو نے ہیں او رتش اوقا تکفیت کے صیضہ بو تے ہیں اور 
اوقات یما ری سیب بو 2 ہیں تب امش یا پیش کی وجہ سے او رای طرح 
نبتو ں »رونت ( بھی اہم امورمجس سے ) ہے اور بض اوتا ع قیلوں 
کی طرف ضوب ول ہیں طر یمتاخ بین کے مقا بلہ یں تہ ین میں زیادہ تھا 
اورتض اوق ت وطنو لک طرف مفسوب ول ہیں اور طر رت قد من کے مقابلہ 
میں متاخ بین غل زیاده اور ون کی طرف بہت مس می لگویت سے خواہ 
شرول کی طرف ہوخواہ دیہان ںکی طرف ہوخواء گلوں کی طرف ہوخواہ پژول 
ہون ےکی وچ سے »اور اوقا ت چو ںکی طرف تضوب بو ہیں کے خیاط یا 
کی حرف تک طرف نے ب اراوران بھی اسا کی ط رح !تفا واشتبا و وا تح ہوا 
ہے اون اوقا ت ٹنیس القا بک صورت میں بو ہیں کے الد نل رقوالٰٰ 
جک کوٹ ہیں اورقطوالی سے ملقب ہیں اور یبال لقب خم کا ظا اکر ے تے 


اشن کےا ہم امور یش سے وال اہم اهر ے سب کہ ان روا کے باد سے میں م ہوتا 
ضروری ہے ہج نک یکفیت با برد سے یا منفرد هکیت مس ان کے ت مکنی کوک ہیں ما اب 
عبیر بین ( ی حش بصو ر ت تخر ) رمنفردکنیت سے سی اور راو یکی ال یکنی گیل .ال 
راو یکا تا معا د ہے کر ہے( شرر القاری:۱۸ء) 


انی کے ایم امور عل سے ٹیسوال انم اھر ہے سب ہکہ ان روا کے بار ے علطم ہونا 
شرو رک ہے ہن کے القا ب مفردومفمرد ہیں القاب می الن چم لق ب کون راو نیس سے “شا 
بدا بن رکا لقب ضعیف' ےا نک م اق بلول یں ا نکوردایت صد ہے یل ضع نہیں 
کہا جا ا بللہ ہے راوی جسمانی فاظ سے بہ تکنزور ےو جسا نی گزوری کل وجہ سے ا نک آقب 
الفعیٹ پڑگیا۔ 

ای طرع راو ین بن بیز یکا لب" الق ی“ ے اور مطردلقب سے ا یکا ملق کول 
دوسرا راو یل جسماٹی فا ےقو کی ہو ےکی وجہ تال" القو ی“ فی ںکہا جات تھا بک 
زا وت وی فت کل لاخ اور روت کف تاش ای اس سے 
ملق بکیا چا اقا چنا جرا کے بارے یں کہا جات هک عبادت ور یا ضت مل ات دو ےک 
اتر سے ہو کے اس قر رال اریز ے گے اوراس تز رطوااف کک ےک کل ے معز ور ہو 
ان کے طواف کے بارے م لها ےک ایک دن ست ستر مر طوا کی اکر ے تھے جب 
عیادت وریا ضت کا حال تیالو حن نے انیل ”ال ی" لقب سے با رنا شرو عکزدیا۔ 

)٣۲٣/۳: میں‎ ( 

اقا بک فصو ر : 

التا بک تنسو رٹ ہیں : 

)...دقع هک اس مکولقب کے طور برا سا کیا جا جا تھا مشلا سفیا نک سل نا بان 
تھا ها دوف وات کےا مقا ر جب صا ہکرام اپ ہتھیاراٹھانے ےتھک جاتے و مب 


ع ړوار OF EERE SRS‏ 
کےتھیار ای رانا اکر -2 کی وج سے ال" سفیہ کا لقب د کیا ہے 
سخینہ ایک اکم ہے جو لقب کےطور براستعال ہوا۔(شرں القا ری :۹۸ے ) 

- )...حش وف رس یکت تکولقب کے طور ماسقا کیا ہا تا سے مشلا یط ابوت اب‎ ٣ 

(r‏ 7 حش دف ی گہافی آفت اور پیا ر یکی وج ے با حضحت و ف تک وج ےلو 
لقب پڑ جاجا ے ییے اع رج( لا )ای عداو( لو ار )امش وفیره اش بہت با ےک ت 
ہیں امام اگم انز اتاد ہیں و مشرو رمقو لرا ب یکا س ےک فقہا ہکرام لیب ومع ہیں اور 
تہ 


ار 0 ےت تسوا لا ارب ہے راد بت اعم ہون ضروری 
ےک رفلال راو ی علا کی طرف ضوب .فلا ل راو یں فی کی ط رف ضوب_- 


سو وت 


0 0 کان ےت یں ہے 
مر یقہ ہکم ےنت ال القبائ لکی صورت میس بڑ ےقیی کی طرف کی نہ یکر کے ہیں 
اورشاغ کی طرف کی ۔ الہ اس میں ىہ اصول ذ ین می دک اص پل ہدام بعد شش ہو 
حاکہبعدوانے کے کس ےکوی فا ده ال تقرس پھر شی ا کا الت مت پیل ام پر 
تست نوراک کول فرش _قیی ہکی طرف ضس تک مشا لق ری ج ج وکام 
7 


ر بترن و ا ےت 7 
صا ین یغار یک نبت ے ۔ 
مت ال الاوطان م٣‏ لیم ےخواہ علا ق هک وجہ سے ہوخواہ زرگی ز لن مو ےکی وچ سے 


موخ او راستاورطر ان ہو ےک وج ہوخواہ اعلا دک جاور وی ہو ےک وج ے ہو۔ 

ست ال الاوطان میں ميرم ں بھی ہو تی ےک رش ری طر ف کی ہت موک ے۔ 
ال شر ےکی کاو ںکی طر یی نبت ہوکتی ہے ۔ اس گا ول ٹک طر بھی برکق 
لہ ک ےکس یکو کے اورکنارےکا نام یره موتو الک طر بھی نت وق س رہ 
صورت میں ترا مت کوج کرت بھی درست سے کن کک نے میس پیل اعم ذک کر ے پر 
اخس شر المصری الصعیدی المناوی الحصوصی صو گا و لکا نام ے ٢ہی‏ رکا 
نام ہے ءصصعیدکنزارے اد رگ ہکانام ہے او رمع رک کک نام ہے ۔ 

نبت ال الا وطان لک تو ںکوئ کر ےکی صورت میس ہم نے یہ اصول جیا نکیا ے 
کہ پیل اعم راخ زک رکر ےکن اکر ا یک ال کر دیا ہے کی ورست ےکوک ہت 
هر یف وم قصو و ہو ے وہ دونوں ط رح حاصل ہو چا ے۔ 


نہتوں میں رتو رع | تات واشت ہا وراک مثال: 

نبتوں کے بیان یش ایک اہم جات ہے ےک جس طط ررح اساء شس ا تفا واشتهاه ہوتا ریت 
سے پا لایر تبتوں می ںبھی ا تفا واشتیاء ہوتا ہے اتا قکی مثا ل ےک فی ہوطیز 
کی طر ف ضو بکر ے ہو ےی کے ہیں ای ط رح رت اما لاسکی نرب 
کی طرف نید تکر تے مو ۓے بھی ط فی کے ہیں اس مثال مس لفظا اور خطا ( رم الط ) دوتوں 
ایا ر ے انفاتی دا اد > 

اشا ,انا بک مال :الا ب ادرالا بھی ے۔ 
لوان یی تن : 

نض اوتقا می راو یکا لقب لصو رت تست ذک کر دیا جا جا سے الاک و وہس با 
لقب »وتا مھا خالمد نت قطوا بر اوی نبت عون ہیں او رتوا ا نک لقب سے جس 
رال ببت فص تھا۔ 

نل حرا ت ےکہا هک فلا ان کے وز ان پرصیغعصفت اکن سے و ونس جو لح 


عرو اتر NERE AS RSS‏ ین 
وقت تر یب قریب پل ر کے یں و نے ندم اشا ے اکا سے ع مف کا مک رکیا چا ے نو 
بر لقب »وگ جرک بصور تست استمال »وچ - 
بل حرات نے اسے می هفت یم سے اک دکیا سے او رکہا ےک نبت ال القون پہ 
تل ہے یا عرقز او تشون طرف ضوب ے یکوک علا رک شوب ہے 
رد وگو رت ہے ا رک کث ادن ےن پچ ر یک ل ات ہے ءاقب بصور ت بت کے 
یل سےا ۔ 
یو × و دو دی ٭ gS‏ دو دی وت 
ى من المَهم صا مَعرِفَة (أمْبَاب ذلك ) أي الالْقاب والنسب این 
باطنها على جلاف قاهرها (ق) دا مَعرفَه الْمَوَالٰی ین الاغلی 
والاسمَل بالرق أو اف ) أو بالاسلام لا کل ذیك یُطلق عَليْه اِسُمْ 

المَولی وا یعرف تَمیْر ذلك لا بالتنعیّص علبه رومَرقة الاخوة 

وَالاخوات ) وَقَدُ نت فيه الما ء کولی بن المِیْیِی 

تر جھ:.....اورایے القاب اورشبتتول کل محر فی کی اہم امور ش سے سجن 

(القاب یانبتو ں ) کا پان طابر کےخلاف چاو رای‌طرر موق ال اورمولل 

اف لکی معرفت (بھی اہم امور یں سے ہے ) خواه فلا کے اپار سے ہوخواہ 

علیف ہے کے اظ سے ہوخواہ الام کے انار سے م رکوہ ان ٹیل سے بر 

ایک بمو یکا ا طلا ہوتا ے اورا یرال ہوکت یر ےک اس پصراحت ہواور - 

(ا یما مورییس سے ) ییات بتو ںکی حرفت ( بھی )ہے اورحضرات نز مین نے 

اعم می سکتا یی تی فک ہیں جی ےکی بن نی ۔ 


این کےا ہم امور میں سے ستا یسواں اہم ا ہے ےک رای کے لق بکا سیب معلوم ہوم 
روری ما یک راو یکا قب ”ضا ل“ سے ظاہری طور بر ا کا راچان اہ یکا 
الب ہے گرگ کے را تے شش هو لیگ یا تھا یک وجہ سے اے ضا لکبا چا 
ایک راو یکا لقب الفحیف ےا کی وو ےر یل گذدہی ے۔ ۱ 
ای رع ایک راو یکا لقب القو ی ے اک وی تفیلاگز ری ے۔ 


عر وار کرش یٹ نگ ی ی ی 
ای طرںح جوذیست غلا ف ظا ہرہوا سکی قیقر کی معلوم موی ضر وری سے مشلا الیک راوی 
د بن نا ن مو قی ہے ر اوک تی ع ری سک ن۶ ہکی طرف شوب سے مالک ےا تیر 
کا فر وک ہے اورا نبس تک اصل وج ہے ےک بیدا وگ اس تی عو شس چاکرر تھا سکی 
وبرے ا یکی طرف فو بک و گیا ۔ 
ای رع ابومسحودعقبہ ہن گرو الا نصا ری ابد دک ایک دا دک ہے راسپ کد بدری کے اور 
کیت ہیں ھا اتک ہے ینگ بدر لش ری یں تے شا صحاب بد رک او لا دل سے ےکن چوک 
مقام‌بررڈل اتا مت اقتا رک لی اورا ت م کی وج ے ہر رک سرت ہو رمو گے _ 
(شرں القاری:۷۷۱۵) 


۳۸( ی موا یکی تی بک کم : 

اکن کےا ہم امور یں سے انا یسوال ام ار ہے س ےک موالی کے بار سے ملم وا 
ضروری س ےک وتک لف موی ہرم کے مو لی بے بولا اتا ہے خواوموٹی ای ہوخوا و مولی ال ہوخواہ 
موی غلا ی کے اط سے موخواو موٹی حلش ومعایره ‏ اختبار سے مووا مو لی اسلام اظ 
سے ومو یکا اطلا ن ان تا م معا ےکوی طور پر ہوتا سے جک وج ے رععلو کر نا مشک ہو 
چا تاک فلا راوگی کے ساتھ لق مو یکس مت کے اط سے سے الہ اکر کی ترا مکی 
طرف سے را وی کے نام کے ساٹ مو یکی صراحت موت ری ہو چا ے ملا انان بین 
سی پر رال تھے ال نے عبد ئل جن مارک کے پاتھ ےا سلا م قو کیا تھ سک وج سے ان 
مولی این مار کہا جا تا گوياک بی موک بلاسلا مکی ال ے ۔ل(شرں القا ری :۹ے ) 

اک رع اقوت شی تال ی ہ یاقو تکنزوانی او ر کیرش ر نی ہے سارک قی ری 
ضر کر بھی نب کے لاو سے اس تیر ےم تحل قنوں بر ےساد ے مولی(ولاء 
3 )گی وجہ سے اس قی ر طرف ضوب ہیں - 


اشن کے اہم امو یل سے اتو اں اہم ار ہک روا3 شم بل اور ول کے 
رشقو ںکا گم نا ضروری ہے ملا رثن سور اور تبر ب سور وولو ل بح بل رون 


عرڈالنظر وس مر رم کار امم ٹس دم ئے ۳۳۵۱ 
یل اورا نش یل دونوں یا ہیں ءا کو انا اس لے ضروری ےک ٹن وفع بندہ 
وو با ول سے تلق جہال یکا شکار ہو جانا ے یا دویاز اراک جن کے با پکا نام ایک جیما 
ےا کد با یھ شتا ے اہروہ ال جوا اتب شکب کل نشاب اور 
مھ بن شکب بل رواۃ صد بیش یں ظا ہر فان سے ول یا معلوم ہو تے بر ای 
نہیں تون لیر بر وقیاوں ےعلق رھت ہیں اگم میس علا اصول صد بیش لا کل بن 

ھ هنهک تمان فی ہیں۔ 
و مب کر KH‏ 
رو) من مهم ايضار عة آذاب لیخ والطالب ) وَيَشْتَرٍ ان فی 
تَصحِیٔح التَيّةوَالتطهِيْر عَنْ أغْرَاضِ الڈُنیا وَتَحسِيْنِ الق وَبَنَقِةُ 
اليح بائ یسم ۱ احییج إِلَيْه وال لخدت بل فيه مَنْ هو اوٴلی من 
بل یرد لب ول یرف إِسمَاع أحَد یه فاسدة رن هر ویس 
بوقار ایح قایما ولا ععلا وا فی الطربی إ9 اد یضطر إلى ذيك 
َأ یمس عن ال دیب إا شى یرو النسیان لِمَرَض أو رم 
ود اند ملس اوملاء ان يخود له مستّمل بَقَظ ویر الطالب با 
وف لیخ ولا یَض مره ورد عير ما سمه وید ع الاستفاداً 
لِحيَاء او تکبر یکت مُا سَوِعَه تما وَيَعتيی تقد وَالض٘بْطِ و اکر 
تر جم.:...اوراپم امور خن سے پچ اور گرد کے؟ دا بک حرف کک ہے اور ہے 
دوفول یتک دنا کے را سے پا کی اور اغلا نک چھائی شس مشترک ہیں 
ات ان امور منفرد ‏ ےکر وہ ال دقت رایت یا نکر ے جب ال کے 
سان اتا رح کا نا رکیا جاۓ اور لش رش ل اس سے یڈ ول محرث ہوا 
شس روایت بیان تک سے الب ےکی طرف(علل کی ) راشای کے او رکی 
غل تی تک وچ ے بیان ردای تل تہچلوڑ ےاوردہ پا ٠‏ صا فکرےاوروقارے 
سات متش ریف فرب مو او رکف »و۶ با جل ری میں با راے شل رواعت بیان نہ 
کرےےالا ی کر شد رض رورت پڑ جاۓ اور ردایت یا نکر نے ے اک وفت پاز 


عرچالظر ہو یی بد مہ سم شس رپ یر ےت 
رے جب اسے الط کا وج سے یا مت کی وج سے یا ڑا ےکی وجہ ہے ول 
ا کا خرف مواور جب الا کا اچتما کر ےل اس کے لج رہوگ سے 
کر بیدا رک تب +واورش ردان امور مل ترد س ےک وو کیم کے او 
اسے تک نہک ے اور سے سن ے کے بع ری ( ہم درل) سے راجنمائی حاصل 
کر سا ریا یا رکی فی نے اتف کوک ت لے اور چ کے ےا نے 
آله نے اور اعراب وقلوں کا اما مکرے اور جو یاد ہوچاتۓ ا کا گرا( 
زاره )گتار ہت اکہذ من مل را ہوجاے- 


ار کےا یم امور سے تسوا اہم ری ےک ہآ داب چاو رآ داب ملاب مکی 
معلوم وت ضرو ری تکوم الید یٹ ایک ایا شرف وحظمت و ام ے جو ب کر یکی 
طرف شوب وعضاف ہے لہ الم کے پڑہانے وا اور پڑ ھن دا اراک اغلاتی 
اورا یکی عا دا کا عا کی مون چا سے - 


اور شا گرو کے شر کآراب: 
خو گرو ےتا قش رکآ داب یہ ہیں: 


تیا یکی ر ضا صو مون چا سے ےکی مکاد تا کا مال یا مرت ومنصب فصو ویش ہونا چا سے یوک 
عد یٹ می لآ جا ےک ہاگ رکسی نے اہی کم حاص کیا نس سے لت یکی خوشتو وی مطلوب بو 
رال ےکی دنا وی مقر کے لے ماش لکیا تو تیا مت کے دن اس جن یک خوش وک 
ںآ ےکی سالک جن کی خوشوو پاچ سا لک ساف ےآ جال ے۔ 

( کن ابپودا ود سفن این با هزاب اعم ,ستراضر) 


کرده هد بیش روا ی کرد ے اس می فحیل یہ ےک اک علا قہ شی صرف ایک می مد رش ہے 
رانک احا ر ورور کی صو رت ٹل اس هد بیث روا کر ناد اجب ے او راگ کون دوس 
محر ث بھی مو جود ےلو ای صصورت ٹیل رویت عد ہ سب ہے (شرں القاری:۸۱ء) 


جر ث مو چو و ہو یا اا رث مو جور ہو چو الفا ظا حد یث او رہن عد بی کا ماہ رہو با ال کے علاوہ 
کول وجرت ب ا سے حاصل جو یرای صورت یں خود صد بیش بیا نک ےکی یا ے اش عا لی 
سرغ ور کی طرف لوگو ںکی رجنما ی مر 2 

۳یا سائئ دشار دکی فا سدنی تک وجہ ےکور وات عد لژ چا ہے 
کیوککہامید ےک اعاد یٹ ما لک نے کے بعد ا یکی تیت درست ہو ہا سے چنا تچ افراد 
سے نقول کہ 

”طلبنا العلم لغیر الله فأبی أن یکون إلا للّه “ 

کہم مت وی اورمقصد کے لے ماع کی ت رتو عم کے بعدیم نے برچ سے 
ہٹا دیا اورصرف اللہ تما لی کے لئے الس وکیا جب ما کم کے بارے مس ہے بات سے م 
الق رآ ن او رم ید ی کے بارے مس تو یہ بات اور زیادہ لقن کا کی ى 
شش القاری:۸۲ء) ۱ 

(r‏ 7ھ َ کور وات عد بیش سے یط خوب ای طرح طہار تکالہ حاص لک ئی جا ہے 
سو اک او رخ وبوا سا کر فی چا ئے ءڈاڑھی اور بالو ںکودرس تک نا چا سے - 

۵)...... نم صد مگ ہہ کو ور وتار اتاد اور ا ینان سا اش ریف رما موا 
چا 

کا صد یٹ میا نک گی چا س هکس ہوکرحد ی ین نکر فی چاه اما گر 
کول زر ہو کو با تک ہوک رمچھانی قصو و ہوتو پر انش ے۔ 

(شرں القاری:۸ء) 


"چ 8 کی ۳ 
عد یٹ رسول اور رسول ها طر ی روات ہے ہوتا تاک فا ص کر کے ہو لئ اور 
با کاک رارک گی فر ہا کے مه چنا نج حضرت عا تس مر وی ہےء دوفر انی ہیں : 

”لم یکن النبی عليه الصلوة والسلام يرد الحدیث کسرد کم » إنما 

کان یحدث حدیثا لو عده العاد لأحصاہ * 


(رواه صحیح بخاری فی المناقب ورواه مسلم فى فضائل الصحابة ) 
ک پم لک رح عد مث بیان یں فر ہے تھے لپ ای طررا 
یزان کے سا تم عد بیث میا فر ا ےک اگ رکوکی شا رک نے ولا ( الف که ) غا رک نا پا تو ار 
کرسکتا نواعت صد بیش مس الف کی اوا گی میں جل ر کیک سک کی چا سے - ۱ 
ای اتارک نے اپنی شر یش ا س کا مطلب ےک یلعا س ےکر رای حالت ٹل حد یٹ 
نمی جیا نکر نی جا سے جب دہ اپ ایکا مکی وجہ سے جلدی ٹل کول دبا ا کا مکی 
70ص “پ۹4 ".جم 
( شر قاری فو 


TS‏ و سو 
مجبوریی وع زر مو ۔ علا م کا زرو فی( جوک شا ررح تفارک ہیں نے فر ما کہ امام ما لک کے پا سے 
یش منقول کہ جب وہ عد یٹ بیا نکر نا چا سے لو وضوکر کے اورمند پر بیٹھ جاتے ڈاڈھی 
درست فر مات اورا ی جک میں وقا راو رکون لا ے ال کے بعد عد یٹ یا فر ماتے چاه 
فر ما اکر کے تک یج عد یٹ رسو لک یمرن بت پپند سے لبذ ال وضو کے !خر عد عمش 
ان یں کا 

اک کے بارس میں متقول س ےک دہ راستہ جس ب کے بو یا جلد کی عالت میں 
عد یث بیان کر نے کو نا پندک/ر ے ے۔ 

ان کے بارے مس بیکھی منقول س ےک وہ روایت کے ہے سل فرماتے نا جوڑ ا کنخ اور 
خو خو شب وا ستعال فر 60 سی و یآواز لد »و ہا ۓ لو ببت 2-۱ 2 


ک سط رب یکرت مکی مو جور یں رح ور تور ہے اک ط رح عمش سول بان 
کے دورا نگ رخ وت کنر جوسور هرا تک ا سآ یت سے ما یت ے: 
۵ یایھا الذین آمنوا لاترفعوا أصواتكم فوق صوت النبی # 
( رر القاری:2۸۳) 


زان ن رکا ت1 گنی ےکی مت کی وجہ سے یا ھاپ ےکی 0070 ے 
حفط وہ شس بجول چ ھک ی ےا اعد یث بیا نکرن تر کفکرد ےک کی روات می ںقلل 
نآ جا ے البت اگ رآ خر رک موئ دج اص درست ر ہل »ز بان درست ر ے بط وحفث درس 
ر ےو پر کک روا تک نے لک حرج یس چنا چ کی یناشن کے بار ے تقو 
سےکہموت کے ر یب ها مت زر لول نے یر روات یا نکی : 
”من کان آخر كلامه لا إله إلا الله دحل الجنة “ 

ال روا تکو یا نکر نے کے بعدا نکی رو رح فی موی او رش وگول لن کہا و الہ 
تا سے یل روعش ہو یھی ۔(ش رع اق ری :۸۳ے ) 

عاف کی عبات" رورا ا روف نے ہجرد دک کے ا سے مر پرمطو فکیا سے 
اس کے علاوہ اس میں احا ل کی کا ی مک یکا عضو رک کے ا سک وز اض 
بر عط فک یکیا ہا کا ے اس صورت میں مطلب کر جب روز ھا ہو جا ےلو روات 
عد ی شاو رک د ے چنا امن خلا د نے اک سا لک رکو ہرم یس غا کیا ہے او رگا کرای سال 
کے بعد و کوب زکر وا زکار یش مصروفر بنا چان ران یم اس صورت شل ے جب 
ها ےکی وجہ سے روایت میں قل پڑ چان ےکا فرش موک ار بڑھاپے کے پاوچودروایہت 
عد بیش درست »و رت ہے اس می ق لک لول ہور الکو بڑ ھا هش 
رواۃ کے احوال کلف ہو سے ںکئی ما کرام وت ین عام نے سو سا کی عم ر کے بح کی 
ردایت یا نکیا ہے چنا نج الق رک نے ایک ج رث سید کر یا کے بارس می لها ےکہ 
ایک سوت سا لک س ( برای غلل سے )رو یت بیا نکر ے چےاورفماتے ے: 

”فطوبی لمن طال عمره وحسن عمله * -( مرح القاری:2۸۳) 


ع ړو لطر ہر می یک 
بے جومتیتط اور حا القلب افراد رہ تل »وج کر الا عد یٹ اورا راب صد ہے اک ط رن 
کے با نکر بطر املا کر وانے و الاح ث وچ میا کرد اے جس مکو تخر وتبرل 
تہ مواور اکر سا تن ز یاد ہ مول تے ایک صورت یل مخ کواپپی ند ذ را او گی رف چا کے 
ا کل لداع - 


ش گر دو مح ےتآ داب: 


مندرج ذ لآ داب میں شاگر دضفرد ہے یآ داب اک کے سا تح ناش ہیں : 


ل رصم و تم 
اوقات امک صورت عا لت ما نع مکا سبب من جالع ہے مل او لگنس ےکی ابقتاب بت 
س کوک نٹ ہو رقو لے ے : 
”إذا طال المجلس کان للشيطان فيه نصیب “ 
رجہ ٹس شیا نک نون 


یا ہو 6 و و سے 
بس سی کی سس ےہ رگا چان یں۔ 


دش اس شک ول چوک د ہوجا ےش ارچ یھو یت 
اکنا دک سے ہیں اتا وکیل با تق ی ںکر تے ريت هر جب تفص لکی 
رورت پا از اش انان ےکم رٹم شآتے اس دق جیب دشر یب ما ید بے 
یک یکیفیت سے دو ار ہون یڑ تا ہےء چنا ندشن مار ککاقل ہے: 


”ما انتحبت علم عالم قط الا ندمت * 

شس نے ج بک کسی الم ےکم ے اما بکر کے وس ککے تو بعد میں کے رم نکی کا 

سا من کر نا ہڈا اک طرع کی ب نکا کی میج و هرا کے ہیں : 
” صاحب الانتخاب يندم وصاحب النسخ لايندم “. 

کوش کن والاضرو رک طور ہک وت مدکی یکیفیت ے دو چا د ہوتا ےگ رس یکو 
کین ال یکی شر مت یل ہوتا جب انان کے پا استادکی با یل کے اتکی بر 
ہو کسی وت شر من لک سامت کرت اج »وچ را لک ہے س ےکہ جب مکی پات سا حے سے تو 
ا کا ا قار اجا بگرناانان کے پاتھ مل ہوا ہے اگ ہیں ا خضا رگ ضرورت موتو وو ال 
سے عا ج یں یرای ےتا در ہوتا کن ا کان ںا کب سک انراز ری 
ہوئی ےو عض تفیل مطلوب ہو ہے اور ره ال امتاب ہے فصب ل کی ںکرسکتا ہج سکی 
وج ےش مندگ یکا ام اکتا تا 


ےلقطوں ویر وکا فص وی ا متا مک ےک یف وف ریف کا شیہ باق تہ ر ہے ء ا سک مشال 
ایی عا یش ے ”زر غبا تزدد حبا “ال روا تون خن راو ول نے اعراب وأقطو ںکا 
ار کے لو کیا ول نے فو ا کی طرں ر وای کرام رجنپثوں نے ال دقت اعراب ولقطو کا 
اقا مک لکیاانپوں الکو ” زرعناتردد حنا * دوای کر دیا اورت رع اس طر کرو یک 
ایک تو می ا نے فل شش ےکرک الا اور صد تن دی تا نک کم ند ی کل ش 
بر بل مور یقت یں اس روایت یف ور بف ہو ےا کل او پوال روات ے۔ 

( ررح القاری:۹۱ے) 


کرتار ہے جاکردد سب ہے ای کے ذ ہن مل پفتہ ہوجاۓ او رآ کے روایت میا نک نے کے 
دورا کت دوو ککا شکارنہ ہو جا ۓ چنا ت حرم یکرم اش جج ہے قو ل ہے : 
تذاکروا هذالحدیث ولا تغفلوا یدرس “ 
کحد ث کان ماک وگ رارک تے ر ہوا ے فا ثل تہ ہ کیدزن سے ماد ہا سے 
او رخزت قب ال بین “سڈ سےمنقول _ کر 


تذا کرو ا الحدیث فان حیاته مذا کرته 
کعدع کا مره وگرا رگر _2 رب وکوک ا یکی زرل ارہ یی کہ مرکا رہ سے 
عد یٹ ویک ذ جن مم لگفوو راق ے۔( شر القاری:2۹۳) 
جیلو جار کر KE KE TK.‏ 

(و) من مهم مره رین احمل والأداء) الاح اغیاز ین 
لَحَمل لیر هد فی السُمّاع وقد جر اه المخدیین با خضارهم 
الاطفال مجایس الحدیت وکین لهم هم حضرژا لاله فی مَل 
ذلك مس (حارة لْمسمع والاصَح فی سن الطلب بنشیه أذ لبیل 
رصم تحمل الکافر أَیْضّا رد داه بعد اسلایه وکا لْاسقَ من باب 
الّاوّلی دا دب مد نویه وبوّب عَذالیم اما لاد فقد تَقَدُمْ نا لا 
اخحیضاص له رمع بلق بالاختیاج وله لك وَمُوَ مُحْتَلِتٌ 
باختلاف الاشخاص وَقَالَ این خلا رد بل الْحَمَسِيْنَ ولاينگر عَليْه عند 
نومب بمن حڈت فلا کمایلب - 

تر چم .....اور ام مور مل سے ادا ءاور دشک ع رک حرف یکی ے اور 
ام یک آل یش تی کا اعقبار ہے ی( اقب سار ماود ال صد یٹ 
یں پچ ںکو حاضرکر نے پ ح شی نکی عادت پگ یآ ری سے اور ا نکو یکی 
دیے می کہ وہ عار ہو ے ہیں الب ایک مورت مل سنانے وا سک اجازت 
ضرو ری ہے او رخو ون طلب می ائ ہے س ےکا لک لاک ہو چا سے اور رکال 
بھی درست سے بش رطیلہ وہ اسلام لانے کے بعر ادا ےکر ےلو پر فا بطر لن 
اوق ( لک ال )+ ب ی و ہے بدا کو ت عرالت کا برا ردا 
گر ے اوراراءور یٹ ےکی پ لب یکزر چا ےک ووی اک ونت ے 
سام خصو نہیں بل وهضرورت اور ملا حیت وا بیت کے سا جج مقید ے اوروہ 
اشا یں کے اعقبار سے ملف وتا ے کین این خلاد کہا کہ( ادا ال وت 
کے ) جب دہ پیا سال( کر )کوک جا ے اور پا سکی عم می و یکر 
نکی جا اود اسک تھا ق کیا گیا ہے ال رت کے ذر مجر جنس نے اک کر سے 
پیک ددعت با نکی تج امام ما کک - 


ےت سد 
کم ہوناضروریی ہے۔ ۱ 


ا صد بی تک عم شی علاء کے اقو ال : 
مس گر سے جد یٹ ها کر تا وتا مخت ہے اس بارے میں علماء کلف اق ال میں : 
۹ کی جو ھجت 


1 
ق رآ نکر اور می اث ہا کر نے یش مصروف ر ہے۔ 

( ار ث‌الفاصطی: 2 ۱۸۸۰۱۸ ۔ شرب القاری:۹۲ء) 

(r‏ مد فان لژ کاقول ي ےکہ ج بکو لت حد یٹ ها لک هک اراد کر ےت 
فو بی سرت 


E‏ ےت 
با دف مک رز راد سے بیقر کہ شآ ج ہے رعال اسل شش باک تلف ہوک 
ہیں۔(شرں القاری (ara‏ ۱ 


آ۔ کت ےت 
جواب دعس ہو وہک تیر نش ے چتا اما فو وی اور علا مرا نے الک تا کر تے 
ہو ئےفر مایا: 


عو اتر وم یچ صپییوسجو میتی O‏ 
”إن فهم ورد الحواب کان مميزا صحيح السما ع»وان کان دون 
الحمس » وإلا فلا يصح سماعه وان كان ابن حمسين سنة -( فتح 
المغیث :۱۸۰ تدريب الراوی: 6/۲ 

سق گر خطا بک بج کر ا سک اج جاب دعا ےو یز کا ا ارو ۱ 

ا سا سک رکا داد رٹ ےا کا سا درس تنس اکر چردہ سالک رکا ہو۔ 


لو تصول ہک ا حد ی بل لا سے مو سے کول ےا م : 

رتیل ا سکم عمر کے باد سے ھی جس ن هل عد بہت می ما ضری ب یتیل 
عد یٹ کے ے دی موک نآ ر جک مو سم نو لکی عادت .تنل س کرو وچو ںکوخوا وو او بلا 
ضزجاغ دیشرف کرت کے لے الم اورمیااس صد ہف یش اس ساتھ لا ے ہیں 
اور دفعہ نیت مو ےک اہ 20ھ 
وجہ سے روا تاک تن کول باد سے می کر تے ہک فلا ں محر تک لش 
ما رمو سے ہیں تے سوال ہے ےک رانک صورت مال شل ا ےے جول نے مان یس چنا سے 
ا گے ر وای کر ےکا اتبا ر ے اس ؟ 

حاف اس پار ے من فر ماتے ہی لکرانک صصورت ٹل حد یٹ سنان